New Age Islam
Fri Apr 16 2021, 11:17 PM

Urdu Section ( 5 Apr 2021, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Construction of the Masjid-e-Nabwi مسجد نبویؐ کی تعمیر کیلئے جب آپؐ کو پتھر اُٹھا اُٹھا کر لاتا دیکھا تو صحابہؓ کا جوش دوچند ہو گیا

 مولانا ندیم الواجدی

2 اپریل 2021

تعمیر مسجد کا آغاز:

اس کے بعد تعمیر کا کام شروع ہوا، پہلے مرحلے میں کچی اینٹیں بنائی گئیں، انصار و مہاجرین سب نے اس کارخیر میں جوش وخروش کے ساتھ حصہ لیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم خود بھی اینٹیں بنانے اور ان کو اُٹھا کر تعمیر کی جگہ پر پہنچانے میں بہ نفس نفیس شریک رہے، اس وقت آپؐ کی زبان مبارک پر بہ شکل شعر یہ دعائیں تھیں:

اَللّٰہُمَّ إِنَّہٗ لَاخَیْرَ إِلَّا خَیْرُ الْآخِرَۃِ فَانْصُرِ الْأَنْصَارَ وَالْمُہَاجِرَۃِ

ترجمہ: اے اللہ! آخرت کی خیر کے علاوہ کوئی خیر نہیں، تو انصار اور مہاجرین کی مدد فرما۔

اَللّٰہُمَّ إِنَّ الْأَجْرَ أَجْرُ الْآخِرَۃِ فَارْحَمِ الْأَنْصَارَ وَالْمُہَاجِرَۃ

ترجمہ: اے اللہ! آخرت کے اجرو ثواب کے علاوہ کوئی اجر وثواب نہیں، اے اللہ! تو انصار اور مہاجرین پر اپنا رحم فرما۔

یہ دعائیں ربّ کائنات کے سب سے زیادہ محبوب اور مقرب بندے کی ان لوگوں کے لئے تھیں جن سے اللہ راضی تھا اور جو اللہ سے راضی تھے، اور جو تعمیر مسجد کا یہ کام محض آخرت کی خیر، بھلائی اور اجر وثواب کے لئے کررہے تھے۔ مدینہ منورہ کے لوگ خیبر کے باغات سے کھجوروں کے گٹھرسروں پر رکھ کر یا اونٹوں پر لاد کر لایا کرتے تھے، اس کی طرف اشارہ کرتے ہوئے آپؐ نے یہ شعر بھی پڑھا:

ہٰذَا الْحِمَالُ لَا حِمَالَ خَیْبَرَ ہٰذَا أَبَرُّ رَبَّنَا وَأَطْہَرُ

ترجمہ: یہ بوجھ خیبر کی کھجوروں کے بوجھ جیسا نہیں ہے (کہ اس میں صرف دنیا کا نفع ہے) بلکہ اے رب کریم، یہ بوجھ سب سے عمدہ اور سب سے زیادہ پاکیزہ ہے۔

صحابۂ کرام جب یہ دیکھتے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اینٹیں اور پتھر اٹھا اٹھا کر لارہے ہیں تو ان کا جوش اور بڑھ جاتا اور وہ زیادہ تیزی اور تن دہی کے ساتھ مصروف عمل ہوجاتے، ان کی زبانوں پر یہ شعر ہوتا:

لَئِنْ قَعَدْنَا وَالنَّبِيُّ یَعْمَلُ لَذَاکَ مِنَّا الْعَمَلُ الْمَُضَلَّلُ

ترجمہ: اگر ہم بیٹھ جائیں اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کام کرتے رہیں تو ہمارا یہ بیٹھنا نہایت برا عمل ہوگا۔ (صحیح البخاری:۱۲/۲۹۴، رقم الحدیث: ۳۶۱۶،صحیح مسلم: ۳/۱۱۴، رقم الحدیث: ۸۱۶، مسند احمد بن حنبل:۷۶/۲۷۸، رقم الحدیث: ۸۱۶، البدایہ والنہایہ: ۳/۲۶۳)

جب اینٹیں تیار ہوگئیں تو بنیادیں کھودی گئیں، تین ہاتھ گہری بنیادیں تھیں، زمین کھودنے کے لئے سب سے پہلا پھاؤڑا آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے چلایا، پھر مسلمانوں نے زمین کھودنی شروع کردی، پھر بنیاد رکھی گئی، اور ان بنیادوں کو اینٹوں سے بھر دیا گیا، کچی اینٹوں کی دیواریں بنائی گئیں جو قد آدم سے کچھ زیادہ اونچی تھیں، کھجور کے تنوں کے ستون بنائے گئے، اسی درخت کے تنے دیواروں پر پھیلا کر ان کے اوپر کھجور کی شاخیں اور پتے بچھا دیئے گئے، ان پر مٹی ڈال کر لیپ کردیا گیا تاکہ بارش کا پانی اندر نہ آئے۔ پھر تین دروازے بنائے گئے، ایک دروازہ اُدھر رکھا گیا جہاں اب قبلے کی دیوار ہے، دوسرا دروازہ مغرب کی جانب بنایا گیا جسے باب الرحمۃ کہا جاتا ہے اور تیسرا دروازہ آپ کی قیام گاہ کی جانب تعمیر کیا گیاتھا، اسی دروازے سے آپؐ مسجد میں تشریف لایا کرتے تھے۔ اس دروازے کو باب جبریل کہا جاتا ہے۔ تینوں دروازوں کے دونوں پائے پتھروں کے بنائے گئے، زمین پر ریت اور سنگریزے بچھا دیئے گئے، یہ مسجد اُس وقت سو گز لمبی اور سو گز چوڑی تھی، بعض کتابوں میں طول وعرض میں کچھ اختلاف بھی ذکر کیا گیا ہے، بہ ہر حال یہ مسجد نہ بہت زیادہ وسیع تھی اور نہ بہت تنگ، بلکہ اس وقت کی ضرورت کے لحاظ سے کافی تھی۔ فتح خیبر کے بعد ۷ ھ میں اس مسجد کو وسعت دی گئی اور ایک انصاری صحابی کا مکان خرید کر اس میں شامل کیا گیا۔ (صحیح البخاری: رقم الحدیث: ۱۳۴۶، البدایہ والنہایہ: ۳/۳۰۳)۔

مولانا ادریس کاندھلویؒ نے تعمیر مسجد کے ضمن میں حضرت حسن بصریؒ کی یہ مرسل روایت ذکر کی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ إبنوہ عریشا کعریش موسی (تم لوگ ایسا چھپر بنادو جیسا چھپر حضرت موسیٰ کا تھا)۔ راوی کہتے ہیں کہ میں نے حضرت حسن بصری سے پوچھا کہ حضرت موسیٰ علیہ السلام کا چھپر کیسا تھا، فرمایا کہ جب ہم ہاتھ اٹھاتے تھے چھپر سے لگتا تھا۔ ایک دوسری روایت میں ہے کہ انصار نے کچھ پیسے جمع کئے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا کہ اس مسجد کو مزین کردیا جائے، آپؐ نے ارشاد فرمایا: میں اپنے بھائی موسیٰ کے طریقے سے اعراض نہیں کرنا چاہتا، یہ موسیٰ علیہ السلام کے چھپر کی طرح کا ایک چھپر ہے۔ (سیرۃ المصطفیٰ: ۱/۴۲۷، بہ حوالہ البدایہ والنہایہ: ۳/۲۱۵)۔ علامہ ابن القیمؒ نے بھی تحریر فرمایا ہے کہ صحابہؓ نے عرض کیا: یا رسول اللہ! کیا آپ اس کی چھت پختہ نہیں کرائیں گے، آپ نے فرمایا: نہیں ایسا چھپر بناؤ جیسا حضرت موسیٰ علیہ السلام کا تھا۔ (زاد المعاد:۳/۴۶)

توسیع کے مختلف ادوار

خیبر سے واپسی کے بعد مسجد نبوی میں پہلی مرتبہ توسیع کی گئی، کیونکہ مسلمانوں کی تعداد میں دن بہ دن اضافہ ہورہا تھا اس لئے ضرورت تھی کہ مسجد کچھ اور کشادہ ہو۔ ابتداء میں مسجد کا ر قبہ ایک ہزار مربع میٹر کے آس پاس تھا، ۷ھ میں اوّلین توسیع کے بعد اس کا مجموعی رقبہ دو ہزار چار سو پچہتر میٹر ہوگیا۔ ۷ھ کی تعمیر وتوسیع کے لئے جو زمین ایک انصاری صحابی سے خریدی گئی اس کی قیمت حضرت عثمان غنیؓ نے ادا کی، آپؐ نے انصاری صحابی سے فرمایا تھا کہ جنت میں ایک محل کے عوض وہ اس زمین کو ہمارے ہاتھ فروخت کردے، مگر وہ صحابی غریب وتنگ دست تھے اور کثیر العیال بھی تھے، اس لئے زمین مفت نہ دے سکے۔ حضرت عثمانؓ کو معلوم ہوا تو انہوں نے انصاری صحابی کو پوری رقم دے کر زمین خریدلی اور حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوکر عرض کیا: یارسول اللہ! آپ فلاں انصاری سے ایک زمین خریدنا چاہتے تھے، اب آپ جنت میں محل کے عوض وہ زمین مجھ سے خرید لیں۔ آپؐ نے وہ زمین جنت کے وعدے پر حضرت عثمانؓ سے خریدلی اور مسجد میں شامل کرلی۔ روایات میں ہے کہ جب باغیوں نے حضرت عثمانؓ کے گھر کا محاصرہ کیا اور ان کو مسجد تک میں آنے جانے سے روک دیا تو آپ نے باغیوں کو مخاطب کرتے ہوئے فرمایا کہ کیا تمہیں معلوم نہیں کہ جس مسجد میں جانے سے تم مجھے روک رہے ہو اس میں زمین کا فلاں ٹکڑا میں نے ہی خرید کر مسجد میں شامل کیا تھا، اب تم مجھے مسجد میں جاکر نماز پڑھنے سے بھی روکتے ہو؟ (جامع الترمذی، مسند احمد بن حنبل)

اس توسیع میں بھی تمام صحابہ نے حصہ لیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم بھی شریک رہے، حضرت ابوہریرہؓ ۷ھ میں مسلمان ہوئے وہ چشم دید حالات بیان کرتے ہیں کہ صحابۂ کرامؓ کے ساتھ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بھی اینٹیں اٹھاکر لا رہے تھے، ایک مرتبہ میں نے دیکھا کہ آپؐ نے زیادہ اینٹیں اٹھا رکھی ہیں اور آپؐ اس کو سینۂ مبارک سے سہارا دے کر روک رہے ہیں، میں نے خیال کیا کہ شاید بوجھ کی وجہ سے ایسا کررہے ہیں، میں نے آگے بڑھ کر عرض کیا یارسول اللہ! یہ اینٹیں مجھے دے دیجئے، آپؐ نے ارشاد فرمایا: اے ابوہریرہ! دوسری اینٹیں اٹھالو، زندگی تو بس آخرت کی زندگی ہے۔ (مسند احمد بن حنبل: ۱۸/۱۳۶، رقم الحدیث: ۸۵۹۴)

اس توسیع کے بعد عہد فاروقی میں کچھ توسیعات ہوئیں۔ حضرت عثمان غنیؓ خلیفہ مقرر ہوئے تو لوگ ان سے مطالبہ کرنے لگے کہ مسجد میں اضافہ کیاجائے، مسجد تنگ پڑنے لگی تھی، جمعہ کے دن لوگ گلیوں اور راستوں میں نماز ادا کرتے تھے۔ حضرت عثمانؓ نے صحابۂ کرامؓ سے مشورہ کرنے کے بعد مسجد کی تعمیر کا ارادہ کیا، اور ایک روز ظہر کی نماز میں اس کا اعلان بھی کردیا کہ اے لوگو! میرا ارادہ ہے کہ اس مسجد کو گراکر اسے دوبارہ بنواؤں اور اس میں توسیع بھی کردوں، سب لوگوں نے خوشی کا اظہار کیا، اور دعائیں دیں۔ حضرت عثمانؓ نے خود اس کام کی نگرانی کی، جب تک کام مکمل نہیں ہوا آپؓ مسجدسے باہر نہیں نکلے، دس مہینوں میں مسجد دوبارہ بن کر تیار ہوگئی۔ (وفاء الوفاء: ۲/۵۰۲)۔

اس کے بعد بھی توسیع کا سلسلہ جاری رہا۔ بڑی توسیع ولید بن عبد الملک کے دور حکومت میں ہوئی۔ اس وقت حضرت عمرو بن عبدالعزیزؒ مدینہ منورہ کے گورنر تھے، توسیع کے اس کام میں قیصرِ روم نے بھی حصہ لیا، اس نے ایک لاکھ مثقال سونا، ایک سو کاری گر اور منقش پتھروں سے لدے چالیس اونٹ بھجوائے۔ مسجد نبوی میں پہلی مرتبہ محراب بنوائی گئی، یہ حضرت عمر بن عبد العزیزؒ کا اجتہاد اور جدت تھی، اس سے پہلے مسجد میں محراب نہیں ہوا کرتی تھی، آپؓ نے مسجد کے چاروں کونوں پر چار مینار بھی تعمیر کرائے، اور رقبے میں طولاً وعرضاً تین سو فٹ کا اضافہ کیا، مسجد کی دیواروں پر اندر کی طرف سنگ مرمر اور رنگین اینٹیں لگائی گئیں، دیواروں کے بعض حصوں پر، ستونوں، دروازوں کی چوکھٹوں اور چھت پر سونے کی ملمع کاری کی گئی اور مسجد میں بیس دروازے بنائے گئے۔ عباسی دور حکومت میں شمال کی جانب کچھ اور اضافہ کیا گیا، بہت سے گھر خرید کر ان کو مسجد کے اندر شامل کرلیا گیا، مصر کے بادشاہوں نے بھی اپنے اپنے دور حکومت میں مسجد کی تعمیر وتوسیع سے کافی دلچسپی لی، خاص طور پر سلطان قاتیبائی نے۔ اس کے زمانے میں مسجد نبوی کے بعض حصوں میں آگ لگ گئی تھی، اس نے وہ حصے دوبارہ بنوائے اور مشرق کی جانب کچھ اضافہ بھی کیا۔ سلطان قاتیبائی کی تعمیر شدہ مسجد تین سو ستر سال تک قائم رہی۔ (وفاء الوفاء: ۲/۵۱۳) (جاری)

nadimulwajidi@gmail.com

2 اپریل 2021،بشکریہ:انقلاب، نئی دہلی

Related Article

Part: 1- I Was Taken to the Skies Where the Sound Of Writing with a Pen Was Coming (Part-1) مجھے اوپر لے جایا گیا یہاں تک کہ میں ایسی جگہ پہنچا جہاں قلم سے لکھنے کی آوازیں آرہی تھیں

Part: 2- Umm Hani! ام ہانی! میں نے تم لوگوں کے ساتھ عشاء کی نماز پڑھی جیسا کہ تم نے دیکھا، پھرمیں بیت المقدس پہنچا اور اس میں نماز پڑھی، پھر اب صبح میں تم لوگوں کے ساتھ نماز پڑھی جیسا کہ تم دیکھ رہی ہو

Part: 3 - Allah Brought Bait ul Muqaddas before Me and I Explained its Signs اللہ نے بیت المقدس کو میرے روبرو کردیااور میں نے اس کی نشانیاں بیان کیں

Part: 4- That Was A Journey Of Total Awakening وہ سراسر بیداری کا سفر تھا، جس میں آپؐ کو جسم اور روح کے ساتھ لے جایا گیا تھا

Part: 5- The infinite power of Allah Almighty and the rational proof of Mi'raj رب العالمین کی لامتناہی قدرت اور سفر معراج کی عقلی دلیل

Part: 6- The Reward of 'Meraj' Was Given by Allah Only to the Prophet معراج کا انعام رب العالمین کی طرف سے عطیۂ خاص تھا جو صرف آپؐ کو عطا کیا گیا

Part: 7- Adjective of Worship مجھے صفت ِ عبدیت زیادہ پسند اور عبد کا لقب زیادہ محبوب ہے

Part:-8- Prophet Used To Be More Active Than Ever In Preaching Islam During Hajj رسولؐ اللہ ہر موسمِ حج میں اسلام کی اشاعت اور تبلیغ کیلئے پہلے سے زیادہ متحرک ہوجاتے

Part: 9- You Will Soon See That Allah Will Make You Inheritors Of The Land And Property Of Arabia تم بہت جلد دیکھو گے کہ اللہ تعالیٰ تمہیں کسریٰ اور عرب کی زمین اور اموال کا وارث بنا دیگا

Part: 10- The Prophet That the Jews Used To Frighten Us With یہ وہی نبی ہیں جن کا ذکر کرکے یہودی ہمیں ڈراتے رہتے ہیں

Part: 11- Pledge of Allegiance بیعت ثانیہ کا ذکر جب آپؐ سے بنی عبدالاشہل کے لوگوں نے بیعت کی،ایمان لائے اور آپ ؐسے رفاقت و دفاع کا بھرپور وعدہ کیا

Part: 12 - Your Blood Is My Blood, Your Honour Is My Honour, and Your Soul Is My Soul تمہارا خون میرا خون ہے، تمہاری عزت میری عزت ہے، تمہاری جان میری جان ہے

Part: 13- The event of migration is the boundary between the two stages of Dawah ہجرت کا واقعہ اسلامی دعوت کے دو مرحلوں کے درمیان حدّ فاصل کی حیثیت رکھتا ہے

Part: 14- I Was Shown Your Hometown - The Noisy Land Of Palm Groves, In My Dream مجھے خواب میں تمہارا دارالہجرۃ دکھلایا گیا ہے، وہ کھجوروں کے باغات والی شوریدہ زمین ہے

Part: 15- Hazrat Umar's Hijrat and the Story of Abbas bin Abi Rabia تو ایک انگلی ہی تو ہے جو ذرا سی خون آلود ہوگئی ہے،یہ جو تکلیف پہنچی ہے اللہ کی راہ میں پہنچی ہے

Part: 16- When Allah Informed The Prophet Of The Conspiracy Of The Quraysh جب اللہ نے آپؐ کو قریش کی سازش سے باخبرکیا اور حکم دیا کہ آج رات اپنے بستر پر نہ سوئیں

Part: 17- Prophet Muhammad (SAW) Has Not Only Gone But Has Also Put Dust On Your Heads محمدؐنہ صرف چلے گئے ہیں بلکہ تمہارے سروں پر خاک بھی ڈال گئے ہیں

Part: 18- O Abu Bakr: What Do You Think Of Those Two Who Have Allah As a Company اے ابوبکرؓ: ان دو کے بارے میں تمہارا کیا خیال ہے جن کے ساتھ تیسرا اللہ ہو

Part: 19- The Journey of Hijrat Started From the House of Hazrat Khadija and Ended At the House of Hazrat Abu Ayub Ansari سفر ِ ہجرت حضرت خدیجہ ؓکے مکان سے شروع ہوا اور حضرت ابوایوب انصاریؓ کے مکان پر ختم ہوا

Part: 20- O Suraqa: What about a day when you will be wearing the Bracelets of Kisra اے سراقہ: اس وقت کیسا لگے گا جب تم کسریٰ کے دونوں کنگن اپنے ہاتھ میں پہنو گے

Part:21- The Holy Prophet's Migration And Its Significance نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ہجرت کا واقعہ اور اس کی اہمیت

Part: 22- Bani Awf, the Prophet Has Come اے بنی عوف وہ نبیؐ جن کا تمہیں انتظار تھا، تشریف لے آئے

Part: 23- Moon of the Fourteenth Night ہمارے اوپر ثنیات الوداع کی اوٹ سے چودہویں رات کا چاند طلوع ہوا ہے

Part: 24- Madina: Last Prophet's Abode یثرب آخری نبیؐ کا مسکن ہوگا، اس کو تباہ کرنے کا خیال دل سے نکال دیں

Part: 25- Bless Madinah Twice As Much As You Have To Makkah یا اللہ: جتنی برکتیں آپ نے مکہ میں رکھی ہیں اس سے دوگنی برکتیں مدینہ میں فرما

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/maolana-nadeem-ul-wajidi/construction-masjid-e-nabwi-مسجد-نبویؐ-کی-تعمیر-کیلئے-جب-آپؐ-کو-پتھر-اُٹھا-اُٹھا-کر-لاتا-دیکھا-تو-صحابہؓ-کا-جوش-دوچند-ہو-گیا/d/124655


New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..