New Age Islam
Thu Dec 02 2021, 04:57 PM

Urdu Section ( 15 Apr 2010, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

The Role of Hadith in shaping the Islamic Sharia شر یعت تشکیل میں حدیث کا کردار

Maulana Nadeemul Wajidee analyses the recent controversy created over the denial of Hadees Shareef by a Group of deniers (Munkereen-e-Hadees)

(Translated from Urdu by Raihan Nezami, NewAgeIslam.com)

A controversy has been raised after an article challenging the status and significance of Hadees-e-Rasool (pbuh) vis-à-vis the Quran was recently published in an Urdu daily in Delhi. The writer himself had sent an “Istafta” (questionnaire) to a Muft in Saharanpur seeking an explanation on certain points regarding the acceptability of Hadees. In the questionnaire it was said that the Quran did not ask for animal sacrifice; it was mandatory for the Haj prilgrims only. Likewise, the sacrifice offered on the occasion of Eid-ul-Zuha too, was not mentioned in the Quran. Secondly, Hajj-e-Badal is also not approved by the Quran whereas this practice was much in vogue today. The mufti was asked to justify both the practices with references from the Quran.

In his response, the mufti wrote that not every issue could be corroborated with the help of the Quran and that many sharia-related instructions have been sanctioned by Hadees. Apart from the Quran and Sunnah (words of the holy prophet), collective opinion and precedence were also sharia-based sources. The questioner’s demand that every issue should be corroborated by the Quran is based on ignorance.

In reply the author wrote that in the presence of the Quran, no other source is acceptable.

“They have no Wali (Helper, Disposer of affairs, Protector) other than Him, and He makes none to share in His decision and His Rule”. (Surah Al-kahf, Verse-26)

There has always been a particular group in this Ummat which accepts the holy Quran but not the Hadees. This group is called the deniers of Hadees.

The prophet Hazrat Muhammad (pbuh) had predicted about this group fourteen hundred years ago when the presence of such a group could not even imagined. According to a Hadees, he (pbuh) said, “I don’t want to find anyone of you relaxing on a cushion when one of my hadeeses is read out before him; he will say “I don’t know as I haven’t seen it in the holy book of Allah; which is enough for me”. (Ibn Maja: 6/1, Hadees No.13, Tirmizi: 37/5, Hadees No.2663, Abu Daud: 610/2, Hadees No.4605)

The refusal of Hadees Shareef, at present, is no surprise. It simply justifies the truth of his (peace be upon him) statement. Everyone presents some logical proofs for his claim to be accepted by the general people. The scholars realize its authenticity, validity and suitability.

In the same sense, the arguments given in this regard seem to be sensible and fitting irrespective of the context in which they are spoken. The writer should have considered the situation before citing his arguments. It is quite possible to select few “Aayats” in one’s favour ignoring the hidden meaning of the context concerned. The writer had done a daring act.

It is better to investigate the apple of discord – Hadees to clarify that Quran and Hadees Shareef are inseparable. If Quran-e-Kareem is text, Hadees Shareef is its explanations, if rules and regulations are written in Quran-e-Kareem; it has been discussed in Hadees Shareef. The people are lying who claim to understand Shariah laws with the help of Quran-e-Kareem only. The Quran-e-Kareem is, no doubt the first and foremost document, the real fountainhead of Islamic decree. But some Aayats are so difficult that it is impossible for a common man to understand without any authentic explanation and clarification.

For example, the order of “Salat” is “Mujammal” (unexplained). The details like ‘time of Salah’ ‘number of Salah’ ‘manner and Rik’ats of Salat’ are not given. The same is the case of ‘Zakat’; it is mentioned without any clarification of the limit of amount, percentage to be paid or any rules and regulation of its being due on a Muslim. Rest of the Islamic rulings too, are mentioned in the same manner. Different features and terms and conditions are explained in Hadees Shareef. In case, Sahaba-e-Karam (mAbpwth) had not collected the explanations and statements of Rasool-e-Pak (pbuh) throughout their lives, every Muslim would have practiced Shariat laws with his own sense and understanding or deviated from the path of religion and truth.

On the other hand, Sahaba-e-Karam (mAbpwth) collected and recorded each and every word with such perfect accuracy that the world was stunned with their unique system of collection and compilation. It is impossible to imagine, Sahaba-e-Karam (mAbpwth) would have wasted a single moment of their lives; they were certainly aware of the fact; the orders of Allah was impossible to practice with the help of the Quran only, unless it is clarified by the prophet Hazrat Muhammad (pbuh) and is seen practically.

The Sahaba-e-Karam (mAbpwth) and the scholars of Hadees (Muhaddeseen) and Fuqha-e-Karam in later ages invested their whole lives in the clarification and justification of Fiqhi problems of Kitab-o-Sunnah. But a group is developed which cast doubt over their hard work and claimed that every matter is fully clarified in Quran-e-Kareem, and there is no need of the prophet’s explanation (pbuh). This group has three kinds of ideology.

First, the prophet’s status is of the messenger; the real significance is of the message and only the message needs to be understood. The messenger’s duty finishes after delivering the message. The obedience to the prophet (pbuh) is not due on anyone, neither on Sahaba-e-Karam (mAbpwth) nor on the laity.

Second, the statements of the prophet Hazrat Muhammad (pbuh) and his verbal or practical teachings were imitated by Sahaba-e-Karam (mAbpwth) alone; it is impractical or illogical to expect this for others.

Third, though the statements, behaviour and deeds of the prophet (pbuh) are logical and imitable, it should not be practised as it has not reached us through reliable sources.

These people, generally called Munkereen-e-Hadees have certain other arguments also; for instance, Allah has revealed the Quran in a very simple way, so Hadees should not be required to understand such an easy document.

The Almighty Allah says, “And We have indeed made the Quran easy to understand and remember; then is there any who will remember (or receive admonition)? (Surah Al-Qamar: Verse-17)

The Quran, no doubt, is easy for lecture and teaching, but it is not told anywhere that it is easy for the clarification and fixing of Islamic orders.

Contrary to it, it is told that to the prophet Hazrat Muhammad (pbuh) through Quran-e-Kareem, “With clear signs and Books (We sent the Messengers). And We have also sent down to you (O Muhammad (pbuh) the Dhikr [reminder and the advice (i.e. the Quran)], that you may explain clearly to men what is sent down to them, and that they may give thought”. (Surah An-Nahl: Verse-44)

If Quran-e-Kareem is so easy to be comprehended, there is no need to appoint him (pbuh) “Mukallaf”. Obviously it means that Quran is simply content and the prophet (pbuh) is its definer or explainer who is authorized to unfold the secrets and Islamic orders.

This group also claims that the word “Aayat binat has been used in the Quran at certain places, it means that the verses of Quran Kareem are quite clear and easy to be comprehended by everyone without any complication and secrecy. It proves Hadees is not required to understand the verses of the Quran.

It is a very weak argument. Of course, Allah has claimed the Aayats have the quality of “Bainat”, but it does not prove that anyone can understand and practice the Quran without any assistance. Those people have suffered and deviated who had ignored the worthy Hadees Shareef and the statements of Sahaba-e-Karam (mAbpwth). Sometimes, they felt some doubts, and could not understand the verses of the Quran. They considered it beyond their understanding. Some of them used their common sense and got deviated, but a few people realized their fault and retreated, accepting that their understanding of “Aayat Bainat” was wrong. The verses related to the Oneness and prophecy, reward and punishment, and the Last day are quite clear and logical to be understood.

Some people have argued over the obedience to the statements of the prophet Hazrat Muhammad (pbuh) as he was a human being. They think it is ridiculous to imitate the behaviour and deeds of a person of same genre when it is clarified by him (pbuh) personally in the Quran-e-Kareem.

“Say (O Muhammad (pbuh) ‘I am only a man like you. It has been revealed to me that your Allah (God) is One Ilah (God - i.e. Allah)”. (Surah Al-kahf: Verse-110)

As we follow many people like us in our lives; it proves that being a human being is not an ineligibility to be imitated. The concerned ‘Aayats” and many more like this are misunderstood as they are not taken in the context they were revealed. It was revealed to nullify the effects of the blames of the rebellion of Makkah. They thought he (pbuh) was a supernatural human being so they demanded from him (pbuh) some extraordinary miracles. In their response, he (pbuh) with the order of Allah Kareem used to reply them, “I am a common man like you, and miracles are out of my capacity, there is just a simple difference between you and me that “Wahi” is revealed upon me”. On the basis of this argument and some others like this, Munkereen-e-Hadees have distanced themselves from this precious document when they did not find the specific details and arguments for all orders in Quran-e-Kareem and considered it unfeasible on not finding it there.

The verses mentioned in Quran-e-Kareem can prove the concept and thinking of the rebellions wrong. If the Almighty Allah Kareem has expressed the qualities of order, rule and power for Him, on the other hand, He has made obedience to the statements and deeds of His prophet (pbuh) compulsory for the Ummat. What answers do the deniers have for the following Aayats?

1. According to Quran-e-Kareem, “Say (O Muhammad (pbuh) to mankind): If you (really) love Allah then follow me (i.e. accept monotheism, follow the Quran and Sunnah), Allah will love you and forgive you your sins. And Allah is Oft-Forgiving, Most Merciful”. (Surah Al-Imran, Verse-31)

2. “O you who believe! Obey Allah and obey the messenger (Muhammad (pbuh) and those of you (Muslims) who are in authority. And if you differ in anything amongst yourselves, refer it to Allah and His Messenger (pbuh) if you believe in Allah and in the Last Day. That is better and more suitable for final determination”. (Surah An-Nisa, Verse-59)

3. “But no, by your Lord, they can have no Faith, until they make you (O Muhammad (pbuh)) judge in all disputes between them, and find in themselves no resistance against your decisions, and accept (them) with full submission”. (Surah An-Nisa, Verse-65)

4. “It is not for a believer, man or woman, when Allah and His Messenger (pbuh) have decreed a matter that they should have any option in their decision. And whoever disobeys Allah and His Messenger (pbuh), he has indeed strayed into a plain error”. (Surah Al-Ahzab, Verse-36)

5. “And whatsoever the messenger (Muhammad (pbuh)), gives you, take it; and whatsoever he (pbuh) forbids you, abstain (from it)”. (Surah Al-Hashr, Verse-7)

6. “He who obeys the Messenger (Muhammad (pbuh)), has indeed obeyed Allah”. (Surah An-Nisa, Verse-80)

7. “And obey Allah and the Messenger (Muhammad (pbuh)) that you obtain mercy”. (Surah Al-Imran, Verse-132)

8. Say (O Muhammad (pbuh)): “Obey Allah and the Messenger Muhammad (pbuh)”. But if they turn away, then Allah does not like the disbelievers”. (Surah Al-Imran, Verse-32)

9. “He commands them for Al-Ma‘ruf (i.e. Islamic monotheism and all that Islam has ordained); and forbids them from Al-Munkar (i.e. disbelief, polytheism of all kinds, and all that Islam has forbidden); he allows them as lawful At-Tayyibat (i.e. all good and lawful as regards, things, deeds, beliefs, persons, foods), and prohibits them as unlawful Al-Khaba’th (i.e. all evil an unlawful as regards, things, deeds, beliefs, persons, foods)”. (Surah Al-A‘raf, Verse-157)

10. “The only saying of the faithful believers, when they are called to Allah (His Words, the Quran) and His Messenger (pbuh), to judge between them, is that they say: “We hear and we obey”. And such are the successful (who will live forever in Paradise)”. (Surah An-Nur, Verse-51)

There are some Aayats mentioned above as examples, there are many Aayats in the same context to prove that obedience to the prophet (pbuh) is as mandatory as obedience of Allah Kareem. The loyalty to the prophet (pbuh) is the source for obtaining closeness and favour of Allah Kareem. His (pbuh) duty is to invite people to welfare and prosperity and prevent them from evils and illegitimate things, deliver judgments in conflicts and differences. No one should contradict his (pbuh) decisions, if anyone contradicts or refuses to accept his (pbuh) decisions; undoubtedly, he is guilty of “Kufr” (transgression). The following and obedience to Islam ignoring the teachings, statements and the deeds of the prophet (pbuh) is meaningless. The order of loyalty and obedience to the prophet (pbuh) is meaningless, if the Quran-e-Kareem alone is considered everything ignoring Hadees Shareef. It is not a fake opinion, but the Quran-e-Kareem itself has fixed its authenticity and compulsion.

According to Quran-e-Kareem, “Nor does he (pbuh) speak of (his own) desire. It is only a Revelation revealed” (Surah An-Najm, Verse-3-4).

The Islamic scholars have adopted both Kitab-o-Sunnah “Wahi-e-Matlu” (revelation) from Allah Kareem – that is recited during “Salat” and Hadees Shareef is “Wahi-e-Ghairmatlu” – that is not recited during “Salat”. The Almighty Allah Kareem has mentioned “Hikmat” also alongwith “Kitabul-Allah”. Most of the scholars believe “Hikmat” means “Hadees-e-Rasool” (pbuh) here.

According to Quran-e-Kareem, “Indeed, Allah conferred a great favour on the believers when he sent among them a Messenger Muhammad (pbuh) from among themselves, reciting to them His verses (the Quran), and purifying them (from sins by their following him), and instructing them (in) the Book (the Quran) and Al-Hikmah [the wisdom and the Sunnah of the Prophet (pbuh) (i.e. his legal ways, statements acts of worship)]” (Surah Al-Imran, Verse-164).

The majority of scholars and researchers consider “Hikmat” any object other than “Kitab”. We can say orders of Shariat and secrets of Deen. The scholars have considered it” Sunnah”.

Therefore, Hazrat Imam Shafi (mAbpwh) asserts, “Allah Kareem has mentioned the word “Hikmat” also, I have heard from the Islamic scholars of Quran-e-Kareem, the word “Hikmat” is used for “Sunnat-e-Rasool” (pbuh). The words “Quran” and “Hikmat” have been used simultaneously; it proves that “Hikmat” stands for “Sunnat-e-Rasool” (pbuh)”.

Dr Mustafa has written in full agreement with the opinion of Imam Shafi (mAbpwh) that he certainly considers “Hikmat” as “Sunnat” because both words have been used in a contrasting way to separate them from each other. It is impossible to mention anything other than “Sunnat-e-Rasool” (pbuh)” along with “Kitab” (Quran-e-Kareem), especially in the situation when Allah Kareem mentions the “Bas’at-e-Nabwi” (pbuh) as a gratitude for the people (Makhlooq). It proves the obedience (Itteba) to “Sunnat” is as compulsory as the obedience (Itteba) to “Quran-e-Kareem” (Al-Sunnat wa Maknatha fi Al-Tashreeh Al-Islami, Page-69)

The practice of Shariat-e-Islam ignoring the priceless treasure of Hadees Shareef makes no sense. As Quran-e-Kareem is a “Mujammal” book; the explanations of all its rulings are given in Hadees Shareef. Salat is an important pillar of “Deen”, but the rules and regulations of “Salat”, “Zakat” and “Saum” are not given in detail. It can only be found in Hadees Shareef. It is told about “Saum” (fast), “One who gets the holy month of “Saum” (Ramadhan), must observe “Saum” (fast), but the explanations can only be found in Hadees Shareef. Similarly, the order about “Hajj wa Umrah” is given on-the-whole. How can it be performed? What are the conditions? These questions are answered in detail in Hadees Shareef alone.

 Leave apart, the matters of prayers, other matters such as “Nikah” (marriage), “Talaq” (divorce), “Raza’at” (relation), “Hazanat” “Tijarat” (business), “Rehun” (keeping things as a guarantee) and “Wasiat” (will) are also mentioned in brief. It clarifies the wish of Allah Kareem and fixes the intention of Shariat-e-Islam, but none of the orders is given in such a detailed manner that it can be easily practiced except with the help of Hadees Shareef.

That is why the whole Ummat is of the opinion; Hadees Shareef is the second important document of Islam after Quran-e-Kareem. The way Quran is certain, exact, ultimate and perfect with proof, a large part of Hadees Shareef too, is certain exact, and perfect that is proved with continual and authentic proofs and witnesses.

The orders of Shariat are imposed as well as cancelled by both Quran and Hadees. The people who demand proofs for all the “Shar’ee orders” are unaware of the importance of these secondary documents of Shariat.

If Mufti Saheb advised the writer not to seek evidence from Quran-e-Kareem for every order, he was absolutely judicious; of course, the ultimate Power and rule are from the Almighty Allah Kareem only, but what arguments the writer would give for the order that He has given to obey and follow the prophet (pbuh).

The writer and the like-minded people must consider the arguments given here with a cool-mind, pondering over the question. Are they not refusing these Aayats of Quran-e-Kareem by contradicting the status of Hadees Shareef in which Allah Kareem has ordered to obey and follow the prophet (pbuh) and his (pbuh) statements?

URL: https://newageislam.com/urdu-section/the-role-of-hadith-in-shaping-the-islamic-sharia--شر-یعت-تشکیل-میں-حدیث-کا-کردار/d/2706

مولانا ندیم الواجدی

حال ہی میں دہلی سے شائع ہونے والے ایک اردو روزنامہ نے ایک مضمون شائع کیا ہے، اس مضمون میں یہ بات ثابت کرنے کی کوشش کی گئی ہے کہ قرآن کریم کے سامنے حدیث رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) کی کوئی اہمیت نہیں ہے، اصل میں مضمون نگار نے ایک استفتاء مرتب کر کے خود ہی سہارنپور کے ایک مفتی صاحب کے حوالے کیا تھا اور ان سے جواب مانگا تھا، استفتاء میں لکھا گیا تھا کہ قرآن کریم میں قربانی کا حکم نہیں ہے، قربانی صرف حج کرنے والوں پر ہے جو قرآن سے ثابت ہے، عید الاضحی کے ایام میں مسلمان جو قربانی کرتے ہیں اس کا ذکر قرآن میں کہیں نہیں ہے،اسی طرح حج بدل کا رواج بڑھتا جارہا ہے، مفتی صاحب سے کہا گیا کہ وہ ان دونوں مسئلوں کو قرآن کریم سے ثابت کریں ،اس کے جواب میں مفتی صاحب نے لکھا کہ ہر مسئلہ قرآن سے ثابت نہیں کیا جاسکتا، بہت سے شرعی احکام حدیث رسول ﷺ سے بھی ثابت ہیں، پھر کتاب وسنت کے ساتھ ساتھ اجماع وقیاس بھی دوشرعی مآخذ ہیں، ان سے بھی احکام شرعیہ ثابت کئے جاتے ہیں، سائل یہ مطالبہ کرنا کہ ان دونوں مسئلوں کو قرآن سے ثابت کیا جائے علمی کی دلیل ہے، اس کے جواب میں مضمون نگار نے لکھا کہ قرآن ہوتے ہوئے کسی چیز کی ضرورت نہیں ہے، صرف اللہ کے احکام کی اطاعت واجب اور یہ بات قرآن کریم سے ثابت ہوتی ہے، اس سلسلے میں مضمون نگارنے بہ طور دلیل کچھ آیات میں پیش کی ہیں، مثلاً یہ کہ ’’بندوں کے لیے اس کے سوا کوئی دلی اور سرپرست نہیں ہے اور اپنے حکم میں کسی کو شریک نہیں کرتا‘‘۔(الکہف :26)

اس امت میں ایک گروہ ہمیشہ سے ایسا موجود رہا ہے جو قرآن کو مانتا ہے لیکن حدیث کو نہیں مانتا ،یہ گروہ منکرین حدیث کا گروہ کہلاتا ہے، آج سے چودہ سو برس پہلے جب کہ اس گروہ کی موجودگی کا کوئی تصور بھی نہیں تھا سرکار دوعالم ﷺ نے اس کی پیشین گوئی فرمادی تھی ،حدیث میں ہے :’’ میں تم میں سے کسی کو نہ پاؤں کہ وہ مسند پر تکیہ لگا کر بیٹھے اور جب میری کوئی حدیث اس کے سامنے آئے تو وہ کہے کہ میں نہیں جانتا ہم نے یہ بات کتاب اللہ میں کہیں نہیں دیکھی جو ہمارے لیے کافی ہے‘‘(ابن ماجہ:6/1،رقم الحدیث:13، ترمذی :37/5،رقم الحدیث:2663،ابوداؤداد:610/2،رقم الحدیث :4605)اگر آج بھی کوئی شخص حدیث کا انکار کرتا ہے تو یہ حیرت کی بات نہیں ہے، یہ انکار رسالت مآب ﷺ کے اس ارشاد مبارک کی صداقت کا آئینہ دار ہے ، جہاں تک دلائل کی بات ہے ہر شخص اپنے اپنے مطلب کی بات کہہ بھی دیتا ہے اور اسے دلائل کے ذریعے مضبوط بھی بنادیتا ہے،حقیقت عوام سے تو اوجھل رہتی ہے لیکن اہل علم جانتے ہیں کہ کس دلیل میں کتنا وزن ہے اور کون سی بات کہاں موزوں ہے اور کہا غیر مناسب ہے، اب اسی مضمون کو لیجئے ،مضمون نگار نے اپنے دعوے کے حق میں جو دلائل پیش کئے ہیں ان سے ان کا دعویٰ ثابت بھی ہورہا ہے اس پر انہوں نے غورکرنے کی ضرورت ہی نہیں سمجھی ،کونسی بات کس سیاق سباق میں کہی جارہی ہے۔

 یہ بات بھی بڑی اہم ہے جسے مضمون نگار نے نظر انداز کیا ہے، پھر اپنے مطلب کی چند آیات منتخب کرلینا اور اس دعوے کے برخلاف صاف، صریح اور واضح آیات سے صرف نظر کرلینا کتنی بڑی جسارت ہے شاید مضمون نگار کو اس کا احساس نہیں ہے۔ بہتر ہوگا کہ ہم فتنۂ انکار حدیث کا جائزہ لیں تاکہ یہ واضح ہوسکے کہ قرآن وحدیث کا رشتہ چولی دامن کا رشتہ ہے، قرآن اگر متن ہے تو حدیث اس کی شرح ہے، قرآن میں اگر مبادی واصول بیان کئے گئے ہیں تو حدیث میں فروغ وجزئیات پر بحث کی گئی ہے، جو لوگ یہ دعویٰ کرتے ہیں کہ وہ محض قرآن سے شریعت کو سمجھ لیں گے وہ جھوٹ بولتے ہیں ،بلاشبہ قرآن شریعت کے احکام کا اولین مآخذ اور اصل سرچشمہ ہے،لیکن اس میں بے شمار آیات مجمل ہیں جو تشریح وتوضیح کے بغیر سمجھ میں نہیں آتیں ،مثال کے طور پرقرآن کریم میں نماز کا حکم مجمل طور پر آیا ہے نہ تو اس میں رکعات کی تعداد بیان کی گئی ہے، نہ نماز پڑھنے کا طریقہ بتلایا گیا ہے اور نہ نماز کے اوقات کی تعیین کی گئی ہے،اسی طرح زکوٰ ۃ کا معاملہ ہے، اس کا حکم بھی مطلقاً آیا ہے نہ وہ حد بیان کی گئی ہے جس پر زکوٰۃ ہے، نہ زکوٰۃ کے وجوب کی شرائط اور نصاب زکوٰۃ کا مقدار کا ذکر ہے ، باقی احکام شرعیہ کا بھی یہی حال ہے کہ قرآن کریم میں ان کا ذکر تو ہے مگر اجمال کے ساتھ، تفصیل کے لیے ضروری ہے کہ ہر حکم کی شرائط ، ارکان وغیرہ واضح ہوں۔ حدیث اسی وضاحت کا نام ہے، اگر صحابۂ کرامؓ اپنی زندگی میں سرکار دوعالم ﷺ کی خدمت میں رہ کر احکام کا علم حاصل نہ کرتے تو ان پر عمل کس طرح ہوتا،یا تو ہر شخص اپنی اپنی مرضی اورفہم کے مطابق عمل کرتا یا لاعلمی کو بہانہ بناتا اور تاریک عمل ہوکر بیٹھ جاتا، اس کے برعکس صحابۂ کرامؓ نے سرکار دوعالم ﷺ کی حیات طیبہ کے ایک ایک پہلو اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے ارشادات عالیہ کے ایک ایک لفظ کو اس طرح محفوظ کیا کہ دنیا جمع وترتیب اور تدوین وحفاظت کے اس مضبوط نظام سے ششدررہ گئی ،کیا ایک عبث اور لایعنی کام کے لیے صحابۂ کرامؓ اپنی زندگی کا کوئی لمحہ ضائع کرسکتے تھے ،یقینی طور پر وہ اس بات سے آگاہ تھے کہ اللہ تعالیٰ کے نازل کردہ احکام کو محض اس کی کتاب سے سمجھنا ممکن نہیں ہے، جب تک کہ زبان رسالت سے ان احکام کی تشریح وتوضیح نہ ہو، یا جب تک وہ سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم کو ان احکام کے مطابق عمل کرتا ہوا نہ دیکھ لیں۔

صحابۂ کرامؓ اور ان کے بعد آنے والے محدثین وفقہاء نے کتاب وسنت کیا گہرائیوں میں جاکر فقہی مسائل کے استنباط اور ان کی تدوین میں اپنی عمر یں لگادیں ،لیکن ایک گروہ ایسا پیدا ہوا جس نے ان تمام محنتوں کو لغواور غیر ضروری قرار دے دیا اور یہ دعویٰ کیا کہ قرآن میں ہر چیز کھول کھول کر بیان کردی گئی ہے، اس کا کوئی حکم نبی کی تشریح اور توضیح کا محتاج نہیں ہے، یہ گروہ تین طرح کے نظریات رکھتا ہے، ایک یہ کہ رسول کی حیثیت محض ایک قاصد اور پیغام بر کی ہوتی ہے ، اصل اہمیت پیغام کی ہے اور بنیادی ضرورت اس پیغام کو سمجھنے کی ہے، پیغام لانے والے کا کام پیغام پہنچا کر ختم ہوجاتا ہے، اس سے زیادہ اس کی اطاعت کسی پر واجب نہیں، نہ صحابہ پر اور نہ دوسروں پر ، دوسرا نظریہ یہ ہے کہ رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) کے ارشادات اور ان کی قولی وفعلی تعلیمات صحابہ کے لیے تو واجب العمل تھیں، دوسروں کے لیے نہ وہ حجت ہیں اور نہ واجب الاطاعت ہیں، تیسرا نظریہ یہ ہے کہ اگر چہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ارشادات اور اعمال وافعال سب حجت ہیں اور امت کے لیے ان کی اطاعت ضروری بھی ہے،مگر کیوں کہ وہ ہم تک قابل اعتماد ذریعے سے نہیں پہنچے ہیں اس لیے ان پر عمل نہیں کیا جاسکتا۔

یہ لوگ جن کو عام اصطلاح میں منکرین حدیث کہا جاتا ہے اپنے پاس کچھ دلائل بھی رکھتے ہیں ،مثلاً یہ کہ قرآن کو اللہ نے آسان بنا کر نازل کیا ہے، جوکتاب دکر وفہم کے لیے اتنی سہل اور آسان ہوا سے سمجھنے کے لیے کسی حدیث کی ضرورت نہیں ہونی چاہئے ،اللہ کا ارشاد ہے:’’ اور ہم نے قرآن کو دکر کے لیے آسان کردیاہے‘‘(الفمر :17)یقیناًقرآن کریم ذکر وتذکیر اور وعظ ونصیحت کے لیے آسان ہے،مگر اس میں کہیں یہ نہیں کہا گیا کہ شرعی احکام کے اسنباط کے لئے بھی یہ کتاب آسان بنادی گئی ہے، اس کے برعکس سرکار دوعالم ﷺ سے فرمایا گیا: ’’ہم نے قرآن آپ پر اس لیے اتارا ہے کہ آپ لوگوں کو واضح کر کے بتلادیں کہ ان پر کیا نازل کیا گیا ہے‘‘(النحل :44)اگر قرآن اتنا ہی آسان ہے تو سرکار دوعالم ﷺ کو بیان کا مکلف قرار دینے کی ضرورت ہی نہیں ہے، اس کا مطلب یہ ہوا کہ قرآن کریم کی حیثیت ایک متن کی ہے اور سرکار دوعالم ﷺ اس متن کے شارح اور اس میں پوشیدہ اسرار وحکم کے مبین ہیں، اس گروہ کا کہنا یہ بھی ہے کہ قرآن کریم میں جگہ جگہ آیا ت بینات کہا گیا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ قرآنی آیات بالکل کھلی اور واضح ہیں، نہ ان میں کسی طرح کی پیچیدگی ہے اور نہ کچھ باتیں پردۂ خفا میں رکھی گئی ہیں، کیا اس سے یہ ثابت نہیں ہوتا کہ قرآن فہمی کے لیے حدیث کی ضرورت نہیں ہے، حالاں کہ یہ ایک فرسودہ دلیل ہے ، بلاشبہ اللہ تعالیٰ نے ایک جگہ نہیں متعدد جگہوں پر اپنی آیات کو بینات کی صفت سے متصف کیا ہے لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ قرآن کر ہر کس وناکس سمجھ سکتا ہے، یا سمجھ کر عمل کرسکتا ہے ، جن لوگوں نے بھی ذخیرۂ حدیث اور اقوال صحابہ سے بے نیاز ہوکر قرآن فہمی کی دنیا میں قدم رکھا ہے انہوں نے ٹھوکریں ہی کھائی ہیں، کہیں انہیں یہ محسوس ہوا کہ آیات میں تعارض ہے، کہیں قرآن کے بیانات انسانی عقل کے دائرے میں نہیں سماسکے اور وہ تجربات ومشاہدات کے خلاف محسوس ہوئے،کچھ لوگوں نے عقلی گھوڑے دوڑائے اور گمراہ ہوئے اور کچھ نے عجز کا اعتراف کیا اور قدم پیچھے ہٹائے اور یہ مانا کہ آیات بینات کا یہ مفہوم نہیں ہے جو ہم سمجھ رہے ہیں بلکہ توحید رسالت ،جزادسزا اور آخرت وغیرہ سے متعلق جو کچھ اس کتاب میں فرمایا گیا ہے وہ اتنا واضح اور مدلل ہے کہ اسے سمجھنا دشوار نہیں ہے، اس کے باوجود لوگ اسے سمجھتے نہیں ہیں یا سمجھنا نہیں چاہتے۔ سرکار دوعالم ﷺ کی بشریت کو بھی موضوع بحث بنا کر آپ کے ارشادات واقوال کے واجب الاطاعت ہونے سے انکار کیا گی ا ہے، اس کا حاصل یہ ہے کہ جب قرآن کریم میں یہ بات آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان مبارک سے صاف کردی گئی :’’ کہ میں تمہاری طرف ایک انسان ہوں‘‘(الکہف:110)پھر یہ مطالبہ کرنا کہ اپنے ہی جیسے ایک انسان کے قول یا عمل کی اطاعت کی جائے مضحکہ خیز لگتا ہے ، اول تو ہم اپنی زندگی میں اپنے ہی جیسے کتنے لوگوں کی اطاعت کرتے ہیں، کیا اس سے یہ ثابت نہیں ہوتا کہ بشر ہونا لائق اطاعت ہونے کے منافی نہیں ہے، پھر یہ اور اس طرح کی آیات جس سیاق میں نازل کی گئی ہیں ان کاہر گز یہ مطلب نہیں ہے جو سمجھا گیا، بلکہ یہ مشرکین مکہ کی افسانہ طراز یوں اور الزام تراشیوں کے ضمن میں بیان کی گئی ایک حقیقت ہے، آپ ﷺ کے بارے میں کبھی کبھی وہ یہ سوچا کرتے تھے اور برملا اس کا اظہار کیا کرتے تھے کہ آپ کوئی مافوق الفطرت ہستی ہیں اس لیے ان کا مطالبہ ہوتا تھا کہ آپ کچھ معجزات دکھلائیں ،ان کے جواب میں آپ ﷺ بہ حکم خدا یہ ارشاد فرمادیتے تھے کہ میں تمہاری ہی طرح ایک انسان ہوں، معجزات میرے اختیار سے مادراء ہیں، مجھ میں اور تم میں فرق اتنا ہے کہ مجھ پر وحی نازل کی جاتی ہے ۔ یہ اور اس طرح کے چند دلائل کی بنیاد پر منکرین حدیث نے اس قیمتی ذخیرے سے صرف نظر کرلیا جسے ہم حدیث کہتے ہیں ، وہ ہر حکم کی دلیل کتاب اللہ میں تلاش کرنے لگے ،اگر انہیں کوئی حکم کتاب اللہ میں نہیں ملتا تو وہ اسے ناقابل عمل تصور کرتے ہیں۔

منکرین حدیث کا یہ طرز فکر کتنا گمراہ کن ہے اس کا اندازہ خود قرآنی تصریحات سے لگایا جاسکتا ہے، اگر ایک طرف اللہ تعالیٰ نے اپنے لیے حکم ،اقتدار اور اختیار جیسی صفات بیان کی ہیں تو دوسری طرف اپنے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے اقوال واعمال کو امت کے لیے واجب الاطاعت بھی قرار دیاہے، منکرین حدیث کے پاس ان آیات کا کیا جواب ہے جن میں ارشاد فرمایا گیا :(1) آپ فرما دیجئے کہ اگر تم اللہ سے محبت کرتے ہو تو میری اتباع کرو اللہ بھی تم سے محبت کرے گا‘‘(آل عمران :31)(2) ’’اے ایمان والوں ! اللہ کی اطاعت کرو اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور صاحب امر (امیر ،حاکم وغیرہ) کی اطاعت کرو، اگر کسی معاملے میں تمہارے اندرنزاع واختلاف ہوتو اللہ اور اس کے رسول کی طرف رجوع کرواگر اللہ اور قیامت پر یقین رکھتے ہو ، یہی بہتر اور عمدہ طریقہ ہے‘‘۔(النساء :59)(3) ’’قسم ہے آپ کے رب کی کہ یہ مومن شمار نہیں ہو ں گے جب تک اپنے اختلافات میں آپ کو حکم تسلیم نہ کرلیں اور آپ جو فیصلہ فرمائیں اس پر ترددنہ کریں اور اس کو مکمل طور پر تسلیم کرلیں‘‘(النساء :65)(4) ’’کسی مسلمان مردوعورت کے لیے جائز نہیں کہ اللہ ورسول کے فیصلے کے بعد حیل وحجت کریں، جو اللہ اور رسول کی نافرمانی کرے گا وہ کھلے طور پر گمراہ ہوگا‘‘۔(الاحزاب:36)(5)’’پیغمبر جو کچھ تمہیں دیں اس کو لے لو اور جس سے منع کریں اس پررک جاؤ‘‘( الحشر:7)(6)’’جس نے رسول (صلی اللہ علیہ وسلم ) کی اطاعت کی اس نے اللہ کی اطاعت کی‘‘( النسار )(7)’’اللہ اور رسول کی اطاعت کرو شاید تم پر رحم کیاجائے‘‘۔(آل عمران :132)(8)’’آپ فرمادیجئے کہ اللہ اور رسول کی اطاعت کرو اگر تم نے روگردانی کی تو ( سمجھ لو کہ) اللہ کا فروں کودوست نہیں رکھتا‘‘(آل عمران :32)(9)’’وہ (پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم) ان کو اچھے کاموں کا حکم دیتے ہیں اور برے کاموں سے روکتے ہیں اور ان کیلئے پاکیزہ چیزوں کو حلال کرتے ہیں اور بری چیزوں کو حرام قرار دیتے ہیں‘‘(الاعراف:157)(10)’مسلمانوں کا قول جب ان کو اللہ کی اور اس کے رسول کی طرف بلایا جاتا ہے تاکہ وہ ان کے درمیان وہ فیصلہ کردیں یہ ہے کہ وہ کہہ دیں کہ ہم نے سن لیا اور اس کو مان لیا‘‘۔

یہ چند آیات بہ طور مثال بیان کی گئی ہیں ورنہ اس نوعیت کی اور بھی آیات ہیں، ان سے ثابت ہوتا ہے کہ اللہ کی اطاعت کے ساتھ ساتھ اللہ رسول کی اطاعت بھی ضروری ہے ،بلکہ رسول کی اتباع اور اطاعت اللہ کی قربت اور اس کی محبت کے حصول کا ذریعہ ہے، اللہ کے رسول ﷺ کا منصب ہی یہ ہے کہ وہ لوگوں کو خیر کی دعوت دیں، برئی سے روکیں، ان کے سامنے حلال وحرام کے احکام بیان فرمائیں ،لوگوں کے نزاعات واختلافات میں فیصلے فرمائیں ،اور جب آپ فیصلہ صادر فرمادیں پھر کسی مسلمان کے لیے اس کوقبول کرنے میں ترددنہ ہوناچاہئے ،اگر کسی نے ذرا بھی اختلاف کیا یافیصلہ ماننے میں پس وپیش کیا تو اس کے کفر میں کوئی شبہ نہیں ہے کیا آپ ﷺ کے ارشادات ، تعلیمات اور اعمال کو نظر انداز کر کے اطاعت اور اتباع کے کوئی معنی ہیں، اگر سب کچھ قرآن ہی ہے تو پھر اطاعت رسول اور اتباع رسول کا حکم ہی بے مقصد نظر آتا ہے ، اس کا مطلب ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے قول وعمل کی اتباع بھی ضروری ہے اور یہ کوئی من گھڑت عقیدہ نہیں ہے بلکہ خود قرآن کریم نے اسے ضروری قرار دیا ہے،بلکہ قرآن نے تو یہاں تک کہہ دیا ہے کہ جو کچھ آپ فرماتے ہیں وہ وحی سے ہی فرماتے ہیں : وَمَا یَنُطِقُ عَنِ الْہَری اِنّ ہُوَ اِلاُ وَحْی یُوْحی ۔(النجم :4)’’کہ آپ خواہش نفس سے کلام نہیں کرتے بلکہ جو کچھ کہتے ہیں وہ جی ہوتی ہے جو ان کی طرف نازل کی جاتی ہے‘‘ اسی لیے علماء نے کتاب وسنت دونو ں کو وحی الہی قرار دیا ہے، فرق صرف یہ ہے کہ کتاب اللہ وحی متلوہے یعنی نماز وغیرہ میں اس کی تلاوت کی جاتی ہے اور حدیث رسول ﷺ وحی غیر متلوہے یعنی اس کی تلاوت نہیں کی جاتی ،صرف اتنا ہی نہیں بلکہ اللہ رب العزت نے کتاب کے ساتھ حکمت کا بھی ذکر فرمایا ہے،اکثر علماء کی رائے یہ ہے کہ یہاں حکمت سے مراد حدیث رسول ﷺ ہے ،فرمایا: ’’اللہ تعالیٰ نے اہل ایمان پر بڑا احسان فرمایا ہے کہ ان میں ان ہی میں کے ایک (شخص کو ) رسول (بنا کر) بھیجا جو انہیں اللہ کی آیات پڑھ کر سناتے ہیں،ان کی پاکیزگی کادرس دیتے ہیں ،اور انہیں کتاب و حکمت کی تعلیم دیتے ہیں‘‘ (آل عمران :164)جمہور علماء اور محققین کا خیال ہے کہ حکمت کتاب کے علاوہ کوئی چیز ہے،اسے ہم دین کے اسرار اورشریعت کے احکام بھی کہہ سکتے ہیں ، اسی کو علماء نے ’’سنت‘‘کہا ہے، چنانچہ امام شافعیؒ فرماتے ہیں کہ ’’اللہ نے کتاب کا ذکر فرمایا یہ قرآن ہے اہل علم سے سناہے کہ حکمت سے مراد سنت رسول ﷺ ہے،پہلے قرآن کریم کا ذکر کیا گیا پھر اس کے بعدمتصلاً لفظ حکمت لایا گیا ،اس سے پہلے رسول ﷺ کی بعثت کو بہ طور احسان بھی ذکر فرمایا گیا ہے، حکمت کو کتاب کے ساتھ ملا کر لانے سے یہی واضح ہوتا ہے کہ اس سے مراد سنت رسول اللہﷺ ہے‘‘ ڈاکٹر مصطفی السباعی نے امام شافعیؒ کی اس رائے سے اتفاق کرتے ہوئے لکھا ہے کہ امام شافعی یقینی طور پر حکمت کو سنت مانتے ہیں ،کیوں کہ یہاں لفظ الحکمت کا عطف الکتاب پر کیا گیا ہے جس کا مفہوم یہ ہے کہ دونوں چیزوں کتاب اور حکمت میں معائر ت ہویعنی دونوں الگ الگ ہوں، اور یہ مناسب نہیں کہ کتاب کے ساتھ سنت رسول کے علاوہ کسی چیز کا ذکر کیا جائے خاص طور پر اس وقت جب کہ اللہ تعالیٰ بعثت نبوی ﷺ کو بندوں پر بہ طور احسان ذکر فرمارہے ہیں ، اس سے ثابت ہوا کہ جس طرح قرآن کا اتباع ضروری ہے ، اسی طرح سنت کا اتناع بھی ضروری ہے( النسۃ ومکانتہافی التشر یع الاسلامی ،ص:69)

ذخیرۂ حدیث کونظر انداز کر کے شریعت پر عمل کرنا عقلاً بھی ناقابل فہم ہے ،کیونکہ اللہ تعالیٰ نے اپنی کتاب میں جتنے بھی احکام بیان فرمائے ہیں وہ سب مجمل بیا ن فرمائے ہیں، ان کی تفصیلات حدیث میں ملتی ہیں، اگر ان تفصیلات کونظر انداز کردیا جائے تو قرآن کے احکامات پر کس طرح عمل ہوگا ،نماز دین کا اہم ستون اور بنیادی رکن ہے، قرآن کریم میں جگہ جگہ نماز پڑھنے کاحکم دیا گیا ہے، لیکن کہیں بھی اس کا طریقہ بیان نہیں کیا گ یا ،نہ اس کی شرائط صحت ذکر کی گئیں ،نہ بیان کیا گیا کہ دن رات میں کتنی نمازیں ہیں اور کونسی نماز کب ادا ہوگی اور کس نماز میں کتنی رکعتیں ہیں،یہ تمام باتیں حدیث سے ثابت ہیں، اسی طرح قرآن میں صرف یہ فرمادایا گیا کہ زکوٰۃ ادا کرو ،لیکن یہ زکوٰۃ کب فرض ہوگی، اس کا نصاب کیا ہے، قرآن میں کہیں بھی نہیں ہیں، جب کہ ان تفصیلات کا علم حاصل کئے بغیر فریضۂ زکوٰۃ کی ادائیگی ممکن نہیں، اسی طرح روزوں کے سلسلے میں فرمایا گیا کہ ’’جس شخص کو رمضان کا مہینہ ملے وہ روزہ رکھے‘‘ روزہ کیا ہے،کن چیزوں سے روزہ ٹوٹتا ہے ،کن چیزوں سے روزہ نہیں ٹوٹتا یہ چیزیں قرآن میں نہیں ہیں بلکہ حدیث میں ہیں، حج وعمرہ کے سلسلے میں بھی قرآن میں نہیں ہیں بلکہ حدیث میں ہیں ،حج وعمرہ کے سلسلے میں بھی قرآن کا حکم اجمالی ہے کیا صورت ہوگی، قرآن میں کہیں بھی اس کا ذکر نہیں ہے، جب کہ حدیث میں ان عبادتوں کی مکمل تفصیلات ملتی ہیں ،عبادات پر ہی کیا موقوف ہے نکاح، طلاق ،رضاعت، حضانت، تجارت، اجارہ ، رہن ، وصیت وغیرہ کے احکام بھی قرآن میں مختصر اً ذکر کئے گئے ہیں ، ان سے شریعت رخ تو متعین ہوتا ہے اور منشاخداوندی کا علم بھی ہوتا ہے ، مگر ان میں سے کسی کا حکم بھی اس نوعیت کا نہیں کہ اس پر عمل کیاسکے اِلاّ یہ کہ حدیث رسول سے مدد لی جائے۔

اس لیے امت کا اس پر اجماع ہے کہ قرآن کریم کے بعد اسلام کا دوسرا اہم مآخد حدیث ہے، جس طرح قرآن باعتبار ثبوت کے قطعی اور یقینی ہے اسی طرح احادیث کا وہ بڑا حصہ بھی قطعی اوریقینی ہے جو تو اتر سے ثابت ہے، جس طرح قرآن سے شریعت کے احکام ثابت بھی ہوتے ہیں اور منسوخ بھی، جو لوگ ہر حکم شرعی کے لیے قرآن سے دلیل طلب کرتے ہیں وہ شریعت کے اس دوسرے اہم ترین مآخذ کی اہمیت سے واقف نہیں ہیں، اگر مفتی صاحب نے مضمون نگار کو یہ تلقین کی وہ ہر حکم کے لیے قرآکریم سے دلیل نہ مانگیں تو انہوں نے بالکل صحیح تلقین کی، مضمون نگار نے اپنے مضمون میں اللہ تعالیٰ کے اختیار اور اقتدار اور حاکمیت سے متعلق جوآیات نقل کی ہیں وہ اپنی جگہ بالکل درست اور صحیح ہیں، بلاشبہ اقتدار اعلا،اور حاکمیت اعلا اللہ ہی کے لیے ہے ،لیکن اس نے پیغمبر کی اطاعت کے لیے جو احکام جاری کئے ہیں مضمون نگار ان کی کیا توجیہ کریں گے ، مضمون نگار یا ان کے اہم خیال لوگ ٹھنڈے دل ودماڑ سے غور کیں کہ کیا وہ حدیث رسول ﷺ سے انکار کرکے قرآن کریم کی ان آیات کا انکار نہیں کررہے ہیں جن میں حدیث رسول پر عمل پیرا ہونے کی تلقین کی گئی ہے؟

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/the-role-of-hadith-in-shaping-the-islamic-sharia--شر-یعت-تشکیل-میں-حدیث-کا-کردار/d/2706

 

Loading..

Loading..