New Age Islam
Fri Apr 16 2021, 11:26 PM

Urdu Section ( 28 Aug 2011, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Anna Hazare’s Movement: Muslims Need a Gandhi Today انا تحریک نے دیا پیغام ،مسلمانوں میں آج گاندھی کی ضرورت

Urdu Daily Sahafat DesK, New Delhi

(Translated by Arman Neyazi, NewAgeIslam.com)

Violence Free Agitation, a Guarantor of Surprising Results

Aug. 28, 2011

The most important point which has emerged from Anna Hazare’s campaign, for Muslims, is that they also need a Gandhi in their community. We too should utilise the Gandhian weapon of satyagrah [peaceful civil resistance]. No one among the Muslims is able to do what Gandhi did 65 years ago and Anna after 65 years of independence. Muslim’s movements today, if any, get mired into violence under nefarious designs of politicians for some individual’s personal benefit and innocent Muslims have to face the consequences.

Even otherwise the system of Jihad which Islam has taught is based on ‘Jihad e Nafs’ (killing of one’s own ego) and ‘Jihad bil Lesan’ (debate and discussion) and much after that comes ‘Jihad bis saif’(fighting with sword). Keeping a month’s fast during Ramadan is has also been declared ‘Wajib’.

In such a scenario why do Muslims not try to get their problems solved using Gandhiji’s satyagrah as a weapon, if Anna Hazare can become a hero by doing this. Why do they not fight the leaders of their community and society with the weapon of ‘killing their ego’ (Jihad e Nafs), fight with the weapon of discussion (Jihad bil Lesan) and Satyagrah as Anna Hazare did with the Members of Parliament.

In today’s Cabinet Muslim leaders like Salman Khursheed, Ghulam Nabi Azad, Farooq Abdullah and E. Ahmad have got themselves placed on behalf of the Muslim as their leaders. Problems related to Muslims will certainly get solved to some extent, if not hundred percent, if they all get conscious towards Muslim problems. Alas, nothing like that is happening.

Now that Muslims have been shown the way and they should also organise peaceful gherao and demonstrations on the houses of Muslim members of Parliament, ministers and MLAs to press for their demands. Some surprising results may come out of this. In the same fashion Waqf Board and other organisations, supposed to be Muslim benefactors, can be pressurised with astonishing results.

After all for how long will Muslims accept to be ditched by their leaders? All post-Independence leaders, , whether those being elected by virtue of Muslim votes or Muslims leaders themselves, have been faithful only to their party chiefs.  But once they realise that we will not get the support of the community in next elections, situation may start changing. Only condition is that Muslims stay completely away from violence regardless of provocations. Anna’s 13-day fast and anti-corruption movement achieved success not only because it had public support but also because till the end, the movement organisers managed to avoid violence. If Muslims too wage campaigns for the redressal of their legitimate grievances, and stay away from violence under the inspiration of the teachings of Islam, they too can achieve similar success.

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/anna-hazare’s-movement--muslims-need-a-gandhi-today--انا-تحریک-نے-دیا-پیغام-،مسلمانوں-میں-آج-گاندھی-کی-ضرورت/d/5346

 

انا تحریک نے دیا پیغام ،مسلمانوں میں آج گاندھی کی ضرورت

اسلامی اصولوں کے مطابق تشدد سے پاک جدوجہد حیران کن نتائج کی ضامن

نئی دہلی ،28اگست (صحافت ڈیسک) انا ہزارے کی تحریک کی کامیابی سے ایک پیغام ابھر کر سامنے آیا ہے کہ آج مسلمانوں کواپنے معاشرے میں ایک گاندھی اور ان کے ہتھیار ستیہ گرہ کی ضرورت ہے۔ جو کام آزادی کے وقت خان عبدالغفار خان نے یا آزادی کے 65سال کے بعد اناہزارے نے کردکھایا وہ مسلمانوں کے درمیان کوئی کیوں نہیں کرسکتا ۔ آج مسلمانوں کے احتجاجی مظاہرے اکثر تیز شکل اختیار کرلیتے ہیں اور ذاتی مفاد کی وجہ سے لوگ انہیں گاہے بہ گاہے تشدد کی آگ میں جھونک دیتے ہیں۔ بعد میں ان سب کے درمیان پستا عام مسلمان ہی ہے ۔ ویسے بھی اسلام نے جہاد کے جو طریقے بتائے ہیں ان میں جہاد با لنفس (نفس سے لڑائی) اور جہاد با النفسان( بات چیت کے ذریعے لڑائی) پہلے ہیں جب کہ جہاد با لسیف (تلوار کے ذریعہ لڑائی ) تو بعد میں آتا ہے۔

 اسلام میں پورے ایک مہینے کا روزہ رکھنے کو بھی واجب کیا گیا ہے۔ ایسے میں گاندھی کے ستیہ گرہ، جیسے ہتھیار بنا کر انا ہزارے آج ہیرو بن گئے کیوں نہیں مسلمان اسے استعمال کر کے اپنے مسائل کا حل تلاش کرنے کی کوشش شکرتے ؟ وہ نفس سے لڑائی ،بات چیت کے ذریعے لڑائی اور انشن کے ذریعے اپنے سماج کے رہنما ؤں پر اسی طرح دباؤ کیوں نہیں بناتے جیسے انا حامیوں نے اراکین پارلیمنٹ اور سیاستدانوں پر بنا یا؟ آج کی مرکزی کابینہ میں مسلمانوں کے نام پر عہد ہ حاصل کرنے والے سلمان خورشید ،غلام نبی آزاد ،فاروق عبداللہ اور ای احمد جیسے لیڈ رجگہ بنائے ہوئے ہیں۔ اگر یہ سبھی مسلمانوں کے مسائل کے تئیں حساس ہوجائیں تو 100فیصد نہ سہی مسلمانوں کے مسائل میں کچھ تو کمی آئے گی لیکن ایسا نہیں ہورہا ۔ ایسے میں ایک ہی راستہ نظر آتا ہے کہ مسلمان آج مسلم وزرا  ،ممبران پارلیمنٹ ،ارکان اسمبلی اور دیگر عوامی نمائندوں کا بغیر تشدد  کے گھیراؤ کر کے اپنے مسائل کے حل کا دباؤ بنا ئیں تو حیرت نتائج سامنے آسکتے ہیں۔اسی طرح سے وہ وقف دیگر اداروں پربھی ایک نفسیاتی دباؤ قائم کرسکتے ہیں ۔آخر مسلمان کب تک اپنے رہنماؤں کی طرف سے ٹھگے جاتے رہیں گے ؟ آزادی کے بعد کے کچھ ابتدا ئی برسوں کو چھوڑ دیا جائے تو مسلمانوں کے ووٹ سے منتخب ہونے والے اور مسلم نمائندگی کے نام پر کابینہ میں جگہ بنانے والے لیڈر اپنے سماج کے بجائے پارٹی اعلیٰ کمان کے تئیں ہی وفاداری ظاہر کرتے رہے ہیں۔ اعلیٰ کمان کے تئیں وفاداری ان کے لئے ضروری ہوسکتی ہے۔

بشکریہ : اردو روز نامہ صحافت، نئی دہلی

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/anna-hazare’s-movement--muslims-need-a-gandhi-today--انا-تحریک-نے-دیا-پیغام-،مسلمانوں-میں-آج-گاندھی-کی-ضرورت/d/5346

 

Loading..

Loading..