New Age Islam
Tue Sep 29 2020, 10:47 AM

Urdu Section ( 26 Aug 2010, NewAgeIslam.Com)

Muslim Juhala threaten Mayawati government over Ahmadiya issue: مایا سرکار احمدیہ فرقہ کو نصاب سے فوری ہٹائے

 

By Sultan Shahin, Editor, New Age Islam

25 Aug 2010

 

Mullahs and maulvis of Uttar Pradesh and some other self-styled Muslim leaders have threatened Mayawati government of dire consequences unless a chapter on Ahmadiya Islamic sect is removed from the Social Study book of standard xth. These maulanas, reverentially called ulama (scholars), although most of them, completely ignorant of the world around them as they are, should be better called Juhala (ignoramuses), have warned U P chief minister Mayawati of country-wide protests, if this section of the book is not immediately removed.

 

The maulanas may have actually struck gold in the form of this mention of Ahmadiyas as an Islamic sect in the UP social science book. They have been on the lookout for long for an emotional issue on which to create more disturbances in the country and mint money. Babri demolition did not only rob the Sangh Pariwar of an issue to befool Hindus with; it also made our maulanas jobless.

 

Kafirs, Murtids galore, deserve their throats being slit

A few questions these Juhala should be asked. How come you all get so excited, if even a nincompoop like Chander Mohan claims to have embraced Islam, even if it is clear, right from the beginning that he is merely out to cheat his wife as well as his mistress? A wave of jubilation runs through the community almost world-wide even if one silly conversion takes place, even if it is done under compulsion which is totally opposed to Islamic teachings.

 

But on the other hand practically every Muslim “scholar” is eager to denounce virtually every Muslim sect other than his own as Kafir or murtid and out of Islam.

 

Now why should Mayawati government merely exclude Ahmadiyas from the text books? Why not Shias? Why not Wahhabis? Why not Sunnis? Why not Bareilwis? Why not Deobandis? Why not Sufis? And so on. They are all kafirs in the eyes of one or the other sect.

 

If no one knows what Islam is all about, why teach Islam at all?

Ask all these Juhala, who are mentioned in the report below, who are asking Ahmadiyas to be excluded from the text books, ask them the same question, the former chief justice of Pakistan Supreme Court Justice Munir, investigating the widespread riots against the Ahmadiyas in 1953, had asked the Juhala of every sect in his country: Who is a Muslim? How would you define Islam? No two Juhala, he reported, in his report [available on this site in full], even from the same sect agreed on any definition of a Muslim.

 

So the real question before Mayawati government would be: If no one knows what Islam is all about, why teach Islam at all? Excluding Islam itself from the text books should be the safest option.

 

 http://www.newageislam.com/urdu-section/muslim-juhala-threaten-mayawati-government-over-ahmadiya-issue--مایا-سرکار-احمدیہ-فرقہ-کو-نصاب-سے-فوری-ہٹائے/d/3351

---

 

 Mayawati Govt. should take any mention of Ahmadiya Islamic sect out of the U.P curriculum immediately, demand Ulema and Muslim leaders, threaten action

 

A report in Urdu newspaper Hamara Samaj, New Delhi

25 Aug 2010

 

Strongly criticising the inclusion of the Qadiani sect founded by Mirza Ghulam Ahmad Qadiani in the 19th century in the syllabus of Social Science text book of the UP, all the ulema of various schools of thought, have unanimously demanded its exclusion from the syllabus immediately. They said that since the Muslims the world over had unanimously expelled Ahmadiyya sect from Islam, it is all the more painful to term them as a reformist sect among the Muslims and that if the UP government did not expunge it from the syllabus it should be ready to face the ire of the Muslims. It is surprising that the UP government had been informed of the Ahmadiyya sect being termed as a sect of Muslims and their inclusion in the syllabus time and again but despite assurances, hurting the Muslim sentiments had been going on.

It is to be noted that on page 30 of ‘Samajik Vigyan’ of Class X, in the chapter titled “Ahamdiyya Andolan”, the sect has been linked to Muslims terming it as a reformist sect. Not only that, on page 29, in the essay titled ‘Muslim Andolan’ an attempt has been made to present Muslims as divided into various sects as Wahabi Andolan( Movement), Deobandi Andolan and Aligarh Andolan. It is to be noted that Mirza Ghulam Ahmad was born in mouza Qadian in Gurdaspur district of Punjab (India) in 1839. He claimed to be a prophet in 1899 and died in 1908.

Reacting on the inclusion of the Ahmadiyya sect in the school syllabus, the President of Jamiat-e-Ulema, Hind, Qari Syed Md Usman Mansurpuri said that it was grossly wrong and hurtful to Muslims. Despite the fact that Darul Uloom Deoband had constantly run a movement against the Ahmadiyyas, the act has hurt Muslim sentiments. Qadianis do not believe in Hadhrat Mohammad (PBUH) as the last prophet and believe in Mirza Ghulam Ahmad Qadiani too as a prophet. So the Muslims cannot compromise on it. He said that it was injustice to Muslims to include the Ahamadiyya sect as a reformist sect among the Muslims and demanded that the UP government should exclude it from the syllabus immediately otherwise the Jamiat-e-Ulema would launch a nationwide movement.

The General Secretary of All India Personal Law Board Maulana Nizamuddin said that the Islamic world including India and Pakistan had excluded Ahmadiyya sect from Islam, so Muslims could not tolerate being ridiculed in this way. The founder of Darul Qalam, Maulana Yasin Akhtar Misbahi said the Muslims of the entire world had rejected the Qadiani sect and a fatwa was in effect against them and therefore, it was intolerable to include them in Muslims or in a book. He also said that the incident also proved that either the author had poor knowledge or he had done it deliberately to create mischief. He demanded that the UP government should take immediate action taking out from the syllabus not only the aforesaid chapter but all such poorly researched material that might mislead the young generation. Joint Secretary of All India Council for the Protection of Finality of the Prophet(PBUH) under Darul Uloom Deoband which is fighting against the ‘false’ propaganda of the Qadianis, Maulana Shah Alam Gorakhpuri told Hamara Samaj that a delegation led by Saharanpur MLA Imran Masud, Haji Md Anas Usmani, Deoband and Amir Usmani, Deoband, conveyed Council’s message to the representatives of the Mayawati government, Nasimuddin Siddiquee , Mr Abudl Mannan and others demanding the removal of the chapter from the syllabus but the state government did not show seriousness over the issue. He said that Hamara Samaj deserved praise for its coverage of the issue over the Ahmadiyya sect and they wanted that the UP government resolve this issue. Renowned Shia scholar and the member of the All India Personal Law Board Maulana Syed Kalbe Jawad clearly said, “The Islamic world has declared the Ahmadiyyas as non-Muslims and apostates. How then can we tolerate their inclusion in the Muslim community or in the syllabus?” He asked. He said that including them in the syllabus would mean misleading our new generation. “We, therefore, request the UP government to immediately remove this sect from the syllabus”, he said.

Drawing the government’s attention towards the issue, Maulana Abdul Khalique Sambhali of Darul Ulum Deoband said that the issue was an important religious one of the Muslims and no complacency would be tolerated over it. He demanded that the UP government take action and bring the guilty to the book. The President of the All India Milli Council said that the inclusion of the expelled Ahmadiyya sect would not be tolerated at any cost as it would mislead our new generation. Maulana demanded that the UP government remove it from the book and cleansed the book (committee) of Muslims who are enemies of Islam in the disguise of Muslims.

General Secretary of the Jamat-e-Islami Hind, Mujtaba Faruque argues that the Qadiani sect is in fact a product of the Jews and the Christians. That the centre of the Ahmadiyyas is in Britain is clear testimony to this. He said that the UP government should realise that it was not wise to hurt the Muslims. He warned that they would be compelled to launch a movement if the essay was not expunged immediately.

General Secretary of the All India Majlis-e-Mashawarat , Maulana Umeduzzaman Kairanvi and Secretary Md Ilyas Malik jointly said that they would not tolerate it and the chapter should be removed immediately. They said that the syllabus committee should have realised the dangers of including the sect in the syllabus and called for a stop on hurting Muslim sentiments. Maulana Abdul Wahab Khilji of Jamiat-e-Ahle-Hadith said that those associated with the syllabus committee should know that Mirza Ghulam Ahmad Qadiani was a product of the British who had promoted Mirza to create schism between the Muslims and their fellow countrymen. Muslims have jointly declared this sect as apostates. I feel that it was done with the purpose of hurting the sentiments of the Muslims, he said. He further said that if the UP government rectifies its mistake, it will be good for it otherwise it may toll the death knell for this government.

Maulana Tauqueer Raza Khan said, “In fact such problems are created to divert Muslims’ attention from their own problems. Such acts are committed to deprive us of our peace of mind. We do not expect Mayawati government to protect Muslims’ interests. But at least as citizens of a democratic country, we will ask the UP government to remove the essay immediately otherwise it should be ready to face the consequences because if it is not done, we shall launch a nationwide movement.”

General Secretary Tanzeem Abna-e-Sharfia, Mubarakpur, UP, Maulana Mubarak Hussain Misbahi reacted strongly saying this was an extremely wrong step taken by the UP government and the essay should be removed immediately. He furher said that since Mirza Ghulam Ahmad Qadiani has been expelled from Islam and to include such a person in the ranks of the Muslims hurts sentiments of the Muslims. The former Chairman of the Delhi Minority CommissionKamal Farooquee said that the UP government must punish those guilty of it. He said that there was no alternative to removing such material from the syllabus otherwise the UP government would have to face our agitations. The National President of Muslim Political Council of India Dr Taslim Ahmad Rahmani said the Muslims live on the power of truth. The Ahamadiyya sect can never get a place in the Muslim community till the Day of Judgement, albeit, the Mayawati government will have to pay the price. A teacher in Darul Uloom Salfia, Varanasi, UP said, “All the Muslims in the world are unanimous on the fact that Ahmadiyya sect is out of the purview of Islam. Given the truth, how can we tolerate that this sect is included in the syllabus terming it a parallel sect among the Muslims?” He further said that the essay should be removed immediately otherwise the Muslims would launch a nationwide movement and it will then be difficult for the Mayawati government to face the consequences.

The naib imam of Shia Jama Masjid, Delhi and the Principal of Jamiat-us-Shaheed Maulana Muhsin Taqvi said, “If a sect has already been expelled from Islam, why was such a committee formed that hurt the Muslims’ sentiments?” He warned the UP government of the Muslims’ ire if it did not heed to their protests.

 URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/muslim-juhala-threaten-mayawati-government-over-ahmadiya-issue--مایا-سرکار-احمدیہ-فرقہ-کو-نصاب-سے-فوری-ہٹائے/d/3351

ریاست یوپی میں دسویں جماعت کی سماجیات کی کتاب میں احمدیہ فرقہ کوشامل کرنے پر علمائے کرام اور سرکرہ شخصیات کا سخت رد عمل

نئی دہلی؍ رامپور: یوپی کی دسویں جماعت کی سماجک وگیان میں مرزا غلام احمد قادیانی کے ذریعہ انیسویں صدی میں تولد پائے احمد یہ فرقہ کی شمولیت پر تمام مکتب فکر کے علمائے کرام نے متفقہ طور پر سخت تنقید کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ یوپی سرکار ا س فرقہ کو فوری طور پر نصاب سے خارج کرے۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ چونکہ پوری دنیا کے مسلمانوں نے متفقہ طور پر احمد یہ فرقہ کو اسلام  سے خارج کیا ہوا ہے ، اس لئے اس کو مسلمانوں میں سے ایک مصلح فرقہ قرار دیا جانا ہمارے لئے مزید تکلیف دہ ہے اور اگر یوپی سرکار نصاب سے خارج نہیں کرتی تو وہ مسلمانوں کے عتاب کیلئے تیار رہے۔ حیرانی کی بات ہے کہ احمدیہ فرقہ مسلمانوں کے صف میں کھڑاکرنے اور اس کو شامل نصاف کرنے کے بعد اس پر یوپی کی مایاوتی سرکار کو مسلسل آگاہ کیا گیا تھا ،لیکن یقین دہانیوں کے علاوہ مسلمانوں کی دلآزاری کا سلسلہ جاری رہا۔ خیال رہے کہ دسویں جماعت کی ‘‘سماجک وگیان’’ کی کتاب کے صفحہ نمبر 30پر ‘‘ احمدیہ آندولن’’ کے نام احمدیہ فرقہ کو مسلمانوں سے جوڑ تے ہوئے اس کو مصلح قرار دیا گیا ہے۔ اتنا ہی نہیں مسلمانوں کو مختلف فرقوں میں تقسیم کرتے ہوئے صفحہ 29پرنوجاگرن تتھا ارشٹریہ کاؤکاس کے تحت ‘‘ مسلم آندولن’’ نامی مضمون میں مسلمانوں کو وہابی آندولن ،دیوبندی آندولن اور علی گڑھ آندولن کے تحت انہیں مختلف فرقوں میں تقسیم کرنے کی بھرپور سازش کی گئی ہے۔

قابل ذکر ہے کہ مرزا غلام احمد قادیانی کی پیدائش 1839میں پنجاب کے ضلع گرداس کے موضع قادیان میں ہوئی ، 1899میں نبی ہونےکا دعویٰ کیا اور 1908میں انتقال ہوا۔ یوپی کی نصابی کتاب میں احمدیہ فرقہ کی شمولیت کے تعلق سے جمعیۃ علما ہند کے صدر مولانا قاری سید محمد عثمان منصورپوری نے سخت رد عمل کا اظہار کرتےہوئے کہا کہ یہ انتہائی غلط اور مسلمانوں کو تکلیف پہنچانے والی بات ہے۔دارالعلوم دیوبند نے احمدیہ فرقہ کیخلاف مسلسل تحریک چلائی ہوئی ہے، اس کے باوجود ایسی کوئی حرکت مسلمانوں کی دلآزاری کے سوا کچھ نہیں ۔ قادیانی نعوذ بااللہ آخری نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو آخری نبی نہیں مانتے اور مرزا غلام احمد قادیانی کو بھی نبی کہتے اس لئے قادیانیوں کے تعلق سے مسلمان کوئی سمجھوتہ نہیں کرسکتا۔ قاری محمد عثمان نے سخت الفاظ میں کہا کہ نصاب میں بحیثیت ایک مسلم  مصلح فرقہ کے شامل کرنا مسلمانوں کے ساتھ ظلم وزیادتی ہے، اس لئے یوپی سرکار اس مضمون کو فوری طور پر کتاب سے خارج کرے ورنہ جمعیۃ علما ہندملک گیر تحریک چلانے پر مجبور ہوگی۔ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے جنرل سکریٹری مولانا نظام الدین نے کہا کہ احمد یہ فرقہ کو ہندوپاک سمیت پورے عالم اسلام نے خارج قرار دیا ہے اس لئے مسلمان برداشت نہیں کرسکتا کہ ان کا مزاق اڑایا جائے۔

مولانا نظام الدین نے کہا کہ یوپی سرکار کتاب سے احمد یہ فرقہ کو فوری ہٹائے ورنہ اس کا خمیازہ برداشت کرنا پڑے گا۔ دارالقلم کے بانی و مہتمم مولانا یاسین اختر مصباحی نے کہا کہ مرزا غلام احمد قادیانی کے فرقہ قادیانیت کو پوری دنیا کے مسلمان مسترد کرچکے ہیں اور ان پر کفر کا فتویٰ صادر ہے، پھر انہیں مسلمانوں میں یا کسی نصابی کتاب میں شامل کرنا ناقابل برداشت ہے۔انہوں نے کہا کہ اس سے یہ بھی ثابت ہوا کہ کتاب کے مصنف کا یا تو بھرپور مطالعہ نہیں ہے یا اس نے شر انگیز ی پھیلانے کیلئے ایسی حرکت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یوپی سرکار فوری کارروائی کرتے ہوئے نہ صرف وہ مضمون بلکہ ایسے تمام غیر تحقیقی مضامین کو نصاب سے خارج کرے ، جن سے ہندوستان کی نئی نسل گمراہ ہوتی ہے۔ احمدیہ فرقہ کے جھوٹے پروپیگنڈے کے خلاف دارالعلوم دیوبند کی کل ہند مجلس تحفظ ختم نبوت کے نائب ناظم مولانا شاہ عالم گورکھپوری نے ہمارا سماج کوبتایا کہ مجلس کی جانب سے یوپی کی مایاوتی سرکار کے نمائندوں نسیم الدین صدیقی، مسٹر عبدالمنان وغیرہ کو بھی سہارنپور کے ممبران اسمبلی عمران مسعود ،حاجی محمد انس عثمانی دیوبند اور عامر دیوبند کے ایک وفد کے ذریعہ مجلس کا پیغام پہنچاتے ہوئے یوپی سرکار سے نصاب سے ہٹانے کا مطالبہ کیا گیا تھا، لیکن ریاستی سرکار مسلمانوں کے جذبات کا خیال کرتے ہوئے اس  قضیہ کو فوری نمٹائے ۔

معروف شیعہ عالم اور مسلم پرسنل لا بورڈ کے سینئر رکن مولانا سید کلب جواد نے صاف طور پر کہا کہ احمدیہ فرقہ کو عالم اسلام نے اسلام سے خارج اور مرتد قرار دیا ہے اس لئے ہم یہ کس طرح برداشت کرسکتے ہیں کہ اس فرقہ کو شامل نصاب کیا جائے یا اس کو مسلمانوں کی  جماعت میں شامل کردیا جائے۔انہوں نے کہا کہ نصاب میں شامل کرنے کا مطلب ہماری نئی نسل کو گمراہیوں میں مبتلا کرتا ہے اسلئے ہم یوپی سرکار سے فوری مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ بلاتاخیر اس فرقہ کونصاب سے خارج کرے۔ دارالعلوم دیوبند کے نائب مہتمم مولانا عبدالخالق سنبھلی نے ریاستی سرکار کی اس طرف فوری توجہ دلاتے ہوئے کہا کہ یہ مسلمانوں کے اہم مذہبی مدعہ سے جڑا ہوا مسئلہ ہے، اس لئے اس پر کوتاہی برداشت نہیں ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ اس پر یوپی سرکار ایکشن لے اور ان تمام لوگوں کے خلاف کارروائی کرے جو اس حرکت کے مرتکب ہیں ۔ آل انڈیا ملی کونسل کے صدر مولانا عبد اللہ مغیثی نے کہا کہ ہم قطعی برداشت نہیں کریں گے کہ خارج اسلام احمدیہ فرقہ کو یوپی کے نصابی کتاب میں شامل کیا جائے، جس سے ہماری نئی نسل کو گمراہ کیا جائے۔

مولانا نے کہا کہ یوپی سرکار اس کو فوری نکالے  اور کتاب کو ایسے لوگوں سے پاک کرے جو مسلمانوں کے نام پر اسلام کے کھلے دشمن ہیں۔ جماعت اسلامی ہند کے جنرل سکریٹری مجتبیٰ فاروق کا موقف ہے کہ دراصل قادیانی فرقہ یہود یوں اور انگریزوں کی پیداوار ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس پر یقین رکھنے کیلئے یہ کافی ہے کہ آج بھی برطانیہ میں احمدیوں کا مرکز ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ تو یوپی سرکار کو سمجھ میں آنا چاہئے کہ مسلمانوں کو تکلیف پہنچانا ٹھیک نہیں ۔ مسٹر فاروق نے کہا کہ اگر فوری کارروائی کر کے مضمون خارج نہیں کیا گیا تو ہم تحریک چھیڑ نے پر مجبور ہوجائیں گے۔آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت کے جنرل سکریٹری مولانا عمید الزماں کیرانوی اور سکریٹری محمد الیاسی ملک نے مشترکہ طور پر کہا کہ ہم ہر گز برداشت نہیں کریں گے۔ یوپی سرکار اس مضمون کو فوری ہٹائے ۔ انہوں نے کہا کہ اس نصابی کمیٹی کو سمجھنا چاہئے کہ اس فرقہ کو مسلمانوں میں شامل کرنا کتنی خطرناک بات ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسی حرکتوں سے مسلمانوں کی دلآزاری بند ہونی چاہئے ۔ جمعیت اہل حدیث ہند کے سابق ناظم عمومی مولانا عبدا لوہاب خلجی کا کہنا تھا کہ جن لوگوں نے نصاب میں شامل کیا ہے انہیں اس تاریخ کو جاننا چاہئے کہ مرزا غلام احمد قادیانی انگریزوں کے پروردہ تھے ۔

انگریزوں نے مسلمانوں اور برادران وطن میں انتشار کیلئے مرزا کو کھڑا کیا تھا ۔مسلمان متفقہ طور پر اس فرقہ کو مرتد قرار دیتے ہیں۔ مجھے لگتا ہے کہ مسلمانوں کو دلی تکلیف پہنچانے کی غرض سے ایسا کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مایاوتی حکومت اگر فوری سنبھل جاتی ہے تو ٹھیک ورنہ یہ بات بی ایس پی کیلئے موت کا سبب بن سکتی ہے۔ نبیر ہ اعلیٰ حضرت مولانا توقیر رضا خان نے کہا کہ دراصل مسلمانوں کو اپنے بنیادی مسائل سے ہٹانے کیلئے ایسے مسائل پیدا کئے جاتے ہیں۔ ہماری چین وسکون چھیننے کیلئے ایسی حرکتیں کی جاتی ہیں۔ ہمیں مایاوتی سے مسلمانوں کے مفاد کی توقع نہیں ہے ، لیکن ایک جمہوری ملک میں کم از کم ہم یوپی سرکار سےکہیں گے کہ وہ اس مضمون کو فوری ہٹائے ورنہ اس کا خمیازہ بھگتنے کیلئے تیار رہے، کیونکہ اگر ہٹایا نہیں گیا تو وہ ملک گیر تحریک چھیڑ نے پر مجبور ہوجائیں گے۔ جنرل سکریٹری تنظیم ابنائے اشرفیہ مبارکپور یوپی مولانا مبارک حسین مصباحی نے سخت رد عمل پیش کرتے ہوئے کہا کہ یوپی سرکار کے ذریعہ یہ انتہائی غلط قدم ہے اس لئے اس کو پہلی فرصت میں خارج کیا جائے ۔

انہوں نے کہا کہ چونکہ مرزا غلام احمد قادیانی اسلام سے خارج ہیں اس لئے مسلمانوں کی صفوں میں ایسے شخص کو کھڑا کرنا مسلمانوں کی دلآزاری ہے۔ دہلی اقلیتی کمیشن کے سابق چیئر مین کمال فاروقی نے دوٹوک الفاظ میں کہا کہ یوپی سرکار کو اس حرکت پر انہیں سزا دینی ہوگی جنہوں نے ایسا کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نصاب سے ایسی چیز ہٹانے کے سوا کوئی دوسرا راستہ نہیں ہے، ورنہ یوپی سرکار کو ہماری تحریکوں کاسامنا کرنا پڑے گا ۔ مسلم پولیٹیکل کونسل آف انڈیا کے قومی صدر ڈاکٹر تسلیم احمد رحمانی نے سخت تنقید کرتے ہوئے کہاکہ مسلمان حقانیت پر زندہ ہیں ۔مایاوتی کے کہنے سے مسلمانوں میں احمدیہ فرقہ کو قیامت تک جگہ تو نہیں ملے گی البتہ اس کا خمیازہ یوپی سرکار کو ضرور بھگتنا ہوگا۔ دارلعلوم سلفیہ بنارس یوپی کے استاذ مولانا محمد مستقیم سلفی کا کہنا تھا کہ دنیا کے مسلمانوں کا متفقہ فتوی ہے کہ احمدیہ فرقہ خارج اسلام ہے ، اسی صورت میں ہم کس طرح برداشت کرسکتے ہیں کہ اس فرقہ کو مسلمانوں میں ایک مساوی مسلک قرار دیتے ہوئے شامل نصاب کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ اس کوفوری ہٹایا جانا چاہئے ، ورنہ مسلمان اس کے خلاف پورے ملک میں تحریک چھیڑدیں گے اور مایا وتی سرکار کو راہ فرار نہیں ملے گی۔ شیعہ جامع مسجد دہلی کے نائب امام اور جامعۃ الشہید کے پرنسپل مولانا محسن تقوی کہتے ہیں کہ جب ایک فرقہ اسلام سے خارج ہے تو نصابی کمیٹی ایسی کیوں بنائی گئی جس نے مسلمانوں کو دلی تکلیف پہنچائی ۔ مولانا نے کہا کہ یوپی سرکار فوری سنبھل جائے ورنہ مسلمانوں کا عتاب جھیلنے کیلئے تیار رہے۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/muslim-juhala-threaten-mayawati-government-over-ahmadiya-issue--مایا-سرکار-احمدیہ-فرقہ-کو-نصاب-سے-فوری-ہٹائے/d/3351

 

Loading..

Loading..