New Age Islam
Wed Sep 23 2020, 03:53 PM

Urdu Section ( 1 Sept 2010, NewAgeIslam.Com)

Ramadan: Our Religious And Cultural Responsibilitiesرمضان اور ہماری دینی ومعاشرتی ذمہ داریاں

Our social and religious responsibilities in the month of Ramazan

 

BY Maulana Waris Mazhari

 

Ramazan, the month of divine blessings and salvation is on. May God bless us with the realisation of its true value and the moral strength to benefit from it fully. The month provides us with the opportunity to store fuel on the spiritual level for the next phase on which the caravan of life completes its journey according to the will of God, the creator and therefore achieves the goal which has been declared the purpose of fasting, that is, piety (Al Baqra:183) which is synonymous with the great virtue called  spiritual growth and evolution. The virtue of Piety evolves in a man only when heart’s purity coupled with sincerity and diligence in deeds reach such a level that he is not bound by his own will, he would rather like to know the will of God before executing the deed. Reaching of the moral strength and sensitivity to that level becomes synonymous with the achievement of the desired virtue of piety.

But the situation is quite the opposite. The majority of the Muslims do not even bother to think while performing major religious practices which shape the nature of their duties, leave aside social and personal matters, that whether the work is being done to please God or may invite His wrath due to the slightest of ignorance. The love of customs and a penchant for exhibition becomes an obstacle in the way of their thinking and introspection.

 

Occasion for revelry rather than introspection

The same happens with Ramazan. As is generally seen, for a big section in our society Ramazan has become an occasion for entertainment and merrymaking rather than for strengthening one’s faith and introspection. Wittingly or unwittingly they seek pleasure and enjoyment even in those matters that are purely worship-related, be it iftar or sehri, or traweeh or shab bedari (nightlong prayers). All these practices are performed as mere customs or soulless prayers and the essence of prayer or worship disappears or diminishes in them.

With the advent of Ramazan, mosques in many places are illuminated with electrical lamps. This practice is inspired by the non-Muslims. Non-Muslims decorate their places of worship and organise celebrations. In cities and towns the hotels and shops remain open the whole night. Cassettes of speeches in shrill voice, naat and qawwali are played in full volume, there is noise and nuisance all around and people mostly young men are seen loitering, laughing and gossiping, smoking and sipping tea in an atmosphere of celebration. Thus, the holy month of Ramazan is wasted in merrymaking. In this atmosphere those willing to pray in peace and silence feel suffocated.

 

‘Islamic Programmes’ or a source of recreation

TV and video CDs are part of the funfair held in the name of shab bedari during Ramazan. In many households, people watch ‘Islamic Programmes’ with ‘devotion’. Whatever the intentions, the practice becomes merely a means of entertainment and a source of recreation. Sometimes, the acts committed during the programmes, are counted among the vices. There is no exaggeration in it.

In some Arab countries it is also heard that TV viewing increases in the month of Ramazan as compared to other months. Film producing companies make interesting programmes and serials in advance for telecast in Ramazan. I happened to read the autobiography of the wife of an Indian diplomat posted in Egypt in which she narrated an incident with surprise. Once she invited some locals for iftar and dinner. But unexpectedly very few people turned up and even those who did were in great hurry. On enquiry she was told that there was a dance programme of a western (probably Italian) danseuse that evening. The host told them there was no hurry; they could go a little later. But they replied that the seats got occupied very quickly in Ramazans.

 

The soul of fasting is lost

This incident may not reflect a general trend but it can be realised how disappointing it is. The soul of fasting is avoiding immoral and useless things as the Holy Prophet has said: Fasting does not mean mere abstention from food and drinks but it means abstaining from useless and immoral activities. (Lais al siyam min al akl wassharb innamas siyam minal laghw warrafas). But if these acts are committed brazenly then the fasting in Ramazan becomes a bizarre joke.  

As for taraweeh, one thing that is commonly observed these days is that people (especially the rich people and businessmen) hire a fast hafiz with excellent memory who in a way assures them that he will ‘rid’ them of the ‘burden’ of taraweeh only in a few days. The way the ‘short term’ taraweeh is recited does not, in most cases, conform to correct recitation norms nor is the desired state of raku and sajda achieved. People are seen shifting their body weight, shrugging off their shoulders and yawning. The muqtadees (people offering namaz behind the imam) keep counting the raka’ts and impatiently wait for the taraweeh to be over so that they can heave a sigh of relief. Obviously, this attitude does not conform to the general temperament of sharia. For prayers, absorption, mental presence and interest are necessary which are simply non-existent in the situations mentioned above.

 

Fast-track Taraweeh is not devotional

In certain places, the practice of offering the taraweeh in one or two nights in the name of Shabeena has assumed the status of the highest form of prayer and the great worshippers full of stamina and resolve stand the ground in the ‘battle of taraweeh’ from Isha to fajr, though according to a tradition of the holy Prophet (PBUH) it is not fair. The Holy Prophet (PBUH) has permitted to complete the Quran in a maximum of three nights, that too on the insistence of a holy companion (sahabi Hadhrat Abdullah bin Umar) citing his strength and will (Bukhari and Ahmad) and has forbidden from it in less than that period. The logic he (PBUH) gave was that those who recite the Quran in less than three days do not comprehend it. (Tirmidhi and Darmi).

Ulema have preferred surah taraweeh to khatm Quran taraweeh in lieu of payment, but in many places the Hafizs are treated like objects on sale. Such hafizs leave the low paying mosques of their own town and set out for high-paying ones in Ramazan. This situation is regrettable. The undue extravagance and lavishness showed in the preparation of iftar also does not fulfil the purpose of fasting from different angles. According to hadith, Ramazan is the month of patience and compassion.

 

Fasting becomes an excuse for lapping up delicacies

The quality desired from fasting among other things is that the fasting person should realise the pain of hunger and thirst. He should experience poverty and penury symbolically so that he can understand the needs and the pain of his needy and downtrodden brethren. But if fasting becomes an excuse for lapping up delicacies of various kinds and tickling one’s taste-buds, sharia may not point a finger at it, but it will undoubtedly become a hindrance in the kind of training and refinement of self which is desired from fasting. There might be a number of people in one’s neighbourhood who do not have a fraction of these bounties to break their fast. Hadiths speak highly of tafteer (to serve food to the fasting to break their fast) but people become oblivious of the need of these people in their own indulgence.

 

Sehri loudspeakers a torture to both Hindus and Muslims

One of the many things to be considered and reformed is the advice to wake up and have sehri from all the mosques of a neighbourhood on loudspeakers simultaneously which is repeated at regular intervals ad nauseum. All the voices mingle together and create an obnoxious noise. In this practice which is otherwise noble and praiseworthy, the fact that there is a non-Muslim population in the vicinity and this act disturbs their sleep, making them livid with anger is totally ignored. Apart from that, the Muslims themselves who find this hour an opportunity to offer prayers lose concentration. The sick and the children are deprived of sleep.

In some places, there is a bizarre tradition. Groups of youth called qafila go from one locality to another waking the fasters while singing Ramazani songs on filmi tunes on loudspeakers. Such a non-serious practice is not only a negation of the dignity of the month of Ramazan but also a cause of discomfort and torture to both Hindu and Muslims. Social reformers and the influential sections of the society should strive to discontinue such useless and harmful practices gaining ground in the society.

 

Futile Iftar parties galore

In the end the mention of the latest trend is also necessary which is known as iftar party, organised by some (mostly non-Muslim) people or organisations. The motive behind these iftar parties is mostly political. Ulema are divided on whether one should attend the iftar parties or not. In my view, if in the gathering of the non-Muslim personalities which is called by people among them, if the purpose of dawa, in any form and on any level is served, for example, if a knowledgeable Muslim can present the message of Islam from any aspect to the participants, the participation in such iftar parties may be termed a little worthwhile, otherwise it’s nothing more than recreation and is in conformity with ismohoma akbaro min naf ehema ( the sin of them is greater than their benefit ( Surah Al Baqra: 219) and it would be wise to avoid them.  

In the above paragraphs some of the ill practices in vogue in the month of Ramazan have been mentioned as samples. Indoctrination is not intended here. It is imperative to try to put an end to these decadent practices to benefit individually and collectively from the blessings and opportunities in the holy month of Ramazan.

Source: Hamara Samaj, New Delhi

 

URL: https://newageislam.com/urdu-section/ramadan--our-religious-and-cultural-responsibilitiesرمضان-اور-ہماری-دینی-ومعاشرتی-ذمہ-داریاں/d/3381

 

وارث مظہری

رحمت ومغفرت اور نجات کا مہینہ رمضان ہم پر سایہ فگن ہے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اس کی قدر پہچاننے اور کما حقہ اس سے مستقید ہونے کی توفیق مرحمت فرمائے ۔ سال کے بارہ مہینوں میں ایک  ماہ کی یہ مدت وہ وقفہ عمل جو مسلمانوں کو یہ موقع دیتا ہے کہ وہ اس درمیان اگلے مرحلے کے لئے ذہنی یا روحانی سطح پر وہ ایندھن جمع کرلیں جس کی بنیاد پر زندگی کا کارواں خالق کائنات کی مرضی اور منشا کے مطابق اپنا سفر پورا کرسکے اور اس طرح وہ اپنا ہدف پالے جسے قرآن میں روزہ کا مقصود قرار دیا گیا ہے۔ یعنی تقویٰ (البقرہ :183) جو روحانی بالیدگی اور ارتقا کی اعلی صفت کا نام ہے ۔ تقویٰ کی صفت انسان کے اندر اس وقت پیدا ہوتی ہے جب نیت میں مکمل خلوص کے ساتھ عمل میں سنجیدگی اور متانت اور درجہ پر پہنچ جائے کہ وہ کسی بھی معاملے میں اپنے ذہنی رویے کا مطلق پابند نہ ہو ۔ بلکہ وہ اس کو برتنے سے قبل اس سلسلے میں خدا کے حکم اور مرضی کو جاننے کا طلب گا رہو۔ ذہنی استعداد وحساسیت کا اس حد تک پہنچ جانا انسان کے لیے تقویٰ کی مطلوبہ صفت کے حصول کے ہم معنی بن جاتا ہے ۔

لیکن آج کی صورت حال اس کے برعکس ہے۔ مسلمانوں کی اکثریت اپنے ذاتی اور سماجی معاملات تو کجا، ان رہنما امور میں بھی ،جن کی روشنی میں اسلامی شریعت پر ایمان ویقین رکھنے والوں کے بقیہ اعمال کے خد وخال کی تشکیل ہوتی ہے، وہ اس کی پروا نہیں کرتی کہ جو کام رضائے الٰہی کے حصول کے لیے کیا جارہا ہے، ذرا سی غفلت اس نیکی اور خیر کے کام کو خد اکے غیظ وغضب کے خانے میں ڈال سکتی ہے۔ رسم پرستی اور ظواہر پسند ی کے خو ا سے غور وفکر کرنے اور اپنے ذہنی وعملی رویے کو درست کرنے میں سب سے بڑی رکاوٹ بن جاتی ہے۔ رمضان کے تعلق سے بھی ایسا ہی ہوا ہے۔ ایک بہت بڑی تعداد ہمارے معاشرے میں  ایسی دیکھنے میں آرہی ہے جس کے لئے رمضان کا مہینہ ایمان و احتساب سے زیادہ تقریب اور تفریح طبع کا درجہ رکھتا ہے ۔ وہ ان معمولات میں بھی ، جو خالص عبادت کا درجہ رکھتے ہیں، شعور ی یا غیر شعوری طور پر حظ نفس کی طالب ہوتی ہے۔ کیا افطار وسحر ، کیا تراویح وشب بیداری ؟ یہ ساری چیزیں ایک رسم وروایت اور بے روح عبادت کے طور پر انجام پاتی ہیں اور ان میں عبادت کا تصور حد درجہ ومخدوش ہو کر اور سمٹ کررہ جاتا ہے۔ رمضان کی آمد کے ساتھ بہت سی جگہوں پر مسجدوں کو برقی قمقموں سے سجانے اور انہیں چراغاں کرنے کا اہتمام کیا جاتا ہے، جو سراسر غیر مسلموں کی نقل ہے۔ غیر مسلم حضرات اپنے معبدوں کو سجانے اور جشن وتقریب کا ماحول برپا کرتے ہیں، شہروں اور قصبوں میں بہت سی جگہوں پر رمضان کی رونق ورعنائی اس شکل میں سامنے آتی ہے کہ رات بھر ہوٹل اور دکانیں کھلی ہیں۔ نہایت تیز اور ارتعاش انگیز آواز وں میں تقریر ،نعت ،قوامی یا تلاوت قرآن کی کیسٹیں بج رہی ہیں، شور وہنگامہ کی کیفیت ہے اور لوگ ،جن میں اکثر یت نوجوانوں کی ہوتی ہے، اس جشن وتقریب کے ماحول میں  چہل قدمی کرتے، ہنسی اور قہقے لگاتے ،گپیں ہانکتے اور چائے اور سگریٹ سے من بہلاتے نظر آتے ہیں۔ اس طرح رمضان کا مقدس اور بابرکت ماحول لہو ولعب کھیل تماشے اور گانے بجانے کی نذر ہوجاتا ہے۔ ایسے غیر سنجیدہ ماحول میں سنجیدہ اور عبارت کا ذوق رکھنے والے لوگوں کو دم گھٹ کر رہ جاتا ہے۔

رمضان کی راتوں میں شب بیداری کے عنوان سے جو تماشے ہوتے ہیں ان میں ٹی وی اور ویڈیو سی ڈیز وغیرہ سرفہرست ہیں۔ بہت سے گھرو ں میں ‘‘اہتمام’’ کے ساتھ لوگ ان پر ‘‘اسلامی پروگرام’’ دیکھتے ہیں ۔ نیت خواہ کچھ بھی ہو لیکن یہ عمل حالات میں محض لذت نفس کا ذریعہ اور ایک قسم کی تفریح بنکر رہ جاتا ہے ۔ ان پروگراموں کے ضمن میں بسا اوقات ان ساری قباحتوں کا ارتکاب کیا جاتا ہے جن کا شمار شرو فساد کے ضمن میں ہوتا ہے ۔ یہ بات اپنے اندر کچھ مبالغہ نہیں رکھتی ۔ بعض عرب ملکوں سے  متعلق تو یہاں تک پڑھنے اور سننے میں آیا کہ وہاں دیگر مہینوں کے مقابلے رمضان  میں ٹی وی میں مزید اضافہ ہوجاتا ہے ۔فلم ساز کمپنیاں رمضان میں نمائش کے لئے پہلے سے ہی دلچسپ اور نیند اڑا دینے والے پروگرام اور سیریل بناتی ہیں ۔ مصر کے تعلق سے راقم الحروف نے کچھ عرصہ قبل ایک ہندوستانی سفارت کار کی اہلیہ کی سوانح پڑھی تھی جس میں انہوں نے حیرت کے ساتھ اس واقعے کا تذکرہ کیا تھا کہ ایک مرتبہ انہوں نے کچھ مقامی لوگوں کو افطار وعشمائے کےلئے اپنے گھر مدعو کیا۔ لیکن خلاف توقع لوگ بہت ہی کم تعداد میں آئے اور آئے بھی تو ہوا کہ دوش پر سوار ۔ اس کا سبب پوچھنے پر معلوم ہوا کہ ایک مغربی رقاصہ (غلالباً اطالوی ) کے رقص کا پروگرام ہے۔ میزبان کی طرف سے کہا گیا کہ آخر جلدی کیا ہے آرام سے جایا جاسکتا ہے۔ اس کے جواب میں بتایا گیا کہ رمضان میں سیٹیں جلدی پر ہوجاتی ہیں۔ یہ واقعہ وہاں کا یقیناً عام مظہر ہ ہوگا لیکن کس حد تک ماتم آفریں ہے، اس کا اندازہ کیا جاسکتا ہے ۔

روزہ کی روح دراصل لغو اور بے ہودہ چیزوں سے بچتا ہے۔ جیسا کہ رسول اللہ کا ارشاد ہے کہ :‘‘ روزہ کھانے پینے سے باز رہنے کانام نہیں بلکہ وہ لغو اور بے ہودہ چیزوں سے دور رہنے کا نام ہے’’( لیس الصیام من الا کل والثرب انما الصیام من اللغو والرفت) لیکن اگر اس کا کھلے بندوں ارتکاب کیا جائے تو پھر رمضان او رروزے کا عمل کتنا عجیب مذاق بن کر رہ جاتا ہے۔ اس کا اندازہ کیا جاسکتا ہے ۔ تراویح کے تعلق سے خاص طور پر شہروں میں یہ بات عام ہوتی جارہی ہے کہ لوگ (خصوصاً امرا اور تجارت پیشہ حضرات)کسی تیز رفتار اور اچھی یادداشت رکھنے والے حافظ کو ‘‘ہائر’’ کر لاتے ہیں جو ایک طرح سے گویا اس بات کا ذمہ لیتا ہے کہ وہ انہیں صرف چند دنوں میں تراویح کے بوجھ اور خشخشے سے نجات دلا دے گا۔ چند دنوں والی تروایح جس انداز واسلوب میں سنی جاتی ہے ، اس میں اکثر اوقات نہ تو قرآن کی صحیح قرآت اور ترتیل کا حق ادا ہوتا ہے اور نہ رکوع وسجود کی مطلوبہ کیفیت حاصل ہوپاتی ہے۔ لوگ اکتاہٹ اور بے چینی سے پہلو بدلتے ، شانے اچکاتے ، جماہیاں لیتے اور  پلک جھپکاتے نظر آتے ہیں۔ مقتددی رکعتیں گنتے اور پل پل اس بات کی منتظر ہوتے ہیں کہ کب تراویح ختم ہو اور ان کی جان کو سکون ملے ۔ظاہر ہے یہ چیز شریعت کے عمومی مزاج سے کسی بھی طرح میل نہیں کھاتی ۔ عبادت کے لئے خشوع وخضوع ، ذہنی حاضری اوردلچسپی لازمی ہے۔ جو اس صورت میں سرے سے مفقود ہوجاتی ہے۔ بعض جگہوں پر شبیینے کے نام پر ایک یا دوراتوں میں قرآن سنانے کی رسم عبادت کی اعلی اور پرعزیمت شکل کے طور پر انجام پاتی ہے۔ اور اصحاب عزیمت کی بڑی تعداد وابتدا ئے عشا سے فجر تک گویا میدان تراویح میں ‘‘ڈٹی’’ رہتی ہے۔ حالاں کہ رسو ل اللہ سے مروی روایت کے مطابق ایسا کرنا صحیح نہیں ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے زیادہ سے زیادہ صرف تین راتوں میں پورا قرآن پڑھنے کی اجازت دی ہے۔ وہ بھی ایک اولو العزم صحابی (عبد اللہ بن عمرؓ ) کے بار بار اپنی فزوں تر قوت کے اظہار و اعادہ کے بعد (بخاری و احمد) اور اس مدت سے کم میں پورا قرآن پڑھنے سے منع فرمایا ہے اور علت یہ بیان فرمائی ہے کہ جو تین دنوں سے کم میں (پورا )قرآن پڑھتا ہے وہ اسے سمجھتا نہیں ۔ (ترمذی و داری) علما نے تعین معاوضہ کے ساتھ ختم قرآن والی تراویح کی جگہ سورہ تراویح کو ترجیح دی ہے لیکن بہت سے مقامات پر حفاظ کی خرید وفروخت جیسا معاملہ کیا جاتا ہے ۔ ایسے حفاظ اپنے وطن کی غریب مسجدوں کو چھوڑ کر امیر مسجدوں کا رخ کرتے ہیں۔ یہ صورت حال یقیناً افسوس کا باعث ہے۔ افطار کے تعلق سے بسا اوقات اہتمام میں جو غلو اور اسراف نظر آتا ہے وہ روزے کے مقصد سے مختلف پہلوؤں سے ہم آہنگ نظر نہیں آتا ۔رمضان حدیث کے مطابق صبر اور مواسات وغم خواری کا مہینہ ہے۔

روزہ کے ذریعے دیگر کیفیات کے علاوہ یہ بھی مطلوب ہے کہ روزہ بھوک پیاس کی شدت وسوزش کو محسوس کرے۔ وہ تو نگری میں فقر ومحتا ج گی کا علامتی تجربہ کرے، تاکہ وہ اس کے ذریعہ اپنے محتاج اور خاک نشیں بھائیوں کے درد کو بھی محسوس کرسکے لیکن اگر روزے کے ذریعہ آدمی نواع واقسام کی لذتوں کو سمٹنے اور کام وہن کے لطف کا سامان کرنے لگے تو خواہ خالص شرعی نقطہ نگاہ سے اس پر انگلی نہ اٹھائی جاسکے لیکن روزے کے ذریعے نفس کی جس نوع کی تربیت و تزکیہ مقصود ہے، بلاشبہ یہ چیز اس میں حارج ہونے والی ہے۔ پاس پڑوس میں ہی کتنے ایسے لوگ ہوں گے جنہیں ایسے ہی روزوں کے بعد ان نعمتوں کا معمولی حصہ بھی میسر نہیں ۔ تفطیر صائم (روزہ دار کو روزہ افطار کرانے) کی حدیث میں بے انتہا فضیلت بیان کی گئی ہے لیکن لوگ ان نعمتوں میں کھو کر اس کی ضرورت رکھنے والو ں کوفراموش کردیتے ہیں۔ غور واصلاح کے قابل چیزوں میں سے ایک یہ بھی ہے کہ بوقت سحر ایک ہی وقت میں کئی کئی مسجدوں سے روزہ داروں کو بے داری کے ساتھ تناول سحر تلقین کی جاتی ہے اور وقفے وقفے سے اسے اس کثرت سے دہرا یا جاتا ہے کہ باہم یہ آواز یں مل کر ایک اضطراب افزا گونج اور شور میں تبدیل ہوجاتی ہے۔ ا س نیک وبرگزیدہ عمل میں یہ بات مطلقا فراموش کردی جاتی ہے کہ قریب میں ہی غیر مسلم آبادی ہے جس کی نیند میں اس سے خلل واقع ہوتا ہے اور وہ پریشان ہوتے ہیں۔ علاوہ ازیں خود مسلمان جو اس وقت بسا غنیمت تصور کرتے ہوئے عبادت کے خواہش مند ہیں ، ان کی ذہنی یک سوئی ختم ہوجاتی ہے ۔مریض اور بچوں کی نیند اچٹ جاتی ہے ۔ بعض جگہوں پر ایک عجیب سی بدعت یہ نظر آتی ہے کہ کچھ نوجوانوں کی جماعت قافلوں کی شکل میں روزہ داروں کو جگانے کے لئے گلی گلی محلّہ محلّہ کا چکر لگاتی ہے۔ لاؤڈ اسپیکر پر جھوم جھوم کر فلمی دھنوں پر بنے ہوئے رمضانی نغمے الاپے جاتے ہیں۔اس قسم کا غیرسنجیدہ طرز عمل رمضان کے وقار وتقدس کے منافی تو ہے ہی، مسلمانوں اور غیر مسلموں ، دونوں ہی کے لیے اذیت کا بھی باعث ہے۔

 سماجی مصلحین اور سماج کے بااثر طبقے کو سماج میں پنپنے والی ایسی لغو چیزوں پر روک لگانے کی سعی کرنی چاہئے ۔اخیر میں اس نئے مظہر کا تذکرہ بھی ضروری ہے جو افطار پارٹیوں کے نام سے بعص (غیر مسلم) سیاسی شخصیات اور  جماعتوں کی طرف سے منعقد کی جاتی ہیں۔ان کا مقصد زیادہ تر سیاسی مفادات کا حصول ہوتا ہے۔ علما کی اس سلسلے میں آرا مختلف ہیں کہ ان سیاسی افطار پارٹیوں میں شرکت کرنا چاہئے یا نہیں ۔ راقم الحروف کے خیال میں غیر مسلم عمائدین کے اس اجتماع سے جس کے داعی و خود ہوتے ہیں اگر کسی بھی طور پر، کسی بھی درجے میں دعوت اسلام کا مقصد حاصل کیا جاسکتا ہو،جس کی صورت ، مثال کے طور پر یہ ہوسکتی ہے کہ کوئی صاحب علم مسلمان اسلام کے کسی پہلو کو بنیاد بتا کر اس کا پیغام حاضرین کے سامنے رکھ سکے، تو پھر اسی پارٹیوں میں شرکت کسی قدر بامعنی ہوسکتی ہے۔بصورت دیگر اس کی حیثیت تفریح محض کی سی ہے اور ‘‘اثمھما اکبر من نفعھما’’ (ان کا نقصان نفع سے زیادہ ہے۔ البقرہ :219)کے مصداق ہے جس سے احتراز میں ہی بہر حال بہتری ہے۔ رمضان اور روزے سے متعلق نمونے کے طور پر یہاں صرف چند خرابیوں کا تذکرہ کیا گیا ہے جو ہمارے معاشرے میں شائع وذائع ہیں۔ استقصا بہر حال مقصود نہیں ۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ رمضان کی عظمت وجلال او ر روزے کی برکتوں سے بھرپور استفاد ے کے لیے انفرادی او ر اجتماعی سطح پر ان خرابیوں کے ازالے کی کوشش کی جائے۔

(بشکریہ ہماراسماج، نئی دہلی)

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/ramadan--our-religious-and-cultural-responsibilitiesرمضان-اور-ہماری-دینی-ومعاشرتی-ذمہ-داریاں/d/3381

 

Loading..

Loading..