New Age Islam
Wed Sep 23 2020, 09:07 PM

Urdu Section ( 9 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

The Quran and Religious Tolerance قرآن اور مذہبی رواداری

By Waris Mazhari

Translated from Urdu by Raihan Nezami

Religious tolerance, a unique code of conduct in Islam, acquires a significant place in the teachings of the Quran, that is based on the concept of pluralism. The prohibition of compulsion in Islam is of utmost importance among these rules.

Quran says, “There is no compulsion in religion. Verily, the Right Path has become distinct from the wrong path.” (Surah Al-Baqarah: V-256)

The concerned verse was revealed in regard to a Sahabi Hazrat Haseen Ahmed Ansari (RA). His two sons were taken to Syria by some traders and converted to Jews. He requested the prophet (pbuh) to send someone and fetch them back into Islam whom he considered adolescent. At this occasion, this Aayat was revealed. (Qartabi: 182/3)

The Quran clearly asserts every human being has got freedom of belief to practice his religion as Allah Himself doesn’t wish everyone to follow one religion (Islam).

“And had your Lord willed, those on earth would have believed, all of them together. So will you (O’ Muhammad ( pbuh) then compel mankind, until they become believers?” (Surah Yunus: V-99)

 “If Allah had willed, He would have made you one nation.” (Surah Al-Ma’idah: V-48)

“He it is who created you, then some of you are disbelievers and some of you are believers.” (Surah At-Taghabun: V-2)

The Quran considers Faith and Renunciation a natural and everlasting fact declaring that Allah will pronounce His judgment on the Day of Resurrection. “Allah will judge between you on the Day of Resurrection about that wherein you used to differ.” (Surah Al-Hajj: V-69)

The rebellions are free in this world to choose and practice their faith. “To you be your religion, and to me my religion (Islamic Monotheism).” (Surah Al-Kafirun: V-6)

The same kind of liberty is given in respect of action and behavior too.  “Allah is our Lord and your Lord. For us our deeds and for you your deeds.” (Surah Ash-Shura: V-15)

Quran prohibits from denouncing even fake gods, which will infuriate their followers. If their feelings are hurt, they will depreciate the one and only real God i.e. Allah. “And insult not those whom they (disbelievers) worship besides Allah, lest they insult Allah wrongly without knowledge.” (Surah Al-An’am; V-108)

Quran advises to carry out a reasonable discussion and not to indulge in confrontation with hatred for the sake of condemnation. The true Muslims are advised to be judicious in dealing with others, even though you are being affected. “O’ you who believe! Stand out firmly for justice, as witnesses to Allah, even though it be against yourselves.” (Surah An-Nisa: V-135)

Quran seeks truthful behavior not for a single community in particular, but for the whole human populace in general. Any dishonest act against any human being is anti-Islamic. “Let not the enmity and hatred of others make you avoid justice. Be just.” (Surah Al-Ma’idah: V-8)

According to Quran, the followers of other religions too, have got full internal freedom for decision-making as well as for the selection of foods, so they can consume even pork and wine. Under this unique system, they can follow their own faith, have separate jurisdiction and appoint judges of their choice.

During the life of Hazrat Muhammad (pbuh), the whole populace comprising of different tribes had been enjoying absolute national self-governance as the Muslims had - in regard of their faith, prayer, legal affairs and other issues. (Khutabat-e-Bahawalpur: P-418, Islamic Book Foundation, New Delhi, 2000)

There are two kinds of non-believers mentioned in the Quran. First, those who fought against Muslims, afflicted atrocities upon the Prophet (pbuh) and his followers and never allowed social or religious rights to them. They banished Muslims from their homes and motherland. The Quran permits to deal with them strictly and fight against their cruelty in defense. The rebellions of another kind are those; who did not fight against Muslims or banish them. They should be dealt with civility and compassion. “Allah does not forbid you to deal justly and kindly with those who fought not against you on account of religion nor drove you out of your homes. Verily, Allah loves those who deal with equity.” (Surah Al-Mumtahanah: V-8)

An important point is that the Quran sees a potential friend even in a bitter enemy. “Repel (the evil) with one which is better (i.e. Allah orders the faithful believers to be patient at the time of anger, and to excuse those who treat them badly) then verily he, between whom and you there was enmity, (will become) as though he was a close friend.” (Surah Fussilat: V-34)

Every individual is born as a natural being who likes virtue, but external impacts stop him from accepting righteousness and ethics. According to a popular Hadeeth, “Every child is born on nature; it’s their parents who make him Jewish, Christian or Majushi.” (Muslim Kitab-ul-Qadra)

Basically, the Quran addresses this nature which requires compassionate behavior  in place of hatred. The Quran says, “And Verily, you (O Muhammad pbuh) are on an exalted (standard of) character.” (Surah Al-Qalam: V-4).

Hazrat Aaesha (mAbpwh) says, “His (pbuh) character was a personification of  the Quran.” (Muslim)

The prophet (pbuh) has said, “There is no veil between the cry of a tortured even if he is a non-believer.” The Quran orders Muslims through this Aayat, “Not upon you (O’ Muhammad pbuh) is their guidance, but Allah guides whom He wills. And whatever you spend of good, it is for yourselves, when you spend not except seeking Allah’s Countenance. And whatever you spend of good, it will be repaid to you in full, and you shall not be wronged.” (Surah Al-Baqarah: V-272)

At another occasion, the Quran says in regard of Non-Muslim parents, “But behave with them in the world kindly.” (Surah Luqman: V-15).

The prophet (pbuh) taught in regard of the Quranic ethics and principles as below, “Don’t be opportunists saying that if people behave justly with us, we will do the same. If they mistreat with us, we will return the same. You should be well-behaved with those people even, who think ill of you.” He (pbuh) had permitted the Christian delegates of Najran to pray in his mosque (Masjid-e-Nabvi) as per their faith, setting up a prophetic and practical example of the Quranic pluralism. The Quran asserts to provide financial help to disbelievers and rebellions too, without considering their faith a hindrance.

“Not upon you (O’ Muhammad pbuh) is their guidance, but Allah guides whom He wills. And whatever you spend of good, it is for yourselves, when you spend not except seeking Allah’s Countenance. And whatever you spend of good, it will be repaid to you in full, and you shall not be wronged.” (Surah Al-Baqarah: V-272)

Quran asserts, “As-Sadaqat (here it means Zakat) are only for the Fuqara (poor), and Al-Masakin (the needy), and those employed to collect (the funds); and to attract the hearts of those who have been inclined (towards Islam); and to free the captives; and for those in debt; and for Allah’s cause (i.e. for Mujahidun – those fighting in a holy battle), and for the wayfarer ( a traveller who is cutt off from everything); a duty imposed by Allah. And Allah is All-Knower, All-wise.”  (Surah Taubah: V-60)

Hazrat Umar (mAbpwh) asserted, “Jews and Christians too, are included in it.” The prophet (pbuh) issued stipend for certain Jews, which was continued even after his (pbuh) death. When he (pbuh) died, his (pbuh) armory was at a Jew as a mortgage for some money. He (pbuh) could have asked any Muslim for debt, but he (pbuh) intentionally did it to set an example of noble mannerism and etiquette. Hazrat Abdullah bin Umar (mAbpwh) distributed the meat of the sacrificed animal in Eid-ul-Adha among the Non-Muslims also, because he considered them his rightful neighbors.

The Quran presents an indelible concept of religious tolerance. If its practice is lacking and not reflecting in the Muslim’s behavior today, it is entirely the impact of the present political situation in the world. In any case, The Quran should not be blamed for it.

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/the-quran-and-religious-tolerance-قرآن-اور-مذہبی-رواداری/d/3909

 

قرآن اور مذہبی رواداری

وارث مظہری

قرآن کی ایک اہم تعلیم مذہبی رواداری سے تعلق رکھتی ہے ۔مذہبی رواداری کو اسلام میں ایک اہم اجتماعی اصول کے طور پر اختیار کیا گیا ہے، جس کی بنیاد قرآن کے رواداری سے متعلق نظریات پر ہے۔ ان اصول ونظریات میں سب سے اہم مذہب میں زور زبردستی کی نفی ہے۔ قرآن کہتا ہے:

لا اکر اہ فی الدین قدتبین الرشد من الغی ۔(البقرۃ : 256)

‘‘دین میں زور زبردستی نہیں ہے۔ گم راہی کے مقابلے میں ہدایت واضح اور روشن ہوچکی ہے’’۔

اس آیت کا شان نزول قرآن کے مذہبی رواداری کے تصور کو مزید واضح کردیتا ہے۔ یہ آیت ایک حصین نامی انصاری صحابی کے بارے میں نازل ہوئی جس کے دو بیٹے تھے جنہیں شام کے بعض تاجر یہودی بنا کر شام لے گئے تھے ۔ ان کے باپ حصین نے آکر رسو اللہ سے اس شکایت کی اور اس بات کی خواہش ظاہر کی کہ رسول اللہ کسی کو بھیج کر ان دونوں بچپن میں یہودی ہوجانے والے لڑکوں کو (بغیر ان کی مرضی کے ۔کیوں کہ ان انصاری صحابی کی سوچ کے مطابق وہ دونوں ابھی بچہ تھے)اسلام میں لوٹا  کرلے آئیں ۔ اس پر قرآن کی یہ آیت نازل ہوئی۔ ( قرطبی : 3/182) قرآن واضح طور پر کہتا ہے کہ انسان کو اس بات کا اختیار حاصل ہے کہ وہ جو بھی مذہب یا نظریہ چاہے اختیار کرے ، کیو نکہ یہ خود اللہ کی تکوینی مصلحت میں سے نہیں ہےکہ سارے لوگ ایک طریقے ( ایمان واسلام ) کے پابند ہوجائیں :

‘‘اگر آپ کا رب چاہتا تو دنیا کے تمام لوگ ایمان قبول کرلیتے ۔ کیا لوگوں کو مومن بنانے کے لیے آپ ان کے ساتھ زبردستی کریں گے۔’’ (یونس: 99)

‘‘اگر اللہ چاہتا تو تمام لوگوں کو ایک امت بنادیتا ۔’’ (المائدہ: 48)

‘‘اللہ نے ہی تمہاری تخلیق کی ہے تو کچھ لوگ تم میں سےمومن ہیں اور کچھ لوگ منکر ۔’’ (التغابن: 2)

اس طرح ایمان اور انکار کو ایک ابدی اور فطری حقیقت کے طور پر قرآن میں تسلیم کیا گیا ہے۔ قرآن کا واضح اعلان ہے کہ اس ایمان اور انکار کا فیصلہ اللہ تعالیٰ قیامت کے دن کرے گا۔ ‘‘اللہ تعالیٰ قیامت کے دن تمہارے درمیان ان سب باتوں کا فیصلہ کردے گا جن میں تم اختلاف کرتے تھے’’ (الحج :69)۔دنیا میں منکرین کو دین کے معاملے میں بھی آزادی حاصل ہے:

‘‘تمہارادین تمہارے لیے ہے اور میرا دین میرے لئے۔’’ (الکا فرون: 6)

اور اپنے اعمال وکردار کے معاملے میں بھی:

‘‘اللہ تمہارا اور ہمارا رب ہے ۔ ہمارے اعمال ہمارے لیے ہیں اور تمہارے اعمال تمہارے لیے ۔’’ (الشوری: 15)

قرآن میں باطل معبودوں کو بھی برابھلا کہنے سے روک دیا گیا ہے۔کیوں کہ اس سے جذبات مجروح اور مشتعل ہوں گے اور باطل کی پرستش کرنے والے لوگ اس کے جواب میں معبود حقیقی کو بھی برا بھلا کہنے لگیں گے ۔ (الا نعام :108)قرآن میں اہل باطل پررو کر نے کا جو طریقہ بیان کیا گیا ہے، وہ خوب صورت انداز  میں کی جانے والی بحث (جدال احسن) ہے نہ کہ طنز وملامت اور نزاع ونفرت پیدا کرنے والا طرز ۔قرآن میں دوسروں کے ساتھ تمام معاملات میں عدل و انصاف کا رویہ اختیار کرنے کی تلقین کی گئی ہے۔ اہل ایمان سے کہا گیا ہے کہ تم انصاف قائم کرنے والے بنو، خواہ اس کی زوخود تمہاری اپنی ذات پر پڑتی ہو۔ (النسا :135)قرآن کے مطابق عدل وانصاف کا معاملہ کسی ایک یا دوسری قوم کے ساتھ خاص نہیں بلکہ یہ پوری انسانیت کے لیے عام ہے۔ اس لیے بھی غیر منصفانہ اصول طریقہ کار اپنے لیے یا اپنی قوم کے لیے اختیار کرنا کسی بھی طرح اسلام کے مطابق نہیں ہوگا ۔قرآن کہتا ہے:

‘‘تمہیں کسی قوم کی دشمنی اس بات پر آمادہ نہ کرے کہ تم انصاف کا رویہ اختیار نہ کرو، انصاف کرو’’۔ (المائد ہ: 8)

قرآن میں دوسرے مذاہب کے لوگوں کو کامل مذہبی آزادی دی گئی ہے۔ چنانچہ انہیں اختیار ہے کہ وہ اپنی مذہبی کتابوں کے مطابق اپنے فیصلے کریں ۔ اس طرح شراب خنز یر جیسی حرام چیزوں کے ساتھ تعامل سے بھی قرآن انہیں نہیں روکتا ۔ ڈاکٹر حمید اللہ لکھتے ہیں:

‘‘ قرآن میں یہ عجب وغریب اصول ملتا ہے کہ ہر مذہبی کمیونٹی کو کامل داخلی خود مختاری دی جائے حتیٰ کہ نہ صرف عقائد کی آزادی ہو اور اپنی عبادات وہ اپنے طرز پر کرسکیں بلکہ اپنے ہی قانون ،اپنے ہی ججوں کے ذریعے سے اپنے مقدمات کا فیصلہ بھی کرائیں .....عہد نبوی میں قومی خود مختاری ساری آبادی کے ہر ہر گروہ کو مل گئی تھی۔جس طرح مسلمان اپنے دین، عبادات ،قانونی معاملات اور دیگر امور میں مکمل طور پر آزاد تھے، اسی طرح دوسری ملت کے لوگوں کو بھی کامل آزادی تھی۔ ’’ (خطبات بہاول پور ،ص :418، اسلامک بک فاؤنڈیشن ، نئی دہلی ،2000)

قرآن میں دوطرح کے منکرین کا ذکر کیا گیا ہے۔ ایک وہ جو مسلمانوں کے خلاف جنگ وجارحیت پر آمادہ تھے ، جو مسلمانوں کو ان کے مذہبی وسماجی حقوق دینے کے لیے تیار نہ تھے اور جنہوں نے پیغمبر اسلام اور آپ پر ایمان لانے والوں کو اپنے ظلم واذیت کا نشانہ بنایا انہیں ان کے گھر اور وطن سے نکال کر دیا ، قرآن میں ان کے خلاف سختی اور ان کے ظلم سے دفاع کے لیے جنگ کی اجازت دی گئی ہے، جب کہ دوسری قسم کے منکرین ہیں جو مسلمانوں کے ساتھ لڑنے پر آمادہ نہیں، جنہوں نے مسلمانوں کو گھر چھوڑ نے پر مجبور نہیں کیا، ان کے ساتھ قرآن میں نرمی اور نیکی کا معاملہ کرنے کی ترغیب دی گئی ہے۔ ( الممستخہ :8)اہم بات یہ ہے کہ قرآن سخت سے سخت تر دشمن کو بھی ایک با لقوۃ ( potential)دوست کی شکل میں دیکھتا ہے۔ چنانچہ قرآن کہتا ہے :برائی کو بھلائی سےدفعہ کرو۔ پھر وہی شخص جس کے او رتمہارے درمیان دشمنی ہے، تمہارے قلبی دوست کی طرح ہوجائے گا’’۔( فصلت :34)کیونکہ ہر انسان فطرت پر پیدا کیا گیا ہے، اور فطرت اپنے اقتضا کے مطابق خیر کو پسند کرتی ہے۔ یہ خارجی محرکات ہیں جو اسے خیر اور حق کے قبول کرنے میں مانع بن جاتے ہیں ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی مشہور حدیث ہے کہ :

‘‘ہر بچہ فطرت پر پیدا ہوتا ہے، پھر اس کے والدین اس کو یہودی ،عیسائی یا مجوسی بنادیتے ہیں ۔’’ (مسلم کتاب القدر)

اس لیے قرآن بنیادی طور پر اس فطرت کو اپنا مخاطب بناتا ہے ،جس کے لیے نفرت اور سختی کی نہیں بلکہ محبت او رنرمی کی ضرورت ہوتی ہے۔ پیغمبر اسلام کے بارے میں قرآن کہتا ہے کہ وہ اخلاق عظیم پر قائم تھے۔ (القلم :4)اور آپ ﷺ کا اخلاق آپ کی زوجہ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کے مطابق قرآن تھا ۔ ( کان خلفہ القرآن ) (مسلم) آپ نے فرمایا:

دعوۃ المظلوم وان کان کافر لیس دونہا حجاب ۔(مسند احمد)

‘‘مظلوم خواہ کافر ہو، اس کی پکار کے درمیان کوئی پردہ حائل نہیں ہے۔’’

قرآن کی ایک آیت مسلمانوں کو یہ حکم دیا گیا ہے کہ وہ لوگوں کے مشرک ہونے کے باوجود وہ ان کی مالی مدد سے گریز نہ کریں۔ اس لیے کہ ان کو ہدایت دینا ان کا نہیں بلکہ خدا کا کام ہے( البقرہ :272)غیر مسلم والدین کے لیے قرآن میں حکم دیا گیا ہے کہ ان کے ساتھ نیکی او راچھائی کا معاملہ کرو( لقمان :15)

آپ نے جس قرآنی اخلاق اور رواداری کی تعلیم دی وہ یہ تھی کہ ‘‘تم ابن الوقت (opportunists) نہ بنوکہ کہنے لگو کہ اگر لوگ ہمارے ساتھ اچھا معاملہ کریں تو ہم ان کے ساتھ اچھا معاملہ کریں گے اور وہ ہمارے ساتھ برامعاملہ کریں گے تو ہم بھی ان کے ساتھ برا معاملہ کریں گے، بلکہ تم خود کو اس بات کا عادی بناؤ کہ اگر تمہارے ساتھ کوئی برائی کے ساتھ پیش آئے تب بھی تم اس کے ساتھ بھلائی کے ساتھ پیش آؤ’’۔ رسول اللہﷺ سے ثابت ہے کہ آپؐ نے نجران کے عیسائی وفد کو مسجد نبوی میں اپنے مذہب کے مطابق عبادت کی اجازت دی۔ یہ قرآنی رو اداری کا پیغمبر انہ عملی نمونہ ہے۔

قرآن مشرکین او رکفار کی بھی مالی مدد کرنے کی تلقین کرتا ہے اور ان کے عقیدے کو اس میں رکاوٹ تصور نہیں کرتا:

‘‘(اے محمد!) انہیں ہدایت دینا تمہاری ذمہ داری نہیں ہے، اللہ جسے چاہتا ہے ہدایت دیتا ہے اور جو کچھ تم مال خرچ کروگے اس میں تمہارا ہی بھلا ہے،اور تم صرف اللہ کی خوشنودی کے لیے مال خرچ کرتے ہو’’۔(البقرۃ :272)

قرآن میں کہا گیا ہے کہ صدقہ فقرا ومساکین کے لیے ہے ۔ (انما الصدقات للفقرا و المساکین ۔ التوبۃ :60)حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ ان میں یہودی وعیسائی بھی شامل ہیں۔ رسول اللہ ﷺ نے بعض یہودیوں کے لیے وظیفہ جاری کیا جو آپؐ کی وفات کے بعد بھی جاری رہا ۔ آپؐ کی وفات اس حالت میں ہوئی کہ آپ کی زرہ ایک یہودی سے قرض کے عوض اس کے گھر رہن تھی۔ آپ ؐ مسلمانوں سے بھی قرض لے سکتے تھے ،لیکن آپؐ نے اپنی امت کو اس نوع کی رواداری واخلاق کی تعلیم کے لیے ایسا کیا۔ حضرت عبداللہ بن عمرؓ غیر مسلموں کو بھی قربانی کا گو شت بھجواتے تھے اور فرماتے تھے کہ پڑوسی ہونے میں وہ بھی شریک ہیں۔

بہر حال قرآن میں مذہبی رواداری کا ہمہ گیر تصور پایا جاتاہے۔ اگر فی زمانہ اس میں کوئی کمی پائی جاتی ہے تو اس کاتعلق مسلمانوں کے اپنے عمل سے ہے جو دنیا کے موجودہ سیاسی حالات سے متاثر ہے۔ اس کا تعلق کسی بھی طرح اللہ کی کتاب قرآن سے نہیں ہے۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/the-quran-and-religious-tolerance-قرآن-اور-مذہبی-رواداری/d/3909

 

Loading..

Loading..