New Age Islam
Tue Jan 18 2022, 09:56 AM

Urdu Section ( 3 Dec 2021, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Iqbal's Khudi (Selfhood) - Most Misunderstood Topic اقبال کی خودی - سب سے زیادہ غلط سمجھا جانے والا موضوع

عادل فاروق، نیو ایج اسلام

2 دسمبر 2021

اقبال کے مکمل افکار کو صرف روحانی نظر سے دیکھا جائے تو ہی سمجھا جا سکتا ہے

اہم نکات:

1. اسلام خود شناس کے خلاف نہیں ہے

2. اقبال نے صوفیاء سے مختلف کچھ بھی نہیں کہا

3. مومن (حقیقی مومن) کا مقصد بذات خود بڑائی نہیں ہے بلکہ اپنے خدائی تحفوں سے اسلام کی بڑائی کرنا ہے۔

----

علامہ اقبال نے کہا:

"خودی کو کر بلند اتنا کے ہر تقدیر سے پہلے

خدا بندے سے خود پوچے بتا تیری رضا کیا ہے"

انگریزی میں اس کا سب سے عام ترجمہ جس سے میں بالکل متفق نہیں ہوں، یہ ہے:

 Raise yourself so that before every decree

God will ascertain from you: “What is your wish?”

ساری غلط فہمی اس غلط ترجمے کی وجہ سے پیدا ہوئی۔ بہت سے لوگوں کو اقبال کی بات سمجھ میں نہیں آئی۔ سیکولر لوگوں نے اس کے اور مغربی مفکرین کی خود شناسی کے درمیان ایک ربط دیکھا۔ کچھ مذہبی لوگوں نے خودی اور تصوف کے خود کو فنا/خود کی نفی کے درمیان تصادم دیکھا ہے۔ دونوں فریق خطا پر ہیں۔

1۔ خودی جیسا کہ مغرب میں سمجھا جاتا ہے، اس کا مطلب ہے کہ جہاں تک ممکن ہو صلاحیتوں/مہارتوں/قابلیتوں کے حوالے سے ہے اپنی زیادہ سے زیادہ صلاحیتوں کو اجاگر کرنا۔ توجہ صرف (قابلیت) پر ہے۔ اس کا روحانیت سے کوئی تعلق نہیں۔ اسٹیو جابز، وسیم اکرم اور مائیکل جیکسن خود پسند افراد تھے کیونکہ انہوں نے اپنے اپنے شعبوں میں کمال حاصل کیا، قطع نظر اس کے کہ روحانی تھے یا نہیں۔ روحانیت یہاں ہرگز معیار نہیں ہے۔

2. اقبال ایک روحانی مفکر تھے۔ ان کی پوری سوچ کو اگر روحانیت کی عینک سے دیکھا جائے تو ہی سمجھا جا سکتا ہے۔ اقبال نے درحقیقت اس سے کچھ بھی مختلف نہیں کہا جو صوفیاء کرام کہتے آئے تھے۔ صوفیاء کا کہنا ہے کہ گناہوں کی وجہ سے انسان کے بگڑے ہوئے نفس کو اپنے حقیقی اصلی نفس تک پہنچنے سے پہلے ہی باطنی تطہیر کے کئی مراحل سے گزرنا پڑتا ہے۔ اسی لیے نفسِ عمارہ کی مخالفت کو اتنی اہمیت دی گئی ہے۔ اقبال یہ سب جانتے تھے۔ اس کا اصل مطلب اس طرح نکالا جا سکتا ہے:-

اپنے تزکیہ نفس کو بلند کرو تاکہ ہر فرمان سے پہلے

خدا تم سے دریافت کرے کہ: "تمہاری خواہش کیا ہے؟"

چنانچہ اقبال نے کوئی نئی بات نہیں کہی۔ تاہم اس کی عظمت الفاظ کے صحیح انتخاب میں مضمر ہے۔ انہوں نے ایسے الفاظ کیوں استعمال کیے جو صوفیوں کے قول سے بالکل مختلف معلوم ہوتے ہیں؟

3. اقبال کا پورا مقصد خاص طور پر برصغیر کے مسلمانوں کو بیدار کرنا، تحریک دینا اور متاثر کرنا تھا جن کے حوصلے، ہمت، اعتماد اور توانائی کی سطح بالکل صفر ہو چکی تھی۔ چونکہ ان کے سامعین پہلے سے ہی مایوس، بکھرے ہوئے، کچلے ہوئے اور حوصلے پست تھے، اس لیے وہ خود کو مٹانے یا خود کی نفی جیسے الفاظ استعمال کرنے کے متحمل نہیں تھے۔ انہوں نے اپنی گہری حکمت و دانائی سے ایسے الفاظ استعمال کیے جو بیک وقت دو کام کرتے ہیں - روحانیت کی تائید اور مسلمانوں کے حوصلے بلند کرتے ہیں۔

4. اسلام ظاہری طور پر خود پسندی کے خلاف نہیں ہے بلکہ یہ انسانوں سے مطالبہ کرتا ہے کہ وہ خودی کو حاصل کرنے سے پہلے روحانی راستے کو عبور کریں تاکہ ان کی ذہانت میں اخلاص پیدا ہو جائے۔ ایک مومن (حقیقی مومن) کا مقصد ہر گز اپنی بڑائی نہیں ہے بلکہ انسانیت کو فائدہ پہنچانا یا اپنے خدا کی عنایات یا علم یا کسی بھی صلاحیت سے اسلام کی بڑائی کرنا ہے۔ اگر اللہ تعالیٰ اسے اس عمل میں عزت عطا کرتا ہے تو وہ اس کا شکر ادا کرتا ہے۔ اگر اللہ نے اسے ذرہ برابر بھی عزت نہ دی تو پھر بھی وہ اتنا ہی خوش ہے۔ یہ نفس مطمئنہ کی نشانی ہے۔

حضور صلی اللہ علیہ وسلم ایک مثالی انسان ہیں کیونکہ آپ کی روحانیت اور کمال دونوں ممکنہ حد تک اپنے کمال پر ہے۔ یہی وجہ ہے کہ وہ آج بھی تاریخ کے سب سے بااثر شخص ہیں!

 ---

 English Article: Iqbal's Khudi (Selfhood) - Most Misunderstood Topic

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/iqbal-khudi-selfhood/d/125895

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..