New Age Islam
Sun Sep 20 2020, 07:57 PM

Urdu Section ( 31 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

Attempts To Recapture Darul Uloom Deoband دارالعلوم دیوبند پر دوبارہ قبضے کی کوشش

By Abu Warda Qasmi, a former student of Deoband

[Translated from Urdu by Yoginder Sikand, NewAgeIslam.com

 

Maulana Ghulam Mohammad Vastanvi is the target of a deep-rooted conspiracy that was hatched soon after he was elected as the rector of the Dar ul-Uloom, Deoband.  A particular family of professional maulvis who are deeply involved in politics has, for the last thirty years, been using the madrasa as its personal fiefdom. How could it then tolerate that an outsider enter its fortress and challenge its untrammeled rule? The fact of the matter is that the single major factor behind the sordid campaign against Maulana Vastanvi is this family’s lust for power and control and the dirty politics that are being played out for this sinister purpose. But, to set matters straight, I must also say that the vast majority of Muslim institutions are also beset with the same sort of murky politics, driven by the desire for certain families to completely control them.

The members of the governing council or majlis-e shura of the Deoband madrasa exhibited considerable foresight and fearlessness in electing Maulana Vastanvi for the larger benefit of the Muslim community. A vast number of people who are linked to the Dar ul-Uloom had fervently hoped that under a capable person like Maulana Vastanvi, who is well aware of modern demands, the madrasa would witness considerable progress. In numerous statements that he made, Maulana Vastanvi had clearly indicated that he was committed to work in this direction. Sadly, this very determination proved to be a major hurdle in his path because a section of obscurantist maulvis, who are stuck in their own little holes, thought that the reform and progress that Maulana Vastanvi promised to work for would be tantamount to undermining the tradition of the founders of the Deoband madrasa. To cite just one instance of this deep-rooted mentality, some years ago, when, with help a rich Muslim industrialist from Assam and on the desire of the former rector of the Dar ul-Uloom, a section was opened in the madrasa for teaching English, a member of the family that controls the madrasa and who now aspires to take Vastanvi's place opposed this initiative by claiming that it  had opened the doors for Judaism to enter the madrasa! Can anyone even reply to such stupidity and narrow-mindedness?

In the past, the Deoband madrasa stood for broad-mindedness and progressive thought. It was able to meet the challenges that society was faced with. It produced a number of people who could move with the times. Sadly, now this institution has been totally crippled. It is now simply churning out vast and ever increasing numbers of narrow-minded and half-baked maulvis. Those who control it consider revising its curriculum and system in accordance with the demands of the times to be a major sin. By simply repeatedly and piously recounting the names of its founders and deceased elders, the Dar ul-Uloom has become an archeological monument. In this grim situation, how cant the narrow-minded maulvis of this institution tolerate a man like Vastanvi, who possesses an MBA degree and is also a religious scholar who is well aware of the times we live in?

It was but natural that the manner in which the media reported Maulana Vastanvi’s statement about Modi gave rise to suspicions and misunderstandings. But this statement was interpreted and twisted by some Urdu papers in a very skewed manner. Such papers thrive on this, for sensationalism is their only hope for, and source of, survival. Admittedly, Maulana Vastanvi’s claim that Muslims are also benefiting from Gujarat’s progress could be a political compulsion while also being an acknowledgment of a fact. Obviously, if a state progresses, the benefits of that process will accrue to all sections of society in some way or the other. As regards Maulana Vastanvi’s statement that Muslims in Gujarat should progress and going beyond the deadly anti-Muslim violence that rocked the state eight years ago, it is a practical advice. Is it wise continue to lament about a tragedy and refuse to go beyond it? Is it not more practicable and sensible to leave the past and focus, instead, on working for a better today and tomorrow?

At the same time, Maulana Vastanvi’s claim that the Gujarati Muslims are not discriminated against is not correct. But to claim that this is tantamount to giving Modi a ‘clean chit’ is spurious. Maulana Vastanvi runs scores of educational institutions in Gujarat and Maharashtra and also supports hundreds of madrasas. Ordinary people cannot appreciate how difficult it must be to manage all these institutions. Nor can they understand the problems that Maulana Vastanvi must be facing in this remarkable work that he has been doing. To save oneself from the damage that one’s enemies might cause, sometimes it is wise to reconcile. This is a basic rule of social life, and no wise person can deny it. I am confident that if, God forbid, anti-Muslim violence once again erupts in Gujarat, not a single of Maulana Vastanvi’s opponents, who are leading the agitation against him, will care to go to Gujarat to help the hapless Muslims, even if they might simply spend their days and nights condemning the riots and those behind them. And so, if Maulana Vastanvi has indeed issued an incorrect statement, it is absolutely unfair to attribute this to evil intentions, as his detractors allege. According to a PTI news report , the deputy rector of the Dar ul-Uloom, Maulana Abdul Khaliq Madrasi, has himself accepted this, and has also clarified that Maulana Vastanvi made his statement as a resident of Gujarat and not in his capacity as rector of the Dar ul-Uloom. It must also be noted that had his detractors been correct, Maulana Vastanvi would have faced the most angry demonstrations and the most fierce condemnation from the Gujarati Muslims, but the fact is that on his recent return to Gujarat, he met with a very warm welcome from them. To be fair, however, one must admit that although Maulana Vastanvi’s statement was not 100% wrong, it was certainly not right. But here it must be asked why, after publicly apologizing for the statement, there should be any reason for continuing the demonstrations demanding his resignation.

It is undoubtedly the case that some hidden, self-seeking elements are behind the controversy to oust Maulana Vastanvi. Evidence for this is the fact that the students’ union that calls itself Jamiat ul-Tulaba, which was never allowed to function in the last thirty years ever since a particular man captured the Deoband madrasa, is now in the headlines of the newspapers. This shadowy outfit is now very active, issuing statement after statement denouncing Maulana Vastanvi and demanding his expulsion. One particular Urdu newspaper has devoted itself to this dirty campaign, publishing completely biased and even fabricated stories. In its cheap and sinister campaign to stain Maulana Vastanvi’s character, it is hunting for people to issue statements denouncing him, adding spice to their views and presenting these in an extremely inflammatory manner. It is clear that this paper is doing all this in exchange for money. It is also possible that sectarian rivalries are also at work here, because this style of operation is that of a sect that is known to engage in such dirty conspiracies.

It is ironical that a section of Muslims who are leading the anti-Vastanvi campaign, who, day in and day out, heap curses on the English media for distorting the truth, have accepted one statement published in that very media attributed to Maulana Vastanvi as gospel truth on the lines of the Quran and Hadith. It refuses to listen to his clarification that his comments have been distorted in this media. What sort of wisdom is this? It is not hidden from anyone how the Jamiat ul-Ulema-e Hind has been using the students of the Dar ul-Uloom for its own purposes. In the ongoing agitation against Maulana Vastanvi, too, the Jamiat is trying to derive political mileage from the emotionally-driven students. It is true that the number of students who are opposed to Maulana Vastanvi is relatively very small. I can confidently state that 90% of the students of the Dar ul-Uloom are with Maulana Vastanvi.

An important issue to consider here is that Maulana Vastanvi does not know politics. He is a man of action. He believes in work, not petty politicking. And he has done impressive practical work. In contrast, his opponents believe in politics. They are politically-inspired and politically ambitious. And they have all along engaged only in politics. Their whole history has been one of politicking, and even today members of this family are associated with, and work as agents of, one or the other political party.

People who know the Dar ul-Uloom closely, like myself, know the dismal conditions in the madrasa , as it has continued to be controlled by a certain family  for decades. Nothing is in order, from the hostels to the library. Students are forced to stand in queues for hours to get food. The rooms in the hostels lack even the most basic facilities. The majority of the students are forced to lead a life like that of refugees. The library completely lacks necessary books, including new and very important texts. A lot of important works have appeared in Urdu and Arabic in recent years, including translations, classical texts as well as books on modern issues, but not a single of these is to be found in the library. In terms of modern texts, this, what is called the ‘Al-Azhar of Asia’, is woefully behind dozens of even mediocre-standard madrasas in India. The disgusting unhygienic conditions in and around the Dar ul-Uloom are not hidden from anyone who has had the opportunity to visit the madrasa. Those who have even the most remote familiarity with the Dar ul-Uloom are also aware of the enormous confusion that continues to prevail in the madrasa on the issue of its syllabus and its system of functioning.

In such a situation, the Dar ul-Uloom badly needs a person like Maulana Vastanvi, who has the experience of running a number of large institutions. At this juncture, it is necessary that we, particularly the Qasmis, graduates of the Dar ul-Uloom, should come forward and combat the conspiracies hatched against Maulana Vastanvi. We should realize that our Muslim community is the victim not of the conspiracy of non-Muslims, but, rather, of some Muslim groups and organizations themselves, and that in this the leading role is being played by a section of the ulema who are addicted to politics and to serving their own vested interests.

May God protect the Dar ul-Uloom. I would appeal to Muslims to respect the decisions of the madrasa’s governing council. With regard to Maulana Vastanvi, I would urge Muslims to form their opinions not on the basis of just one statement of his but, rather, on the remarkable work that he has been engaged in all these years. And then, after that, if he indeed does not prove to be useful for the Dar ul-Uloom, everyone has the right to demand that he resign from the madrasa.

Abu Warda Qasmi is a former student of Darul Uloom Deoband. (abuwarda7@gmail.com)

 A regular columnist for NewAgeIslam.com, Yoginder Sikand works with the Centre for the Study of Social Exclusion at the National Law School, Bangalore.

URL: https://newageislam.com/urdu-section/attempts-to-recapture-darul-uloom-deoband--دارالعلوم-دیوبند-پر-دوبارہ-قبضے-کی-کوشش/d/4041

 

ابووردہ قاسمی

آخر کار مولانا غلام محمد وستانوی اس سازش کےشکار ہو ہی گئے جس کا نشانہ بنانے کی کوشش دارالعلوم دیوبند کے مہتمم بننے کے بعد سے ہی کی جارہی تھی۔ دیوبند کے وہ خانوادے جو پچھلے تیس سالوں سے دارالعلوم کو اپنی جاگیر کے طور  پر استعمال کرتے آئے ہیں ،وہ بھلا کیسے یہ برداشت کرسکتے تھے کہ ایک باہر کا آدمی ان کے قلعے میں شگاف لگا کر ان کی ‘حکومت’ کو چیلنج کرے۔ دارالعلوم کے ارکان شوری نے اس بالغ نظری اور بے خوفی کا ثبوت دیتے ہوئے ملت کے مفاد میں مولانا وستانوی کا انتخاب کیا، اس سے دارلعلوم نے نسبت رکھنے والے ہر چھوٹے بڑے کی یہ امید بندھی تھی کہ یہ ادارہ  ایک قابل اور عصری تقاضوں کا شعور رکھنے والے شخص کے ہاتھوں ترقی کے مراحل طے کرے گا۔ مولانا وستانوی نے اپنے مختلف بیانات میں اس تعلیم سے اپنے عزم مصمم کا ارادہ کیا تھا۔ لیکن افسوس کہ اس طرح کے عزائم نے بھی ان کی راہ میں مشکلات پیدا کرنے میں اہم رول ادا کیا۔ کیونکہ دقیانوسیت اور اپنے خول میں بند رہنے والے مولویوں کے ایک طبقے نے یہ سمجھا کہ وہ اصلاح اور ترقیاتی کام کے ذریعے ‘‘ اکابر کی امانت میں تصرف’’ کا ارادہ رکھتے ہیں ۔ اس ذہنیت کا اندازہ اس سے ہوسکتا ہے کہ چند سال قبل جب آسام کے  ایک بڑےتاجر اور سابق مہتمم کی خواہش وکوشش سے دارالعلوم میں انگریزی زبان سکھانے کا ایک شعبہ کھولا گیا تو فریق مخالف کے ایک کج کلاہ لیڈر کا اس پر تبصرہ تھا کہ اس سے دارلعلوم میں یہودیت کا دروازہ کھل گیا ہے ۔ غور کیجئے کوئی جواب ہے اس حماقت اور تنگ نظری کا۔ دیوبند ماضی میں ایک وسیع الفکر اور روشن خیال ادارہ رہا ہے۔ اس نے وقت کے چیلنجوں کا مقابلہ کیا۔ وقت کے شانہ بشانہ چلنے والی نسلیں پیدا کیں۔ لیکن اب یہ ادارہ جیسے بانجھ سا ہوکر رہ گیا ہے ۔ تنگ نظر مولویوں کے کھیپ کی کھیپ اس سے پیدا ہورہی ہے۔ زمانے کے تقاضوں کے مطابق نصاب ونظام میں تبدیلی کے خیال کو بھی گناہ کبیرہ تصور کیا جاتا ہے اکابر کے نام کی مالا جپنے والے دارالعلوم کو آثار قدیمہ بناکر رکھنا چاہتے ہیں ایسے میں ایک ایم بی اے اور زمانہ شناس عالم کو وہ کیسے برداشت کرسکتے ہیں۔مولانا وستانوی کے خلاف اس قبیح مہم کے پس پشت بنیادی عامل صرف اور صرف خاندانی اقتدار تسلط کی وہ سیاست ہے، جس کے ہماری ملت کے اکثر ادارے اس وقت شکار ہیں۔

مودی کے خلاف مولانا وستانوی کا بیان جس طرح میڈیا میں آیا اس سے بدگمانی اور غلط فہمی کا پیدا ہونا یقینی تھا۔ لیکن اس کی جس انداز میں تشہیر اور تعبیر کی گئی ،وہ محض اردو کے بعض اخبارات کی کارستانی ہے، وہ ایسے مواقع کو اپنے اندر زندگی کی روح پھونکنے کے لیے غنیمت سمجھتے ہیں ۔ مولانا کا یہ کہناکہ گجرات کی ترقی سے مسلمانوں کو بھی فائدہ پہنچ رہا ہے، ایک سیاسی مجبوری بھی ہوسکتی ہے اور حقیقت کا اظہار بھی ۔ ایک ریاست کی معاشی ترقی کا فائدہ کسی نہ کسی صورت میں بہر حال سماج کے ہر طبقے کو پہنچتا ہے ۔ اسی طرح یہ بات کہ آٹھ سال قبل کے فساد کو نظر انداز کرتے ہوئے مسلمانوں کو آگے بڑھنا چاہئے، ایک معقول بات تھی۔ سوال یہ ہے کہ کسی المیے پر نو حہ وماتم کرتے رہنا عقل وحکمت کا تقاضا ہے یا اس کو نظر انداز کرتے ہوئے اپنے حال و مستقبل کی تعمیر کی فکر کرنا ۔ ایک عملیت پسند آدمی کا نقطہ نظر یہی ہوسکتا ہے۔ البتہ اس بیان کا یہ جز یقیناً غلط تھا کہ گجرات میں مسلمانوں کے خلاف امتیاز نہیں پایا جاتا ۔لیکن اس کی یہ تعبیر کرنا کہ مودی کلین چٹ دےدیا گیا ،محض دھاندلی ہے۔

مولانا کے سینکڑوں ادارے گجرات اورمہاراشٹر میں چل رہے ہیں ۔ اس کے علاوہ سینکڑوں مدارس ہیں جن کے جو باہر سے چندوں پر چلتے ہیں ۔ اس راہ میں جس  طرح کی پریشانیاں پیش آتی ہوں گی ا سکا اندازہ عام لوگوں کو نہیں ہوسکتا ۔دشمنوں کے شر سے بچنے کے لیے بسا اوقات ان سے مصلحت بھی کرنی پڑتی ہے۔ یہ اجتماعی زندگی کی اٹل حقیقت ہے۔ اس سے کوئی صاحب عقل انکار کیسے کرسکتا ہے۔ یقین جانیے اگر آج گجرات خدانخواستہ پھر فساد ہوجائے تو بیانات کے ان چمپینوں میں سے کوئی گجراتی مسلمانوں کی مدد کے لیے نہیں پہنچے گا۔ چاہے وہ اپنے دن رات فسادیوں کی مذمت میں لگادے ۔ ایسے میں اگر کوئی ذمہ دار شخص ایک غلط بیان بھی دے تو اس کو اس کی بدنیتی پر محمول کرنا صحیح نہیں ہے۔ پی ٹی آئی کی (www.ndtv.com)کی ایک خبرکے مطابق خود دارالعلوم کے نائب مہتمم مولانا عبدالخالق مدراسی نے اس بات کوتسلیم کیا کہ : مولانا کا بیان مودی کی حمایت میں نہیں تھا بلکہ وہ گجرات کی ترقی سے متعلق تھا۔ انہوں نے یہ بھی وضاحت کی کہ مولانا نے یہ بیان گجرات کے ایک شہری کی حیثیت سے دیا تھا نہ کہ دارالعلوم کے مہتمم کی حیثیت سے’’۔اندازہ کیا جاسکتا ہے کہ ان کے اس بیان پر سب سے زیادہ گجرات کے مسلمانوں کو احتجاج اور مظاہرہ کرنا چاہئے لیکن اس کے برعکس وہاں پہنچنے پر ان کا علما اور دانش مندوں نے زبردست استقبال کیا۔

تاہم یہ بات ہر انصاف پسند شخص کہہ سکتا ہے کہ ان کا یہ بیان سوفیصد غلط نہ سہی لیکن غلط ضرور تھا۔ البتہ اسی کے ساتھ یہ سوال اہم ہے کہ اس بیان سے رجوع اور اظہار معذرت کے باوجود احتجاج ومظاہرے اور صاحب بیان کی برطرف کی مہم کا کیا جواز باقی رہ جاتا ہے؟

اس پورے معاملے کو شہ دینے میں خفیہ اور مفاد پرست ہاتھ کس طرح کام کررہا ہے  اس کا اندازہ اس سے کیا جاسکتا ہے کہ جمعیۃ الطلبہ جس کو دارالعلوم پر قبضے کے بعد پچھلے تیس سالوں میں کبھی ایک لمحے کے لیے بھی قائم نہیں ہونے دیا گیا،آج وہ شہ سرخیوں میں ہے۔ اندرون دارالعلوم اس کی سرگرمیوں کی تصویر یں چھپ رہی ہیں۔ اور بیانات آرہے ہیں ۔ اردو کے ایک اخبار نے اس طرح اس گندی مہم کے لیے خود کو وقف کررکھا ہے ۔ ایک طرفہ اور جانب وارانہ خبر نگاری کی جو قبیح مثال اس سے پیش کی ہے ، وہ نہایت عبرت ناک ہے۔کردار کشی کا جو بازاری اسلوب ،ڈھونڈ ڈھونڈ رکر اور پکڑ پکڑ کر لوگوں سے بیانات حاصل کرنے اور انہیں مسالہ دار بنا کر شائع کرنے کا جو اوچھا ہتھ کنڈہ ا س اخبار کے ذریعے استعمال کیا گیا اس کے پیچھے سکوں کی کھنک تو صاف سنائی دیتی ہی  ہے ، ممکن ہے اس میں مسلکی تعصب بھی کام کررہا ہو۔ کیو نکہ یہ انداز ایک بالکل لعنت زدہ اور سازشی قوم کا ہے۔

عجب بات ہے کہ انگریزی میڈیا کو حقیقت کی مسخ کاری کے الزام میں جو طبقہ رات دن لعنت وملامت کرتا رہتا ہے اسی کے ایک بیان کو قرآن وحدیث کے نص کی طرح قبول کرلیا گیا اور صاحب بیان کی اس وضاحت کو ماننےسے انکار کردیا گیا کہ اس کو توڑ مروڑ کر شائع کیا گیا ہے۔ آخر یہ کہا ں کی دانش مندی ہے؟ جمعیۃ  العلما جس طرح دارالعلوم کے طلبہ کو اپنے مفادات کے لیے استعمال کرتی رہی ہے وہ کسی پر مخفی نہیں ہے۔ اس موقع پربھی ان طلبہ کے جذبات کا سیاسی استعمال کرنے کی کوشش کی گئی ۔ حالاں کہ مخالف طلبہ چند فی صد سے زیادہ نہیں ہیں اور خود ٹائمس آف انڈیا (28جنوری ) کی ہی خبروں سے اندازہ ہورہا ہے ،دارالعلوم کے 90فیصد اساتذہ مولانا وستانوی کے ساتھ ہیں۔

سب اہم بات یہ ہے کہ مولانا وستانوی کو سیاست نہیں آتی ۔ وہ عملی آدمی ہیں۔ وہ کام میں یقین رکھتے ہیں اور انہوں نے کام کیا ہے  جب کہ فریق مخالف سیاست میں یقین رکھتا ہے۔ اور اس نے صرف سیاست کی ہے ۔سیاست بازی کی اس پوری تاریخ ہی ہے اور آج بھی اس خانوادے کے متعدد افراد متعدد  پارٹیوں سے جڑے ہوئے اور ان کے آلہ کار بنے ہوئے ہیں۔

راقم الحروف کی طرح دارالعلوم کو قریب سے جاننے والے جانتے ہیں کہ کتنی ہی نسلیں بیت گئیں لیکن آج تک ہاسٹل سے لیکر لائبریری تک کسی بھی چیز کا نظام درست نہیں ہوپایا۔ طلبہ کو گھنٹو ں کھانے کی لائنوں میں کھڑا ہونا پڑتا ہے ۔ ہاسٹل کے کمروں میں بنیادی سہولیات کا فقدان ہے۔ طلبہ کی اکثریت پناہ گزینوں کی جیسی زندگی گزارنے پر مجبور ہے۔ لائبریری میں جدید اور ضروری کتابوں کی کمی ہی نہیں بلکہ بحران کی کیفیت پائی جاتی ہے۔ ادھر کئی دہوں میں برصغیر ہند وعرب میں ( دوسروں سے قطع نظر اردو عربی میں ) تصنیف وترجمے کے میدان جو کام ہوا، جس بڑے پیمانے پر جدید وقدیم موضوعات پر کتابوں کی اشاعت عمل میں ائی ہے ، دارالعلوم کی لائبریری میں اس کاکوئی اثر ونشان دکھائی نہیں دیتا ۔ ازہر ایشیا کہاجانے والا مدرسہ نئی اور قابل مطالعہ کتابوں کی موجودگی کے لحاظ سے ہندوستان کے درجنوں اوسط درجے کے مدارس کے معیار سے بھی کم ہے۔ بیرون و اندرون دارالعلوم حفظان صحت کی صورت حال کس قدر افسوسناک ہے اس کا علم ہر شخص کو ہے جس کو ایک مرتبہ بھی دارالعلوم کو دیکھنے کا اتفاق ہوا ہے۔ نصاب اور نظام دونوں سطحوں پر انتشار کی جو کیفیت پائی جاتی ہے ا س کا اندازہ بھی لوگوں کو بخوبی ہے۔ ایسے میں دارالعلوم کو وستانوی جیسی شخصیت کی ہی ضرورت تھی جن کو دیوبند سے بڑے مدرسے کو معیاری انداز میں چلانے کا تجربہ حاصل ہے۔یہ عین و قت ہے کہ خاص طور پر قاسمی برادری کو آگے آکر مولانا وستانوی کے خلاف چلائی جانے والی سازشوں کو ناکام بنانے کی کوشش کرنا چاہئے۔ ہمیں یہ سمجھنا چاہئے کہ ہماری ملت دوسروں کو نہیں خود اپنے بعض حلقوں اور جماعتوں کی سازشوں کا شکار ہے۔ اور اس میں علما کا سیاست زدہ او رمفاد پرست طبقہ سرفہرست ہے۔

خدارا دارالعلوم کو بچائیے ۔شوریٰ کے فیصلے کا احترام کیجئے ۔ ایک شخص سے متعلق اس کے ایک بیان کی بنیاد پر نہیں بلکہ کاموں کی بنیاد پر فیصلہ کیجئے ۔اگر وہ شخص واقعتاً دارالعلوم کے لیے مفید ثابت نہیں ہوتا تو ہر شخص کو یہ حق حاصل ہوگا کہ وہ مہتمم دارالعلوم سے استعفا طلب کرے۔

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/attempts-to-recapture-darul-uloom-deoband--دارالعلوم-دیوبند-پر-دوبارہ-قبضے-کی-کوشش/d/4041

 

Loading..

Loading..