New Age Islam
Tue Sep 22 2020, 02:18 PM

Urdu Section ( 24 Sept 2011, NewAgeIslam.Com)

Ideals of Prophet Muhammad (SAW) and our Community نبیٔ رحمت ﷺ کا اسوہ اور ہماری ملت

By Perwez Suhaib Ahmad

(Translated from Urdu by Arman Neyazi NewAgeIslam.com)

This is the worst time for Ummah. They are being humiliated everywhere. Muslim society has once again returned back to the same cultural disorder and evils which were prevalent during the age of Prophet Muhammad (pbuh). Prophet Muhammad (pbuh) had dedicated his life to erase these very evils and disorder from the face of the society.

Not to talk of disbelievers, even Ulema, who are supposed to be heirs of Ambia (as), are not following the path shown by the Prophet of Islam, Prophet Muhammad (pbuh). Ulema of the day are not taking Prophet’s noble manners and his life as a model for them. They are not promoting ‘invitation of righteousness’ (Dawat e Haque). They are busy in hypocrisy. In this situation it has become necessary to go back to our history to learn the lessons imparted by Imam ul Ambia, Prophet Muhammad (pbuh). We need to learn how Ambia e Keram lived their lives, what situations did they faced and how were they embarrassed and tortured. We must also know that Prophet Muhammad (pbuh) always gave priority to ‘Agreement’, when ever did he got such an occasion whether before a war, in the middle of a war or at the end of a war. And Prophet (pbuh) has set such examples which have no parallel in history.

Just before Sulah e Hudibiya,

a.   Sending of Hazrat Usman (rta) to Abu Sufiyan as a representative,

b.    His being late in coming back,

c.    The spreading of the news of his assassination,

d.   Ummah getting ready to sacrifice their lives for Hazrat Umar (rta)

e.    God’s being happy to watch this passion

f.     And its description in Quran e Kareem in the best possible verse are rare of the rarest instances of an ‘Agreement’.

Sulah e Hudibiya (Agreement of Hudibiya) is a rarest of the rare examples for them who accuse Islam of being spread under the shadow of sword and for them who prefer war to agreement.

An agreement, with many offensive conditions, was signed although from Bait Rizwan to Sulah e Hudibiya polytheist of Mecca had tried their best to attack and kill Muslims. One of the conditions to which Sahaba e Keram (rta) objected the most and felt of being utmost offensive was ‘if any of the Quraish (tribe) goes to Prophet Muhammad (pbuh)‘s side without permission of his guardian, he will be returned to Quraish but if a Muslim comes to Quraish he will not be returned. Incidentally just when the ‘agreement, was being written, Abu Jinda (rta)a Muslim, son of Suhail who had come for the ‘agreement’ on behalf of Meccan, cane running to Prophet (pbuh). He showed him his wounds, that Meccans had inflicted during his torture and requested to take him to Medina. Suhail said according to the conditions of ‘agreement’ Abu Jindal (ra) should be given back to them. Prophet Muhammad (pbuh) tried his best to make him understand but he did not agree and at last Abu Jidal (ra) was returned to Suhail. Suhail started torturing Abu Jindal (ra) in front of Prophet Muhammad (pbuh). Seeing this Hazrat Umar (ra) expressed his anguish in front of Prophet Muhammad (pbyh) on his helplessness and humiliation. But when he got cool he was very ashamed and kept asking God’s forgiveness for the whole of his life.

When Prophet Muhammad (pbuh) was going to Medina after Hudaibiya, Surah ‘Fatah’ was descended and God the Almighty declared “Agreement of Hudaibiya” as a ‘land sliding victory’. This incident is of 6th Hijri.

The most remarkable point is that the condition on which a group of Sahaba Keram (ra) was feeling humiliated proved to be the most fruitful and only after two years of ‘Agreement of Hudaibiya’ number of Muslims grew to double. After two years in 8th Hijri Prohet Muhammad (pbuh) proceeded to Medina from Mecca with almost ten thousand Sahaba (ra). Prophet Muhammad (pbuh) forgave those people who had harassed him, in every possible way, and had tortured his Sahaba (ra). The torture of Hazrat Belal (ra) and Ka’ab (ra) and many Sahaba (ra) has no parallel in history of human being.

Let us think of that great example of human behavior and culture which Prophet Muhammad (pbuh) presented to the world. When fully armoured Muslim army entered Mecca Prophet Muhammad (pbuh) made an announcement, that,:

“People taking shelter in Khaana Ka’aba, in my residence, in the residence of Abu Sufyan will be safe and protected. Even those locked in their houses will be safe. And people without any weapon outside their houses will not be fought.”

In fact all the Islamic wars were fought to get rid of cultural and social evils. These wars were fought to establish peace. Had it not been so there would have been nothing but blood in the streets of Mecca for the revenge of all the torture and humiliations inflicted on Prophet Muhammad (pbuh) and Saha’aba Keram (rta).

What I mean to say is that Islam teaches us to prefer ‘agreement’ on war. It teaches us to teach and spread the message of culture, manners and code of good conduct.

In this scenario we should try to assess ourselves as to whether our conduct is according to the teachings of Islam, are we following the path shown by Prophet Muhammad (pbuh) or it is different to the path of our Prophet  (pbuh).

Every common Muslim knows as to what is happening in our religious and educational centers. He knows that our Ulema are fighting, accusing and abusing each other in the fight of their superiority. So, he also indulges himself in the same things and does not take such acts to be un-Islamic.

Ulema Keram must remember their death and pay heed to the punishment for these crimes. They should also think as to what are they campaigning (Tableegh) for with this kind of their behavior. Misguidance (Gumrahi) is spreading among the Muslims because of such acts of these Ulema. Peoples disrespect for Ulema is quite obvious these days. Muslims belief on Ulema’s  ability of taking them close to God is weakening and declining, in the process.

Demand of the time, therefore, is that we forget our internal bickering, sit together and strive to act as per the rules and regulations of our beloved Prophet Muhammad (pbuh).

I will complete my article with the following incident:

As per the statement of Hazrat Umar (rta), Prophet Muhammad (pbuh) on one occasion said, “If somebody appointed someone as a ruler or the Headof a country or an institution because of his personal friendship or closeness, when a better candidate could have been found, he has betrayed Allah, His Prophet (pbuh) and the whole Muslim community”. Let us all, specially our Ulema and scholars, self introspect ourselves and see whether it is the reason of our destruction and decline or not.

May Allah bestow upon us His kindness and make us able to follow Prophet Muhammad (pbuh)’s path and save us from further destruction and humiliation. (Amen)

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/ideals-of-prophet-muhammad-(saw)-and-our-community--نبیٔ-رحمت-ﷺ-کا-اسوہ-اور-ہماری-ملت/d/5556

پرویز شہیب احمد

آج امت مسلمہ کی کشتی بھنور میں ہے۔ اسلام کے نام لیوا ہر جگہ رسوا اور ذلیل ہورہے ہیں ۔مسلم معاشرہ ایک بار پھر انہی برائیوں کے نرغہ میں آچکا ہے ،جسے  مٹانے کیلئے آقائے نامدارﷺ نے اپنی زندگی  وقف کی تھی۔ کرۂ ارض پر جو لوگ اسلامی تعلیمات کے منکر ہیں یا اس سے ناواقف ہیں وہ تو رحمت اللعالمین حضرت محمد ﷺ کے اسوۂ حسنہ کی پیروی سے انحراف کر ہی رہے ہیں ، بدقسمتی یہ ہے کہ جو علما کا طبقہ ہے اور جسے وارثین انبیا کا درجہ حاصل ہے ، وہ بھی آقائے دوعالم ﷺکی زمانہ ساز شخصیت کو نمونہ عمل بنانے پر آمادہ نہیں ۔ خصوصی طور پر دعوت حق کی ترویج واشاعت کے بجائے نفاق بین المسلمین کا جو سلسلہ اس وقت دراز ہے، ایسے میں تاریخ کے اوراق کو پلٹ کر دیکھنے کی سخت ضرورت ہے کہ امام الانبیا نے کیا کیا تعلیمات دیں اور اپنی پوری زندگی میں کیسے کیسے حالات کا سامنا کیا، کیسی کیسی اذیتیں برداشت کیں، اس کے باوجود بھی جنگ سے قبل  ،جنگ کے درمیان یا جنگ کے بعد یعنی جب بھی صلح کی بات ہوئی تو حضرت محمد ﷺنے ہمیشہ صلح کو جنگ پرفوقیت دی اور بعض اوقات صلح کی ایسی مثال بھی پیش کی جس کی تاریخ میں کوئی نظیر نہیں ملتی۔

صلح حدیبیہ سے عین قبل حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کا ابوسفیان کے پاس ایلچی بنا کر بھیجا جانا اور ان کے واپس آنے میں توقف کا ہونا، حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کی شہادت کی خبر کا مشہور ہوجانا اور بیعت رضوان کے ذریعہ صحابہ رضی اللہ کا جاں نثار ی کیلئے تیار ہونا اور پھر اس عمل کو دیکھ کر اللہ رب العزت کا خوش ہونا اور قرآن کریم میں اس کا بہترین لفظوں میں ذکر ،صلح کو ترجیح دینے کی نادر مثالیں ہیں، ان لوگوں کیلئے بھی اسلام پر تلوار کے ذریعہ حکومت اور قتل وغارت کا الزمام لگاتے ہیں اور ان لوگوں کیلئے بھی جو صلح پر جنگ کو ترجیح دیتے ہیں۔ بیعت رضوان سے لے کر صلح حدیبیہ تک مشرکین مکہ نے کما حقہ کو شش کی کہ مسلمانوں پر حملہ کیا جائے اور اسلام کے پیروکاروں کا قصہ تمام کیا جائے۔ اس کے باوجود مصالحت ہوئی اورکئی ناگوار شرائط کے باوجود صلح ہوئی۔ اس صلح نامہ کی ایک شرط صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو سخت ناگوار اور گراں لگی ، جو کہ اس طرح تھی ۔اگر قریش میں سے کوئی شخص بلا اجازت اپنے ولی کے مسلمانوں کے پاس چلاجائے گا تو قریش کی طرف واپس کیا جائے گا لیکن اگر کوئی مسلمان قریش کے پاس آجائے گا تو واپس نہیں کیا جائے گا۔ اتفاق سے ابھی یہ عہد نامہ لکھا ہی جارہا تھا کہ خود سہیل، جو مشرکین مکہ کی طرف سے صلح کرنے آیا تھا، کے بیٹے ابوجندل رضی اللہ عنہ بھاگے بھاگے آئے۔ وہ مسلمان ہوگئے تھے۔ ان کو کفار نے سخت اذیتیں پہنچائی تھیں۔ وہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں پیش ہوئے اور اپنے زخموں کو دکھا کر فریاد کی کہ مجھے ضرور اپنے ساتھ مدینہ لے چلئے ۔سہیل نے کہا کہ عہد نامہ کی شرط کے موافق ابوجندل (رضی اللہ عنہ)ہم کو واپس ملنا چاہئے ۔آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے سہیل کو سمجھایا مگر وہ راضی نہ ہوا۔ بالآخر ابوجندل رضی اللہ عنہ کو سہیل کے سپرد کردیا گیا۔ سہیل نے ابوجندل رضی اللہ عنہ کو حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے ہی اذیت دینی شروع کردی۔ اس نظارہ کو دیکھ کر عمر رضی اللہ عنہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے اور اس طرح کی بے بسی اور ذلت پر غصہ کا اظہار کیا ۔ لیکن جب غصہ کو فور ہوا تو بہت پشیماں ہوئے اور زندگی بھر توبہ کرتے رہے ۔ جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم حدیبیہ سے فراغت کے بعد مدینہ تشریف لارہے تھے تو سورۃ فتح نازل ہوئی اور اللہ رب العزت نے اس صلح کو جس کو صحابہ کرامؓ کی ایک جمعیت ذلت وشکست سمجھ رہی تھی، فتح مبین قرار دیا ۔ یہ واقعہ سن 6ہجری کا ہے۔

غور کرنے کی بات یہ ہے کہ جس شرط پرصحابہ کرام رضی اللہ عنہ کو گرانی محسوس ہورہی تھی وہ شرط بے حد مفید ثابت ہوئی۔ چنانچہ صلح حدیبیہ کے بعد دوبرس میں ہی مسلمانوں کی تعداد دوگنی ہوگئی تھی۔ تقریباً دوسال کے عرصہ کے بعد 8ھ میں حضور  ا کرم ؐ کم وبیش دس ہزار صحابہ ؓ کے ساتھ مدینہ سے مکہ کی جانب روانہ ہوئے ۔غور کرنے کا مقام ہے جن لوگوں نے حضور اکرمؐ پر اذیتوں کے پہاڑ گرائے تھے اور حضورؐ کے اصحاب ؓ کو زدوکب کرنے میں کوئی دقیقہ نہ چھوڑا تھا، اب ان سے مقابلہ تھا لیکن حضور ؐ نے ان لوگوں کو معاف کردیا۔ ذرا دل پر ہاتھ رکھ کر سوچا جائے کہ آج لوگ معمولی باتوں پر گالی گلوج اور ایک دوسرے کی جان لینے کیلئے تیار ہوجاتے ہیں ۔ یہاں تو بلا ؓ کعبؓ اور کئی اصحاب رسول ؐ سخت اذیتوں کے شکار بنائے گئے جس کی مثال تاریخ میں نہیں ملتی ۔حتی کہ رسول عربی پر جو ظلم وستم ہوا، قلم اس کو لکھنے سے قاصر ہے۔ ان تمام صعوبتوں کے باوجود آقائے نامدار ﷺ نے اپنے طرز عمل محسن انساینت ہونے کا جو عظیم اخلاق پیش کیا، ذرا اس پر غور کیجئے ۔جب اسلامی لشکر مسلح ہوکر مکہ میں داخل ہوا تو سرور کائنات ؐ نے منادی کرادی کہ جو شخص خانہ کعبہ میں ، میرے گھر میں پناہ لے گا وہ محفوظ رہے گا، جو شخص ابوسفیان کے گھر میں پناہ لے گا اس کو بھی امان دی جائے گی ، جو شخص اپنے گھر کا دروازہ بند کر کے بیٹھا رہے گا وہ بھی امان میں رہے گا اور جو شخص بغیر ہتھیار لگائے راہ میں پایا جائے گا اس سے بھی تعرض نہ کیا جائے گا۔آنحضرت ؐ کی منشا ان باتوں سے یہی تھی کہ مکہ میں خونریزی نہ ہو۔

دراصل اسلامی لڑائیاں برائیوں کو مٹانے اور امن وامان قائم کرنے کیلئے تھیں ۔ورنہ محمدؐ اور ان کے رفقا کو کفار مکہ نے جتنی اذیتیں دیں اگر ان کا بدلہ لیا جاتا تو شاید مکہ کی گلیوں میں خون کی ندی بہتی ۔کہنے کا ماحصل یہ ہے کہ اسلام کی تعلیمات میں جنگ وجدال پر صلح کو ترجیح دی گئی ہے اور اخوت ومحبت ،عاجزی وانکساری اور اخلاق حسنہ کے پیغام کو عام کرتے ہوئے زندگی کے ہر شعبہ میں آگے بڑھنے کی تلقین کی گئی ہے۔ اس پس منظر میں آج ہمیں محاسبہ کے عمل سے گزرنا چاہئے کہ کیا ہماری زندگی اسوۂ رسول ﷺ کے برخلاف ہے یا نبی رحمت ﷺ کے بتائے طریقوں کے مطابق؟۔آج جو تنازعہ وخلفشار مظاہرہ علوم یا دوسرے دینی اداروں میں دین کے داعیوں اور انبیا کے ورثا کے درمیان ہے ، وہ بڑے فکر کا لمحہ ہے کیونکہ مسلمانوں کی حالت زار سے سب واقف ہیں۔آج کا عام مسلمان جب یہ دیکھتا ہے کہ بڑے بڑے مدارس میں مقدمہ بازی ہورہی ہے اور علما دین ایک دوسرے کو نیچا دکھانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑ رہے ہیں تو وہ سمجھتا ہے کہ اگر ہم آپس میں لڑرہے ہیں ، ایک دوسرے کو نیچا دکھانے کی کوشش کررہے ہیں اور ایک دوسرے کی تحقیر میں لگے ہیں تو یہ کچھ بھی غلط نہیں کیونکہ یہ تو علما اور داعیان دین کی عملی پیروی ہی تو ہے!!!علما کرام آنے والی موت کی آہٹ کو سنیں اور موت کے بعد گمراہی پھیلانے کی سزا پر بھی ذرا غور کریں ، پھر یہ طے کریں کہ ہم اپنے اس فعل کے ذریعہ کس چیز کی تبلیغ کررہے ہیں ۔ ان کی ان ذاتی لڑائیوں اور بالا دستی کی جنگ سے معصوم مسلمانوں میں ضرور گمراہیاں پھیل رہی ہیں اور علما ئے کرام کی تکریم وتعظیم میں بھی نمایا ں کمی آرہی ہے۔ جو ان سے محبت رکھتا ہے اور ان حضرات کی رہنمائی میں مالک حقیقی تک پہنچنا چاہتا ہے ، اس کے عقائد ونظریات کمزور ہورہے ہیں ۔ اس لئے ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم آپسی اختلافات کو دور رکھ کر سر جوڑ کر بیٹھیں اور اسلام کے وقار اور حضور اکرمؐ کی تعلیمات پر اپنی ذاتی خواہشوں کو قربان کر کے ایک غیور مسلمان ہونے کی مثال قائم کریں تاکہ عقیدت مند اور محبت کرنے والی یہ امت مزید رسوا ہونے سے بچ جائے۔علما کرام کی قد رومنزلت رب کریم دونوں جہاں میں اور بڑھائے ۔ میں اپنی بات حضرت عمر ؓ کے اس قول پر مکمل کرتا ہوں کہ ایک مرتبہ آپ نے فرمایا کہ اگر کسی شخص نے اپنی قرابت داری یا دوستی کی وجہ سے کسی کو امیر یا حاکم بنادیا ،حالانکہ مسلمانوں میں اس سے بہتر شخص مل سکتا تھا تو اس نے اللہ اور رسول اور تمام مسلمانوں سے خیانت کی ۔ ہم ذرا غور کریں اور سبھی مسلمان اپنے گریباں میں جھانک کر دیکھیں بالخصوص علما حضرات کہ ہماری بربادی اور تنزلی کی وجہ کہیں یہی تو نہیں ۔ باری تعالیٰ سے دعا کہ ہم سبھی کو اللہ اپنے احکام و اپنے محبوب محمد ؐ کے طریقے پرچلنے کی توفیق عطا فرمائے اور مزید ذلت ورسوائی سے بچائے (آمین)

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/ideals-of-prophet-muhammad-(saw)-and-our-community--نبیٔ-رحمت-ﷺ-کا-اسوہ-اور-ہماری-ملت/d/5556


Loading..

Loading..