New Age Islam
Sun Sep 27 2020, 09:30 PM

Urdu Section ( 20 Sept 2011, NewAgeIslam.Com)

Islamic Awakening Conference اسلامی بیداری کانفرنس



The following response to the recently held so-called Islam Awakening Conference in Tehran in an Indian Urdu newspaper editorial shows the unquestioning manner in which Muslim intelligentsia, if the journalists running Urdu newspapers can be described as such, are willing to treat anything done in the name of Islam. Someone has to merely target America and the West and invoke the name of Islam to get their support. The following editorial in India’s largest circulated Urdu newspaper, Rashtriya Sahara, is a prime example of this phenomenon. No questions are asked in the following editorial, for instance, if Iran can be legitimately called an Islamic state. How many of Indian Urdu journalists would want to live under the repressive Mullah regime that is running Iran. They do not tire abusing India’s democratic government or the West day in and day out, without realising ever and certainly never mentioning, even if they do realise it in their saner moments, that there is no so-called Islamic government, whether Sunni or Shia where they can do the same, indeed they couldn’t even run a newspaper itself. Not to mention newspapers, you cannot go to Saudi Arabia, for instance, even with a copy of the Holy Quran with a translation that has not been specifically approved by the Saudi kingdom’s high priests. This is not at all to justify American or Western actions in Libya or Iraq or elsewhere. Their foreign policy, of course, leaves much to be desired, as pages of New Age Islam keep documenting everyday. But one wishes educated Muslims were a little self-critical and introspective too. This would bring a much-needed balance in their approach and encourage the community too to be more level-headed. Islam teaches us balance. Extremism of any kind is anathema to it. We are taught not to become extremists even in the matter of saying prayers. Let us always try to look within while criticising others. – Sultan Shahin, Editor, New Age Islam

Editorial in Rashtriya Sahara, New Delhi

(Translated from Urdu by Arman Neyazi, NewAgeIslam.com)

A two-day “Islamic Awakening Conference” was held in Tehran at a time when Islamic world is passing through a difficult time. Western powers are striving hard to intervene in the Islamic world with their crocodile tears and artificial sympathy. Many Muslim countries are passing through changes and many are on the verge of revolution.

On the question of Palestine being accorded UN membership, America and Europe have come out with their original anti-Islamic face. Even then, because of West’s misleading propaganda, most of the heads of states of Muslim countries are looking towards them for solution of their problems. It is obviously an act of self destruction.

In such a scenario, this ‘Islam Awakening Conference’ organised by Iran is a step in the right direction in awakening the Islamic world from its deep slumber and understanding the cunningness of the western countries. It is an effort to try and get the solution of their problems from within this cosmic and heavenly religion, Islam. It is the only religion which can save human beings from being lost in the alleys of darkness. Only thing needed at the moment is to make Muslim rulers and heads of states understand that they have a heavenly power at their disposal and that they just have to use it to solve even their most difficult problems.

Supreme spiritual leader of Iran Ayatollah Khomeini has warned the revolutionaries of the Arab world not to heed the American and Western advice and go for the Islamic rules and regulations. He has said that they will get the answer of all their problems in Islam. Various Arab nations also are participating in this conference.

Libya is the latest example where NATO armies have been targeting civilians on the excuse of controlling Libyan leader Muammar al Quaddafi. Today, when Libya is under the control of the rebels, America and NATO countries are seeking to benefit from the administration they have helped to install.  In Syria also, Western countries are busy in misleading the common man’s agitation for their own benefit. This does not mean that agitations should not be organised against Quaddafi in Libya and Bashar ul Assad in Syria after what they have done. This is necessary and is in the interest of the people. But, if it is done under the banner of American and Western countries it will bring devastation and nothing else. Iraq is a living example of it. If these revolutions are done under the boundaries of Islam its solution will be permanent and beneficial for the masses and Muslim countries will not have to look to America and Western countries.

Iran in itself is a living example in this regard. The people of Iran agitated against the barbarism of former Shah within the boundaries of Islam and ultimately Shah had to relinquish his government. Iran is going ahead on the path of development even in the face of all kinds of American pressures because its revolution was of its own making and within the boundaries of Islam.

Iran’s ‘Islamic Awakening Conference’ is an effort to take the Muslim world on the path of self sufficiency. Spiritual leader of Iran, Ayatollah Khomeini clearly said, “Never believe criminal minded America, NATO, Britain, France and Italy. All these countries have a criminal mindset. They distributed your land between themselves and destroyed you for a long period of time.” Khomeini further said, “Beware of them (America and NATO countries) and do not believe in their smiling faces. Behind their smiling faces and promises are hidden their evil designs”.

It is difficult to say, for how long the participating Islamic countries will follow Iran’s spiritual leader Ayatollah Khomeini but there is no denying the fact that if these countries thought even for a moment it will be clear that America and its allies have always damaged their interest and confiscated their rights. Had it not been so, Palestine would have been in Europe or Africa not in the Arabian peninsula and Palestinians would not have to go from door to door seeking their homeland.

The question is: Will this conference be able to awaken the Muslim world?

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/islamic-awakening-conference--اسلامی-بیداری-کانفرنس/d/5528

ایران کی راجدھانی تہران میں دوروزہ ’’اسلامی بیداری کانفرنس‘‘ کا انعقاد ایسے موقع پر ہوا ہے ، جب عالم اسلام ایک نازک دور سے گزر رہا ہے۔ مغربی طاقتیں اپنی شاطرانہ و مصنوعی ہمدردی کے ذریعہ اسلامی ممالک میں مداخلت کے مواقع تلاش کررہی ہیں۔ کئی مسلم ممالک تبدیلی کے مرحلے سے گزررہے ہیں اور کئی ممالک کے دروازے پر انقلاب دستک دہے رہا ہے۔ فلسطین کو اقوام متحدہ کی رکنیت دیئے جانے کے سوال پر امریکہ اور یوروپ اپنے اصل اسلام دشمن چہروں کے ساتھ سامنے آچکے ہیں۔ لیکن دنیا بھر کے مسلم قائدین اس کے باوجود مغرب کے گمراہ کن پروپیگنڈہ کے سبب اپنے مسائل کے حل کے لئے یوروپ اور امریکہ کی طرف دیکھ رہے ہیں ۔ ظاہر ہے یہ عمل اپنے پیروں میں کلہاڑی مارنے کے مترادف ہے۔

ان حالات میں ایران کے ذریعہ دوروزہ اسلامی بیداری کانفرنس درحقیقت عالم اسلام کو خواب غفلت سے بیدار کرنے مغرب کی عیاریوں کو سمجھنے کا شعور پیدا کرنے اور اپنے مسائل کا حل ہیں آفاقی مذہب یعنی اسلام میں تلاش کرنے کی ترغیب دینے کی کوشش ہے کہ جس میں انسانیت کو گمراہی سے بچانے اور ہر مسئلہ کو حل کرنے کی گنجائش ہے۔ ضرورت صرف اس بات کی ہے کہ مسلم حکمرانوں میں وہ اسلامی شعور اور مجاہدانہ عزم موجود ہو کہ جو پیچیدہ مسائل کے حل کی راہ میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔

اس لئے ایران کے سپریم لیڈر اور مذہبی رہنما آیت اللہ خامنہ ای نے عرب دنیا میں جاری تحریکوں میں شامل انقلابیوں کو یہ کہتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ وہ مغربی طاقتوں اور ان کے وعدوں پر اعتبار نہ کریں، بلکہ مسائل کا حل اسلام کے دائرے میں تلاش کریں ۔ تہران میں منعقدہ مذکورہ کانفرنس میں بڑی تعداد میں عرب نمائندے شریک ہورہے ہیں اور کہنے کی ضرورت نہیں کہ اس وقت کئی عرب اور مسلم ممالک میں پھیلی عوامی بے چینی یا حکومت سے عوام کی ناراضگی کو امریکہ اور مغربی ممالک ہوا دے کر اس خطے میں اپنی مداخلت کی راہ ہموار کررہے ہیں ۔ لیبیا کی مثال سامنے ہے کہ جہاں ناٹو افواج کرنل قذافی کے بہانے عام شہریوں کو بھی اپنے حملے کا نشانہ بناتی رہی ہیں اورآج جب کہ لیبیا پر باغیوں کا قبضہ ہوچکا ہے تو امریکہ اور ناٹو ممالک وہاں کے نظام میں درپردہ اپنے مفادات کے پہلو تلاش کررہے ہیں ۔ اسی طرح شام میں بھی عوام کے حکومت مخالف جذبات کو مغربی ممالک اپنے مفادات کے تحت غلط سمت دینے کی کوششوں میں مصروف ہیں۔ ان تمام باتوں کا قطعی یہ مطلب نہیں کہ لیبیا میں کرنل قذافی نے جو کچھ کیا یا شام میں بشارالاسد جو کچھ کررہے ہیں اس کے خلاف صدائے احتجاج بلند نہ کی جائے۔ ایسا کرنا مفاد عامہ میں ضروری ہے لیکن یہ صدائے احتجاج اگر امریکہ اور یوروپ کا دامن پکڑ کر اور اس کی رہنمائی میں بلند کی جائے گی تو سوائے تباہی وگمراہی کے کچھ حاصل نہ ہوگا۔ عراق اس بات کا کھلا ثبوت ہے، جب کہ اگر یہ صدائے احتجاج بلند کرتے وقت مسائل کا حل اسلام کے دائرے میں تلاش کیا جائے گا تو اس سے حاصل ہونے والے نتائج زیادہ ٹھوس اسلامی وقار کے مطابق اور داخلی اعتماد پر مبنی ہوں گے اور مسلم ممالک کو مغرب یا امریکہ کا منہ نہیں تاکنا پڑے گا۔ اس معاملہ میں خود ایران کی مثال سامنے ہے کہ جس نے سابق شاہ کے ظلم کے خلاف پورے اسلامی تشخص اور وقار کے ساتھ صدائے احتجاج بلند کی اور شاہ کو راہ فرار اختیار کرنے کے لئے مجبور ہونا پڑا لیکن کیونکہ یہ انقلاب مغرب سے درآمدنہیں کیا گیا تھا، اس میں امریکہ کا کوئی رول نہیں تھا، لہٰذا آج بھی ایران تمام تر امریکی دباؤ کے باوجود خود انحصاری کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔

تہران کی ‘‘اسلامی بیداری کانفرنس ’’ عالم اسلام کو اس خود انحصاری کی راہ پر لے جانے کی ہی ایک کوشش ہے۔ ایران کے روحانی لیڈر آیت اللہ خامنہ ای نے کانفرنس کا افتتاح کرتے ہوئے صاف کہا کہ ‘‘ امریکہ، ناٹو اور مجرمانہ ذہنیت رکھنے والی برطانیہ فرانس و اٹلی جیسی حکومتوں پر کبھی اعتبار نہ کریں، جنہوں نے طویل عرصہ تک (آپس میں) آپ کی زمینوں کو تقسیم کیا اور انہیں تباہ کیا۔ خامنہ ای نے مسلمانوں کو خبردار کیا کہ ’’ان یعنی (مغرب اور امریکہ) سے ہوشیار رہیں اور ان کی مسکراہٹوں پر یقین نہ کریں۔ ان مسکراہٹوں اور وعدوں کے پیچھے سازش و قریب پوشیدہ ہے۔ ،،کانفرنس میں موجود نمائندے،یا ان کی حکومتیں یاد یگر مسلم ممالک ایران کے مذہبی رہنما کی بات پرکس حد تک یقین کرتے ہیں یا عمل کرتے ہیں یہ کہنا تو مشکل ہے، البتہ اس میں کوئی شک نہیں کہ اگر مسلم ممالک ذرا سی بھی فہم و شعور کا مظاہرہ کریں اور امریکہ و مغرب کی تاریخ وعالم اسلام کے تعلق سے ان کی پالیسیوں وریشہ دوانیوں کا جائزہ لیں تو یہ بات پوری طرح ثابت ہوجائے گی کہ ان طاقتوں نے ہمیشہ ہی مسلم ممالک اور مسلمانوں کے مفادات کو نقصان پہنچایا ہے اور ان کے حقوق غصب کئے ہیں۔ اگر ایسا نہ ہوتا تو فلسطین کا قیام سرزمین عرب کی بجائے یوروپ یا افریقہ میں ہوتا اور فلسطینیوں کو آج دردر نہ بھٹکنا پڑتا۔ سوال یہ ہے کہ کیا یہ کانفرنس عالم اسلام کو بیدار کرنے کے اپنے مقصد میں کامیاب ہوگی؟

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/islamic-awakening-conference--اسلامی-بیداری-کانفرنس/d/5528

 

Loading..

Loading..