New Age Islam
Wed Dec 08 2021, 11:12 AM

Urdu Section ( 19 Oct 2010, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Quran and the Rights of Women in Modern Age دور حاضر کے تناظر میں قرآن اور حقوق نسواں

By Atiya Siddiqua

(Translated from Urdu by Arman Neyazi, NewAgeIslam.com)

God created countless creatures in the universe. Human beings were made the best among all the creatures and created Man and Woman among them. Allah says in Surah Al Nisa:

“O people! Fear God who created you from a single soul and created the pair with it and spread many men and women from them.” (Al Nisa:1

It was an announcement making it clear that the false differences the world has created among human beings were wrong and superficial. All the human beings have been born from a single soul. No one is either superior or inferior by birth, all are equal. The differences which continue to exist between men and women for centuries have been repudiated and it was made obvious that the first pair of the human beings did not belong to any other creation but they were from the same species and various others were also created from them itself. Relationship was established among the man and whole human community came to the fore. Therefore differences among them is like differentiating one arm from the other. There is a difference between the two constituents of a whole.

God has assigned different tasks to the men and women and has bestowed mental and physical abilities on them accordingly. The man was given the responsibility of dealing with tasks outside his home, of earning a livelihood by doing labour, of carrying economic struggle and meeting the needs of the family. The woman was told that her field of work was her home and her responsibility was to upbring and nurture children. Her nature, temperament and psychology was constituted accordingly. The spirit of love, sympathy and empathy, sacrifice, patience and restraint and service have been endowed in her more than in men.

God has not created anything useless in this workshop of life. He has fixed everybody's work and place and has bestowed upon them the abilities, accordingly, as every part of a machine has its own special work to perform but each part has its own significance.The machine performs its required function only when a particular part is fitted in the machine in its respective place. If we do not fit a spare part into its required place or fit it into another place, the machine will either not run at all or will not perform its required function.

Similarly, the work of this factory of the universe goes smoothly only when every creature executes its assigned tasks from the place and position Allah has accorded to them. The purview of work the Quran has assigned to men and women are according to their natures and no one’s position and tasks should be looked down upon.

In the name of so called development multinational companies have presented the importance of household work, family and family life before women because they needed an army of employees on low salaries. Therefore, they egged the women on take part in financial struggle whereas Islam has assigned economic responsibility to the men and household responsibilities to women so that the family runs smoothly with each other’s cooperation.

It does not mean that a woman has been prohibited to struggle for the financial development of her house. She can take part in it if she so desires albeit with some limitations. There are two objectives of this prohibition. One, there should not be any disintegration or problem in the family system the stability of which is the responsibility of the woman and secondly, she should be able to live a life of dignity and is not thrown into circumstances in which she finds it difficult to remain within the confines of moral values. If these limitations are not kept in consideration, there will be rift in the society and all will have to pay for it. This is an age of ideologies.

This is an age of ideologies. The battles are not fought with weapons in battlefields but the thoughts and points of view are being changed. The media is playing a big role in changing the mindset of the people. The print and visual media is publicizing the ills in sucb a way that people are lapping them up as virtues. The individual unit of a family has gone haywire because of the limitless freedom the western countries have given to the women. The whole family system has disintegrated. Now the eastern countries also wish to tread the same path because of which the ills like live in relationship, casual sex and homo sexuality are much in vogue.

God has created human being as His best creation so it could have realised that he should not follow the path that has led the West to destruction. But, he has become blindfolded with "Hal Min Mazeed" ( I want more) . He can’t see anything and is taking it as a development and equality.

Ancient age because of its illiteracy and the modern age in the name of development has always erred in fixing the place and status of women. Society can flourish and develop only when women are given their right place in the light of the guidance and knowledge imparted by Allah and His Prophet(SAW) becasuse Islam teaches us the middle path and this is what is Serat ul Mustaqueem( the right path). To God the development is complete Iman (faith) and good deeds. To Him everybody is equal. None of us has been given permanent high or low place in the society. Whoever, man or woman, will perform as per the guidance of Allah will get high status on the Day of Judgement and the person who will be bereft of these qualities will perish in both the places.

“Man Amelan Salehan min Zikrin aw Unsa w huwa Momenan falanajjainahu Hahatan Taiyyebatan w la Najzeyannahum Ajrahum be Ahsan ma Kanu Yamaluoon" (Al Nahal79)  " The people who are good in their deeds and if he is a Momin will certainly be provided a pious life in the world  and such people will certainly be awarded for their good deeds on the Day of Judgement"

On the Day of Judgement the human beings will be awarded or punished not on the basis of their gender buyt on the basis of their Iman and deeds. Whoever will have the wealth of good deeds and pious practice of Shariah will get Pious Life, Hayat e Taiyyaba, he will never be misguided from the right path, God will provide him pious food and patience during the difficult days. The doors of paradise will be opened for him and he will have everlasting right on it. It is for all without any discrimination between man and woman. May we get the power of treading the right path and get succes here and hereafter. Ameen

Source: RASHTRIYA SAHARA

 URL:http://www.newageislam.com/urdu-section/quran-and-the-rights-of-women-in-modern-age--دور-حاضر-کے-تناظر-میں-قرآن-اور-حقوق-نسواں/d/3555

دور حاضر کے تناظر میں قرآن اور حقوق نسواں

عطیہ صدیقہ

اللہ تعالیٰ نے کائنات میں بے شمار مخلوقات تخلیق فرمائیں ۔ ان میں اشرف المخلوقات ‘‘انسان’’ کو پیدا کیا اور انسان میں دوصنف مردوعورت کو بنایا۔ سورۃ النسا میں اللہ تعالیٰ ارشاد فرماتے ہیں : ‘‘یَٰا یُّھَا اُلنَّاسُ اُتَّقُو ارَبَّکُمُ اُلَّذِی خَلَقَکُم مِّن نَّفَسِِ وَحِدَ ۃِِ وَخَلَقَ مِنَھا زِوََ جَھَا وَ بَثَّ مِنَھُمَا رِجَا لاَ کَثِرَا وَنِسَاَ ’’ (النسا)‘‘ اے لوگو! اپنے رب سے ڈرو جس نے تمہیں ایک جان سے پیدا کیا اور اسی سے اس کا جوڑا بنایا اور ان دونوں سے بہت سے مرد او عورتیں پھیلادیے۔’’

یہ اس بات کا اعلان تھا کہ ایک انسان اور دوسرے انسان کے درمیان جو جھوٹے امتیاز ات دنیا میں قائم رکھے ہیں ، وہ سب باطل ہیں، غلط ہیں ۔ سارے انسان نفس واحد سے پیدا ہوئے ہیں۔ پیدائشی طور پر نہ کوئی افضل ہے نہ حقیر ،سب برابر ومسافی حیثیت کے مالک ہیں۔ عورت اور مرد کے درمیان زمانہ قدیم سے جو فرق امتیاز چلا آرہا تھا، اس کی تردید کی گئی، اس میں یہ حقیقت واضح کی گئی کہ انسان اول کا جوڑا کسی اور نوع سے نہیں تھا ،بلکہ اسی کی نوع سے تھا او راس میں اولین جوڑے سے بے شمار مرد اور عورتیں پیدا ہوئے ۔ان کے درمیان رشتے اور تعلقات قائم ہوئے اور پوری نسل انسانی پھیلی ۔ اس لیے دونوں کے درمیان فرق و امتیاز نوع انسانی کے ایک بازو اور دوسرے بازو کے درمیان فرق و امتیاز ہے۔ ایک کل کے دو اجزا کے درمیا ن فریق ہے۔

اللہ تعالیٰ نے مرد وعورت کے دائرہ کار الگ الگ رکھے ہیں اور اس سے اعتبار سے انہیں جسمانی وذہبی صلاحتیں عطا فرمائی۔ مرد کے ذمہ یہ کام دیا گیا کہ وہ باہر کے کام کاج سنبھالے ،محنت مزدوری کر کے کما کر لائے ،معاشی جدوجہد کرے اور اپنے اہل وعیال کی ضروریات کو پورا کرے۔ عورت کے ذمہ یہ کام دیا کہ اس کا اصل میدان کار گھر ہے۔ اولاد کی تربیت ہے اور اس اعتبار سے اس کا مزاج ، رجحان اور نفسیات بنائی ہے۔ عورت کے اندر محبت ، دلداری ، ہمدردی وغم خواری ،ایثار وقربانی ،صبر وتحمل ،حلم وبردباری اور خدمت کے  جذبات مرد سے زیادہ رکھے ہیں۔ ان کی وجہ سے وہ اپنے ماحول کو مسرت اور خوشی راحت اور سکون اور دل جوئی اور محبت سے بھر سکتی ہے۔

اس کارخانہ حیات میں اللہ رب العزت نے کوئی چیز بے کار نہیں پیدا فرمائی ،بلکہ ہر ایک کامقام اور کام متعین کیااور اس کے مطابق صلاحیتیں ودیعت فرمائی ۔ جیسے کسی مشین کے پرزے کی ساخت او رکام مختلف ہوتے ہیں، لیکن ہر ایک اپنی جگہ نہایت اہم ہوتا ہے ۔ ہر پرزے کا مقام متعین ہوتا ہے۔ مشین میں اس پرزے کو اس کی متعین جگہ پرفٹ کرتے ہیں، تبھی جاکر وہ مشین مطلوبہ کام انجام دیتی ہے۔ لیکن اگر ہم کسی پرزے کو اس کی مقرر جگہ پر فٹ نہ کریں یا کسی دوسری جگہ فٹ کردیں تو وہ مشین یا تو چل ہی نہیں سکتی ،یاپھر مطلوبہ کام انجام نہیں دے سکتی ۔ٹھیک اسی طرح کائنات کے اس کارخانے میں اللہ تعالیٰ نے جس مخلوق کا جو کام اور جو جگہ مقرر کی ہے ، اس پر قائم رہے تبھی جاکر کام ٹھیک طور پر انجام پاتا ہے ۔ مرد وعورت کے ذمہ قرآن نے جو دائر ہ کار متعین کیے ہیں ،وہ اس کی فطرت کے عین مطابق ہے کسی کے کام او رمقام کو حقیر نہیں سمجھنا چاہئے۔

دور جدید میں نام نہاد ترقی کے نام پر ملٹی نیشنل کمپنیوں نے عورت کو اس کے گھر یلو کام کاج، خاندان اور خاندانی زندگی کی اہمیت کو گھٹا کر پیش کیا ہے، اس لیے کہ انہیں کم قیمت پر ملازمین کی ایک بڑی فوج درکار تھی۔ اس لیے انہوں نے عورت کے گھریلو کام کاج کو حقیر بنا کر اپنے مفاد کے لیے معاشی جدوجہد پر ابھارا ،جب کہ اسلام نے معاشی ذمہ داری مرد پر ڈالی ہے او ر عورت کو گھر کا انتظام سنبھالنے کی ۔ اس لیے کہ دونوں مل جل کر باہمی تعاون سے خاندان کا نظام چلائے۔

اس کا مطلب یہ نہیں کہ اسلام نے عورت کے لیے معاشی جدوجہد کو بالکل ممنوع قرار دینا ،بلکہ اسلام نے عورت کو اپنی اور دوسروں کی معاشی فکر سے آزاد رکھا ہے، اس کے باوجود اگر وہ معاشی سرگرمیوں میں حصہ لینا چاہئے تو ضرور حصہ لے سکتی ہے ،البتہ اس پربعض پابندیاں عائد ہوتی ہیں۔ ان پابندیوں کے دومقاصد ہیں، ایک یہ کہ خاندان کے نظام جو عورت کی بنیادی ذمہ داری ہے، میں کوئی خلل اور انتشار نہ پیدا ہو اور اس کے استحکام میں فرق نہ آئے ۔ دوسرے یہ کہ عورت یا عفت زندگی گزار سکے اور اسے ایسے حالات میں نہ ڈالا جائے کہ اس کے لیے اخلاقی حدود میں قائم رہنا دشوار ہوجائے، اگر ان حدود وقیمود کا پاس ولحاظ نہ رکھا جائے تو سماج میں بگاڑ پیدا ہوگا،جس کا خمیازہ سبھی کو بھگتنا ہوگا۔ موجودہ دورنظریاتی دور ہے، اب ہتھیاروں او رکھلے میدان میں جنگ نہیں لڑی جارہی ہے، بلکہ نظریات وخیالات کوبد لا جارہا ہے، لوگوں کے Mindset کو بدلنے میں میڈیا بہت بڑا رول ادا کررہا ہے۔ پرنٹ میڈیا و الیکٹرانک میڈیا کے ذریعہ بعض برائیوں کی تشہیر اس بڑے پیمانے پرکی جارہی ہے کہ لوگ برائیوں کو اچھا اور مہذب سمجھ کر قبول کررہے ہیں۔ مغربی ممالک نے عورت کو جوبے قید آزادی دی ہے اور جس کی وجہ سے خاندان جو معاشرے کی بنیادی اکائی ہوتا ہے ، وہ بکھر گیا ہے۔ سماجی نظام پوری طرح سے درہم برہم ہوگیا۔ اب اسی راہ پرمشرقی ممالک چلنا چاہتے ہیں۔ جس کے بھیانک تنائج ‘‘بغیر شادی کے ساتھ اپنے Live in relationship بغیر شادی کے جنسی زندگی Casual Sexاور Homo sexuality جیسے رواج فروغ پارہے ہیں۔

انسان کو جو اللہ نے اشرف المخلوقات بنایا ہے ، وہ اپنی عقل سے کام لے کر سمجھ سکتا تھا کہ جس راہ پر چل کر مغرب تباہ وبرباد ہوا ہے، اس راہ پرمجھے نہیں چلنا چاہئے ،لیکن اس کی آنکھ پر ‘‘ھل من مزید’’ کی پٹی بندھی ہے۔ اسے کچھ سجھائی نہیں دیتا سوائے اندھا دھند تقلید کے اور اسی کو تہذیب او ر مساوات کا نام دیتا ہے۔

دور قدیم نے جہالت کی بنا پر اور دورجدید نے نام نہاد ترقی کے نام پر عورت کے اصل مقام کے تعین میں ہمیشہ غلطی کی ہے۔ افراط اور تفریط کا شکار ہوا ہے، لیکن اللہ اور اس کے رسولؐ کی تعلیمات سے ہمیں جو رہنمائی ملتی ہے، اس کے مطابق اگر ہم عورت کو اصل مقام دیں گے ، اپنے معاشرے اور سماج کی تشکیل کریں گے تبھی یہ سماج امن وسکون کا گہوارہ بن سکتا ہے ۔ اس لیے کہ اسلام اعتدال کی راہ بتاتا ہے اور اعتدال ہی صراط مستقیم ہے۔ اللہ تبارک وتعالیٰ کے نزدیک عورت او رمرد کی کامیابی ایمان وعمل صالح سے وابستہ ہے۔ اس کے نزدیک مرد اور عورت دونوں برابر ہیں۔ ازلی وابدی طور پر نہ تو کسی کے لیے برتری کا پروانہ لکھ دیا گیا ہے اور نہ کسی کے حق میں کم تری کا فیصلہ ہوچکا ہے ۔ مرد  اور عورت میں جو بھی ایمان اور حسن عمل سے آراستہ ہوگا وہ دنیا اور آخرت میں کامیاب ہوگا اور جس کا دامن ان اوصاف سے خالی ہوگا وہ دونوں ہی جگہ ناکام و نامراد ہوگا۔

 مَنََ عَمِلَ صَٰلِحَا مِّن ذَکَرِِ اَ وََ اُنثَیٰ وَھُوَ مُؤََ مِنُُ فَلَنُحَیِیَنَّہُ و حَیَوٰۃََ طَیِّبَۃََ وَلَنَجْزِ یَنَّھُمََ اَ جَرَھُم بِاَ حَسَنِ مَا کاَ نُوا یَعَمَلُونَ (النحل97)‘‘جو شخص بھی نیک عمل کرے گا چاہے وہ مرد ہو یا عورت اگر وہ مومن ہے تو ہم (اس دنیامیں) اسے پاکیزہ زندگی بسر کرائیں گے اور (اخرت میں ) ایسے لوگوں کو ضرور ان کے اچھے کاموں کا اجر عطا کریں گے’’۔

آخرت کے دن جب حساب وکتاب قائم ہوگا، انسان کی قسمت کا فیصلہ اس کی جنس کی بنیاد پر نہیں ایمان او رعمل کی اساس پر ہوتا ہے ۔ جس کسی کے دامن میں ایمان اور حسن عمل کی دولت ہوگی اس دنیا میں اسے ‘‘حیات طیبہ’’ نصیب ہوگی۔ وہ  کسی مرحلہ میں صراط مستقیم سے نہیں بھٹکے گا اور غلط راہ پرگامزن نہیں ہوگا۔ اللہ تعالیٰ اسے رزق حلال عطا کرے گا، مشکلات میں صبر وقناعت دے گا۔ قیامت کے روز جنت کے دروازے اس کے لیے کھولیں گے اور وہاں کی ابدی نعمتوں کا وہ حقدار قرار پائے گا۔ یہ ایک قائدہ کلیہ ہے اس میں مرد اور عورت کے درمیان فرق نہیں ۔ اللہ تعالیٰ ہمیں دنیا وآخرت میں کامیاب عطا فرمائے اور اس کے حدود کا پاس ولحاظ کرنے کی توفیق عطا فرمائے(آمین)

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/quran-and-the-rights-of-women-in-modern-age--دور-حاضر-کے-تناظر-میں-قرآن-اور-حقوق-نسواں/d/3555

 

Loading..

Loading..