New Age Islam
Tue Aug 16 2022, 02:19 PM

Urdu Section ( 24 Feb 2022, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Maulana Azad And Abdul Ghafur Shahbaz Gave Constructive Shape To Urdu Literary Journalism مولانا آزاد اور عبدالغفور شہباز نے اردو ادبی صحافت کو تعمیری شکل دی

سہیل ارشد، نیو ایج اسلام

22 فروری 2022

نور بصیرت اور لسان الصدق اپنی نوعیت کے منفرد ادبی جرائد تھے۔

اہم نکات:

1.    عبدالغفور شہباز نے اپنے رسالے میں تاریخی اور سماجی مسائل کو بھی شامل کیا

2.    مولانا آزاد نے اپنے رسالے میں سماجی اور سیاسی مسائل کو بھی شامل کیا

3.    انہوں نے ادبی رسائل کو سماجی اور مذہبی اصلاح کے لیے ایک مؤثر آلہ کار مانا

-----

19ویں صدی کے آخر تک اردو ادبی صحافت پروان نہیں چڑھی تھی۔ ادبی رسائل صرف گلدستوں تک محدود تھے جن میں صرف معاصر شاعروں کی غزلیں شائع ہوا کرتی تھیں۔ ایسے گلدستے لکھنؤ، کلکتہ، بنارس، کانپور، حیدرآباد، آگرہ، متھرا اور دیگر شہروں سے شائع ہوتے تھے۔ ان دنوں اردو اخبارات اپنے ادبی ضمیمہ میں غزلیں یا نظمیں ہی چھاپتے تھے۔ ادبی رسائل کا تصور اس لیے نہیں فروغ نہیں پایا کہ ادب کو علم کا ایک باضابطہ الگ شعبہ نہیں سمجھا جاتا تھا۔

گلدستوں کی روایت کے رد عمل میں، جو صرف شاعری شائع کرتے تھے، ادبی نثر کے رسائل کے خیال نے جنم لیا اور جولائی 1884 میں ماہنامہ نور بصیرت کے نام سے پہلا ادبی رسالہ جاری ہوا۔

یہ اردو کا پہلا ادبی رسالہ تھا جسے ایک تجربہ کار صحافی اور شاعر عبدالغفور شہباز نے شائع کیا تھا۔ وہ اردو اخبار دارسلطنت کے ایڈیٹربھی تھے اور لکھنؤ کے اودھ پنچ نامی طنزیہ میگزین کے نمایاں قلم کار تھے۔ نورِ بصیرت بنگال سے شائع ہوئی۔ اس رسالے کے ذریعے جناب شہباز نے اردو میں سنجیدہ ادبی صحافت کی بنیاد ڈالی۔

آج کے اردو رسالوں کے برعکس نور بصیرات میں ادب کے علاوہ تاریخ، معاشرت، اخلاقیات اور فنون لطیفہ پر مختلف کالم ہوتے تھے۔ اس میگزین کے اجرا کے پیچھےجناب شہباز کے ذہن میں جو مقصد تھا وہ اردو بولنے والے طبقے میں نہ صرف ادب کے ذوق بلکہ دیگر فنون لطیفہ کو بھی فروغ دیناتھا۔ وہ مسلمانوں کو دنیا کی سماجی اور سیاسی پیش رفت سے بھی آگاہ کرنا چاہتے تھے۔ وہ یہ بھی چاہتے تھے کہ ان کی قوم علم کے تمام شعبوں میں مغربی اور مشرقی ترقی کا تقابلی جائزہ لے۔ ادب کے بارے میں ان کا نظریہ یہ تھا کہ وہ معاشرے سے کٹ کر معاشرے کی ترقی میں کوئی تعمیری کردار ادا نہیں کر سکتا۔ اس طرح نورِ بصیرت اردو ادبی صحافت کا سرخیل ثابت ہو جس نے مولانا عبدالکلام آزاد کے ادبی رسالے لسان الصدق کے لیے راہ ہموار کی۔

لسان الصدق نور بصیرت کے بعد شائع ہوا تھا اور ظاہر ہے کہ مولانا آزاد جناب عبدالغفور شہباز کے رسالے سے متاثر تھے کیونکہ لسان الصدق کو نور بصیرت کے خطوط پر مرتب کیا گیا تھا کیونکہ اس وقت اردو میں کوئی دوسرا ادبی رسالہ موجود ہی نہیں تھا۔ اس میگزین میں ملتے جلتے شامل کیے گئے تھے۔ لسان الصدق کی اشاعت کے پیچھے عبدالغفور شہباز کی طرح مولانا آزاد کے بھی کچھ مقاصد تھے۔ چنانچہ انہوں نے لسان الصدق کے چار مقاصد بیان کیے:

1) سماجی اصلاح

2) اردو کی ترقی

3) تنقیدی (ادبی)

4) ذوقِ علم کا فروغ

بعد میں مولانا نے اس میں ایک اور مقصد --- فکری اصلاح کا بھی اضافہ کیا۔

لہٰذامولانا آزاد کا مقصد اردو داں طبقے میں انسانی اور اخلاقی اقدار، سائنسی اور تاریخی علم کے ساتھ ساتھ ادبی ذوق کو بھی فروغ دینا چاہتے تھے۔ انہوں نے اپنے رسالہ کے تمام مقاصد کو درج ذیل الفاظ میں بیان کیا:

"علم کے ذوق سے ہماری مراد اخبارات کا مطالعہ، علمی رسائل کی کثرت، تعلیمی پروگراموں اور ادبی مباحث میں شرکت ہے جو پنجاب سے باہر شاذ و نادر ہی ہوتے ہیں۔"

فکری اصلاح کے بارے میں انھوں نے لکھا:

لسانالصدق کے مقاصد میں ایک اور مقصد کا اضافہ کیا جا رہا ہے اور وہ ہے فکر کی اصلاح جس کے لیے زیادہ تفصیل کی ضرورت نہیں ہے۔ مقصد صرف یہ ہے کہ ان مذہبی، تاریخی اور علمی غلط فہمیوں کو دور کیا جائے جو دلائل اور منطق کے ذریعےفطرت ثانیہ بن چکے ہیں۔ معاشرے کو اندھیروں سے نکالنا تاکہ آنے والی نسلیں ان کمزوریوں سے محفوظ رہیں اور مستقبل فریب کے اندھیروں سے پاک ہو۔"

مولانا آزاد اردو میں حقیقی ادبی تنقید کا تصور بھی پیدا کرنا چاہتے تھے۔ وہ اپنے زمانے کی ادبی تنقید کے معیارات سے مطمئن نہیں تھے۔ چنانچہ انھوں نے ادبی تنقیدپر اپنے نقطہ نظر کے بارے میں لکھا کہ۔

"انگریزی میں کسی کتاب کا جائزہ لینے کا مطلب کتاب کی خوبیوں اور خامیوں پر بحث کرنا ہے لیکن اردو میں تنقید کا مطلب ہمیشہ تقریظ سمجھا گیا ہے جو کہ جائزے کے اصل مقصد سے خالی ہے۔ تقریظ کا مطلب عام طور پر کسی کتاب کی تعریف کرنا ہوتا ہے جب کہ جائزہ میں کتاب کی خوبیوں اور خامیوں دونوں کی نشاندہی کی جاتی ہے۔ اکثر نامور مصنفین کی تقریظ کتاب کے آخر میں شائع کی جاتی ہیں۔ اس قسم کی تحریریں تنقید کے عمومی اصولوں سے خالی ہوتی ہیں۔"

اس اقتباس سے ادبی تنقید کے بارے میں مولانا آزاد کا نظریہ واضح ہوتا ہے۔ لہٰذامولانا آزاد اپنے رسالے کے ذریعے اردو ادبی تنقید کو انگریزی تنقید کے ہم پلہ بنانا چاہتے تھے۔

لہٰذا یہ بات عیاں ہے کہ عبدالغفور شہباز اور مولانا آزاد نے 19ویں صدی میں اردو ادبی صحافت کی شکل بدل دی تھی۔ ان کا خیال تھا کہ ادب کو سماجی اور سیاسی بیداری پیدا کرنے اور معاشرے میں فکری اصلاح میں ایک فعال اور تعمیری کردار ادا کرنا چاہیے۔

لیکن رفتہ رفتہ ادبی صحافت کا اصول بدلتا گیا اور ادبی رسائل نے سماجی، سائنسی اور تاریخی مضامین کو اپنے مندرجات سے خارج کرنا شروع کر دیا۔ ادبی صحافت میں صرف ادبی مواد شائع ہونے لگے اور سماجی مسائل پر بحث ناپید ہو گئی ۔ ادبی رسائل میں صرف کہانیاں، شاعری اور ادبی تنقید شائع ہونے لگی۔ یوں ادبی رسائل صرف شاعروں اور ادیبوں تک محدود ہو کر رہ گئے۔ چنانچہ ان سے عام لوگوں کی دلچسپی رفتہ رفتہ ختم ہوتی گئی۔ اس سے اردو ادب میں قارئین کا بحران پیدا ہو گیا۔

یہ بحران جدیدیت کے ادبی نظریہ کی آمد سے بڑھ گیا جسے اکثر اردو شاعروں اور افسانہ نگاروں نے جدیدیت کی اصل روح اور فطرت کو سمجھے بغیر ایک فیشن کے طور پر اپنا لیا۔ اس سے اردو میں بیہودہ ادب کی تخلیق ہوئی۔ عام اردو قارئین اس میں شائع ہونے والی ناقابل فہم شاعری اور افسانوں کی وجہ سے ادب سے پوری طرح دلچسپی کھو بیٹھے۔

اگرچہ 80 کی دہائی میں اردو میں مابعد جدیدیت کے آغاز کے ساتھ ہی، اردو ادب اصلاح شدہ حقیقت پسندی کی طرف لوٹ آیا ہے، لیکن ادبی رسائل اب بھی خالص ادبی مواد تک ہی محدود ہیں اس لیے صرف شاعر اور ادیب ہی ادبی رسالے پڑھتے ہیں۔ عبدالغفور شہباز اور مولانا آزاد کا مشنری جوش ان رسالوں سے بالکل غائب ہے۔ اردو ادب جمود کا شکار ہے اور کسی ایسے انقلابی ادب کا انتظار کر رہا ہے جو اسے دوبارہ زندہ کر کے عام لوگوں میں مقبول بنا سکے۔

----

English Article: Maulana Azad And Abdul Ghafur Shahbaz Gave Constructive Shape To Urdu Literary Journalism

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/maulana-azad-abdul-ghafur-shahbaz-urdu-literary-journalism/d/126447

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..