New Age Islam
Thu Apr 22 2021, 11:07 AM

Urdu Section ( 5 Feb 2011, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Jamaat-e-Islami Hind: The Proposed Political Party of India جماعت اسلامی ہند کی مجوزہ سیاسی پارٹی

By Ahsan Mustaqeemi (Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk)

The political party in the eye of a respected member of Majlis-e-Shoura

Saadatullah Hussaini is a member of Majlis-e-Shoura and is one of the prominent personalities in favour of playing an active role in politics. Therefore, he has tried to mould the mentality of the activists in favour of the party. In a way, his article is an interpretation of the proposed political party of Jamat Islami. That is also the reason our colleagues should study it. He is also of the view that ‘if Jamat Islami itself takes part in politics it will have to bring about some basic changes in its constitution and objectives which is neither appropriate nor in the interests of the party in the long run.’ And even if Jamat does bring about the basic changes in its constitution and objectives and adopts secularism, socialism and democracy and then takes part in the elections, according to the author, the damages, it will incur will be as follows:

“It is feared that these temporary objectives will become our permanent objectives in future and the main objective, the implementation of religion, will be put on the back burner. No other movement in the country will survive that will be dedicated to the real and ultimate objective. The changes in the real structure of the movement for temporary political goals will drive it away from the basic responsibilty of dawah and islah (reform).”

The other loss will be that “the experience of the Islamic movements the world over show that the generality and rumpus of politics create problems of training in the movement, ideological maturity and dedication. Moreover, conducting religious and political activities simultaneously in a secular country is not possible. In this situation, one of the two tasks is affected. Therefore, the better option is that Jamat should persist with its basic objective – the implementation of the deen – publicly and continue with its struggle towards achieving it and should strive for the temporary political objectives through its separate political organisation and guide it onto the right path with the help of its trained cadre.” Another respected member of the Majlis-e-Shoura says that ‘Jamat Islami should stick to the resolution while the political party should work on the temporary goals.”

Here some important points emerge. First, the author thinks that there should be a dividing line between politics and religion. There should be separate organisations for politics and religion. Therefore, the following couplet of Iqbal loses its meaning:

Juda ho deen siyasat se to rah jati hai changezi

(If religion is separated from politics, what is left is only barbarism (unrestrained material pursuit).

Secondly, the political party the Jamat will form or cause to be formed directly or indirectly (there is no difference between them in practical terms) will not have shariat, tuheed (belief in one God), risalat (Prophethood), and Akhirat (Hereafter) but secularism, socialism and democracy as the basis of its objectives and goals. Its entire structure will be secular having no place for Allah, the Prophet (PBUH) and the Quran. How will then the ‘trained activists’ of Jamat Islami be able to fit themselves into it? How will they be members and portfolio holders of two parties having opposite objectives at the same time? What kind of guidance will the ‘trained persons’ provide? The third question arises: Won’t the main objectives of the party be ignored by the workers involved in the political wing and will not the temporary goals become the main objectives of the party? Won’t they fall apart from the task of dawah and islah? And won’t their association with the political party put their peity, their training, their faith and beliefs and their association with the movement at stake? Can we ignore the question how can a political party devoid of tauheed, prophethood, and the Quranic messages be considered the centre of aspirations of the Jamat Islami Hind and how can Jamat cooperate with it? How can the money, time and abilties of the activists be spent on it? How ridiculous it would sound that the Jamat Islami will not be responsible for whatever good and bad deeds of the political party commits. Will the authorities of Jamat be able to prove themselves innocent before God in hereafter?

Short term objectives of the proposed political party

The proposed political party will be for short term political objectives. What are these short term political objectives? The author of the article has also mentioned them. He writes:”The establishment and protection of Darul Amn, the protection of the democratic values that are already legally and practically implemented, paving the way for the implementation of the values that are implemented only on documents but not on practical levels, and efforts to incorporate the values that have not been incorpoarated in the Constitution are some of the short term objectives. There are some Islamic principles and values that are not legally and practically implemented in the country. Public opinion can be formed in favour of them without mentioning Islam and efforts can be made to get them implemented. For example, the basic rights of life, free mandatory education, free medical treatment, rural development and rural employment. Efforts can be made to prevent alcoholicism, adultery, gambling and interest. The implementation of these possible values should be the goal of the Islamic politics (where did ‘Islamic’ come from) in the temporary phase.”

The author should have also explained that the Muslim leaders and their organisations, and non-Muslim leaders and their organisations have been active jointly and separately on these issues for the last 63 years in the country. What results have their efforts yielded? And what were the demerits or causes if the desired results were not achieved? And will their political party not repeat the same mistakes or face the same problems and how much time will their political party need to achieve their goal?

 Islam is not a precondition in the short term political goals

Islam is not a precondition in the short term goals in sight presently. ( Will the efforts and toil be acceptable to Allah in the matters where Islam is not involved?). The non-Muslims too can agree on those issues.” Therefore, non-Muslims will also participate in the politics shoulder to shoulder. And if it is not so that is, if it is a political party of only the Muslims, it will become a cause for national confrontation and will not be able to win the confidence of the non-Muslims.” So, this political party will be constituted by both Muslims and non-Muslims and this secular political party will be run by Jamat Islami through its trained cadre. It will neither affect the faith and belief of the ‘trained cadre’ and the Muslim leaders and members of the political party nor will their sanctity and peity be harmed. It means, despite their involvement in secular politics, they will remain pure.

Support to atheistic system

When Communism was at its peak, some ulema and intellectuals had the view that if the concept of God is included in Communism, the whole system will become an Islamic one. Similarly, if the concept of God is taken out of Islam, the whole system can be declared Communism. The position of some of our ulema and intellectuals on the issue is the same today. Indeed they agree that socialism, democracy and secularism are unIslamic ideas and atheistic democratic system is unIslamic and illegitimate but since the Constitution of the country presents the concept of justice and equality, all the citizens have been given equal status irrespective of religion, colour, caste and social, economic and and political status, the rights of the minorities have been guaranteed, The right of forming organisations has been recognized and The sovereignty of the law has been recognized, all these are in harmony with the teachings of Islam, though all of them may not be implemented  practically. From this aspect, Jamaat Islami supports democracy and considers it an appropriate form of politics in the country (Jamat Islami Hind aur tariqa-e-kar). These are not the views of the Amir of Jamat Islami Hind alone but there are other intellectuals in the movement whose thoughts are much in accordance with these. Everyone is aware of the fact that the democratic system has given way to decadence the world over. The history of our own country is testimony to the fact that this is a deceptive ideology and system. Even the supporters of democracry have declared it a failure. Of course, it has some merits and virtues as every illegitimate ideology and system has some virtues. Evil can never expose itself without the facade of truth. Satan had also come before Adam and Eve in the guise of a preacher but the claim that all these virtues are in harmony with Islamic teachings is incomprehensible. Let me present here a story:

The story of a Maulvi

A maulvi was engaged in tabligh work with dedication and enthusiasm. Someone told him, “ Maulvi saheb, dacoits rule over a wide area of Chambal Valley. You should convey the message of God to them too.” The maulvi agreed. He reached a neighbourhood in the Chambal Valley where many dacoits and their sardars lived. Maulvi saheb told them that robbery is unIslamic and the punishment for it was imprisonment in the world and hell in the hereafter. Organise a jalsa at night and invite all the other dacoits in your area. I will deliver a lecture on this subject.” A jalsa was arranged. But before the jalsa, some people came and said to the maulvi, “The dacoits in this area are our benefactors. They help us too with the booty they bring. They help many poor and the needy. If they are not here, no one will be there to take care of us. Secondly, if you say something against them, they might even kill you. So please deliver your lecture carefully.” This made the maulvi worried. He thought for some time and then the gaiety returned to his face as if an effective idea had occurred to him. Now the maulvi delivered his speech as follows.

“Gentlemen! Theft and robbery are unIslamic acts. But it has another aspect as well. These dacoit gentlemen carry out social welfare activities on a large scale. They help the poor and the needy. And this is in perfect harmony with the teachings of Islam. So I congratulate these dacoit gentlemen and I appeal to them to stay here and carry on their work. If they go from here, oppressors will take over this area and mete out torture and persecution on the people of the area.”

Now say, isnt it the same position we are in? The whole population there is grateful to the dacoits and they really help them but here the claim is made that the system is in harmony with religious teachings on the basis of the implementation of rights and privileges only on paper whereas the ground realities are very pathetic. The argument is being presented that if we do not strive to protect the secular democratic system, the fascist forces will overrun us and wipe us out whereas the fact is that these fascist organisations have taken birth from the very democratic system and were brought up under its patronage and reached the seat of power through its ladders.

Source: Sahafat, New Delhi

URL of First part: https://www.newageislam.com/urdu-section/jamaat-e-islami-hind--the-proposed-political-party-of-india--جماعت-اسلامی-ہند-کی-مجوزہ-سیاسی-پارٹی/d/4067

 

URL: https://newageislam.com/urdu-section/jamaat-e-islami-hind--the-proposed-political-party-of-india--جماعت-اسلامی-ہند-کی-مجوزہ-سیاسی-پارٹی/d/4074

احسن مستقیمی

گذشتہ سے پیوستہ

سیاسی پارٹی مرکزی شوریٰ کے ایک معزز رکن کی نگاہ میں: برادرم سعادت اللہ حسینی مرکزی مجلس شوریٰ کے رکن اور الیکشنی سیاست میںآکر مؤثر رول کرنے کے حق میں جو حضرات ہیں ان میں یہ نمایاں مقام کے حامل ہیں۔ چنانچہ جیسا کہ میں نے عرض کیا کہ موصوف مقالہ نگار نے اپنے مقالہ کے ذریعہ ارکان جماعت کی ذہن سازی اور انہیں مطمئن کرنے کی کوشش کی ہے۔گویا ایک طرح سے ان کا یہ مقالہ جماعت اسلامی ہند کی پسندیدہ مجوزہ سیاسی پارٹی کا ترجمان ہے۔ اس لئے بھی ضرورت محسوس ہوتی ہے کہ ہمارے تحریکی رفقاء اس کا مطالعہ کریں۔ محترم موصوف کا بھی یہی خیال ہے کہ ’’اگر جماعت اسلامی ہند خود انتخابات میں حصہ لینا چاہئے تو اسے اپنے دستور اور مقاصد میں بہت بنیادی تبدیلیاں کرنی پڑیں گی جو نہ مناسب ہے اور نہ تحریک کے طویل المیعاد مفاد میں ہے‘‘۔ اور اگر بفرض محال جماعت اپنے دستور اور مقاصد میں یہ بنیادی تبدیلیاں کرلے یعنی اپنے دستور کو ایک سیکولر دستور میں تبدیل کردے۔ اسی طرح اپنے مقصد اور نصب العین اور طریقۂ کار اور شرائط رکنیت وغیرہ میں ایسی تبدیلیاں کرلے جو سیکولرزم ، سوشلزم اور جمہوریت سے پوری طرح ہم آہنگ ہوں اور پھر الیکشن میں حصہ لے تو مقالہ نگار کے نزدیک اس کے جونقصانات ہوں گے وہ کچھ اس طرح کے ہوں گے۔ فرماتے ہیں ’’ اس بات ا ندیشہ ہے کہ مستقبل میں یہی عبوری مقاصد ہمارے اصل مقاصد بن جائیں گے اور اصل نصب العین (یعنی اقامت دین) نظروں سے اوجھل ہوجائے گا۔ کوئی اور تحریک (اس ملک میں) ایسی باقی نہیں رہے گی جو اصل اور حتمی نصب العین کے لئے سرگرم ہو۔ وقتی اور عبوری سیاسی مقاصد کے لئے تحریک کے اصل ڈھانچہ میں تبدیل اسے دعوت اور اصلاح کے بنیادی کام سے دور کردے گی‘‘۔ دوسرا نقصان یہ ہوگا کہ ’’دنیا بھر کی اسلامی تحریکوں کے تجربات بتاتے ہیں کہ سیاسی کاموں کی ہنگامہ خیزی اور عوامیت ، تحریکوں میں تربیت ، نظریاتی پختگی اور وابستگی وغیرہ کے مسائل پیدا کردیتی ہے۔‘‘ مزید یہ کہ ’’سیکولر ملک میں مذہبی اور سیاسی کاموں کا ساتھ ساتھ لے کر چلنا عملاً ممکن نہیں ہے۔ اس صورت میں دونوں میں سے کوئی ایک کام لازماً متاثر ہوتا ہے۔ اس لئے زیادہ بہتر شکل یہ ہے کہ جماعت اپنے اصل نصب العین (اقامت دین) کے ساتھ بالاعلان وابستہ رہے اور اس کے لئے جدوجہد کرتی رہے اور عبوری سیاسی مقاصد کے لئے اپنے تربیت یافتہ افراد کے ذریعہ ایک علیٰحدہ (سیاسی) تنظیم کے ذریعہ جد وجہد کرے اور اس تنظیم کو اپنے تربیت یافتہ افراد کے ذریعہ صحیح راستہ پر قائم رکھے‘‘۔ایک اور مرکزی شوریٰ کے معزز رکن کا کہنا ہے کہ ’’جماعت اسلامی عزیمت پر باقی رہے البتہ سیاسی پارٹی رخصت پر عمل کرے‘۔

چند غور طلب امور : یہاں کئی سوالات ابھر کر سامنے آتے ہیں ۔ ایک یہ کہ مقالہ نگار کے نزدیک ’’مذہب ‘‘ اور ’’سیاست‘‘ میں جدائی ضروری ہے۔ مذہب کے لئے علیٰحدہ تنظیم ہو اور ’’سیاست‘‘ کے لئے الگ پارٹی ہونی چاہئے۔ گویا یہ تصور فضول ہے کہ جدا ہودیں سیاست سے تو وہ جاتی ہے چنگیزی ۔ دوسرا سوال یہ کہ جماعت براہ راست یا بالواسطہ (دونوں میں کوئی معنوی فرق نہیں ہے) جو سیاسی تنظیم بنائے گی یا بنوائے گی ظاہر ہے کہ اس کے مقصد ، نصب العین ، طریقۂ کار اور دعوت کی بنیاد ، توحید، رسالت اور آخرت اور دین وشریعت نہ ہوگی بلکہ سیکولرزم ، سوشلزم اور ڈیمو کریسی ہی ہوگی۔ اس کا پورا ڈھانچہ سیکولر ہوگا جس میں اللہ ، رسولؐ ، قرآن وسنت کا دور دور تک نام ونشان بھی نہ ہوگا تو اس ڈھانچے میں جماعت اسلامی کے ’’تربیت یافتہ حضرات ‘‘ خود کو کس طرح فٹ کرسکیں گے؟وہ بیک وقت دونوں متضاد پارٹیوں کے ممبر اور عہد یدار کس طرح ہوں گے؟ تربیت یافتہ حضرات کس نوعیت کی رہنمائی کریں گے؟ تیسرا سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اس سیکولر سیاسی پارٹی میں جو حضرات سرگرم عمل ہوں گے کیا اصل نصب العین ان کی نظروں سے اوجھل نہیں ہوجائے گا؟ اور مستقبل میں یہی عبوری مقاصد ان کے اصل مقاصد نہیں بن جائیں گے؟ اور ’’دعوت واصلاح‘‘ کے بنیادی کام سے وہ دور اور بہت دور نہیں جاپڑیں گے؟ اور ’’سیاسی ہنگامہ خیزی ‘‘ ان کی تربیت ، ان کے تقویٰ وتقدس ، ان کے ایمان وعقیدہ اور تحریک سے وابستگی کو داؤں پر نہیں لگادے گی؟کیا اس سوال سے چشم پوشی درست ہوگی کہ ایک ایسی سیکولر سیاسی پارٹی جس کے پورے ڈھانچے میں توحید، رسالت اور آخرت اور قرآن وسنت کی روشنی کا داخلہ ممنوع ہو وہ جماعت اسلامی ہند کی آرزوؤں اور تمناؤں کا مرکزکس طرح قرار پاسکتی ہے ؟ جماعت اس کے ساتھ تعاون کس طرح کرسکتی ہے کارکنان تحریک کا کوئی پیسہ اور کوئی لمحہ حیات اور خدا داد صلاحیت اس کی نذر کس طرح کیا جاسکتا ہے ؟ پھر یہ دعویٰ کس قدر مضحکہ خیز اور ناقابل فہم ہے کہ سیاسی پارٹی جو بھی بھلا برا کام کرے گی جماعت اسلامی ہند اس کی ذمہ دار نہ ہوگی۔ کیا جماعت کے ذمہ داران اور کارکنان اس پارٹی سے اپنے زبانی، مالی اور عملی تعاون پر کل اللہ رب العزت کے سامنے بھی بری الذ مہ ہوسکیں گے؟

مجوزہ سیاسی پارٹی کے عبوی مقاصد: مجوزہ سیاسی پارٹی عبوری اور وقتی سیاسی مقاصد کے حصول کے لئے ہوگی ۔ یہ وقتی ، عبوری اور سیاسی مقاصد کیا ہے؟ مقالہ نگار نے ان کا بھی ذکر کیا ہے۔ لکھتے ہیں ’’دارالامن کا قیام اور اس کا تحفظ ،جن جمہوری قدروں کا قانونی اور عملی طور پر نفاذ ہے ان کا تحفظ ، جو قدریں دستاویزی سطح پر تو نافذ ہیں لیکن عملاً ان کے نفاذ میں کمزوریاں ہیں ان کے مکمل نفاذ کے لئے راہیں ہموار ہوں اور جو قدریں قانون اور دستور میں جگہ نہیں پاسکیں انہیں یہ جگہ ملے ۔ اسلام کی بعض قدریں قانوناً یا عملاً اس ملک میں قائم نہیں ہیں لیکن اسلام کا نام لئے بغیر ان کے قیام کی کوشش کی جاسکتی ہے۔ مثلاً ضروریات زندگی کا حق ، مفت لازمی تعلیم، مفت علاج ومعالجہ ، دیہی ترقی ودیہی روزگار وغیرہ نافذ کئے جاسکتے ہیں۔ شراب ، جو، زنا اور سود جیسی برائیوں کی روک تھام کی کوشش کی جاسکتی ہے ۔ اس طرح کی ساری ممکن قدروں کا نفاذ عبوری مرحلہ میں اسلامی ( یہ اسلامی کہا ں سے آگیا) سیاست کا ایک اہم ہدف ہونا چاہئے۔‘‘مقالہ نگار کو یہ وضاحت بھی کرنی چاہئے تھی کہ اس ملک میں گزشتہ 63سالوں کے اندر مسلم قائدین اور ان کی تنظیمیں ، غیر مسلم شخصیتوں اور ان کی تنظیمیں الگ الگ بھی اور مشترکہ طور پر بھی مندرجہ بالا ایشوز پر سرگرم عمل رہی ہیں۔ ان کے نتائج کیا سامنے آئے ؟ اور اگر حسب منشا نتائج برآمد نہیں ہوئے تو کن خامیوں کی بنا پر اور کن وجوہ سے تھا کہ اب آپ کی مجوذہ سیاسی پارٹی ان خامیوں کا اعادہ نہ کرسکے اور اندازاً آپ کی پارٹی کو کامیابی کی منزل تک پہنچنے میں کتنی مدت درکار ہوسکتی ہے؟

عبوری سیاسی مقاصد میں اسلام شرط نہیں ہے:مقالہ نگار فرماتے ہیں’’ اس وقت جو عبوری مقاصد پیش نظر ہیں ان کے لئے اسلام شرط نہیں ہے(جن مقاصد میں اسلام شرط نہ ہو ان کے حصول کی سعی وجہد اللہ تعالیٰ کے عدالت میں قابل قبول ہوگی؟)ان مقاصد سے غیر مسلم بھی اتفاق کرسکتے ہیں ۔‘‘اس طرح اس سیاسی پارٹی میں غیر مسلم بھی شامل اور شانہ بشانہ سرگرم عمل ہوں گے۔ ایسا نہ ہو یعنی ’’ اگر یہ مسلمانوں کی سیاسی پارٹی ہوگی توقومی کشمکش کا سبب بنے گی اور کبھی غیر مسلموں کا اعتماد حاصل نہیں کرسکتی۔‘‘اس طرح مسلم اور غیر مسلم پر مشتمل یہ سیاسی پارٹی ہوگی اور اس سیکولر سیاسی تنظیم کو جماعت اسلامی ہند اپنے تربیت یافتہ افراد کے ذریعہ ڈیل کرائے گی۔ اس سے ان تربیت یافتہ حضرات اور سیاسی پارٹی کے مسلم عہدیداران وممبران کے ایمان وعقیدے پر کوئی آنچ آئے گی اور نہ ان کا تقویٰ وتقدس مجروح ہوگا۔علیٰ حالہ ان کی کیفیت برقرار رہے گی کہ دامن نچوڑ دیں توفرشتے وضو کریں۔

لادینی جمہوری نظام کی تائید بھی: جس دور میں کمیونزم کا عروج تھا اس وقت ملت کے کچھ علماء اور دانشوروں نے بلند بانگ دعوے کئے تھے کہ اگر کمیونزم میں خدا کا تصور شامل کردیا جائے تو پورا سسٹم کمیونزم قرار پائے۔ آج ٹھیک یہی کیفیت ہمارے یہاں کچھ علماء اور دانشوروں کی ہے وہ یہ تو تسلیم کرتے ہیں سیکولرزم ، سوشلزم اور ڈیموکریسی غیر اسلامی نظریات ہیں اور لادینی جمہوری نظام غیر اسلامی اور خلاف حق ہے مگر چونکہ یہاں کے دستور میں عدل ومساوات کا تصور پیش کیا گیا ہے۔ تمام شہریوں کو بلاتفریق مذہب وملت ، رنگ ونسل، شہری ، سیاسی ، سماجیاور قانونی حیثیت سے برابر کا درجہ دیا گیا ہے ۔ ملکی قانون کی بالا دستی تسلیم کی گئی ہے۔ اقلیتوں کے حقوق کی ضمانت دی گئی ہے۔ تحریرو تقریر ، اظہار خیال اور عقیدہ ومذہب کی آزادی دی گئی ہے۔ جماعت سازی کا حق تسلیم کیا گیا ہے۔خواہ عملی دنیا میں زیر عمل نہ آتے ہوں پھر بھی یہ سب باتیں اسلام کی تعلیمات سے ہم آہنگ ہیں۔ اس پہلو سے جماعت اسلامی جمہوریت کی تائید کرتی ہے۔ موجودہ حالات میں اسے ملک کے لئے بہتراور موزوں طرز سیاست سمجھتی ہے(1) جماعت اسلامی ہند اور طریقۂ کار ) یہ ایک معروف عالم دین اور جماعت اسلامی ہند کے امیرہی کی سوچ نہیں بلکہ جماعت کے اندر اور بھی دانشور ان تحریک ہیں جن کا فکر اس فکر سے پوری طرح ہم آہنگ ہے ۔ کون نہیں جانتا کہ آج پوری دنیا میں سیکولر جمہوری نظام سے تنزل بڑھ رہا ہے۔ خود اپنے ملک کی ساٹھ سالہ تاریخ شاہد ہے کہ یہ ایک پر فریب نظریہ ونظام ہے۔ جمہوریت کے ثناخواں اور علمبردار بھی اسے ایک ناکام نظریہ ونظام قرار دے رہے ہیں ۔ بلاشبہ اس کے اندر کچھ خوبیاں اور خصوصیات ہیں اور یہ ہر باطل نظریہ ونظام میں لازماً ہوتی ہیں۔ باطل کبھی حق کے لبادہ کے بغیر سامنے آہی نہیں سکتا ۔ ابلیس لعین بھی آدم وحوا کے سامنے ایک ناصح کی حیثیت سے آیا مگر یہ دعویٰ کہ یہ خصوصیات اسلامی تعلیمات سے ہم آہنگ ہیں ناقابل فہم ہے ۔ اس موقع پر ایک مبلغ کا واقعہ سنئے۔

قصہ ایک مولوی صاحب کا: ایک مولوی صاحب جو دعوت وتبلیغ کا کام نہایت ذوق وشوق اور یکسوئی کے ساتھ انجام دے رہے تھے ۔ کسینے ان سے کہا ’’مولوی صاحب! چنبل گھاٹی کے ایک وسیع ایریے میں ڈاکوؤں کا راج ہے، آپ ان تک بھی تو خداکا پیغام پہنچائیں ۔ مولوی صاحب تیار ہوگئے۔ چنبل گھاٹی کے ایریے میں ایک قصبہ کے اندر پہنچے جہاں بہت سے ڈاکو اور ان کے سردار بھی رہتے تھے ۔ مولوی صاحب نے لوگوں سے کہا کہ ڈاکہ ڈالنا اسلام میں حرام ہے۔ اس کی سزا اس ملک میں جیل اور آخرت میں جہنم ہے۔ رات میں جلسہ عام کا اہتمام کرو اور جو ڈاکو تمہاری آبادی میں ہیں انہیں بھی شرکت کی دعوت دو۔ میں تقریر کروں گا‘‘۔لوگوں نے جلسے کا انتظام کردیا ۔ مگر تقریر سے قبل ہی کچھ لوگ مولوی صاحب سے ملے اور عرض کیا کہ ’’مولوی صاحب ! اس ایریے میں جو ڈاکو ہیں وہ ہمارے محسن ہیں ۔ وہ ڈاکے ڈال کر جوکچھ لاتے ہیں اس میں سے ہماری بھی مدد کرتے ہیں۔ بہت سے غرباء اور مساکین کی وہ مدد کرتے رہتے ہیں۔ وہ اگر نہ ہوں تو ان کا اور ہم سب کا کوئی پرسان حال نہ ہوگا۔ دوسری بات یہ کہ اگر آپ ان ڈاکوؤں کے خلاف کوئی بات کہیں گے تو اندیشہ ہے کہ آپ کو اپنی جان سے بھی ہاتھ دھونا پڑے۔ اس لئے ذرا سوچ سمجھ کر تقریر کیجئے گا۔‘‘ یہ سننا تھا کہ مولوی صاحب پریشان ہوگئے ۔ کچھ دیر غور وفکر کرتے رہے ۔ پھر ان کے چہرے پر بشاشت لوٹ آئی جیسے مولوی صاحب کو کوئی مؤثر تدبیر سجھائی دے گئی۔فرمایا’’ٹھیک ہے میں سمجھ گیا‘‘۔ اب مولوی صاحب نے زور دار تقریر کی جس کا لب لباب یہ تھا’’حضرات ! چوری ، ڈکیتی ایک غیر اسلامی کام ہے مگر اس کا ایک پہلو بھی ہے اور وہ یہ ہے کہ یہ ڈاکو حضرات خدمت خلق کے کام بڑے پیمانے پر انجام دیتے ہیں ، غرباء اور مساکین کی امداد کرتے ہیں، حاجتمندوں کی حاجت پوری کرتے ہیں، یہ سارے کام دینی تعلیمات سے پوری طرح ہم آہنگ ہیں ۔ لہٰذا ہم ان ڈاکو حضرات کو مبارکباد دیتے ہیں اور ہماری دلی خواہش ہے کہ یہ حضرات یہاں رہیں اور اپناکام جاری رکھیں ۔ یہ اگر نہیں رہیں گے تو غلط قسم کے لوگ ان پر مسلط ہوجائیں گے پھر ان کے ظلم و ستم کے پہاڑ آپ سب پر ٹوٹنے لگیں گے۔‘‘

آپ سچ بتائیے کہ کیا یہی کیفیت ہماری نہیں ہے؟ وہاں کی پوری آبادی ان ڈاکوؤں کی احسان مند ہے اور واقعی وہ ان کی بھرپور امدادکرتے ہیں مگر یہاں تو صرف کاغذی ضمانتوں اور حقوق ومراعات کے اندراج کا حوالہ دے کر انہیں دینی تعلیمات سے ہم آہنگ قرار دینے کا دعویٰ کیا جارہا ہے جبکہ زمینی حقائق انتہائی تشویشناک اور مایوس کن ہیں اور یہ دوہائی دی جارہی ہے کہ اگر اہم سیکولر جمہوری نظام کی تائید اور اس کے تحفظ اور بقا کی کوشش نہ کریں گے تو فسطائی تنظیمیں خود سیکولر جمہوری نظام کے بطن سے پیدا ہوئیں اور اس کی گود میں پروان چڑھیں اور اس کے فراہم کردہ زینے (الیکشن ( سے بام اقتدار تک پہنچیں اور پہنچ رہی ہیں۔

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/jamaat-e-islami-hind--the-proposed-political-party-of-india--جماعت-اسلامی-ہند-کی-مجوزہ-سیاسی-پارٹی/d/4074

 

Loading..

Loading..