New Age Islam
Mon Sep 28 2020, 07:14 PM

Urdu Section ( 30 Sept 2014, NewAgeIslam.Com)

Defamation of Islam! (Part - 1) (اسلام کی بدنامی! ( حصہ اوّل

 

 

 

 

ظفر آغا

30 ستمبر، 2014

اسلامی عقیدہ یہ ہے کہ ‘‘ تمہارے لئے تمہارا دین ، میرے لئے میرا دین’’ ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کبھی حملہ نہیں کیا، بلکہ ہمیشہ دفاعی جنگ لڑی ۔ اسلام دنیا کا پہلا نظام ہے، جس نے دنیا کو اخوت کا پیغام دیا ۔ اسلام دنیا کا پہلا مذہب ہے، جس نے عورت کو خلع کا حق دیا ۔ مسلم خاتون کو شریعت اسلامی  نے مال و دولت میں حصہ دار بنایا۔

اسلام ہی ایک ایسا مذہب ہے ، جس نے اللہ اور بندوں کے درمیان سے ہر قسم کے راہب،  پنڈت اور درمیانی لوگوں کو خاتمہ کیا ۔ یہ ہے نچوڑ اسلام کا، جس کا رب رحیم اور جس کے رسول کریم  ہیں، جنہوں نے دنیا میں ہر انسان ( بشمول خواتین) کو برابری کا درجہ دیا ۔ یعنی اسلام نے انسانیت کو آزادی اور اخوت  کی ایسی منزل تک پہنچایا، جس کا تصور اسلام سے قبل نہیں پایا جاتا تھا ۔ تب ہی تو پورے قرون وسطیٰ میں مسلمان سُپر پاور بنے رہے اور اسلام کا ڈنکا ہر سو بجتا رہا ۔ آج اسی اسلام اور مسلمانوں کو دہشت سے جوڑا جارہا ہے ۔ آج محسن انسانیت  صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخی کی ناپاک جسارت کی جارہی ہے۔

آج اسلامی معاشرے میں اخوت و محبت  کا نام و نشان مٹ چکا ہے ۔ آج اسلامی خلافت کے نام پر بے قصور افراد کے گلے کاٹے جارہے ہیں ۔ آج بوکوحرام  جیسی تنظیمیں عورتوں اور لڑکیوں کو اس لئے اغوا کر کے قید ی بنارہی ہیں کہ وہ تعلیم حاصل کرنے  کی جرأت کررہی ہیں ۔ یعنی آج سارے عالم اسلام میں جمہوریت کا کوئی اثر باقی نہیں رہا ۔ مسلمانوں کا وہ دور ختم ہوا، جب خلیفہ کا انتخاب جمہوری طرز پر ہوا  کرتا تھا ۔ آج کے خود ساختہ خلیفہ ابوبکر البغدادی کی طرح دہشت  او رہتھیار کے بل پر مسجد میں کھڑے ہوکر اپنی خلافت کا اعلان نہیں کیا جاتا تھا ۔ شاید یہی وجہ ہے کہ آج مسلمان تعلیم کے میدان میں سب سے پیچھے ہیں اور اسی کا نتیجہ ہے کہ جو قوم کبھی سُپر پاور تھی ، وہ آج  مغرب کی غلام ہے۔

تاریخ پرنگاہ ڈالیں تو مسلمانوں کا زوال مغرب کے ہاتھوں شروع ہوا،خواہ وہ سلطنت مغلیہ کا زوال ہو یا ترکی کی خلافت عثمانیہ کا خاتمہ یا پھر عربوں کا زوال ۔ فلسطین پر یہودیوں کا قبضہ او رمسلمانوں کی تباہی مغرب کے ہاتھوں ہوئی ۔ پھر گزشتہ بیس برسوں کی تاریخ کا جائزہ لیں تو ایک بار پھر وہی کہانی دہرائی  جارہی ہے ۔ یعنی افغانستان پر امریکہ کا قبضہ، عراق میں تباہ کن بمباری ، پاکستان کو یہ انتباہ کہ ‘‘ تم ہمارے دشمن یا  دوست؟’’ ۔ علاوہ ازیں افغانستان ، افریقہ کے مسلم  ممالک، عراق و شام اور دیگر مقامات پرامریکی  بمباری آج بھی جاری ہے۔ لب لباب یہ کہ مغلیہ سلطنت کے زوال سے لے کر عراق میں داعش کے خلاف جنگ تک یعنی ہر منزل پر مسلمان اور مغرب کا تصادم جاری ہے۔

اس میں کوئی شک نہیں  کہ مغرب اور بیسویں صدی کے نصف سے یہودیوں اور مسلمانوں کے درمیان تصادم کا سلسلہ جاری ہے ۔ پہلے مغرب نے مسلمانوں  کو غلام بنایا ، پھر ساری  دنیا میں جنگ آزادی کا سلسلہ شروع ہوا اور دنیابھر کی غلام قومیں آزادی  حاصل کرکے ترقی کی راہ پر گامزن ہوئیں، لیکن  مسلمانوں کو نہ تو صحیح معنوں میں آزادی  حاصل ہوئی او رنہ ہی ترقی نصیب ہوئی ۔ جو غیر مسلم قومیں ( چینی، جاپانی، ہندو وغیرہ) انگریزوں کی غلام تھیں،   وہ آج نہ صرف آزاد ہیں، بلکہ ترقی  کی راہ پر گامزن ۔ یہاں تک کہ امریکہ جیسے ملک کے برابر کھڑی ہونے کی کوشش کررہی ہیں ، جب کہ مسلمان آج بھی غلامی کی زنجیر میں جکڑے ہوئے ہیں او ران پر ڈرون حملے کئے جارہے ہیں ۔ (جاری)

30 ستمبر، 2014  بشکریہ : روزنامہ وقت، پاکستان

URL:

http://newageislam.com/urdu-section/zafar-agha/defamation-of-islam!-(part---1)--(اسلام-کی-بدنامی!-(-حصہ-اوّل/d/99341

 

Loading..

Loading..