New Age Islam
Mon Jan 17 2022, 03:22 AM

Urdu Section ( 7 Jan 2022, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

US Bans Chinese Forced Labour Products Made By Uyghur Muslims But Muslim Nations Remain Silent امریکہ میں ایغور مسلمانوں کے ذریعہ جبرا تیار کردہ چینی مصنوعات پر پابندی لیکن مسلم ممالک اب تک خاموش

اسلامی ممالک نے ایغور  معاملے پر مکمل خاموشی اختیار کی ہے۔

اہم نکات:

1.      سویڈن کے چرچ نے ایغور مسلمانوں کی جبری مزدوری کے خلاف آواز اٹھائی تھی۔

2.      پاکستان نے ایغور مسلمانوں کی جبری مزدوری کے معاملے میں چین کی حمایت کی۔

3.      امریکی کمپنیوں کو اس بات کی تصدیق کرنے کی ضرورت ہے کہ آیا چین کی کپاس کی مصنوعات ایغور مسلمانوں کی جبری مزدوری سے پاک ہیں۔

4.      اقوام متحدہ میں مسلم ممالک نے 2019 میں ایغور مسلمانوں کی جبری مزدوری کے معاملے میں چین کا ساتھ دیا تھا۔

۔۔۔۔

نیو ایج اسلام اسٹاف رائٹر

28 دسمبر 2021

امریکی صدر جو بائیڈن نے چین کے صوبے سنکیانگ کے ایغور مسلمانوں کی جبری مزدوری والی مصنوعات پر پابندی کے بل پر دستخط کر دیئے ہیں۔ اس بل کی منظوری کے بعد چین سے روئی اور روئی کی مصنوعات درآمد کرنے والی امریکی کمپنیوں کو تصدیق کرنی ہوگی کہ یہ ایغور مسلمانوں کی جبری مزدوری سے تیار کردہ مصنوعات تو نہیں ہیں جنہیں گزشتہ چھ سال سے صوبہ سنکیانگ کے حراستی مراکز میں رکھا گیا ہے۔ یاد رہے کہ چینی حکومت نے تقریباً 10 لاکھ ایغور مسلمانوں کو حراستی کیمپوں میں قید کر رکھا ہے جنہیں وہ ازسر نو تعلیمی مراکز کا نام دیتا ہے۔ مسلمانوں کو اپنا مذہب چھوڑنے اور مینڈارن اور کمیونسٹ آئیڈیالوجی سیکھنے کے لیے تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔ خواتین کو تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے اور انہیں بانجھ بنا دیا جاتا ہے۔ یہاں تک کہ ان کی عصمت دری کی جاتی ہے اور انہیں اسقاط حمل پر بھی مجبور کیا جاتا ہے۔

امریکا نے رواں سال جنوری میں چین کی جانب سے اویغوروں پر ظلم و ستم کو نسل کشی قرار دیا تھا اور فروری 2022 میں ونٹر اولمپکس کے بائیکاٹ کا مطالبہ کیا تھا۔ اس سے قبل امریکا چین سے ٹماٹر اور کپاس کی مصنوعات درآمد کرتا تھا۔

ایغور مسلمان کپاس کے باغات اور فیکٹریوں میں بغیر اجرت کے کام کرنے پر مجبور ہیں۔ اطلاعات کے مطابق تقریباً نصف ملین ایغور مسلمان کپاس کے باغات میں کام کرنے پر مجبور ہیں۔ ان کی بنی ہوئی کپاس کی مصنوعات کئی ممالک کو بیچی کی جاتی ہیں اور چینی حکومت اویغور مسلمانوں کے انسانی حقوق کی قیمت پر بھاری منافع کماتی ہے۔

امریکہ نے یہ قدم جنوری 2022 میں منعقد ہونے والے ونٹر اولمپکس سے پہلے اٹھایا ہے تاکہ چین پر دباؤ ڈالنے کی کوشش کی جائے کہ چینی حکومت ایغور مسلمانوں کے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو روکے۔ بدقسمتی سے اسلامی ممالک نے اس معاملے پر خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔ یہ بھی خیال رہے کہ چینی اشیاء پر پابندی لگانے پر کسی اسلامی ملک نے امریکا کی تعریف نہیں کی ہے۔

اس کے برعکس بعض اسلامی ممالک نے چین کے مسلمانوں پر مظالم کا دفاع کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ قید کی امریکی تھیوری پر یقین نہیں رکھتے۔ مثال کے طور پر، پاکستانی وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ وہ نہیں مانتے کہ چین کی کپاس کی مصنوعات ایغور مسلمانوں کی جبری مزدوری سے تیار کردہ مصنوعات ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ چین کے خلاف امریکہ اور یورپی ممالک کا پروپیگنڈا ہے۔ انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ چین کے ساتھ کپاس کی تجارت بلا روک ٹوک جاری رہے گی۔

پاکستانی تجارتی اداروں نے اس بات پر بھی زور دیا ہے کہ 'امریکی پروپیگنڈے' کے باوجود چین کے ساتھ ان کی تجارت جاری رہے گی۔ خیال رہے کہ پاکستان اس سے قبل چین میں اویغور مسلمانوں پر کسی بھی قسم کے جبر و تشدد کی تردید کرتا رہا ہے۔ عمران خان نے دو سال قبل ترکی کے ایک ٹی وی چینل سے بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ انہیں ایغور مسلمانوں کے معاملے کا کوئی علم نہیں۔ سعودی عرب نے یہاں تک کہہ دیا کہ چین کو دہشت گردی کی روک تھام کے لیے اویغور کے خلاف کوئی بھی قدم اٹھانے کا پورا حق ہے۔

یہ اسلامی ممالک اور اسلامی تنظیموں کے منہ پر ایک زوردار طمانچہ ہے جو توہین رسالت کے معاملے پر واویلا مچاتے ہیں اور غیر اسلامی حکومتوں کے خلاف تجارتی بائیکاٹ کرتے ہیں۔ مثال کے طور پر، فرانسیسی صدر میکرون کے اس بیان کے بعد کہ اسلام بحران کا شکار ہے، اسلامی تنظیموں نے فرانسیسی مصنوعات کے بائیکاٹ کا مطالبہ کیا تھا۔ پاکستان اور بنگلہ دیش میں پرتشدد مظاہرے ہوئے جن میں مظاہرین کے ہاتھوں پولیس اہلکار ہلاک ہوئے اور سرکاری املاک کو نقصان پہنچا۔

لیکن چین کی طرف سے ایغور مسلمانوں پر ظلم و ستم اور جبری مزدوری کا معاملہ ان کے ضمیر کو جھنجھوڑتا نہیں ہے۔ سویڈن کا چرچ اویغوروں کے ظلم و ستم سے پریشان تھا اور درآمد کنندگان کو متنبہ کیا کہ اگر ان مصنوعات میں جبری مزدوری شامل ہے تو چین کے ساتھ تجارت کرنے سے گریز کریں۔

تاہم، مسلم ممالک اور اسلامی تنظیموں نے ایغور مسلمانوں کی جبری مزدوری کے خلاف کوئی فتویٰ جاری نہیں کیا ہے حالانکہ قرآن میں جبری مزدوری کی اجازت نہیں ہے۔ قرآن مسلمانوں کو قیدیوں اور غلاموں کے ساتھ منصفانہ سلوک کرنے کا حکم دیتا ہے اور کسی کو بھی بغیر کسی وجہ کے کسی فرد کو قید میں رکھنے کی اجازت نہیں دیتا۔ ابھی تک مصر اور سعودی عرب جیسے ممالک کی اسلامی تنظیموں اور فتویٰ جاری کرنے والے اداروں نے چین کے اقتصادی بائیکاٹ کا کوئی فتویٰ جاری نہیں کیا ہے۔

حتیٰ کہ ترک صدر اردگان نے بھی امریکی اقدام کی تعریف میں اور اس معاملے پر اپنے ملک کے موقف کا اظہار کرتے ہوئے کچھ نہیں کہا ہے۔ قبل ازیں اردگان نے اویغور مسلمانوں کے لیے تشویش کا اظہار کیا تھا اور چین کے خلاف احتجاج بھی کیا تھا جس کی وجہ سے دونوں ممالک کے درمیان سفارتی تعلقات میں تلخی پیدا ہوئی تھی۔ اویغور لوگ مدد کے لیے ترکی کی طرف دیکھتے ہیں کیونکہ وہ ترک نسل سے تعلق رکھتے ہیں۔ 2009 میں اردگان نے سنکیانگ کا دورہ بھی کیا اور ایغور مسلمانوں کے ظلم و ستم کو 'نسل کشی' قرار دیا۔ لیکن اب بہت کچھ بدل چکا ہے۔

ایسا لگتا ہے کہ اردگان نے اقتصادی اور سیاسی وجوہات کی بنا پر ایغور مسلمانوں کو ان کی قسمت پر بے یار و مددگار چھوڑ دیا ہے۔ اس سے پہلے اویغور مسلمانوں کو ترکی میں پناہ اور رہائشی اجازت نامے دیئے جاتے تھے لیکن اب ایغور مسلمانوں کے گھروں پر ہمیشہ چھاپے مارے جاتے ہیں اور انہیں واپس چین بھیج دیا جاتا ہے۔

ایسا اس لیے ہے کہ اردگان کے اسلامی دنیا کا ایک طاقتور لیڈر بننے کا خواب رکھتے ہیں اور انہیں ترکی میں اپنی گرفت مضبوط کرنے کی بھی ضرورت ہے۔ ڈوبتی ہوئی معیشت نے انہیں روسی اور چینی حمایت کی طرف متوجہ کیا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اویغور مسلمانوں کو ترکی سے اس قسم کی حمایت نہیں ملتی جس طرح انہیں پہلے حاصل تھی۔

مصر یا سعودی عرب کے مفتی اعظم نے ایسا کوئی فتویٰ جاری نہیں کیا ہے جس میں ایغور مسلمانوں پر ہونے والے ظلم و ستم اور ایغور مسلمانوں کی جبری مزدوری کی مذمت کی گئی ہو۔ اسلامی ممالک نے اویغور مسلمانوں کو جبری مزدوری سے بچانے کے لیے چینی کپاس کی مصنوعات پر پابندی نہیں لگائی ہے اور نہ ہی انھیں آزاد کرانے کی کوشش کرنے یا انھیں پناہ دینے کی بات کی ہے۔ اسلامی ممالک کے پاس ایغور مسلمانوں کے مسائل کے حل کے لیے کوئی منصوبہ نہیں ہے۔ اس کے بجائے، انہوں نے ان پر ہونے والے ظلم و ستم پر آنکھیں بند کر لی ہیں۔ اس سے بھی بڑی بات یہ ہے کہ وہ اس معاملے میں چین کا دفاع کرتے ہیں۔

ایغور ظلم و ستم کے معاملے پر مسلم ممالک کی بے حسی کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ 2019 میں جرمنی نے اقوام متحدہ کی حقوق انسانی کونسل کو ایک خط بھیجا جس میں نسلی اقلیتوں پر چینی ظلم و ستم کی مذمت کی گئی تھی اور چین سے مطالبہ کیا گیا تھا کہ وہ نسلی اقلیتوں کے انسانی حقوق کا احترام کرے۔ اس خط کی حمایت اور دستخط 39 ممالک نے کیے جن میں سے زیادہ تر ممالک غیر اسلامی تھے۔ اس خط کے حق میں دستخط کرنے والے ممالک کی فہرست درج ذیل ہے۔

البانیہ، آسٹریلیا، آسٹریا، بیلجیم بوسنیا اور ہرزیگووینا، بلغاریہ، کینیڈا، کروشیا، ڈنمارک، ایسٹونیا، فن لینڈ، فرانس، جرمنی، ہیٹی، ہونڈوراس، آئس لینڈ، آئرلینڈ، اٹلی، جاپان، لٹویا، لیچٹنسٹائن، لتھوانیا، لکسمبرگ، مارشال جزائر ، موناکو، ناورو، نیدرلینڈز، نیوزی لینڈ، شمالی مقدونیہ، ناروے، پالاؤ، پولینڈ، سلوواکیہ، سلووینیا، اسپین، سویڈن، سوئٹزرلینڈ، برطانیہ، اور امریکہ۔

آپ دیکھ سکتے ہیں کہ تمام اسلامی ممالک اس فہرست سے غائب ہیں۔ دوسری جانب کیوبا نے سنکیانگ میں چینی پالیسیوں کی حمایت میں ایک خط بھیجا تھا جس کی 45 ممالک نے حمایت اور دستخط کیے تھے۔ چین کے حامیوں کی فہرست درج ذیل ہے۔

انگولا، بحرین، بیلاروس، برونڈی، کمبوڈیا، کیمرون، وسطی افریقی جمہوریہ، چین، کوموروس، کانگو، کیوبا، ڈومینیکا، مصر، استوائی گنی، اریٹیریا، گبون، گریناڈا، گنی، گنی بساؤ، ایران، عراق، کریباتی، لاؤس ، مڈغاسکر، مراکش، موزمبیق، میانمار، نیپال، نکاراگوا، پاکستان، فلسطین، روس، سعودی عرب، جنوبی سوڈان، سری لنکا، سوڈان، شام، تنزانیہ، ٹوگو، یوگانڈا، متحدہ عرب امارات، وینزویلا، یمن، اور زمبابوے۔

سنکیانگ میں چینی پالیسیوں کی حمایت کرنے والے ممالک کی فہرست میں چند ممتاز طاقتور اسلامی ممالک شامل ہیں۔ ایغور مسلمانوں پر چینی ظلم و ستم کے خلاف مذمت اور احتجاج کرنے کے بجائے، انہوں نے اپنے اقتصادی اور سیاسی مفادات کے لیے چین کا دفاع کیا جبکہ عیسائی اور غیر مسلم ممالک نے چین کی ایغور مسلمانوں پر ظلم و ستم اور سنکیانگ میں نسلی اقلیتوں کے خلاف اس کی مجموعی پالیسی کی مذمت کی۔

اس سے ایغور مسلمانوں کے معاملے پر اسلامی ممالک کے انتہائی پریشان کن رویے کی طرف اشارہ ملتا ہے۔ یہ صرف غیر مسلم اور عیسائی ممالک اور معاشرے ہیں جنہوں نے ایغور مسلمانوں کے حق میں بات کی ہے جبکہ اسلامی ممالک اور اسلامی تنظیموں نے سیاسی وجوہات کی بنا پر خاموش رہنے کا فیصلہ کیا ہے۔

English Article: US Bans Chinese Forced Labour Products Made By Uyghur Muslims But Muslim Nations Remain Silent

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/us-ban-chinese-forced-labour-uyghur/d/126110

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..