New Age Islam
Thu Apr 22 2021, 03:46 PM

Urdu Section ( 13 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Pakistan has not changed even after the flood سیلاب کے بعد بھی بدلا نہیں پاکستان

By Asad Mufti

[Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk]

The experts participating in the international conference on weather issues held by the UN in Mexico tried their best to establish a financial fund for the conservation against weather. On the occasion, Pakistan tried its best to get the tag of the most insecure country in terms of weather as Bangladesh, submerging island nations and the starving African nations have been declared insecure. (Please do not consider Pakistan’s nuclear power status here). According to an observation of the government of Pakistan, 79 out of 124 districts of the country have been inundated by the floods; crops on 17000 sq. kilometer of land have been destroyed. According to the estimates of the World Bank, the total loss is around 854.9 billion and the estimated cost or reconstruction is 677.8  billion dollar whereas the Information Secretary of the government Fouzia Wahab has told the representative of the UN that Rs 5 trillion were needed for the flood affected people. During the Weather conference in Mexico it was told that 20 per cent of the Pakistani land was under water. Four lakh houses of the country were still under water. There is still 3 to 4 feet water in three districts of Sindh and 2 districts of Balochistan.

The newspapers and periodicals in Europe are writing tongue in cheek that the reason for the international community not helping Pakistan’s flood affected people is understandable. In their view, if 67 per cent of a poor country’s budget is snatched away in the name of defence and there is even no audit for it,  whose foreign minister says that India and Israel are the two countries whose aid workers will not get Pakistani visas for the help of the billions of the flood affected people and where the greedy generals, corrupt politicians and bureaucrats scramble for piling up money and even a few helicopters cannot be managed in times of need, the aid and help are only a waste of money.

A German weekly wrote that when India being a neighbour announced an aid of 50 million, Pakistan showed unwillingness to accept it. Shamelessly, the Pakistani politicians linked the aid to Kashmir and said that the amount was very small. Then the statement of the Foreign Minister came saying Pakistan will accept India’s contribution.  The language suggested that by accepting India’s aid Pakistan was doing a favour to India.

Around the same time Pakistan’s Home Minister said that they would accept the aid if it came through the UN. Then it was said that Pakistani people will show their displeasure if India’s help was accepted. Next statement said that if the name of India on the aid was not mentioned, it would be better. This shameful process became so lengthy that would embarrass the country offering the aid.

Some sections are presenting the argument that the international community is not extending help because Pakistan is an Islamic state. In my opinion, Pakistan being an Islamic state cannot be the reason as most of the countries affected by Tsunami were Muslim that received help from the world. The World Bank, the Asian Development Bank, The Development Bank of the UNO and other donor agencies of the world have certain doubts and concerns. That is the reason a Dutch newspaper had written recently that Islamabad’s informed circles are aware what kind of discussions the donor agencies have been holding with the government. They are very concerned about the right use of the money. They want that every aspect from estimation of the damages to the use of aid funds should be transparent. These agencies want a system that can guarantee zero level of corruption or misuse of the aid amount.

I am also not ready to accept that the incompetency of our diplomats posted all over the world is the reason. I personally am aware that Pakistan’s ambassador in Holland Aizaz Ahmad Choudhary is one of the most competent diplomats in the world. A big amount of 1 lakh 55 thousand Euros have been sent to the country due to the efforts of Mr Chaudhary. Dutch people and the government have also donated a sum of 27 million Euros for the flood affected of Pakistan. It is because of the patriotism, vision and sincerity of the ambassador of Pakistan that he could make the government, the people and the authorities of Holland realize the gravity and volume of the tragedy in Pakistan.

Both the institutions meant for relief and reconstruction and the responsibility to spend billions of dollars are headed by generals or under the generals. On the paper that the office of the relief work is in the PMO and is under an officer of secretary level but the truth is known to all. The setup is not encouraging or trustworthy for the international community by any standards.

 The international donor agencies have said in Geneva that the flood affected people of Pakistan needed help for at least two years. The statements of the Red Cross and the Red Crescent suggest even after four months of the occurrence of the tragedy, 2 million affected people are living in camps. The Chairman Lieutenant General of The National Disaster Management Authority, Nadeem Ahmad said that Pakistan was in the grip of natural calamities and it was difficult to emerge from them at the moment. In my view, in order to wriggle out of this disaster, we should honestly tell the world about our economy. The Wealth Tax should be re-imposed to fulfil our needs from our financial resources. Tax should be imposed on agricultural income. Unnecessary constructive projects should be abandoned. The luxury of the construction of the GHQ in Islamabad should be abandoned as Makhdoom Javed Hashmi has demanded that the GHQ being constructed at a cost of 15 trillion dollar in Islamabad should be stopped and the amount should be dedicated for the rehabilitation and welfare of the flood affected people. The purchase of F-16 fighter jets should be stopped and the stolen public money amounting to billions of dollars that have been transferred abroad should be brought back.

In my opinion, for the immediate rehabilitation of the affected, $ 300 crore is needed whereas 30 billion dollars will be needed for the complete rehabilitation. According to analysts, the growth rate will come down to zero due to the floods and the inflation will reach 25 per cent. Moreover, the LIO report has also indicated that as a result of the floods, Pakistan will also lose $2 billion of annual income. 11 lakh jobs have been lost because of the floods. The question also arises how the recovery of such a huge loss is possible. How can the economy that is already based on debts, foreign aids and donations and is short of resources save itself from a big loss. It is therefore anticipated that the God’s own country will see more unemployment and rising prices. The environmentalists have warned that the environmental changes will cause even greater disasters causing greater damages and losses. How true these predictions are can only be told by the geologists or the maulvis who believe that the floods are the results of our own sins.

Source: Sahafat, New Delhi

URL: https://newageislam.com/urdu-section/pakistan-has-not-changed-even-after-the-flood--سیلاب-کے-بعد-بھی-بدلا-نہیں-پاکستان/d/3931

اسد مفتی

اقوام متحدہ کی جانب سے میکسیکو میں منعقدہ موسمیاتی مسائل پر بین الاقوامی کانفرنس میں ماہرین نے موسمیات سے تحفظ کے لئے ایک مالیاتی فنڈ کے قیام کی بھرپور کوشش کی، اس موقع پر سیلاب سے تہس نہس پاکستان نے اپنی پوری پوری کوشش کی ہےکہ اسے ‘‘موسمیات کے حوالے سے دنیا کی انتہائی غیر محفوظ ’’ قوم کادرجہ مل جائے جس طرح بنگلہ دیش کی سرزمین ، ڈوبتی ہوئی جزیرہ مملکتیں اور قحط زدہ افریقی قوموں کو انتہائی غیر محفوظ تسلیم کیا گیا ہے(براہ کرم یہاں پاکستان کے ایٹمی قوت ہونے کا تصور ذہن میں نہ لائیے)حکومت پاکستان کے مشاہدہ کے مطابق پاکستان کے 124اضلاع میں سے 79اضلاع سیلاب کی لپیٹ میں آئے ہیں، ملک بھر میں 17ہزار مربع کلو میٹر پر کھڑی فصلیں تباہ وبرباد ہوگئی ہیں، ورلڈ بینک اور ایشیائی ترقیاتی بینک کی رپورٹ کے مطابق نقصان کا تخمینہ 854.9ارب اور تعمیر نو کا تخمینہ 677.8ارب لگا یا گیا ہے جبکہ حکمران جماعت کی سکریٹری اطلاعات فوزیہ وہاب نے اقوام متحدہ کے نمائندے کو بتایا ہےکہ سیلاب متاثرین کےلئے 5کھرب روپے درکار ہیں، میکسیکو کے موسمیاتی اجلاس کے دوران بتایا گیا ہے کہ پاکستان کی سرزمین کا 20فیصد حصہ زیر آب آگیا ہے۔ ملک کے 4لاکھ گھر ہنوز پانی کی زد میں ہیں، اس وقت بھی سندھ کے 3او ربلوچستان کے 2اضلاع میں تین سے چار فٹ تک پانی موجود ہے۔

یوروپ میں اخبارات و جرائد یہ بات دبے لفظوں میں لکھ رہے ہیں کہ بین الاقوامی برادری کی پاکستان کے سیلاب زدگان کی بروقت اور مناسب امداد نہ کرنے کی وجہ سمجھ میں آتی ہے ۔ان کے خیال میں جب دنیا کے ایک غریب ملک کے قومی بجٹ کا 67فیصد حصہ دفاع کے نام پر چھین لیا جائے اور جس کا کوئی آڈٹ بھی نہ ہوسکے اور جس کا وزیر خارجہ یہ بیان دے کہ ہندوستان اور اسرائیل دو ایسے ملک ہیں جن کے امدادی کارکنوں کو ملک کے تباہ کن سیلابوں سے متاثر کروڑوں لوگوں کے لئے امدادی کوششوں میں شامل ہونے کے لئے پاکستان خصوصی ویزا منظور نہیں کرے گا، علاوہ ازیں حریص جرنیلوں کرپٹ سیاستدانوں اور بیورو کریٹوں پر مال ودولت کمانے کی دھن سوار ہوجائے اور بوقت ضرورت چند ہیلی کاپٹر بھی اثاثے میں سے نہ نکلیں وہاں امداد ودست گیری دولت کا ضیاع ہی تو ہے، ایک جرمن ہفت روزہ ‘‘انڈیا کے خلوص اور انکساری کا مذاق ’’ کے عنوان سے اپنے اداریہ میں لکھتا ہے۔‘‘ہندوستان نے پڑوسی کی حیثیت سے پچاس لاکھ ڈالر کی امداد کا اعلان کیا تو پاکستان نے پش وپیش کیا ، بے ہودگی اور بے شرمی سے وہاں کے اعلیٰ عہدے دار اس مدد کو کبھی کشمیر سے تو کبھی حقیر رقم سے جوڑتے رہے پھر وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا بیان آیا کہ پاکستان انڈیا کی مدد کو قبول کرلے گا، قبولیت کی یہ زبان ایسی تھی جیسے وہ انڈیا سے مدد لے کر ا س پر احسان کررہا ہو۔

اسی دوران پاکستان کے وزیر داخلہ نے کہا کہ مدد لیں گے اگر وہ اقوام متحدہ کے ذریعہ آئے، پھر کہا گیا کہ پاکستان کے عوام اس بات سے برہم ہوجائیں گے کہ حکومت انڈیا سے مدد لے رہی ہے، پھر وضاحت آئی کہ بھیجی گئی رسد میں انڈیا کا نام نہ ہوتو قابل قبول ہے، اس شرم ناک سلسلہ نے اتنا طول پکڑا کہ دینے والے ملک کو شرم آجائے ۔

کچھ اس بات کو دہائی دے رہے ہیں کہ پاکستان ایک ‘‘اسلامی ملک’’ ہے، اس لئے عالمی برادری کھل کر سیلاب زدگان کی مددکو نہیں آرہی ، میرے حساب سے پاکستان کا :‘‘اسلامی ملک’’ ہوناوجہ نہیں ہوسکتی کہ سونامی سے متاثر ہونے والے بیشتر ممالک اسلامی ہی تھے جن کی پھر پور مدد کی گئی ، ورلڈ بینک ، ایشیائی ترقیاتی بینک، اقوام متحدہ کے ترقیاتی بینک اور عطیات دینے والی دیگر عالمی ایجنسیوں کو کئی طرح کے شبہات لاحق ہیں۔ یہی  وجہ ہے کہ گزشتہ دنوں ایک ڈچ میگزین نے اپنے آرٹیکل میں لکھا تھا ‘‘اسلام آباد کے باخبر حلقے جانتے ہیں کہ ڈونر ادارے حکومت سے کس قسم اور کس نوع کے مذاکرات کررہے ہیں، انہیں سب سے زیادہ تشویش نقدر قوم کے صحیح استعمال کی ہے۔ وہ چاہتے ہیں کہ نقصانات کے تخمینوں سے لے کر امداد کے استعمال تک ہر پہلو ،ہر زاویہ اور ہر مرحلہ پوری طرح شفاف ہو، یہ ادارے ایک ایسا نظام چاہتے ہیں جس میں کسی بھی سطح پر کسی بھی نوع کے کرپشن یا امداد کے غلط استعمال کا کوئی امکان باقی نہ رہے۔’’

میں یہ بھی ماننے کو تیار نہیں ہوں کہ دنیا بھر میں موجود ہمارے سفارت کاروں کی نااہلی اس کی وجہ ہے۔ میں ذاتی طور پر علم رکھتا ہوں کہ ہالینڈ میں پاکستان کے سفیر اعزاز احمد چودھری جیسا سفارت کار کم ملکوں کو نصیب ہوا ہے۔ ان کی ذاتی تگ ودو سے ایک لاکھ 55ہزار یورو کی خطیر رقم ملک عزیز کو بھجوائی گئی ہے، علاوہ ازیں اپنی کاوشوں کے مرہون منت ڈچ عوام اور حکومت نے 27ملین یورو کی قابل قدر رقم سیلاب متاثرین کے لئے روانہ کی ہے، یہ سفیر پاکستان کی بصیرت ، خلوص اور حب الوطنی ہی ہے جو اتنی بڑی قیامت کے حجم اور گہرائی کا احساس حکومت نیدر لینڈ ،عوام اور ارباب اختیار کو دلاسکی ۔ریلیف اور تعمیر نو کے دونوں ادارے او راربوں ڈالر خرچ کر نے کی ذمہ داری دو ایسے اداروں کے سپرد ہے جن کے سربراہ جرنیل ہیں یا جرنیلوں کے ماتحت ہیں، کہنے کی ریلیف کا دفتر وزیر اعظم سکریٹریٹ میں ہے اور وہ سکریٹری کی سطح کے ایک افسر کے ماتحت ہے لیکن حقیقت حاصل سب پر آشکارا ہے۔

یہ منظر نامہ کسی طور پر بھی بین الاقوامی برادری کے لئے امید واعتماد افزا نہیں ۔

جنیوا میں عالمی امدادی اداروں نے کہاہے کہ پاکستان کے سیلاب متاثرین کو کم از کم دوبرسوں تک انسانی امداد کی ضرورت ہے، ریڈکراس کی عالمی فیڈریشن اور ہلال احمر کے بیان میں کہا گیا ہے کہ 4ماہ گزرنے کے باوجود اب بھی 20لاکھ متاثرین کیمپوں میں زندگی کے دن کاٹ رہے ہیں، نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے چئیر مین لیفٹیننٹ جنرل ندیم احمد نے اپنے حالیہ بیان میں کہا ہے کہ پاکستان ‘‘قدرتی آفات ’’ کی زد میں ہے جس سے فی الحال نکلنا مشکل ہے، میرے حساب سے ان مشکلات سے نکلنے کے لئے سب سے پہلے دنیا کو ہماری معیشت کی اصلیت بتادی جائے۔اپنے مالی وسائل سے اپنی ضروریا ت پوری کرنے کے لئے ویلتھ ٹیکس بحال کردیا جائے، زرعی آمدنی پر ٹیکس لگایا جائے،غیر ضروری تعمیراتی منصوبے ترک کردیئے جائیں، اسلام آباد میں نئے جی ایچ کیو کی تعمیر کی عیاشی کو خیر باد کہہ دیا جائے کہ مخدوم جاوید ہاشمی نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ 15کھرب کی لاگت سے اسلام آباد میں تعمیر کئے جانے والے جی ایچ کیو کی تعمیر فوراً روک دی جائے اور اس رقم کو سیلاب متاثرین کی دیکھ بھال اور بحالی کے لئے وقف کردیا جائے ، ایف طیاروں کی مزید فراہمی روک دی جائے، لوٹی ہوئی دولت جو بیرون ملک منتقل کی گئی ہے اسے واپس لانے کے انتظامات کئے جائیں کہ پاکستان کے سیاستدان سول بیورو کریٹ ، فوجی بیورو کریٹ ، اعلیٰ حکام اور کرپٹ عناصر نے بیرون ملک جو دولت جمع کررکھی ہے، اس کا سرسری تخمینہ بلین ڈالر بنتا ہے کہ عالمی برادری کی سیلاب متاثرین کی دل کھول کر امداد نہ کرنے کی ایک وجہ یہ بھی بتائی جاتی ہے ۔ علاوہ ازیں پاکستانی بینکوں سے لئے گئے جو قرضے بااثر لوگوں نے معاف کروائے ہیں ان کی وصولی کے لئے سخت اقدامات کئے جائیں۔

میرے حساب سے فوری طور پر متاثرین کی آبادکاری کےلئے 3سو کروڑ ڈالر کی ضرورت ہے جبکہ مکمل آبادکاری کے لئے 30ارب ڈالر کی ضرورت ہوگی۔ تجزیہ نگاروں کے مطابق سیلاب کے سبب پاکستان میں شرح ترقی زیرو (صفر) پر آجائے گی اور افراط زر 25فیصد پر پہنچ جائے گا، ادھر ایل آئی او کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ معیشت میں بگاڑ کی صورت میں پاکستان 2ارب سالانہ آمدنی سے محر وم ہوجائے گا۔ سیلاب کے نتیجہ میں 11لاکھ جاب ضائع ہوگئی ہیں۔ یہاں سوال یہ بھی ہے کہ اتنے بڑے نقصان کا ازالہ کیسے ممکن ہوگا؟ ایسی معیشت جو پہلے ہی وسائل سے محرو م ہے اور اس کی اساس مانگے نانگے ، قرضوں او ربیرونی امداد پر رکھی گئی ہے وہ اس قدر نقصان سے خود کو کیسے محفوظ رکھ سکے گی ؟ چنانچہ یہ بات کہنے میں کوئی عار نہیں کہ کشور حسین شاد باد مزید مہنگائی اور بے روزگاری کا شکار ہوگا۔ ماہرین نے وارننگ دی ہے کہ بے ہنگم ماحولیاتی آب وہوا کی تبدیلیوں سےپاکستان کو خطرہ ہے اور مزید نقصانات کا موجب بنیں گی۔اس پیشین گوئی یافال رمل میں کتنی سچائی ہے اور کتنا وزن ہے اس کا قابل بھروسہ جواب علم ارضیات کے ماہر ہی دے سکتے ہیں یا وہ مولوی حضرات جو یہ سمجھتے ہیں کہ سیلاب ہمارے گناہوں کا نتیجہ ہے۔

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/pakistan-has-not-changed-even-after-the-flood--سیلاب-کے-بعد-بھی-بدلا-نہیں-پاکستان/d/3931

 

Loading..

Loading..