New Age Islam
Mon Sep 28 2020, 04:01 AM

Urdu Section ( 13 March 2017, NewAgeIslam.Com)

Islamic World and Helpless Humanity-(concluding Part) عالم اسلام اور بلکتی ہوئی انسانیت- (آخری قسط)






مصباح الہدیٰ قادی، نیو ایج اسلام

10 مارچ 2017

اپنے سلسلہ وار مضامین نے راقم الحروف نے ‘‘کتاب الفتن’‘ کے حوالے سے جن جن آثار و سنن کو نقل کیا ہے وہ اس بات کا تعین کرنے کے لئے کافی ہیں کہ کسی بھی حیلے کے تحت بے گناہ جانوں کو ضائع کرنے والے کبھی بھی اسلام کے نمائندے نہیں ہو سکتے۔ اس لیے کہ اگر وہ بزعم خویش اعلائے کلمۃ الحق کے لیے بھی خود کش بم حملوں کی صورت میں بے گناہوں کا خون بہاتے ہیں تو وہ اپنے لیے جنت کا سامان پیدا نہیں کرتے بلکہ اپنے لیے جہنم میں جانے کے اسباب پیدا کرتے ہیں۔ کیوں کہ تاریخ شاہد ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک مرتبہ خانہ کعبہ کو مخاطب کر کے یہ فرمایا تھا کہ، ‘‘ائے کعبہ! میں یہ مانتا ہوں کہ تیری عظمت بہت بلند ہے، لیکن سن لے کہ ایک بندہ مؤمن کی جان میرے نزدیک تجھ سے کہیں زیادہ عزیز تر اور بلند و بالا ہے’‘۔ پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ فرمان ان سلاطین وقت کے لیے ایک لمحہ فکریہ ہے جو ایک طرف تو حریم کعبہ کی حفاظت کے لئے پہرے بٹھاتے ہیں جبکہ دوسری طرف وہی امراء اور سلاطین بے گناہ انسانوں کا خون بہانے کا سامان پیدا کرنے کےلیے پیٹرول ڈالر نچھاور کرتے ہیں۔

ذیل میں احادیث کی مختلف کتابوں سے منتخب کر کے اس ناری فرقے کے علم برداروں کی علامات اور ان کے متعلق وعیدوں کو بیان کیا جاتا ہے، تاکہ ایک سادہ ذہن مسلمان انہیں پہچاننے میں کسی دھوکے کا شکار نہ ہو۔

لَا يَزَالُوْنَ يَخْرُجُوْنَ حَتّٰی يَخْرُجَ آخِرُهُمْ مَعَ الْمَسِيْحِ الدَّجَّالِ۔ ‘‘یہ ہمیشہ نکلتے رہیں گے یہاں تک کہ ان کا آخری گروہ دجال کے ساتھ نکلے گا۔’’

يَخْرُجُ نَاسٌ مِنْ قِبَلِ الْمَشْرِقِ۔ ‘‘یہ خارجی لوگ (حرمین شریفین سے) مشرق کی جانب سے نکلیں گے۔’’

شَرُّ قَتْلَی تَحْتَ أَدِيْمِ السَّمَاءِ۔ ‘‘وہ آسمان کے نیچے بدترین مقتول ہوں گے۔’’

خَيْرُ قَتْلَی مَنْ قَتَلُوْهُ۔ ‘‘وہ شخص بہترین مقتول (شہید) ہوگا جسے وہ قتل کر دیں گے۔’’

اَلْأَجْرُ الْعَظِيْمُ لِمَنْ قَتَلَهُمْ۔ ‘‘ان کے قتل کرنے والے کو اجرِ عظیم ملے گا۔’’

إِنَّهُمْ کِلَابُ النَّارِ۔ ‘‘یہ (دہشت گرد خوارج) جہنم کے کتے ہوں گے۔’’

يَقْطَعُوْنَ السَّبِيْلَ وَيَسْفِکُوْنَ الدِّمَاءَ بِغَيْرِ حَقٍّ مِنَ ا وَيَسْتَحِلُّوْنَ أَهْلَ الذِّمَّةِ۔ ‘‘وہ راہزن ہوں گے، ناحق خون بہائیں گے جس کا اﷲ تعاليٰ نے حکم نہیں دیا اور غیر مسلم اقلیتوں کے قتل کو حلال سمجھیں گے۔’’

أَحْدَاثُ الْأَسْنَانِ۔‘‘وہ کم سن لڑکے ہوں گے۔’’

سُفَهَاءُ الْأَحْلَامِ۔‘‘دماغی طور پر ناپختہ ہوں گے۔’’

کَثُّ اللِّحْيَةِ۔‘‘گھنی ڈاڑھی رکھیں گے۔’’

مُشَمَّرُ الْإِزَارِ۔‘‘بہت اونچا تہ بند باندھنے والے ہوں گے۔’’

لَا يُجَاوِزُ إِيْمَانُهُمْ حَنَاجِرَهُمْ۔‘‘ایمان ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گا۔’’

يَتَعَمَّقُوْنَ وَيَتَشَدَّدُوْنَ فِی الْعِبَادَةِ۔ ‘‘وہ عبادت اور دین میں بہت متشدد اور انتہاء پسند ہوں گے۔’’

يَحْقِرُ أَحَدُکُمْ صَلَاتَهُ مَعَ صَلَاتِهِمْ، وَصِيَامَهُ مَعَ صِيَامِهِمْ۔ ‘‘تم میں سے ہر ایک ان کی نمازوں کے مقابلے میں اپنی نمازوں کو حقیر جانے گا اور ان کے روزوں کے مقابلہ میں اپنے روزوں کو حقیر جانے گا۔’’

لَا تُجَاوِزُ صَلَاتُهُمْ تَرَاقِيَهُمْ۔ ‘‘نماز ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گی۔’’

يَقْرَئُوْنَ الْقُرْآنَ لَيْسَ قِرائَتُکُمْ إِلَی قِرَاءَ تِهِمْ بِشَيءٍ۔ ‘‘وہ قرآن مجید کی ایسے تلاوت کریں گے کہ ان کی تلاوتِ قرآن کے سامنے تمہیں اپنی تلاوت کی کوئی حیثیت دکھائی نہ دے گی۔’’

يَقْرَئُوْنَ الْقُرْآنَ لَا يُجَاوِزُ حُلُوْقَهُمْ۔ ‘‘ان کی تلاوت ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گی۔’’

يَقْرَئُوْنَ الْقُرْآنَ يَحْسِبُوْنَ أَنَّهُ لَهُمْ، وَهُوَ عَلَيْهِمْ۔ ‘‘وہ یہ سمجھ کر قرآن پڑھیں گے کہ اس کے احکام ان کے حق میں ہیں لیکن درحقیقت وہ قرآن ان کے خلاف حجت ہوگا۔’’

يَدْعُونَ إِلَی کِتَابِ اِ وَلَيْسُوا مِنْهُ فِي شَيْئٍ۔ ‘‘وہ (بذریعہ طاقت) لوگوں کو کتاب اﷲ کی طرف بلائیں گے لیکن قرآن کے ساتھ ان کا تعلق کوئی نہیں ہوگا۔’’

يَقُوْلُوْنَ مِنْ خَيْرِ قَوْلِ الْبَرِيَّةِ۔‘‘وہ (بظاہر) بڑی اچھی باتیں کریں گے۔’’

يَقُوْلُوْنَ مِنْ أَحْسَنِ النَّاسِ قَوْلًا۔‘‘ان کے نعرے اور ظاہری باتیں دوسرے لوگوں سے اچھی ہوں گی اور متاثر کرنے والی ہوں گی۔’’

يُسِيْئُوْنَ الْفِعْلَ۔‘‘مگر وہ کردار کے لحاظ سے بڑے ظالم، خونخوار اور گھناؤنے لوگ ہوں گے۔’’

هُمْ شَرُّ الْخَلْقِ وَالْخَلِيْقَةِ۔ ‘‘وہ تمام مخلوق سے بدترین لوگ ہوں گے۔’’

يَطْعَنُوْنَ عَلٰی أُمَرَائِهِمْ وَيَشْهَدُوْنَ عَلَيْهِمْ بِالضَّلَالَةِ۔‘‘وہ حکومت وقت یا حکمرانوں کے خلاف خوب طعنہ زنی کریں گے اور ان پر گمراہی و ضلالت کا فتويٰ لگائیں گے۔’’

يَخْرُجُوْنَ عَلٰی حِيْنِ فُرْقَةٍ مِنَ النَّاسِ۔‘‘وہ اس وقت منظرِ عام پر آئیں گے جب لوگوں میں تفرقہ اور اختلاف پیدا ہو جائے گا۔’’

يَقْتُلُوْنَ أَهْلَ الإِسْلَامِ وَيَدْعُوْنَ أَهْلَ الْأَوْثَانِ۔‘‘وہ مسلمانوں کو قتل کریں گے اور بت پرستوں کو چھوڑ دیں گے۔’’

يَسْفِکُوْنَ الدَّمَ الْحَرَامَ۔ ‘‘وہ ناحق خون بہائیں گے۔’’

حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا:

ينْطَلِقُوْنَ إِلَی آيَاتٍ نَزَلَتْ فِي الْکُفَّارِ فَيَجْعَلُوْهَا عَلَی الْمُؤْمِنِيْنَ۔ ‘‘وہ کفار کے حق میں نازل ہونے والی آیات کا اطلاق مسلمانوں پر کریں گے۔ اس طرح وہ دوسرے مسلمانوں کو گمراہ، کافر اور مشرک قرار دیں گے تاکہ ان کا ناجائز قتل کر سکیں۔’’

حضرت علی رضی اللہ عنہ نے فرمایا:

يَقُوْلُوْنَ الْحَقَّ بِأَلْسِنَتِهِمْ لَا يُجَاوِزُ حُلُوْقَهُمْ۔‘‘وہ زبانی کلامی حق بات کہیں گے، مگر وہ ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گی۔’’

حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں:

يَمْرُقُوْنَ مِنَ الدِّيْنِ کَمَا يَمْرُقُ السَّهْمُ مِنَ الرَّمِيَّةِ۔‘‘وہ دین سے یوں خارج ہو چکے ہوں گے جیسے تیر شکار سے خارج ہو جاتا ہے۔’’

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/misbahul-huda,-new-age-islam/islamic-world-and-helpless-humanity-(concluding-part)--عالم-اسلام-اور-بلکتی-ہوئی-انسانیت--(آخری-قسط)/d/110381

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..