New Age Islam
Wed Dec 08 2021, 02:14 AM

Urdu Section ( 5 Dec 2010, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Blood donation and Shariah guidelines عطیۂ خون اور شریعت کی رہ نمائی

By Maulana Nadeemul Wajidi

(Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk)

Once again Darul Uloom’s fatwa has hit the headlines. Some TV channels have telecast the fatwa as news. We have already written that for the last few years the media has been distorting or publishing the fatwas issued by reputed and reliable Muslim institutions out of context. The purpose behind this is gaining cheap publicity as well as damaging the credibility of Deoband. Recently a Hindi newspaper published a fatwa on the issue of blood donation allegedly taken from the website of Darul Uloom Deoband. God knows what the fatwa is or what the words are as the number ascribed to the fatwa does not exist in the website. Where did the person get the fatwa or what did he understand? When I contacted an authorized mufti of Darul Ifta (Department of fatwas) Darul Uloom Deoband he said that the reporter had asked him about organ donation to which he had replied that organ donation was not permissible in Islam as man does not have any authority over his body. The next day the newspaper reported the fatwa giving the impression that the mufti had declared blood donation haram. As soon as the news was published, a number of Muslim scholars jumped onto the field and issued statements criticizing the fatwa. Maulana Wahiduddin Khan was the first to react. Describing the fatwa wrong, he said that Muslims could not be stopped from blood donation and appealed to Muslims to come forward and donate blood. The Chairman of the Dapartment of the Islamic Studies, Jamia Millia Islamia, Prof Akhtarul Wassey said that blood donation was necessary to save human life. He also recalled that Islamic Fiqh Academy had already ruled that donating blood was not an issue.

Going by the detail, the current attitude of the media is regrettable. Muslim organizations should sit back and take stock of the situation as to how to deal with the trend of publishing fabricated and concocted stories, news and statements as they create misunderstanding and spread misinformation and detractors get an opportunity to point fingers at a clean religion like Islam and religious bodies too come under attack. One solution is dragging such newspapers and TV channels to court. If this is done a few times, it will discourage this trend. But the best solution would be setting up of TV channels by Muslims. Our religious organizations can open their own TV channels easily. Only a little bit of courage and a comprehensive planning is what is needed. Secondly, I would like to say to our intellectuals that before making any comments on a news or issue, they should ask for an explanation from the person or organization concerned to confirm if they have really made the statement. If they do not have time to do that, then they should wait for a day or two as the persons or organizations concerned may publish their statement refuting the allegations or making corrections. However, this is not directed towards people like Maulana Wahidudding Khan whose sole purpose is opposition for the sake of opposition, and distorting the Islamic teachings and  history is his aim in life.

Now let’s come to the topic under discussion. But before that let me tell you that in this planet no other being is as grand or dignified as human beings. Every particle of this universe has been created to felicitate his better and purposeful life. But God also wants to see that man does not wander like a dry leaf in this vast universe. He should lead his life according to the wishes of the almighty. Prophets were sent and shariahs and books were revealed towards this end. Islam is the last sharia which was revealed for the welfare of man. Obviously, if something has been revealed or sent for his welfare must have considerations for his temporary interests. Therefore, sharia laws have not been rendered rigid like a stone but it has considerations of changing times and of temporary and permanent situations.

It can therefore be said that not always there are only two aspects of an issue -- halal or haram --- but there are sometimes circumstances  that turn halal into haram and vice versa; or some of the rules become invalid or some rules are added to the existing ones. There are plenty of instances of such omissions and commissions in sharia. In short it should be understood that change is possible in many sharia laws under special circumstances. In fiqh principles it is called zaroorat, hajat or izterar (necessity, need or compulsion). Then there is  difference in izterar and hajat as well as pointed out by Allama Al Hamwi in Sharhul Ashbaah wal Nazaer that if life cannot be saved by not using a restricted thing, the use of haram is permitted with certain conditions. And need means the circumstances when there is no risk to life if a haram thing is not used but it will cause hardship and complications. In such circumstances though the haram will not be permitted but there will be some leniency in the sharia laws applying in the situation. For example, in the state of sickness, tayammum (ablution with soil) is allowed instead of wuzu (ablution); namaz can be offered lying on the bed or roza (fasting) can be postponed.

After this introduction, I would like to tell you that blood in itself is unholy (napak). The Quran states :

“He has forbidden you only the Maytatah (dead animals), and blood, and the flesh of swine, and that which is slaughtered as a scrifice for others than Allah (or has been slaughtered for idols, etc., on which Allah's Name has not been mentioned while slaughtering)”. (Al baqarah 173).

Although this verse is very explicit, the instructions therein are very concise. The faqeehs of the community have explained these instructions in the light of the Book and Sunnah (Hadith) and have made inferences. Take the issue of blood for instance. In this verse blood has been declared haram. It means that blood of any kind is haram whether it is of humans or of animals; whether it is in small quantity or profuse; whether it is flowing or frozen. But in fact it is not as simple as that. The verse has been further elaborated elsewhere in the Quran and also mentioned in hadiths. The faqeehs have compiled laws relating to blood in light of those verses and hadiths which are documented in books of jurisprudence. For example, in the surah Anaam (145) the Quran says: blood poured forth which means blood that flows: frozen blood is not haram. Therefore, kidney, liver, spleen etc of those animals whose meat is allowed for consumption and who have been slaughtered in halal way are permissible according to the consensus of faqeehs. However drinking their blood is not permitted. The next part of the verse is that on which the state of Izterar has been defined in jurisprudence. It is stated:

But if one is forced by necessity without wilful disobedience nor transgressing due limits, then there is no sin on him. Truly, Allah is Oft-Forgiving, Most Merciful.”(Al Baqarah173).

The principle laid down here is such that provides great relief to persons in distress. Based on this principle of izterar (compulsion), the faqeehs have compiled laws relating to the state of izterar so that anyone fallen in such state of compulsion or helplessness can decide for himself if he should use or consume the forbidden commodity. The style of the Quran is very wise. It has established the nature of the use of haram in the state of izterar only in two or three words one, of which is ghaira baaghin, that is, he should use the forbidden thing while remaining obedient. Obviously obedience is such a quality that will allow him to use the thing only as long as there is a need or compulsion and as soon as his need is fulfilled, he will restrain himself. And it was further warned with the words wa la aad, suggesting that one should not even imagine of transgressing the limits.

Take an istance. A man is so hungry that if he does not have to eat anything he might die. But no legitimate food is available to fill his stomach. This is the situation that the Sharia has declared izterar. In such a situation, he is permitted to consume haram food but only to such a quantity that will suffice to save his life. There should not be any temptation to enjoy or relish the haram food. If he uses such food keeping this in mind, he will not be held a sinner and will be considered one in distress. There is a subtle point in it that you are not regarded as a sinner not because the haram food has become halal as the illegitimacy of the haram food is intact but because you used it only to save your life and because you committed the act with the consent of God within the limits prescribed by him.

Whatever the faqeehs have written in light of the verses explain the same points: blood is in itself unholy and najas and whatever laws apply to najas things apply to blood as well. That means its consumption is also forbidden. Its external use is also forbidden so much so that if it dirties your cloth, it must be washed and cleaned and any prayer that requires to be performed in clean clothes will not be valid in such clothes. There are some more details that are mentioned in connection with purity and cleanliness. It suggests the the use of blood in any form is illegitimate and forbidden. So the buying and selling of blood and benefitting from it is forbidden in the same as is buying and selling of all haram and impure things and commodities.

From this detail the point that blood is as unholy and impure as the pig. Secondly, blood is also a part of the human beings. Man as a human being is respected and dignified. All the parts of his body including blood deserve respect. Keeping both the aspects – its impurity and najasat as well as respect human body deserves, the external and internal use of blood has been declared haram.

Now the question that remains to be answered is: can blood be used as medicine?  Nowadays its use is commonplace, particularly when a man loses blood as a result of an accident or there is a deficiency of blood in the body due to some disease, doctors inject someone else’s blood in his body. Is that permissible by sharia? And if yes, whose blood can be accepted? One option is that a close relative of the patient offers his/her blood and the second one is that the blood is acquired from the blood bank. Are both the optios same or is there any difference?

So far as I know, Maulana Md Shafi Usmani was the first to do some research on this subject. Not only did he do research but also he sought the opinion of several Pakistani ulema on the use of blood by sending them a questionnaire. The research and its result are all available in book form. Hadhrat Mufti has written in detail on all the aspects of the subject in his exegesis Ma’ariful Quran and Jawahir ul Fiqh. All the successive faqeehs have issued fatwas on the basis of the research of Hadhrat Mufti.

For instance, Hadhrat Maulana Mufti Abdur Rahim Lajpuri in his book Fatawa Rahimia and Maulana Yousuf Ludhianvi replying to query relating to blood in his column ‘Your problems and their solutions” has quoted the paragraph of Hadhrat Mufti’s answers word by word. In other fatwas too there is no alteration in Hadhrat Mufti’s fatwa. It proves that our ulema had found out the solution of many complicated medical issues 50 years ago when medical science was not as developed as it is today.

All the persons who issue fatwas are unanimous on the point that once out of human body, the blood becomes impure. So logically a man’s blood should not be infused into another but sometimes the transfusion of blood becomes inevitable and doctors prescribe blood transfusion to save the patient. This situation is called izterar and according to all the faqeehs transfusion is permissible under such circumstances and it is also justified in the Quran.

Hazrat Mufti Shafi writes that though blood is a part of human body but for transfusion, there is no need to perform an operation or dissect someone’s body. The blood is taken out with the help of a syringe and injected into the other. It is same as the mother’s milk has been declared legitimate with a view to the need of the child. Moreover, if treatment with milk is inevitable, elders can also benefit from it as is written in Fatawa Alamgiri(255/5):”It should not be surprising if a woman’s milk is poured into a man’s nose or fed with”. If blood is considered milk it would not be wrong as milk is the other form of blood and the part of body. The only difference is that milk is pure while blood is impure or najas. That’s why the faqeehs have permitted the transfusion of blood for the purpose of treatment only but not for enhancing one’s strength and beauty. The Quran has permitted the consumption of dead animal to save one’s life but if there is no situation of izterar and other medicines are available, then the laws are different.(Ma’ariful Quran:419/1)).

The laws are different for situations of non-izterar as there is no need to use haram if the patient’s life is saved by other medicines. That’s why some faqeehs permit transfusion of blood in situations of izterar but forbid it in other situations. However, majority of faqeehs have permitted it in two other situations as well:

1) If according to the doctor the patient needs to be given blood even if there is no threat to his life

2 If according to the doctor the disease could prolong without blood transfusion. In this situation refrain is advised though transfusion is permissible.

The people who advocate treatment with forbidden things defend their stand with the hadith of the holy Prophet (PBUH) about the incident of Areena when the Prophet (PBUH) allowed the people of Areena to drink the urine of the camel (Bukhari Babul Dawa’a, Sunan Tirmidhi 106/1, raqam 72). Similarly, the books of hadiths also mention the tale of the sahabi Hazrat Harafjah whose nose had decomposed. The Prophet (PBUH) had allowed him to transplant a nose of gold though gold is forbidden for men(Tirmidhi 206/1).

After the issue of the use of blood as medicine has been resolved, the question remains whether the donation of blood is also valid or will it be equated with the donation of human organs which is not permissible. Another related question is whether the purchase of blood is legitimate if donated blood is not available. Another question will arise; if the purchase of blood is permissible, will the sale of blood will also be permitted?

So far as the last question is concerned, it is determined that that the sale of blood is not permissible as hadith forbids sale of blood. The faqeehs rule that the sale of najas (forbidden) things is forbidden though benefits can be taken from them in need. Nonetheless, the use of money gained from the sale of blood is illegitimate.

This was about the sale of blood. However, there is no disagreement among the faqeehs that if blood is not available, its purchase is permissible. Maulana Shafi Usmani writes:”The sale of blood is indeed not permissible, but on the conditions blood donation has been permitted, the purchase of blood is also allowed if blood is not available (Jawahirul Fiqh 38/2). Similarly if an authorized doctor prescribes transfusion of blood saying if blood is not transfused, there will be a threat to the patient’s life or even if there is no serious threat to him, there is no scope of his  recovery without blood transfusion, blood can be given (Jawahirul Fiqh).

Accidents are on the rise. It is therefore necessary that blood is always available in hospitals so that patients’ lives can be saved by transfusing them with blood. In hospitals blood is kept ready during an operation so that blood can be transfused in case of excess bleeding. For that purpose, blood banks have been set up. People voluntarily donate blood in blood donation camps organized by these blood banks. The blood donated here is preserved so that blood can be readily given to the needy after matching the blood group. Sometimes, the blood group of the patient does not match with that of the donor. It causes trouble and the delay causes threat to the patient’s life. If blood is readily available in blood banks of hospitals, blood of group matching with that of the patient can be acquired in lieu of the donor’s blood. Our learned muftis have not ignored this aspect too. Hazrat Qari Mujahidul Islam has stated:

“The use of blood in situation of izterar is permissible. When the use of blood is permissible, then the donation of blood is also legitimate and for donating blood, waiting for the occurrence of the situation of izterar is not necessary. If blood is not available on time or the group is not found matching, the search for a donor of the same group may cause delay and the patient may die. Therefore, donating blood, setting up blood banks and holding camps for noble causes is right and permissible.(Fatawa Qazi, p 210)

Source: Sahafat, New Delhi

 

عطیۂ خون اور شریعت کی رہ نمائی

دارالعلوم کے ‘فتوے’ کے حوالے سے میڈیا کی ایک تازہ شرارت کا جائزہ لے ہیں :مولانا ندیم الواجدی

ایک مرتبہ پھر دارالعلوم کا فتویٰ اخبارات کی سرخیوں میں ہے، کئی ٹی وی چینلوں نے اس فتویٰ کو خبر کے طور پر نشر کیا ہے، ہم ان کالموں میں کئی بار لکھ چکے ہیں کہ کچھ سالوں سے میڈیا غیر ضرو ری طو ر پر مسلمانوں کے باوقار اور قابل اعتماد اداروں کے بالخصوص دارالعلوم دیوبند سے جاری کئے گئے فتوؤں کو توڑ مروڑ کر یا ان کو سیاق وسباق سے جدا کر کے شائع کررہا ہے ، اس کا مقصد سستی شہرت حاصل کرنا بھی ہے اور دارالعلوم دیوبند کی ساکھ کو نقصان پہنچانا بھی ہے۔ حال ہی میں ایک ہندی اخبار نے دارالعلوم کی ویب سائٹ سے ایک فتویٰ لے کر شائع کیا ہے جو خون کا عطیہ دینے کے سلسلے میں ہے، خدا جانے فتویٰ کیا ہے، اس کے الفاظ کیا ہیں اس لیے فتوے کا جو نمبر شائع کیا گیا ہے، ویب سائٹ پر اس نمبر کا فتویٰ موجود ہی نہیں ہے، لینے والے نے کہا ں سے یہ فتویٰ لیا اور اس سے کیا سمجھا ہم نے دارالعلوم دیوبند کے شعبہ دارالافتا کے ایک ذمہ دار مفتی صاحب سے رابطہ قائم کیا تو  انہوں نے بتلایا کہ اخباروالے نے انگ دان( عضو کا عطیہ دینے) کے سلسلے میں مجھ سے سوال کیا تھا جس کے جواب میں میں نے کہہ دیا تھا کہ شریعت میں انگ دان جائز نہیں کیونکہ انسان اپنے جسم کا مالک نہیں ہے،اگلے دن اخبار نے مفتی صاحب کا بیان اس طرح پیش کیا گویا انہوں نے رکت دان یعنی خون کے عطیئے کو حرام قرار دیا ہو، ابھی یہ بیان آیا ہی نہیں  تھا کہ کسی مسلم اسکالرس میدان میں کود پڑے اور  انہوں نے دارالعلوم کے اس فتوے کے خلاف بیان واضعے شروع کردئے ،سب سے پہلے وحیدالدین خاں بولے  انہوں نے فتوے کو غلط بتاتے ہوئے کہا کہ خون کا عطیہ دینے سے مسلمانوں کو روکا نہیں جاسکتا، انہوں نے کہا کہ ہم مسلمانوں سے یہ اپیل کرتے ہیں کہ وہ خون کا عطیہ دینے آئیں اور ایسا کرتے رہیں ،جامعہ ملیہ اسلامیہ میں اسلامی علوم کے شعبے کے چیئر مین پروفیسر اختر الواسع نے فرمایا کہ زندگیاں بچانے کے لئے خون کا عطیہ ضروری ہے ،انہوں نے یہ بھی یاد دلایا کہ اسلامی فقہ اکیڈمی نے پہلے ہی یہ کہا تھا کہ خون کا عطیہ دینا کوئی مسئلہ نہیں ہے۔

اس تفصیل کے بعد عرض ہےکہ میڈیا کی موجودگی روش نہایت افسوس ناک ہے، مسلم تنظیموں کو بیٹھ کر اس مسئلے پر غور وخوض کرنا چاہئے کہ من گھڑت خبریں ،بتصرے اور بیانات شائع کرنے کا جو رجحان پیدا ہوا ہے اس پر کس طرح قابو پایا جائے ، اس طرح کے رجحان سے بڑی غلط فہمیاں پھیلتی ہیں اور لوگوں کو اسلام جیسے صاف ستھرے مذہب پر انگلی اٹھانے کا موقع ملتا ہے، اور مذہبی ادارے بھی اس کی زد میں آتے ہیں ،اس کا ایک حل تو یہ ہے کہ اس طرح کے اخبارات اور ٹی وی چینلوں کے خلاف قانونی چارہ جوئی کی جائے ،دوچار مرتبہ اگر یہ قدم اٹھالیا گیا تو اس رجحان میں کمی ضرور آئے گی، لیکن سب سے بہتر صورت یہ ہے کہ مسلمانوں کے اپنے ٹی وی چینل ہوں ،ہماری ملی جماعتیں بڑی آسانی کے ساتھ ٹی وی چینل قائم کرسکتی ہیں، بس اس کے لئے تھوڑے حوصلے اور ہمت اور بڑی منصوبہ بندی کی ضرورت ہے ، دوسری بات ہمیں اپنے دانشوروں سے عرض کرنی ہے کہ وہ کسی موضوع پر تبصرہ کرنے سے پہلے متعلقہ شخص یا ادارے سے فون کر کے پوچھ لیں کہ آیا اس نے ایسا کہا بھی ہے یا نہیں ،اگر پوچھنے کی فرصت نہ ہو تو ایک دوروز انتظار ہی کی زحمت اٹھالیں ،ہوسکتا ہے جس بیان پر آپ تبصرہ کرنا چاہتے ہیں اس کی تردید آجائے ،یا اس کی تصحیح کردی جائے ، مولانا وحید الدین خاں جیسے حضرات ہمارے مخاطب نہیں ہیں جن کا واحد مقصد ہی مخالفت برائے مخالفت ہے، اور ج ن کی زندگی کا نصب العین ہی اسلامی تعلیم اور تاریخ کومسخ کرتا ہے۔

اب آئیے زیر بحث موضوع کی طرف ،لیکن اس سے پہلے بہ طور تمہید یہ عرض کرنا ہے کہ اس کا ئنات میں انسان سے زیادہ مکرم اور افضل کوئی دوسری مخلوق نہیں ہے، ہر ذرہ اسی کی بہتر اور بامقصد زندگی کے لئے تخلیق کیا گیا ہے، لیکن اللہ تعالیٰ کی مرضی اور منشا یہ ہے کہ انسان اس وسیع کائنات میں برگ آوارہ کی طرح نہ پھر ے بلکہ اپنے خالق ومالک کی مرضی کا پابند رہ کر زندگی گزارے ،اسی لیے پیغمبر بھیجےگئے ،شریعتیں نازل کی گئیں ،اور کتابیں  اتاری گئیں ،اسلام آخری شریعت ہے جو انسان کی فلاح کے لئے نازل کی  گئی ہے ،ظاہر ہے جو چیز جس کے لئے بنائی گئی اور جس کے لئے بھیجی گئی اسی میں اس کی فلاح ہوگی ،اور اس کی مصلحتوں کا خیال ضرور رکھا گیا ہوگا ،اس لئے شرعی احکام کو پتھر کی طرح جامد نہیں رکھا گیا ،بلکہ ان میں انسانی طبائع کے تغیرات اور اس کے دائمی اور عارضی مصلحتوں کو سامنے رکھا گیا ہے اس لیے اگر ہم یہ کہیں تو غلط نہ ہوگا کہ معاملے کے صرف دو پہلو نہیں ہوتے حلال اور حرام ،بلکہ کچھ ایسے بھی پہلو ہوتے ہیں جن کی بنیاد پر کوئی  حرام چیز حلال یا حلال چیز حرام ہوجاتی ہے ،کوئی حکم ساقط ہوجاتا ہے یا کسی حکم کا اضافہ کردیا جاتا ہے ، شریعت میں اس کے بے شمار مثالیں ہیں ،مختصراً اتنا سمجھ لیجئے کہ بہت سے احکام میں کسی مصلحت کی وجہ سے تبدیلی ممکن ہے، اصول فقہ میں اس مصلحت کو ضرورت وحاجت اور اضطرار جیسی اصطلاحات سے تعبیر کیا جاتا ہے ، پھر اضطرار اور حاجت میں بھی فرق ہے ،جیسا کہ علامہ الحموی نے شرع الاشباہ والنظائر میں لکھا ہے کہ اضطرار یہ ہے کہ کسی ممنوع چیز کو استعمال کئے بغیر زندگی نہ بچ سکتی ہو ،ایسی صورت میں کچھ شرائط کے ساتھ حرام کا استعمال جائز ہوجاتا ہے ،اور حاجت یہ ہے کہ کسی ممنوع چیز کے استعمال نہ کرنےس ے جان کی ہلاکت کا تو خوف نہیں البتہ مشقت اور تکلیف بہت زیادہ ہے، ایسی حالت میں حرام چیزوں کے استعمال کی اجازت تو نہ ہوگی البتہ بہت سے احکام شرعیہ میں سہولت اور تخفیف ہوجائے گی ، جیسے حالت مرض میں وضو کے بجائے تیمم کی گنجائش ہے کھڑے  ہوکر نماز پڑھنے کے بجائے بیٹھ کر یا لیٹ کر نماز پڑھی جاسکتی ہے یا روزہ قضا کیا جاسکتا ہے۔

اس تمہید کے بعد عرض ہے کہ خون فی نفسہ ناپاک چیز ہے ، اس کی نجاست اور حرمت نص قطعی ہے ثابت ہے ،قرآن کریم میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے : اِنَّمَا حَرَّمَ عَلَیکُمُ اُلًمَیًتَۃَ وَ اُ لدَّمَ وَلَحْمَ اُلْخِنزِ یرِ وَماَ اُھِلَّ بَہِ لِغَیْرِ اؑللہِ(سورہ البقرہ :173) ’’اس نے تم پر حرام کیا ہے مردو جانور ،خون، سورکا گوشت اور جو جانور اللہ نام پر ذبح کیا گیا ہو۔’’

یہ آیت اگر چہ بہت واضح ہے لیکن اس میں جو احکام ہیں وہ نہایت مجمل ہیں اس اجمال کو فقہائے امت نے کتاب سنت کی روشنی میں دور کر کے بہت سے احکام مستنط کئے ہیں ،اب خون ہی کا معاملہ لے لیجئے ،اس آیت میں خون کو حرام قرار دیا گیا ہے، اس سبیہ سمجھ میں آتا ہے کہ ہر طر ح کا خون حرام ہے خواہ وہ انسان ہو یا جانور کا ،تھوڑا ہو یا بہت ، بہتا ہوا یا منجمد ،لیکن درحقیقت بات صرف اتنی ہی نہیں ہے، اس کی مزید تشریح قرآن کریم کی دوسری جگہوں پر آئی ہے اور احادیث میں بھی وارد ہے جس کی روشنی میں خون کے احکام باضابطہ طور پر فقہا نے مرتب کردئے ہیں اور لقہہ کی کتابوں میں موجود ہیں ،مثال کے طور پر قرآن  کرام کی سورۂ انعام میں اودما مسفوحاً(الانعام :145) فرمایا گیا ہے جس کے معنی ہیں بہنے والا خون گویا وہ خون حرام ہے جو بہنے والا ہو ، منجمد حرام نہیں ہے۔ اسی لیے گردہ کلیجی اورتلی وغیرہ اجزا ان جانوروں کے باتفاق فقہا جائز ہیں جن کا گوشت کھانے کی اجازت ہے ۔اور جو شریعت کے بتلائے ہوئے طریقے پر ذبح کئے گئے ہوں ،مگر ان کا خون پینے کی اجازت نہیں ہے، اس آیت کا اگلا حصہ وہ ہے جس پر فقہی مسائل میں اضطرار کی عمارت کھڑی کی گئی ہے:فرمایا

فَمَنِ اُضْطُرَّ غَیْرَ بَا غ وَلاَ عَا دِِ فَلَآ اِ ثْمَ عَلَیْہِ اِنَّ اُللہ غَفُوُرُ رَّحِیمُ(سورۃ البقرہ :173)‘‘ جو شخص بے اختیار ہوجائے نہ وہ نافرمان ہو اور نہ حد سے تجاوز کرنے والا ہو اس پر کوئی گناہ نہیں ہے، بے شک اللہ بڑے غفور رحیم ہیں۔‘‘ یہ ایک ایسا  اصول بیان کیا گیا ہے جس میں مجبورانسان کے لیے بڑی سہولتیں ہیں ، فقہا نے اسی اصول کی روشنی میں مجبوری یعنی حالت اضطراب کی حالت پیش آئے یہ فیصلہ کرسکتا ہے کہ اسے ممنوعہ اشیا استعمال کرنی چاہئیں یا نہیں، قرآن کا طرز بیان بڑا حکیمانہ ہے، صرف دوتین لفظوں کے ذریعے قرآن کریم نے اضطرار کی حالت میں حرام کے استعمال کی نوعیت متعین کردی ہے، جن میں سے ایک لفظ غیر باغ ہے یعنی وہ فرماں بردار بندہ بن کر ہی یہ چیز استعمال کرے،ظاہر ہے فرماں برداری ایک ایسا وصف ہے جو اسے محض ضرورت کے مطابق ہی استعمال پر آمادہ کرے گی اور جیسے ہی یہ ضرورت پوری ہوگی اس کے ہاتھ خود بہ خود رک جائیں گے ،اسی کو ولاعاد کہہ کر اور مؤکد کردیا گیا کہ ذہن کے کسی گو شے میں بھی حد سے تجاوز کرنے کا خیال نہ ہوناچاہئے ،مثال کے طور پر ایک شخص بھوک سے بے چین وبے قرار ہے اور بھوک اتنی بڑھی ہوئی ہے کہ اگر کھانے کو کوئی چیز میسر نہ ہوئی تو اس کا دم بھی نکل سکتا ہے مگر کوئی جائز وپاک غذاپیٹ بھرنے کے لئے موجود نہیں ہے یہ وہ کیفیت ہے جسےشریعت نے اضطراف سے تعبیر کیا ہے، اس صورت میں اس شخص کو حرام چیز استعمال کرنے کی اجازت ہے،مگر صرف اس قدر جس سے زندگی بچ جائے، ناجائز غذا کےاستعمال سے لذت کا م ووہن مقصود نہ ہو، اگر اس شرط کے ساتھ حرام غذا استعمال کرے گا تو اس پر کوئی گناہ نہیں ہوگا، اور وہ عنداللہ معذور اور مجبور سمجھا جائے گا ،قلا الم علیہ میں ایک لطیف نکتہ یہ بھی پوشیدہ ہے کہ گناہ نہ ہونے کا یہ مطلب نہیں ہے کہ ہو حرام وناپاک چیز حلال وطیب ہوگئی بلکہ اس کامطلب یہ ہے کہ اس کی حرمت اور نجاست اپنی جگہ ہے ،لیکن تم نے جان بچانے کے لئے اس کا جو استعمال کیا ہے اس سے تم گنہ گار نہیں ہوں گے ،کیونکہ تمہارا یہ فعل اللہ کی اجازت ومرضی سے اور ا کی متعین کردہ حدود کے اندررہ کر ہوا ہے۔

خون کے متعلق فقہا نے ان آیات کی روشنی میں جو کچھ لکھا ہے اس کا حاصل بھی یہی ہے کہ خون اصلاً ناپاک ونجس ہے اور ناپاک ونجس چیزوں کے جو احکام ہیں وہ احکام خون کے سلسلے میں بھی واجب العمل ہیں،یعنی اس کا کھانا پینا بھی حرام ہے ،اس کا خارجی استعمال بھی جائز نہیں ہے، بلکہ اگر خون بدن پر یا کپڑے پر لگ جائے تو اس کو صاف کرنا ور دھونا ضروری ہے ،ورنہ ان عبادات کی تکمیل نہیں ہوگی جن میں بدن اور کپڑوں کی طہارت مقصود ہے، اس میں کچھ اور بھی تفصیلات ہیں جو طہارت کے ابواب میں لکھی ہوئی موجود ہیں، یہاں ان کا موقع ومحل نہیں ہے ، کیوں کہ قرآن کریم میں مطلقاً دم فرمایا گیا ہے ،اس لفظ کے اطلاق کا تقاضا یہ ہے کہ خون کے ہر طرح کا استعمال ناجائز ہو، چنانچہ جس طرح دیگر نجاستوں کی خرید و فروخت حرام ہے اور ان سے نفع کمانا حرام ہے اسی طرح خون کی خریدوفروخت بھی حرام ہے اور اس سے نفع اٹھانا بھی جائز نہیں ہے۔

اس تفصیل سے یہ بات تو واضع ہوگئی کہ ازرو ئے قرآن کریم خون نجس ہے ۔۔۔۔۔۔۔مونداور خنزیر کی طرح خون کو بھی نجس اور ناپاک قرار دیا گیا ہے ،پھر یہ انسان کا جز وبدن بھی ہے انسان بحیثیت انسان مکرم ومحترم ہے اس کے تمام اجزا ئے بدن  بہ شمول خون واجب التکریم ہیں ،نجاست کے پہلو سے بھی اور اس شرف تکریم کی بنا پر بھی خون کا داخلی اور خارجی استعمال ناجائز قرار دیا گیا ہے، اب صرف یہ سوال رہ جاتا  ہے کہ کیا خون کو بہ طور دوا استعمال کیا جاسکتا ہے ،آج کل اس کا استعمال عام ہے ،خاص طور پر جب کسی حادثے کےبعد مجروح انسان کے بدن کا خون ضائع ہوجاتا ہے ،یا کسی بیماری کی وجہ سے جسم میں خون کی کمی پیدا ہوجاتی ہے اس صورت میں اطبا کسی دوسرے کا خون لےکر مریض کے جسم میں داخل کرتے ہیں ، کیا ازروئے شرع ایسا کیا جاسکتا ہے ،اور اگر اس کی اجازت ہے تو یہ خون کس کا حاصل کیا جائے، ایک صو رت تو یہ ہے کہ مریض کاکوئی عزیز قریب ازراہ تعلق اپناخون پیش کردے، دوسری صورت یہ ہے کہ بلڈ بینک سے خرید اجائے دونوں صورتیں برابر ہیں یا ان میں کو ئی فرق ہے۔

جہاں تک میرے علم میں ہے اس سلسلے میں سب سے پہلے حضرت مولانا مفتی محمد شفیع عثمانی ؒ نے غور وخوض کیا ،نہ صرف خود غورکیا بلکہ اس وقت کے متعدد پاکستانی علما کو خون کے استعمال سے متعلق سوالات بھیج کر ان کی رائے دریافت کی، یہ تمام تحقیقات اور ان کے نتائج مطبوعہ شکل میں موجود ہیں ،حضرت مفتی صاحب نے اپنی تفسیرمعارف القرآن میں اور جواہر فلسفہ میں اس موضوع کے تمام پہلوؤں پر سیر حاصل بحث کی ہے، بعد کے تمام  فقہا نے حضرت مفتی صاحب کی تحقیقات پر ہی اپنے فتوؤں کی بنیاد رکھی ہے، مثال کے طور پر حضرت مولانا مفتی عبدالرحیم لاجپوری نے فتاوی رحیمیہ میں اور حضرت مولانا محمد یوسف لدھیانوی ؒ نے ‘‘آپ کے مسائل اور ان کا حل’’ میں خون کے متعلق کئے گئے سوالات کے جواب میں حضرت مفتی صاحب کے جواب کی عبارت من وعن نقل کردی ہے،دوسرے فتاویٰ بھی میں حضرت مفتی صاحب کی رائے سے انحراف نہیں کیا گیا اس سے معلوم ہوا کہ آج سے پچاس سال پہلے جب کہ میڈیکل سائنس نے اس قدرترقی بھی نہیں کی تھی ہمارے علما نےبہت سے پیچیدہ وطبی مسائل کا شرعی حل تلاش کرلیا تھا۔

تمام اصحاب فتویٰ اس بات پر متفق ہیں کہ انسان کا خون اس کے جسم سے نکلنے کے بعد ناپاک ہوجاتا ہے ،اس کا تقاضا تو یہی ہے کہ ایک انسان کاخون دوسرے کے ۔۔۔۔۔ داخل نہ کیا جائے ،لیکن بعض اوقات ایسے حالات پیدا ہوجائیں جب خون دینا ناگزیر ہوجاتا ہے ،اور ڈاکٹر مثاثر شخص کی زندگی بچانے کے لیے خون چڑھانے کو ضروری قرار دیتے ہیں، کسی بیمار کی وجہ سے بھی بدن میں خون کی کمی ہوجاتی ہے اور اس کے تصفیئے وتنفیئے نظام درہم برہم ہوجاتا ہے ،اس طرح کے مریضوں کو مستقل طور پر جسم کا فاسد خون نکلواکر صاف اور نیا خون جسم میں داخل کرانا پڑتا ہے، بعض اوقات انسان کسی حادثے میں مجروح ہوجاتا ہے اور اس کے جسم سے خون کی بہت زیادہ مقدار بہہ کر اس کی کمزوری اور نقاہت کا سبب بن جاتی ہے، نہ صرف نقاہت پیدا ہوجاتی ہے بلکہ مریض موت وحیات کی کشمکش میں مبتلا ہوجاتا ہے ،اس حالت میں اگر مریض کے جسم میں کسی دوسرے کا خون داخل نہ کیا جائے تو اس  کے مرنے کا خطرہ پیدا ہوجاتا ہے ،یہ اضطرار کی حالت ہے ،تمام فقہا واصحاب فتاویٰ نے ایسے حالات میں جسم میں خون چڑھا نے کی اجازت دی ہے ، اور یہ اجازت قرآن کریم سے بھی ثابت ہے۔

حضرت مفتی شفیع صاحبؒ نے لکھا ہے کہ اگرچہ خون انسان کا جزو بدن ہے ،مگر اس کو کسی دوسرے انسان کے جسم میں منتقل کرنے کے لئے آپریشن کرنے یا جسم کے اعضا کو کاٹنے کی ضرورت پیش نہیں آتی ،بلکہ سرنج کے ذریعہ خون نکال کر دو سرے کے جسم میں داخل کردیا جاتا ہے، یہ ایسا ہی جیسے ماں کا دودھ بچے کی ضرورت کے لیے جائز قرار دیا گیا ہے، بلکہ اگر دودھ سے علاج ناگزیر ہوتو بڑے بھی اس سے مستفیدہوسکتے ہیں ،جیسا کہ فتاوی عالمگیر ی میں ہے ،لا باس یان بسعط الرجل بلن المراۃ ونشرہ للنعوا (255/5) ‘‘اس میں کوئی حرج نہیں کہ عورت کا دودھ بہ طور دوا آدمی کی نام میں ڈالا جائے یا اسے پلایا جائے’’ اگر خون کو دودھ پر قیاس کیا جائے تو یہ قیاس بعید نہیں ہے دودھ بھی خون کی بدلی ہوئی صورت ہے اور یہ بھی جز بدن ہے، فرق صرف یہ ہے کہ دودھ پاک ہوتا ہے اور خون ناپاک ،حرمت کی پہلی وجہ تکریم انسانی تووجہ ممانعت نہ ہونی چاہئےکیونکہ اس اعتبار سے دودھ اور خون میں کوئی فرق نہیں ہے، البتہ نجاست کا معاملہ رہ جاتا ہے ،اس کے باوجود علاج کے بہ طور بعض فقہا نے خون کے استعمال کی اجازت دی ہے اس لیے انسان کا خون دوسرے انسان کے جسم میں منتقل کرنے کا شرعی حکم یہ معلوم ہوتا ہے کے عام حالات میں تو ایسا کرنا جائز نہیں ،یعنی محض طاقت حاصل کرنے یا حسن بڑھانے کے لیے خون چڑھوانا جائز نہیں لیکن علاج ودوا کے بہ طور اضطرار ی حالت میں بلاشبہ جائز ہے ،اضطراری حالت سے مراد یہ ہے کہ مریض کی جان کو خطرہ ہو ،اور کوئی دوسری دوا جان بچانے کی موجود نہ ہو، اور خون دینے سے اس کی جان بچنے کا ظن غالب ہو ،ان شرطوں کے ساتھ تو خون دینا تو اس نص قرآنی کی روسے جائز ہے جس  میں مضطر کے لیے مرادر جانور کھا کر جان بچانے کی اجازت صراحنا مذکور ہے ،لیکن اگر اضطرار ی حالت نہ ہو اور دوسری دوائیں بھی کام آسکتی ہوں تو اسی حالت میں مسئلہ مختلف فیہ ہے (معارف القرآن :419/1)

غیر اضطراری حالت میں خون دینے کا مسئلہ اس لیے مختلف فیہ ہے کہ اگر مریض کی جان کسی دوسری دوا سے بچ سکتی ہو تو پھر ناپاک چیز استعمال کرنے کی ضرورت کیا ہے، اس لیے بعض فقہا اضطراری حالت میں تو خون چڑھانے کی اجازت دیتے ہیں ، اس کے علاوہ کی صورت میں اجازت نہیں دیتے لیکن اکثر فقہا نے درج ذیل وہ صورتوں میں بھی اجازت دی ہے۔(1) جب ماہر ڈاکٹر کی نظر میں خون دینے کی حاجت ہویعنی مریض کی ہلاکت کا خطرہ نہ ہو لیکن اس کی رائے بھی خون دئے بغیر صحت کا امکان نہ ہو تب بھی خون دینا جائز ہے(2)جب خون نہ دینے کی صورت میں ماہر ڈاکٹر کے نزدیک مرض کی طوالت کا اندیشہ ہو،اس صورت میں خون دینے کی گنجائش ہے مگر اجتناب بہتر ہے ، کمافی الہند یہ : وان قال الطیب یعجل شفا ک فیہ وجہاد (ج 3555) (آپ کے مسائل اور ان کا حل :175/9) جو حضرات حرام اشیا سے تداوی کے قائل ہیں وہ واقعہ عرینہ سے استدلال کرتے ہیں کہ سرکاردوعالمﷺنے اصحاب عرینہ کو اونٹ کا پیشاب پینے کی اجازت دی تھی ،(بخاری باب الدوا بابرال الابل :2163/5رقم:5395، سنن الفرمدی:106/1رقم :72) اسی طرح حدیث کی کتابوں میں یہ بھی مذکور ہے کہ ایک صحابی حضرت عرلمجہ کی ناک سڑگل گئی تھی، سرکار دوعالمﷺ نے انہیں اجازت مرحمت فرمائی کہ وہ سونبے کی ناک لگوالیں ، حالانکہ سونا مردوں کے لئے حرام ہے،(ترمذی 206/1)

اب ا س وضاحت کے بعد کہ دوا کے بہ طور حون چڑھانا جائز ہے یہ سوال اپنی جگہ باقی رہ جاتا ہے کہ کیا خون کا عطیہ دینا بھی جائز ہے یا اسے بھی انسانی جسم کے دوسرے اعضا پر قیاس کیا جائے گا جن کا دینا جائز نہیں ہے اس سے مربوط ایک سوال یہ بھی ہے کہ اگر کسی کا خون عطیہ میں نہ ملے تو اسے خرید نے کی اجازت ہے یا نہیں ، اور یہ سوال بھی پیدا ہوتا ہے کہ جب خون کا خرید ناجائز ہے تو اس کا فروخت کرنا بھی جائز ہے یا نہیں؟

جہاں تک اس آخری سوال کا تعلق ہے تو یہ بات بالکل طے شدہ ہے کہ خون کی فروخت قطعاً جائز نہیں ہے ، کیونکہ حدیث شریف میں خون کی فروخت سے صراتاً منع فرمایا گیا ہے ،فقہا نے لکھا ہے کہ جو چیزیں نجس العین ہوتی ہیں ان کے بیع جائز نہیں ہے ،البتہ ضرور ت ان فائدہ اٹھایا جاسکتا ہے ،اس کے باوجود اگر کوئی شخص خون فروخت کرتا ہے تو بیچنے والے کے لئے اس کی قیمت سے فائدہ اٹھانا جائز نہیں ہے(عنا یۃ علی حامش فتح القدیر :202/5))یہ تو خون کی فروخت کا معاملہ ہوا لیکن اس سلسلے میں کسی کا کوئی اختلاف نہیں ہے کہ اگر بلاقیمت خون نہ ملے تو قیمت دے کر خریدناجائز ہے ،حضرت مولانا مفتی شفیع عثمانی نے لکھا ہے ‘‘خون کی بیع تو جائز نہیں لیکن جن شرائط کے ساتھ مریض کو خون دینا جائز قرار دیا گیا ہے ان حالات میں اگر کسی کو خون بلا قیمت نہ ملے تو اس کے لئے قیمت دے کر خون حاصل کرنا بھی جائز ہے (جواہر الفقہ 38/2) اس طرح یہ بھی جائز ہے کہ کسی مریض کو خون دیدیا جائے ،بشرطیکہ کوئی ماہر ڈاکٹر یہ رائے ظاہر کرے کہ اگر مریض کو خون نہ دیا گیا تو مریض کی ہلاکت کا فوری خطرہ نہیں ہے مگر خون دئے بغیر صحت کا امکان نہیں ہے (حوالہ سابق)

حادثات بہت زیادہ بڑھ گئے ہیں اس لیے یہ ضروری ہوگیا ہے کہ ہسپتال میں ہر وقت خون مہیا رہے تاکہ بوقت ضرورفت مریضوں کے جسم میں داخل کیا جاسکے اور ان کی زندگی بچائی جاسکے، آپریشن کے ہسپتالوں میں خون کا انتظام رکھا جاتا ہے تاکہ اگر مریض کے جسم سے زیادہ خون بہہ جائے تو محفوظ خون سے اس کے جسم سے بہہ جانے والے خون کی کمی پوری کی جائے، اس مقصد کے لیے آج کل بلڈ بینک قائم کئے جاتے ہیں ،مختلف لوگ رضا کارانہ طور پر بلڈ بینکوں میں جاکر یا اس مقصد کے لیے لگائے گئے خصوصی کیمپوں میں شریک ہوکر خون عطیہ کرتے ہیں، یہ خون بلڈ بینکوں میں محفوظ کرلیا جاتا ہے ،یہ اس لیے بھی ضروری ہے تاکہ بلڈ گروپ ملا کر ضرورت مند کو بلا تاخیر خون دے دیا جائے ، بعض اوقات مریض کے خون کا گروپ عطیہ دینے والے شخص کے گروپ سے مختلف ہوتا ہے اس صورت میں دشواری پیش آتی ہے اور تاخیر سے مریض کونقصان پہنچنے کا اندیشہ رہتا ہے ،اگر پہلے سے ہسپتالوں میں بلڈ بینکوں میں خون محفوظ ہوتو عطیہ دینے والے کے خون کے تبادلے میں مریض کے گروپ کے مطابق خون حاصل کیا جاسکتا ہے ،ہمارے مفتیان کرام نے یہ پہلو بھی نظر انداز نہیں کیا، حضرت مولانا قاضی مجادہد الاسلام ؒ نے تحریر فرمایا کہ ‘‘ دوسروں کا خون استعمال کرنا ظاہر ہے کہ اضطراری حالت میں جائز ہے ، جب خون کا استعمال جائز ہے تو خون کا ہبہ کرنا بھی جائز ہے ،ہبہ(دان) کرنے کے لئے حالت اضطراری کا انتطٓر ضروری نہیں ،اگر بروقت خون نہیں ملایا خون ایک دوسرے کے موافق ثابت نہیں ہوا تو جب تک گروپ ملایا جائے اور گروپ والے آدمی کو تلاش کیا جائے مریض کی جان چلی جائے گی ، لہٰذا خون کا عطیہ دینا اس کا بینک قائم کرنا اور اچھے کام کےلئے کیمپ لگانا جائز اور درست ہے( فتاوی قاضی،ص 2010)

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/blood-donation-and-shariah-guidelines--عطیۂ-خون-اور-شریعت-کی-رہ-نمائی/d/3767

 

Loading..

Loading..