New Age Islam
Wed Sep 23 2020, 12:22 AM

Urdu Section ( 11 Oct 2010, NewAgeIslam.Com)

Holy Quran: The Guarantor of Respect for Women نسائی عزو وقار کی ضامن قرآن کریم

 

By Akhtarul Wasey

 

(Tr. from Urdu, Arman Neyazi, New Age Islam)

 

Islam is a religion of nature. It takes care of all the requirements of humanity. Men and women are the foremost unit of the society. Islam has taken care to fix their status in society taking into consideration all their requirements and responsibilities.

 

In Islam, Men and Women are two sexes who carry the same value. In principle both have the same position; both are responsible for their acts and will get the result of their deed separately. According to Quran-e-Karim:

 

"And whoever does righteous good deeds, male or female, and is a true believer in the Oneness of Allah (Muslim), such will enter Paradise and not the least injustice, even to the size of a Naqira (speck on the back of a date-stone), will be done to them." (sura Al Nisa 124)

 

The above mentioned Aayat of the Quran Sharif clearly mentions that both men and women will get their reward according their deeds. The implication is clear. There will be no discrimination on the basis of gender. There is only one law of the Almighty for both of them. There are various kinds of relations among men and women, the most important being the relationship of husband and wife. The Quran-e-Karim says:

 

; "It is He who has created you from a single person (Adam), and (then) He has created from him his wife [Hawwa (Eve)], in order that he might enjoy the pleasure of living with her. When he had sexual relation with her,"( Al Araaf  189)

 

God responds in the Quran Kareem in reply to a prayer of a Muslim in the following fashion:

 

“So their Lord accepted of them (their supplication and answered them), "Never will I allow to be lost the work of any of you, be he male or female. You are (members) one of another, "( Sura Al Imran 195)

 

This verse of the Holy Quran testifies that in Islam both Men and Women have the same standing. “All of you are from each other" means both the sexes are the same. It also clarifies that both the sexes have the same moral responsibilities and that is why the reward and punishment will also be the same for both of them. If Islam has given the same rights and powers it has given equal responsibilities also. On one other occasion the Holy Quran states:

 

Again the Quran opines; "O mankind! Be dutiful to your Lord, Who created you from a single person (Adam), and from him (Adam) He created his wife [Hawwa (Eve)], and from them both He created many men and women and fear Allah through Whom you demand your mutual (rights), and (do not cut the relations of) the wombs (kinship). Surely, Allah is Ever an All-Watcher over you. "( Al Nisa -1)

 

This verse clearly says, the genetic make-up of men and women are the same, both are from one father and mother and so there is no difference between them. A woman also has the same rights that a man has. For creation of man and woman "khalque minha zojaha" word is used, here” minha" means " min jinseha" meaning thereby God has created Hazrat Hawwa the pair of Aadam (AS) from the same female. This similarity proves that men and women should live together with total unity.

 

In Quran man and woman are called each other’s uniform. The uniform not only means hiding of body but the expression of beauty and decoration also. The beautiful and worthy sentence of the Holy Quran decides the position of both the man and woman. The uniform is the source of their cosmetic beauty, their personality; it saves their person from the external influences, hides their physical shortcomings; it is the nearest confidant of their body and the most intimate expression of their being. The term “uniform” not only explains their relationship but explains the mutual inter-dependence of their relationship.

 

 In terms of other social relationships also the Holy Quran describes both the sexes on an equal footing. For example in connection with the rights of inheritance, Sura Al Nisa verse 7 says," In the wealth of the parents and in the wealth of the kins man and woman both have their rights, be it less or more, a fixed portion."

 

In known history it is the Holy Quran alone which gives equal rights to men and women in the hereditary wealth. Not only that, it even has fixed the portion, be it less or more which is necessary for the woman to be given. There are certain people who say that a woman has been given only half the portion given to man.  But such observations are expressions of a negative mentality. The point that must be pondered is that this distribution system was established 14 centuries ago, and then it took centuries to be codified. The second thing is that a woman does not get her share only in the wealth of her father but also in her husband’s wealth. This way a woman gets her share in the wealth of two families and a man from only one family. Therefore this negativity is because of the ignorance. There are certain occasions when a woman gets a greater share of the inheritance than does a man.

 

In the Holy Quran a woman has been described as a useful and functioning member of the society. God testifies:

 

"And wish not for the things in which Allah has made some of you to excel others. For men there is reward for what they have earned, (and likewise) for women there is reward for what they have earned, and ask Allah of His Bounty. Surely, Allah is Ever All-Knower of everything."( Al Nisa 32)

 

In this verse of Holy Quran it is clarified that men and women are different according to their abilities. In certain conditions a woman can have a higher status thn a man and vice versa.  This is no different than different men holding different positions in society. There is nothing surprising in it.

 

Holy Quran declares in Sua Al Tauba, Aayat 71-72:

 "The believers, men and women, are Auliya' (helpers, supporters, friends, protectors) of one another, they enjoin (on the people) Al-Ma'ruf (i.e. Islamic Monotheism and all that Islam orders one to do), and forbid (people) from Al-Munkar (i.e. polytheism and disbelief of all kinds, and all that Islam has forbidden); they perform As-Salat (Iqamat-as-Salat) and give the Zakat, and obey Allah and His Messenger. Allah will have His Mercy on them. Surely Allah is All-Mighty, All-Wise. Allah has promised to the believers -men and women, - Gardens under which rivers flow to dwell therein forever, "

 

The above-mentioned verse has decided their position. According toe the Quran men and women are each others’ partners. As far as the contention of inequality between husband and wife is concerned, this too is a one-sided viewpoint. The main importance between the relationship of a husband and a wife is that of stability and equality. As a mother, a woman is responsible for her children who include both sons and daughters.

 

The Holy Quran gave men and women the same status 14 centuries ago. A woman has been given the same position that a man enjoys. Both will be treated alike. They are made for each other. Both are a source of pleasure and peace for each other. Hence both are called each other’s apparel. Both have been fixed their share in the inheritance and both are free to play their respective roles. A woman has been given a right to select her husband on her own and man has been forbidden to force a woman to marry any man.

 

Thus in the history of humanity for the first time a woman does not only get her rights but also laws to safeguard them. It is the greatest act of compassion of Quran-e-Kareem for the human race.

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/holy-quran--the-guarantor-of-respect-for-women--نسائی-عزو-وقار-کی-ضامن-قرآن-کریم/d/3525

 

نسائی عزو وقار کی ضامن قرآن کریم

پروفیسر اختر الواسع

اسلام دین فطرت ہے اور انسانی فطرت کے تمام تقاضوں کو اس میں ملحوظ رکھا گیا ہے، عورت اور مرد جو کسی بھی معاشرہ کی بنیاد اور پہلی اکائی ہیں ان کے رشتوں ، ان کے مدارج اور ان کی حیثیت و مرتبہ کی تعیین میں بھی اسلام نے عدل وانصاف کے تمام تقاضوں کو پوری طرح ملحوظ رکھا ہے، چنانچہ قرآن مجید میں عورت اور مرد کے درمیان نہایت منصفانہ اور مبنی بر انصاف رویہ اختیار کیا گیا ہے۔

اسلام کی نظرمیں عورت اور مرد مساوی درجہ کی حامل دوصنف ہیں ، اصولاً دونوں درجہ بحیثیت صنف کے برابر ہے، مرد ہو یا عورت ہر ایک اپنے عمل کا پوری طرح ذمہ دار ہے اور ہر ایک کو اس کے عمل کا پورا پورا بدلہ ملے گا۔قرآن میں ہے:

‘‘ جو شخص نیک کام کرے گا خواہ وہ مرد ہویا عورت بشرطیکہ وہ مومن ہوتو ایسے لوگ جنت میں داخل ہوں گے اور ان پر ذرا بھی ظلم نہ ہوگا( النسا :124)

قرآن پاک کی اس آیت میں واضح طور پر بتا گیا ہے کہ مرد اورعورت میں سے جو بھی عمل صالح کرے گا، اس کو اس کا بدلہ ملے گا، یعنی صنف کی بنیاد پر کوئی تفریق نہیں ہوگی۔ مرد اور عورت دونوں کے لئے خدا کا ا یک ہی قانون ہے۔عورت مرد کے درمیان بہت سے رشتے ہیں۔ جن میں سب سے اہم رشتہ شوہر اور بیوی کا ہے، شوہر اور بیوی کے بارے میں قرآن پاک میں ارشاد ہے:

‘‘وہی ہے جس نےتم کو ایک جسم سے پیدا کیا اور اس کے لیے خود اسی کی جنس سے ایک جوڑا بنایا تاکہ وہ اس کے پاس سکون حاصل کرے۔(اعراف :189)

قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ نے اہل ایمان کی ایک دعا کے جواب میں اس طرح ارشاد فرمایا ہے:

‘‘ ان کے رب نے ان کی دعا قبول فرمائی کہ تم میں سے کسی کا عمل ضائع کرنے والا نہیں خواہ مرد ہو یا عورت ، ‘‘عورت سب ایک دوسرے سے ہو(آل عمران :195)

قرآن مجید کی اس آیت سے یہ پتہ چلتا ہے کہ اسلام نے عورت اور مرد دونوں کو برابر کا درجہ دیا ہے۔ تم سب ایک دوسرے سے ہو’’ کے الفاظ یہ بتاتے ہیں کہ عورتوں اور مردوں دونوں کا معاملہ یکساں ہے۔ اس سے یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ اسلام نے عورتوں او رمردوں دونوں کی اخلاقی ذمہ داریاں یکساں رکھی ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ انعام اور جزا کا معاملہ بھی دونوں کے ساتھ یکساں ہوگا۔ اسلام نے عورت اور مرددونوں کے جہاں ایک طرف حقوق یکساں رکھے ہیں وہیں دوسری طرف ان کی ذمہ داریاں بھی برابر رکھی ہیں۔قرآن مجید میں ایک دوسری جگہ ارشاد فرمایا گیا ہے:

اے لوگو! اپنے رب سے ڈرو جس نے تم کو ایک جان سے پیدا کیا ہے اور اس سے ان کا جوڑا پیدا کیا ہے اور ان دونوں سے بہت سے مرد اور عورتیں پھیلا دیں۔ اور اللہ سے ڈرو جس کے واسطے سے تم ایک دوسرے سے سوال کرتے ہو اور خبر دار رہو قرابت والوں سے بے شک اللہ تمہاری نگرانی کررہا ہے(النسا :آیت 1)

قرآن مجید کی یہ آیت بہت ہی واضح طور پر یہ بتاتی ہے کہ عورت اور مرد دونوں کی اصل ایک ہے ۔ دونوں ایک ماں باپ سے ہیں۔ اس اعتبار سے دونوں کے درمیان سلوک اور برتاؤ میں کسی طرح کوئی فرق و امتیاز رو ا نہیں ہونا چاہئے ۔ جس سلوک کا حق دار ایک مرد ہوسکتا ہے اس سلوک کی حق دار عورت بھی ہے ۔ قرآن مجید میں مرد وعورت کی تخلیق کےلئے خلق منہاز جہا ( اور اس سے ان کا جوڑا بنایا) یہاں منہا سے مراد من جنسہا ہے جس کا مطلب یہ ہوا کہ اللہ تعالیٰ نے جس مادہ سے آدم السلام کو پیدا کیا اسی مادہ سے ان کے جوڑے یعنی حضرت حوّا کو بھی پیدا کیا۔ تخلیق کا یہ اشتراک مساوات کا ثبوت ہونے کے ساتھ ہی اس جانب بھی رہنما ئی کرتا ہے کہ مرد اور عورت دونوں کو کامل اتحاد کے ساتھ رہنا چاہئے۔

قرآن پاک میں مرد کو عورت کا لباس کہا گیا ہے اور عورت کو مرد کا لباس کہا گیا ہے لباس کا مقصد جہاں ایک طرف ستر چھپانا ہوتا ہے تو دوسری طرف اس کا مقصد زیب وزینت کا اظہار بھی ہوتا ہے ۔قرآن مجید نے اس بلیغ جملہ میں عورت اور مرد دونوں کی حیثیت متعین کردی یعنی دونوں ایک دوسرے کے لیے لباس کی طرح ہیں۔ جوان کے جسمانی عیوب کی پردہ پوشی کرتا ہے، جو ان کے جسم کا سب سے قریبی رازدار ہوتا ہے اور جو ان کے وجود سے سب سے قریب تر چیز ہوتی ہے۔قرآن مجید میں عورت اور مرد کے لیے لباس کی بلیغ تشبیہ نہ صرف یہ کہ ان کے رشتے کی تعیین کرتی ہے بلکہ اس رشتے کے تقاضوں کو بھی ایک دوسرے پرپوری طرح واضح کردیتی ہے۔ قرآن مجید نے دیگر سماجی معاملات میں بھی عورت او رمردوں دونوں کا یکساں طور پر ذکر کیا ہے مثال کے طور پر وراثت کے حقوق کے سلسلہ میں سورہ نسا آیت نمبر 7میں ارشاد ہوا ہے‘‘ماں باپ اور قرابت داروں کے ترکہ میں سے مردوں کا بھی حصہ ہے اور ماں باپ اور قرابت داروں کے ترکہ میں سے عورتوں کا بھی حصہ ہے تھوڑا ہو یا زیادہ ایک مقرر کیا ہوا حصہ۔

معلوم تاریخ میں قرآن مجید میں پہلی مرتبہ عورتوں کو وراثت میں حصہ دیا گیا ۔ صرف  یہی نہیں کہ ان کے حصہ کی بات کہی بلکہ اسے مقرر کردیا جس کا عورت کو دیا جانا ضروری ہےخواہ مال تھوڑا یا زیادہ ۔ بعض لوگ یہ اعتراض کرتے ہیں کہ قرآن نے عورت کو مرد کے مقابلے میں میراث میں آدھا حصہ دیا ہے لیکن یہ اعتراض صرف منفی ذہنیت پرمبنی ہے۔ پہلی بات تو یہ سوچنی چاہئے کہ چودہ سوسال پہلے یہ حصہ مقرر کیا گیا جب کہ جدید قوانین کو بننے میں صدیاں باقی تھیں۔ دوسری بات یہ ہے کہ عورت کو صرف باپ کے ترکہ میں سے حصہ ملتا ،شوہر کے ترکہ میں سے بھی ملتا ہے۔اس طرح عورت کو دوگھروں کی میراث ملتی ہے او رمرد کو صرف ایک جگہ کی۔ اس اعتراض کی ایک بڑی وجہ ناواقفیت بھی ہے کیوں کہ بعض ایسے مواقع  بھی آتے ہیں جب عورتوں کو مردوں سے زیادہ حصہ وراثت میں ملتا ہے۔

قرآن مجید میں عورت کو انسانی سماج کا ایک فعال اور موثر رکن بنا کر پیش کیا گیا ہے۔ وہ عورت کو سماج میں عضو  معطل بنا کر نہیں رکھتا ۔چنانچہ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:

‘‘اور تم ایسی چیز کی تمنا نہ کرو جس میں اللہ نے تم میں سے ایک دوسرے پر بڑائی دی ہے ۔مردوں کے لئے حصہ ہے اور کمائی کا اور عورتوں کے لیے حصہ ہے اپنی کمائی کا اور اللہ سے اس کا فضل مانگو۔بے شک اللہ ہر چیز کا علم رکھتا ہے( النسا:32)

قرآن مجید کی اس آیت میں جہاں ایک طرف یہ بتایا گیا کہ مرد او ر عورتیں اپنی صلاحیت کے اعتبار سے مختلف ہیں۔ بعض معاملات میں عورت مرد سے آگے جاسکتی ہے۔ بعض میں مردوں کو عورتوں پر فوقیت ہوسکتی ہے۔ اور ایسا صرف مردوزن میں ہی نہیں بلکہ دومردوں میں جس طرح فرق ہوسکتا ہے اسی طرح عورت اور مرد میں بھی ایسا ہونا چنداں تعجب کی بات نہیں۔

قرآن مجید میں ایک جگہ ارشاد فرمایا گیا ہے:

‘‘اور مومن مرد اور مومن عورتیں ایک دوسرے کے مددگار ہیں۔ وہ بھلائی کا حکم دیتے ہیں اور برائی سے روکتے ہیں اور نماز قائم کرتے ہیں اور زکوٰۃ دیتے ہیں اور اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کرتے ہیں ۔یہی لوگ ہیں جن پر اللہ رحم کرے گا، بے شک اللہ زبردست ہے حکمت والا ہے، مومن مردوں ا ور مومن عورتوں سے اللہ کا وعدہ ہے ، باغوں کا کہ ان کے نیچے سے نہریں جاری ہوں گی، ان میں وہ ہمیشہ رہیں گے (التوبہ :71، 72)

اس آیت میں عورت اور مرد کی اصو لی حیثیت طے کردی ہے۔ قرآن کے مطابق عورت اور مرد ایک دوسرے کے مددگار ہیں۔ رہی زن وشوہر کے تعلقات میں نظر آنے والی عدم مساوات تو یہ بھی ایک طرفہ نقطہ نظر ہے ، زن وشوہر کے معاملے میں اصل اہمیت تعلقات کی پائیداری اور استواری کی ہے، اور قوام کامطلب بھی زیادہ سے زیادہ منتظم لیا جاسکتا ہے ۔ ورنہ عورت بحیثیت ماں اپنی اولاد کو نگراں ہوتی ہے جس میں بیٹے اور بیٹی دونوں شامل ہیں۔

خلاصہ یہ ہے کہ قرآن پاک نے آج سے چودہ سو سال  قبل عورت اور مرد کو بنیادی طور پر ایک جنس اور مساوی درجہ کا حامل قرار دیا ۔ عورت کو وہی مقام دیا جو مرد کا تھا۔ دونوں کے لیے یکساں اصول رکھے، مرد کو اس کے اعمال کا بدلہ ملےگا، عورت کو اس کے اعمال کا بدلہ ملے گا، دونوں کو ایک دوسرے کا مدد گار قرار دیا۔ دونوں کو ایک دوسرے کے لیے سکون وراحت حاصل کرنے کا ذریعہ بتایا ۔دونوں کو ایک دوسرے کا لباس قرار دیا ۔ میراث میں دونوں کے حصہ مقرر کئے ۔ اور دونوں کو سماجی زندگی میں اپنا اپنا کردار ادا کرنے کی پوری آزادی بخشی ،عورت کو یہ اختیار دیا کہ وہ اپنے لیے شوہر کا انتخاب خود کرے او رمردوں کو پابند کیا کہ وہ کسی عورت پر زبردستی اپنی مرضی کا شوہر مسلط کرنے کی کوشش نہ کریں۔

اس طرح تاریخ انسانی میں پہلی بار عورت کو نہ صرف اس کا جائز حق بلکہ اسے حاصل حقوق کو قانون کا تحفظ بھی ملا۔ یہ دنیا ئے انسانیت پر قرآن کریم کا عظیم ترین احسان ہے۔

( صدر شعبہ اسلامک اسٹڈیز ،جامعہ ملیہ اسلامیہ)

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/holy-quran--the-guarantor-of-respect-for-women--نسائی-عزو-وقار-کی-ضامن-قرآن-کریم/d/3525

 

Loading..

Loading..