New Age Islam
Mon Dec 06 2021, 05:52 PM

Urdu Section ( 27 Nov 2010, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Blasphemy case against the Christian woman in Pakistan: Provocations in the Urdu Press شاطم رسول آسیہ کو جیل سے نکال کر یورپ لے جانے کی تیاریاں

The Aasia Bibi defamation case has stirred Pakistan’s collective conscience as Salman Taseer, governor of Punjab, Ms Sherry Rehman, a former federal Minister of Pakistan and eminent journalists and intellectuals have upped the ante against the blasphemy laws in Pakistan. On the other hand, the section represented by religious leaders including a section of Urdu media is demanding death for Aasia Bibi on grounds of her alleged blasphemous remarks. The excuse is that she had confessed, but we all know how confessions can be extracted from victims under such circumstances. No civilized society would give any credence to such so-called confessions. The following article from the Urdu daily Ummat, Pakistan, sums up the mood of the Mullah-inspired general Muslims in Pakistan and shows how the Urdu media is exploiting the sensitive issue. -- Editor

 

A report by Najmul Hasan Arif in the Urdu daily Ummat translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk

After the statement of the Pope Benedict in support of the Christian woman Aasia who has been convicted after having confessed thrice for making  blasphemous remarks against the last Prophet (PBUH) testified against by three women, extraordinary activities have started on the government level.

After the Pope’s statement the governor of Punjab Salman Taseer came with a typed application for pardon on behalf of Aasia from Governor’s house and told her in front of the media, “This is a letter written on your behalf. Please sign on it so that as the governor I can send this application to the President Asif Ali Zardari and make your pardon possible.”

According to sources in the past too in blasphemy cases involving Christians the then government had intervened in similar way and helped in their deportation abroad. Now the same preparations are on for her deportation according to international protocol. But this is the first time that the governor of Punjab not only met a convict in jail but also himself got the letter typed and the team of media was escorted to Sheikhopura on the request of the governor. A press conference was organized and the impression was given to her supporters in the outside world that the government was not in favour of sentencing Aasia. When “Ummat” carried out an investigation into the background of the woman in her village Itan Wali Chak no. 3 GB in the district of Nankana Saheb, it was learnt that she was the second wife of a Christian called Ashique Fauji. It is widely known in the village that the first wife of Ashique Fauji is Aasia’s elder sister and is still in his nikah and children born to her have reached adolescence. One of Aasia’s next door woman neighbor told Ummat that the eldest daughter of Aasia’s sister had even been married off. Aasia’s marriage had not gone down well with people in the village but the ignorance of the village folk about Chrisitanity had them think that marriage with two sisters might be legitimate in Christianity. That is the reason the villagers had ignored this marriage that happened 15 years ago.

Ummat was told that close to the village in Itan Wali that houses about 1500 families, there was an orchid of Falsa that belonged to a landlord called Idris. For the last few years women had been employed for picking the fruit in summer. In 2009, one morning as usual women including Aasia and her neighbouring women Afia, Aasima and a fourth woman Yasmin were present there picking fruit. During the tea break which is called “Chhah wopla” in local jargon, Aasia drank water from the glass meant for Afia and Aasima but the two sisters did not show any positive or negative reaction. However, after that they drank water from another bowl instead of their glass.

Aasia who is twice the age of the two Muslim sisters instead of saying anything to them started making remarks about the holy Prophet(PBUH), his marriage with Hadhrat Khadija (RA) and about the status of the Quran as a divine revelation that bordered on blasphemy and sacrilege. According to sources, the news of Aasia’s attempt to dominate the two younger sisters in the religious debate by shouting at them soon reached the owner of the orchard and he immediately arrived at the spot. According to the landlord Idris, when he went to the women, the girl named Afia was in a state of shock and was crying over the fact that the Christian woman had made blasphemous remarks about the Prophet (PBUH). After making insulting remarks against the Prophet(PBUH) Aasia made unsavoury remarks on his marriage with Hadhrat Khadija(R.A) and branded the Quran a fictitious book written by Muslims instead of calling it a divine revelation. This was the first time that someone had made such insulting comments about the holy Prophet (PBUH). Idris Zamindar said that though he did not hear the remarks with his own ears but when after hearing about the incident from Afia he asked Asia if she had really made the remarks, she had replied that she had made them. He said the women continued to come to the orchard to pick fruit for a few days after the incident.  

According to Idris, “the incident occurred on the 4th June but initially when the incident was fresh and Aasia’s confidence was also high, her husband requested me not to narrate this incident to anybody and anyhow persuade Qari Saleem who was going to be a petitioner in the case not to proceed in the matter. I told him that it would be better if Aasia herself went and asked for the forgiveness of the very people before whom she had admitted to have committed the act. But Aasia used to say that Qari Saleem would not be able to do her any harm. During that time, the NGO people had also called me. A man from Lahore who called himself the director had contacted me over the phone  a number of times and asked me to testify in favour of Aasia in the court and not tell in the court what I actually knew about the case. Later the director started threatening me over the phone. I told him that even if the President tries to stop me I will not refrain from testifying that Aasia had admitted to me that she had made the insulting remarks in front of Afia, Aasima and others. I cannot deny that. I understand that as a Muslim no one can stop me giving testimony based on truth, neither can I be forced to testify to more than that. I went to testify when summoned by the court earlier as well and am ready to testify again if the court summons.”

Speaking to Ummat, Afia and Aasima said that they lived in the same village and knew each other well and had never quarreled before. “We did not take any offence when Aasia drank from our glass nor did we complain to her. What we did was drink from another bowl instead of drinking from the same glass. Aasia took offence of that and made blasphemous and insulting comments against our Prophet (PBUH), Hadhrat Khadija(RA)’s marriage with him(PBUH) and the holy Quran.

That is the reason we testified against her so that she should be punished for her wrongdoing and nobody dares to say such things in future,” she said.

Afia said that there was no pressure on them from their family for testifying or not testifying in the court. However, as Aasia had confessed before the village folk, they also wanted her to be punished. Afia said that the whole village knew about her marriage with her brother-in-law and she would often tell them that she was a matriculate and worked in a beauty parlour in the town. “It was also evident from the way she talked that she was not an illiterate and simple woman like us,” she said.

Afia further said that no one tortured Aasia, rather when the people of the village enquired her about the incident in her uncle’s house, she had been given a chair to sit. According to police sources, Aasia admitted her guilt more than once. Even the enquiry report of Amin Bukhari had registered her confession. SP Amin Bukhari had completed the enquiry on the instruction of RPO Sheikhopura.

The petitioner in the case, Qari Saleem who is the pesh imam of the local mosque said that Aasia had confessed to blasphemy in front of the people of the village. She only confessed in front of us but the women of the village told us that Aasia would often speak like Christian missioneries. “It has also come to our knowledge that she has married the husband of her aged sister but villagers did not take any interest  in the issue,” he said.

According to Qari Saleem, Md Afzal, the son of the numberdar of the village and one Mukhtar Ahmad have also testified in the case without any pressure. Even then if the government acquitts her, it was bound to cause resentment among the village. Advocate Mian Zulfiqar representing the prosecution told Ummat  that there was no doubt that Aasia did not confess before the court but the testimonies of her confession before the villagers and her confession in the enquiry report of SP Amin Bukhari proved that she did use insulting and unsavoury words. He said the court had prounced death sentence and a fine of Rs one lakh against her. She changed three advocates before the court announced its decision on November 8. Now it was learnt that she had challenge the decision in the High Court. Asked what the basis of the court’s decision was, he said that the court largely took the witness’ account into consideration as the court had also summoned witnesses. Women too had appeared as witnesses though there was no tradition of women coming out in such cases in our village but the three women who testified showed extraordinary courage. The court was impressed. The enquiry report of SP Amin Bukhari also went against Aasia.

Advocate Mian Zulfiqar Ali said that the argument of the defence revolved round two points. One, the permission of the state or the federal government should have been sought for registering the case but it was not taken. But that was not the case. Permission would be necessary if Section A-295 had been applied whereas the case was registered under C-295. The second point of the defence was that at the initial stage of the case the investigation was done by a sub-inspector. But the fact is that after some days of registering of the case, the RPO Sheikhopura had etrusted the investigation of the case with SP Amin Bukhari. The SP Sheikhopura was given the responsibility because there was no SP in Nankana Saheb during that time. The prosecution’s stand was that the NGOs had been very active in the case right from the beginning. When Aasia’s bail plea had been moved, the number of her lawyers was ten whereas hiring a single lawyer would have been tough for the wife of a poor man. Advocate Zulfiqar further said that organizing a press conference by the governor in the jail for a convict was against the law. If the rulers had already decided to send her outside the country, they should not violate the law. It would not send right signals among the people regarding the superiority of law.

Md Afzal, the son of the numberdar of the village told Ummat that earlier too the testimony was based on truth and he will testify against the dictates of the government in future as well because it was the call of his faith. Even then if the government felicitated Aasia’s release or escape outside the country, our village folk would stage a huge protest and would even take up a long march if needed.

Source: Ummat, Pakistan

 

شاطم رسول آسیہ کو جیل سے نکال کر یورپ لے جانے کی تیاریاں

نجم الحسن عارف

پنجاب کے گونر معافی کی درخواست خود ٹائپ کر کے مجرمہ کے پاس پہنچ گئے۔ صدر سے معاف کرنے کی استدعا کی جائے گی۔ ملعونہ ‘‘اٹاں والی’’ گاؤں میں سب کے سامنے تو ہین رسالت کا اعتراف کیا تھا۔

نبی آخر الزماں صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے میں توہین آمیز کلمات کہنے کا ایک سے زائد اعتراف کر کے تین خواتین سمیت کئی گواہیوں کی بنیاد پر عدالت سے سزا پانے والی عیسائی عورت آسیہ کے حق میں پوپ بینڈ کٹ کے بیان کے بعد حکومتی سطح پر غیر معمولی سرگرمیاں شروع ہوگئی ہیں۔پوپ کے بیان کے بعد گورنر پنجاب سلمان تاثیر عدالت سے مجرم قرار دی جانے والی خاتون کے لیے گو رنر ہاؤس سے سزا کی معافی کی درخواست ٹائپ کرا کے لائے اور انہوں نے میڈیا کے سامنے اس سے کہا کہ یہ آپ کی طرف سے تحریر کردہ درخواست ہے، اس پردستخط کردیں تاکہ میں بطور گورنر اس درخواست کو صدر آصف علی زرداری تک پہنچا کر سزا کی معافی ممکن بنوا سکوں ۔ذرائع کے مطابق تو ہین رسالتؐ کے جرم میں ماضی میں سزا پانے والے عیسائیوں کو بھی اس وقت کی حکومت نے اسی طرح درمیان میں آکر بیرون ملک پہنچانے میں مدد کی تھی۔ اب آسیہ نامی مجرمہ کے لیے بھی بیرون ملک پر ٹوکول کے ماحول میں منتقلی کی تیاری شروع کردی گئی ۔ تاہم یہ پہلا موقع ہے کہ کسی سزا یافتہ سے گورنر پنجاب نے جیل میں نہ صرف ملاقات کی ، بلکہ اس کی درخواست بھی خود ٹائپ کروا کے لے گئے اور اس موقع پرگورنر کی درخواست پر میڈیا ٹیم کو لاہور سے شیخو پورہ لے جایا گیا ، جس کے سامنے نبی کریم ؐ کی توہین کی مرتکب خاتون کے ساتھ پریس کانفرنس کی گئی اور بیرونی دنیا میں آسیہ کے حامیوں کو یہ تاثر دیا کہ حکومت آسیہ کو سزا دینے کے حق میں نہیں ہے۔

 ‘‘امت’’ نے ضلع ننکانہ صاحب کے گاؤں ‘‘اٹاںوالی ’’ چک نمبر 3گ ب میں رابطہ کر کے اس خاتون کا پس منظر معلوم کیا تو بتایا گیا کہ عاشق فوجی نامی ایک عیسائی کی یہ دوسری بیوی ہے۔ گاؤں میں یہ بات مشہور ہے اور گاؤں کا ہر فرد جانتا ہے کہ عاشق فوجی کا آسیہ سے پہلے جس خاتون سے شادی ہوئی ،وہ آسیہ کی بڑی اور سگی بہن ہے، جو اب بھی عاشق کے نکا ح میں ہے اور اس سے  پیدا ہونے والے بچے جوانی کی عمر کو پہنچ چکے ہیں ۔ آسیہ کی ایک پڑوسی خاتون نے ‘‘امت’’ کو بتایا کہ اس کی بڑی بہن جو عاشق کی پہلی بیوی ہے ، کی بڑی بیٹی کی شادی بھی ہوچکی ہے۔ آسیہ کی اس شادی کو لوگوں نے اچھی نگاہ سے نہیں دیکھا تھا ۔ تاہم عیسائی مذہب کے بارے میں اہل ویہہ میں واقفیت نہ ہونے کی وجہ سے ایک عمومی گمان یہی رہا کہ عیسائی مذہب میں ہوسکتا ہے کہ دوسگی بہنوں سے شادی کی گنجائش ہو، اس لیے گاؤں کے لوگوں نے دس پندرہ سال قبل ہونے والی اس شادی کو نظر انداز کردیا تھا ۔ ‘‘امت’’ کو گاؤں کے لوگوں سے معلوم ہوا کہ اٹاں والی، جس میں تقریباً پندرہ سو خاندان آباد ہیں ، وہاں سے قریب ہی ادریس نامی زمیندار کا فالسے کا باغ ہے جہاں موسم گرما میں فالسے کا پھل پکنے پر گزشتہ کئی برسوں سے خواتین پھل اتارنے کی ادریس کے ہاں مزدوری کرتی ہیں۔جو ن 2009کا واقع ہے کہ ایک صبح معمول کے مطابق گاؤں کی خواتین ،جن میں عیسائی خاتون آسیہ بھی شامل تھی اور اس کے گھر کے قریب ہی رہنے والی عافیہ ، عاصمہ اور ایک چوتھی خاتون یاسمین بھی موجود تھی کہ نودس بجے کے قریب صبح سویرے سے پھل اتارنے والی خواتین کے لیے ناشتے کا وقفہ جسے گاؤں کی زبان میں ‘‘چھا ہ وپلا’’ کہتے ہیں، شروع ہوا تو آسیہ نے عافیہ اور عاصمہ کے پانی کے گلاس میں پانی پی لیا ،لیکن ان دونوں بہنوں نے اس پرکوئی مثبت یا منفی رد عمل ظاہر نہیں کیا، البتہ انہوں نے بعد ازاں پانی اس گلاس کے بجائے ایک پیالی میں پیا ۔ آسیہ جو ان دونوں مسلمان بہنوں سے عمر میں تقریباً دوگنا بڑی ہے، اس نے ان دونوں عافیہ اور عاصمہ کو برا بھلا کہنے کے بجائے  ذرائع کے مطابق براہ راست نبی آخر الزماں صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات مبارک ،حضرت خدیجہؓ سے آپ کے نکاح، قرآن پاک کے الہامی ہونے کے حوالے سے ایسے کلمات کہے جو تو ہین آمیز ہی نہیں بہتان پر بھی مبنی تھے۔

 ذرائع کے مطابق اس عیسائی خاتون آسیہ کے چیخ چیخ کر اپنے سے کم اور کم علم دیہاتی لڑکیوں کو مذہبی اعتبار سے دبانے اور ہراساں کرنے کی اطلاع تھوڑی ہی دیر میں فالسوں کے باغ کے مالک کے پاس پہنچ گئی اور چند منٹ میں موقع پر پہنچ گیا۔ زمیندار ادریس کے مطابق جب وہ ان خواتین کے پاس پہنچا تو عافیہ نامی مسلمان لڑکی اس صورت حال پر سخت دل گرفتہ تھی اور رورہی تھی کہ اس کے سامنے ایک عیسائی نے نبی ؐ کے بارے میں توہین آمیز کلمات ادا کیے ۔ نبی کریمؐ کے بارے میں انتہائی نازیبا کلمات کہنے کے بعد حضرت خدیجہؓ سے نبی رحمت کی شادی پرکیچڑ اچھالا اور قرآن پاک کو اللہ کی طرف سے نازل کردہ کتاب کے بجائے مسلمانو ں کی (نعوذ باللہ) خود ساختہ کتاب قرار دیا۔ یہ پہلی مرتبہ ہوا ہے کہ کسی نے ہمارے پیارے نبی ؐ ،ام المومنین حضرت خدیجہؓ اور قرآن پاک کے بارے میں اس طرح کے توہین آمیز خیالات کا اظہار کیا ہے۔ ادریس زمیندار کے بقول اس نے یہ کلمات خود تو نہیں سنے تھے، تاہم عافیہ نے جب روتے ہوئے چند منٹ پہلے ہونے والے نامناسب واقعہ کے بارے میں بتایا تو انہوں نے فوراً ہی آسیہ سے بھی اس بارے میں دریافت کیا کہ کیا تم نے واقعی ایسی کوئی بات کی ہے۔ تو اس نے تسلیم کیا کہ اس نے یہ باتیں کہی ہیں۔ ادریس کے مطابق اس واقعے کے چند دن بعد بھی یہ خواتین باغ میں پھل اتارنے کے لیے آتی رہیں ۔ ایک سوال کے جواب میں ادریس نے کہا، یہ واقعہ غالباً چار جون کو ہوا تھا، جب تک یہ واقعہ نیا نیا تھا اور آسیہ کا اعتماد غیر معمولی تھا، تو اس کے شوہر نے مجھ سے یہ کہا کہ میں اس توہین آمیز واقعے کو کسی جگہ بیان نہ کروں اور نہ ہی کسی کو بتاؤں اور کسی طرح قاری سلیم سے ان کی جان چھڑا دوں ، جو اس کیس میں مدعی بننے جارہا ہے ۔ اس پر میں نے کہا کہ بجائے اس کے کہ میں آپ لوگوں کی سفارش کروں آسیہ خود جاکر قاری سلیم اور ان لوگوں کی منت سماجت کرے جن کے سامنے اس نے گاؤں میں اعتراف کیا ہے کہ اس نے یہ غلطی کی ہے۔لیکن آسیہ کا کہنا تھا کہ قاری سلیم میرا کچھ نہیں بگاڑ سکتا ۔ اسی دوران این جی او والوں نے بھی مجھے فون کیا۔ لاہور سے ایک صاحب جو خود کو ڈائریکٹر کہتے تھے انہوں  نے بھی ایک سے زائد بار فون کر کے آسیہ کے حق میں گواہی دینے کے لیے کہا اور کہا کہ میں اس واقعے کے بارے میں جو جانتا ہوں وہ عدالت کے سامنے نہ لاؤں ۔ بعد ازاں اس ڈائریکٹر نے مجھے فون پر دھمکانا بھی شروع کردیا تو میں نے اس سے کہہ دیا کہ اگر صدر بھی کہہ دے تو میں اس گواہی سے باز نہیں آؤں گا  کہ آسیہ نے میرے سامنے یہ تسلیم کیا تھا کہ اس نے عافیہ عاصمہ وغیرہ کے سامنے اس طرح کے توہین آمیز الفاظ کہے ہیں۔

میں اس کے انکار نہیں کرسکتا  میں سمجھتا ہوں کہ مسلمان ہونے کے ناطے سچ پر مبنی گواہی دینے سے مجھے کوئی نہیں روک سکتا اور نہ ہی میں اس سے زیادہ گواہی دینے پر مجبور ہوسکتا ہوں۔ میں پہلے بھی عدالت کی طرف سے طلب کرنے پر گواہی کے لیے گیا تھا۔ اب بھی عدالت چاہے گی تو گواہی دینے کو تیار ہوں۔ ایک اور سوال کے جواب میں انہو ں نے کہا کہ عافیہ اور عاصمہ کی عمر آسیہ کے مقابلے میں کافی کم ہے۔ جبکہ دونوں ان پڑھ ہیں، ایک مقامی غریب آدمی عبدالستار کی بیٹیاں ہیں۔ ادریس نے کہا کہ جو میں نے گواہی دی ہے وہ اس حد تک ہے جس حد تک میں جانتا تھا۔ رہی یہ بات کہ حکومت کا کوئی عہد یدار یا صدر بھی مجھے اس گواہی سے دست بردار ہونے کے لیے کہے تو میں اسے بطور مسلمان اپنے ایمان کے منافی سمجھوں گا اور اپنی گواہی واپس نہیں لوں گا۔عافیہ اور عاصمہ نے ‘‘امت’’ سے بات چیت کے دوران بتایا ہم سب ایک ہی گاؤں میں رہتے  ہیں اس لیے ایک دوسرے کو اچھی طرح جانتے ہیں ،لیکن ہمارا کبھی کوئی باہم جھگڑا نہیں ہوا تھا ۔ آسیہ نے ہمارے گلاس میں پانی پیا تب بھی ہم نے اس کا برا نہیں مانا یا نہ اس سے شکایت کی ، صرف اتنا کیا کہ ہم نے گلاس میں پانی پینے کے بجائے پیالی میں پانی پی لیا، جس کا آسیہ نے برامانا اور ہمارے پیارے نبیؐ کے بارے میں ،حضرت خدیجہ ؓ سے ان کی شادی کے بارے میں او رقرآن پاک کے الہامی کتاب ہونے کے حوالے سے نامناسب اور توہین آمیز باتیں کیں۔ اسی لیے ہم نے اس کے خلاف گواہی دی ہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ اسے اس کے کیے کی سزا ملے ۔

تاکہ آئندہ کسی بھی بدبخت کو ہمارے پیار ے نبیؐ کے بارے میں ایسی حرکت (جسارت) کرنے کی جرأت نہ ہو۔ عافیہ نے بتایا کہ وہ عاصمہ سے بڑی ہے اور عاصمہ اس کی چھوٹی بہن ہے۔ اس سلسلے میں گواہی دینے یا نہ دینے کے حوالے سے ان پر یا ان کے گھروالوں پرکوئی دباؤ نہیں تھا۔  البتہ یہ ضرور ہے کہ جب آسیہ نے سارے گاؤں کے لوگوں کے سامنے اعتراف کرلیا تو پورے گاؤں کی بھی یہی خواہش ہے کہ اسے سزا ملے ، معافی نہیں ملنی چاہیے ۔ ایک اور سوال کے جواب میں اس نے کہا کہ اس کی بہن عاصمہ کے علاوہ یاسمین نامی ایک اور لڑکی نے بھی آسیہ کے خلاف گواہی دی تھی کیونکہ وہ بھی اس کی زبان سے ایسی باتیں سن چکی تھی۔عافیہ نے کہا کہ پورا گاؤں جانتا ہے کہ آسیہ نے اپنی بہن کے شوہر سے شادی کررکھی ہے اور وہ ہمیں بتایا کرتی تھی کہ وہ میٹرک پاس ہے اور شہر میں بیوٹی پارلر پر کام کرتی رہی ہے۔ اس کی باتوں سے بھی لگتا تھا کہ وہ ہماری طرح سادا اور ان پڑھ نہیں ہے ۔عافیہ نے کہا کہ کسی نے بھی آسیہ پر تشدد نہیں کیا بلکہ جب اس سے میرے چچا کے گھر میں گاؤں کے لوگوں کی موجودگی میں پوچھا گیا تو اسے بیٹھنے کے لیے کرسی دی گئی تھی۔ پولیس ذرائع کے مطابق آسیہ نے ایک سے زائد بار اس بات کا اعتراف کیا ، حتیٰ کہ انویسٹی گیشن کے امین بخاری کی تفتیشی رپورٹ میں بھی اس کا اعتراف موجود ہے۔ اے سی پی امین بخاری شیخو پورہ نے آر پی او شیخو پورہ کی ہدایت پر تفتیش مکمل کی تھی۔

مقدمے کے مدعی قاری سلیم جو کہ گاؤں کی مسجد کے پیش امام ہیں، انہوں نے بتایا کہ آسیہ نے گاؤں کے بہت سے لوگوں کی موجودگی میں توہین رسالتؐ کرنے کا اعتراف کیا تھا۔ آسیہ نے ہمارے سامنے تو محض اعتراف کیا لیکن گاؤں کی خواتین نے بتایا ہے کہ وہ ان کے سامنے اس سے پہلے بھی بطور عیسائی مبلغ کے باتیں کرتی رہتی تھی۔یہ بھی ہمارے علم میں آیا ہے کہ آسیہ نے اپنے بہنوئی سے اپنی بوڑھی بہن کی موجودگی کے باوجود شادی کرلی تھی ، لیکن گاؤں کے لوگوں نے اس معاملے میں کبھی دلچسپی نہیں لی۔ قاری سلیم کے مطابق میری مدعیت میں گاؤں کے نمبر دار کے صاحبزادے محمد افضل اور مختار احمد نامی ایک اور شخص نے بھی گواہی دی ہے اور اس سلسلے میں کوئی دباؤ نہ تھا۔ اب بھی اگر حکومت اس کی سزا معاف کرے گی تو گاؤں کے لو گوں کا اس پر غم وغصہ فطری ہوگا۔ استغاثہ کی طرف سے پیش ہونے والے وکیل میاں ذوالفقار ایڈووکیٹ نے ‘‘امت’’ کو بتایا کہ اس میں شک نہیں کہ عدالت کے سامنے آسیہ نے اعتراف جرم نہیں کیا تھا لیکن اس سے پہلے گاؤں میں اس کے اعتراف کی مضبوط گواہیوں کے علاوہ ایس پی امین بخاری کی تفتیشی رپورٹ میں بھی یہ الزام ثابت ہوا کہ آسیہ نے ایسے نازیبا اور توہین آمیز خیالات کا اظہار کیا۔

ایک سوال کے جواب میں میاں ذوالفقار ایڈووکیٹ نے کہا کہ عدالت نے آسیہ کو سزا ئے موت اور ایک لاکھ روپے جرمانہ کی سزا سنائی ہے۔ 8نومبر 2010کو ہونے والے اس فیصلے تک پہنچنے کے لیے اس نے مجموعی طور پر تین وکیل تبدیل کیے اور اب ہمیں اطلاع ملی ہے کہ اس نے ہائی کورٹ میں اس فیصلے کو چیلنج کردیا ہے۔ اس سوال پر کہ عدالت نے فیصلے کی بنیاد کیا بنائی؟ میاں ذوالفقار ایڈووکیٹ کا کہنا تھا کہ عدالت نے بنیادی طور پر شہادتوں کی بنیاد پر فیصلہ دیا ہے۔ کیونکہ عدالت نے خود بھی شواہد جمع کیے تھے ۔ خواتین جنہوں نے گواہی دی ہے غیر معمولی ہمت کا مظاہرہ کیا ہے جو عدالت کے لیے بھی بڑی اہم بات تھی۔ جب کہ ایس پی امین بخاری کی مرتب کردہ تفتیشی رپورٹ بھی آسیہ کے خلاف تھی۔ میاں ذوالفقار ایڈووکیٹ نے کہا کہ وکیل صفائی کا استدلال ان دونکات کے گرد گھومتا رہا کہ اس مقدمے کے اندراج کے لیے وفاقی یا صوبائی حکومت سے اجازت لینا ضروری تھا۔

لیکن اس معاملے میں اجازت نہیں لی گئی ۔ لیکن معاملہ ایسا نہیں تھا۔ یہ اجازت صرف وہاں لینا ضروری ہوتی ہے جہاں دفعہ A-295لگائی گئی ہو۔ جب کہ مقدمہ دفعہ C-295کے تحت درج کیا گیا تھا۔دوسرا نکتہ وکیل صفائی کے سامنے یہ تھا کہ اس مقدمے کے ابتدائی دنوں میں اس تفتیش ایک سب انسپکٹر نے کی تھی؟ لیکن یہ حقیقت یہ ہے کہ مقدمے کے اندراج  کے چند دن بعد ہی آر پی او شیخو پورہ نے امین بخاری ایس پی کو تفتیش پر مامور کردیا تھا۔ ایس پی شیخو پورہ کو اس لیے یہ تفتیش دی گئی کہ اس وقت ضلع ننکانہ میں ایس پی موجود نہ تھا۔ وکیل استغاثہ کا کہنا تھا کہ این جی او ز شروع سے ہی اس معاملے میں بہت سرگرم رہی ہیں ۔ جب آسیہ کی ضمانت کے لیے اپلائی کیا گیا تو آسیہ کے وکلا کی تعداد دس کے قریب تھی۔ حالانکہ ایک غریب آدمی کی بیوی کے لیے تو ایک وکیل کی فیس ادائیگی آسان نہیں ہوسکتی تھی ۔ میاں ذوالفقار ایڈووکیٹ کا یہ بھی کہنا تھا کہ گورنر پنجاب سلمان تاثیر نے جس طرح جیل میں آکر ایک سزایافتہ مجرم کی پریس کانفرنس کا اہتمام کیا ہے یہ قانون کے خلاف ہے۔اگر حکمرانوں نے اسے بیرون ملک بھیجنے کا فیصلہ کرہی لیا ہے تو انہیں قانون کی خلاف ورزی نہیں کرنا چاہئے۔ اس سے عوامی سطح پر قانون کی بالا دستی کے حوالے سے حکمرانوں کےبارے میں اچھا تاثر سامنے نہیں آئے گا۔ ادھر ‘‘اٹا ں والی’’ گاؤں کے نمبر دار کے بیٹے اور آسیہ کیس کے اہم گواہ محمد افضل نے ‘‘امت ’’ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پہلے بھی سچ پرمبنی گواہی تھی ۔ اب  بھی حکومت کی مرضی کے خلاف گواہی دیتے رہیں گے کہ یہ ہمارے ایمان کا تقاضا ہے۔ اس کے باوجود حکومت نے آسیہ کو رہا کیا یا بیرون ملک فرار کرایا تو ہمارے گاؤں کے لوگ احتجاج کریں گے اور لانگ مارچ بھی کرنا پڑا تو کریں گے۔

) بشکریہ امت ،پاکستان (

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/blasphemy-case-against-the-christian-woman-in-pakistan--provocations-in-the-urdu-press--شاطم-رسول-آسیہ-کو-جیل-سے-نکال-کر-یورپ-لے-جانے-کی-تیاریاں/d/3740  

 

 

Loading..

Loading..