New Age Islam
Thu Dec 02 2021, 04:20 PM

Urdu Section ( 27 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Deoband's curious Vastanvi affair: Qasmi fraternity should introspect جینے کا انداز بدلنا ہوگااس بحرانی کیفیت میں قاسمی برادری اپنا محاسبہ کرے

By Noorain Ali Haque

[Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk]

 

Darul Uloom Deoband has turned into a political battlefield once again. Even people with zero literacy are enjoying the game. Even person who have spent a couple of years in Deoband is advising Majlis-e-Shoura to review its decision. On the other hand, elder Qasmis are silent spectators. The members of the Majlis-e-Shoura too think it wise to be silent on the issue. Qasmi brethren from all over the country who are members of the Majlis-e-Shoura are not playing any role in this matter. As a result, many people who have differences with him over principles and practices are taking advantage of this situation.

On this account, Shahi Imam Ahmad Bukhari, Maulana Mufti Mukarram and Prof Akhtarul Wassay deserve praise who were not infuenced by sectarian feelings nor did they challenge the decision of the Majls-e-Shoura. They only demanded that if Maulana Wastanvi has praised the Chief Minister of Gujarat, he should apologise to the whole Muslim community and that too done in a manner that should be agreed on fully.

Today adherence to democratic principles is necessary for the Urdu media at least from outside if not from inside. Any newspaper can put his full weight in supporting any sect but having differences with anyone is not permitted by circumstances. Sectarian differences should be confined to Muslims and should not go outside. Only the examples of their unity should reach the others. But if a sectarian dispute finds a place in the headlines of a newspaper, how can it be prevented from reaching the others. I should make it clear that I am neither a Deobandi nor a Bareillvi, nonetheless I am putting forth my views.

However, the word sunni in the news published in newspapers was of secondary importance. In fact I would like to say something with reference to some Qasmis who hanker after fame and publicity. The drama started with Maulana Wastanvi’s appointment as the VC of Darul Uloom Deoband. First, the picture of the Maulana with the ‘idol’ was mailed to newspapers. Then the absence of the suffix Qasmi in his name annoyed some people. And his statement given to the Times of India added fuel to fire. His opponents got a sensitive issue which they grabbed and made the most of it. All of a sudden, the whole print media was agog with statements against him.

Whatever has happened is not new in the history of Darul Uloom and perhaps they love to publicise their internal issues. So who can stop them from doing it? Albeit, the Muslim society cannot afford to see a Muslim organisation becoming a centre of controversy and swallow the jeers from preople right from the film industry to those from the non-Muslim community. Though there are other big madrasas in the country like Nadwatul Ulema, Lucknow, Jamia Ashrafia Mubarakpur, Jamia Salfia Benaras, Jamiatul Falah Azamgarh, Jamiatul Islah Azamgarh and power shift also happens in them but the news does not create such a frenzy in the Muslim community. Darul Uloom Nadwatul Ulema is worthy to be emulated that all the issues are resolved peacefully and at the behest of Majlis-e-Shoura. Even the teachers and the students do not clash with the administrative issues. The decision of the Majlis-e-Shoura is final and binding whereas the less decisions of Darul Uloom Deoband  become controversial and the Qasmi fraternity blows them out of proportion due to their follies. This is very unfortunate. Now the Qasmi frternity should do introspection instead of indulging in media war. The same pro-Modi person and distributor of idols was not only a respectable person among the Qasmis but was a resourceful person for the Darul Uloom apart from being a member of the Majlis-e-Shoura. At that time, they did not find any fault with them. But when he became the VC of Darul Uloom, the same people started finding faults in him. If appointment of a pro-Modi person as the VC of Darul Uloom is a crime, then those making a hue and cry over his appointment should tell according to which principle his membership of the Majlis-s-Shoura was being tolerated for all these years.

Prior to this, on what grounds have the students of hundreds of Deobandi madrasas across the country been sent to Madrasa Ishaatul Uloom Akl Kuan for Qirat competitions on the invitation of Maulana Vastanvi. Thousands of studens studying in Ashaatul Uloom are not Deobandis. And if they are, why were handed over to a distributor of idols for education and training?

Isnt it because students get to study at a madrasa where there are better arrangements for study, boarding and foods. When personal interests are at stake everything is fine but when it is an issue of your greatest institution, where is the wisdom in putting its dignity and honour at stake? Do they have to remind that sir the world is laughing at you and it is ruining the whole Sunni community.

As for the the distribution of idol, it is a preplanned conspiracry. Definitely, pictures speak a thousand words and in the picture Maulana Wastanvi is easily visible. But if there had been a Qasmi in the place and had been handed an idol to present someone in a national integration ceremony, what would he have done in that situation? Would he have stayed there or get out of the place after quarreling with people. And if he had quarreled and left the place,what would have the repercussions been? Secondly, many Hindu leaders and religious personalities do this from time to time in our programmes. They arrange iftar parties for us and use handerkerchief and skull caps. That does not mean that they become Muslims or make some secret deals with us. Maualana Wastanvi did not put on sandal tilak, why then is he being treated like an untouchable. I agree that his act is neither commendable nor worthy to be emulated, rather it is condemnable. But the question is why the Qasmi fraternity is condemning his act after he was elected as the VC. Why didn’t it do it openly before that?

The issue has been raised neither in love of Darul Uloom nor in the spirit of Muslims but the main purpose behind it is to satisfy one’s ego. A group of Qasmis have thrust the whole community into this controversy that is bound to have negative implications on Darul Uloom Deoband and the Muslims in general. These are the questions the Qasmi fraternity should think over seriously and in case they get the realisation, they should give up their dual life. You have fought so many times during the last fifty-sixty years that the members of the community have become fed up with you. That is the reason, the allegations of selling fatwas are levelled against the greatest institution of the country and the twenty crore population of Muslims of India remains silent thinking that the electronic media might be true. It happens only because you do not have a strong grip on the Muslims. Now such lecherous and hellish politics will not help any more. Work hard. And if you have a penchant for publicity, then write articles with some labour and present research works so that Darul Uloom can be proud of you. Maulana Wastanvi singing paeans to Modi is a condemnable crime which can never be appreciated and it is possible that he did it for returns. I am not presenting myself as an advocate of Wastanvi but would like to say that before dragging the community into this controversy, they should ask their elder ulema why they handed the Vice-Chanellor’s position to him. Please stop this media war as it is not an issue which requires the involvement of 20 crore Indian Muslims.

Source: Hamara Samaj, New Delhi

 

جینے کا انداز بدلنا ہوگااس بحرانی کیفیت میں قاسمی برادری اپنا محاسبہ کرے

نورین علی حق

چند دنوں سے دارالعلوم دیو بند ایک مرتبہ پھرسیاسی اکھاڑا بنا ہوا ہے۔ جن کی علمی وفکری اورتعلیمی لیاقت درجہ صفر بھی نہیں ہے وہ بھی اس کا بھر پور لطف اٹھا رہے ہیں ۔ کسی نے اگر ایک آدھ سال دیوبند میں گزار لیا ہے وہ بھی موجودہ سیاسی اتھل پتھل میں مجلس شوریٰ کو اپنے فیصلہ پر نظر ثانی کا حکم صادر فرمارہا ہے دوسری طرف تمام بڑے اور نامور قاسمی حضرات خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیں۔وہیں مجلس شوریٰ کے ارکان بھی خا موش رہنے میں ہی اپنی عافیت محسوس کررہے ہیں حالانکہ پورے ہندوستان میں نمائندگی کرنے والے قاسمی حضرات مجلس شوریٰ کے رکن ہیں وہ بہ حیثیت فرد اس سلسلے میں اپنا کوئی واضح موقف نہیں رکھ رہے ہیں۔ جس کا نتیجہ ہے کہ بے شمار ایسے حضرات جو ان سے اصولیات وکلیات میں اختلاف رکھتے ہیں وہ اس کا بھرپور فائدہ اٹھا کر اپنا اختلافی بخار نکال رہے ہیں۔

اس سلسلے میں محترم شاہی امام احمد بخاری ، شاہی امام مفتی مکرم احمد اور پروفیسر اختر الواسع لائق تحسین و توصیف ہیں جنہوں نے اپنے بیان میں کہیں بھی مسلک کو داخل نہیں ہونے دیا اور نہ  ہی دارالعلوم دیوبند کی مجلس شوریٰ کے فیصلے کو چیلنج کیا بلکہ انہوں نے صرف یہ مطالبہ کیا ہے کہ مولانا وستانوی نے اگر وزیر اعلیٰ گجرات کی مدح سرائی کی ہے تو انہیں پوری قوم سے معافی مانگنی چاہئے یہ مطالبہ جس انداز میں کیا گیا ہے اس سے سوفیصد اتفاق کیا جاسکتا ہے۔

آج اردو اخبارات کے لیے جمہوری اقدار کی پابندی بباطن نہیں تو بظاہر بہت ضروری ہے۔ کوئی بھی اخبار کسی بھی مسلک کی  حمایت میں اپنی توانائی صرف کرے اس سلسلے میں وہ آزاد ہے مگر کسی سے اختلافات کرے یہ حالات کا تقاضا نہیں۔ مسلکی اختلافات مسلمانوں کے درمیان ہی رہیں غیروں تک نہ پہنچیں ۔غیروں تک ان کے اتحاد کی مثالیں پہنچنی چاہئے۔ لیکن اگر کوئی مسلکی اختلاف اخبار کی پہلی خبر کی پہلی سطر میں جگہ پاجائے گا تو اسے دوسرے تک پہنچنے سے کون روک سکتا ہے۔ میں یہ بھی عرض کرتا چلوں کہ میں ذاتی طور پر نہ بریوای ہوں نہ ہی دیوبندی پھر بھی میرے قلم سے یہ باتیں نکل رہی ہیں۔

خیر اخبار میں استعمال کیا جانے والا لفظ سنی ضمنی معاملہ تھا دراصل میں غیر معروف اور شہرت کے خواہاں چند قاسمی حضرات کے حوالے سے گفتگو کرنا چاہتا تھا ان تماشوں کا آغاز مولانا وستانوی کے مصنب اہتمام سنبھا لنے کے بعد ہوا پہلے مورتی کے ساتھ مولانا کی تصویر اخبارات میں میل کی گئی پھر ان کے نام کے ساتھ لفظ قاسمی نہ ہونا لوگوں پر گراں گزرا اور ٹائمس آف انڈیا میں ان کے بیان کی اشاعت گویا آگ میں گھی کا  کام کرگئی۔ان کے مخالفین کے ہاتھ ایک حساس موضوع لگ گیا جسے لے کر وہ خلاص میں اڑ پڑے اور دیکھتے ہی دیکھتے پورا پرنٹ میڈیا ان کے خلاف بیانات سے بھر گیا۔

جو کچھ ہورہا ہے وہ دیوبند کی تاریخ میں شاید نیا بھی نہیں ہے اور غالباً اپنے داخلی اختلافات عام کرنا اور اپنا پیدائشی حق بھی سمجھتے ہیں اس لیے انہیں اس سے کون روک سکتا ہے ۔ البتہ ایک مذہبی ادارہ کا بار بار موضوع بحث بننا اور اس کے نتیجے میں فلم انڈسٹریز کے مسلم نام والے بعض افراد سے لے کر غیر مسلموں کے طعنے سننے کا متحمل مسلم معاشرہ قطعاً نہیں ہے۔ حالانکہ ملک میں دارالعلوم دیوبند کے علاوہ بھی بڑے مدارس بکثرت موجود ہیں۔ جن میں خاص طور پر دارالعلوم ندوۃ العلما، لکھنؤ، دارالعلوم اشرفیہ مبارک پور، جامعہ سلفیہ ، بنارس ، جامعۃ الفلاح اعظم گڑھ ، جامعۃ الاصلاح اعظم گڑھ ،وغیرہ لائق ذکر ہیں یہاں بھی زمامِ اقتدار کا تبادلہ ہوتا رہتا ہے لیکن کبھی بھی اس کی رپورٹیں پوری مسلم قوم کے لیے باعث ہیجان ثابت نہیں ہوتیں ۔ دارالعلوم ندوۃ العلما اس سلسلے میں لائق تقلید ہے جہاں تمام مسائل خوش اسلوبی اور مجلس شوریٰ کی ایما پر حل کرلیے جاتے ہیں یہاں تک کہ طلبہ و اساتذہ بھی انتظامی امور سے ٹکراتے ۔ مجلس شوریٰ کا جو فیصلہ ہوتا ہے وہی حتمی اور آخری ہوتا ہے اس کے برعکس دیوبند کا معمولی فیصلہ بھی مسئلہ بن جاتا ہے اور قاسمی برادری اپنی نادانی کی وجہ سے جنہیں ان مسائل سے دور کا لینا دینا نہیں ہوتا انہیں بھی شامل کرلیتی ہے، یہ انتہائی افسوسناک واقعہ ہے۔ ابھی اشتہار بازی نہ کر کے قاسمی برادری کو اپنا محاسبہ کرنا چاہئے کہ وہی مودی نواز اور مورتی تقسیم کرنے والا منصب اہتمام پہ فائز ہونے سے پہلے نہ صرف قاسمی حضرات کے لیے عز ت واحترام کے لائق تھا بلکہ وہ کئی ایک دیوبند ی مدرسے کے ممدو معاون بھی تھے اور ہیں، وہ دارالعلوم دیوبند کی مجلس شوریٰ کے رکن بھی تھے۔ اس وقت ان لوگوں کو ان میں کیڑے نظر نہیں آرہے تھے مگر جب وہ مہتمم بن گئے تو ان کی سوخامیاں اور سوسو برائیاں یاروں کونظر آنے لگیں اگر کسی مودی نواز کا منصب اہتمام پر فائز ہوتا جرم ہے تو دارالعلوم اور شور وغوغہ مچانے والوں کو یہ بتانا چاہیے کہ اس کو مجلس شوریٰ کے رکن کی حیثیت سے برداشت کرنا دارالعلوم کے کس دستور سے ثابت تھا؟

اس سے پہلے ہندوستان کے طول وعرض میں پھیلے سینکڑوں دیوبندی مدارس کے طلبہ اشاعت العلوم اکل کو اں مولانا وستانوی کی دعوت پر مسابقہ حفظ وقرأت میں شرکت کے لیے کس جواز کے تحت بھیجے جاتے رہے ہیں؟ اشاعت العلوم میں ہزاروں کی تعداد میں زیر تعلیم طلبہ دیوبند ی نہیں ہیں؟ اگر ہیں تو انہیں مورتی تقسیم کرنے والے مہتمم وناظم کی تربیت میں کیوں دیا گیا؟

صرف اس لیے ناکہ ہمارا بچہ ایسے مدرسہ میں تعلیم حاصل کرے جہاں ناشتے ،کھانے، رہنے سہنے اور پڑھائی کا بھی بہتر سے بہتر انتظام ہو جب ذاتی معاملہ ہوتو اپنا فائدہ دیکھا جائے اور جب آپ کے سب سے بڑے ادارے کا معاملہ سامنے آئے تو ادارہ کا مفاد اور اس کی عزت وناموس کو بالائے طاق رکھ دینا کہاں کی عقلمندی اور دانش مندی ہے۔ کیا یہ دوسروں کو بتانا پڑے گا کے حضور والا آپ کی جگ ہنسائی ہورہی ہے اور اس کی لپٹیں پوری سنی قوم کو بھسم کردینا چاہتی ہے۔

جہاں تک مورتی تقسیم کا معاملہ ہے تو یہ سوچی سمجھی سازش کا حصہ ہے۔یقیناً تصویر بولتی ہے اور اس تصویر میں مولانا وستانوی بآسانی دیکھے بھی جاسکتے ہیں لیکن اگر وستانوی کے علاوہ کوئی دوسرا قاسمی کسی قومی یکجہتی کے جلسے میں جاتا اور اس دوران کسی کو مورتی پیش کی جاتی تو ہو کیا کرتا؟ وہ قومی یکجہتی کی سلامتی کے پیش نظر وہاں برقرار رہتا یا جھگڑکرواپس ہوجاتا اگر جھگڑا اور بحث مباحثہ کر کے واپس ہوتا تو اس کے نتائج کیا ر ونما ہوسکتے تھے؟ پھر یہ کہ بے شمار ہندو نیتا اور مذہبی پیشوا وبھی ہمارے جلسوں میں آکر یہ سب کرتے ہی رہتے ہیں ان کا مطلب یہ تو نہیں کہ وہ مسلمان ہوجاتے ہیں یا وہ سے سانٹھ گانٹھ کرلتی  ہیں ۔ دہائیوں سے بہت سے ہندو نیتا اور مذہبی پیشوا افطار کراتے بھی ہیں اور افطار میں شریک بھی ہوتے ہیں اور ٹوپی اور رومال کا استعمال بھی کرتے ہیں ۔ جب کہ مولانا وستانوی نے چندن وٹیکہ تو لگا یا نہیں پھر اس طرح انہیں اچھوت کیوں ثابت کیا جارہا ہے ؟ ان کا یہ عمل یقیناً لائق تحسین نہیں ہے اور نہ لائق عمل بلکہ لائق مذمت ہے۔ مگر سوالات یہ ہے کہ قاسمی برادری منصب اہتمام پر فائز ہونے کے بعد ان کے اس عمل کی مذمت کیوں کررہی ہے اس سے پہلے انہوں نے کھل کر اس کی مذمت کیوں نہیں کی؟

یہ معاملہ نہ تو دارالعلوم کی محبت میں اٹھایا جارہا ہے نہ ہی خالص جذبہ مسلمانی کے تحت بلکہ اس کے اٹھانے کا مقصد صرف اور صرف اپنی انا کی تسکین ہے جس میں چند قاسمی حضرات پوری ملت کو جھونک رہے ہیں۔جس کے منفی اثرات دارلعلوم دیوبند اور ہندوستانی مسلمانوں پر پڑیں گے۔ یہ وہ سوالات ہیں جن پر قاسمی برادری کو غور کرنا چاہئے اور سمجھ میں آجائے تو دورخی زندگی جینے کی عادت بھی چھوڑ دینی چاہئے ۔ گذشتہ پچاس ،ساٹھ برسوں میں آپ اتنا لڑچکے ہیں کہ ملت کے باہوش افراد اب آپ سےتنگ آچکے ہیں یہی وجہ ہے کہ ملک کے سب سے بڑے ادارے پرفتویٰ فروخت کرنے کا الزام لگتا ہے اور ہندوستان کی بیس کروڑ مسلم آبادی خاموش رہتی ہے بلکہ اس شک میں بھی مبتلا ہوتی ہے کہ شاید الیکٹرانک میڈیا سچ کہہ رہا ہو۔ ایساصرف اس لیے ہوا کہ قوم مسلم پر آپ کی گرفت مضبوط نہیں ہے۔ اب اس طرح کی اوچھی اور دورخی سیاست سے کام نہیں چلنے والا ،محنت سے کام کریں اگر چھپنے کا شوق کچھ زیادہ ہی ہے تو محنت کر کے مضامین لکھیں ، تحقیقات پیش کریں، تاکہ دارلعلوم کو بھی آپ پر فخر ونا ز ہو اور آپ اچھے ناموں سے پکارے جائیں۔ مولانا وستانوی کی نریندر مودی کی شان میں مدح سرائی لائق مذمت جرم ہے جسے کبھی سراہا نہیں جاسکتا بہت ممکن ہے انہوں نے اس کا معاوضہ بھی لیا ہوا ۔ میں خود کو وستانوی کے وکیل کے طور پر پیش نہیں کرنا چاہتا ۔ لیکن اتنا ضرور کہوں گا کہ ملت کے سرپر بوجھ ڈالنے کے بہتر ہے، آپ اپنے اکابر علما سے  سوال کریں کہ انہوں نے ایسے شخص کو منصب اہتمام کیوں سونپا اور اشہا۔ر بازی بند کریں چونکہ یہ مسئلہ ایسا نہیں ہے جس کا بیس کروڑ ہندوستانی مسلمانوں تک پہنچنا فرض اور ضروری ہو۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/deoband-s-curious-vastanvi-affair--qasmi-fraternity-should-introspect--جینے-کا-انداز-بدلنا-ہوگااس-بحرانی-کیفیت-میں-قاسمی-برادری-اپنا-محاسبہ-کرے/d/4018


 

Loading..

Loading..