New Age Islam
Fri Aug 19 2022, 08:09 AM

Urdu Section ( 29 March 2022, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Minorities in Sindh of Pakistan under Constant Fear of Security and Survival: Report سندھ کی اقلیتیں پاکستان میں خوف کے سائے میں رہنے پر مجبور۔۔رپورٹ

ویب مانیٹرینگ

30 مارچ،2022

سندھ۔29 مارچ۔ ایم این این۔ پاکستان کے صوبہ سندھ میں اقلیتیں نفرت انگیز تقاریر کے نفسیاتی اور سماجی ومعاشی اثرات کی وجہ سے اپنی سلامتی اوربقا کے لئے مسلسل خوف میں جی رہے ہیں۔ نیشنل کمیشن فار جسٹس اینڈ پیس، جو کیتھولک بشپس کانفرنس کی ایک لازمی باڈی ہے، نے یہ مطالعہ کیا، جس کا عنوان تھا نفرت کی تقریر: ایک لطیف امتیاز!دی نیوز انٹر نیشنل کی رپورٹ کے مطابق، سندھ میں مذہبی نفرت انگیز تقاریر کے رجحانات نے رپورٹ کیا کہ عیسائی، ہندو، سکھ، شیعہ اور احمدی کمیونٹیز کو مسلسل خطرات لاحق ہے۔ مطالعہ نے مطالبہ کیاکہ ریاست مذہبی خطبات، تقاریر اور مدارس کے نصاب کے لئے نگرانی، ضابطے اور معیارسازی کے طریقہ کار کو متعارف کرائے، اور مساوات اورعدم امتیاز پر ایک جامع پالیسی بنائے۔ اسٹیڈی کے مطابقیہ ثبوت پر مبنی دستاویز نظر انداز کی گئی نفرت انگیز تقریر کو پہچاننے کے لئے ایک ہتھیار کے طور پر کام کرتی ہے اور معاشرے پر نفرت انگیز تقریر کے نقصان دہ اثرات کا بھی جائزہ لیتی ہے۔ دی نیوز کی رپورٹ کے مطابق تحقیق نے اپنے نتائج میں کہا کہ نفرت انگیز تقریر کو پاکستان میں ایک معمول کے طور پر قبول کیا جاتاہے، اور اس کے فوری اثرات میں سے ایک یہ ہے کہ لوگ خود اعتمادی کو کھو دیتے ہیں۔ رپورٹ نے مشاہدہ کیا کہ متاثرین میں احساس کمتری کے بڑھتے ہوئے،وہ خود کو الگ تھلگ کرنے کا رحجان رکھتے ہیں، جو ان کی ذہنی صحت کو مزید خراب کرنے کی طرف لے جاتاہے۔ تحقیق میں بتایا گیا کہ خواتین عوامی علاقوں میں نفرت انگیز تقریر کا شکار ہوتی ہیں، کیونکہ مرد غالب معاشرے میں خواتین ہونے کی وجہ سے وہ ان کی جنس کی بنیاد پر پہلے سے ہی کمزور ہوجاتی ہیں۔

 مذہبی اقلیتوں سے تعلق رکھنے والی خواتین کو ان کے روایتی لباس کی وجہ سے عوام میں آسانی سے پہچانا جاتاہے۔ مثال کے طور پر، سندھ میں ہندو خواتین عام طور پر گھاگرا چولی پہنتی ہیں، جو ان کا روایتی لبا س ہے۔ دی نیوز کی رپورٹ کے مطابق، مطالعہ نے سندھ میں جبری تبدیلی کو جرم قرار دینے کا بھی مطالبہ کیا اور سیاسی جماعتوں سے کہا کہ وہ قانون سازی کے اس ٹکڑے کو منظور کریں جس کی صوبائی اسمبلی میں نومبر 2016 میں کوشش کی گئی تھی لیکن مذہبی جماعتوں کے دباؤ کی وجہ سے ناکام ہوگئی تھی۔ اس نے پاکستان بھر میں لڑکوں او رلڑکیوں دونوں کے لیے شادی کی قانونی طور پر درست عمر 18 سال مقرر کرنے کا بھی مطالبہ کیا، اور سینئر سول ججوں سے کہا کہ وہ آزاد مرضی، رضا مندی، عمر کی حقیقت کی درستگی اور اس میں شامل فریقین کی ازدواجی حیثیت کی موجودگی کو یقینی بنائیں۔تحقیق میں یہ بھی بتایا گیا کہ طبی اداروں میں بھی امتیازی سلوک روا رکھا جاتاہے، جہاں مذہبی اقلیتوں کے ارکان کو صرف ان کے عقیدے یا عقیدے کی وجہ سے طبی امداددینے سے انکار کیا جاتاہے، اور انسانی حقو ق کی ایسی خلاف ورزیوں کے لئے کسی کو ذمہ دار نہیں ٹھہرایا جاتاہے۔ نفرت انگیز تقاریر کے رجحانات کی نگرانی کرتے وقت، نمایاں مشاہدات میں سے ایک یہ ہے کہ مذہبی اقلیتی برادریاں مسلسل خراب ذہنی صحت، ان کی ترقیوں کے خلاف جان بوجھ کرکی جانے والی کوششوں، تعلیمی اداروں سے اقلیتی طلباء کی تعلیم چھوڑ نے کی بلند شرح، تحفظ کی کمی اور نظر اندازی کی وجہ سے معاشی ترقی میں پیچھے ہیں۔

30 مارچ، 2022، بشکریہ: روز نامہ چٹان، سری نگر

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/minorities-sindh-pakistan-security-survival/d/126684

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..