New Age Islam
Mon Sep 28 2020, 08:53 PM

Urdu Section ( 14 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

Pakistan and Religious Politics پاکستان اور مذہبی سیاست

By Nazeer Naji

I cannot think of a way of pouring my heart out.  I cannot choose words to express the fact that not a single witness had registered an FIR under 295-C against Salman Taseer. No case had been filed against him in any court. No judge had convicted him. Nevertheless there is a mob that is running a campaign by declaring him a blasphemer. Recently, the ulema delivered lectures warning the government against amending the law 295-C. The amendment being debated has not been presented in the Parliament in the first place. It has also been reported that the file has been closed and the staff of the speaker will not even consider it. But the threats have not stopped. The Prime Minister made it public yesterday that he does not have any plans to present the amendment bill. The matter of amendment according to principles and rules of the Parliament has been put to rest but the protests and demonstrations are going on.  The publications of statements of those who think that Salman Taseer was not guilty of blasphemy at all have been banned. This is the dilemma with the writers as well. Their comments are not being published. The tradition of politics in the name of religion is not new in Pakistan. The demand of making the Objectives Resolution a part of the Constitution was being made right with the establishment of Pakistan. The ruling class had become under pressure of the religious politicians right from the beginning, though the Muslim League had attained Pakistan by defeating these people during the freedom struggle.

The people playing politics in the name of religion had lost their morale and they were not finding any place in Pakistan politics. But in the words of late Altaf Gauhar, “I don’t know why we (the bureaucracy and the politicians) were scared of the religious politicians. While taking any decision, we would think what the reaction of the maulvis was going to be”. In this connection, Mr Altaf Gauhar would narrate a story:

When the preparations of the issue of Pakistani currency started, the designs of notes and coins were being made.  Various designs would be presented to us and we would suggest modifications and then finalise designs.  The artists had themselves had got the idea that there would not be an image of any human being. One day the committee for the selection of design came up with the proposal that the image of Qaid-e-Azam should be on the notes. The immediate response was that the maulvis will raise a hue and cry. But the proposal had taken the fancy of the other committee members. The decision to publish Qaid-e-Azam’s picture was then taken unanimously. But our bureaucrat colleagues expressed the apprehension that there will be strong reaction from the maulvis. But there was not an intense fear. (He was talking about this during Zia regime). Acting on the decision, the currency notes were issued. There was no particular reaction as was feared. A couple of voices were raised but no one noticed them. Contrary to our apprehensions, the maulvis joined the race to earn the same notes alongwith others and are doing so even today.”

Religious politicians continued to do politics in the name of struggle for the implementation of religion. It is surprising that the slogan of implementation of Islamic Sharia became a part of election politics in Pakistan during the reign of Gen Yahya Khan. The Information Minister of Gen Yahya Khan, Nawabzada Sher Ali Khan got a new ministry formed to pave the way for this slogan and became a darling of the media. It appeared at that time that the religious parties would make it to the Assemblies in large numbers. A large part of the contemporary media had already assigned 36 seats to the Awami League and 15-20 seats had been anticipated for the People’s Party. But when the election results were out, the people asking for votes in the name of Islam were wiped out. Bhutto was running an efficient government. A small group of religious politicians started a movement against the Ahmadis.  For the first time in the Constitution of a democratic country it was incorporated who was a Muslim and who was not, a move by Bhutto that baffled many. Taking heart from Bhutto’s move, a political alliance was formed that demanded the implementation of Nizam-e-Mustafa. But even in the elections of 1977 the religious politicians faced defeat. Ziaul Haque came forward to lead the forces who were hell-bent on making Pakistan a religious state and captured power.  This army dictator run his dictatorship in the name of Islam for eleven years and the religious politicians were made powerful within the frame work of the establishment and government. The first war of Afghanistan that started against the Soviet Russia was fought with the slogan of Islam and the Americans helped the mujahideen with weapons and money. Perwez Musharraf strengthened the same forces that supported Ziaul Haque despite his claims of broadmindedness. But when the elections were held after the return of democracy, the religious parties faced big defeat.

In 1970, the tradition of providing funds to political leaders started on the lines of the foreign countries and communal groups kept coming into existence. The main source of the man force for these groups was the warriors who had fought guerilla war in Afghanistan. The series of Shia-Sunni bloodshed started after that which is going on even today. In view of the free and fair elections, the religious politicians had realized that they will not be able to succeed against the mainstream political parties. So they have started coming together and when Maulana Fazlur Rehman raised the slogan of the protection of the sanctity of the Prophet (PBUH), it became clear that this time the religious politicians will come onto the elections field with the issue of blasphemy laws. The campaign being run following the assassination of Salman Taseer has next elections as its goal. A common view is that the general elections will be held before the scheduled time. The religious politicians will form a united front in the next elections and organize their supporters with the slogan of the sanctity of the Prophet (PBUH) and provoke the sentiments of the people by issuing fatwas against their opponents. This slogan was first raised in1970 but was confined to ideological discussions only and the Islamic slogan could not give much political benefits to them. This time the slogan will be raised in the name of the Holy Prophet (PBUH). The blind love that the believers have for the Prophet (PBUH) will be used against their opponents. You have already seen the initial scenes. The weapon proved very effective.  Now the media will be intimidated with help of the bureaucracy so that no political party can stand up to the religious politicians. One sided stances will be reiterated time and again. It has to be seen how the people show their political wisdom this time.

Source:  Sahafat, New Delhi

URL: https://newageislam.com/urdu-section/pakistan-and-religious-politics--پاکستان-اور-مذہبی-سیاست/d/3941

نذیر ناجی

ایسا کوئی طریقہ میری سمجھ میں نہیں آرہا جسے اختیار کر کے میں اپنے دل کی بات لکھ سکوں ۔ لکھتے ہوئے بھی الفاظ کے چناؤ میں وقت پیش آرہی ہے کہ سلمان تاثیر کے خلاف کسی ایک گواہ نے بھی نافذ العمل قانون 295-Cکے تحت ایف آئی آر درج نہیں کرائی تھی۔ کسی عدالت میں ان کا مقدمہ نہیں  گیا تھا۔ کسی جج نے سزا نہیں دی  تھی ۔ اس کے باوجود ایک ہجوم ہے جو انہیں گستاخ رسولؐ قرار دے کر ایک مہم کو آگے بڑھا رہا ہے۔ گزشتہ روز علما کرام نے جو تقریر کیں، ان میں یہ انتباہ کیا گیا کہ 295-C میں ترمیم کی جرأت نہ کی جائے۔ جس ترمیم کا ذکر ہورہا ہے ، وہ پارلیمنٹ کے ا ندر پیش ہی نہیں ہوئی۔ یہ خبریں بھی آچکی ہیں کہ اسے دخل دفتر کردیا گیا ہے اور اسے اسپیکر کا عملہ زیر غور بھی نہیں لائے گا۔ مگر دھمکیوں کا سلسلہ جاری ہے۔ کل وزیر اعظم نے اعلان کردیا کہ ترمیمی بل پیش کرنے کا کوئی ارادہ نہیں رکھتے ۔ سیاسی اصولوں اور پارلیمانی ضابطوں کے تحت ترمیم کا قصہ ختم ہوچکا ہے لیکن احتجاجی تحریک جاری ہے۔ جن لوگوں کا یہ موقف ہے کہ سلمان تاثیر گستاخی رسول ؐ کے مرتکب ہی نہیں ہوئے تھے ،ان کے بیانات کی اشاعت ہی ممنوع ہوچکی ہے۔یہی لکھنے والو ں کا حال ہے۔ ان کے بتصرے شرمندۂ اشاعت کے نام پر سیاست کی روایت نئی نہیں ۔ آزادی کے فوراً ہی بعد قرار داد مقاصد کو آئین کا حصہ بنانے کے مطالبے شروع ہوگئے تھے ۔ اسی وقت سے حکمراں قوتیں مذہبی سیاستدانوں سے ڈرنے لگے تھیں ۔ حالانکہ تحریک آزادی کے دوران مسلم لیگ نے ایسے لوگوں کو شکست دے کر پاکستان حاصل کیا تھا۔

مذہب کے نام پر سیاست کرنے والے بے حوصلہ ہوچکے تھے اور پاکستانی سیاست میں ان کےلئے کوئی جگہ نہیں بن رہی تھی ۔مگر بقول الطاب گوہر مرحوم ‘‘نہ جانے کیوں ہم لوگ (بیورو کریسی اور سیاست داں)شکست خوردہ مذہبی سیاست دانوں سے ڈر نے لگے تھے ۔ ہم کوئی بھی فیصلہ کرتے ہوئے ،یہ سوچا کرتے کہ مولوی حضرات کا رد عمل کیا ہوگا ؟’’ اس حوالے سے الطاب گوہر ایک واقعہ بھی سنایا کرتے۔ جو یہ تھا‘‘جب پاکستان کی کرنسی جاری کرنے کی تیاریاں شروع ہوئیں ،تو نوٹوں او رسکو ں سے ڈیزائن تیار ہونے لگے۔ مختلف ڈیزائن بن کر آتے اور ہم انہیں دیکھنے کے بعد ترمیم واضافے کے مشورے دے کر دوبارہ ڈیزائن بنواتے ۔ خود مصور بھی اپنے ذہن میں باور کر بیٹھے تھے کہ کرنسی پر کسی انسان کی تصویر نہیں ہوگی۔ ایک دن ڈیزائن منتخب کرنے والی کمیٹی کی تصویر چھاپی جائے۔ جس پر ایک آواز اٹھی کہ اس پر مولوی شور مچائیں گے ۔ مگر کمیٹی کے دوسرے اراکین کو تجویز پسند آچکی تھی۔ متفقہ فیصلہ یہ ہوا کہ قائد اعظم کی تصویر چھاپی جائے گی، لیکن ہمارے ہی بیورو کریٹ ساتھی خدشات کا اظہار کرنے لگے کہ اس پر مولویوں کا رد عمل شدید آئے گا۔ مگر تب اتنا خوف نہیں ہوتا تھا۔ (یہ بات وہ جنرل ضیا کے زمانے میں کررہے تھے) فیصلے پر عملدرآمد کر کے پاکستان کے کرنسی نوٹ جاری کردیئے گئے ۔ہمارے خدشات کے مطابق کوئی خاص رد عمل نہیں ہوا ۔ جو ایک دو آوازیں اٹھیں، ان سے کسی نے اثر نہیں لیا اور نوٹ بازار میں آگئے۔ ہماری توقعات کے برعکس مولوی حضرات بھی دوسروں کی طرح وہی نوٹ کمانے کی دوڑ میں شامل ہوگئے اور اب تک ہیں۔’’

مذہبی سیاستداں اپنی دھن کے پکے نکلے اور وہ اپنے تصور کے مطابق نفاذ اسلام کی جدوجہد کے نام پر سیاست کرتے رہے ۔حیرت کی بات ہے کہ نفاذ اسلام کا نعرہ سب سے پہلے جنرل یحییٰ خان کے دور حکومت میں انتخابی سیاست کا حصہ بنا۔ یحییٰ خان کے وزیر اطلاعات نواب زادہ شیر علی خان نے اس نعرے کے حق میں فضا ہموار کرنے کے لئے ایک نئی وزارت بنوائی اور میڈیا پر چھاگئے ۔ تب لگتا تھا کہ مذہبی جماعتیں بڑی تعداد میں اسمبلیوں کے اندر آئیں گی۔ اس وقت میڈیا کابڑاحصہ قومی اسمبلی میں عوامی لیگ کو 36سیٹیں دے رہا تھااور پیپلز پارٹی کے لئے پندرہ بیس سیٹوں کے اندازے لگائے گئے تھے ۔مگر جب انتخابی نتائج آئے، اسلام کے نام پر ووٹ مانگنے والوں کا صفایا ہوگیا۔ بھٹو صاحب اچھی طرح ایک موثر اور مستحکم حکومت چلارہے تھے۔ مذہبی سیاستدانوں کے ایک چھوٹے سے گروہ نے احمدیوں کے خلاف تحریک شروع کی۔ خدا جانے بھٹو صاحب کو کیا سوجھی کہ ا نہوں نے پہلی مرتبہ کسی جمہوری ملک کے آئین میں شہریوں کے مذہب کے بارے میں فیصلہ دے دیا کہ کون مسلمان ہے اور کون نہیں ہے؟بھٹو صاحب کی اس پسپائی سے حوصلہ پاکر ان کے خلاف جو سیاسی اتحاد قائم کیا گیا ، اس کا نعرہ نظام مصطفیٰ کا نفاذ بنا ۔مگر 1977کے انتخاب میں بھی مذہبی سیاستداںشکست کھا گئے ۔ جو قوتیں پاکستان کو مذہبی ریاست بنانے پر تلی تھیں ان کی سرپرستی کے لئے ضیا الحق آگئے آئے اور اقتدار پر قبضہ کرلیا۔ اس فوجی آمر نے 11سال تک اسلام کے نام پر اپنی آمریت چلائی اور اس دوران مذہبی سیاست کرنے والوں کو اقتدار اور اسٹیبلشمنٹ کے ڈھانچے میں مؤثر اور طاقتور بنادیا گیا۔ افغانستان کی پہلی جنگ جو سوویت یونین کے خلاف شروع ہوئی تھی ،اس میں بھی اسلام کے نعرے سے کام لیا گیا اور امریکیوں نے پیسہ اور اسلحہ دے کر مجاہدین کی مدد کی۔پرویز مشرف روشن خیالی کے دعووں کے باوجود انہی طاقتوں کو مضبوط کرتے رہے، جو ضیا الحق کی حامی تھیں ۔مگر بحالی جمہوریت کی تحریک کی کامیابی کے بعد جب انتخابات ہوئے تو مذہبی سیاسی جماعتیں بری طرح ہاریں ۔

1970میں ہمارے معاشرے کے اندر بیرونی ملکوں کی طرف سے اپنے اپنے حامی مذہبی سیاستدانوں کو سرمایہ فراہم کرنے کا سلسلہ شروع ہوا اور مسلح فرقہ وارانہ گروپ تشکیل پانے لگے ۔ ان کی افرادی قوت کا بڑا ذریعہ وہ پاکستانی مجاہدین بنے جو افغانستان میں گوریلا جنگ لڑ چکے تھے ۔ اس کے بعد شیعہ اور سنی فرقوں میں باہمی خونریزی کا سلسلہ شروع ہوگیا، جو ابھی تک جاری ہے۔ آزادانہ انتخابات کے تجربات کو سامنے رکھتے ہوئے مذہبی سیاستداں جان گئے تھے کہ وہ عوامی پارٹیوں کے مقابلے میں کامیاب نہیں ہوسکیں گے۔ چنانچہ پھر اکٹھے ہونا شروع ہوگئے ہیں اور جب مولانا فضل الرحمٰن نے حکومت سے علٰیحدگی اختیار کر کے تحفظ ناموس رسالت ؐ کے نعرے کو بنیاد بنا کر انتخابی میدان میں اتریں گے ۔ سلمان تاثیر کے قتل کے نتیجے میں جو مہم چلائی جارہی ہے اس کی منزل آئندہ انتخابات ہیں ۔ عام خیال یہ ہے کہ انتخابات وقت سے پہلے ہوں گے ۔قبل از وقت انتخابات میں مذہبی سیاستداں ایک نیا متحدہ محاذ بنا کر تحفظ ناموس رسالت ؐ کے نعرے پر اپنے حامیوں کو منظم اور متحرک کریں گے اور مخالفین پر فتوے لگا کر ان کے خلاف عوام کے جذبات کو ابھاریں گے۔ یہ تجزبہ 1970میں کیا گیا تھا لیکن وہ نظریاتی مباحثوں تک محدود رہا اور اسلام کا نعرہ کوئی سیاسی فائدہ نہیں دے سکا۔ اس مرتبہ نعرہ پیغمبر اسلام حضرت محمد ﷺ کی ذات پاک کے نام پر لگایا جائے گا۔ حضور ؐ کی ذات سے کلمہ گو جو اندھی عقیدت اور محبت رکھتے ہیں ، اسے سیاسی مخالفین کے لئے استعمال کیا جائے گا۔ابتدائی مناظر آپ نے دیکھ لئے ۔حربہ مؤثر ثابت ہوا۔ اب بیورو کریسی کی طاقت استعمال کر کے میڈیا کو دہشت زدہ کیا جائے گا تاکہ کوئی سیاسی جماعت مذہبی سیاستدانوں کے سامنے ٹھہر نہ سکے ۔ یکطرفہ موقف کثرت سے دہرایا جائے گا۔ دیکھئے اس مرتبہ عوام اپنے سیاسی شعور کا کس طرح مظاہرہ کرتے ہیں؟

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/pakistan-and-religious-politics--پاکستان-اور-مذہبی-سیاست/d/3941

 

Loading..

Loading..