New Age Islam
Mon Sep 21 2020, 12:15 PM

Urdu Section ( 2 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

The War Message Against Dictatorship Continues To This Day آمریت کے خلاف جنگ کا پیغام آج بھی قائم ہے

By Zafar Agha

(Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk)

“Don’t you perceive that the truth does not reign now? Don’t you see that nobody is ashamed of his sins and wrongdoings? The true believer is one who persists on the path of truth and is present before the Almighty God without any fear.  For me, there is martyrdom, not death because to live under oppression is a matter of shame and indignity.”

These are the excerpts of the speech delivered by Hadhrat Hussain before his relatives and companions on the tenth night of Muharram. After that he had put out the lamp and said to them, “ Those who agree with my views can stay with me to attain martyrdom along with me and those who do not can go in the darkness of night (unnoticed).

I am presenting this excerpt of the Hussaini speech because it has the same relevance today as it had fourteen years ago when Hadhrat Imam Hussain had delivered it under the seige of the Yazid’s army. The most important aspect of this speech is not that Hadhrat Imam prefers death to life for the survival of truth because this aspect of Hadhrat Imam’s martyrdom has been discussed since the tragedy of Karbala occurred. In my humble opinion, the universal significance of the speech lies in two other points in it. Firstly, the tone of Hadhrat Imam’s speech possesses great importance. The merit of the speech is that its tone is very democratic. In other words, Hadhrat Imam is not inviting his relatives and companions to embrace death. He is only stating a universal truth which every individual has accepted since day one and will do till eternity and the universal truth is that whenever truth faces a crisis, merely raising one’s voice is not enough, but if necessary one should not hesitate to even lay down his life to protect the truth. This aspect of the martyrdom of Hadhrat Imam Hussain has been pointed out before but the his  democratic temperament which is evident in the excerpt probably has not been discussed before.  In this speech Hadhrat Imam Hassain is not asking anyone to lay down his life along with him for the sake of truth. He is stating only two points: Firstly he is saying that the truth is in danger in the age he is living and that a true believer should be in search of truth in these circumstances. Then about himself he says that in these circumstances, death is synonymous with martyrdom and tolerating tyranny in silence is shameful. After this he permits his relatives and companions to leave him at the mercy of Yazid’s army and go.

In Imam’s act there is no pressure on anybody. Neither there is any request to anybody to help him in his defense of truth. He is only stating the situation and that he is willing to sacrifice his life to defend the truth. In other words, he is giving every one present there the democratic right to decide for himself. This democratic way of life was envisaged by Imam Hussain in an age 1400 years ago when the democratic way of life was simply not possible. By giving the democratic rights to people 14 centuries ago to take their own decisions showed that if the common issues are resolved in a democratic way, then the human beings can survive the Yazidi or tyrannical rule. The most important aspect of Imam Hussain’s sacrifice was that he was fighting against the dictatorial rule of Yazid. His fight or opposition was on the ground that any ruler cannot be allowed to seek allegiance of people by force and if he does so he will be called a dictator and his rule will be a dictatorship or autocracy. The opposition of the oppression and tyranny under such dictatorship or autocracy will be truth and it is better to lay down one’s life in such opposition. In other words, the purpose of Imam Hussain’s martyrdom is the opposition of dictatorship in every age. But no opposition should be in a dictatorial manner ( as is being done in the form of terrorism today) as the dictatorship of the time can be fought better on democratic principles. Imam Hussain’s belief in this point of view was so firm that though he impressed the significance of martyrdom on his relatives and companions on the night of Aashura, he did not pressurize anyone to embrace martyrdom along with him. If he too had adopted the same dictatorial attitude as the Yazid had, the difference between Yazid and him would have been blurred.  That is the reason; Imam Hussain is respecting the democratic values in his struggle against dictatorship till his martyrdom.

The other important aspect of Imam Hussain’s speech, in my humble opinion is that in his entire speech he does not mention Islam. In my humble opinion, Imam Hussain does this very consciously as in his view, the incident of Karbala was not the defense of Islam alone. The Imam had the confrontation between the truth and the evil in all the ages to come in mind because dictatorship is a curse that the followers of any religion in any society and in any age might be inflicted with. The curse might not be limited to the Muslims. That was the reason that when the Imam raised his voice against dictatorship, he did not confine it within the circle of Islam but he was setting the precedent of a battle which the human race might have to fight in any society and in any age to come. He also had the belief that in the fight against the dictatorship, merely the weapons of war would not be of any use but the spirit of sacrifice would be the most effective strategy.Hadhrat Hussain not only attained victory over the dictatorship of his time by sacrificing his life but also presented a unique way of fighting against dictatorship in the times to come that is still valid.

But unfortunately, the Islamic world today is swamped by dictators. Kingdoms and military dictatorships are at the helm. Probably that is the reason behind the backwardness of the Muslims the world over. The voice of Muslims has become a cry in the wilderness not only in the international arena but in the domestic level as well. On the contrary, the countries that run on democracy are progressing and the people there are happy. That’s why the message of Hussain is as much effective for the Islamic world today as was in the dictatorship 14 centuries ago.

Therefore, merely shedding tears on the martyrdom of Imam Hussain is not a desirable act but it is more important to act on his message by realizing its significance.

URL: https://newageislam.com/urdu-section/the-war-message-against-dictatorship-continues-to-this-day--آمریت-کے-خلاف-جنگ-کا-پیغام-آج-بھی-قائم-ہے/d/3871

 

ظفر آغا

کیا تم کو نظر نہیں آتا کہ حق کا اب دور دورہ نہیں رہا ۔ کیا تم کو یہ نہیں دکھائی دے رہا ہے کہ اس دور میں غلطیوں اور گناہ پر کوئی نادم نہیں ہوتا ۔ سچا ایمان والا وہی ہے، جو حق پر گامزن ہو او ربے خوف وخطراپنے پرور دگار کی بارگاہ  میں حاضر رہے۔ میرے لیے (حق کے لیے) موت نہیں ، بلکہ شہادت ہے، کیونکہ ظلم کے سائے میں جینا اور زندہ رہنا باعث شرم وباعث ذلت ہے۔

یہ اس تقریر کے اقتباس ہیں ، جو امام حسین نےشب عاشور اپنے اصحاب واقربا کو دی تھی اور پھر اس کے بعد امام حسین نے شمع بجھا کر کہا تھا کہ جو میرے خیالات سے متفق ہو وہ جام شہادت نوش کرنے کو میرے ساتھ ٹھہر سکتا ہے اور جو میری باتوں سےمتفق نہ ہو وہ اس رات کے اندھیرے میں جاسکتا ہے۔

میں اس حسینی ماہ محرم میں امام حسین کی اس تقریر کا اقتباس اس لیے پیش کررہاہوں کہ اس تقریر کی افادیت آج بھی وہی ہے جو آج سے چودہ سو سال قبل اس وقت تھی کہ جب امام حسین نے یزیدی فوج کے نرغے میں یہ  تقریر کی تھی۔ اس تقریر کا سب سے اہم نکتہ محض یہ نہیں ہے کہ امام حسین حق کی بقا کے لیے زندگی پر موت کو ترجیح دے رہے ہیں۔ شہادت امام حسین کی اس فضیلت کا ذکر تو واقعہ کربلا کے بعد سے آج تک علما ئے کرام کرتے چلے آرہے ہیں۔میری ناقص رائے میں کہ اس تقریر کی آفاقی افادیت اس کے دو دیگر پہلوؤں میں مضمر ہے۔ اولاً ،امام حسین کی اس تقریر کا لب و لہجہ بے انتہا اہمیت کا حامل ہے۔ اس تقریر کا کمال یہ ہے کہ اس کا لہجہ انتہائی جمہوری ہے۔ یعنی امام حسین اپنے اصحاب و اقربا میں سے کسی کو موت کی دعوت نہیں دے رہے ہیں ۔ وہ محض ایک آفاقی حقیقت بیان فرمارہے ہیں جو ہر کس وناکس ازل سے ابد تک تسلیم کرتاہے اور وہ آفاقی حقیقت یہ ہے کہ جب کبھی حق خطرے میں پڑجائے تو اس کے لیے محض آواز اٹھانا ہی کافی نہیں ہے، بلکہ اگر ضرورت ہوتو حق کی بقا کے لیے اپنی جان بھی قربان کردینی چاہئے۔شہادت امام حسین کے اس پہلو کا ذکر ہمیشہ سے ہوتا رہا ہے ، لیکن امام حسین کے جمہوری مزاج کا ذکر غالباً اس سے پہلے کبھی نہیں ہوا ،جس کی جھلک امام حسین کی تقریر سے عیاں ہے۔ امام حسین اس تقریر میں کسی سے یہ نہیں کہہ رہے ہیں کہ تم میرے ساتھ حق کی بقا کے لیے جان دے دو ۔ وہ اس تقریر میں محض دو باتیں فرمارہے ہیں ۔ا ولاً وہ لوگوں سے کہہ رہے ہیں کہ جس دور میں وہ زندہ ہیں اس دور میں حق خطرے میں ہے اور وہ یہ بھی فرماتے ہیں کہ ایک حق پر چلنے والے بندے کو ان حالات میں حق کی تلاش ہونی چاہئے ۔ پھر وہ اپنے بارے میں فرماتے ہیں کہ میرے لیے ان حالات میں موت ایک شہادت ہے اور ظلم کو خاموشی سے برداشت کرنا ذلت کےسوا کچھ نہیں ہے۔ پھر یہ کہہ کر امام حسین اپنے اصحاب کو خود ان کو یزید ی فوج کے بیچ میں یک وتنہا چھوڑ کر چلے جانے کی اجازت دیتے ہیں۔

امام کے ا س فعل میں کسی پر کوئی زور زبردستی نہیں ہے۔ کسی سے التجا بھی نہیں ہے کہ وہ ان کے ساتھ حق کی دفاع میں ان کی مدد کرے۔ وہ تو محض حالات زمانہ بیان کررہے ہیں اور کہہ رہے ہیں وہ حق کی دفاع میں اپنی جان دینے کو تیار ہیں ۔یعنی وہ جمہوری طرز پر وہاں موجود ہر شخص کو یہ حق دے رہے ہیں کہ وہ اپنا فیصلہ خود کرے۔ یہ وہ جمہوری طرز ہے جو امام حسین نے آج سے چودہ سوسال قبل ایک ایسے وقت میں کیا جب دنیا میں جمہوری طرز زندگی ممکن نہیں تھا۔ آج سے چودہ سوسال قبل ہر شخص کو خود اپنے فیصلے کا حق دے کر امام نے یہ طے کردیا کہ اگر عوامی فیصلے جمہوری انداز میں ہوں گے تو یزیدی دور یعنی ظالمانہ دور سے انسان بچ سکتا ہے۔

 قربانی حسین ایک انتہائی اہم پہلو یہ تھا کہ امام حسین یزیدی آمریت کے خلا ف لڑرہے تھے۔ ان کی جدوجہد ومخالفت اس بات پر تھی کہ کسی حاکم وقت کو یہ حق نہیں دیا جاسکتا ہے کہ وہ کسی بھی شخص سے تلوار کی نوک پر اس کی بیعت یعنی بندگی منوائے اور اگر حاکم وقت ایسا کرے تو وہ آمر ہوجائے گا اور اس کا دور آمریت کادور ہوگا۔ایسے آمری دور میں جو مظالم ہوں ان کی مخالفت ہی حق ہے اور ا س مخالفت کے لیے جان دینازندہ رہنے سے بہتر ہے ۔ یعنی قربانی حسین کا مقصد ہر دور میں آمریت کی مخالفت کرنا ہے، لیکن ہر مخالفت کسی آمرانہ طرز ( جیسے آج دہشت گرد ی کے طرز پر ہورہی ہے) پر نہیں ہونی چاہئے ، بلکہ آمریت وقت کا کامیاب  مقابلہ جمہوری طرز پر ہی ہوسکتا ہے ۔ امام حسین اس نظریہ فکر پر اس قدر یقین رکھتے تھے کہ انہوں نے شب عاشورہ جام شہادت کی افادیت تو اپنے اصحاب و اقارب کو سمجھائی  ،لیکن کسی پر یہ زور زبردستی نہیں کی کہ وہ ان کے ساتھ اپنی جان دے اور اگر آمریت کے خلاف وہ خود بھی آمرانہ انداز اپنالیتے تو پھر حسین ویزید کا فرق ختم ہوجاتا ۔یہی سبب ہے کہ امام حسین جام شہادت نوش کرنے سے قبل آمریت کے خلاف اپنی جدوجہد میں جمہوری قدروں کا لحاظ کررہے ہیں۔

امام حسین کی اس یاد گار تقریر کا دوسرا سب سے اہم پہلو راقم کی ناقص رائے میں یہ ہےکہ پوری تقریر میں امام حسین کہیں اسلام کا ذکر نہیں کررہے ہیں ۔ میری ناقص رائے میں امام حسین بہت سوچ سمجھ کر اس تقریر میں اسلام کا ذکر نہیں کررہے ہیں ، کیونکہ امام کی نگاہ میں واقعہ کربلا محض اسلام کا دفاع نہیں تھا۔ امام ہر دور میں ہونے والی حق وباطل کی جنگ کے بارے میں سو چ رہے تھے ، کیونکہ آمریت ایک ایسی لعنت ہے جو کسی بھی دور میں ، کسی بھی سماج میں اور کسی بھی مذہب کے ماننے والوں کو اٹھانی پڑسکتی ہے ۔ یہ لعنت محض مسلمانوں تک محدود نہیں رہ سکتی ہے۔یہی سبب ہے کہ امام نے جب آمروقت کے خلاف آواز اٹھائی تو اس کو محض اسلام کے دائرے تک محدود نہیں رکھا ، بلکہ امام ایک ایسی جنگ کی مثال قائم کررہے تھے  جو انسان کو کسی بھی سماج میں او رکسی بھی انسانی دور میں لڑنی پڑسکتی ہے اور امام کو اس بات کا بھی پورا اندازہ تھا کہ آمریت کے خلاف جنگ میں محض تیر وتبر کار گر نہیں ہوسکتے ہیں، بلکہ اس جنگ میں فتح قربانی سب سے کار گر حکمت عملی ہوسکتی ہے۔ حسینؓ نے اپنی جان دے کر اس دور کی آمریت پر نہ صرف فتح حاصل کی ،بلکہ ہر دور میں آمریت کے خلاف جنگ لڑنے کا ایک انوکھا انداز بھی پیش کردیا جو آج بھی قائم ودائم ہے۔

لیکن افسوس کہ عام اسلام آج بھی آمروں سے بھرا پڑا ہے ۔ کہیں بادشاہت کا دور دورہ ہے تو کہیں فوجی ڈکٹیٹر کا راج ہے ۔غالباً یہی سبب ہے کہ دنیا بھر کا مسلمان پسماندگی کا شکار ہے۔ آج امور دنیا تو کیا خود امور خانہ میں بھی مسلمانوں کی آواز نقار خانہ میں طوطی کی آواز ہوکر رہ گئی ہے۔ اس کے برخلاف جن ممالک میں جمہوری طرز سیاست ہے وہ ممالک ترقی گامزن ہیں اور ان کے عوام خوش ہیں۔ یہی سبب ہے کہ حسینی پیغام آج بھی عالم اسلام کے لیے اتنا ہی کارگر ہے جتنا کہ چودہ سو ال قبل اس آمریت کے دور میں کار گر تھا۔ اس لیے شہادت امام حسین پر محض آنسو بہانا ہی ضروری نہیں ہے، بلکہ پیغام حسینی کی افادیت کو سمجھ کر اس پر عمل کرنا اس سے بھی زیادہ ضروری ہے۔ تب ہی ہرقوم پکارے گی ہمارے ہیں حسین........

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/the-war-message-against-dictatorship-continues-to-this-day--آمریت-کے-خلاف-جنگ-کا-پیغام-آج-بھی-قائم-ہے/d/3871

 

Loading..

Loading..