New Age Islam
Sat Sep 26 2020, 05:00 PM

Urdu Section ( 5 Sept 2010, NewAgeIslam.Com)

Conspiracy of Misleading Sonia Gandhi's Political Adviser Ahmed Patel سونیا کے سیاسی مشیر احمد پٹیل کو گمراہ کرنے کی شازش

The court judgement over more than half-a-century-long Babri masjid land dispute is likely to come any day now. Some prominent Muslim leaders have wisely declared that they would accept any court verdict. But the Hindutva leaders stick to their stand that courts cannot decide matters of faith. This has created an atmosphere of uncertainly in the country. U.P. state government has organised a large police presence to ward off any potential conflagration arising out of the court verdict. Muslim politicians, some of them associated with the ruling UPA coalition at the centre, are probably thinking of ways in which any potential flare-up could be defused. But this is not to the liking of the Urdu Press. Quite frequently in the last weeks one has come across conspiracy theories that efforts are being made to subvert political processes to keep Muslims and the country away from any potential disaster. Apparently, for the Urdu Press, trying to keep the community and the country safe amounts to betrayal of the community’s natural ethos. Muslims must be perpetually engaged in confrontation. Confabulation or compromise cannot be their way. Sulh-e-Hudaibiya was the biggest betrayal in Islamic history. Most Muslims thought so then. Most Muslims think so now. New Age Islam presents one such report in its Urdu original along with an English translation. -- Editor

---

Babri Masjid: A conspiracy to mislead Sonia Gandhi's political advisor Ahmad Patel

Some Muslim Members of Parliament are trying to mislead not only the chief political advisor to the President of All India Congress Party, the flag bearer of Indian secularism, Ms Sonia Gandhi, but the entire Congress Party with their wrong advices on the Babri masjid issue. Due to this the Congress is on the way to adopting the manifesto of the RSS and the BJP. If it happens, it will badly affect the image of the Party among the Muslims and will strike the biggest blow to the party in its 125 year history. It will also have its impact on the general elections to be held in 2014 as well as in state elections. According to information, the Minority Affairs Minister Salman Khurshid and MP Mohammad Adeeb are in the forefront of this campaign.

Interestingly, all this is happening at a time when Bihar Assembly elections are round the corner and it’s mainly the Muslims who are with the Congress in the state. But ignoring this fact, an attempt is being made to impose the saffron agenda on the Muslims. If experts are to be believed, this backstabbing on the part of the Congress could also do damage to the efforts of the heir apparent Rahul to reap success in UP assembly elections. In fact, since the time the news has broken that the Allahabad High Court's decision on the ownership of the Babri Masjid may come on September 15 and the possibility of the decision going in favour of Babri Masjid was strong, the RSS, VHP and Shiv Sena have launched a campaign against Babri Masjid and in favour of Ram Mandir. They have said that they will construct the temple irrespective of the decision. On the contrary, the rumours are also doing the rounds in the corridors of power that the Congress has already begun work on the RSS agenda.

According to reports, a campaign headed by Salman Khurshid and Mohammad Adeeb is being run seeking the view of ulema on the issue of handing over of the land of Babri Masjid for the Ram temple. On being contacted by the correspondent of Sahafat, MP Mohammad Adeeb said that the community should think over the options so that the situation does not go out of hand. We should keep a watch. If the decision comes in favour of the Babri Masjid, we should not burst into jubilation, nor should we indulge in provocation. Replying to a question he said that so far as the question of handing over of the land of Babri Masjid to the Ram Mandir is concerned, consultations were going on with intellectuals of the community, the religious scholars and dharmacharyas on how to resolve the issue as the whole country was in panic. “But our aim is to send this message across the country as to how the issue can be resolved amicably and for that we should take a civilised path", he said.

He further said that the communal forces had become active and therefore we should not give them an opportunity to foment communal riots leading to loss of innocent lives. On their meeting with Ms Sonia Gandh's political advisor, Ahmad Patel, he said that the meetings were indeed going on. "We are meeting everyone to reach a solution", he said.

Mohammad Adeeb is also an active member of All India Muslim Personal Law Board. He has roped in the President of the Board Maulana Rabey Hasan Nadvi in this task. Therefore, due to his manoeuvrings, this gigantic institution of the Muslims has also come under suspicion as it is sending across the message that the Waqf Board should give the land for the construction of the temple in the same way as the Sunni Waqf Board had given land for the Sita ki Rasoi during the reign of Nawab Wajid Ali Shah.

Influenced by the suggestions of Salman Khurshid and Mohammad Adeeb, perhaps Ahmad Patel too has now begun to think that an appropriate solution to this dispute is handing over of the Babri Masjid land for Ram Mandir. According to reports, the former President of the Muslim Personal Law Board Ali Mian Nadvi is also in favour of the settlement of the issue with mutual agreement. Reports say that Salman Khurshid is also in contact with other parties.

According to a report in a popular Hindi daily, senior Congress leaders Motilal Vora, Janardhan Dwiwedi, Digvijay Singh and others have also jumped into the fray for the proposed consensus. These non-Muslim leaders are in contact with the Dharmacharyas.

Consultations are on with principal saints of Hrisihikesh and Haridwar along with the Shankaracharya of Sarda Dwarkapeeth and Jyotishpeeth Badrinath Swami Swarupanand Sarswati and the Mahant of the Nirmohi Akhara of Chitrakoot Radha Ramacharya.

However, experts are bewildered by the question why the efforts to reach a consensus are  being made so belatedly now if at all a consensus was to be reached. Why such efforts are being made at a time when the decision is going to be delivered after 18 years.

It goes without saying that the RSS and the VHP had been trying to acquire the land of the mosque for the temple. For this purpose, they have been in touch with greedy ulema for a long period but they could not achieve much. Now they are trying hard to achieve their goal with the help of Salman Khurshid and Mohammad Adeeb at the cost of the Congress. But given the circumstances, the attempts of Salman Khurshid and Mohammad Adeeb will fail and the Congress will ultimately suffer a huge loss.

Source: Sahafat, New Delhi

URL: https://newageislam.com/urdu-section/conspiracy-of-misleading-sonia-gandhi-s-political-adviser-ahmed-patel--سونیا-کے-سیاسی-مشیر-احمد-پٹیل-کو-گمراہ-کرنے-کی-شازش/d/3400

نئی دہلی ،5ستمبر (ممتاز عالم رضوی) کچھ مسلم ممبران پارلیمنٹ  بابری مسجد معاملہ میں غلط مشوروں کے ساتھ ہندوستانی سیکولرزم کی علمبردار آل انڈیا کانگریس پارٹی کی صدر سونیا گاندھی کے مشیر خاص احمد پیٹل ہی نہیں بلکہ پوری کانگریس پارٹی کو گمراہ کرنے کی کوشش کررہے ہیں جس کے سبب کانگریس پارٹی آر ایس ایس اور وی ایچ پی کے منشور پر گامزن ہوا چاہتی ہے۔اگر ایسا ہوا تو کانگریس کی مسلمانوں میں جو تھوڑی بہت امیج ہے وہ بھی خراب ہوجائے گی اور کانگریس کی 125سالہ تاریخ میں کانگریس پارٹی کے لیے یہ سب سے بڑا جھٹکا ہوگا جس کا اثر ریاستی انتخابات کے ساتھ ساتھ 2014کے عام انتخابات پر بھی پڑے گا۔اطلاع کے مطابق اس کامیں اقلیتی امور کے وزیر سلمان خورشید اور محمد ادیب پیش پیش ہیں۔ دلچسپ بات یہ ہےکہ یہ سب کچھ اس وقت ہورہا ہے کہ جب بہار اسمبلی انتخابات ہونے جارہے ہیں اور یہا ں کانگریس کے ساتھ اگر کوئی ذرا سا بھی ہے تو وہ مسلمان ووٹرس ہیں لیکن انہیں نظر انداز کرتے ہوئے کانگریس کے ذریعہ بھگوا ایجنڈے کو ایک بار پھر مسلمانوں پر تھوپنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ ماہر سیاسیات کی مانیں تو کانگریس میں لگنے والی سیندھ سے اتر پردیش اسمبلی انتخابات میں کامیابی حاصل کرنے کے لئے کانگریس کے یوراج راہل گاندھی کی محنت پر بھی پانی پھر سکتا ہے۔دراصل جب سے یہ خبر آئی ہے کہ 15ستمبر کو بابری مسجد کی کے مالکانہ حق پر الہٰ آباد ہائی کورٹ کا فیصلہ آنے والا ہے اور فیصلہ بابری مسجد کے حق میں ہونے کا امکان ہے اس وقت سے فرقہ پرست طاقتیں آر ایس ایس ،وی ایچ پی، شیوشینا وغیرہ نے بابری مسجد کے خلاف اور رام مندر کی حمایت میں تحریک شروع کردی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ فیصلہ کچھ بھی ہو ہم مندروہیں بنائیں گے۔ اس کے برعکس سیاسی گلیاروں میں یہ بھی چرچا ہورہی ہے کہ کانگریس خفیہ طور پر آر ایس ایس کے ایجنڈے پر کام کرنے کی ابتدا کرچکی ہے۔

اطلاع کے مطابق سلمان خورشید اور محمد ادیب کی قیادت میں ایک ایسی تحریک چلائی جارہی ہے جس کے تحت بابری مسجد کی جگہ کو رام مندر کے لئے دینے کی مفاہمت پر علما کرام سے رابطہ کیا جارہا ہے ۔ اس سلسلہ میں جب ممبر پارلیمنٹ محمد ادیب سے صحافت کے نمائندہ نے بات کی تو انہوں نے کہا کہ فیصلہ کے بعد حالات خراب نہ ہوں اس کے لیے تو ملت کو سوچنا چاہئے ، حالات پر نظر رکھنی چاہئے، اگر فیصلہ بابری مسجد کے حق میں آتا ہے تو بہت زیادہ خوشی منانے کی ضرورت نہیں ہے اور نہ ہی اشتعال انگیز ی کی ضرورت ہے۔ ایک اہم سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ جہاں تک بابری مسجد کی جگہ رام مندر کو دینے کا سوال ہے تو اس پر دانشوران ملت ،علما کرام اور دھرماچاریوں سے بات چیت جاری ہے کیسے مسئلہ کو حل کرنا ہے کیونکہ اس وقت پورا ملک خوف ودہشت میں ہے لیکن ہمارا مقصد ہے کہ ملک میں اس وقت یہ پیغام جانا چاہئے کہ کیسے مل جل کر معاملہ کو حل کیا جاسکتا ہے اور اس کیلئے ہمیں کوئی مہذب راستہ ہی تلاش کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ فرقہ پرست طاقتیں سرگرم ہوتی جارہی ہیں۔لیکن ہمیں ایسا کوئی موقع نہیں دینا چاہئے جس سے ملک میں فساد برپا ہو اور معصوم لوگوں کی جانیں تلف ہوں۔

سونیا کے مشیر احمد پٹیل کے ساتھ ہونے والی میٹنگ کے تعلق سے انہوں نے کہا کہ میٹنگ تو ہماری چل رہی ہے ۔ہم سب سے ملاقات کررہے ہیں تاکہ کوئی حل تلاش کیا جاسکے۔ محمد ادیب آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے سرگرم رکن بھی ہیں جن کے کہنے پر بورڈ کے صدر رابع حسن ندوی بھی اس کام میں شامل ہوگئے ہیں اور لہٰذا ان کی اس کوشش سے مسلمانوں کا یہ بڑا ادارہ بھی شک کے گھیرے میں آتا دکھائی دے رہا ہے کیونکہ اس مہم کے ذریعہ یہ پیغام دیا جارہا ہے کہ جس طرح اودھ کے نواب واجد علی شاہ کے زمانے میں سنی وقف بورڈ نے بابری مسجد احاطہ سیتا رسوئی کے لئے جگہ دے دی تھی اسی طرح وقف بورڈ کو چاہئے کہ وہ مندر کے لئے جگہ دے دے۔ سلمان خورشید اور محمد ادیب کے مشورووں سے شاید اب احمد پٹیل کو بھی لگنے لگا ہے کہ یہی مناسب حل ہے کہ بابری مسجد کی جگہ رام مندر کے لیے دے دی جائے ۔اطلاع کے مطابق پرسنل لا بورڈ کے سابق صدر علی میاں ندوی بھی اس رائے سے متفق ہیں کہ عام مفاہمت سے معاملہ حل کرلیا جائے۔اطلاع کے مطابق سلمان خورشید بھی جماعتوں کے رابطہ میں ہیں۔ ہندی کے ایک موقر اخبار کے مطابق اب تو کانگریس کے سینئر لیڈر ان موتی لال وورا ، جناردھن دویدی ،دگ وجے سنگھ وغیرہ بھی مذکورہ قسم کی مفاہمت کے لئے میدان میں اتر پڑے ہیں۔ یہ غیر مسلم لیڈران دھرماچاریوں کے رابطہ میں ہیں۔ساردا پیٹھ دوار کا اور جیوتش پیٹھ بدری ناتھ کے شنگر اچاریہ سوامی پانند سرسوتی ،چتر کوٹ کے نرموہی اکھاڑے کے مہنت رادھا راما چاریہ سمیت رشی کیش اور ہری دوار کے کئی خاص سنتوں سے ملاقاتوں کاسلسلہ جاری ہے۔ لیکن ماہرمعاملات کی جانب سے ان کوششوں پر یہ سوال اٹھایا جارہا ہے کہ اگر مفاہمت کی کوشش کرنی ہی تھی تو پھر اتنی تاخیر کیوں کی گئی۔18سال بعد اب جبکہ فیصلہ آنے والا ہے تو اس قسم کی باتیں کیوں کی جارہی ہیں ؟ واضح رہے کہ آر ایس ایس اور وی ایچ پی ایک زمانے سے یہ ماحول بنارہی تھیں کہ کسی طرح سے مسجد کی زمین مندر کے لیے مل جائے ۔ اس سلسلہ میں وہ ایک زمانے تک لالچی علما  کرام کے رابطہ میں رہی ہیں لیکن ان کی دال نہیں گل پائی تھی لیکن اب وہی دال سلمان خورشید او رمحمد ادیب کانگریس کی ہانڈی میں گلانے کی کوشش میں لگے ہوئے ہیں لیکن جو حالات ہیں اس سے یہی لگ رہا ہے کہ سلمان خورشید اور محمد ادیب کی دال تو نہیں گلے گی البتہ کانگریس کا بہت  بڑا نقصان ضرور ہوجائے گا۔

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/conspiracy-of-misleading-sonia-gandhi-s-political-adviser-ahmed-patel--سونیا-کے-سیاسی-مشیر-احمد-پٹیل-کو-گمراہ-کرنے-کی-شازش/d/3400


 


Loading..

Loading..