New Age Islam
Mon Sep 21 2020, 05:52 AM

Urdu Section ( 18 Sept 2011, NewAgeIslam.Com)

May the Message from Ka’aba Awaken the Muslims of the World (Concluding Part) رابطہ عالم اسلامی کی مکہ مکرمہ کانفرنس

By Maulana Khalid Saufullah Rahmani

(Translated from Urdu by Arman Neyazi, NewAgeIslam.com)

In all, the following four issues were discussed in Ra’abta Alam e Islami Mecca Conference.

(!) What are the problems being faced by Islamic world and its causes in the present circumstances.

(2) The rights and duties of the Islamic Governments and the masses.

(3) A system Discussion where all the Muslim groups and organisations could discuss with each other so that different line of thoughts does not exist among them and the Islamic world could be saved from getting disintegrated.

(4) The solution of the problems of the Islamic world.

In the light of the above mentioned a Declaration with seven important proposals was unanimously accepted and issued. It has important messages for the Islamic world.

First proposal of the Declaration is based on the importance of “Unflinching Faith” on the Islamic Shariah. It wishes Islamic world to provide ways and means of teaching Deen and Shariah to the younger generation. It requests Muslim governments and its masses to be committed to bring Shariah in their lives. It asks to understand the moderate means of Islam and to act accordingly. This proposal addresses the government and the people asks to strive to solve the problems being faced by the Islamic world and to try to safeguard the lives and properties of the Muslim brethren at all cost.

Second proposal was under the heading of “Prevention of Temptation”. This basically asks to keep oneself away from the self ego as this is the main reason of all the problems. It asks the governments to establish pure Islamic system which is based on the development of human being, goodwill for everyone, justice, and internal democracy. This also asks to accept all the modern and progressive reforms being under the limitations of Islamic Shariah because the ambiguities hidden in these reforms create misunderstandings.

Third proposal was concerning “Reforms”. Under this headline the Ulema have been requested to help the head of the Islamic states maintain the Islamic system of governance. The ‘reform’ proposal asks to introduce the great examples of ‘Khilafat e Rashida” which carried great balance between the rights and necessities of the governments and the masses.

In this context another important point raised is that Islamic governments have been asked to establish independent judiciaries with a right to deliver judgements according to Islamic Shariah. Some important advises for getting rid of the poverty of Muslim countries were also noted down in this proposal. It also suggests establishing one “Shared Islamic Market” also.

“Rulers and their relationship with the masses” is the fourth proposal of the Declaration. A balance between the two has been tried to be created in this chapter. This proposal asks the governments and the people to tread the path of Shariah, to cooperate each other in social, economical and all other such matters as per the path shown by Shariah. Both are asked to perform their duties related to every community and class and never get involved in tyranny of any kind. Running a government is a very difficult task hence taking help of the Books, noble souls and taking the path shown by them is important.

The Head of the States and the Rulers taking the path shown by Allah and His Shariah do have a right of fullest cooperation of people and guidance of Ulema in the light of Holy Book and Shariah. It has been strongly recommended to resolve all the difference creeping among the Muslim community all over the world. The proposal says this is the main cause of their internal enmity and enemies’ stronghold on them.

The issue of Islamic Organisations is also in it. An invitation of cooperation has been extended to all the Islamic organisations on the government and individual basis. Governments and public have been requested to extend all help to such organisations which are in contact with Ulema, on regular basis, to resolve the problems faced by Muslims. It has also been asked to make the Muslims aware of the liberal approach of Islamic studies and teachings. It also has been agreed upon that non-Muslims should be given lessons in Islamic system of governance and its teachings of uniformity.

Sixth proposal of the Declaration is that of Source of Communication and Culture. It has been widely agreed and accepted that communication and culture are two things which are lacking among the Muslims. It has been requested from the organisations working in the field of communication and culture to get along with Ulema and Islamic scholars and reach out to common Muslims with the reforms taking place in culture and civilisation.

Last proposal of the Declaration is “Hawwar” (Discussion). Importance of ‘discussion’ has been pointed out and highlighted and it has been agreed upon that it is one of the main sources of creating brotherhood. Muslims have been asked to establish ‘discussion’ among them and with the non-Muslims as well so that they be taught the fineries of Islam. “Rabta Alam e Islami’ has been asked to send its delegations to different countries to establish ‘discussion’ among Muslim organisations and groups and to ask them to work on the proposals accepted in the Declaration of this conference.

In the end of the Declaration a ‘note of thanks’ has been mentioned on behalf of “Khadim Harmain Sharifain, Shah Abdullah” and  other dignitaries of the government of Saudi Arabia.

One of the most important and major points of this Declaration is to formulate such rules and regulations which is a declaration of rights and duties of Muslim governments, rulers and common masses in the light of Islamic Shariah and Deen. It must also be clarifying the rights of Muslim minorities and their relationship with the people of other religions. It also has to highlight as to how the work of Dawah, and such other works should be done with mutual understanding among all the Islamic organisations and groups.

The fact remains that in the present circumstances it is a very difficult job to keep all the organisations and groups united on the world level. The proposals being accepted in the Ra’abta conference are of great importance for the Muslims all over the world.

Problems of Indian Muslims are a little different from those of the other Islamic countries but the proposal of Discussion is more important for India and other such countries.  It is necessary to bring Ahle Sunnat, Ahle Tashie, Deobandis and Bareilvis on the same table of discussion along with the followers and non-followers.

It is almost unlikely to think that any of the organisations or groups will leave its ‘line of thinking’ but ‘discussion’ may restrict them from unnecessary criticism of others. It can generate a sense of ‘Moderation’ andParticipation’.

‘Moderation’ means: Ulema may not take their differences to the public and keep it limited to the discussions with Islamic scholars. They may safeguard the honour and respect of Sahaba e Keram and Ahl e Bait. They may not call them a ‘Kafir’ whose being a Kafir is not unanimously accepted. They may not try to bring such discussions out of their Madrasas and their special congregations.

And ‘Participation’ means to participate and solve the problems which are common for every section of Muslim society. This joint effort will be beneficial for the whole Millat e Islamia. It will be possible only when people of different school of thoughts will sit together and discuss. It will also restrict us to speak ill of those from our platform with whom we have to share a dais the other day.

May this voice arising from the shadows of the walsl of Khana e Ka’aba awaken the Muslims all over the world and be effective in solving their  problems.  “W Billahil Taufeeque”

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/may-the-message-from-ka’aba-awaken-the-muslims-of-the-world-(concluding-part)--رابطہ-عالم-اسلامی-کی-مکہ-مکرمہ-کانفرنس/d/5513

 

رابطہ عالم اسلامی کی مکہ مکرمہ کانفرنس( آخری حصہ)

خدا کرے دیوار کعبہ کے سایہ سےاٹھنے والی تجاویز غافلوں کو جگانے اور متوجہ کرنے میں موثر ثابت ہوں

مولانا خالد سیف اللہ رحمانی

رابطہ عالم اسلامی کی کانفرنس میں بحیثیت مجموعی چار موضوعات زیر بحث آئے ، اوّل: موجودہ حالات اور دشواریاں کیا ہیں اور اس کے بنیادی اسباب کیا ہیں؟ دوسرے: حکومت اور عوام کے حقوق کیا ہیں اور ان کی ذمہ داریاں کیا ہیں؟ تیسرے : مسلمانوں کے مختلف گروہوں کے درمیان مذاکرات کی اہمیت اور طریقہ کار، تاکہ امت کو انتشار و افتراق سے بچا یا جاسکے، چوتھے: اس وقت عالم اسلام کو جو دشواریاں درپیش ہیں ان کا حل کیا ہے؟ ۔۔ ان ہی موضوعات کے پس منظر میں اختتامی بیان جاری ہوا،جو پوری دنیا کے مسلمانوں کے لئے ایک اہم پیغام کا درجہ رکھتا ہے ، اس بیان میں بحیثیت مجموعی سات مرکزی عنوانات کے تحت تجاویز منظور کی گئیں ۔

ان میں پہلی تجویز شریعت اسلامی پر ثابت قدمی کی اہمیت سے متعلق ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ نوجوان نسل کو دینی حقائق سے واقف کرنا چاہئے، اس کےلئے وسائل فراہم کرنا چاہئے ، مسلم حکومتوں کو بھی اور عوام کو بھی شریعت اسلامی پر عمل کار بند ہونا چاہئے ، اسلام کی میانہ روی کو سمجھتے ہوئے اور غلو سے بچتے ہوئے شریعت کادامن تھا مے رہنا چاہئے ،مذہبی فرقہ واریت سے بچتے ہوئے امت کی صفوں کو متحد رکھنا چاہئے ، حکمرانوں ، علما اور عوام کو باہمی تعاون سے دشواریوں کو حل کرنا چاہئے، نیز ہر قیمت پر شریعت کے مزاج کے مطابق امن وسلامتی قائم رکھنے کو اور جان ومال ،عزت وآبرو کی حرمت کو ملحوظ رکھنا چاہئے۔

دوسرا عنوان تھا ‘‘فتنوں کا تدارک’’۔۔۔۔ ان عنوان کے تحت جو تجاویز منظور کی گئیں، ان میں یہ ہے کہ قتل نفس سے بچنے کا پورا اہتمام کیا جائے کہ یہ زمین میں فساد کاذریعہ ہے، حکومتیں صالح اسلامی نظام قائم کریں ،جو شورائیت ،نیکی کی دعوت ، برائی سے روکنے عدل اورمسلمانوں کی خیر خواہی پرمبنی ہو، نیز ڈیمو کریسی ، آزادی ،عوامی حکومت ،مساوات اور قومیت وغیرہ کی جدید اصطلاعات کو شرعی اصول وضوابط کے دائرے میں رہتے ہوئے ہی قبول کیا جائے: کیونکہ ان اصطلاحات میں جو ابہام اور عموم ہے، اس سے بعض  اوقات غلط فہمیاں پیدا ہوتی ہیں۔

تیسرا عنوان ‘‘اصلاح ’’ کا تھا ۔۔۔۔ اس عنوان کے تحت علما سے خواہش کی گئی ہے کہ وہ مسلم ملکوں کے نظم ونسق کو درست کرنے میں حکمرانوں کی مدد کریں اور جووضعی قوانین شریعت اسلامی سے متعارض ہو ں، ان کا اسلام سے ہم آہنگ کرنے کےلئے مناسب طریقہ کا روضع کریں، خلاف راشدہ اور اسلامی دور کے وہ عظیم نمونے پیش کئے جائیں جو حقوق اور واجبات کے درمیان توازن پر مبنی ہیں اور جن  کے ذریعہ عادلانہ نظام حکومت قائم ہوسکتا ہے، اس ذیل میں ایک اہم بات یہ بھی کہی گئی کہ مسلم حکومتیں آزاد عدالتی نظام قائم کریں اور شریعت اسلامی کے مطابق تمام  مجرمین کے خلاف کاروائی کا انہیں اختیار دیں، اس کے ساتھ ساتھ بعض مسلم ملکوں میں پھیلی ہوئی غربت اور بے روزگاری کے تدارک کے لئے بعض مفید مشورے دیے گئے ،جن میں ایک ‘‘مشترک اسلامی مارکیٹ’’ قائم کرنا بھی ہے۔

تجاویز کا چوتھا عنوان ‘‘حکمراں او ر عوام کے تعلقات ’’ سے متعلق ہے۔۔۔ ان عنوان کے تحت دونوں کے حقوق میں توازن قائم کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔

تجویز وں کا خلاصہ یہ ہے کہ حاکم ومحکوم دونوں کو چاہئے کہ شریعت اسلامی کو اپنے لئے حکم بنائیں ، اجتماعی اور اقتصادی مسائل میں بھی اسلام پرعمل کریں ، تمام طبقات کے حقوق ادا کریں اور ظلم سے اپنا دامن بچائیں ،حکمرانی ایک اہم ترین ذمہ داری ہے، جس کا حق ادا کرنے کے لئے کتاب وسنت اورسلف صالحین کے طریقہ کو مضبوطی سے تھامے رہیں، اللہ کی شریعت نافذ کرنے والے مسلمان حاکموں کا حق ہے کہ عوام ان کے ساتھ خیر خواہی اور فرمانبرداری کا رویہ اختیار کریں، علما کی ذمہ داری ہے کہ ہو حکمرانوں کو کتاب وسنت کی روشنی میں مشورے دیں اور انہیں اسلامی احکام کے تقاضوں سے واقف کرائیں ،نیز دعوت دین اورمسلم معاشروں میں پائی جانے والی غلط فہمیوں کے ازالہ پر خصوصی توجہ دی جائے کہ مسلمانوں کی موجودہ کمزوری اور دشمنوں کے تسلط کا بنیادی سبب اسی کی کمی ہے۔

‘‘اسلامی تنظیموں ’’ کا عنوان بھی اس بیان میں مستقل طو رپر شامل ہے، جس میں سرکاری اور عوامی سطح پر اسلامی تنظیموں کے درمیان تعاون کی دعوت دی گئی ہے،اس قسم کی تنظیموں کا خصوصی تعاون کرنے کی حکومت اور عوام سے گذارش کی گئی ہے، نیز ان سے کہا گیا ہے کہ علما کے ساتھ مل کر مسلمانوں کے درمیان پائے جانے والےاختلافات کو حل کریں اور ان میں اعتدال پیدا کرنے کی کوشش کی جائے، یہ بات بھی کہی گئی ہے کہ اسلامی تعلیمات میں جو اعتدال اور میانہ روی ہے مسلمانوں کو اس سے روشناس کرانا چاہئے اورغیر مسلموں کو مساوات اور امن وسلامتی پرمبنی اسلام نظام حیات سے آگاہ کرنا چاہئے، نیز خاص کر مسلمان اقلیتوں چیر یٹیبل خدمات کی طرف توجہ دلانی چاہئے۔

چھٹا عنوان ‘‘ذرائع ابلاغ اور ثقافت’’ کا ہے۔۔۔۔ ان عنوان کے تحت کانفرنس میں مسلمانوں میں کام کرنے والے ابلاغی اور ثقافتی اداروں سے اپیل کی گئی ہے کہ وہ علما ،اہل دانش اور دعوتی تنظیموں کے ساتھ مربوط رہیں اور اصلاحی پہلوؤں کو لوگوں تک تک پہونچا ئیں۔

آخری عنوان ‘‘حوار’’ یعنی مذاکرات کا ہے  ، جس میں یہ بات کہی گئی ہے کہ مذارکرات ،مسائل کو حل کرنے اور مفاہمت پیدا کرنے کا ایک بہترین ذریعہ ہے اور اس پر زیادہ سے زیادہ توجہ دی جائے ، جو خود مسلمانوں کے مختلف گروہوں کے درمیان بھی ضروری ہے اور دوسرے مذاہب کے لوگوں کے ساتھ بھی، یہ بات بھی کہی گئی ہے کہ ‘رابطہ عالم اسلامی ’ اسلامی ملکوں کو اپنے وفود بھیجے ،جو سیاسی ،مذہبی، سماجی اور ثقافتی قائدین ،اہم اداروں اور تنظیموں سے ملاقات کرے اور ان اس کانفرنس کی تجویز وں پر عمل کرنے کی ان کو ترغیب دے۔۔۔ بیان کےاخیر میں خادم حرمین شریفین شاہ عبداللہ ،دوسرے ذمہ داران حکومت اور رابطہ عالم اسلامی کا اس اہم پروگرام کے انعقاد پر شکریہ ادا کیا گیا ۔

اس بیان کی ایک اہم تجویز ممتاز فقہا اور ماہرین کی مدد سے ایک ایسا مجموعہ قوانین تیار کرنا ہے جو شریعت اسلامی کی روشنی میں حکمرانوں اور محکوموں کے فرائض وحقوق کو بیان کرنا ہو ا ن کا حل پیش کرتا ہو، مسلم اقلیتوں کے احکام کو واضح کرتا ہو، مختلف مذاہب کے ماننے والوں کے ساتھ ان کے رابط کی نوعیت کیا ہو، نیز دعوت دین، تعارف اسلام اور مختلف دوسرے کاموں کو کس طرح باہمی تعاون سے انجام دیا جائے؟ اس پر روشنی ڈالتا ہو۔

حقیقت یہ ہے کہ موجودہ حالات میں عالمی سطح پر مسلمانوں کو جوڑے رکھنے والے ایسے ادارہ کا وجود نہایت غنیمت ہے،رابطہ نے جو تجویز یں منظور کی ہیں ،وہ تمام مسلمانوں اور خاص کر عالم اسلام کے لئے بڑی اہمیت کی حامل ہیں، مسلمانان ہند کے مسائل کو عالم اسلام سے کسی قدر مختلف ہیں، لیکن مسلمانوں کے مختلف فرقوں کے درمیان مذاکرات ایک ایسی بات ہے کہ اس کی جس قدر ضرورت مسلم ملکوں میں ہے ،شاید اس سے بھی بڑھ کر ہندوستان اور ہندوستان جیسے ممالک میں ہے، ضرورت ہے اہل سنت اور اہل تشیع میں مذاکرات کیے ،ضرورت ہے دیوبندی او ربریلوی حضرات کو گفتگو کی میز  پرلانے کی اور ضرورت ہے مقلدین اور غیر مقلدین کو مل بیٹھ کر گفتگو کی۔

یہ بات تو انہونی معلوم ہوتی ہے کہ کسی گروہ سے یہ تو قع رکھی جائے کہ وہ اپنے افکار سے دست بردار ہوجائے، لیکن ان مذاکرات کے دوفائدے حاصل ہوسکتے ہیں ، ایک اعتدال ،دوسرے : استراک ،اعتدال سے مراد یہ ہے کہ بے موقع او ر بے محل اختلافی امور کوزیر بحث نہ لائیں ،علما وعوام میں اختلافات کو نہ لے جائیں، علمی مجلسوں تک محدود رکھیں ،صحابہ اور اہل بیت کی عظمت کو ملحوظ رکھیں، جن کا کافر ہونا متفق علیہ نہیں ،ان کی تکفیر سے بچیں ،تمام سلف صالحین کا احترام کریں، اور اختلافی مسائل کو اپنی درسگاہوں او راپنی خصوصی مجلسوں کے دائرے سے باہر لانے کی کوشش نہ کریں۔

اشتراک سے مرادیہ ہے کہ بہت سے مسائل وہ ہیں، جو پوری امت کے لئے مشترک ہیں، ایسے مشترک مسائل کے لئے سب لوگ ایک پلیٹ فارم پر جمع ہوں، اور‘‘ بنیان موصوص ’’بن کر باہمی اشتراک سے اپنے مسائل حل کریں ،یہ اشتراک پوری ملت کے لئے سود مند ہوگا، لیکن یہ اسی وقت ہوسکے گا، جب کہ مختلف مکاتب فکر کے ا ندر اعتدال و میانہ روی پیدا ہو، ایک دوسرے کی رعایت ہو، کیو نکہ اگر ایک اسٹیج پر ہم ایک دوسرے کے  خلاف بدزبانی کریں گے تو یہ کیو نکر ممکن ہوگا کہ دوسرے اسٹیج پر ایک دوسرے کے ساتھ پہلو بہ پہلو بیٹھ کر اتحاد و یکجہتی کا مظاہرہ کرسکیں اور متفقہ قدم اٹھا نے میں ایک دوسرے کے معاون ہوں، خدا کرے دیوار کعبہ کے سایہ سے اٹھنے والی یہ تجویز یں سوئے ہوئے دلوں کو جگانے اور غافلوں کو متوجہ کرنے میں مؤثر وکار گر ثابت ہوں۔ وباللہ التوفیق۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/may-the-message-from-ka’aba-awaken-the-muslims-of-the-world-(concluding-part)--رابطہ-عالم-اسلامی-کی-مکہ-مکرمہ-کانفرنس/d/5513

 

Loading..

Loading..