New Age Islam
Wed Sep 30 2020, 04:32 PM

Urdu Section ( 21 Feb 2011, NewAgeIslam.Com)

Sectarian hue of the Arab revolt عرب انقلاب کامسلکی رنگ

By Md Ahmad Kazmi

(Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk)

No end to the Arab revolution is in sight. The revolt is at its peak in Bahrain and Yemen after Tunisia and Egypt. The situation is also tense in Algeria and Libya. The after-effects of the uprising are being seen in Saudi Arabia, Oman and Morocco. Bahrain and Yemen are the US allies that have been getting assistance against the opponents through Saudi Arabia. The West is also trying to activate the elements that had been used against Ahmadinejad after the presidential elections in Iran last year but no success is insight there.

According to my information, the protesters in Tehran who were only fifty set fire to a pile of garbage so that the international media could get photos showing tensions. The Al Khlaifa family is in power that gets help and aid from Saudi Arabia. Saudi Arabia had supported Saddam Hussain against Iran because of its association with a particular ideology. In the war in the 80s against Iran, Iraq received the maximum aid and support from Saudi Arabia apart from other countries in the region. The readers might recall the severe bombings by Saudi army jets on Shia dominated region in the Sa’ada province last year.

Recently, before and after the elections in Bahrain, the government demonstrated extraordinary ruthlessness in the arrest and incarceration of the opponents. It is also known to all that After Hizbollah’s war against the Israel in 2006, Saudi Arabia, at the behest of the US and Israel, tried to weaken Hizbollah in Lebanon. After the successful Islamic revolution and the end of the Shah regime in Iran, the US and other European countries had branded it a Shia revolution and thus tried to create a division among the Muslims of the world on sectarian lines. The flag of unity raised by the founder of the Islamic revolution Imam Khomeini had much impact in creating amicable atmosphere in Iraq, Lebanon and Syria apart from Iran.

During the Iraq war in 2003 I learnt about many Sunni and Christian leaders who said that the Shias followed Ayatollah Seestani in religious and Sharia matters but they followed him in political matters. That is, they considered him a supporter of unity and a patriot.

Similarly during my visits to Europe and the countries of the region I felt and was also told by many that the Secretar y General of Hizbollah Hasan Nasrullah was the most popular leader in the Arab countries after Israel’s debacle against Hizbollah. Their point is that the all the Arab countries together could not defeat Israel in 1973 but Hizbollah defeated Israel single-handedly. The people of the countries admire Hasan Nasrullah very much cutting across sectarian lines. On the one side in the region are the kingdoms that have usurped the rights of the people and on the other, they see Iran progressing unitedly. The Arab people have seen the establishment of a democratic government in Iraq despite the pressures of the US to the contrary. The situation in Lebanon also is such that no government can be formed without Hizbollah’s support there.

Recently, Hizbollah withdrew its support from the government in view of the conspiracy to frame it in the murder of the Prime Minister of Lebanon Rafique Hariri and now a new government was going to take over with the Prime Minister of its own choice. The US, Israel and the Arab rulers of the region opposed them but the truth is that the days of these rulers are numbered. According to the latest information, the former President of Egypt, Husni Mubarak is very heartbroken after his removal and has declined to get treatment for his illnesses and has expressed his desire to breathe his last in the coastal town of Sharm al Shaikh.

On the other hand the former President of Tunisia Zainul Abedin ben Ali is in ‘coma’ in a hospital in Saudi Arabia. According to reports, he had a heart attack and can now only breathe. There is no possibility of his recovery.

After Egypt, protesters gathered at the Pearl Square of Manama, the capital of Bahrain while they shouted ‘to hell with the khalifa’. On the fifth day of the protests, the army attacked the protesters with guns and other weapons while they were asleep in the central area of the town at 3 at dawn to disperse them. At least 5 people died and hundreds were injured in the attack. But after that the demonstrations turned so intense that the government had to withdraw the army and the police.

Previously protests had been banned in the whole country. According to reports protesters also rounded up the reporter of the ABC Television of the US Miguel Marcos and beat him up in Manama. The protesters in Bahrain allege that the ruling Khalifa government belongs to the minority Sunni sect while the government does not provide employment, shelter and health services to the majority Shia community that forms 70% of the population. They allege that in order to change the proportion of the population, the Khalifa government was inviting Sunnis from Saudi Arabia, Syria, Yemen and Balochistan province of Pakistan and granting citizenship and all the other amenities to them. The majority Shias demand that the government should be changed in the country and a democratic constitution should be evolved anew.

During the recent protests they demanded that the king should remove the Prime Minister Hamad Bin Salman al Khalifa who has been in power for the last 40 years. At the same time, clashes between the supporters of the government and the protesters are going on in the capital of Yemen, San’a and other cities. The protesters are active in the southern city of Aden. According to reports, the students of San’a University have staged protests at the Tahrir Square in the heart of the city. The supporters of the government have attacked the protesters in San’a too.

It should be noted that in the anti-Houti Shia actions last year, their settlements had been burnt and hundreds had been killed. On that occasion, the Saudi government had come forward in Yemen’s help and had bombed their settlements in the province of Sa’da. Since 2003, it was my analysis that the US will arrange for the destruction of Yemen whenever it wants. The family of Al Qaida leader Usama Bin Laden and the former high ranking leaders of the Bath Party of Iraq are living there.

However, the Yemenis were encouraged by the revolt in Tunisia and Egypt and rose against the government. The demonstrations of the pro-democracy people are going on in Benghazi, Beda, Tripoli and other cities. Muammar Ghaddafi is in power in the country for the last forty years. Recently, Ghaddafi doubled the salaries of the government employees and has released 110 opponents accused of extremism from jail. Nevertheless, when the situation did not come under control, the army opened fire killing more than 100 people.

Interestingly, Ghaddafi’s son Engineer Saiful Islam has been criticising his father for the last few years. The experts say that the situation in Tunisia and Egypt changed so drastically that the US and other Western countries announced their support to pro-democracy lobby in a jiffy. Now the US is apparently not in a position to support the tyrant kings of other countries. It will benefit the pro-democracy people as the popular uprising against the kingdoms will only intensify. I think that people opposing the oppressive kingdoms consider death a very light punishment. Therefore, the protests in those countries cannot be stopped before the change of regime. The armies and the police of Bahrain, Yemen and Libya have till now been supporting the governments. If there is a huge action against the people, the army too might go against the government causing an end to the kingdoms. It should be realised that people giving a sectarian hue to the popular uprising in the Arab countries are busy hatching conspiracies to save the tyrant rulers and their masters.

Source: Hindustan Express, New Delhi

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/sectarian-hue-of-the-arab-revolt--عرب-انقلاب-کامسلکی-رنگ/d/4168

 

عرب انقلاب کامسلکی رنگ

محمد احمد کاظمی

عرب ممالک میں عوامی انقلاب کے خاتمے کےکوئی آثار نہیں  ہیں۔ تیونیشیا او رمصر کے بعد سب سے زیادہ انقلاب کی شدت بحرین اور یمن میں ہے۔ اس کے علاوہ لیبیا اور الجزائر میں بھی حالات کشیدہ ہیں ۔عرب میں انقلاب کی لپٹیں اب کسی نہ کسی شکل میں کویت ، سعودی عرب، عمان اور مراقش میں بھی نظر آرہی ہیں۔ بحرین اور یمن امریکہ کے اتحادی ہیں جنہیں سعودی عرب کے ذریعہ مخالفین پر قابو پانے کے لئے خدمات مہیا کی جاتی رہی ہیں۔ اسی کے ساتھ مغرب  کی کو شش ہے کہ ایران میں گزشتہ سال صدارتی انتخابات کے بعد جن عناصر کو محمود احمدی نژاد کے خلاف احتجاج میں استعمال کیا تھا انہیں ایک بار پھر متحرک کردیا جائے لیکن وہاں مخالفین کو کوئی کامیابی ملنے کے امکان نظر نہیں آتے ۔ میری اطلاع کے مطاق تہران میں مخالفین جنگی تعداد محض تقریباً پچاس تھی نے حکومت مخالف نعرہ بازی کرکے ایک کوڑے دان کو آگ لگادی تا کہ غیر ملکی میڈیا کو کشیدگی ظاہر کرنے والے فوٹو مل سکیں۔ بحرین میں الخلیفہ خاندان کی بادشاہت ہے جسے سعودی حکومت کی بھرپور حمایت حاصل رہی ہے۔ سعودی عرب نے اپنے مخصوص مذہبی نظریہ کی وجہ سے ہی عراق کے صدام حسین کی حکومت کو ایران مخالف جنگ میں مدد کی تھی۔ 1980میں ایران مخالف جنگ کے دوران عراق کو خطے کے دیگر ممالک کے علاوہ سب سے زیادہ امداد سعودی عرب کی طرف سے دی جاتی تھی۔ گزشتہ برس اگست میں یمن کے سعدہ صوبے میں سعودی جنگی طیاروں نے جس بے رحمی سے حوطی شیعہ آبادیوں پر بمباری کی ہے ہو بھی قارئین کو یاد ہوگا ۔ حال ہی  میں بحرین میں ہوئے پارلیمانی انتخابات سے پہلے اور انتخابات کے دوران سیاسی مخالفین کو گرفتار کرنے اور قید وبند میں رکھنے میں  حکومت نے کافی حد تک شدت کا مظاہرہ کیا۔2006میں حزب اللہ کی اسرائیل کے خلاف کامیاب جنگ کے بعد سعودی عرب نے امریکہ اور اسرائیل کے کہنے پر لبنان میں حزب اللہ کو کمزو ر کرنے کی جس قدر کوششیں کی ہیں وہ بھی سب کے سامنے ہیں1979میں ایران میں اسلامی انقلاب کی کامیابی اور امریکہ نواز شاہ کی حکومت کے خاتمے کے بعد امریکہ اور دیگر مغربی طاقتوں نے اسے شیعہ انقلاب بتایا تھا اور دنیا بھر کے مسلمانوں کو مسلکی بنیاد پر تقسیم کرنے کی کوشش کی گئی تھی۔

ایران کے اسلامی انقلاب کے بانی رہنما آیت اللہ خمینی نے مسلمانوں میں اتحاد کے لئے جو پر چم اٹھایا تھا اس کے نتیجہ میں ایران کے علاوہ عراق، لبنان اور شام میں حالات کافی سازگار ہیں۔ 2003عراق جنگ کے دوران میں نے بغداد میں کئی سنی اور عیسائی رہنماؤں کے حوالوں سے کئی بار سنا ہے کہ شیعہ حضرات آیت اللہ سیستانی کی شرعی امور میں تقلید کرتے ہیں لیکن ہم ان کی سیاسی امور میں تقلید کرتے ہیں یعنی ایران کے انقلاب سے متاثر شیعہ عالم آیت اللہ سیستانی کو وہ ملک کا ہمدرد اور اتحاد کا حامی سمجھتے ہیں ۔ اسی طرح سے میں نے گزشتہ کئی برسوں کے دوران خطے کے مختلف ممالک اور یورپ کے مختلف دوروں میں یہ محسوس کیا او رکئی اہم لوگوں نے مجھے بتا یا کہ 2006میں اسرائیل کو ناکام کرنے کے بعد عرب ممالک میں سب سے محبوب رہنما حزب اللہ کے سکریٹری جنرل حسن نصر اللہ ہیں۔ ان کی  نظر میں یہ ہے کہ 1973میں تمام عرب حکومتیں مل کر اسرائیل کو ناکام کرسکیں جب کہ تنہا حزب اللہ نے اسرائیل کو ذلت آمیز ناکامی دی۔ ان تمام ملکوں کے عوام مسلکی اختلافات کوبھلا کر حسن نصراللہ کو بے حد پسند کرتے ہیں۔ خطے کے تمام ممالک میں ایک طرف بادشاہتیں ہیں جوعوام کے تمام حقوق کو پامال کئے ہوئے ہیں۔ دوسری طرف ایران کی آزادی اور اتحاد کے ساتھ ترقی ان کے سامنے ہے۔

عرب عوام نے اسی نظریہ کے تحت عراق میں امریکہ کے دباؤ کو نظر انداز کرتے ہوئے جمہوری حکومت کا قیام دیکھا ہے۔ ادھر لبنان میں بھی اب حالت یہ ہے کہ بغیر حزب اللہ کی حمایت کے کوئی حکومت قائم نہیں ہوسکتی ۔گزشتہ دنوں لبنان کے سابق وزیر اعظم رفیق حریری کے قتل کے الزام میں حزب اللہ کو پھنسانے کی کوشش کے پیش نظر حزب اللہ نے سعد حریری کی حکومت سےحمایت واپس لے لی اور اب وہاں حزب اللہ کی پسندکا وزیر اعظم حلف لینے والا ہے۔اس واقعہ پر امریکہ اور اسرائیل نے کافی مخالفت کی لیکن حقیقت یہی ہے کہ امریکہ ،اسرائیل اور خطے میں ان کے حامی حکمرانوں کےاب دن لدچکے ہیں ۔تازہ اطلاعات کےمطابق مصر کے سابق صدر حسنی مبارک حکومت سے برطرف ہوکر کافی مغموم ہیں اور وہ بیماریوں کا علاج نہیں کرارہے ہیں ۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ ساحلی شہر شرم الشیخ میں آخری سانس لیناچاہتے ہیں۔ دوسری طرف تیونیشیا کے سابق صدر زین العابدین بن علی سعودی عرب کے ایک اسپتال میں ‘کوما’ کی حالت میں ہیں۔ اطلاعات کے مطابق انہیں دل کا دورہ پڑا تھا اور وہ اب محض سانس لے رہے ہیں اور ان کے پھر سےصحت مند ہونے کا امکان نہیں ہیں۔ مصر کے بعد بحرین میں مخالفین شدید احتجاج کے دوران ‘خلیفہ مردہ باد’ کے نعرے لگاتے ہوئے راجدھانی مناما کے پرل اسکوائر پر جمع ہوگئے ۔ احتجاج کے پانچویں دن فوج نے شہر کے مرکزی علاقہ میں مخالفین کو منتشر کرنے کےلئے صبح 3بجے سوتے ہوئے مظاہرین پر بندوقوں اور دیگر ہتھیاروں سےحملہ کردیا۔ اس واقعہ میں کم از کم 5افراد ہلاک اور سیکڑوں زخمی ہوگئے۔

اس کے بعد ہی مظاہرین نے اس قدر شدید احتجاج کیا کہ حکومت کو فوج او رپولس کو واپس بلالیا ۔ اس سے پہلے پورے ملک میں احتجاجات پر پابندی لگادی گئی تھی ۔ اطلاعات کے مطابق امریکہ کے اے بی سی ٹیلی ویژن چینل کے ایک صحافی میگو یل مارقوس کو بھی منا ما میں کچھ لوگوں نے گھیر کر پٹائی کردی۔ بحرین میں مخالفین کا الزمام ہے کہ خلیفہ حکومت اقلیتی سنی مسلک سے ہے اور وہ 70فیصد سے زیادہ شیعہ اکثریتی فرقے کے لوگوں کو روزگار رہنے کے لئے مناسب جگہ اور صحت خدمات مہیا نہیں کرتی ۔ ان کا الزام ہے کے خلیفہ حکومت ملک کی آبادی کا تناسب تبدیلی کرنے کے لئے سعودی عرب ، یمن، شام اور پاکستان کے بلوچستان علاقوں سے سنیوں کو ملک میں لاکر شہریت اور تمام سہولیات دے رہی ہے۔ اکثر یتی شیعہ آبادی کامطالبہ ہے کہ ملک میں حکومت تبدیلی ہو اور نئے سرے سے جمہوری آئین مرتب کیا جائے۔ انہوں نے حالیہ احتجاج کے دوران بادشاہ سے مطالبہ کیا کہ وہ حماد بن سلمان الخلیفہ کو وزیر اعظم کے عہدہ سے برطرف کردیں جو گزشتہ 40برسوں سے حکومت پر قابض ہیں۔ ادھر یمن کی راجدھانی صنعا اور دیگر شہروں میں بھی حکومت مخالفین اور  حامی لوگوں کے درمیان شدید جھڑپیں جاری ہیں۔ جنوبی شہر عدن میں بھی مخالفین سرگرم ہیں۔ اطلاعات کے مطابق صنعا یونیورسٹی کےطلبا نے شہر کے مرکز میں واقع تحریر اسکوائر پر احتجاج مظاہرہ کئے ہیں۔ صنعا میں بھی حکومت حامی لوگوں نے احتجاجیوں پر حملے کئے ہیں۔ واضح رہے کے گزشتہ برس اگست سے شروع ہوئی حوطی شیعہ مخالف حکومتی کارروائی میں کئی بستیوں کو خاکستر کیا گیا تھا اور سیکڑوں لوگ مارے گئے تھے۔ اس وقت سعودی عرب نے یمن حکومت کی مدد کرتے ہوئے معدہ ریاست میں شیعہ بستیوں پر بمباری کی تھی۔ 2003عراق جنگ کے بعد سے ہی میرا تجزیہ تھا کہ یمن ایسا ملک ہے کہ جب بھی امریکہ چاہے گا اس کی تباہی کا انتظام کردے گا۔ وہاں القاعدہ کے رہنما اسامہ بن لادن کے خاندان کے افراد اور عراق کی بعث پارٹی کے سابق اعلیٰ رہنما مقیم ہیں۔ بہر حال اب تیونیشیا او رمصر میں انقلاب آنے کے بعد یمنی شہریوں کی ہمت افزائی ہوئی اور حکومت کے خلاف کھڑے ہوگئے۔

لیبیا کی راجدھانی طرابلس کے علاوہ بن غازی ، بیدہ اور کئی دیگر مقامات پر بی جمہوریت پسندوں کے مظاہرے جاری ہیں۔ ملک پر گزشتہ 40برس سے معمر قذافی کی حکومت ہے۔معمر قذافی نے حال ہی میں سرکاری ملازمین کی تنخواہیں دوگنی کردی ہیں اور 110مخالفین کو قید ہے رہا کردیا ہے جن میں شدت پسند ہونے کا الزام تھا۔ اس  پر بھی حالات قابو میں نہ آنے پر فوج نے کئی مقامات پر گولی چلادی جس کے نتیجہ میں ایک سو سے زیادہ افراد مارے جاچکے ہیں ۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ گزشتہ چند برسوں کے دوران معمر قذافی کے بیٹے انجینئر سیف الاسلام اپنے والد کی حکومت کی ہلکی پھلکی نکتہ چینی کرتے رہے ہیں۔ ماہر ین کا کہنا ہے کہ تیونیشیا اور مصر کے حالات اتنی تیزی سے تبدیل ہوئے کہ امریکہ او ر دیگر مغربی ممالک نے جلد بازی میں جمہوریت نواز عناصر کی حمایت کا اعلان کردیا۔اب امریکہ کے لئے بظاہر یہ ممکن نہیں ہے کہ دیگر ممالک میں  وہ ظالم بادشاہوں کی کھل کر حمایت کرسکے۔ اس سے جمہوریت پسند مخالفین کو یہ فائدہ ہوگا کہ بادشاہتوں کے خلاف عوامی مہم تیز ہوتی جائے گی ۔ میں سمجھتا ہوں کہ ظالم بادشاہتوں میں حکومت کی مخالفت کرنے والے موت کی بہت چھوٹی سزا سمجھتے ہیں ۔ اس لئے ان ممالک میں عوامی احتجاج کو حکومتوں کی تبدیلی سے پہلے نہیں روکا جاسکتا ۔ بحرین ،یمن اور لیبیا میں فوج اورپولیس ابھی تک اپنی حکومتوں کا ساتھ دے رہی ہیں۔ اگر کوئی عوام مخالف بڑی کارروائی ہوئی تو ممکن ہے کہ پولیس اور فوج بھی حکومت کے خلاف ہوجائے اور عوام کو بادشاہتوں کے خاتمے میں کامیابی مل جائے ۔ بہر  حال یہ سمجھنے کی ضرورت ہے کہ عرب ممالک میں آزادی تحریک کو مسلکی تحریک کار نگ دینے والے لوگ ظالم حکمرانوں اور ان کے آقاؤں کو بچانے کی سازش میں شریک ہیں۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/sectarian-hue-of-the-arab-revolt--عرب-انقلاب-کامسلکی-رنگ/d/4168


 


Loading..

Loading..