New Age Islam
Wed Dec 08 2021, 11:09 AM

Urdu Section ( 14 March 2009, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

A New Evil is knocking at the Door ایک نئے فتنے کی آہٹ

A New Evil is knocking at the Door

 The reality is that-the entire community is affected by backwardness but some people are identifying a few castes and declaring them as backward to initiate efforts for the promotion of their social and political rights. This convention is not a good omen from the point of view of unity and integrity of the Muslim community. To differentiate Muslims on account of backward and forward classes by dividing them into different groups is totally against the Islamic concept of unity in the Muslim fraternity.... Muslim leaders should surely try to unite the Ummat-e-Islamiah on the basis of Kalmah-e-Tauheed, not to conspire to divide them on the basis of caste, colour, creed and region. -- Maulana Nadeem Al-Wajidee

Translated from Urdu by Syed Raihan Ahmad Nezami, Najran Saudi Arabia

URL:  http://newageislam.com/NewAgeIslamArticleDetail.aspx?ArticleID=1246

-----------------------------

 

 Don’t promote new divisions among Indian Muslims

A New Evil is knocking at the Door

 

A Point of View by Maulana Nadeem Al-Wajidee

 

         

            The population of the Muslim citizens is quite high and they too have got the constitutional rights to elect the members of the Parliament and the Legislative Assembly of their choice. Being in a decisive position in at least 200 constituencies, the Muslim vote bank is the centre of attraction for all the central and regional political parties. Some political parties consider the Muslim votes as their personal property, but some other communal parties try to unify and obtain the Hindu votes by raising Anti-Muslim slogans and spitting poisonous statements. This negative attitude itself highlights the significance of the Muslim votes but, alas! The Muslims themselves are unaware of the importance of their votes.

           

            Due to lack of genuine leadership, the Muslim voters are scattered all over and split into several groups.  This crack among the Muslims is being felt now more than on any other occasion in the past. More or less, the tragic plight of the Muslims in this country is well-known to every conscious voter as sadly enough; they could not have established themselves as a mighty political force even after 60 years of independence, though they possess extra-ordinary numerical voting power which plays a pivotal role in the formation of the government. After the elections, when the power and post are distributed, they almost get nothing and are pushed at the margin.

 

            The Muslims in this country are forced to lead a life even worse than the backward classes or scheduled castes, it’s not my opinion; rather it’s the finding of the Sachar Committee-

-          That we are not holding high offices.

-          That neither we have command over the internal matters nor we are influential in the foreign policy.

-          That our presence is almost zero in the educational institutions, financial and economical sectors and government jobs.

 

What is the solution for this extreme misery and haplessness?

How can we overcome this frustrating situation? 

The vibrations of these questions are being heard in the atmosphere for over 60 years but nobody has given the answers. The so-called leaders of the Muslim community don’t intend to reply to these questions as their answers are hidden in one word only i.e. Unity.

 

These tricky questions can be answered only by being united for the sake of the welfare of the community leaving aside all the personal interests and selfish gains.

 

How can a community be united, which has thousands of so-called leaders treading separate paths, conflicting aims, ambitions and goals? Tragically we are divided in many sects – Shia, Sunni, Deobandi, Barailwi, Muqallid, and Non-Muqallid etc. Then every sect is divided in different sub-sects and sub-sects into even smaller groups, every group in numerous sections - it means there are various groups within a group and all of them are busy in trying to humiliate others by disparaging remarks and offensive actions. Our community looks like a scattered flock of sheep in which every sheep is running in different direction and taking an opposite path. But the unfortunate part of this tragedy is that no one is keen to discontinue this awful practice and accumulate the communal fold.

 

Till date, we had been victims of political and sectarian religious differences but at present a new devilish evil is knocking at our door i.e. the evil of caste and creed. Recently an All India Convention consisting of 118 backward caste communities had been organized at the Ram Lila Ground in New Delhi. The organizer was a renowned businessman of Delhi who has been active in the struggle for the protection of rights and justice for the backward castes among the Muslim community who have been deprived of their social and political rights. Various sections of the backward castes among the Muslim community Quraishi, Salmani, Mansoori, Saifee Darzi, Abbasi, Qassar, Raeen, Ansari, Gaddee, Dafli, Gujjar Madari, Rajput, Raomio, Ghosi and Malik among the Muslim community participated in this convention which was a big failure in the sense that it was not attended by large numbers of the aforesaid castes. So there was no big congregation and it was for the better. But the sad part of such convention is that some people are leaving no stone unturned in creating a rift among the Muslim community and dividing them on the basis of castes in different groups as forward castes and backward castes. If it has been attempted to prove by the participation of 118 groups of the Muslims that they are the backward castes and the rest are forward castes. It is absolutely contrary to the reality.

 

The Sachar Committee, which was formed by the Prime Minister Dr. Manmohan Singh in March 2005, had visited 13 states and union territories which have a considerable Muslim population and came to the conclusion that the Muslims are far behind other religious groups in term of development and economic progress. The Muslims are facing a variety of problems other than the lack of educational and economic development which are quite different from the problems being faced by the backward castes of other religions. Nowhere in the Sachar Committee are the Muslims mentioned as backward or forward castes; in my opinion the recent happenings are the first pre-planned attempt to instigae and strengthen the feelings of backward and forwards classes among Muslims and may succeed in widening the so-called rift between the higher and the lower, forward and backward Muslim castes.

 

Actually, the reality is that-the entire community is affected by backwardness but some people are identifying a few castes and declaring them as backward to initiate efforts for the promotion of their social and political rights. This convention is not a good omen from the point of view of unity and integrity of the Muslim community. To differentiate Muslims on account of backward and forward classes by dividing them in different groups is totally against the Islamic concept of unity among the Muslim fraternity.

 

Looking into the Past, about 1400 years ago, when the Quran-e-Kareem was revealed in the sacred valley of Makkah-e-Mokarramah, it was announced that the Almighty Allah-e-Kareem has created the human beings from a male and a female; they were informed that they are brothers even though they belong to different castes, creed, families and tribes. The first and foremost aim of this fraternity feeling is that no one should be considered greater and more exalted than others on account of nation, community, colour nor anyone is superior on account of tribe, caste, family, status or property with the Almighty Allah-e-Kareem. Because the people who possess such sacred qualities as perfect Faith in Islam, piety, purity of the soul, clarity of the heart, righteousness and noble characters, are only considered honourable with the Almighty Allah-e-Kareem which has been mentioned as “Al-Taqwa” in the Quran-e-Kareem.

 The Almighty Allah-e-Kareem says, “O’ Mankind! We have created you from a male and a female, and made you into nations and tribes, that you may know one other. Verily the most honourable of you with the Almighty Allah-e-Kareem is that (believer) who has “Al-Taqwa” (i.e. he is one of the “Al-Muttaqun” (the pious).

                                                                          (Surah Al-Hujurat 13) 

If the Almighty Allah-e-Kareem willed, He would have demolished the difference and distinction by creating the human beings into one nation but He maintained it because of His intelligent rules of nature and He Himself explained this point.

 

 

The Quran-e-Kareem says, "If Allah had willed, He would have made you one nation, but that (He) may test you in what He has given you; so compete in good deeds."

                                                                            (Surah al-Maeda, 48)

 

There are various Ahadeeth Shareef in this context. According to one "Rawayat", the prophet Hazrat Muhammad (Peace be upon Him) asserted, "your Almighty Creator is one and your father is also one; so any Arabi over Ajami or any White over Black can't have distinction except on account of Al-Taqwa".

                                                                       (Jama Al-Fawaed, 4142)

The prophet Hazrat Muhammad (Peace be upon Him) demolished the concept of communal or tribal pride on the day of the victory over Makkah-e-Mokarramah in the following words. "All praise is for the Almighty Allah-e-Kareem who demolished the pride and dignity of the illiterates, O' Mankind, human beings are of two kinds only; one who are believers, pious, obedient, honourable with the Almighty Allah-e-Kareem and the others who are "Fasiq" and "Fajir" (deviant, disobedient), disgraceful and insulted with the Almighty Allah-e-Kareem, then He (Peace be upon Him) recited this Aayat, " Ya aiyyohan naso inna khalaqnakum".

                                                       (Saheeh bin Habban: 137/9, 3828)

 

By this Makkah-e-Mokarramah Declaration, it was clear that all human beings are equal in the whole mankind; nothing can make you distinct and superior, although “Eman” is such a great boon which can make you proud and dignified.

 

The Almighty Allah-e-Kareem has tied the whole Muslim fraternity in one thread that is the chain of Faith above all the relations of caste, colour and creed. Faith creates a combined sensitivity and sense of brotherhood. The worldly physical relation diminishes after a certain period and finishes after some generations whereas the oneness of Faith remains fresh and strong forever.  If anything is obvious in the expression and absorbed in the hearts of the Muslims; that is the Faith. This Faith is a companion in the meeting; and a secret-partner in the solitude whose effect is exposed in every Salat, Saum, Zakat, Hajj, every prayer and every obedience even in the winking of the eye-lids, beating of hearts, in the senses, feelings and mind by which the Almighty Allah-e-Kareem has connected all the Muslims of the Mankind in a single thread. Whether they are in any direction – North, South, East or West, of any colour – White or Black, of any country – Arab or Ajam, of any status, affluent or impoverished in such a way that they seem to possess a single body. If a Muslim is hurt in the West, its pain is felt by a person living in the East.

 

What a wonderful compassionate narration the prophet Hazrat Muhammad (Peace be upon Him) has given to this mutual co-operation and connection!

 

“The example of the believers (Ahl-e-Eiman) who possess love and compassion for one another is like a single body which suffers from fever and pain if any of its part is sick”.

                                (Saheeh Al-Bukhari: 2238/5, Hadeeth No.5665)

 

“No doubt one Muslim is like a building for the other Muslim of which different portions are inter-connected and inter-dependent on one another.”

                                (Saheeh Al-Bukhari: 182/1, Hadeeth No.467)

 

 

The Quran-e-Kareem has compared this Faith with the Rope of the Almighty Allah-e-Kareem (i.e. this Quran) and ordered to hold it tightly and reminded that you were bitter enemies before you were bestowed this wealth of Eiman and Oneness of Faith. Now, your hearts are filled with the love and the compassion which bring the people together; develop the sense of co-operation and unity; combine their goals and purposes.

 

 

The Almighty Allah-e-Kareem says, “And hold fast, all of you together, to the Rope of Allah (i.e. this Quran), and be not divided among yourselves, and remember Allah’s favour on you, for you were enemies one to another but He joined your hearts together, so that, by His Grace, you became brethren (in Islamic Faith), and you were on the brink of a pit of Fire, and He saved you from it”.

                                                                          (Surah Al’Imran: 103)

 

The Almighty Allah-e-Kareem has been prohibited from creating differences and disputes to maintain and sustain this Oneness.

 

The Almighty Allah-e-Kareem says, “And obey Allah-e-Kareem and His Messenger (Peace be upon Him), and do not dispute (with one another) lest you lose courage and your strength departs, and be patient. Surely, Allah is with those who are As-Sabirun (the patient)”. 

                                                                             (Surah Al’Anfal: 46)

 

 

According to the Quran-e-Kareem and Al-Sunnah, if anything is a must for the sustenance and the development of the Ummat-e-Islamiah – that is the Oneness and the mutual unity among the Muslims which is the embodiment of strength, power and dignity of the Ummat-e-Islamiah. By this only, the existence can be preserved; and in its absence, neither peace and safety, nor security can be obtained, nor respect, status and dignity can be safe-guarded, nor the worldly development and divine piousness be achieved.  A lot of emphasis is given over the Oneness and unity among the Muslims in the Islamic teachings. 

 

These resources have been pointed to on many occasions in the Quran-e-Kareem and the Ahadeeth Shareef of the prophets (Peace be upon Them); we can certainly achieve Oneness by practically following those teachings. After creating the Islamic kingdom, the prophet Hazrat Muhammad (Peace be upon Him) had given a practical shape to this Oneness by establishing fraternal relationship between the Muhajereen and the Ansars. Later on, the Khulafa-e-Rashedeen (May Allah be pleased with Them) too followed this practice as the brotherhood and Oneness had played a vital and unforgettable role in the development of Islam.

 

Today, we are passing through the worst phase of our history, tolerating great insult and disrespect; it is only because we don’t have that Oneness and unity among us which used to be our hallmark during the reign of the Sahabah-e-Karam (May Allah be pleased with Them). The people who are trying to divide the Muslims between backwards and forwards by arousing their emotions to gain political mileage are obviously committing such a blunder that history will never forgive. If this convention or congregation would have been organized on the basis of the unity of the Ummat-e-Islamiah and any decision would have been taken on the topic of educational and economic development of the Muslims; they might have rendered a great service to the Muslim community which would have been remembered forever and whose results also would have been better. Muslim leaders should surely try to unite the Ummat-e-Islamiah on the basis of Kalmah-e-Tauheed, not to conspire to divide them on the basis of caste, colour, creed and region.Courtesy: Daily Sahafat 10 march 2009

Translated from Urdu by

http://www.newageislam.com/urdu-section/a-new-evil-is-knocking-at-the-doorایک-نئے-فتنے-کی-آہٹ/d/1246

 

مولانا ندیم الواجدی

ملک میں عام انتخابات عنقریب منعقہ ہونے والے ہیں، مسلمان اگر سیاسی بصیرت کے ساتھ اتحاد کا مظاہر ہ کریں تو وہ اس ملک میں ایک بڑی سیاسی طاقت بن کر ابھر سکتے ہیں، یہ ایک سیکولر جمہوری ملک ہے، یہاں آئین اور قانون کی حکمرانی ہے ،ہر پانچ سال کے بعد اس ملک کے عوام کو یہ حق دیا جاتا ہے کہ وہ اپنی پسند کے لوگوں کو پارلیامنٹ اورصوبائی اسمبلیوں میں چن کر بھیجیں،اس کے لئے انتخاب کا طریقۂ کار اختیار کیا گیا ہے، مسلمان یہاں اچھی خاصی تعداد میں ہیں اور انہیں بھی آئین نے اپنے نمائندے منتخب کر کے پارلیامنٹ میں بھیجنے کا حق دیا ہے، پارلیامنٹ کی کم از کم دوسوسیٹیں ایسی ہیں جن میں مسلم ووٹ فیصلہ کن حیثیت رکھتا ہے، یہی وجہ ہیکہ ملک کی تمام سیاسی جماعتیں مسلمانوں کی طرف للچائی ہوئی نظروں سے دیکھتی ہیں ، بعض جماعتیں مسلمانوں کو اپنا ووٹ بینک تصور کرتی ہیں اور بعض جماعتیں خالصتاً مسلم دشمنی کے نعرے بلند کر کے ہندوووٹ اکٹھا کرنے میں لگ جاتی ہیں، اس منفی رویے سے بھی اندازہ ہوتا ہے کہ مسلمانوں کا ووٹ سیاسی پارٹیوں کے لئے کس قدر اہمیت کا حامل ہے مگر خود مسلمانوں کو اپنے ووٹ کی قدروقیمت کا اندازہ نہیں ہے ،مسلمانوں میں باشعور قیادت کے فقدان نے مسلم رائے دہندگان کو بکھراؤ اور انتشار کی یہ کیفیت کچھ زیادہ ہی محسوس کی جارہی ہے۔ معمولی شعور رکھنے والا شخص بھی یہ بات اچھی طرح جانتا ہے کہ ساٹھ سال گزرنے کے بعد بھی مسلماناس ملک کی حکومت میں غیر معمولی مددی قوت کے باوجود اپنی جگہ نہیں بنا سکے ، حکومتیں تشکیل دینے میں ان کا ووٹ فیصلہ کن رول ادا کرتا ہے اور ٹاپ بات اقتدار اور اختیار کی آتی ہے تو وہ حاشیے پر پہنچ کر کھڑے ہوجاتے ہیں، مسلمان اس ملک میں دلتوں سے بھی بدتر زندگی گزار نے پر مجبور ہیں، یہ میں نہیں کہہ رہا ہوں بلکہ سچر کمیٹی کی رپورٹ کہہ رہی ہے کہ نہ ہم حکومت کے اعلیٰ عہدوں پر ہیں نہ ملک کے داخلی نظام پر ہماری پکڑ ہے ،نہ ہم خارجہ پالیسی پر اثر انداز ہونے کی صلاحیت رکھتے ہیں ،تعلیمی اداروں میں ،تجارتی مراکز میں ، سرکاری ملازمتوں میں ہماری نمائندگی نہ ہونے کے برابر ہے، اس محرومی کا علاج کیا ہے ، ہم اس کا تدارک کیسے کرسکتے ہیں اس سوال کی صدائے بازگشت گزشتہ ساٹھ سالوں سے فضاؤں میں گونج رہی ہے مگر اس کا جواب کسیکے پاس نہیں ہے، جو لوگ مسلمانوں کی قیادت کا دعویٰ کرتے ہیں وہ اس کا جواب دینا نہیں چاہتے ،کیوں کہ اس کا جواب صرف ایک لفظ میں پوشیدہ ہے اور وہ ہے اتحاد اپنے ذاتی مفادات بالائے طاق رکھ کر اور ملت کے مفاد کے لئے متحد ہوکر ہی اس کا جواب دیا جاسکتا ہے مگر جس ملت میں ہزاروں قائد ہوں اور ہر قائد کا راستہ جدا اور مقاصد مختلف ہوں اور ملت کیسے متحد ہوسکتی ہے، ہمارا المیہ یہ کہ ہم مختلف خانوں میں بٹ کر رہ گئے ہیں ، شیعہ سنی ، دیوبندی ،بریلوی، مقلد غیر مقلد ، پھر ہر گروہ مختلف ٹولیوں میں بٹا ہوا ،ہر جماعت میں کئی کئی جماعتیں ،ہر گروہ میں کئی کئی گروہ ہر شخص دوسرے کی ٹانگ پکڑ کر کھینچنے میں مصروف ۔اس ملت پر ایسی بھیڑوں کا کمان ہوتا ہے جن میں بھگدڑ مچ گئی ہو اور وہ جدھر سینگ سمائے ادھر بھاگی چلی جارہی ہوں ، ملت کا شیرازہ بھی کچھ اسی طرح منتشر ہورہا ہے اور کوئی اس شیرازے کو بکھرنے سے بچانے کے لیے تیار نہیں ہے۔

اب تک ہم سیاسی اور مسلکی اختلاف کا شکار تھے ، اب ہمارے دورازوں پر ایک نئے فتنے کی آہٹ ہورہی ہے اور وہ فتنہ ہے ذات براردی کا فتنہ ، حال ہی میں دہلی کے رام لیلا میدان میں ایک سو اٹھارہ پسماندہ برادریوں کا کل ہند کنونشن منعقد ہوا ہے،دہلی کے ایک سرکردہ تاجر اس کے داعی تھے جو سیاسی اور سماجی حقوق سے محروم پسماندہ برادریوں سے تعلق رکھنے والے مسلمانوں کو انصاف دلانے کی جدوجہد میں مصروف ہیں، اس کنونشن میں قریشی، سلمانی، منصوری، سلفی، درزی، عباسی ، قصار، راعین، انصاری، گدی ، ڈفالی، گوجر، مداری ، راجپوت ، راہا میو، گھوی اور ملک وغیرہ نسبتوں کے حامل مسلمانوں نے شرکت کی ہے، اگر چہ یہ کنونشن اس اعتبار سے ناکام ہوگیا کہ اس میں بڑی تعداد میں لوگ شریک نہیں ہوئے اور یہ ایک طرح سے بہترہی ہوا لیکن افسوس ا س کا ہے کہ کچھ لوگ مسلمانوں کو پسماندہ اور غیرپسماندہ طبقوں میں بانٹنے کی کوشش کررہے ہیں ،اگر ایک سو اٹھارہ برادریوں کی شرکت سے یہ بات ثابت کرنے کی کوشش کی گئی ہے کہ یہ برادریاں پسماندہ ہیں اور باقی سب ترقی یافتہ ہیں تو یہ حقیقت کہ بالکل خلاف ہے ، سچر کمیٹی نے جسے وزیر اعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ نے مارچ 2005میں مقرر کیا تھا، مسلمانوں کی تعداد کے لحاظ سے قابل لحاظ آبادی والی 13ریاستوں اور مرکزی علاقوں کا دورہ کیا اور اس دورے سے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ اقلیتی فرقہ ترقیات کے مختلف پہلوؤں کے اعتبار سے دوسرے مذہبی فرقوں کے مقابلے میں محرومیوں کا زیادہ شکار ہے، تعلیمی، اقتصادی ترقیات کے علاوہ بھی مسلمانوں کو کچھ اور مسائل کا سامنا ہے اور وہ ان مسائل سے قطعی مختلف ہیں جو دیگر مذہبی اکائیوں کے غریب طبقے کو درپیش ہیں سچر کمیٹی نے اپنی رپورٹ کے کسی حصے میں بھی مسلمانوں کو ذات برادریوں کے حوالے سے پس ماندہ اور غیر پسماندہ کے خانوں میں نہیں رکھا ،میرے خیال سے پہلی باضابطہ منظم کوشش ہے جو مسلمانوں میں ذات برادری کے تصور کو اور وسیع کرے گی اور اعلیٰ ادنیٰ کی مفروضہ خلیج کو بانٹنے کے بجائے مزید گہرا کرنے میں کامیاب ہوجائے گی ، حقائق تو یہ کہتے ہیں کہ پوری ملت پسماندگی میں مبتلا ہے ،مگر کچھ لوگ ان میں سے چند طبقوں کی نشاندہی کرتے ہیں اور ان کو پسماندہ قرار دے کر ان کے سیاسی اور سماجی حقوق کے تحفظ کا نعرہ بلند کرنے لگتے ہیں ، اتحاد ملت کے لئے یہ اجتماعی اچھا شگون نہیں ہے، مسلمانوں کو مختلف برادریوں میں تقسیم کر کے ان میں پسماندہ اور غیر پسماندہ کی تفریق کرنا اسلام کے تصور مساوات کے بالکل خلاف ہے ، آج سے چودہ سوسال پہلے جب مکہ کی وادیوں میں قرآن کریم نازل ہورہا تھا اسی وقت یہ اعلان کردیا گیا تھا کہ اللہ تعالیٰ نے انسان کو ایک ماں اور ایک باپ سے پیدا کیا ہے اور انہیں اس بات سے آگاہ کردیا گیا تھا کہ وہ آپس میں بھائی بھائی ہیں اگرچہ ان کے نصاب ایک دوسرے سے الگ کیوں نہ ہوں اور وہ مختلف خاندانوں ، قبیلوں اور کنبوں میں بنے ہوئے کیوں نہ ہوں، اس اخوت کا اولین تقاضہ یہ ہے کہ کسی کو کسی پر قومیت کی بنا پر یا رنگ کی وجہ سے فوقیت نہ ہو اور نہ کوئی شخص اپنے خاندان کو بنا پر یا حسب ونسب اور مال ودولت کی وجہ سے اللہ کے نزدیک مکرم بن سکے ، اس لیے کہ اللہ کے نزدیک مکرم اس کے وہ بندے ہیں جو تدفین، طہارت نفس ، سلامت قلت ، عمل صالح اور اخلاق کریمہ جیسی صفات کے حامل ہیں اور جنہیں کلام الہٰی میں تقویٰ سے تعبیر کیا گیا ہے، فرمایا ’’ اے لوگو ہم نے تمہیں ایک مرد اور ایک عورت سے پیدا کیا ہے اور تمہیں مختلف قوموں اور قبیلوں میں اس لیے بنایا ہے کہ تاکہ تم ایک دوسرے سے تعارف حاصل کرسکو، بلاشبہ اللہ کے نزدیک تم میں سے زیادہ افضل وہ ہے جو زیادہ پرہیز گار ہے‘‘(سورۃ الحجرات 13) اللہ تعالیٰ اگر چاہتا تو تمام انسانوں کو ایک ہی قومیت عطا کر کے یہ فرق و امتیاز ہمیشہ کے لئے ختم کردیتا خدا نے اپنے حکیمانہ قانون فطرت کے تحت یہ امتیاز باقی رکھا اور خود ہی اس کی وضاحت بھی فرمادی’’اور اگر اللہ چاہتا تو تمہیں ایک امت بنادیتا لیکن ( اس نے ایسا نہیں کیا) تاکہ تمہاری آزمائش کرے ان چیزوں میں جو اس نے تمہیں عطا کی ہیں سوئم غیر کے کاموں کی طرف پیش قدمی کرو‘‘(المالدۃ :48) اس معنی مفہوم کی احادیث بھی بے شمار ہیں ، ایک روایت میں ہے کہ آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا: ’’تمہارا رب ایک ہے اور تمہارا باپ ایک ہے سوسی عربی کے لیے کسی مجمی پر اور کسی گورے کے لئے کسی کالے پر تقویٰ کے علاوہ کوئی چیزفضیلت کاے سبب نہیں بن سکتی‘‘ (جمع الطوانہ:4142) فتح مکہ کے دن سرکار دوعالم ﷺ نے خاندانی تضاخر کے عفریت کا ان الفاظ میں خاتمہ فرمایا،’’تمام تعریفیں اللہ کیلئے ہیں جس نے جاہلیت کے فخر وغرور کا خاتمہ کردیا، اے لوگوانسان فقط دو طرح کے ہیں ایک متقی پرہیزگار اور اللہ کے نزدیک معزز ومکرم صاحب ایمان دوسرے خاجر وفاسق اور اللہ کے نزدیک ذلیل وخوار پھر آپ نے یہ آیت : تلاوت فرمائی ‘‘(صحیح ابن حبان :137/9رقم :3828) اس اعلان مکہ سے واضح ہوا کہ نفس انسانیت میں تمام انسان پر برتر نہیں بنا سکتی ،البتہ ایمان ایک ایسی فضیلت ہے جو انسان کے لیے باعث فخر ہونی چاہئے ، اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں کو رنگ ونسل اور گوشت پوست کے رشتوں سے بڑھ کر وحدت کی جس لڑی میں پرودیا ہے وہ عقیدے کی لڑی ہے ، عقیدہ ایک مشترک وجدان اور احساس کی تخلیق کرتا ہے، عقیدہ ایک مشترک وجدان اور احساس کی تخلیق کرتا ہے، یکساں جذبات اور عوائف کو تحریک دیتا ہے ،باہمی تعاون اور اخوت کو فروغ دیتا ہے ، گوشت پوست کا تعلق ایک مرحلے میں آکر کمزورپڑجاتا ہے اور وہ چار نسلوں کے بعد بالکل ختم ہوجاتا ہے ، جب کہ عقیدے کے وحدت اور یکانگت ہمیشہ مضبوط اور تروتازہ رہتی ہے، ہر مسلمان کے دل میں پنہا اور زبان پر عیاں اگر کوئی چیز ہے تو وہ یہی عقیدہ ہے، یہ عقیدہ مسلمانوں کی جلوؤں کا رفیق بھی ہے اورمخلوقوں کا رازدار بھی، نماز ، روزہ، زکوٰۃ ،حج ہر عبادت اور ہر اطاعت میں اس کا اثر نمایا ہے، پلک جھپکنے میں اول ،دھڑکنے میں ،فکر وخیال میں، دل ودماغ میں اگر کوئی چیز مؤثر ہے تو وہ یہی عقیدہ ہے جس کے ذریعہ اللہ نے کائنات کے تمام مسلمانوں کو خواہ وہ مشرق میں ہوں یا مغرب میں ، جنوب میں ہوں یا شمال میں کالے ہوں یا گورے ،عرب کے ہوں یا پچھم کے ،مالدار ہوں یا مفلوک الحال سب کو ایک دوسرے کے ساتھ اس طرح جوڑ دیا ہے کہ وہ ایک جسم کی صورت اختیار کر گئے ہیں، اگر مغرب میں رہنے والے کسی مسلمان کو ٹھوکر لگنے سے تکلیف ہوتی ہے یا جس کے جسم میں کوئی کانٹا چھبتا ہے تو اس کا درد مشرق میں رہنے والا مسلمان محسوس کرتا ہے ،سرکار دوعالم ﷺ نے اس باہمی اخوت ومودت کو کیا حسین اور جمیل تعبیر عطا فرمائی ہے۔’’ باہمی الفت اور محبت میں اہل ایمان کی مثال ایسی ہے جیسے ایک جسم کی اگراس کے کسی عضو میں کوئی تکلیف ہوتی ہے تو اس کا پورا بدن بیداری اور بخار میں مبتلا ہوجاتا ہے ‘‘( صحیح بخاری :2238/5) حدیث نمبر ، 5665) ایک حدیث میں ہے’’بلاشبہ ایک مسلمان دوسرے مسلمان کے لئے عمارت کی حیثیت رکھتا ہے، جس کا ایک حصہ دوسرے حصہ کی تقویت کا باعث بنتا ہے‘‘ (صحیح بخاری :182/1،رقم الحدیث 467) قرآن کریم نے عقیدے کی اس وحدت کو خیل اللہ (اللہ کی رسی) سے تعبیر کیا ہے اور حکم دیا ہے کہ اسے مضبوطی کے ساتھ پکڑے رکھو اور یہ بھی یاد دلایا کہ دولت ایمان اور وحدت عقیدہ کی نعمت سے پہلے تم ایک دوسرے کے دشمن تھے ، اب اس دولت سے سرفرازکئے جانے کے بعد تمہارے دلوں میں اخوت اور محبت کے جذبات پیدا ہوگئے ہیں اور محبت ایک ایسا وصف ہے جو ایک دوسرے کے قریب لاتا ہے ان میں اتحاد اور تعاون کے رجحان کو فروغ دیتا ہے ان کے مقاصد ومفادات میں اشتراک پیدا کرتا ہے ، اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے ’’اور اللہ کی رسی کو سب مل کر مضبوطی سے پکڑو اور منتشر مت ہو اور اپنے اوپر اللہ کی نعمت کو یاد کرو کہ تم دشمن تھے تمہارے دلوں میں محبت پیدا کی سو اب تم اس نعمت کیوجہ سے بھائی بھائی بن گئے ہو اور تم د وزخ کے گڑھے کے کنارے پر تھے سواللہ نے تم کو اس سے نجات دی ’’( آل عمران 103)اسی وحدت کو برقرار رکھنے کیلئے اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں کو ہر طرح کے نزاع اور اختلاف سے منع فرمایا ہے فرمایا: اور اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کرو اورجھگڑو مت ورنہ ناکام ہوجاؤگے اور تمہاری ہوا اکھڑ جائے گی اورصبر کرو، بلاشبہ اللہ صبر کرنے والوں کے ساتھ ہے‘‘۔( لا فعال:46)

کتاب وسنت کے مطالعے سے پتہ چلتا ہے کہ امت اسلامیہ کی ترقی اور اس کی بقا کے لئے اگر کوئی چیز ضروری ہے تووہ مسلمانوں کی وحدت اور ان کا باہمی اتحاد ہے ،اتحاد ہی اس امت کی طاقت ،قوت اور عزت ہے اسی کے ذریعے امت کا وجود برقرار رہ سکتا ہے اس کے بغیر نہ امن و سلامتی کا حصول ممکن ہے ا ور نہ عزت ووقار کا تعلق ہوسکتا ہے اور نہ دین ودنیا کی اصلاح کے بند دروازے کھل سکتے ہیں ، اسلام نے اپنی تعلیمات میں مسلمانوں کی وحدت پر بڑا زور دیا جاتا ہے ۔ بے شمار قرآنی آیات اور احادیث نبویہ علی صلوٰۃ السلام میں ان وسائل کی نشاندہی کی گئی ہے جن کے ذریعہ وحدت کی عملی تخلیق ممکن ہے ،مملکت اسلامیہ کی تشکیل کے بعد سرکار دوعالم ﷺ نے مہاجرین انصار کے درمیان رابطہ موانقاۃ قائم کر کے اس وحدت کو عملی شکل عطا فرمائی بعد کے اردوار میں بھی حضرت خلفائے راشدین نے اس سلسلے کی مضبوطی کے ساتھ تھامے رکھا اسلام کی اشاعت وترقی میں اس اخوت اور وحدت کا کردار ناقابل فراموش ہے، آج ہم تاریخ کے جس مشکل ترین دور سے گزر رہے ہیں اور ذلت کی جس وادی میں ہم سفر کررہے ہیں اس کی اہم ترین وجہ یہی ہے کہ ہماری صفوں میں وہ اتحاد نہیں جو صحابہ میں تھا، آج جو لوگ مسلمانوں کو پس ماندہ اور غیر پسماندہ برادریووں میں تقسیم کر کے حقیر سیاسی مفادات کے لیے ان کے جذبات بڑا پختہ کررہے ہیں جسے تاریخ بھی معاف نہیں کرسکتا، اگر یہ اجتماع ملت ک ے اتحاد کے نام پر ہوتا اور اس میں بلا تفریق تمام ہندوستانی مسلمانوں کی تعلیمی و اقتصادی ترقی کو موضوع بنا کر فیصلہ لیا جاتا تو یہ ایسی خدمت ہوتی جسے ہمیشہ یادرکھا جاتا اور جس کے نتائج بھی بہتر ہوتے مسلمانوں کے قائدین کو چاہئے کہ وہ امت کو ایک کلمے کی بنیاد پر متحد کرنے کی کوشش کریں ، علاقائی ،نسلی اور گروہی بنیادوں پر تقسیم کرنے کی سازش نہ کریں۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/a-new-evil-is-knocking-at-the-doorایک-نئے-فتنے-کی-آہٹ/d/1246

 

 

Loading..

Loading..