New Age Islam
Wed Oct 27 2021, 12:54 PM

Urdu Section ( 8 Oct 2021, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

A Revolution That Saudi Arabian Women Are Now Free To Participate in Sports ایک انقلاب کہ سعودی عرب کی خواتین اب کھیلوں میں حصہ لینے کے لیے آزاد ہیں

قرون وسطی کی سعودی تہذیب کے دقیانوسی تصور کو ایک جدید معاشرتی اقدار میں تبدیل کریں۔

اہم نکات:

1. سعودی عرب کی خواتین اب ڈرائیونگ کر رہی ہیں، ہواؤں سے باتیں کر رہی ہیں اور کھیلوں میں حصہ لے رہی ہیں جبکہ پہلے کوئی کسی عورت کا سایہ بھی نہیں دیکھ سکتا تھا

2. محمد بن سلمان قرون وسطیٰ کی سعودی تہذیب کے دقیانوسی تصور کو جدید معاشرتی اقدار سے تبدیل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں

3. یہ بات قابل غور ہے کہ عرب ہی وہ پہلا ملک تھا جس نے پوری دنیا میں خواتین کے حقوق کا تصور پیش کیا ہے

4. عورتیں اور مرد آج تک مسجد نبوی اور کعبہ میں ایک ساتھ نماز پڑھ سکتے ہیں

5. تصور یہ ہے کہ ساتویں صدی عیسوی میں اسلام دنیا کا جدید ترین نظام حیات تھا۔ تبھی اسلام بجلی کی طرح زمین کے کونے کونے میں پھیل گیا تھا

6. اگر مومنین کی ماں میدان جنگ میں جا سکتی ہیں تو آج کی مسلمان عورت ہسپتال میں ڈاکٹر یا نرس کی حیثیت سے کام کیوں نہیں کر سکتی؟

7. ایک وقت تھا جب یورپ نے جدت پسندی کو قبول کیا اور خوب ترقی کی، لیکن تعصبات اور پسماندگی نے مسلم تہذیب کو جکڑ لیا جس کے نتیجے میں مسلم معاشرہ دنیا کا سب سے پسماندہ معاشرہ بن گیا

8. سعودی عرب کی خواتین اب ڈرائیونگ لائسنس حاصل کر سکتی ہیں، کھیلوں میں حصہ لے سکتی ہیں اور دفاعی مہارتیں مثلا کراٹے، جوڈو اور تائیکوانڈو سیکھ سکتی ہیں جو کہ ایک بہت بڑا قدم ہے

 ......

 نیو ایج اسلام اسٹاف رائٹر

 24 ستمبر 2021

 -----

Representative Image Photo: Gulf News

-----

 سعودی عرب نے بھی ترقی کی ہے۔ جہاں کبھی کوئی عورت کا سایہ نہیں دیکھ سکتا تھا اب وہاں کی خواتین ڈرائیونگ کر رہی ہیں، ہواؤں سے باتیں کر رہی ہیں اور کھیلوں میں حصہ لے رہی ہیں۔ جی ہاں، آج کی عورت گاڑی چلا سکتی ہے، کھیلوں میں حصہ لینے کے ساتھ ساتھ اونٹ پر بھی سوار ہو سکتی ہے۔ یہ بدوی تہذیب میں کسی انقلاب سے کم نہیں ہے۔ سعودی خواتین اب ڈرائیونگ، کراٹے، جوڈو اور تائیکوانڈو سمیت کھیل سے لے کر تفریح تک ہر شعبے میں مردوں کا مقابلہ کر سکتی ہیں۔ اسے ایک انقلاب کے طور پر بیان کیا گیا ہے اور شہزادہ محمد بن سلمان جو سعودی عرب کے مستقبل کے حکمران بننے والے ہیں، انہوں نے اس کی قیادت سنبھال لی ہے۔

سعودی عرب میں محمد بن سلمان ایک انقلاب کے معمار ہیں۔ وہ قرون وسطی کی سعودی تہذیب کے دقیانوسی تصور کو ایک جدید معاشرتی اقدار میں تبدیل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ یہ صرف ان کی خواہش نہیں بلکہ ان کا مشن بھی ہے، سعودی شہزادہ جس کی عمر صرف 32 سال ہے صدیوں کی روایت کو توڑنا چاہتا ہے اور سعودی عرب کو ایک نئے دور میں داخل کرنا چاہتا ہے جس میں یہ کرہ ارض کے کسی بھی دوسرے ملک کے ساتھ چلنے کے قابل ہو۔ تاہم، یہ کوشش کسی بھی ثقافت میں اس وقت تک ختم نہیں ہو سکتی جب تک کہ عورتیں مرد کی طرح آزاد نہ ہو جائیں، کیونکہ خواتین کسی بھی ثقافت میں آبادی کا تقریبا نصف حصہ ہوتی ہیں۔ اگر کسی معاشرے کی آدھی آبادی اپنے گھر کی چار دیواری تک محدود کر دی جائیں تو وہ کتنا ترقی کر سکتا ہے!

تاہم ، مسلم معاشرے میں اس طرح کے موضوعات پر بحث کرنا بے عزتی سمجھا جاتا ہے۔ پھر سعودی عرب جہاں خواتین اپنے گھروں تک محدود رہنے کی عادی ہو چکی ہیں۔ خواتین کی گاڑی چلانے اور کھیلوں میں حصہ لینے کی صلاحیت کو سعودی معاشرے کے نقطہ نظر سے ہلکا نہیں سمجھا جا سکتا۔ خود یہ حقیقت کافی اہم ہے کہ مسلم خواتین کی آزادی کی یہ تحریک سعودی عرب میں شروع ہوئی تھی۔ یہ بات بھی قابل غور ہے کہ عرب ہی وہ دنیا کا پہلا ملک تھا جس نے پوری دنیا میں خواتین کے حقوق کا تصور پیش کیا تھا۔ جی ہاں، عرب کے نبی محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے ان حقوق کے قیام میں نمایاں کردار ادا کیا تھا۔

مثال کے طور پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مساجد کے دروازے اسی طرح عورتوں کے لیے کھولے جس طرح آپ نے مردوں کے لیے کھولے تھے۔ عورتیں اور مرد آج تک مسجد نبوی اور کعبہ میں اکٹھے نماز پڑھ سکتے ہیں۔ اگر کسی کو کوئی شک ہے تو وہ خانہ کعبہ میں حج کی نماز میں شریک ہو اور خود دیکھ لے۔ دوسرے لفظوں میں، اسلام کو اللہ کے حدود میں رہ کر مردوں اور عورتوں کے ساتھ یکساں سلوک کرنے کا اعزاز حاصل ہے۔ عورت اس دنیا میں اور اپنے گھر میں مرد سے کم کیسے ہو سکتی ہے اگر وہ اللہ کے گھر میں مرد کے برابر ہے؟

Sarah Attar of Saudi Arabia competes in the women's 800-meter Round 1 heats on Day 12 of the London 2012 Olympic Games on August 8, 2012, in London, England. (Streeter Lecka / Getty Images)

-----

ہمارے معاشرے میں خواتین کو اسلام کی وجہ سے مختلف حقوق دیئے گئے ہیں۔ اگر مرد کو طلاق کا حق دیا گیا ہے تو عورت کو خلع کا حق دیا گیا ہے۔ اسلام میں خواتین کو اپنے شوہر چننے کا حق حاصل ہے۔ یعنی عورت کی رضامندی کے بغیر ازدواجی زندگی شروع نہیں کی جا سکتی۔ کیا یہ ساتویں صدی عیسوی میں ایک انقلابی تصور نہیں تھا؟ افسوس کی بات یہ ہے کہ شادی کے لیے اب بھی عورت کی رضامندی ضروری نہیں سمجھی جاتی۔ یہ عمل بلاشبہ اس وقت خواتین کے حقوق کے اعتبار سے ایک انقلاب تھا۔ اسی طرح حضرت خدیجہ حضور کی پہلی اہلیہ، مکہ کی سب سے خوشحال تاجر تھیں۔

اسے دوسرے طریقے سے یوں بھی سمجھ سکتے ہیں کہ اسلام نے خواتین کو خود روزگار کمانے کے لیے اپنے دو پاؤں پر کھڑے ہونے کا شرعی طریقہ عطا کیا ہے۔ اسی طرح اسلام نے خواتین کو ان کے والدین اور شوہروں کی دولت میں حصہ دار بنا کر ان کی معاشی آزادی کو مضبوط کیا ہے۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی کے دوران مدینہ میں عورتیں اتنی آزاد تھیں کہ جب نبی جنگ میں جاتے تو مدینہ کے گرد و نواح کی خواتین بشمول امہات المومنین، اسلامی فوج میں شامل ہو کر میدان جنگ میں جاتیں اور زخمیوں کو پٹیاں باندھتیں۔

بدقسمتی سے اسی مسلم کمیونٹی میں اس وقت یہ دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ اسلام وہ واحد مذہب ہے جس میں عورت اپنے گھر کی چار دیواری میں رہتی ہے۔ اگر مومنین کی مائیں جنگ میں جا سکتی ہیں تو آج کی مسلمان خاتون ہسپتال میں بطور ڈاکٹر یا نرس کام کیوں نہیں کر سکتیں؟ اگر نبی کے زمانے میں کوئی عورت اونٹ چلا سکتی ہے تو یہ گاڑی کیوں نہیں چلا سکتی؟ اگر نبی کی بیوی ایک کاروباری خاتون ہو سکتی ہے تو آج کی مسلمان خاتون کاروبار یا کسی اور قسم کا پیشہ ورانہ کام کیوں نہیں کر سکتیں؟ اگر اللہ نے قرآن میں اقرا کا ذکر کیا ہے تو اس کا مطلب ہے کہ وہ مرد اور عورت دونوں کو یہ حکم دے رہا ہے۔ لیکن اس کے باوجود لڑکوں کو کثرت سے پڑھایا جاتا ہے جبکہ لڑکیوں کو گھروں میں رکھا جاتا ہے۔ آخر ایسا کیوں ہے؟

تصور یہ ہے کہ ساتویں صدی عیسوی میں اسلام دنیا کا جدید ترین نظام حیات تھا۔ تبھی اسلام بجلی کی طرح زمین کے کونے کونے میں پھیل گیا۔ یہ اسلام نہیں تھا بلکہ ایک مسلم کلچر تھا جو اس وقت کے دیگر معاشروں کی طرح اسلامی اقدار کے بجائے کنونشنوں کا غلام بن گیا تھا۔ پھر ایک دور تھا جب یورپ نے جدت پسندی کو قبول کیا اور خوب ترقی کی، لیکن مسلم معاشرہ دقیانوسی تصورات اور پسماندگی کا شکار رہا۔ اس کے نتیجے میں مسلم معاشرہ دنیا کا سب سے پسماندہ معاشرہ بن گیا ہے۔

Prince Muhammad bin Salman

------

شہزادہ محمد بن سلمان مسلم معاشرے کو اکیسویں صدی میں لانے اور اس کی پسماندگی کو ختم کرنے کے لیے سخت محنت کر رہے ہیں۔ اور اس میں سے کچھ بھی عورت کے بغیر ممکن نہیں ہوگا۔ اس دن اور اس دور میں اگر کوئی عورت فطری طور پر گاڑی نہیں چلاتی تو وہ زندگی کے دیگر شعبوں میں پیچھے رہ جائے گی۔ یہی وجہ ہے کہ سعودی عرب میں خواتین کو اب ڈرائیونگ لائسنس حاصل کرنے، کھیلوں میں حصہ لینے اور دفاعی تکنیک مثلا کراٹے، جوڈو اور تائیکوانڈو کی تربیت حاصل کرنے کی اجازت ہے۔ یہ ایک حقیقی انقلاب ہے اور اس کا سہرا انقلاب کے معمار شہزادہ محمد بن سلمان کے سر جاتا ہے ۔

English Article: A Revolution That Saudi Arabian Women Are Now Free To Participate in Sports

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/saudi-arabian-women-sports/d/125538

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..