New Age Islam
Sat Dec 04 2021, 03:40 AM

Urdu Section ( 14 Jun 2011, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

The Demand for Ban on Bible in Pakistan بائبل پر پابندی کا مطالبہ

By Maulana Mohammad Azhar

Translated from Urdu by Arman Neyazi, NewAgeIslam.com

-------------------

[New Age Islam is posting an English translation of an article (along with the original) by a Pakistan aalim Maulana Mohammad Azhar who opposes the ban on Bible demanded by other Mullas. He says there is no such precedent in Islamic history and so it is needless despite the provocations in the Bible. Such a demand was not made even in the times of the Prophet or his companions or their descendents, he points out. He is also afraid of the reaction of the world Christian community that may lead to banning of the publication of the holy Quran in those countries which will hamper the work of Dawah. – Editor]

------------------

Maulana Abdur Rauf Farooqui, Central Secretary General, Jamiat Ulema e Islam (S) has demanded that Chief Justice of Pakistan to take note, under Section 295 C,  and ban the Bible considering it part of blasphemous literature as it contains the most blasphemous and denigrating essays for the revered prophets of Islam (AS), according to the Daily Islam. Maulana Abdur Rab Amjad, Allama Zaheeruddin Babar, Maulana Mujeebur Rahman Inquilabi, Maulana Asad Farooqui, former Priest Shafquat, Maulana Azeem Hussain, Maulana Mahmood ur Rashid Hadouti and Maulana Mohammad Aasim Makhdoom were present in the press conference (“Islam” 31st May 2011).

The Islamic scholars further said that they have formed a panel of advocates to prepare a writ petition which will be lodged in Supreme Court if the Chief Justice did not take notice of it himself and the Christian Church will be provided an opportunity to defend.

As far as blasphemous articles in the Bible are concerned, no doubt, these are so disrespectful that even copying them seems blasphemous. The moral deprivation which one would not ascribe even to an ordinary person has been used to describe, without any semblance of hesitation, for the exalted prophets of the Almighty Allah. This is the proof of the present Bible being distorted.

Just see one reference, Hazrat Yaqu’ub (AS) is told:

Genesis 32:-28

New King James Version (NKJV)

 “Your name shall no longer be called Jacob, but Israel;[a] for you have struggled with God and with men, and have prevailed.” 

Can anyone struggle with God and prevail! And this is written about a prophet. This is a clear proof of these lines having been written by a man and inserted into the Bible. There is no doubt that such denigrating sentences are very painful to go through; but demanding a ban on the Bible for this and going in a court of law requires a lot of rethinking as far as I am concerned.

 

Christians’ and Jews’ centuries-old hostility for Islam is well known. According to Quran, the present age is the age “when they have a great deal of hatred and jealousy in their heart and will always speak against Islam”. This animosity has come in front of us in the form of blasphemy against Allah and Prophet (PBUH). In comparison to them Muslims take blasphemy against Jesus Christ and Moses as a ‘Kufr’ (disbelief in Islam). This way the Muslims take the denigration of prophets in the Bible as blasphemy. They know the Bible contains deviations; even then they respect it and do not bear its denigration.

These books were there even during the age of the companions of the Prophet and their second and third generations but there is no proof, as per my knowledge, of any ban on them in the history of Islam. These books have not been banned by any Muslim Quazi (Judge). Jews and Christians lived in Islamic rule as a minority for centuries. They have had total religious freedom. Their churches and religious places remained protected.

If these books were not banned or burnt in the times of the companions of the Prophet, why should a band be imposed now, where is the need for doing this?

As per Shari’ah, before taking any step for the elimination of an evil, it is necessary to be sure that the evil will be eliminated forever. If it is in the context of elimination of the evil, the step must be taken; otherwise steps should be taken to create a better atmosphere. It is against the Shari’ah that a new evil is born in the course of the elimination an evil.

Now the question is as to how much is it expected that the Chief Justice of Pakistan will take suo motto action and, putting Bible in the list of blasphemous literature, will ban it? As far as I am concerned there is no such possibility at all.

Another course of action is that a writ petition is filed in the Supreme Court. Will the Supreme Court ban the Bible on a writ petition? If we get very optimistic, we can be 10% sure of the book being banned. And then it is also very important to see as to what will be the reaction of the countries of non-believers. Will the Jews and Christians not talk of banning the Quran, Ma’az Allah? An accursed Christian priest has already given inflammatory speeches and demanded filing a case against the Quran. If the Muslims will ban the Bible, Christian priests will be easily able to convince the Christians to ban the Holy Quran.

One must also take into consideration the fact that whenever a Jew or a Christian has done a comparative study of Quran and Bible, he or she has embraced Islam. We have the examples of Muhammad Asad (formerly an Austrian Jew Leopold Weiss), Mohammed Marmaduke Pickthall (born in England as Marmaduke William Pickthall), and a member of British royal family William Henry Quilliam (who changed his name to Abdullah Quilliam) who embraced Islam after making a comparative study of the Quran. We have to take into consideration whether it will be a loss for us or not from a religious point of view if in response to any of our steps like banning Bible; publishing of Quran is also stopped in the land of kufr (unbelief).

Our great scholars of Islam have always competed with Christianity as a scholar with answers to every question of Christian scholars. Reasoning and providing evidence are the only ways one can defeat them with. One should neither denigrate any religious book by banning it nor can any one be forced to embrace a religion.

The Ulema-e-Karam (revered Islamic religious scholars) who have decided to file a writ petition in the Supreme court are far superior in knowledge and status than students like me. But the fact remains that there are many more Ulema e Keram in Pakistan with even greater knowledge and even higher status than the ones whose names have been published in regard to filing a writ petition for banning the Bible. Have these revered Ulema been consulted on such an important issue? If they are also in favour of banning the Bible, why only the names of Ulema of second and third level have been brought in the open?

The objective of these questions from a minor student like me is to ask if we are prepared to face the strong reaction from the Christians in response to the banning of the Bible and to make sure whether this step is according to Shari’ah law or not.

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/the-demand-for-ban-on-bible-in-pakistan--بائبل-پر-پابندی-کا-مطالبہ/d/4835

 

بائبل پر پابندی کا مطالبہ

مولانا محمد ازہر

روز نامہ ‘‘اسلام’’ کے مطابق جمعیت علما اسلام (س) کے مرکزی سیکریٹری جنرل مولانا عبدالرؤف فاروقی نے کہا ہے کہ عیسائیوں کی مذہبی کتاب بائبل میں انبیا کرام علیہم السلام کی توہین اور شدید ترین گستاخی کےمضامین موجود ہیں اس لیے چیف جسٹس آف پاکستان از خود نوٹس لے کر 295سی کے تحت بائبل کو توہین رسالت کے لٹریچر میں شامل کر کے اس پر فوری پابندی کا فیصلہ کریں۔ ان کی پریس کانفرنس میں علامہ ظہیر الدین بابر، مولانا عبدالرب امجد، مولانا مجیب الرحمٰن انقلابی ، مولانا اسد فاروقی، سابق پادری شفقت ،مولانا اعظم حسین ،مولانا محمود الرشید حدوٹی اور مولانا محمد عاصم مخدوم بھی موجود تھے۔(‘‘اسلام ’’ 31مئی 2011)

علما کرام کا مزید کہنا تھا کہ ‘‘ہم نے وکلا کا ایک پینل تشکیل دیا ہے جو ایک رٹ کی تیاری کررہے ہیں اور اگرچیف جسٹس آف پاکستان نے از خود نوٹس نہ لیا تو مناسب مدت کے بعد یہ رٹ سپریم کورٹ میں دائر کی جائے گی اور مسیحی کلیسا کو دفاع کا پورا حق حاصل ہوگا۔’’

جہاں تک بائبل میں انبیا علیہم السلام کے متعلق دلآزار عبارات کا تعلق ہے تو اس میں کوئی شبہ نہیں کہ انہیں نقل کرنا بھی طبیعت پر گراں گزراں ہیں۔ جن اخلاقی برائیوں کی نسبت کسی عام شریف آدمی کی طرف کرتے ہوئے بھی احتراز کیا جاتا ہے ۔ انہیں بلا تامل اللہ تبارک وتعالیٰ کے برگزیدہ پیغمبروں کی طرف منسوب کیا گیا ہے۔ یہ اس بات کی داخلی شہادت ہے کہ موجود ہ بائبل تحریف شدہ ہے ۔ صرف ایک حوالہ ملا حظہ ہو۔ حضرت یعقوب علیہ السلام کو کہا گیا:

‘‘تیرا نام آگے کو یعقوب نہیں بلکہ اسرائیل ہوگا کیو نکہ تو نے خدا اور آدمیوں کے ساتھ زور آزمائی کی’’ ۔ (کتاب پیدائش باب 32ورسز 24، 29)

بھلا کوئی خدا کے ساتھ زور آزمائی کرسکتا ہے اور پھر نبی ،کیا یہ اس کی کھلی ہوئی دلیل نہیں کہ یہ خود ساختہ عبارتیں بائبل میں داخل کی گئی ہیں اس میں بھی کوئی شک نہیں کہ انبیا کرام علیہم السلام کے متعلق اس طرح کی عبارتیں پڑھ کردل دکھتا ہے مگر اس بنیاد پر بائبل پر پابندی لگوانے اور عدالت میں جانے کا اعلان ہماری ناچیز رائے میں ابھی گہرے غور وفکر کا متقاضی ہے۔

یہود ونصاریٰ کی اسلام و مسلم دشمنی کی تاریخ پر صدیوں کی گواہی موجود ہے۔ موجود ہ دور قرآن کریم کی اصطلاح میں وہ دور ہے کہ ‘‘عداوت ودشمنی بے اختیار ان کے مونہوں سے نکلی  پڑتی ہے اور ان کے سینوں میں مخفی عداوت اس سے کہیں زیادہ ہے’’۔اس دشمنی کا اظہار سرکار دوعالم صلی اللہ علیہ وسلم کی شان اقدس میں گستاخی اور قرآن کریم کی اہانت کی شکل میں امت کے سامنے آچکا ہے ۔ ان کے بالمقابل مسلمان حضرت موسیٰ علیہ السلام اور حضرت عیسیٰ علیہ السلام سمیت کسی بھی پیغمبر کی بے ادبی وتوہین کو کفر سمجھتے ہیں ،اسی طرح الہامی کتب تورات ، زبور، انجیل، جن کا مجموعہ بائبل ہے ،کہ محرف ہونے کے باوجود ان کی بے ادبی جائز نہیں سمجھتے ۔قرآن کریم کے بیان کے علاوہ متعدد تاریخی داخلی اور خارجی شہادتیں اسی موجود ہیں جو تواۃ وانجیل کے محرف ہونے کو ثابت کرتی ہیں۔ یہ محرف کتب دورِ نبوۃ میں بھی موجود تھیں اور عہد صحابہ کرام رضی اللہ عنہم و تابعین میں بھی ،تاہم یہ حقیقت ہے کہ کسی دور میں ان پر پابندی لگانے کا کوئی مطالبہ یا ذکر اسلامی تاریخ میں ( ہماری معلومات کے مطابق) نہیں ملتا ۔ نہ ہی کسی مسلمان قاضی نے کبھی ان کتب پر پابندی عائد کی۔ یہود ونصاریٰ اقلیت کی حیثیت سے صدیوں تک اسلامی ریاستوں میں مقیم رہے۔ جہاں انہیں مکمل مذہبی آزادی رہی، ان کے گھر اور عبادت گاہیں بھی محفوظ ہیں۔

حضرات انبیا کرام علیہم السلام کے متعلق گستاخانہ مواد ان کتابوں میں اس وقت بھی موجود تھا۔ اس لیے یہ بات قابل غور ہے کہ اگر خیر القرون میں ان کتابوں پر پابندی نہیں لگائی گئی یا انہیں نذر آتش نہیں کیا گیا تو موجودہ دور میں وہ کون سے عوامل ہیں ،جن کی بناپر ایسا کرنا ضروری ہوگیا ہے؟ شریعت کے اصولوں کے مطابق کسی منکر (برائی) کے ازالے کی کوشش سے پہلےیہ جائزہ لینا بھی ضروری ہے کہ ہمارے اس اقدام سے برائی کا خاتمہ ہوسکے گا یا نہیں ۔ اگر برائی کے خاتمے کا امکان ظنِ غالب کے درجے میں ہوتو اس کے خلاف اقدام کیا جائے ورنہ حالات کو مزید ساز گار بنانے کے لئے محنت کی جائے۔ اس لیے کہ کسی منکر کا ازالہ کرتےہوئے اس سے بڑی کسی برائی کا پیدا ہوجانا ،منشا ئے شریعت کے خلاف ہے۔

اس تفصیل کے بعد یہ پہلو قابل غور ہے کہ اس بات کا کتنے فیصد امکان ہے کہ چیف جسٹس آف پاکستان سوموٹو ایکشن لیتے ہوئے بائبل پر توہین انبیا کرام کا الزام ثابت کر کے اس کی اشاعت پر پابندی لگادیں گے؟ ہماری ذانست میں یہ امکان ایک فیصد بھی نہیں ہے۔

دوسری صورت یہ ہے کہ عدالت اعظمیٰ میں رٹ دائر کی جائے ۔ کیا ا س رٹ کے نتیجے میں سپریم کورٹ بائبل پر پابندی عائد کردے گی؟ رجائیت سے کام لیتے ہوئے اس کا امکان بھی دس فیصد تک کیا جاسکتا ہے۔ اس کے بعد یہ دیکھنا بھی ضروری ہےکہ اس طرح کی تحریک یا فیصلے کا رد عمل عالم کفر پر کیا ہوگا؟ کیا یہود ونصاریٰ اس کے جواب میں معاذ اللہ قرآن کریم پر پابندی کی بات نہیں کریں گے جبکہ قبل ازیں بعض ملعون پادری قرآن کریم پرمقدمہ چلانے کا اشتعال انگیز اعلان کرچکے ہیں ۔ ان کے اس بے ہودہ پن کو عوامی سطح پر ناپسندیدگی کی نظر سے دیکھا گیا۔ لیکن سوال یہ ہے کہ جب مسلمان بائبل پر پابندی کی بات کریں تو پادری ،عیسائیوں کو بآسانی قائل کرسکیں گے کہ معاذ اللہ قرآن کریم پر بھی پابندی لگنی چاہئے۔

اس پہلو پر بھی غور کیا جانا چاہئے کہ بہت سے سلیم العقل یہودیوں اور عیسائیوں نے جب قرآن کریم اور بائبل کا تقابلی مطالعہ کیا تو وہ اپنے ضمیر کی آواز کے مطابق حلقہ بگوش اسلام ہوگئے ۔ جرمنی کے یہودی لیو پولڈ (محمد اسد) مارما ڈیوگ پکتھال (محمد پکتھا) اور برطانوی شاہی خاندان کے رکن مسٹر کریلم (عبدللہ) اس کی واضح مثالیں ہیں۔ خدانخواستہ ہمارے کسی اقدام کے نتیجے میں دیار کفر میں قرآن کریم کی اشاعت وطباعت پر پابندی لگ جاتی ہے تو یہ دینی نقطہ نظر سے ہمارے لیے خسارے کی صورت ہے یا نہیں ؟

اس پہلو پر بھی سوچنا چاہئے کہ ماضی قریب میں ہمارے اکابر علما نے مسیحیت کا مقابلہ علمی میدان میں دلائل سے کیا ہے۔ دلیل ہی ایک ایسا ہتھیار ہے جس سے آپ مدمقابل کو زیر کرسکتے ہیں ۔ مذہبی کتب پر عدالتی پابندیوں سے قلوب کو مسخر نہیں کیا جاسکتا ، نہ کسی کو زبردستی دائرہ اسلام میں  میں لایا جاسکتا ہے اور نہ ہی ہمارے دین میں اکراہ یا زبردستی کی اجازت ہے۔ جن علما کرام نے اس مسئلے میں عدالت میں رٹ دائر کرنے کا اعلان کیا ہے ان کا علمی مقام و مرتبہ ہم جیسے طالب علموں سے بہت بلند ہے مگرپھر بھی یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ پاکستان میں ان سے زیادہ رفیع المرتبت اہل علم ارباب افتا اور ان کے اساتذہ کے درجے کے بزرگ علما موجود ہیں  ، کیا اس قدر اہم مسئلے میں ان حضرات سے ضروری مشاورت کا اہتمام کی گیا ہے یا نہیں؟ اگر وہ حضرات بھی بائبل پر پابندی لگوانے کے حق میں ہیں تو نسبتاً دوسری اور تیسری صف کے صرف چند ہی علما کے نام منظر عام  پرکیوں لائے گئے ہیں؟

ان طالب علمانہ اشکالات و استفسارات کا مقصد صرف یہ ہے کہ عدالت ِ عظمیٰ میں رٹ دائر کرنے سے پہلے اچھی طرح جائزہ لے لیا جائے کہ یہ اقدام مقاصد شریعت سے ہم آہنگ ہے اور اس کے نتیجے میں نصاریٰ کی طرف سے جو شدید ردعمل ہوگا، ہم اس کا موجہہ کرنے کے لیے تیار ہیں؟

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/the-demand-for-ban-on-bible-in-pakistan--بائبل-پر-پابندی-کا-مطالبہ/d/4835

 

Loading..

Loading..