New Age Islam
Tue Sep 22 2020, 11:15 AM

Urdu Section ( 10 Feb 2011, NewAgeIslam.Com)

Superficial religious thought: Time for introspection مصنوعی مذہبی فکر ایک لمحۂ فکریہ

By Waris Mazhari (Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk)

 

One important topic of discussion with regard to the social issues is the religious attitude of the Muslims. It is to be seen what positive or negative role the religious attitude of the Muslims plays towards social issues.  How this is affecting the Muslim society with all its virtues and vices and what harmful or useful results it is yielding; what aspect of it needs to be suppressed and promoted etc? There is no doubt that at present the influence of religion is more on the Muslim society than on any other society. Muslims are more attached with religion in comparison to other religious societies. This worries people who believe in maintaining a distance between religion and society and consider the interference of religion in social affairs a threat to the society.  Their age old notion is that Islam itself is the biggest hindrance in the development of the Muslims. Now they have been joined by some Muslim scholars who do not hesitate to echo this view. However, a big section emphasizes the need to reject the structure of its rituals by recognizing the basic reality of religion. One end or rather the basic end of this atheistic attitude meets the atheistic thought called the progressive thought of the West. But with due apologies, it can also be said that the other end of this attitude meets our religious attitude that is in fact not religious at all, only has the label of religion on it. We call it religious and others also interpret it in that sense. I would like to present some examples to explain my point.

We put emphasis on the cultural phenomenon with reference to Islam. In other words, culture has been considered a part of religion, though culture is the product of local social and economic conditions, is governed by them and undergoes changes due to changes in the social and economic conditions. For example, the people of Makkah as compared to the people of Ansar, considered it wrong to involve their wives in any affair or do consultation with them. After migrating to Medina, when Hadhrat Umar’s wife wanted to give some suggestion on a particular issue, he took offence. His wife reminded Hadhrat Umar that his daughter used to give advice to the Prophet (PBUH). Hadhrat Umar went to ask the Prophet (PBUH) and was convinced. Some muhajireen (migrants) felt that after coming to Medina their wives had sort of gone out of their control. All the Islamic regions were under their own cultures. It is difficult to tie them to one thread. Many jurisprudential advices became a part of the religion due to ignoring the difference between religion and culture though they were correlated with space and time. Therefore, the correct interpretation of the hadith “If someone adopts resemblance with a particular community, he will be considered to be among them).” (Abu Dawood, Masnad Ahmad) is difficult to make without examining it in the correct context.

The social distinction of castes is in contrast with the basic spirit of Islam. Islam had arrived in order to demolish the walls of inequality on the basis of colour, caste, occupation, poverty and riches but the walls that had been founded on the feudal system of the middle ages have divided the Muslim society into so many sections that the social existence of the Muslims has gone astray.

Lavish expenses on the unnecessary decoration and beautification of mosques have become a trend. Mosques should be simple and spacious. They should also be strong to stand the test of time but the grand mosques that are being built these days manifest only the religious zeal. Therefore the people who donate a big amount of money for the construction of these mosques practically are way behind when it comes to offer namaz and participate in other religious activities. Some hide their sins and misdeeds behind these noble deeds. Many examples can be presented to explain this. But it is not appropriate to mention those here. It appears that the concentration of attention to the mosques has diverted the attention of the people from other social issues. That is why there is a lack of good educational, medical and welfare organizations in our society. In a multicultural society like India, Muslims and Hindus have many common problems. For instance, dowry among the Muslims and Tilak in the Hindu society is in vogue. Superstitions in the name of religion are more or less existent in both the societies. Like the Muslims, the non-Muslim communities also perceive the threat from materialism and the liberal ideologies of the West. In fact it has become difficult to demarcate the borderlines of the Muslim society vis a vis the Hindu society. In this situation, mutual community based cooperation is necessary in the social reform process. But our superficial religious mentality considers keeping a distance from others in such issues quite a religious compulsion. Although for us it is a good way of introducing Islam to others as ambassadors of Islam. Albeit the price we will have to pay for it is that our vices will be exposed to others.

Many values that form the basis of a collective life and of the same importance in Islam are the basis of the development of the non-Muslim society. The deprivation of those values has contributed to this downfall of the Muslim society. In this regard read the views of a renowned Deobandi scholar of Pakistan Maulana Zahidur Rashidi. Replying to a question asked by a Pakistani magazine what the causes of the downfall of the Muslims were he said, “ We could not establish a strong political system after the Abbasid Caliphate… The Prophet (PBUH) left the caliphate to the wisdom of the common Muslims and relied on the public opinion but we could not continue the tradition though Europe adopted it. The concept of welfare state that was emerging in the Caliphate of the rightly guided four caliphs could not be continued and this concept was also hijacked by Europe. After showing Europe the way of science and technology, we ourselves deviated from it and gave a walk over to Europe.”(Al Sharia, Gojranwala, Feb 2005, with reference Abe Hayat, Lahore, Jan 2005).

Our superficial religious thinking is only an admirer of its outer phenomenon and symbols in the name of following the religion and many things have entered into it that have hardly anything to do with religion. But we are wasting our capabilities on them. There is not as much emphasis on spiritual condition or character building as on Islamic appearance. Therefore, religion and religiosity have become an important and profitable business in today’s world.

It is our superficial religious thinking that has imposed restrictions, for instance, on the freedom of expression as it will expose our intellectual bankruptcy though the Muslims of the modern world present the best sample of the freedom of expression. Anything that is different from the general religious thinking cannot be said because then one will be accused of ‘liberalism and modernism’ which is synonymous with revolting against the deen in the eyes of the critics. In countries like Egypt a few such liberals had to pay with their lives though replying pen with the sword gives the impression that you are not able to reply to an intellectual issue.  Our pseudo religiousness is intensifying extremism in Muslim society instead of controlling it because people having these extremist ideas refer to Islam. The extremist elements of Islam have in fact taken advantage of this very soulless and fake religious attitude of the people in Pakistan. This superficial and soulless religious attitude should be analyzed and examined in the light of the thought provoking views of Maulana Mahmood Hasan (Sheikhul Hind). When his pupil Maulana Manazir Ahsan Geelani said that Muslims love the Prophet (PBUH) so much that they can tolerate an insult to their parents but not to him (PBUH), he replied:

“In fact Muslims unconsciously feel insulted when the Prophet (PBUH) is insulted. It hurts the dignity and ego of the Muslims as no one can insult whom they call their prophet. In fact the very ego is hurt but it gives the impression that the love of the Prophet (PBUH) has spurred them to take revenge.” (Tarjuman, Darul Uloom Delhi, January 2005).

However, the superficial religious attitude of the Muslims with regards to the birth and growth of social problems is an important factor. We should realise that as not every sparkling substance is gold, in the same way not every attitude identified with religion is a religious attitude. It is a cause for destructive activities in society in the name of religion and the biggest hindrance in its progress and development.

Source: Hamara Samaj, New Delhi

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/superficial-religious-thought--time-for-introspection/d/4106

 

مصنوعی مذہبی فکر ایک لمحۂ فکریہ

وارث مظہری

سماجی مسائل کے حوالے سےغور وفکر کا ایک اہم موضوع ہم مسلمانوں کا مذہبی رویہ ہے۔ دیکھنے کی بات یہ ہے کہ مسلمانوں کا مذہبی رویہ سماجی مسائل کے تعلق سےکیا مثبت یا منفی کردار ادا کرتا ہے۔ اپنی خوبی وخامی کےساتھ یہ رویہ کس طرح سماج پر اثر انداز ہورہا ہے اور اس کے کیا مفید ومضر نتائج سامنے آرہے ہیں۔ اس رویے کے کن مثبت پہلوؤں کو ابھارنے اور کن منفی پہلوؤں کو دبانے کی ضرورت ہے۔ وغیرہ؟اس میں کسی کو شک نہیں ہوسکتا کہ اس وقت تمام دوسرے سماجوں کے مقابلے میں مسلم سماج پر مذہب کے اثرات سب سے زیادہ ہیں۔ دوسروں کے مقابلے میں مسلم عوام مذہب سے زیادہ جڑے ہوئے ہیں۔ یہی بات ان لوگوں کو کھٹکتی اور پریشان رکھتی ہے ، جو مذہب اور سماج میں فصل قائم رکھنے میں یقین رکھتے ہیں اور مذہب کی سماجی معاملات میں دخل اندازی کو انسانی سماج کے لیے خطرے کی علامت تصور کرتے ہیں۔ان کی بنی بنائی ذہنیت یہ ہے کہ مسلم سماج کی ترقی وخوشحالی میں سب سے بڑی رکاوٹ خود مذہب اسلام ہے۔ اب خود مسلم صفوں میں ایسے اسکالر س شامل ہوگئے ہیں ، جو اس بات کو دہرانے میں کوئی پاک نہیں رکھتے ۔البتہ بڑا طبقہ وہ ہے ، جو مذہب کی بنیادی حقیقت کو تسلیم کرتے ہوئے اس کے ظاہری اعمال (rituals )کے ڈھانچے کو بالکلیہ مسترد کرنے پر زور دیتا ہے ۔ اس طبقے کی مذہب بیزاری کا ایک بلکہ بنیادی سرا، مغرب کی الحادی فکر سے جاملتا ہے۔ جسے ترقی پسند ی کے عنوان سے اس نے اختیار کررکھا ہے ۔ لیکن انتہائی معذرت کے ساتھ کہا جاسکتا ہے کہ ا س کا دوسرا سرا ہمارے اس مذہبی رویے سے ملتا ہے، جو سرے سے مذہبی رویہ نہیں ہے۔ صرف اس پر مذہب کا لیبل لگا ہوا ہے ۔ ہم خود بھی اس کو مذہبی باور کراتے ہیں اور دوسرے بھی اسی حوالے سے اس کی تفہیم کرتے ہیں ۔ میں یہاں اس کی چند مثالیں پیش کرنے کی کوشش کروں گا:

اسلام کے حوالے سے ہمارے یہاں ثقافتی مظاہر پر زور ہے یا دوسرے لفظوں میں ثفاقت کو مذہب کا حصہ تصور کرلیا گیا ہے۔ حالانکہ ثقافت ہمیشہ مقامی سطح کے سماجی واقتصادی حالات کی پیداوار ہوتی ہے ۔ انہی کے تابع ہوتی ہے اور ان میں تبدیلی سے ثقافت کے خدوخال اور تصور میں فرق آتا چلا جاتا ہے۔ اس کی ایک مثال یہ ہے کہ مکہ کے لوگ انصار کے مقابلے میں عورتوں سے مشورہ کرنے یا انہیں کسی معاملے میں شریک کرنے کو غلط تصور کرتے تھے۔ مدینہ ہجرت کرنے کے بعد حضرت عمرؓ کی ایک بیوی نے جب کسی بات کے سلسلے میں اپنی رائے دینی چاہی تو یہ بات حضرت عمرؓ کو بہت زیادہ بری لگی ۔ اس پر آپ کی بیوی نے کہا کہ عمرؓ خود آپ کی بیٹی رسول للہ کو مشورہ دیتی ہے۔ حضرت عمرؓ نے جاکر آپ ﷺ سے اس  تعلق سے دریافت کیا او ر مطمئن ہوئے۔ بعض مہاجرین کا یہ احساس تھا کہ مدینہ آنے کے بعد ان کی عورتیں ان کے کنٹرول سے گویا نکل سے گئی ہیں۔ تمام اسلامی خطے اپنی اپنی ثقافتوں کے تابع ہیں۔ ان کو ایک لڑی میں پرونا ممکن نہیں ہے۔ ثقافت اور مذہب کے فرق کو نظر انداز کردینے کی وجہ سے بہت سے فقہی احکام شریعت کا  حصہ بن گئے۔ حالانکہ ان کا  تعلق محض زمانی ومکانی حالات سے تھا۔ اس لحاظ سے حدیث ‘‘ جو کسی قوم کی مشابہت اختیار کرے اور انہی میں سے ہے’’( من تشبہ بقوم فہو منھم ۔ ابوداؤد ،مسند احمد) کو اسی تناظر میں پرکھے بغیر اس کی صحیح اورقابل عمل تعبیر تک پہنچنا ممکن نہیں ہے۔

ذات پات کی سماجی تفریق اسلام کی بنیادی روح سے متصادم ہے۔ اسلام ان تفریقات کو ختم کرنے ،رنگ ونسل ،پیشہ اورغربت وامارت کی بنیاد پرکھڑی ہونے والی عدم مساوات کی دیوار کو ڈھانے کے لئے آیا تھا لیکن ان دیواروں نے جن پر عہدوسطی میں جاگیر دارانہ نظام کی عمارت کھڑی کی گئی تھی، مسلم سماج کو ذات پات برادری اور قبیلے کے نام پر اتنے حصوں میں بانٹ دیا ہے کہ مسلمانوں کا سماجی وجود بالکل بکھر کر رہ گیا ہے۔

مساجد کے غیر ضروری تعمیر وتزئین پر اسراف نے ایک رجحان کی شکل اختیار کرلی ہے۔ مساجد کو سادہ وکشادہ ہونا چاہئے ۔ اس حد تک مضبوطی بھی ضروری ہےکہ کسی خطرے کا اندیشہ نہ ہو لیکن اس وقت جو پرشکوہ مسجدیں بن رہی ہیں، ان میں محض مذہبی جوش کی کارفرمائی ہے۔ چنانچہ ان کی تعمیر وتزئین میں جو لوگ سب سے زیادہ مالی تعاون پیش کرتے ہیں ، بلکہ کہنا چاہئے کہ جن کے بلند حوصلوں کی بنیاد پر مساجد کی بلند عمارت کھڑی کی جاتی ہے، وہ نماز اور مذہب پر عمل کے دیگر معاملات میں سب سے زیادہ پیچھے ہوتے ہیں۔ بعض لوگ اپنی غلط کاریوں اور محرمات کے ارتکاب کو ایسی دادوہش کے پردے میں چھپاتے اور کار شرکی عادی نفسیات کو اس قسم کے کارخیر سے تسکین دیتے ہیں۔ اس کی بہت سی واقعاتی مثالیں پیش کی جاسکتی ہیں۔ لیکن مصلحتاً ایسا کرنا بہتر معلوم نہیں ہوتا۔ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ مدارس ومساجد پر توجہ کے اس ارتکاز نے سماجی ضروریات سے دیگر اہم شعبوں سے عوام کی توجہ پھیردی ہے۔ چنانچہ ہمارے یہاں اچھے تعلیمی ،رفاہی اور طبی اداروں کا تقریباً بحران پایا جاتا ہے۔ ہندوستان جیسے مشترک سماج میں مسلمانوں اور غیر مسلموں کے بہت سے سماجی مسائل مشترک ہیں۔ مثلاً مسلمانوں میں جہیز کی اور ہندوؤں میں اس کی جگہ تلک کی رسم پائی جاتی ہے ۔مذہب کے نام پر تو ہمارے کم وبیش دونوں جگہ شدت کے ساتھ موجود ہیں۔ مذہب کے اخلاق و اقدار کو مادیت اور مغرب کے سیکولر لبرل نظریات سے جو خطرات درپیش ہیں، مسلمانوں کی طرح غیر مسلم کمیو نیٹیز  بھی اسے محسوس کررہی ہیں۔ حقیقت یہ ہے کہ آج یہ تمیز کرنا مشکل ہوگیا ہے کہ غیر مسلم سماج کے مقابلے میں مسلم سماج کی حد کہاں سے شروع ہوکر کہاں ختم ہو تی ہے؟ ایسے میں سماجی اصلاح کی کوششوں میں فرقہ وارانہ تعاون اور باہمی اشتراک ضروری ہے۔ لیکن دوسروں سے قطع نظر ہماری مصنوعی مذہبیت ان معاملات میں دوسروں سے دوری رکھنے کو ہی مذہبی تقاضا تصور کرتی ہے۔ حالا نکہ داعی قوم کی حیثیت سے مسلمانوں کی طرف سے ایسا کرنا اسلام کے تعارف کا بھی اہم ذریعہ ہے ۔ ہاں البتہ ا سکی یہ قیمت تو چکانی ہی پڑے گی کہ مسلم  سماج کی خرابیاں دوسروں کے سامنے بھی بے نقاب ہوں گی۔

اجتماعی زندگی کی اساس کی حیثیت رکھنے والی ایسی بہت سے اقدار ہیں، جو غیر مسلم معاشرہ کی اجتماعی ترقی کی بنیاد ہیں اور اسلام میں بھی ان کی وہی اہمیت ہے۔ ان اقدار سے محرومی نے مسلم معاشرے کے زوال میں اہم رول ادا کیا ہے۔ اس تعلق سے پاکستان کے چند بڑے عالموں میں سے ایک بڑے دیوبندی عالم مولاناز اہد الراشدی صاحب کے یہ خیالات ملاخطہ فرمائیں:مولانا نے ایک پاکستانی رسالے کو انٹرویو دیتے ہوئے ،اس سوال کے جواب میں کہ مسلمانوں کے زوال کا سبب کیا ہے؟ کہا کہ ‘‘ خلافت راشدہ کے بعد ہم کوئی مستحکم سیاسی نظام قائم نہیں کرسکے۔ رسول اکرم ؐ نے خلافت کے قیام کو عام مسلمانوں کی صوابدید پر چھو ڑ دیا اور رائے عامہ پر اعتماد کیا تھا، مگر اس روایت کو قائم نہیں کرسکے جب کہ یورپ نے اسے اپنا لیا ۔ 2۔خلاف راشدہ میں فلاحی اور رفاہی ریاست کا جو تصور اجاگر ہورہا تھا ،ہم اس کاتسلسل قائم نہ رکھ سکے اور یہ روایت بھی ہم سے یورپ نے چھین لیا۔3۔سائنس او ر ٹکنالوجی میں یورپ کو پیش قدمی کا راستہ دکھا کر خود ہم اس سے ہٹ گئے اور میدان یورپ کے حوالے کردیا’’ ( الشریعہ گوجر ا نوالہ ،فروری 2005،بحوالہ آب حیات، لاہور،جنوری 2005)

ہماری مصنوعی مذہبی فکر دین کے نام پر صرف اس کے مظاہرے اور علامتوں کی پرستار ہے اور ان میں بھی بکثرت ایسی چیزیں شامل ہوگئی ہیں جن کا بمشکل ہی دین سے تعلق ہے۔ لیکن اسی پر ہماری صلاحیتیں خرچ ہورہی ہیں۔ ‘‘اسلامی و ضع ’’ پر جتنا زور ہے روحانی حالت اور اخلاقی وضع کی درستگی پر استنازور نہیں ہے۔ چنانچہ دین کے حوالے سے اور دین کی شکل میں دنیا کا کاروبار اس دور کا اہم اور نہایت منافع بخش کار وبار بن چکا ہے۔

حقیقت یہ ہے کہ یہ ہماری مصنوعی مذہبی فکر ہی ہے جس نے مثلاً آزادی فکر پر اس عنوان سے قدغن لگا رکھا ہے کہ اس سے فکر ی اہاحیت کا دروازہ کھل جائے گا،حالانکہ دور زریں کا مسلم معاشرہ آزادی رائے کا بہترین نمونہ پیش کرتا ہے۔ کوئی بھی ایسی بات جو عام مذہبی سوچ سے مختلف ہو نہیں کہی جاسکتی ورنہ اس پر تجدد پسندی اور روشن خیالی کی پھبتیاں کسی جاتی ہیں، جو ناقدین کی نگاہوں میں بغاوت دین کے ہم معنی ہیں۔ مصر جیسے ملکوں میں کئی ایسے تجدد پسندوں کو جان سے اپنی قیمت چکانی پڑی ۔ حالانکہ قلم کا جواب تلوار سے دینا ایک طرح سے یہ تاثر دینا ہے کہ ہم واقعتاً متعلقہ سوال یا اعتراض کا علمی سطح پرجواب دینے کے اہل نہیں ہیں۔ہماری سوڈ ومذہبیت مسلم سماج میں انتہا پسندی کے رجحانات کو روکنے کی بجائے اس کو شہ دینے کا باعث بن رہی ہے۔ کیو نکہ یہ رجحانا ت رکھنے والے اسلام کا حوالہ دیتے ہیں ۔ پاکستان کے انتہا  پسند عناصر نے بنیادی طور پر عوام کے اسی بے روح اور جعلی مذہبی رویے کا فائدہ گااٹھایا ہے۔ اسےبے روح او رمصنوعی مذہبی رویے کی حقیقت کو مولانا محمود حسن (شیخ الہند ) کے ان فکر انگیز خیالات کی روشنی میں دیکھنے او رپرکھنے کی کوشش کرنی چاہے۔ انہوں نے اپنے شاگرد مولانا مناظر احسن گیلانی کی اس بات پر کہ مسلمان کو رسول اللہ سے اس قدر محبت ہے کہ وہ اپنے والدین  کی توہین تو برداشت کرسکتےہیں لیکن آپؐ کی توہین اور سب کی  برداشت نہیں کرسکتے :فرمایا کہ:

‘‘درحقیقت آنحضرت کی سبکی میں (مسلمانوں کو ) اپنی سبکی کاغیر شعوری احساس پوشیدہ ہوتا ہے۔ ( اس سے دراصل) مسلمانو ں کی خودی اور انانیت مجروح ہوتی ہے کہ ہم جسے اپنا پیغمبر اور رسول مانتے ہیں تم اس کی اہانت نہیں کرسکتے ۔ چوٹ دراصل اسی ہم پر پڑتی ہے لیکن مغالطہ ہوتا ہے کہ پیغمبر کی محبت ان کو انتقام پر آمادہ کیا ہے۔’’(ترجمان دارالعلوم : دہلی جنوری 2002)

بہر حال سماجی مسائل کی پیدائش وافزائش کے تعلق سے مسلم عوام کو (مصنوعی) مذہبی رویہ ایک اہم عامل کی حیثیت رکھتا ہے۔ ہمیں یہ فرق کرنا ہوگا کہ جس طرح ہر چمکنے والی چیز سونا نہیں ہے، اسی طرح مذہب کی شناخت رکھنے والا ہر رویہ مذہبی نہیں ہے۔ وہ مذہب کے نام پر سماج کی تخریب کاری کاذریعہ اور اس کی خوشحالی وترقی میں بہت بڑی رکاوٹ ہے۔

w.mazhari@gmail.com

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/superficial-religious-thought--time-for-introspection--مصنوعی-مذہبی-فکر-ایک-لمحۂ-فکریہ/d/4106

 

Loading..

Loading..