New Age Islam
Tue Jan 18 2022, 10:48 AM

Urdu Section ( 9 Dec 2021, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Indian Ex-Muslims Are Speaking Out and the Youth Have Started Leaving Islam ہندوستانی سابق مسلمانوں کی آواز اثر کرنے لگی، نوجوان تیزی سے بڑھتے ہوئے مذہبی جنون کو چھوڑ رہے ہیں

سنجیو تیواری

1 دسمبر 2021

(ہندی سے اردو ترجمہ: نیو ایج اسلام)

جے این این، نئی دہلی۔ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کی طرف سے توہین مذہب کا قانون نافذ کرنے کے مطالبے نے، بہت سے دوسرے لوگوں کے ساتھ، ہندوستان کی (Ex-Muslim) کمیونٹی کو خوف زدہ کر دیا ہے۔ خاص طور پر وہ لوگ جو اپنے متعلقہ یوٹیوب چینلز کے ذریعے اسلامی تعصب اور برائیوں پر سوال اٹھا رہے ہیں۔ ان میں سے کچھ کسی مذہب کو نہیں مانتے اور خدا، اللہ، عیسیٰ علیہ السلام کی اتھارٹی کو چیلنج کرتے ہیں۔ وہ دلیل دیتے ہیں کہ مذہب انسان نے بنایا ہے نہ کہ کسی خدا نے۔ کچھ کا خیال ہے کہ کسی نے کائنات کو تخلیق کیا ہو گا، لیکن یہ کوئی طاقت نہیں ہے جو ہماری روزمرہ کی زندگی میں مداخلت کرتی ہے۔ اسے ایسی طاقت کے وجود پر شک ہے۔ اس لیے وہ خود کو اگنوسٹک کہتے ہیں۔ سبھی کہتے ہیں کہ سب سے بڑا مذہب اگر کوئی ہے تو وہ انسانیت ہے۔

بھارت کے ساتھ دنیا کے دیگر ممالک اوریہاں تک کہ کٹر اسلامی ملک مانےجانےوالے سعودی عرب، ایران اور پاکستان میں بھی سابق مسلمان (EXMUSLIMS) تیزی سے بڑھ رہے ہیں۔ ان کی بڑھتی ہوئی تعداد سے پریشان ایک مولانا کو کہنا پڑا کہ سابق مسلمانوں کا سونامی آنے والا ہے۔ چونکہ سابق مسلمان اپنی حفاظت کے خوف سے کھلے عام نہیں آتے، اس لیے کسی بھی ملک میں ان کی صحیح تعداد بتانا مشکل ہے۔ اس کے بعد بھی پیو (pew) کا سروے کہتا ہے کہ ان کی تعداد ہر جگہ بڑھ رہی ہے۔ اگرچہ امریکہ، یورپ میں سابق مسلمانوں کی اپنی تنظیمیں ہیں اور وہ اپنی تقریبات بھی کھلے عام منعقد کرتے ہیں، لیکناب یہ صورتحال دیگر ممالک اور بالخصوص اسلامی ممالک کے ساتھ ہندوستان میں یہ صورتحال ابھی تک پیدا نہیں ہوئی ہے۔ ہندوستان میں دوسرے مذاہب کے لوگ آسانی سے کہہ سکتے ہیں کہ وہ کسی خدائی اختیار کو نہیں مانتے اور وہ کسی مذہب کو نہیں مانتے، لیکن مسلمان (MUSLIM) ایسا کھل کر نہیں کہہ سکتے، کیونکہ انہیں اپنے معاشرے کے ان عناصر سے نمٹنا پڑتا ہے۔ جن کا عقیدہ ہے کہ اسلام چھوڑنے کی سزا موت ہے۔ اس کے باوجود کچھ سابق مسلم نوجوان اس لعنت کی پرواہ نہیں کر رہے ہیں۔ تسلیمہ نسرین کی طرح کچھ لوگوں نے سرعام خود کو سابق مسلمان کہنا شروع کر دیا ہے۔ خاص بات یہ ہے کہ ان میں سے کچھ لوگ کبھی ذاکر نائیک کے دیوانے تھے۔

تقریباً ایک سال پہلے ہندوستان میں ایسے مسلمانوں کی تعداد صرف دو سے تین تھی جو اپنے یوٹیوب (you tube) چینلز کو بطور سابق مسلمان چلا رہے تھے۔ ان میں چیف تھے شکیل پریم (Shakeel Prem) ، جو ترکشیل بھارت (Tarksheel Bharat)  کے نام سے اپنا یوٹیوب چینل چلاتے ہیں۔ اس کے علاوہ ایک ظفر ہیریٹک (zafar heretic) بھی تھے جو اسلامی تاریخ کے ساتھ قرآن (Quran)و حدیث (hadith) کا بھی علم رکھتا ہے۔ آج ایسے سابق مسلمانوں کی تعداد ایک درجن سے زائد ہے، جو اپنا یوٹیوب چینل چلا رہے ہیں۔ ان میں سچ والا،(sachawala) آزاد گراؤنڈ چینل(azad ground channel)، کہرام ،(kohram ex muslim) ساحل (Sahil ex muslim)، مرتد امام،(apostate imam) یاسمین خان،(yasmeen khan) فیض عالم (Faiz Alam - The Humanist Murtad) شامل ہیں۔ ان کے علاوہ ان کے حامی سلیمانی جلیبیہ(sulemani jalebiya) کے نام سے اپنا چینل چلاتے ہیں۔ ایسے لوگوں کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔ ایک زمانے میں ہندوستانی سابق مسلمان پاکستانی نژاد سابق مسلمان حارث سلطان اور غالب کمال سے رابطہ کیا کرتے تھے، جو بیرون ملک میں اپنا یوٹیوب چینل چلا رہے ہیں، لیکن کچھ عرصے سے ہندوستانی اور ان پاکستانی سابق مسلمانوں کے درمیان اختلافات پیدا ہو گئے ہیں۔ . حارث اور غالب نے اب ایسی عجیب و غریب دلیلیں دینا شروع کر دی ہیں کہ جس طرح اسلام میں حلالہ ہے اسی طرح ہندومت میں نیوگ بھی ہے۔

کچھ عرصے سے ہندوستان میں تقریباً ہر ماہ کوئی نہ کوئی ایکس مسلم اپنا یوٹیوب چینل لا رہا ہے۔ یہ سب قرآن و حدیث کے جانکار ہیں۔ اس کے علاوہ کچھ عربی زبان میں ماہر ہیں، جیسے سچ والا۔ ان کے ساتھی انہیں سچ گرو(SachGuru) بھی کہتے ہیں۔ وہ تقریباً تیس سال سے سعودی عرب میں رہے ہیں۔ اس دوران اس نے وہاں کی ایک مسجد(MOSQUE) میں نماز (namaz)بھی پڑھائی، لیکن اب وہ اپنے یوٹیوب چینل کے ذریعے اسلام کے عقائد پر سوال اٹھا رہے ہیں، جسے وہ انڈیا، پاکستان اور بنگلہ دیش جیسے ممالک کے مسلمانوں کو سمجھتے ہیں۔عربوں کی روحیں غلامی کی وجہ ہیں۔ . ان کا مقصد مسلمانوں کو اس فانی غلامی سے نکالنا اور بھائی چارے اور انسانیت کا پیغام دینا ہے۔ یہی پیغام دیتے ہوئے سابق مسلم ساحل ایک زمانے میں دعوتِ دین دیا کرتا تھا یعنی لوگوں کو اسلام (Islam)قبول کرنے کی ترغیب دیتا تھا، لیکن بعد میں وہ ایکس مسلم ہو گیا۔

اب وہ اپنے چینل کے ذریعے مسلم معاشرے کے لوگوں اور بالخصوص عالموں سے اپنے سوالات کے جوابات طلب کرتا ہے اور انہیں اپنے آپ کو غلط ثابت کرنے کا چیلنج دیتا ہے۔ وہ اپنے چینل پر گھنٹوں بحث کرتا ہے اور جھگڑے کرنے والوں کی بات تحمل سے سنتا ہے۔ وہ ان لوگوں کے سوالات کے جوابات بھی دیتا ہے جو اسے دھمکیاں دیتے ہیں۔ مرتد امام کو قرآن، حدیث پر بھی عبور حاصل ہے۔ وہ ذاکر نائیک (ZAKIR NAIK)  کی اسلامک ریسرچ فاؤنڈیشن (Islamic research foundation) میں کام کر چکے ہیں۔ اس وقت وہ لندن میں ہیں۔ ہندوستانی سابق مسلمانوں کو ہندوستان کے ساتھ ساتھ بنگلہ دیشی اور پاکستانیوں کو بھی سنتے ہیں اور ان سے سوال بھی کرتے ہیں۔ انہیں امریکہ، برطانیہ، کینیڈا، آسٹریلیا اور سعودی عرب میں ہندی -اردو بولنے والے بھی سنتے ہیں۔ تمام مذاہب اور برادریوں کے لوگ زیادہ ہیں، جو خود کو ناستک کے قریب پاتے ہیں یا کسی مذہب کو نہیں مانتے یا خدا کے وجود پر شک کرتے ہیں۔

گزشتہ 15 دنوں سے سچ والا، ساحل وغیرہ سے ناراض ایک پاکستانی محمد علی ان کے چینلز پر آ رہا ہے اور انہیں ان کاسر جسم سے الگ کرنے کی دھمکیاں دے رہا ہے۔ اس بنا پر کہ اس کا اسلام ایسا کہتا ہے۔ آزاد گراؤنڈ اور افراتفری بھی ایسی دھمکیوں کی وجہ سے ہو رہی ہے۔ کہرام اپنا چینل ڈسٹوپیا ( (dystopia to reason کے نام سے چلاتا ہے۔ جب آزاد گراؤنڈ کو دھمکیاں ملی کہ مرنے کے بعد اسے قبرستان میں دفن نہیں ہونے دیا جائے گا تو اس نے اپنے لیے الگ جگہ کا انتظام کیا یعنی اپنا قبرستان بنا لیا۔ ان تمام سابق مسلمانوں کا مطالبہ ہے کہ حکومت ان کی حفاظت کو یقینی بنائے اور دیکھے کہ ان کی آواز کو دبانے کی کوششیں کامیاب نہ ہوں۔ ہندوستانی سابق مسلم یوٹیوبرز کی آوازیں کس طرح متاثر ہو رہی ہیں اس کا ایک ثبوت یہ ہے کہ مولانا مفتی، جو اب تک ان کے سوالوں کا جواب دینے سے گریزاں ہیں، اب اس کے لیے تیار نظر آ رہے ہیں۔ حال ہی میں ساحل اور اس کے ساتھی ایڈم سیکر (adam seeker urdu) نے ایک مفتی فضل ہمدرد (Mufti Fazal Hamdard) سے بات کی۔ جلد ہی سچ والا مفتی یاسر ندیم الواجدی(Mufti Yasir Nadeem al Wajidi) سے بھی بات کر سکتے ہیں۔

Hindi Article: Indian Ex-Muslims Are Speaking Out and the Youth Have Started Leaving Islam असर करने लगी भारतीय एक्स मुस्लिमों की आवाज, तेजी से बढ़ रहे मजहबी कट्टरता छोड़ने वाले युवा

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/indian-ex-muslims-started-leaving-islam/d/125931

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..