New Age Islam
Fri Sep 18 2020, 01:10 AM

Urdu Section ( 30 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

Religious Fanaticism now hallmark of Righteousness مذہبی تقویٰ پر جنون غالب


Sajid Rashid

Translated from Urdu by Arman Neyazi, NewAgeIslam.com

The heinous assassination of Salman Taseer has once again strengthened the ideology of the anti-Islam ideologues that Islam is “a religion of violence”. In the modern age, Islam is identified with a bearded man with the Quran in one hand and a gun in the other. Whenever any feature on Islam is telecast on the TV or appears in a newspaper, it is presented with a gun and the Quran along with incidence of poverty. The most surprising fact is that no Muslim or even a scholar expresses any discomfiture on such a picture of the present day Muslims. Nobody asks as to why the religion, whose founder had christened it a religion of peace and tolerance, who had offered forgiveness to his worst enemies after coming to power, who had kept his sword in his sheath after victory over Mecca, is being shown as a religion of violence.  When the Danish cartoonist had sketched Prophet Muhammad (SAW), I had written, had the cartoonist studied Prophet’s (SAW) life as a common Muslim he would not have done this disrespectful act. In fact Muslims have started presenting their violent acts as Islam’s teachings. The worst part of it is that all these heinous acts are being performed in the name of showing high respect for the Prophet (SAW) and Islam.

There is a great similarity between the assassination of Mrs. Gandhi and Salman Taseer. Both were assassinated by the people who had the responsibility of safeguarding them.  A bodyguard’s duty is to guard his master by even laying his own life. These people are sworn that they will not think twice in laying their lives for the safety of the people they are safeguarding.  Mrs. Gandhi was shot at indiscriminately by her bodyguard to avenge the Operation Blue Star. The Intelligence agencies had advised her not to have Sikh bodyguards as she had a threat to her life from them. Mrs. Gandhi had refused to accept this, saying “it will send a wrong message and I cannot do this”.

Like Mrs. Gandhi, Salman Taseer was also killed in a show of religious intolerance.  Salman Taseer was in favour of changes in “Tahaffuz Namoos e Resalat” law which was tabled in Pakistan’s Parliament by a brave Parliamentarian Sherry Rahman. A nationwide debate on this law had taken an ugly turn when a Christian lady Aasia Bibi was sentenced to death for having dishonoured the Prophet (SAW). Aasia Bibi had defended herself calling it nothing but a result of personal enmity. This case had attracted universal attention. In the aftermath of her conviction, Sherry Rehman and Salman Taseer had started advocating changes in this law so that it is not misused. Hardcore Mullahs of Pakistan were not in favour of changes in the anti-blasphemy laws while the moderates favoured them.

There were some holes in Pakistan’s laws but Gen. Zia ul Haque accepted these as inflexible and hardcore laws and named it “Tahaffuz-e-Namoos-e-Resalat”. Under the said law, a death sentence was prescribed as the punishment. Gen. Zia had committed a coup and had forcibly taken the rein of the government in his hands from his mentor, Zulfiquar Ali Bhutto, after hanging him to death. To legitimise his government in the eyes of the people of Pakistan under the patronage of Saudi Arabia and America he gave a slogan of implementing Sharia Laws. It may be mentioned that Zulfiquar Ali Bhutto had established Pakistan as Islamic Democracy. Even after that there had been no hindrance in appointing a non Muslim as a judge in Pakistan until Zia ul Haque established his bloodied rule there. One Christian Elvin Robert was appointed the Chief Justice of Pakistan Supreme Court in 1960. No non Muslim after that was appointed on this post for 47 long years. Rana Bhagwan Das was appointed Chief Justice by Perwez Musharraf in 2007. Under Mohammad Ali Jinnah Pakistan had got the honour of becoming such an ideal country of the South Asia that was the custodian of the human rights of the  Muslims but the professional politicians lost it in the hands of professional Mullahs. Majority community made the life of the minorities, Christians, Ahmadiyas and Hindus a hell for their own objectives. They were targeted under different excuses. Almost all the cases registered under this law were nothing but because of personal enmity and land dispute. A case under this law was lodged against a 12 year old innocent Christian boy and was shot outside the court only because he had raised a voice against the child labour in the carpet Industry. The accused booked under this law got killed outside the courts one after the other, in most of the cases. No Islamic scholar of Pakistan has till today expressed his grief on this misuse of religion. The inhuman treatment and injustices meted out to the minorities In Pakistan can be compared with Modi Government’s attitude towards the minorities in Gujarat. The minorities in Pakistan are only 3%. How can such a small section of minorities think of disrespecting the religious feelings of the majority? In fact religious fanaticism has taken over religious tolerance in Pakistan where the majority has turned into a cynical community. They have become engulfed by the sectarian hatred to the extent that they wish to keep the weaker section as a slave as Sangh Parivar wishes to have Dalits and Muslims in our country.

Quadri, the killer of Salman Taseer is being admired by his fans in the same way as the killers of Mrs. Gandhi were by a vast majority of Sikhs. None of the scholars of any sect of Muslims ever reminded these fanatics that forgiveness has been such a trait of Islam by dint of which the holy Prophet (PBUH) had changed the hearts of the savage tribals of Arab. Don’t the people claiming to be the protectors of the sanctity of the Prophet (PBUH) know that he (PBUH) had issued the orders to kill 17 people after the victory of Makkah. These were people who had committed grave crimes, including blasphemy against the Prophet (PBUH). The Prophet (PBUH) forgave all those who asked for his forgiveness. It should be noted that no seeker of forgiveness was killed. Five of them did not ask for his forgiveness, so they were killed. One of the persons who were pronounced by the Prophet (PBUH) to be killed was Habar Ibn Al Aswas. The Prophet (PBUH) was very angry with him. He had hit the camel of the Prophet’s (PBUH) daughter Hadhrat Zainab (R.A.) with a spear when she was migrating from Makkah to Medina. The camel had jumped and she had fallen down. She was pregnant. She had a miscarriage due to the impact of her fall and could not recover in her entire life.

The Prophet (SAW) forgave such a cruel person when he asked for his forgiveness. How much a father loves his daughter especially when she is pregnant! And if the daughter is pregnant the father cares for her more as a child is growing in her womb. The Prophet (PBUH) too loved his daughters a lot. Still he (PBUH) forgave the person who had caused pain and hurt to her and was the cause of her baby’s death.

Can the people of Pakistan, who claim to be the lovers of the Prophet (SAW) and commit barbaric acts against the minorities of the society in the name of blasphemy, prove from any of their act that they follow the teachings of the Prophet (SAW). Personally I am against any disrespect or dishonour shown against any religious personality or hurting the sentiments of any religious community but it is strange that blasphemy laws have only been formulated in Christian and Muslim countries to safeguard the honour of their own religion. For example, In England, the punishment for blasphemy against the Christ and Mother Mary is prescribed, (It is another matter that no one has been punished under this law in the last 100 years). Such laws come under a very limited definition of dishonour of beliefs.  Just think what will happen with the Muslims and Dalits of this country, if Hindus, 80% of the whole population, manage to enact such a law in this country.

The laws for the safety of religious beliefs will remain within the confines of bias until protection of the beliefs of other communities are not guaranteed. The laws safeguarding the beliefs of the majority in the Chirstian and Muslims countries give the impression that ‘the minorities should respect our beliefs; we will not respect theirs’. Salman Taseer’s assassination has brought Pakistan in line of savage tribal countries where religion is being used as a weapon against the ‘other’ and not for self-purification.

Source: Sahafat, New Delhi

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/-religious-fanaticism-now-hallmark-of-righteousness/d/4032


مذہبی تقویٰ پر جنون غالب

ساجد رشید

پنجاب (پاکستان) کے گورنر سلمان تاثیر کے بہیمانہ قتل نے ایک بار پھر اسلام مخالفین کے اس خیال کو تقویت پہنچائی ہے کہ اسلام ایک متشدد مذہب ہے۔ فی زمانہ جب اسلام کا نام لیا جاتاہے ایک ہاتھ میں بندوق اور دوسرے ہاتھ میں قرآن لئے نوجوانوں کی تصویریں نظروں میں گھوم جاتی ہیں۔ جب اخبارات میں اور الیکٹرانک میڈیا پر اسلام اور مسلمانوں کی بابت میں کوئی فیچر پیش کیا جاتاہے تو اس کی غربت کی تصویر کے ساتھ بندوق اور قرآن کی تصویریں ساتھ ساتھ دکھائی جاتی ہیں۔حیرت ناک امر یہ ہے کہ اس منظرکشی پر کسی بھی مسلمان کو اعتراض نہیں ہوتا ہے کہ وہ مذہب جس کے داعی نے اسے امن و آشتی کامذہب قرار دیا تھا جس نے اقتدار کے حصول کے بعد اپنے بدترین دشمنوں کو عام معافی دے دی تھی۔ جس نے فتح مکہ کے بعد اپنی تلوار کو نیام میں رکھ لیا اسے ایک بربریت پسند مذہب کے طور پر کیوں پیش کیاجارہا ہے۔ جب ڈینش کاٹونسٹ نے رسول اکرم کا کارٹون بنانے کی گستاخی کی تھی تو اس وقت بھی میں نے لکھا تھا کہ مذکورہ کارٹونسٹ نے اگر عام مسلمانوں کے بجائے رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت اور تعلیمات کامطالعہ کیا ہوتا تو وہ اس طرح کی گستاخی کامرتکب بھی نہ ہوتا۔ دراصل مسلمانوں نے اپنے بدترین اعمال کو اسلام کی افضل صفات کے طور پر پیش کرنا شروع کردیا ہے۔ افسوسناک امر تو یہ ہے کہ یہ سب کچھ اسلام اور رسول اللہ سے اپنی بے پناہ محبت اور عقیدت کے اظہار میں کیا جارہا ہے۔

پنجاب کے گورنر سلمان تاثیر کاقتل اور وزیر اعظم اندراگاندھی کے قتل میں بڑی یکسانیت ہے دونوں کو اس شخص نے بڑی بے رحمی سے قتل کردیا جس پر ان کے تحفظ کی ذمے داری تھی باڈی گارڈ کا کام اپنی جان کی بازی لگا کر اپنے مامون کی جان کا تحفظ کرنا ہے۔ ایسے افراد کو حلف دلایاجاتاہے کہ وہ مامون کی جان کی حفاظت کے تئیں اپنی جان دینے سے بھی گریز یں نہیں کریں گے۔ اندراگاندھی کوا ن کے ایک سکھ باڈی گارڈ نے آپریشن بلواسٹار کا انتقام لینے کے لئے گولیوں سے چھلنی کردیا تھا۔ اندراگاندھی کو انٹی جنس نے رپورٹ دی تھی کہ سکھ ان سے برگشتہ ہیں اس لئے وہ اپنے ان دونوں سکھ باڈی گارڈ ہٹادیں۔ اندرگاندھی نے اس مشورے کو یہ کہہ کر مسترد کردیا تھا کہ”اس سے ایک غلط پیغام جائے گا میں اس ایسا نہیں کرسکتی۔“سلمان تاثیر کو بھی ان کے بارڈی گارڈ نے مذہبی دل آزاری کی سزا میں گولیوں سے چھلنی کردیا۔ اس کے نزدیک سلمان تاثیر نے اس قانون تحفظ ناموس رسالت میں رد وبدل کی حمایت کی تھی جسے پاکستان کی پارلیمنٹ میں پیپلس پارٹی کے ایک بری ممبر پارلیمنٹ شیری رحمان نے پیش کیا تھا۔ پاکستان میں توہین رسالت کے قانون پر عرصہ سے جاری بحث نے اس وقت شدت اختیار کرلی تھی جب ایک عیسائی خاتون آسیہ بی بی کو پچھلے سال اس کے کچھ ہمسایہ عورتوں کی اس شکایت پر موت کی سزاسنائی گئی کہ اس نے توہین رسالت کی ہے۔آسیہ بی بی نے اس الزام کو ذاتی رنجش کا نتیجہ بتایا تھا اس معاملہ نے عالمی توجہ حاصل کرلی تھی۔ تب شیری رحمان اور سلمان تاثیر نے توہین رسالت کے قانون میں ایسے ردوبدل کی پیروی شروع کی تھی جس کے بعد اس قانون کا غلط استعمال نہ کیا جاسکے۔ پاکستان کے انتہا پسند ملاّؤں کویہ منظور نہیں تھا جب کہ وہاں کا اعتدال پسند طبقہ اس کے حق میں تھا۔

پاکستان کے آئین میں توہین عقائد کی ثق پہلے سے موجود تھی لیکن اسے ایک غیر لچکدار قانون کی شکل میں جنرل ضیاالحق نے آئین میں شامل کیا اور اسے تحفظ ناموس رسالت کا نام دیا۔مذکورہ قانون کے تحت مجرم کو قتل کی سزا تجویز کی تھی۔ جنرل ضیا اپنے محسن وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو کو پھانسی پر پہنچانے کے بعد پاکستان میں ناجائز طریقے سے قابض ہوگئے تھے انہوں نے اپنے غاصبانہ قبضے کو امریکہ اور سعودی حکومتوں کی سرپرستی میں مستقل شکل دینے کے لئے نظام مصطفی نافذ کرنے کا پرکشش نعرہ دے کر عام مسلمانوں کی حمایت حاصل کرنے کی کوشش کی تھی۔ ملحوظ رہے کہ پاکستان کا ذوالفقار علی بھٹو نے ’اسلامیہ جمہوریہ‘ قرار دیا تھا۔ اس کے باوجود پاکستان میں کسی غیر مسلم کے جج بننے میں کوئی رخنہ اس وقت تک حائل نہیں ہوا جب تک جنرل ضیاء نے پاکستان کے اقتدار پر اپنے خوں آشام پنجے نہیں گاڑ دیئے تھے۔1960 میں پاکستان سپریم کورٹ کے چیف جسٹس ایک عیسائی ایلوین روبرٹ بنائے گئے تھے۔ اس کے بعد 47برسو ں تک کوئی غیر مسلم چیف جسٹس نہیں بنا یا گیا۔2007 میں جنرل پرویز مشرف کے عہد میں رانا بھگوان داس چیف جسٹس نامزد ہوئے تھے۔ پاکستان کو جنوبی ایشیا کا ایک ایسا مثالی مسلم ملک بننے کا موقع جناح نے فراہم کیا تھا جس کو اقلیتوں کے حقوق انسانی کا سب سے زادمین قرار دیا جاسکتا تھا لیکن پاکستان کے پیشور ملاؤں کے دباؤ میں پیشور سیاستدانوں نے اسے کھو دیا۔

تحفظ ناموس رسالت کے نام پراکثریتی فرقہ نے ذاتی مقاصد کے تحت پاکستان کی اقلیتوں کی زندگی محال کردی عیسائیوں،احمدیوں اور ہندوؤں کو مختلف وجوہات کے تحت نشانہ بنایا جانے لگا توہین رسالت کے نام پر جتنے بھی معاملات درج کئے گئے ان کے پس پشت ذاتی رنجشیں اور زمینی تنازعے تھے۔ پندرہ سال قبل ایک بارہ سالہ عیسائی لڑکے کے خلاف اس لئے توہین رسالت کامقدمہ دائر کیاگیا تھا کہ وہ قالین کاریگر تھا اور قالین کی صنعت میں بچہ مزدور وں کے استحصال پر اس نے اپنی آواز بلند کی تھی۔ اس معصوم عیسائی بچے کو عدالت کے باہر گولی مار دی گئی تھی۔توہین رسالت کے باہر ہی ملزمین کا قتل کیا جاتا رہا ہے۔ مذہب کے اس افسوس ناک وحشیانہ استعمال پر پاکستان میں کسی عالم دین نے آج تک اظہار تاسف نہیں کیا ہے۔ پاکستان میں اقلیتوں کے ساتھ جو غیر انسانی سلوک ہورہا ہے اس کی نظیرصرف گجرات کے مسلمانوں کے ساتھ مودی حکومت کے رویے سے ہی دی جاسکتی ے۔ پاکستان میں دیگر اقلیتیں صرف تین فیصد ہیں زرا تصور کیجئے اتنی حقیر تعداد رکھنے والی اقلیت کیا کسی کی مذہبی دل آزاری کی جرأت کرسکتی ہے؟ دراصل پاکستان میں مذہبی تقویٰ پر مذہبی جنون اکثریت میں بدل دیاہے۔ نفرتی طاقت کے نشے میں اس قدر چور ہیں کہ وہ کمزوروں کو اسی طرح محکوم بنا کررکھنا چاہتے ہیں جس طرح ہمارے ملک میں مسلمانوں اور دلتوں کے ساتھ سنگھ پریوار کاسلوک ہے۔

سلمان تاثیر کو قادری نامی باڈی گارڈ نے قتل کیا اس کی وہاں اسی طرح پذیرائی ہورہی ہے جس طرح اندراگاندھی کے قاتلوں کی سکھوں کے ایک برے طبقے میں ہوئی تھی۔ پاکستان میں کسی بھی مسلک کے عالم دین نے ان جنونیو ں کو یہ بتانے کی ضرورت نہیں محسوس کی کہ عفو درگذر اسلام کی وہ بنیادی خصوصیت رہی ہے جس کی وجہ سے رسول اللہ نے عرب کے وحشی قبائل کی قلوب ماطیت کردی تھی۔ تحفظ رسالت کے جو دعوے دار ہنستے ہیں کیا وہ نہیں جانتے کہ رسول اکرم نے فتح مکہ کے بعد سترہ مردوں اور عورتوں کے قتل کا حکم جاری کیا تھا وہ لوگ تھے جو کسی نہ کسی سنگین شخصی جرم کے سبب قابل گردان زنی تھے، جن میں رسول اللہ کی توہین اور انتہائی دل آزاری بھی شامل تھی۔ ان میں سے جس نے بھی معافی مانگی یا کسی کے ذریعے سے معافی کی درخواست گذاری کی رسول اللہ نے اسے معاف کردیا۔غور طلب ہے کہ کسی بھی معافی کے درخواستگار کو قتل نہیں کیا گیا۔ ان میں سے پانچ نے معافی نہیں مانگی وہ قتل کردئے گئے۔ خدا کے رسول نے جن کا قتل واجب قرار دیا تھا ان میں ہبار ابن الاسود بھی تھے۔ ہمارے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فث منفا تھے۔ اس نے رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی صاحبزادی زینب زوجہ ابولعاص کے اونٹ کو اس وقت نیزہ مارا تھا جب حضرت زینب ہجرت کر کے مکہ سے مدینہ جارہی تھیں۔ اونٹ بھڑک کر اچھلا تھا اور وہ زمین پر گر پڑی تھیں۔ وہ حاملہ تھیں اونٹ پر گرنے سے حمل ساقد ہوگیا تھا اس واقعے کے بعدوہ آخر عمر تک بیمار رہیں۔ ایسے شقی القلب شخص نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے حضور میں حاضر ہوکر معافی طلب کی آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس معاف کردیا۔ایک باپ کو اپنی بیٹی سے کس قدر محبت ہوتی ہے، اگروہ حاملہ ہوتو اس کے لئے شفقت اس لئے بھی ہوتی ہے کہ اس کے بطن میں بچہ پل رہا ہوتا ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بھی بیٹیوں سے بے پناہ محبت کرنے والے مہربان والد تھے۔انہوں نے اس شخص کو معاف کردیاتھا جس نے ان کی بیٹی کو زک پہنچائی تھی اور اس کے بطن میں پلنے والی ذی روح کے قتل کا موجب تھا۔

پاکستان میں جو لوگ رسول اللہ کا دم بھرتے ہیں اورتوہین رسالت کی آڑ میں کمزور اقلیتوں کے قتل کے درپے سہمے ہیں کیا وہ اپنے کسی عمل سے یہ ثابت کرسکتے ہیں کہ انہوں نے اپنی زندگی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ہدایات کے عین مطابق گذاری ہے۔ میں ذاتی طور پر کسی بھی قابل احترام شخصیت او رکسی کی مذہبی دل آزاری کے سخت خلاف ہوں لیکن عجیب واقعہ ہے کہ مسلم اور عیسائی ممالک ہی میں مذہبی دل آزاری کے قوانین صرف ان کے اپنے مذہب کے تحفظ ناموس کے لئے وضع کئے گئے ہیں۔مثال کے طور پر انگلینڈ میں مسیح اور میری کی توہین کی سزا مقرر ہے۔یہ دیگر بات ہے کہ پچھلے سو برسو ں میں اس قانون کے تحت کسی کو بھی سزا نہیں دی گئی اس طرح کے قوانین توہین عقائد کی بہت محدود تعریف ِمیں آئے ہیں۔ ذرا تصور کیجئے ہمارے ملک کی بھی 80فیصد ہندو آبادی اپنے عقائد کے مطابق اسی طرح کے کچھ قوانین نافذ کرلے تو اس ملک کے دلتوں او رکمزور مسلمانوں کے خلاف ایسے قوانین کا استعمال کس سطح پر ہوگا شاید یہ بتانے کی ضرورت نہیں ہے۔مذہبی عقائد کے تحفظ کا قانون اس وقت تک عصبیت کے دائرے میں رہے گاجب تک کہ اس میں دیگر عقائد کے تحفظ کی گارنٹی نہیں دی جاتی دیگر اسلامی ممالک او رعیسائی اکثریتی ممالک کے مذہبی عقائد کا تحفظ کرنے والے قوانین صرف یہ تاثر دیتے ہیں کہ ہمارے مذہبی عقائد کااحترام کرو لیکن ہم کسی کے مذہبی عقائد کا احترام نہیں کریں گے۔سلمان تاثیر کے قتل نے پاکستان کو ایک وحشی قبائیلی ملک کی صف میں لا کھڑا کیا ہے جہاں مذہب تشہیر قلوب کے لئے نہیں بلکہ المیہ کے خلاف اسلحہ کے طور پر استعمال ہورہا ہے۔

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/sajid-rashid/religious-fanaticism-now-hallmark-of-righteousness-مذہبی-تقویٰ-پر-جنون-غالب/d/4032



Loading..

Loading..