New Age Islam
Fri Sep 25 2020, 09:20 PM

Urdu Section ( 4 Feb 2011, NewAgeIslam.Com)

Jamaat-e-Islami Hind: The Proposed Political Party of India جماعت اسلامی ہند کی مجوزہ سیاسی پارٹی

By Ahsan Mustaqeemi (Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk)

The Central Majlis-e-Shoura of Jamaat-e-Islami had a long time ago decided that :

Taking part in elections considering the present system of governance legitimate was right.

Taking part in elections considering the present system of governance un-Islamic and illegitimate to change it was right.

Taking part in elections considering the present system of governance un-Islamic and illegitimate was right in the interests of the Muslims.

But when it was learnt that its entry into politics was legally restricted because of the non-religious democratic system and the electoral politics, the Majlis-e-Shoura decided that Jamat Islami would form a ‘Islamic Political Party’ that will play an effective role in politics. But after many deliberations it was said that Jamat Islami did not have any plans to form any political party under its supervision, albeit the Jamat had the desire to see some serious-minded, righteous and principled people to come forward to promote a parallel healthy political culture in the country. If they establish such a political party the Jamat would back and co-operate with it.

Whether Jamat establishes a party directly or indirectly, it makes no difference. Any party formed due to the efforts and in line with the desire of Jamat will obviously have an impact on Jamat itself and also on the Muslims of India. It would be better if the central leadership of the Jamat had invited its activists and intellectuals from outside its fold to express their views on ‘the formation of a political party’ and published those views in their mouthpieces Dawat or Zindagi Nau. That would have highlighted all the aspects of the need of a political party. The activists would get an opportunity to reflect and the central committee would also have been able to reach the right conclusion. But unfortunately that did not happen. The members of the central committee and those senior leaders of the Party who are in favour of forming a political party and have the authority to express their views should also have publish their articles in their own newspapers and periodicals so that it would have been easy for the activists of the party to form an opinion. This was also not done. Although an article by Qasim Rasul Ilyas had appeared in Zindagi Nau in March 2008 and some people had expressed their reactions to it. Last month I came across yet another article titled ‘ Therik-e-Islami ki siyasi party’ (Political wing of the Islamic Movement). The author was Saadatullah Hussaini but probably this article was not published in any newspaper and was actually written for the guidance of the members and activists of the party. If it has been published, more and more activists and members would have benefitted from it but they were unable to benefit from a valuable writing.

Why Jamat Islami Hind can’t fight elections directly

Jamat Islami Hind can fight an election only when it strikes out the Islamic belief La illaha il Allah, Muhammad al Rasul Allah with its explanation, its objective as establishing the Sharia Laws and the declaration that the Quran and Sunnah will be its foundation. It will also have to strike out the conditions for membership, the responsibilities of the members and expected behavior, and instead express its faith in secularism, socialism and democracy. Not only that, Jamat will also have to wash its hands off the basic features of the faith like tauheed (belief in the oneness of God), Prophethood and the Hereafter, the Quran and Sunnah. Only then it can enter the electoral politics.

The deliverance of justice, an end to oppression and exploitation, rooting out corruption and violence, untouchability and casteism, campaigns against gambling, wine and bribery, making the availability of shelter, clothing and food to the people etc are the tasks it will have to incorporate into its constitution but Jamat is not in a position to take such a drastic step. Even the central committee might not be unanimous on the issue.

Secular democratic system in Jamat’s view

Presently, Jamat considers the secular democratic system un-Islamic and illegitimate. The central committee’s unanimous view is:”Since the democratic constitutional representatives of the country have decided to form such a system of governance that is not based on the basic concept of the sovereignty of God and considers democracy the foundation of sovereignty itself, the system is un-Islamic and illegitimate.(Jamat Islami and masla-e-intikhab p 45).” Maulana Jalaluddin Ansar, head of the Jamat Islami Hind says, ”In a democracy, the people are the centre of power. Only they have the power to legislate and decide what way of life is right or wrong for them. They have the complete authority to decide what is true and what is false, what is evil and what is good. There is no authority above them to seize their power or ban it. Their representatives form laws and run the governance. Islam does not believe in this kind of democracy. According to it, Allah is the Almighty. He is the source of all power. He has the authority to form laws. Man is not the lawmaker but is one who follows the laws made by Allah and implements it on land. He is free to extent he has been made by Allah and is bound by limitations imposed by Him. He is supposed to form laws and principles for himself according to his ordainments and work within their purview. This concept of Islam is in contrast with the modern concept of democracy. That is why Jamat Islami considers it un-Islamic. (Jamat Islami Hind and tariqa-e-kar p 72-73).

The statement of the respected head of Jamat that ‘This concept of Islam is in contrast with the modern concept of democracy’ is not a new revelation. This has been Jamat’s stance since day one. The constitution and the basic literature of Jamat represents this very concept. It is backed by arguments from Quran and Sunnat. The wisdom, history, experiences and observations of the ulema corroborate it.

Source; Sahafat, New Delhi

URL: https://newageislam.com/urdu-section/jamaat-e-islami-hind--the-proposed-political-party-of-india--جماعت-اسلامی-ہند-کی-مجوزہ-سیاسی-پارٹی/d/4067

احسن مستقیمی

جماعت اسلامی ہند کی مرکزی مجلس شوریٰ نے کافی عرصہ پہلے یہ فیصلہ کیا تھا کہ:

(1) موجودہ نظام حکومت کو صیحح سمجھتے ہوئے اسے چلانے کی غرض سے الیکشن میں حصہ لینا جائز ہے(2) موجودہ نظام حکومت کو غیر اسلامی اور خلاف حق سمجھتے ہوئے اس کو تبدیل کرنے کی غرض سے الیکشن میں حصہ لینا جائز ہے(3) موجودہ حکومت کو غیر اسلامی اور خلاف حق سمجھتے ہوئے اسلام اور مسلمانوں کے اہم مفادات کے لئے الیکشن میں حصہ لینا جائز ہے۔

مگر جب یہ معلوم ہوا کہ رائج الوقت لادینی جمہوری نظام اور اس کی الیکشنی سیاست میں ہر دو جائز صورتوں میں اس کا داخلہ قونوناً ممنوع ہے توپھر مرکزی مجلس شوریٰ کا یہ فیصلہ سامنے آیا کہ جماعت اسلامی ہند براہ راست ایاک ’’اسلامی سیاسی پارٹی‘‘ تشکیل دے گی جو الیکشنی سیاست میں مؤثر روال ادا کرے گی۔ مگر پھر غوروفکر کے بعد مرکزی مجلس شوریٰ نے یہ فیصلہ کیا کہ جماعت اسلامی ہند اپنی نگرانی میں کوئی سیاسی پارٹی بنانے کا ارادہ نہیں رکھتی البتہ جماعت کی یہ خواہش بھی ہے اور کوشش بھی کہ کچھ سنجیدہ ، باکر دار اور اصول پسند لوگ ملک میں ایک متوازی ، صحتمند سیاسی کلچر کے فروغ کے لئے آگے آئیں ۔ وہ اگر سیاسی پارٹی قائم کرتے ہیں تو جماعت ضرور ان کی ممکن تائید بھی کرے گی اور تعاون بھی۔

جماعت ایک سیاسی پارٹی خود براہ راست بنائے یا بالواسطہ بنوائے دونوں صورتوں میں کوئی جوہری فرق نہیں ہے۔ اس طرح جو سیاسی پارٹی جماعت کی خواہش اور کوشش کے نتیجہ میں تشکیل پائے گی ظاہر ہے کہ اس کے گہرے اثرات خود جماعت پر بھی پڑیں گے اورملت اسلامیہ ہند پر بھی۔ ہونا تو یہ چاہئے تھا کہ جماعت اسلامی ہند کی مرکزی قیادت ’’ایک سیاسی پارٹی کی تشکیل‘‘ کے موضوع پر کارکنا تحریک کو اور جماعت سے باہر فرزندان ملت کو اظہار خیال کی دعوت دیتی اور سہ روزہ ’’دعوت‘‘ اور ماہنامہ ’’زندگی نو‘‘ میں وہ تحریریں شائع کی جاتیں ۔ اس طرح ’’سیاسی پارٹی‘‘ کی ضرورت اور اس کے تمام پہلو کھل کر سامنے آتے ۔ کارکنان تحریک کو بھی غورو فکر کا موقع ملتا اور مرکزی شوریٰ کے ارکان بھی غور وفکر کے بعد کسی درست نتیجہ تک پہنچ سکتے ۔ مگر افسوس کہ ایسا نہیں ہوا۔ اسی طرح مرکزی شوریٰ کے جوار کان اور جماعت کے جو ذمہ داران ایک سیاسی پارٹی بنانے اور الیکشنی سیاست میں مؤثر رول ادا کرنے کے حق میں ہیں اور انہیں اس مسئلہ پر انشراح صدر حاصل ہے ان کی بھی یہ ذمہ داری تھی کہ وہ اپنے مضامین خود اپنے اخبارات ورسائل میں شائع کراتے تاکہ کارکنان تحریک کو غور وفکر کرنے اور مناسب رائے قائم کرنے میں آسانی ہوتی۔ مگر یہ کام بھی انجام نہیں پایا البتہ ڈاکٹر قاسم رسول الیاسی کا ایک مضمون بعنوان ’’جماعت اسلامی ہند اور انتخابی سیاسی‘‘ زندگی نو مارچ 2008کے شمارے میں شائع ہوا تھا۔ جس پر کچھ حضرات نے اظہار خیال بھی کیا تھا ۔گزشتہ ماہ ایک اور مقالہ بعنوان ’’تحریک اسلامی کی سیاسی پارٹی‘‘ میری نظر سے گزرا ۔ مقابلہ نگار ہیں سعادت اللہ حسینی مگر غالباً یہ مقالہ کسی اخبار اور رسالے میں شائع نہیں ہوا جبکہ بقول مقالہ نگار ارکان جماعت کی ذہن سازی اور انہیں اس مسئلے پر مطمئن کرنے کے لئے لکھا گیا۔ اگر اسے شائع کیاجاتاتو انشراح صدر اورذہن سازی کا دائرہ کافی وسیع ہوتا مگر میرا خیال تو یہ ہے کہ عام ارکان بھی اس اہم مقالہ سے محروم ہی رہے۔

جماعت اسلامی ہند براہ راست الیکشن میں حصہ کیوں نہیں لے سکتی ؟ : جماعت اسلامی ہند اسی وقت الیکشن میں حصہ لے سکتی ہے جبکہ وہ اپنے دستو ر میں درج شدہ بنیادی عقیدہ لا الہٰ الا اللہ محمد رسول اللہ مع اس کی تشریحات اورنصب العین اقامت دین مع تشریحات اور طریقہ کار جس میں اس نے یہ عہد کیا ہے کہ قرآن وسنت جماعت کی اساس کار ہوں گے اور شرائط رکنیت ، ارکان کی ذمہ داریاں اور معیار مطلوب ، ان سب کو دستور جماعت سے خارج کردے اور ان کی جگہ سیکولرزم ، سوشلزم اور ڈیموکریسی کا اندراج اور ان پر پختہ یقین کا اظہار کردے۔ یہی نہیں بلکہ اسے اپنی دعوت کے بنیادی نکات توحید ، رسالت اور آخرت ، قرآن وسنت اور دین وشریعت سے بھی دست بردار ہونا پڑے گا ۔ اس کے بعد ہی جمابعت اس اعلان کے ساتھ الیکشنی سیاست میں قدم رکھ سکتی ہے۔عدل وقسط کا قیام، ظلم واستحصال کا خاتمہ ، امن کا قیام، کرپشن اور فساد فی الارض کی روک تھام، اونچ نیچ اور چھوت چھات کا خاتمہ ، شراب، جوا ، سٹہ اور رشوت خوری کے خلاف مہمات، بنیادی انسانی ضروریات ، اونی کپڑا، مکان وغیرہ کی فراہمی وغیرہ مگر جماعت ابھی اس پوزیشن میں نہیں ہے کہ اتنا بڑا قدام کر ڈالے ۔مرکزی شوریٰ میں بھی کثرت رائے سے اس فیصلے کا امکان نہیں ہے۔

سیکولر جمہوری نظام جماعت کی نظر میں: رائج الوقت سیکولر جمہوری نظام کو جماعت غیر اسلامی اور خلاف حق تصور کرتی ہے۔ مرکزی مجلس شوریٰ کا فیصلہ ہے کہ ’’چونکہ یہاں کے جمہوری آئینی نمائندوں نے اس وقت اپنے لئے جو نظام حکومت بنانے کا فیصلہ کرلیا ہے وہ حاکمیت الہٰ کے اور اللہ ہی کے اقتدار اعلیٰ ہونے کے بنیادی تصور پر مبنی نہیں ہے بلکہ خود جمہوری کی اپنی ہی حاکمیت اور اقتدار اعلیٰ پر مبنی ہے اور یہ طریقہ فیصلہ اسے حاکمیت الہٰ اور اللہ ہی کے مقتدر اعلیٰ ہونے کے بنیادی تصور کا پابند بھی نہیں بناتا ہے۔ اس لئے اسلامی اور خلاف حق ہے۔‘‘ (جماعت اسلامی اورمسئلہ انتخاب صفحہ 45) مولانا جلا ل الدین انصر امیر جماعت اسلامی ہند کا ارشاد ہے ’’ جمہوریت میں اقتدار کا مرکز عوام ہوتے ہیں، ان ہی کو قانون سازی کا حق حاصل ہوتا ہے ، وہی فیصلے کرسکتے ہیں کہ ان کے لئے کون ساصابطہ حیات صحیح اور کون سا غلط ہے۔ صحیح اور غلط یا حق وباطل کے فیصلے کا کھلی اختیار وہ رکھتے ہیں۔ ان کے اقتدار کو سلب کرنے یا اس پر پابندی لگانے والی کوئی اور طاقت نہیں ہوتی۔ قانون سازی عملاً ان کے نمائندے کرتے اور نظم مملکت چلاتے ہیں ۔ اسلام اس معنی میں جمہوریت کا قائل نہیں ہے۔ اس کے نزدیک اللہ تعالیٰ مالک الملک ہے۔ اس کی ذات سر چشمۂ اقتدار ہے۔ قانون دینے کا اسی کو حق ہے ۔ انسان قانون پر عمل کرنے اور اسے دنیا میں نافذ کرنے والا ہے۔ وہ اسی حد تک آزاد ہے جس حد تک اللہ تعالیٰ نے اسے آزادی عطا کی ہے اور ان حدود کا پابند ہے جن کا اسے اللہ نے پابند بنایا ہے ۔ وہ اسی کی ہدایات کے تحت اپنے لئے اصول اور ضابطے وضع کرے گا اور اس کے قائم کردہ حدود کے اندر عمل کرے گا۔ اسلام کا یہ تصور آج کے تصور جمہوریت سے متصادم ہے۔ اس وجہ سے جماعت اسلامی اسے غیر اسلامی سمجھتی ہے۔‘‘ (جماعت اسلامی ہند اور طریقۂ کار صفحہ 72-73)

محترم امیر جماعت کا یہ ارشاد کہ ’’ اسلام کا یہ تصور آج کے تصور جمہوریت سے متصادم ہے۔‘‘ کوئی ایک نیا انکشاف نہیں ہے۔ جماعت کا یہ موقف اول روز سے رہا ہے۔ جماعت کا دستور اور اس کی بنیادی لٹریچر اسی تصور کا ترجمان ہے۔ اس کی پشت پر قرآن وسنت سے ٹھوس دلائل موجود ہیں۔ علما ء حق کی تاریخ ، عقل ، تجربات اور مشاہدات اس کی بھرپور تائید کرتے ہیں۔(جاری)

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/jamaat-e-islami-hind--the-proposed-political-party-of-india--جماعت-اسلامی-ہند-کی-مجوزہ-سیاسی-پارٹی/d/4067

 

Loading..

Loading..