New Age Islam
Wed Dec 08 2021, 10:54 AM

Urdu Section ( 20 Aug 2013, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Pakistan: Taliban Have Won the Elections , But Where are they? پاکستان: طالبان انتخابات جیت گئے ، لیکن وہ کہاں ہیں؟

 

 بیرسٹر محمد علی سیف، نیو ایج اسلام

20 مئی 2013

( انگریزی سے ترجمہ۔ نیو ایج اسلام)

پاکستان میں انتخابات ختم ہو گئے ہیں۔ اس میں تقریبا تمام سیاسی جماعتوں نے پورے دل سے حصہ لیا۔ مذہبی، فرقہ وارانہ، لبرل، سیکولر، نسلی، لسانی اور قوم پرست سیاسی ایجنڈوں کے ساتھ تمام سیاسی جماعتوں اور گروپوں کی طرح، پاکستان تحریک طالبان، مذہبی عسکریت پسند، نے بھی اس کے حامیوں کے ذریعے ایک نیابت کے  انداز میں بالواسطہ طور پر حصہ لیا اور اس کے بم دھماکے کی مہم کے ذریعے براہ راست حصہ لیا  ۔ ان کی شرکت کا  طرز ایک طرف، حقیقت ہے کہ انہوں نے  انتخابات میں بہت اچھی طرح سے کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔

اب تک جہاں تک  سیاست دانوں اور عوام کا تعلق ہے کہ انہیں  احساس ہوا یا نہیں ، اور ان کے مستقل  الجھن کے باوجود حقیقت یہ ہے کہ اب انتخابات کی بشا شت  ختم ہو چکی ہے۔ پاکستان کے لئے ایک نئی صبح کے آغاز اور ایک لہر کی تمام امیدیں ختم ہو چکیں  ہیں جن کے بارے میں یہ امید کی جا رہی تھی کہ وہ  کرپشن اور اقربا پروری کو ختم کر دے گی  ۔ کچھ لوگوں کے لئے، اس قوم کے لئے ایک نئی صبح ہے، دوسروں کے لئے یہ اب بھی ایک سیاہ رات ہے۔

 یہ واضح ہے کہ طاقت اس  میوزیکل چیٔر  کا یہ کھیل پہلے سے لکھے گئے نوشتے  کے مطابق کھیلا گیا ۔ مسلم لیگ ن، پرانے امیرانہ، خاندانی، خاندان اور برادری پر مبنی سیاسی روایات کے ایک نمائندے کو ، اس کے  سابقہ مدت حکومت میں  بڑے پیمانے پر کرپشن، طاقت کا غلط استعمال اور ججوں کا  غلط استعمال کی ایک تاریخ کے ساتھ، پاکستان پیپلز پارٹی سے بدل گیا ہےجو کہ  خود کرپشن، سیاسی نااہلی اور بری حکمرانی کے تمام معیار سے آگے نکل چکی ہے ۔ اس طرح، ایک پریشانی کو دوسری پریشانی کی جگہ پر رکھ دیا ۔ ان  تمام مسلح انقلابیوں کے صدر اور ڈیسک ٹاپ دانشوروں کا اہم احساس، جنہواں نے متواتر ایک نئے طلوع صبح کی پیشن گوئی کی ہے، یہ ہے کہ یہ کوئی نئی صبح کا آغاز نہیں ہے ۔ وہ لوگ جو ایک نئی صبح کے آغاز کی پیشن گوئی کر رہے ہیں انہیں یہ  سمجھنا چاہئے کہ تبدیلی آرزومند سوچ اور مغالطے سے نہیں آتی ، بلکہ غلط فہمی کے شکار ٹی وی اینکرز ہر چیز پر اپنی متعصب رائے کا اظہار ہر جگہ کر رہے ہیں ، جو کہ  پاکستان کے  غیر منظم اور بے ضبط نجی میڈیا کا طرۂ  امتیاز بن گیا ہے ۔

تحریک انصاف کے رہنما عمران خان کی ایک ایسے سونامی کی پیشن گوئی جو  کرپشن کو  ختم کر دے گی پانی ایک ایسا چھو ٹا سا بہاؤ  ثابت ہوا جو ندی کے ساحل سے تجاوز نہیں کر سکتا  ۔ بلکہ تحریک انصاف نے  خیبر پختونخواہ صوبے میں اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیاہے لیکن وہ وہاں بھی جماعت  اسلامی اور آزادانہ طور پر منتخب ارکان کے ساتھ اتحاد بنائے بغیر حکومت بنانے کے قابل نہیں ہے۔ ایک خاندان کی پارٹی کے سربراہ نواز شریف جو کہ ماضی میں کرپشن اور سنگین  سیاسی نادانیوں کے لئے بدنام زمانہ ہیں  ایک سادہ اکثریت کے ساتھ اقتدار میں واپس آ گئے ہیں ۔ وہی قوم جو اقتصادی بدحالی اور سیاسی استحصال کا رونا رو رہی تھی جب انہیں ماضی میں ان کی  غلطیوں کو سدھارنےکا ایک موقع ملا تو  ایک بار پھر اس نے مختلف چہروں کے بجائے انہیں  پرانی طاقتوں کو منتخب کر کے انہیں  غلطیوں کا ارتکاب کیا ۔ ایسی کوئی قابل ذکر تبدیلی نہیں  ہوئی اور قوم نے اپنی مرضی سے اسی پرانے  دستور و ضابطے  کو قبول کر لیا  ہے۔

اس  انتخاب میں چند قابل توجہ نکات ہیں،پاکستانیوں نے اپنے ماضی سے کچھ نہیں سیکھا اور اب بھی ان کے اپنے ہی پاؤں پر کلہاڑی مارنے میں خوش  ہیں؛ ان کی یاد داشت کو نسیان  لاحق ہو گیا ہے اور ایسا لگتا ہے کہ انہیں  ان کے استحصال کرنے والوں  کے گزشتہ کارنامے یاد نہیں ہیں ؛ وہ ہر چند سال کے بعد ان    لوگوں کو بھول جاتےہیں  جنہوں نے  ان کی  معیشت، امن و امان وغیرہ کو  تباہ و برباد کر دیا ہے ، اور ایک   معاف کرنے والی ماں کی  طرح بار بار ان  پر اپنی مہربانی کرتے ہیں ؛ وہ  ان رہنماؤں کے ساتھ بہت خوش ہیں جو  کہ  اس حد تک موقع پرستانہ  اور اقربا پروری کی سیاست کرتے ہیں کہ ان کی جماعتوں کو  بلا توسط ان کے خاندان کے ارکان کے ذریعہ منظم کیا جا تا ہے اور جن کے کرپشن اور نا اہلیت کی داستان بے مثال ہے؛ اور وہ روتے ہیں  اور ان کے سیاسی رہنماؤں کی غلطیوں کی شکایت کرتے ہیں، تاہم، ماسوکزم کے  انداز میں انہیں  بار بار ووٹ دیتے ہیں تاکہ وہ بار بار ان کی  عصمت دری کر سکیں۔

پاکستان کو انتہا پسندی کی وجہ سے بہت نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ آئی ایس آئی اور انٹیلی جنس ایجنسیوں، را، سی آئی اے، موساد اور تقریبا تمام خفیہ اداروں پر ہر جگہ تنقید کرنا قوم کے لئے ایک فیشن بن گیا ہے،  پاکستان پر قبضہ کرنے کے لئے ان کی تجویز میں مذہبی انتہاپسندوں کو پناہ دینے کے لئے، لیکن وہی لوگ  اپنی مرضی سے انتخابات میں انہیں شدت پسندوں کو منتخب کرتے ہیں ۔ مثال کے طور پر، واپس آنے والے ہمارے نئے ارکان پارلیمنٹ کے پاس بہت سارے  فرقہ وارانہ اور عسکریت پسند تنظیموں کے متشدد  کارکن ہیں جو  ان کے پر تشدد پس منظر کی وجہ سے مشہور ہیں ۔ ان افراد کو مسلم لیگ نواز اور دیگر سیاسی پارٹیوں کی طرف سے پارٹی ٹکٹ دیئے گئے تھے ۔ الیکشن کمیشن نے ان کے ماضی کے اسناد اعتبار کو نظر انداز کیا اور انتخابات میں  حصہ لینے کی اجازت دے دی۔ ایک طرح سے یہ انتخاب بھی صرف پنجاب صوبے میں لڑا گیا تھا۔ دوسرے صوبوں میں الیکشن ایک میدان جنگ کی طرح  شرائط کے تحت لڑا کیا گیا تھا۔ فی الحال  موجودہ پارلیمنٹ پر پنجاب کی پارٹی مسلم لیگ ن کا غلبہ رہا ہے جس کی موجودگی دوسرے صوبوں میں برائے نام ہے۔ انتہا پسند جماعتیں عسکریت پسند متشدد جماعتوں کے اعتماد سے لطف اندوز ہو رہی ہیں۔ ان جماعتوں نے  بے رحمی کے ساتھ  ممکنہ سیاسی حریفوں پر حملہ اور انہیں ان کی سیاسی مہم کو ترک کرنے پر مجبور کر کے مسلم لیگ ن کی فتح کے لئے پورے دل سے مہم چلائی ہے ۔ دیگر تمام سیکولر اور لبرل سیاسی جماعتوں کو ان کے  اثر و رسوخ والے علاقوں میں وحشیانہ طور پر  ھدف بنایا گیا   تھا جبکہ مسلم لیگ ن کو  پنجاب کے اپنے گڑھ میں ایک پرامن اور دہشت گردی سے آزاد  کھیل کا میدان فراہم کیا گیا تھا۔ بدلے میں پاکستان مسلم لیگ (ن) نے  اپنے سیاسی پلیٹ فارم کی پیشکش  اور عسکریت نواز کارکنوں کو ٹکٹ دیکر اور پارلیمنٹ میں ان کے داخلے کے  کیلئے سہولتیں فراہم کر کے اپنی داد و تحسین کا اظہار کیا  ۔ اس حقیقت میں کوئی شک نہیں ہے کہ انتخابات کے نتائج مذہبی عسکریت پسند گروپوں کے سیاسی ایجنڈے کے مطابق ہیں۔ جن  پارٹیوں کو ان کی انتخابی مہم کے دوران خفیہ قتل، بم دھماکوں اور خود کش حملوں کا نشانہ بنایا گیا تھا وہ بری طرح ناکام ہوئی ہیں، اور جنہیں ایک محفوظ کھیل کا میدان فراہم کیا گیا تھا  وہ پارلیمنٹ میں واپس آگئے۔ صرف ایم کیو ایم ایک استثناء ہے جس نے ان عسکریت پسندوں کی طرف سے مسلسل حملوں کے باوجود کراچی میں اپنی پوزیشن کو برقرار رکھا ہے۔ اب انتخابات کے نتائج کے خلاف مختلف شہروں میں احتجاجی مظاہرے ہو  رہے ہیں۔ خاص طور پر پی ٹی آئی مسلم لیگ ن کے ذریعہ  مبینہ طور پر دھاندلی کے خلاف لاہور میں احتجاج میں سر گرم ہے اور ایم کیو ایم کے خلاف کراچی میں ۔ جس طرح اس قسم کے واقعات سے کچھ بھی حاصل نہیں ہوتے اسی طرح اس قسم کے احتجاجی مظاہروں سے بھی کچھ حاصل نہیں ہو گا ۔ بھانپنے کے قابل  مستقبل کے لئے ایک سیاسی حقیقت یہ رہ جاتی ہے کہ  قومی پارلیمنٹ پر زیادہ سے زیادہ نشستوں والے  سب سے بڑے صوبے پنجاب کے  ساتھ مسلم لیگ ن کا غلبہ ہے، اور خیبر پختونخواہ  پر پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی)، جماعت  اسلامی اور جمعیت علماء اسلام (جے یو آئی)کا غلبہ ہے ۔ اس تینوں  جماعتوں میں سے ہر  ایک واضح  طالبان حامی موقف رکھتے ہیں اور اسی ایجنڈے پر انتخابات میں حصہ لیا  ہے۔ اینٹی طالبان فورسز اپنے زخم چاٹ رہی ہیں اور اپنے  مردوں کا  ماتم کر رہی ہیں۔

انتخابات کے بعد کے متعلق صورت حال کا ایک اہم اور دلچسپ پہلویہ ہے کہ عسکریت پسندوں کی طرف سے کوئی دہشت گرد تصادم نہیں  ہو اہے  ۔ سوال یہ ہے کہ ایسا کیوں ہے ؟ کیا عسکریت پسندوں نے چھٹیوں پر جانے کا فیصلہ کر لیا ہے  اور اپنی  چھٹیوں کا لطف لے رہے ہیں یا حقیقت یہ ہے کہ وہ بھی ان کے حامیوں کی انتخابی فتح کی خوشی منا رہے ہیں ؟ اس پر غور کرنا ہم  پاکستانی عوام کا کام ہے۔ لیکن کیا  ہم نے سنجیدگی سے کبھی اس طرح کے سوالات پر غور کیا ہے؟

  اس منظر نامے میں پاکستانی مستقبل کی سمت کو نواز شریف کےذریعہ منظم کیا جائے گا پاکستان کے  وزیر اعظم کے طور پر جن کے پہلے کے دو ادوار اور وہ   حماقت  جو انہوں نے کی ہیں بالکل ہی پرانی یادیں نہیں ہیں ۔ فطرتاً ایک مقابل ہیں ہے اور ریاستی اداروں کے ساتھ تصادم کی کی سر براہی  کرنے کے لئے اشتعال کے خلاف مزاحمت ان کے لئے مشکل ہو گا۔ اب ایک اکثریت کے ساتھ  مسلح مرکز میں  قومی اسمبلی اور پنجاب میں صوبائی اسمبلی دونوں میں اور ایک منتشر  حزب اختلاف رکھتے ہوئے  بھی انہیں  خود کو بر قرار رکھنا  مشکل ہو جائے گا۔

انہیں  اقتصادی چیلنجز کے  سیاق و سباق میں ایک  دلدل سے ہو کر  گزرنا ہے ،غیر ملکی امور کے مسائل اور متوقع امریکی دست برداری کے بعد کا  منظر نامہ ان پر غیر معمولی دباؤ  ڈالےگا  ان کی قائدانہ  صلاحیتوں کا یہ امتحان  پاکستان کی سیاسی تاریخ میں اس کی مثال کے بغیر نہیں ہے۔ وہ ماضی میں اس طرح کے حالات میں ناکام ہو چکے ہیں اور اپنے  ممکنہ زوال کے لئے صورتحال پیدا کر چکے تھے ۔ سوال یہ ہے کہ کیا انہوں نے  اپنی پہلی غلطیوں سے سبق حاصل  کیا ہے؟ تاہم، ہم سب یہ جاننا پسند کریں گے کہ  ان کی اپنی لچک کی پرانی عادتیں  ہیں  اور میری  تشخیص بہت مثبت نہیں ہے۔ تاہم، اصل سوال یہ ہےکہ  کیا  ایک قوم کی حیثیت سے ہم نے  اپناسبق سیکھا ؟ میرا صاف جواب ہے، نہیں۔ ہم نے اپنا سبق نہیں سیکھا، بلکہ ہم نے اپنے ماضی سے سبق حاصل کرنے کی  اپنی صلاحیت کھو دیا ہے۔ بدقسمتی سے ہم ایک ایسی قوم بن گئے ہیں جس نے   اپنی  پریشان کن صورت حال سے لطف اندوز ہونا شروع کر دیا ہے اور ذلت کی عادی بن گئی ہے۔ منطقی اور تاریخی اعتبار سے، اس طرح کی بے چینی کے ساتھ قوموں کو برباد سمجھا جاتا ہے۔

بیرسٹر محمد علی سیف پاکستان کے ایک سابق وفاقی وزیر ہیں اور انسانی حقوق کے مشہور کارکن اور افغان اور فاٹا تنازعہ کے ماہر ہیں۔ وہ نیو ایج اسلام کے لئے باقاعدہ کالم لکھتے رہیں گے ۔

URL for English article:

 http://www.newageislam.com/current-affairs/barrister-muhammad-ali-saif,-new-age-islam/pakistan--taliban-have-won-the-elections-,-but-where-are-they?/d/11653

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/barrister-muhammad-ali-saif,-new-age-islam,-islama/pakistan--taliban-have-won-the-elections-,-but-where-are-they?-پاکستان--طالبان-انتخابات-جیت-گئے-،-لیکن-وہ-کہاں-ہیں؟/d/13136

 

Loading..

Loading..