New Age Islam
Sat Apr 10 2021, 04:19 AM

Urdu Section ( 21 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Where Does Our Country’s ‘Enemy’ Stand? ہمارا ‘دشمن ’ ملک کہا ں کھڑا ہے؟

By Ataul Haque Qasmi

(Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk)

I will term the opportunity as a happy coincidence that last year I visited India twice and spent a total of 19 days in India. Both of my tours were in connection with literary conferences held in Kokata, Bangalore and Delhi.

I will give a brief detail of the conferences some other time. First, I will explain why I called the opportunity to spend ninteen days in India as a happy coincidence. The reason is that this time I got to know India very closely and I got this opportunity after a very long gap. Given the circumstances and evidences, India cannot be termed as a friend of India. The hostilities between the two countries are very old. Therefore, I tried to observe and analyze where our ‘enemy’ country is placed and where we are standing. And I reach the conclusion that India has raced past us in development and we have raced past India in backwardness. You can say that there was nothing new in this conclusion. But the different in hearing and seeing has made saddened me more. This bitterness is not for India’s development but for our own downfall. The truth is that India is besieged by various problems. Separatist movements are being run, religious fanaticism is on the rise, the minorities too do not feel safe, poverty is stark and price rise is, in my opinion, more than in Pakistan. But despite all these problems, there system it has a system that works, their institutions are strong; Good forces are active vis-à-vis the evil ones. Their telecommunications system is enviable. Our trains have become ineffective; their trains perform efficiently; Metro has got also got metro trains that are no less beautiful and efficient than those in Europe. The network of local buses in big cities is also praiseworthy. Flyovers galore in those cities. The industy is progressing by the day. Almost everything is manufactured in India. Multinational companies are also contributing positively to India’s economiy. Bangalore has emerged as an IT centre. The interest in book reading among the people is also increasing. Therefore, now book publishing is also a big industry in India. Apart from it, their tourism department works on very scientific bases and supplementing India’s economy with billions of rupees. India is also selling its culture very strategically and this way trying to make a place on global level. Its film industry competes with Hollywood. Its courts have maintained their credibility. Its army works within its purview, that’s why the corruption of politicians was never made a ploy for Marshall Law. Their foreign office also uses all its wisdom in formulating all its policies according to those of democratic countries.

We are still in the clutches of feudalism where India abolished this curse right after the freedom. There are stocks of arms and ammunitions in every house in our country where as after the Khalistan movement, there was a large scale cleanup operation in India and so now there are cities instead of forests. Moreover, we have not yet learnt to stand in a queue whereas India has achieved that landmark of sophistication as well. These are the reasons; the world tolerates its tantrums and ignores its transgressions. On the contrary, no one cares for us. We are held guilty even if we heave a sigh in helplessness. We are the victims of terrorism and at the same time are branded terrorists. We know the reason. Democracy was suppressed in our country right in the beginning. Military dictators who were ignorant of the science of governance ruled over us. Therefore, they made an alliance with anti-national elements in the country to countinue their rule and remained a yes man of the Super power to get its help. Therefore the country has been captured by the anti-national forces and the super power America is our savior and benefactor.In this situation by the time of immature politicians attain the age of maturity, they are hanged or forced to go into exile.

Now the question is how to come out of this quagmire.  In my view, the only solution is that we should start speaking the truth and should not be afraid of repercussions. One truth that I want to share is that we should take positive and immediate steps to solve all our bilateral issues and dilute tension between us. There is no denying that Kashmir is Pakistan’s jugular vein. So we should continue our moral, political and diplomatic support to the Kashmiris but we should not make it a hindrance in improving our bilateral relations. We have seen the results of wars. We can fight one more war with India. Will this war halt our downfall or will it hasten it due to the subsequent ruin to our economy. Will the hostility towards India help control the communalism, terrorism, poverty, dearness, industrial sickness, power crisis and other similar factors or will it further our destruction and add to or miseries?

During my stint as an ambassador to Thailand, once I invited the ambassador of China to dinner. During the dinner, the ambassador told me as a friend that we should definitely provide diplomatic and political support to Kashmir but should not make it a hindrance in our progress. Citing the example of China, he said that they waited for Hongkong for hundred years and similarly we did not withdraw our claim on Taiwan but we are doing all kinds of agreement with it. One day Taiwan will also become a part of us automatically by virtue of our progress.

I want to request our policymakers, for God’s sake, please take Pakistan on the path of progress first. Make Pakistan so strong economically and politically that we do not have to fight a war for Kashmir. At present, the dominant view about Pakistan is that Pakistanis are not able to deal with Pakistan in the first place, how they claim they will be able to take care of us. So please wait and watch. We should make ourselves so strong that no one can rob us of our rights. At last I beg your pardon for saying all this. I hope you will forgive me.

Source: Sahafat, New Delhi

URL: https://newageislam.com/urdu-section/where-does-our-country’s-‘enemy’-stand?--ہمارا-‘دشمن-’-ملک-کہا-ں-کھڑا-ہے؟/d/3982

عطا الحق قاسمی

میں اس اتفاق کو حسن  اتفاق ہی کا نام دوں گا کہ مجھے گزشتہ ایک ماہ میں دومرتبہ انڈیا جانے کاموقع ملا اور یوں میں نے کل انیس دن انڈیا میں  گزارے ۔میرے یہ دونوں سفر ادبی کانفرنسوں کے حوالے سے تھے جو کلکتہ ،بنگلور اور دہلی میں منعقد ہوئیں۔

ان کانفرنسوں کا مختصر احوال میں کسی اور کالم میں بیان کروں گا ۔پہلے یہ بتانا چاہتا ہوں کہ انڈیا میں انیس دن گزارنے کا موقع ملنے کو میں نے ‘‘حسن اتفاق’’ کیوں قرار دیا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ اس مرتبہ مجھے انڈیا کو قریب سے دیکھنے کا موقع ملا اور یہ موقع کافی برسوں کے ‘‘گیپ’’ کے بعد میسر آیا تھا۔واقعات وشواہد کی روشنی میں انڈیا کو پاکستان کا دوست ملک قرار نہیں دیا جاسکتا۔ اس کے ساتھ ہماری کشیدگی کا سلسلہ بہت پرانا ہے۔ چنانچہ میں نےکوشش کی کہ تمام تعصبات کو پرے رکھ کر جائزہ لوں کہ ہمارا یہ ‘‘دشمن’’ ملک کہاں  کھڑا ہے اور ہم کہاں کھڑے ہیں؟ اور میں اس نتیجے پر پہنچا ہوں کہ ترقی کی دوڑ میں انڈیا ہم سے اور تنزلی کی دوڑ میں ہم انڈیا سے بہت آگے نکل چکے ہیں ۔آپ کہہ سکتے ہیں کہ یہ کون سی کوئی نئی اطلاع ہے لیکن سننے اور دیکھنے میں جو فرق ہے اس فرق نے مجھے زیادہ رنجیدہ کیا ہے ۔ رنجیدگی انڈیا کی ترقی کے حوالے سے نہیں ، اپنے زوال کے حوالے سے ہے ۔ صورتحال یہ ہے کہ انڈیا گوناگوں مسائل کا شکار ہے، وہاں علٰیحدگی کی تحریکیں بھی چل رہی ہیں ، مذہبی جنونیت بھی زور پکڑ رہی ہے، اقلیتیں بھی خود کو محفوظ تصور نہیں کرتیں ،غربت بے پناہ ہے او رمہنگائی شاید پاکستان سے زیادہ ہے لیکن ان تمام مسائل کے باوجود ان کا سسٹم کام کررہا ہے ۔ ان کے ادارے مضبوط ہیں ۔شر کے ساتھ ساتھ خیر کی قوتیں بھی برسر عمل ہیں ۔ ان کا مواصلاتی نظام قابل رشک ہے ۔ ہماری ٹرینیں ناکارہ ہوچکی ہیں۔ ان کی ٹرینوں کی کارکردگی بہترین ہے۔ دہلی میں میٹرو بھی شروع ہوچکی ہے اور یہ یورپ کی میٹرو سے کم خوبصورت اور کم معیاری نہیں ہے۔بڑے شہروں میں لوکل بسوں کا نظام بھی دیدنی ہے۔ ان شہروں میں فلائی اوورز کی بھرمار ہے۔ انڈسٹری دن بدن  ترقی کی منزلیں طے کررہی ہے۔ تقریباً سبھی کچھ انڈیا میں تیار ہورہا ہے۔ ملٹی نیشنل کمپنیاں بھی انڈیا کی معیشت میں مثبت کر دار ادا کررہی ہیں ۔بنگلور آئی ٹی کا مرکز بن چکا ہے۔ لوگوں میں کتابوں کے مطالعہ کا شوق بھی روز افزوں ہے ۔ چنانچہ اب انڈیا کی ایک بڑی انڈسٹری بک انڈسٹری بھی ہے ۔ اس کے علاوہ ان کا ٹور ازم کا محکمہ نہایت سائنسی بنیادوں پر کام کرتا نظر آتا ہے اور انڈیا کی معیشت کو اربوں روپوں کی کمک پہنچا رہا ہے ۔ انڈیا اپنا کلچر بھی بڑی مہارت اور چابکدستی سے SELIکررہا ہے اور یوں عالمی پر اپنی سطح ثقافتی پہچان بنانے کی کوشش کرتا ہے ۔ اس کی فلم انڈسٹری ہالی وڈ سے مقابلہ کرتی نظر آتی ہے۔ ان کی عدالتو ں کا وقار قائم ہے۔ ان کی فوج اپنے دائرے میں رہ کر کام کرتی ہے۔ چنانچہ وہاں سیاست دانوں کے بے پناہ کرپشن کو کبھی مارشل لا کا جواز نہیں بنایا گیا۔ ان کا فارن آفس بھی اپنی پالیسیاں جمہوری حکومتوں کی پالیسیوں کے مطابق بنانے میں اپنی تمام دانائی کا استعمال کرتا ہے۔

ہم ابھی تک جاگیر داری کے چنگل میں پھنسے ہوئے ہیں جبکہ انڈیا میں آزادی کے فوراً بعد اس لعنت کا خاتمہ کردیا گیا تھا۔ہمارے گھر گھر میں اسلحہ اور بارود کے ذخائر بھرہوئے ہیں جبکہ انڈیا میں خالصتان تحریک کے بعد بڑے وسیع پیمانے پرکلین اب آپریشن کیا گیا اور یوں اب وہاں جنگل نہیں شہر آباد ہیں۔ اور تو اور ہم ابھی تک قطار بنانا بھی نہیں سیکھ سکے جبکہ انڈیا تہذیب کی اس سیڑھی پر بھی قدم رکھ چکا ہے ۔ یہی وہ وجہ ہیں جن کے سبب دنیا کے نازنخرے برداشت کرتی ہے اور اس کے ساتھ خون بھی معاف کروائے جاتے ہیں جبکہ ہمارا کوئی پرسان حال نہیں ۔ ہم آہ بھی کرتے ہیں تو بدنامی ہمارا ہی مقدر بنتی ہے ۔ ہم دہشت گردی کا نشانہ بھی بن رہے ہیں اور دہشت گرد بھی ہم ہی کہلاتےہیں۔اس کی وجہ ہم جانتے ہیں ہمارے ہاں جمہوریت کا گلا شروع ہی میں دبا دیا گیا۔ فوجی آمرہم پر حکومت کرتے رہے جو حکومت چلانے کی سائنس سے نابلد تھے۔ چنانچہ انہوں نے اپنا اقتدار قائم رکھنے کے لئے اندرون ملک عوام دشمن طاقتوں سے اتحاد کیا اور سپر پاو ر کی مدد کے حصول کے لئے اس کے ‘‘یس مین’’ بنتے رہے ۔چنانچہ آج ملک عوام دشمن طاقتو ں کے مکمل نرغے میں آچکا ہے اور سپر پاور امریکہ ہمارا ملجاد ماویٰ ہے سیاستداں اس صورتحال میں نابالغی کی منزلیں طے کرتے کرتے جب بلوغت تک پہنچنے لگتے ہیں تو انہیں پھانسی کے تختے پر چڑھا دیا جاتا ہے یا جلا وطنی ان کا مقدر بنتی ہے!

تو سوال یہ ہے کہ اب اس گرداب سے کیسے نکلا جائے ۔میرے نزدیک اس کا واحد حل یہ ہے کہ ہم سچ بولنا شروع کردیں اور اس ضمن میں خوف فساد خلق کی پرواہ نہ کریں۔ یہ سچ بولنا چاہتا ہوں کہ ہمیں انڈیا کے ساتھ اپنے تنازعات حل کرنے کی کوششوں کے ساتھ باہمی تناؤ اور کشیدگی ختم کرنے کے لئے مثبت اور فوری اقدامات اٹھانا چاہئیں۔ اس میں کوئی شبہ نہیں کہ کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے۔ سو ہمیں کشمیریوں کو بھرپور اخلاقی ،سیاسی اور سفارتی امداد کا سلسلہ جاری رکھنا چاہئے لیکن اسے باہمی تعلقات کوبہتر سے بہتر بنانے میں رکاوٹ نہ بننے دیں۔ہم نے جنگیں کر کے دیکھ لی ہیں۔ ہم انڈیا کے ساتھ ایک جنگ اور بھی کرسکتے ہیں لیکن کیا یہ جنگ ہمارے زوال کے عمل کو روک دے گی یا اس کے نتیجے میں ہونے والی معیشت کو مزید تباہی سے زوال کا یہ عمل تیز تر ہوجائے گا۔ کیا انڈیا کے ساتھ کشیدگی سےہمارے ہاں فرقہ واریت ، دہشت گردی ،غربت ، افلاس ، مہنگائی ، صنعتوں کی زبوں حالی ،توانائی کے بحران اور اس نوع کے دوسرے عوامل پر قابو پانے میں مدد ملے گی یا اس کی وجہ سے مزید تباہی وبربادی ہمارا مقصد بنے گی ؟تھائی لینڈ میں سفارت کے دوران میں نے چین کے سفیر کو اپنے ہاں کھانے پر مدعو کیا تو انہوں نے ایک دوست کے طور پر مجھے کہا کہ آپ کشمیر کی بھرپور سفارتی ،ارتقائی اور سیاسی امداد کرتے رہیں لیکن اس ایشو کو اپنی ترقی کی راہ میں حائل نہ ہونے دیں ۔ انہوں نے چین کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ ہم نے ہانگ کانگ لینے کے لئے ایک سوسال انتظار کیا اور ہم اسی طرح تائیوان پر اپنے دعوے سے دستبردار نہیں ہوئے لیکن ہم اس کے ساتھ نوع کے معاہدے کررہے ہیں۔ ایک دن ہماری ترقی کے طفیل تائیوان بھی خو د بخود ہماری جھولی میں آن گرے گا۔ میں یہی بات اپنے پالیسی سازوں سے کہنا چاہتاہوں کہ خدا کے لئے پاکستان کو پہلے ترقی کی راہوں کی طرف گامزن کریں ۔ اسے معاشی اور سیاسی طور پراتنا مضبوط بنادیں کہ کشمیر کے لئے ہمیں جنگ کرنے کی ضرورت ہی نہ پڑے ۔ اس وقت تو کشمیریوں میں یہ تاثر عام ہے کہ پاکستانیوں سے پاکستان تو سنبھالا نہیں جارہا یہ ہماری کیا دیکھ بھال کرسکیں گے ۔ سووقت کا انتظار کریں۔ اپنے ‘‘ڈولوں’’ کو اتنا مضوط بنائیں کہ کسی کو ہمارا حق مارنے کی جرأت ہی نہ ہو ۔ فی الحال تو ہم ‘‘ کانگڑی پہلوان ’’ ہیں ۔ ہماری بڑھکوں پر دنیا ہنس پڑتی ہے ۔خدا کے لئے وہ وقت بہت قریب لائیں جب دنیا کی اس غلط فہمی پر ہمیں ہنسنے کا موقع ملے۔ میں یہ باتیں کرنے سے پہلے جان کی امان طلب کرنا بھول گیا تھا! سووہ اب طلب کررہا ہوں ۔امید ہے معاف فرمائیں گے۔

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/where-does-our-country’s-‘enemy’-stand?--ہمارا-‘دشمن-’-ملک-کہا-ں-کھڑا-ہے؟/d/3982

 

Loading..

Loading..