New Age Islam
Fri Aug 12 2022, 05:16 PM

Urdu Section ( 9 Jun 2022, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

The Monk Who Sold His Ferrari: Part 12 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

اپنے خوابوں کو پورا کرنے اور اپنی منزل تک پہنچنے کی ایک داستان

ترجمہ تلخیص۔ فاروق بانڈے

(قسط 12)

29 مئی،2022

(نوٹ: رابن شرما ایک کینیڈین مصنف ہیں جو اپنی کتاب The Monk Who Sold his Ferari کے لئے بہت مشہور ہوئے شرما ہند وستانی نژاد ہیں۔ کتاب گفتگو کی شکل میں دو کرداروں، جولین مینٹل اور اس کے بہترین دوست جان کے ارد گرد تیار کی گئی ہے۔ جولین ہمالیہ کے سفر کے دوران اپنے روحانی تجربات بیان کرتا ہے جو اس نے اپنے چھٹی والے گھر اور سرخ فیراری بیچنے کے بعد کیا تھا۔ اس کتاب کی اب تک 40 لاکھ سے زیادہ کتابیں فروخت ہوچکی ہیں۔)

 گزشتہ سے پیوستہ

”آپ عدالت میں اپنا کیس کیسے ثابت کرتے ہیں؟“

”میں قائل ثبوت پیش کرتا ہوں۔“

”سچ۔ جو ثبوت میں نے تمہیں دیا ہے اس کو دیکھو۔ میرے ہموار، بے لکیر چہرے کو دیکھو۔ میرے جسم کو دیکھو۔ کیا تم محسوس نہیں کرسکتے کہ میرے پاس توانائی کی فراوانی ہے؟ میرے سکون کو دیکھو۔یقینا، تم دیکھ سکتے ہو کہ میں بدل گیا ہوں؟“

اس کی دلیل میں وزن تھا۔ یہ وہ شخص تھا جو چند سال پہلے اپنی عمر سے کئی دہائیاں بڑا لگتا تھا۔

”آپ پلاسٹک سرجن کے پاس نہیں گئے کیا؟“

”نہیں“، وہ مسکرایا۔”وہ صرف ظاہری شخصیت پر توجہ مرکوز کرتے ہیں۔ مجھے اندر سے علاج کی ضرورت تھی۔ میرے غیر مستحکم، افراتفری کے طرز زندگی نے مجھے بڑی پریشانی میں ڈال دیاتھا۔ یہ دل کے دورے سے بھی کہیں زیادہ تھا جس کا مجھے سامنا کرنا پڑا۔ یہ میری روح کا ٹوٹنا تھا۔“

”لیکن آپ کی کہانی بہت پر اسرار اور غیر معمولی ہے۔“

جولین میرے اصرار پرسکون او رصبر سے رہا۔

اب آگے

چائے کا برتن میں نے اس کے ساتھ والی میز پر رکھا تھا، اسے دیکھ کر وہ میرے گلاس میں چائے ڈالنے لگا۔ اس نے اس وقت تک انڈیل دیا جب تک گلاس بھر نہ گیا، لیکن پھر انڈیلتارہا۔ چائے گلا س کے کنارے، پلیٹ پر او رپھر میری بیوی کے قیمتی فارسی قالین پر ٹپکنے لگی۔ میں پہلے خاموش سے دیکھتا رہا۔ پھر میں اسے مزید برداشت نہیں کرسکتا تھا۔

”جولین تم کیا کررہے ہو؟ میرا گلاس بھر گیا ہے۔ تم کتنی ہی کوشش کرو، او رنہیں آئے گی اس میں!“ میں بے صبری سے چلایا۔

وہ کافی دیر تک میری طرف دیکھتا رہا۔ ”براہ کرم اسے غلط مت سمجھو۔میں واقعی ہمیشہ سے آپ کی عزت کرتا ہوں، جان، تاہم اس کپ کی طرح، آپ اپنے خیالات سے بھرے نظر آتے ہیں۔ او رمزید آپ کے اندر کیسے جاسکتے ہیں۔۔ کیا آپ پہلے اپنا گلاس خالی کرسکتے ہیں؟“

اس کے الفاظ کی سچائی نے مجھے حیران کردیا۔ وہ درست تھا قدامت پسند قانونی دنیا میں میرے طویل سالوں نے میرے شیشے کو ہر روز وہی چیزیں کرنے سے بھر دیا تھا جو ہر روز ایک ہی چیزیں سوچتے تھے۔ میری بیوی جینی نے مجھے ہمیشہ کہا کہ ہمیں نئے لوگوں سے ملنے اور نئی چیزیں دریافت کرنے کی ضرورت ہے۔”کاش آپ کچھ زیادہ بہادر ہوتے، جان، ”وہ کہتی۔مجھے یاد نہیں ہے کہ میں نے آخری بار کب کوئی کتاب پڑھی تھی جس کا قانون سے کوئی تعلق نہیں تھا۔ پیشہ میری زندگی تھی۔ مجھے احساس ہونے لگا کہ میں جس بنجر دنیا کا عادی تھا وہ میری تخلیقی صلاحیتوں کو کند او رمیرا نقطہ نظر محدود کررہی ہے۔ چائے کا برتن میں نے اس کے ساتھ والی میز پر چھوڑا تھا، اسے دیکھ کر وہ میرے گلاس میں چائے ڈالنے لگا۔ اس نے اس وقت تک انڈیل دیا جب تک گلاس بھر نہ گیا، لیکن پھر انڈیلتا رہا۔ چائے گلاس کے کنارے، پلیٹ پر اور پھر میری بیوی کے قیمتی فارسی قالین پر ٹپکنے لگی۔ میں پہلے خاموشی سے دیکھتا رہا۔پھر میں اسے مزید برداشت نہیں کرسکتا تھا۔

”جولین تم کیا کررہے ہو؟ میرا گلاس بھر گیا ہے۔تم کتنی ہی کوشش کرو، وہ نہیں آئے گی اس میں!“ میں بے صبری سے چلا یا۔

وہ کافی دیر تک میری طرف دیکھتا رہا۔ ”براہ کرم اسے غلط مت سمجھو۔میں واقعی ہمیشہ سے آپ کی عزت کرتا ہوں، جان۔ تاہم، اس کپ کی طرح، آپ اپنے خیالات سے بھرے نظر آتے ہیں۔ او رمزید آپ کے اندر کیسے جاسکتے ہیں۔۔۔ کیا آپ پہلے اپناگلاس خالی کرسکتے ہیں؟“

اس کے الفاظ کی سچائی نے مجھے حیران کردیا۔ وہ درست تھا۔ قدامت پسند قانونی دنیا میں میرے طویل سالوں نے میرے شیشے کو ہر روز وہی چیزیں کرنے سے بھر دیا تھا جو ہر روز ایک ہی چیزیں سوچتے تھے۔ میری بیوی جینی نے مجھے ہمیشہ کہا کہ ہمیں نئے لوگوں سے ملنے او رنئی چیزیں دریافت کرنے کی ضرورت ہے۔”کاش آپ کچھ زیادہ بہادر ہوتے، جان، ”وہ کہتی مجھے یاد نہیں ہے کہ میں نے آخری بار کوئی کتاب پڑھی ہو جس کا قانون سے کوئی تعلق نہیں تھا۔ پیشہ میری زندگی تھی۔ مجھے احساس ہونے لگا کہ میں جس بنجر دنیا کا عادی تھا وہ میری تخلیقی صلاحیتوں کو کند او رمیری نقطہ نظر کو محدود کررہی ہے۔

”ٹھیک ہے۔میں آپ کی بات سمجھتا ہوں، ”میں نے اعتراف کیا۔”شاید ایک عدالتی وکیل کی حیثیت سے میرے تمام سالوں نے مجھے سخت شکی بنا دیا ہے۔کل جس لمحے میں آپ کو اپنے دفتر میں دیکھا، میرے اندر کی کسی چیز نے مجھے بتایا کہ آپ کی تبدیلی حقیقی ہے اور اس میں ایک سبق ہے۔ شاید میں اس پر یقین نہیں کرنا چاہتا تھا۔“

”جان،آج کی رات آپ کی نئی زندگی کی پہلی رات ہے۔ میں آپ سے صرف یہ کہتا ہوں کہ میں آپ کے ساتھ جو حکمت اور حکمت عملی شیئر کرتا ہوں ان کے بارے میں گہرائی سے سوچیں او رانہیں ایک مہینے تک اعتماد کے ساتھ لاگو کریں۔ انہیں ان کی تاثیر میں گہرے اعتماد کے ساتھ قبول کریں۔ ان کے ہزاروں سالوں سے زندہ رہنے کی کوئی وجہ تو ہے۔ وہ کام کرتے ہیں۔“

”ایک مہینہ ایک لمبا عرصہ لگتا ہے۔”

”اپنی بقیہ زندگی کے ہر جاگتے لمحے کو گہرائی سے بہتر بنانے کے لئے 672 گھنٹے کا اندرونی کام ایک بہت ہی فائدہ مند چیز ہے، کیا آپ ایسا نہیں سوچتے؟ اپنے آپ میں سرمایہ کاری کرنا آپ کی اب تک کی بہتر بنائے گا بلکہ آپ کے آس پاس کے تمام لوگوں کی زندگیوں کو بھی بہتر بنائے گا۔“

’وہ کیسے؟

”یہ صرف تب ممکن ہوتا ہے جب آپ اپنے آپ سے محبت کرنے کے فن میں مہارت حاصل کرلیتے ہیں تو آپ دوسروں سے حقیقی معنوں میں محبت کرسکتے ہیں۔ جب آپ اپنے دل کو کھولتے ہیں تو آپ دوسروں کے دلوں کو چھو سکتے ہیں تو آپ دوسروں کے دلو ں چھو سکتے ہیں۔ جب آپ کی توجہ مرکوز اور زندہ محسوس کرتے ہیں، تو آپ ایک بہتر شخص بننے کے لیے اچھی پوزیشن میں ہوتے ہیں“

”میں ایک مہینہ بننے والے 672 گھنٹے میں کیا امید کرسکتا ہوں؟“میں نے بے تابی سے پوچھا۔

”آپ اپنے کام، دماغ، جسم اور یہاں تک کہ روح میں تبدیلی محسوس کریں گے جو آپ کو حیران کردے گی۔ آپ کے پاس اس سے زیادہ توانائی، جوش اور اندرونی ہم آہنگی ہوگی جو کہ، شاید آپ کی پوری زندگی میں نہ تھی۔ لوگ دراصل آپ کو بتائیں گے کہ آپ جوان اور خوش ہیں۔ بہبود اور توازن میں واپس آجائے گا۔ یہ شیوانن نظام کے صرف چند فوائد ہیں۔“

”زبردست“

”جو کچھ بھی آپ آج رات سننے جارہے ہیں وہ آپ کی زندگی کو نہ صرف ذاتی او رپیشہ ورانہ طور پر بلکہ روحانی طور پر بھی بہتر بنانے کے لئے بنایا گیا ہے۔

سنتوں کا مشورہ آج بھی وہی ہے جو پانچ ہزار سال پہلے تھا۔ یہ نہ صرف آپ کی اندرونی دنیا کو تقویت بخشتا ہے بلکہ آپ کی اندرونی دنیا کو بھی بہتر بناتاہے او رآپ کے ہر کام میں آپ کو زیادہ موثر بنا تا ہے۔ یہ حکمت واقعی سب سے زیادہ طاقتور قوت ہے جس کا میں نے کبھی سامنا کیا ہے۔ یہ سادہ، عملی ہے اور صدیوں سے زندگی کی تجربہ گاہ میں آزمایا جاتا رہا ہے۔ سب سے اہم بات، یہ ہر ایک کے لئے کام کرے گا۔ لیکن اس سے پہلے کہ میں یہ علم آپ کے ساتھ بانٹوں، مجھے آپ سے ایک وعدہ لینا ہوگا“۔

مجھے معلوم تھا کہ کوئی شرط جڑی ہوگی۔”کوئی مفت کھانا نہیں ہوتا،“ میری پیاری ماں کہا کرتی تھیں۔

29مئی،2022، بشکریہ: چٹان، سری نگر

Part: 1- The Monk Who Sold His Ferrari: Part 1 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 2- The Monk Who Sold His Ferrari: Part 2 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 3 –The Monk Who Sold His Ferrari: Part 3 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 4 - The Monk Who Sold His Ferrari: Part 4 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 5- The Monk Who Sold His Ferrari: Part 5 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 6 - The Monk Who Sold His Ferrari: Part 6 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 7 - The Monk Who Sold His Ferrari: Part 7 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 8 - The Monk Who Sold His Ferrari: Part 8 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 9- The Monk Who Sold His Ferrari: Part 9 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 10 - The Monk Who Sold His Ferrari: Part 10 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 11 - The Monk Who Sold His Ferrari: Part 11 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

URL: https://newageislam.com/urdu-section/monk-sold-ferrari-story-dreams-part-12/d/127211

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..