New Age Islam
Wed Aug 17 2022, 07:02 AM

Urdu Section ( 10 May 2022, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

The Monk Who Sold His Ferrari: Part 9 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

اپنے خوابوں کو پورا کرنے اور اپنی منزل تک پہنچنے کی ایک داستان

ترجمہ وتلخیص: فاروق بانڈے

(قسط۔۔9)

1 مئی 2022

(نوٹ :ہندوستانی نژاد رابن شرما ایک کینیڈین مصنف ہیں جو اپنی کتاب The Monk Who Sold his Ferrari کے لئے بہت مشہور ہوئے ۔ کتاب گفتگو کی شکل میں دو کرداروں، جولین مینٹل اور اس کے بہترین دوست جان کے ارد گرد تیار کی گئی ہے۔ جولین ہمالیہ کے سفر کے دوران اپنے روحانی تجربات بیان کرتا ہے جو اس نے اپنے چھٹی والے گھر اور سرخ فیراری بیچنے کے بعد کیا تھا۔اس کتاب کی اب تک 40 لاکھ سے زیاد ہ کاپیاں فروخت ہوچکی ہیں۔)

گزشتہ سے پیوستہ۔۔

’’میں جولین مینٹل ہوں۔ میں شیوانہ کے رشیوں سے علم حاصل کرنے آیا ہوں۔ کیا آپ جانتے ہیں کہ میں انہیں کہاں تلاش کر سکتا ہوں؟” اس نے پوچھا.

اس آدمی نے مغرب سے آئے اس تھکے ہوئے مہمان کو گرمجوشی سے دیکھا۔ اپنے سنجیدہ اور پرسکون انداز کی وجہ سے وہ فطرتاً فرشتہ اورجوہرمیں روشن خیال دکھائی دیتے تھے۔

آدمی نے تقریباً سرگوشی والی آواز میں آہستہ سے کہا، ”دوست، تم ان رشیوں کو کیوں ڈھونڈ رہے ہو؟”

اب آگے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ اندازہ لگاتے ہوئے کہ اس نے واقعی ایک ایسے پراسرار مقدس کو دریافت کر لیا ہے جو اب تک بہت سے وحشیوں سے بچ چکا ہے، جولین نے اس سے اپنے دل کی خواہش ظاہر کی اور دشوار گزار پہاڑوں پر اپنے باہمت سفر کی کہانی سنائی۔ اس نے اسے اپنی پچھلی زندگی کے بارے میں سب کچھ بتایا کہ اس نے قانونی پیشے میں کامیابی حاصل کرنے کے لیے صحت اور توانائی لگائی گئی اور اس پیشے کو چھوڑتے ہوئے انھیں کتنی روحانی جدوجہد سے گزرنا پڑا۔ اس نے اس بارے میں بھی بات کی کہ کس طرح اس نے ایک بھاری بینک بیلنس اور ”لائیو فاسٹ، جوان مرو” طرز زندگی کے ساتھ اپنی روحانی اقدار کاسودا کیا۔ اس نے اس شخص کو اپنے صوفیانہ ہندوستان کے سفر اور یوگی کرشنن کے ساتھ اپنی ملاقات کے بارے میں بھی بتایا، جو پہلے نئی دہلی میں وکیل رہ چکے ہیں اور اب باطنی یگانگت اور ابدی امن کے حصول کی امید میں اپنی پچھلی زندگی ترک کر چکے ہیں۔

مسافر خاموش اور ساکت رہا۔ جب تک جولین نے روشن خیال زندگی کے قدیم اصولوں کو حاصل کرنے کی تقریباً جنونی خواہش کے بارے میں بات ختم نہیں کی تھی کہ اس شخص نے جولین کے کندھے پر بازو رکھتے ہوئے نرمی سے کہا: ”اگر آپ واقعی بہتر طریقے سے حکمت سیکھنے کی دلی خواہش رکھتے ہیں، تو آپ کی مدد کرنا میرا فرض ہے، میں درحقیقت ان بزرگوں میں سے ایک ہوں جس کی تلاش میں آپ یہاں تک پہنچے ہیں۔ ۔ آپ کئی سالوں میں ہمیں تلاش کرنے والے پہلے شخص ہیں۔ مبارک ہو، میں آپ کی استقامت کی تعریف کرتا ہوں۔ آپ یقیناً کافی اچھے وکیل رہے ہوں گے۔”

اس نے توقف کیا، گویا بے یقینی کی کیفیت میں کہ اب کیا کرنا ہے اور پھر کہا، ’’اگر آپ چاہیں تو آپ میرے ساتھ ہمارے مندر میں بطور مہمان آ سکتے ہیں۔یہ مندر اس پہاڑی علاقے میں ایک خفیہ مقام پر واقع ہے۔ یہاں سے چڑھنے میں ابھی کئی گھنٹے باقی ہیں۔ میرے بھائی اور بہنیں کھلے دل سے آپ کا استقبال کریں گے۔ ہم آپ کومل کر وہ قدیم اصول اور منصوبے سکھائیں گے جو ہمارے اسلاف نے ہمیں صدیوں پہلے سکھائے تھے۔

”اس سے پہلے کہ میں آپ کو اپنی خفیہ دنیا میں لے جاؤں اور آپ کی زندگی کو خوشگوار، زیادہ توانائی بخش اور زیادہ بامعنی بنانے کے لیے آپ کے ساتھ اپنے ذخیرہ شدہ علم کا اشتراک کروں، آپ کو مجھ سے ایک وعدہ کرنا چاہیے،” بابا نے درخواست کی۔

”ان لافانی اور ابدی سچائیوں کو جان کر، آپ مغرب میں اپنی مادر وطن واپس جائیں گے اور اس علم کو ان تمام لوگوں کے ساتھ بانٹیں گے جو اسے جاننا چاہتے ہیں۔ اگرچہ ہم ان جادوئی پہاڑوں پر دنیا سے الگ رہتے ہیں، پھر بھی ہم آپ کی دنیا میں ہونے والے خلفشار سے واقف ہیں۔ اچھے لوگ اپنے راستے سے ہٹ رہے ہیں۔ آپ کو انہیں وہ امید دینی ہوگی جس کے وہ مستحق ہیں اور سب سے اہم بات یہ ہے کہ آپ کو انہیں ان کے خوابوں کو پورا کرنے کے ذرائع فراہم کرنے ہوں گے۔ میں بس یہی چاہتا ہوں۔”

جولین نے فوری طور پر بابا کی شرائط کو قبول کر لیا اور وعدہ کیا کہ وہ ان کا قیمتی پیغام مغرب تک پہنچائیں گے۔ جیسے ہی دو آدمی پہاڑی راستے سے کھوئے ہوئے گاؤں سیوانا کی طرف بڑھے، ہندوستانی سورج غروب ہونے لگا، ایک آگ کا سرخ دائرہ ایک طویل اور تھکے ہوئے دن

کے بعد نرم، جادوئی نیند میں پھسل گیا۔ جولین نے مجھے بتایا کہ وہ اس شاندار لمحے کو کبھی نہیں بھول سکتا۔ بے عمر ہندوستانی باباکے ساتھ چلتے ہوئے، اس نے اس کے لیے برادرانہ محبت محسوس کی۔ وہ اس کے ساتھ اس جگہ جا رہا تھا جہاں سے اسے تمام عجائبات اور بہت سے اسرار کو دریافت کرنا تھا۔”یہ یقینی طور پر میری زندگی کا سب سے یادگار لمحہ تھا،” ” اس نے مجھے بتایا.۔ جولین کا خیال تھا کہ زندگی میں اہم لمحات کبھی کبھار آتے ہیں۔ یہ ان میں سے ایک تھا۔کسی طرح اس کی روح میں یہ احساس پیدا ہوا کہ یہ اس کی بقیہ زندگی کا پہلا لمحہ ہے – یہ زندگی اس کی پچھلی زندگی سے زیادہ اہم ہوگی۔

باب چار

شیوانا کے بابا

کے ساتھ ایک جادوئی ملاقات

پیچیدہ راستوں اور گھاس بھری پگڈنڈیوں کے ایک سلسلے کے ساتھ کئی گھنٹوں تک چلنے کے بعد، دونوں مسافر ایک سرسبز و شاداب وادی پر پہنچے۔ وادی کے ایک طرف برف سے ڈھکے ہوئے ہمالیہ اس کی حفاظت ایسے کر رہے تھے جیسے موسم کے مارے ہوئے سپاہی اس جگہ کی حفاظت کرتے ہیں جہاں ان کے جرنیلوں نے آرام کیا تھا۔ دوسری طرف، دیودار کے درختوں کا ایک گھنا جنگل تھا، جو اس سحر انگیز طلسماتی دنیا کے لیے بالکل قدرتی خراج تحسین تھا۔

بابا نے جولین کی طرف دیکھا اور آہستہ سے مسکرایا، ”شیوانا کے نروان میں خوش آمدید۔”

پھر دونوں ایک اور کم سفر والے راستے سے اترے جو وادی کے دامن میں جنگل سے گزرتی تھی۔ پہاڑوں کی ٹھنڈی، صحت مند ہوا میں دیودار اور صندل کی خوشبو پھیل رہی تھی۔ جولین اب اپنے درد والے پیروں کو آرام دینے کے لیے ننگے پاؤں سفر کر رہا تھا۔ اسے اپنی انگلیوں کے نیچے گیلی کائی محسوس ہوئی۔ وہ رنگ برنگے پھولوں کے باغات دیکھ کر حیران رہ گیا۔ درختوں پر بہت سے خوبصورت پھول ایسے رقص کر رہے تھے جیسے اس چھوٹے سے ٹکڑے کی خوبصورتی اور رونق پر خوش ہو رہے ہوں۔

دور سے جولین کو نرم آوازیں سنائی دے رہی تھں، جو کانوں کو میٹھی لگ رہی تھیں اور خوش کن تھیں۔ وہ آواز دیے بغیر بابا کے پیچھے چلتا رہا۔ تقریباً پندرہ منٹ مزید چلنے کے بعد دونوں آدمی ایک کھلی جگہ پر پہنچ گئے۔ اس کے سامنے ایک ایسا نظارہ تھا جس کا باشعواور حیران کن ر عقلمند جولین مینٹل نے کبھی تصور بھی نہیں کیا تھا- ایک چھوٹا سا گاؤں جو بالکلگلاب سے بنا تھا۔گاؤں کے وسط میں ایک چھوٹا سا مندر تھا، جیسا کہ جولین نے تھائی لینڈ اور نیپال کے دوروں میں دیکھا تھا، لیکن یہ مندر سرخ، سفید اور گلابی پھولوں سے بنا تھا،جو کئی رنگوں کے تاروں اور ٹہنیوں کے لمبے لمبے کناروں کے ساتھ جڑے ہوئے تھے۔ چھوٹی چھوٹی جھونپڑیوں نے جو بقیہ جگہ کو گھیرا ہوا تھا وہ باباؤں کے سادگی کے گھر معلوم ہوتے تھے۔ یہ بھی گلاب کے پھولوں سے بنے تھے۔ جولین بے سدھ کھڑا تھا ۔

جہاں تک گاؤں میں رہنے والے سنتوں کا تعلق ہے، تو وہ جولین کے سفری ساتھی کی طرح نظر آتے تھے، جس نے اب انکشاف کیا کہ اس کا نام یوگی رمن تھا۔ اس نے وضاحت کی کہ وہ شیوانہ کے سب سے بڑے بابا اور اس گروہ کے رہنما تھے۔ اس خواب نما کالونی کے شہری حیران کن طور پر جوان نظر آتے تھے اور تحمل اور مقصد کے ساتھکام کرتے تھے۔ ان میں سے کوئی بھی نہیں بولا، خاموشی سے اپنے کام انجام دے کر اس جگہ کے سکو ن قائم رکھا۔وہ مرد، جن کی تعداد دس کے لگ بھگ دکھائی دیتی تھی، یوگی رمن جیسی سرخ رنگ کی وردی پہنے ہوئے تھے اور جولین کے گاؤں میں داخل ہوتے ہی پر سکون اندازسے مسکرائے۔ ان میں سے ہر ایک پرسکون، صحت مند اور گہرا مطمئن نظر آرہا تھا۔”

ہماری جدید دنیا میں ہمیں پریشان کرنے والے تناؤ کی اس پرتعیش اجلاس میں کوئی جگہ نہیں تھی اور کہیں اور دعوت کے امکان سے پرہیز کیا گیا تھا۔ کئی سالوں کے بعد ان کے درمیان ایک نیا چہرہ آیا تھالیکن ان کا استقبال بہت مطمئن طریقے سے کیا گیا۔ انہوں نے اس ملاقاتی کو سر جھکا کر سلام کیا جو انہیں ڈھونڈنے کے لیے اتنی دور تک کا سفر طے کر چکا تھا۔

خواتین بھی اتنی ہی متاثر کن تھیں۔ اپنی بہتی ہوئی گلابی ریشمی ساڑھیوں میں اپنے کالے بالوں کو سفید کمل سے سجائے ہوئے تھے، وہ غیر معمولی چستی کے ساتھ گاؤں میں گھوم رہی تھیں۔تاہم، یہ وہ مصروفیت نہیں تھی جو ہمارے معاشرے میں لوگوں کی زندگیوں پر چھائی ہوئی ہے۔ اس کے بجائے ان کا انداز سادہ اورمکرم تھا۔ زین جیسی توجہ کے ساتھ، کچھ لوگوں نے مندر کے اندر کام کیا، اس کی تیاری کر رہے تھے جو ایک تہوار کی طرح دکھائی دیتا تھا۔ دوسروں نے لکڑیاں اور بڑی کڑھائی والی ٹیپسٹریز اٹھا رکھی تھیں۔ سب کام میں مصروف تھے۔ سب خوش دکھائی دے رہے تھے۔بالآخر، شیوانا کے باباؤں کے چہروں نے ان کے طرز زندگی کی طاقت کو ظاہر کیا۔ اگرچہ وہ واضح طور پر بالغ تھے، ان میں سے ہر ایک نے بچوں کی طرح کی خوبی کو ظاہر کیا، ان کی آنکھیں جوانی کی قوت سے چمک رہی تھیں۔ ان میں سے کسی پر بھی جھریاں نہیں تھیں۔ ان میں سے کسی کے بھی بال سفید نہیں تھے۔ ان میں سے کوئی بھی بوڑھانہیں لگتا تھا۔

جولین شاید ہی یقین کر سکتا تھا کہ وہ کیا د یکھ رہا تھا اور محسوس کر رہا تھا۔ انہیں تازہ پھلوں اور سبزیوں کی دعوت دی گئی۔وہ کھانا سنتوں کی مثالی صحت کا بنیادی منتر تھا، جس کا انہیں آنے والے وقتوں میں علم ہونا تھا۔ کھانے کے بعد، یوگی رمن اسے ایک رہایش گاہ پر لے گئے، جو پھولوں سے بھری جھونپڑی تھی، جس میں ایک چھوٹا سا بستر تھا، جس پر ا یک خالی جرنل پیڈ رکھا ہوا تھا۔یہ مستقبل قریب کے لیے اس کا گھر ہوگا۔

اگرچہ جولین نے شیوانا کی اس جادوئی دنیا جیسی کوئی چیز کبھی نہیں دیکھی تھی، لیکن اس نے محسوس کیا کہ یہ ایک طرح کی گھر واپسی تھی، اس جنت میں واپسی جسے وہ بہت پہلے جانتا تھا۔ کسی طرح گلابوں کا یہ گاؤں اس کے لیے اتنا اجنبی نہیں تھا۔اس کی چھٹی حس بتا رہی تھی کہ اس کا یہاں سے تعلق ضرور ہے، خواہ صرف تھوڑے وقت کے لیے۔ یہ وہ جگہ ہے جہاں وہ صحیح زندگی گزارنے کی خواہش کو دوبارہ زندہ کرے گا جو اس سے پہلے تھا۔ قانونی پیشے نے اس کی روح چھین لی تھی، ایک ایسی پناہ گاہ جہاں اس کی کچلی ہوئی روح آہستہ آہستہ ٹھیک ہونا شروع ہو جائے گی۔

اور یوں جولین کی زندگی سیوانا کے باباؤں کے درمیان شروع ہوئی، سادگی، سکون اور ہم آہنگی کی زندگی۔ بہترین زندگی جلد آنے والی تھی۔

اور یوں جولین کی زندگی کا آغاز سیوانا کے سنتوں کے ساتھ ہوا – ایک سادگی، سنجیدگی اور وحدانیت سے بھرپور زندگی۔ جلد ہی سب کچھ ٹھیک ہونے لگا۔ جاری

1 مئی 2022، بشکریہ: روز نامہ چٹان ، سری نگر

Part: 1- The Monk Who Sold His Ferrari: Part 1 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 2- The Monk Who Sold His Ferrari: Part 2 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 3 –The Monk Who Sold His Ferrari: Part 3 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 4 - The Monk Who Sold His Ferrari: Part 4 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 5- The Monk Who Sold His Ferrari: Part 5 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 6 - The Monk Who Sold His Ferrari: Part 6 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 7 - The Monk Who Sold His Ferrari: Part 7 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

Part: 8 - The Monk Who Sold His Ferrari: Part 8 بھکشو جس نے اپنی فراری بیچ دی

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/monk-sold-ferrari-story-dreams-part-9/d/126973

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..