New Age Islam
Sat Sep 19 2020, 01:25 AM

Urdu Section ( 17 Oct 2010, NewAgeIslam.Com)

Khamenei promotes Shia-Sunni unity: Defamation of Hadhrat Aisha declared ‘haram’ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہ کی شان میں گستاخی ‘حرام

By Syed Mansur Agha

The Head of the Islamic Republic of Iran Ayatollah Al Azma Syed Ali Khamenei Al Hussaini issued a fatwa declaring defamatory remarks against Hadhrat Aisha (RA) and the holy companions of the holy Prophet (PBUH) 'haram' (anti-Islamic). The western media did not give much importance to the fatwa. However, some West-afflicted minds have expressed their reservations. But the Shia and Sunni scholars and intellectuals of the Islamic world have warmly welcomed the edict. The spiritual guide of the Islamic Republic of Iran issued the edict on the inquiry of the scholars and intellectuals of the city of Al Ahsa.

In the letter dated 4 Shawwal 1341 Hijri, his attention was drawn towards the fact that at a time when the Muslim community was going through a crisis thrust upon it and schism and differences had spread far and wide among the Muslims of the world harming the unity of the community, the attention was being diverted from the Islamic struggle to solve sensitive issues. In such delicate situation some people have adopted extremist attitude and have been deliberately insulting and defaming the symbols and sacred signs of Sunni community constantly. In this chain of events, some sattelite channels and websites are being used by people associated with learning and intellect who have been making unsavoury remarks against the holy Prophet's wife Hadhrat Aysha (RA) which is against the dignity of the holy wives of the holy Prophet, the holy mothers of the ummah.

The letter had expressed hope that the spiritual leader of Iran would take a clear stand on the issues which were a cause for emotional and psychological stress on the Muslims following the Ahl-e Bait alaihissalam. The letter further reminded him of the fact that some mischief mongers were trying to cause schism and animosity among the Muslims of the world.

The letter stated that the context of the inquiry was the recent incident in Kuwait where a former army officer Sheik Yassir Al Habib who calls himself a Shia scholar and preacher and is living in Britain in exile made some extemely derogatory and unsavoury remarks about Hadhrat Aysha (RA) in a sacred gathering in the month of Ramazan. The statements were widely publicised by some TV channels and websites. It resulted in political tensions in Kuwait which has 40 per cent of Shia population.

Subsequently, the cabinet revoked Al Habib’s citizenship. However, the step was not enough to quell the tensions.

Imam Syed Ali Khamenei's curt response to the inquiry was as follows:

‘Insults and sacrilege against the holy personalities and sacred symbols of our Sunni brethren especially putting blames on the holy wives of the holy Prophet (PBUH) is haram and this is also true in case of the wives of all the holy prophets.’

In a clarification on Shianet, it was said that the allegations which have been made against Hadhrat Aysha (RA) could not even be made against the wives of other prophets including the wives of Hadhrat Nuh and Hadhrat Luth as they are free of all blames according to Shia beliefs.

According to Ahle-e-Bait News Agency, the ulema and teachers of Houza Ilmia Qum have warmly seconded the fatwa by the Rahbar-e-Inquilab and have issued a joint statement saying: "Shia beliefs regard association of the holy wives of the holy Prophet (PBUH) with adultery as false and devoid of truth and Shia ulema with reference to incident of 'ifak' in Sura Noor have declared the wives of the holy Prophet (PBUH) totally free from the blame of adultery.

The spokesman of the Shia organisation of Lebanon, Jamat-e-Ulema-e-Muslimeen, Sheikh Amro has said that the disputes that were being created had nothing to do with Shia beliefs and religious principles. (They were political disputes). He said that the fatwa issued by the guide of the Islamic Revolution was a jurisprudencial and political edict and from that point of view all the members of the Shia community, were bound to follow it irrespective of whether they were the followers of Imam Khamenei or not.

The head of the Sunni Board of Lebanon has said that the fatwa issued by Ayatollah Al Azma is a reflection of his wisdom, knowledge and prudence as a leader of the Muslim ummah because the Imam of the Islamic ummah is one who establishes unity and harmony among the ummah.

The Chancellor of Jamia Al Azhar Dr Ahmad Al Tayyab issued a written statement declaring the fatwa auspicious and said that one thing that added importance to the fatwa was that the fatwa was issued by one of the greatest ulema of the Shia world and the supreme religious leader of the Islamic Republic of Iran. He said, "I undertake on the basis of my knowledge and the sharia based responsibility that I have on my shoulder that the efforts to establish unity among the ummah is mandatory and the person who creates animosity and schism among the Muslims is a sinner deserving the wrath of Allah. Therefore, people should keep away from him.”

Most important thing about the fatwa is that the government of Kuwait has greeted the fatwa. In the cabinet meeting presided by the Prime Minister Sheikh Nasser Al Sabah, the fatwa of the supreme leader was hailed by all and participants expressed their gratitude and relief.

The report from Jerusalem says that the Imam of Baital Muqaddas, Sheikh Mehr Hamud termed the fatwa auspicious for the Muslim unity. The head of the Ikhwanul Muslimeen of Urden Hamam Sayeed termed it an important step towards fighting the 'evil'. Professor of Oriental Studies Madhat Hamad termed the fatwa a serious change in thinking and expressed hope that it will have a far reaching impact as the personality of Imam Khamenei was respected all over.

The fatwa has also been welcomed in India.  The Amir of Jamat-e-Islami Hind and eminent scholar Syed Jalaluddin Umri has said that the fatwa was very commendable and should be welcomed. It gives us hope that Shia-Sunni differeces will now take a downslide and will open new vistas for the unity among the ummah and that there was a need to widely publicise the fatwa.

The Secretary of the Jamit-e-Ulema Hind Abdul Hameed Nomani who is also a teacher at the Darul Uloom Deoband has termed it a very good sign and said that there was light and guidance for the two major schools of thought of the Muslims in it. He said that the fatwa should be heeded and followed. Renowned journalist Md Ahmad Kazmi said that the fatwa was not meant for a particular geograpical region and expressed hope that it would be welcomed in the Indian subcontinent.

This is a matter of great regret that a section publicised the political disputes of the first century for their own petty interests in a manner that showed as if it was a part of the belief and people in the time to come should follow it. The fact that the Quran has accorded the wives of the holy Prophet (PBUH) the status of the mothers of the ummah and forbade Muslims to marry them after the Holy Prophet's demise. On the basis of a coincidence of Ifak, some Muslims of Medina had launched a villification campaign against Hadhrat Aysha. The Quran has come down on them heavily and revealed ten verses (Surah Noor) in support of her.

The Holy Prophet (PBUH) was very fond of Hadhrat Aysha because of her piety, decent behaviour and knowledge of the matters of faith. Therefore, when the Prophet's (PBUH) time drew near, he, with the permission of his other wives, spent his last days in her room and breathed his last with his head resting on her lap. Her room has the honour of being the last resting place of the Holy Prophet (PBUH).

If someone makes unsavoury remarks about such a great mother of the ummah and someone's ears derive pleasure listening to those remarks, he should correct his attitude in the light of the fatwa of the supreme Imam and rush to beg for Allah's pardon.

Source: Hindusthan Express, New Delhi

 URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/khamenei-promotes-shia-sunni-unity--defamation-of-hadhrat-aisha-declared-‘haram’-حضرت-عائشہ-رضی-اللہ-عنہ-کی-شان-میں-گستاخی-‘حرام/d/3544


حضرت عائشہ رضی اللہ عنہ کی شان میں گستاخی ‘حرام’

سید منصور آغا

اسلامی جمہوریہ ایران کے سربراہ اعلیٰ ، آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای الحسینی نے 3اکتوبر کو ایک فتویٰ صادر کیا ہے جس میں ام المومنین حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا اور اصحاب رسول کی شان میں گستاخی کو حرام قرار دیا گیاہے۔ مغربی ذرائع ابلاغ  نے اس اہم فتوے کو کوئی اہمیت نہیں دی۔ تاہم مغرب زدہ ذہنوں نے بعض تحفظات کا اظہار کیا ہے لیکن عالم اسلام کے ممتاز شیعہ وسنی علما اور دانشور وں نے اس کا پر جوش خیر مقدم کیا ہے۔ رہبر انقلاب اسلامی جمہوریہ ایران نے یہ فتویٰ شہر ‘الاحسا’ کے علما او ردانشوروں کے استفسار پر دیا ہے۔ 4شوال 1341کو مرسلہ مکتوب میں سلام  تحیات کے بعد اس امرکی طرف توجہ دلائی گئی ہے کہ ‘ایک ایسے دور میں جب کہ امت اسلامی ایک منظم بحران سے گزررہی ہے۔ مسلمانان عالم کے درمیان تفرقہ اور انتشار پھیل رہا ہے اور وحدت امت کی ترجیحات کو نقصان پہنچا یا جارہا ہے ۔ چنانچہ حساس معاملات کو حل کرنے کے لئے جاری اسلامی جد وجہد اور اس کے ثمرات سے توجہ ہٹ رہی ہے۔ ایسے نازک دور میں کچھ لوگ انتہا پسندانہ رویہ اختیار کئے ہوئے ہیں اور ارادی طور پر سنی ملت کی علامتوں اور مقدسات کی مسلسل توہین ہورہی ہے۔اسی سلسلہ کے تحت بعض سٹیلائٹ چینلز اور انٹر نیٹ ویب سائٹس پر علم ودانش سے منسوب بعض افراد کی جانب سے زوجہ رسول حضرت عائشہؓ کے بارے میں نازیبا الفاظ اور صریح اہانت کی جارہی ہے جو ازواج نبی اور امہارت المومنین کے شرف کے خلاف ہیں۔

اس بارے میں جناب کی رائے کیا ہے ؟ مکتوب میں امید ظاہر کی گئی ہے کہ آپ اسلامی معاشروں میں اضطراب کا سبب بننے والے مسائل اور مکتب اہل بیت علیہم السلام کی پیروی کرنے والے مسلمانوں سمیت تمام دیگر مسلمانوں پرنفسیاتی دباؤ کا موجب بننے والے مسائل کے بارے میں واضح موقف کا اظہار فرمائیں گے۔آ پ جانتے ہیں کہ بعض فتنہ پرور اسلامی دنیا کو آشوب  زدہ کر کے مسلمانوں میں اختلاف ڈالنے کی کوشش کررہے ہیں۔  اس استفسار کاپس منظر یہ ہے کہ کویت کے ایک سابق فوجی افسر ‘شیخ ’ یا  سرالجیب نے جو خود شیعہ مبلغ وعالم باور کراتا ہے اور برطانیہ میں خود جلاوطنی کی زندگی گزار رہا ہے ، ماہ رمضان سے متعلق ایک مقدس اجتماع میں حضرت عائشہؓ کے خلاف انتہائی نازیبا کلمات کہے اور فحش الزامات عائد کئے جن کی بعض ٹی وی چینلز اور ویب سائٹس نے خوب تشہیر کی۔اس کے نتیجہ میں کویت میں ایک سیاسی کشیدگی پیدا ہوگئی جہاں تقریباً 40فیصد شیعہ آبادی ہے۔چنانچہ کابینہ نے الحبیب کی شہریت ختم کردی۔ لیکن اس اقدام سے اضطراب ختم نہیں ہوا۔ امام سید علی خامنہ ای حفظ اللہ تعالیٰ نے اپنے مختصر مگر دوٹوک جواب میں فرمایا ہے: بسم اللہ الرحمن الرحیم، السلام علیکم ورحمت اللہ وبرکاتہ ۔ ہمارے سنی بھائیوں کی علامتوں اور مقدسات کی توہین و تحقیر ،بالخصوص رسول اللہؐ کی ازواج پر تہمت باندھنا ، جوان کے شرف میں خلل پڑنے کا باعث ہو حرام ہے۔

بلکہ یہ امر تمام انبیا کی ازواج اور خاص طور سے ان کے سردار سروررسول اللہ اعظم کے زوجات کے لئے محال ہے۔شیعہ نیٹ پر ایک وضاحت میں کہا گیا ہے کہ جو تہمتیں حضرت عائشہ زوجہ رسولؐ پر لگائی گئی ہیں، شیعہ اعتقاد ات کے مطابق دیگر انبیا کی ازواج حتیٰ کہ حضرت نوح اور حضرت لوط کی ازواج پر بھی لگائی جاسکتیں اور انبیا علیہ السلام کے حریم ان تہمتوں سے مکمل طور پر پاک ہیں۔اہل بیت نیوز ایجنسی کے مطابق حوزہ علمیہ قم کے علما و اساتذہ نے رہبر انقلاب کے اس فتوے کی پرزور تائید کی ہےاور ایک مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ ‘شیعہ اعتقاد ات زدجات پیغمبر اکرم گو فحشا سے نسبت کو غلط اور خلاف حقیقت سمجھتے ہیں اور شیعہ علما نے سورہ ٔ نور میں ‘افک’ کے قصے کے حوالے سے پیغمبر اکرمؐ کی زوجات کی فحشا کے بہتان سے مکمل طور پر بری قرار دیا ہے۔ ‘لبنان کی شیعہ تنظیم جماعت علمائے مسلمین کے ترجمان شیخ عمر و نے کہا ہے کہ جو اختلاف ابھارے جارہے ہیں ا ن شیعہ اعتقاد ات اور دینی اصولوں سے تعلق نہیں ۔ ( وہ سیاسی اختلافات تھے)انہوں نے کہاکہ انقلابی اسلامی کے رہبر کا فتویٰ ایک فقہی اور سیاسی فتویٰ ہے اور اس اعتبار سے تمام اہل تشیع ،خواہ وہ امام خامنہ ای کے مقلد نہ ہوں،اس پر عمل کے پابند ہوجاتے ہیں، لبنان کے سنی علما بورڈ کے سربراہ شیخ مایر مزبر نے کہا ہے کہ آیت اللہ العظمیٰ کا فتویٰ امت اسلامی کے قائد اور پیشوا کی حیثیت سے آپ کی حکمت ،علم ودانش اور اعلیٰ درجہ کے ایمان کی علامت ہے۔ کیونکہ اسلامی امہ کا اصل امام وہ ہے جو امت کے درمیان اتحاد او ر یکجہتی قائم کرے۔

جامعہ الازہر کے چانسلر ڈاکٹر احمد الطیب نے ایک تحریری بیان جاری کرکے اس فتوے کو مبارک قرار دیا اور کہا ہے، جو چیز اس فتوے کی اہمیت میں اضافہ کرتی ہے وہ یہ ہے کہ یہ مسلمانان عالم کے بزرگ علما میں سے ایک عالم دین، عالم تشیع کے بزرگ مراجع میں سے ایک ممتاز ترین مرجع اور اسلامی جمہوریہ ایران کے اعلیٰ ترین رہبر صادر کیا ہے۔انہوں نے کہا میں علم کے مقام سے اور شرعی ذمہ داری سے جومیرے دوش پر ہے ، کی بنا پر کہتا ہوں کہ مسلمانوں کے درمیان اتحاد کی کوشش واجب ہے اور جوشخص مسلمانوں میں اختلاف اور تفرقہ ڈالے وہ گنہگار اور عذاب الہٰی کا مستحق ہے، عوم اس سے کنارہ کریں۔سب سے ہم یہ کہ کویت حکومت نے اس فتوے کا خیر مقدم کیا ہے۔ وزیر اعظم شیخ ناصر محمد الاحمد الجابر الصباح کی صدارت میں منعقد کا بینہ کی میٹنگ میں امام العظمیٰ کے اس اقدام کو بن ظر استحسان دیکھا گیا اور اس پر اظہار تشکر واطمینان کیا گیا۔ یروشلم کی رپورٹ مظہر ہے کہ بیت المقدس کے امام شیخ مہر حمود نے اس فتوے کو مسلم اتحاد کے لئے نیک فال قرار دیا ہے۔اردن کے اخون المسلمین کے سربراہ حمام السعید نے اس فتوے کو ‘فتنے’ کے سدباب میں ایک اہم قدم قرار دیا ہے۔

قاہرہ یونیورسٹی میں مشرقی علوم کے پروفیسر مدحت حماد نے اس کو فکر میں سنجیدہ تبدیلی سے تعبیر کیا ہے اور توقع ظاہر کی ہے امام خامنہ ای کی شخصیت کیوں کہ بہت ہی بلند او رمحترم ہے، اس لئے اس کا اثر دور تک محسوس کیا جائے گا۔ ہندوستان میں بھی اس فتوے کا خیر مقدم کیا گیا ہے۔ جماعت اسلامی ہند کے امیر اور معروف عالم دین مولانا سید جلال الدین عمری نے کہا ہے:  یہ فتویٰ نہایت قابل ستائش ہے۔ اس کا خیر مقدم ہونا چاہئے ۔ اس سے امید ہے کہ سنی شیعہ اختلافات کم ہوں گے او رملت میں اتحاد کی راہیں کھلیں گے۔ اس فتوے کو عام کرنے کی ضرورت ہے ۔ جمعیۃ علما ہند کے سیکریٹری مولانا عبد الحمید نعمانی نے ، جو دارالعلوم دیوبند میں تدریسی فرائض بھی انجام دیتے ہیں، اس کو بڑی اچھی علامت قرار دیا ہے او رکہا ہے اس میں مسلمانوں کے دونوں بڑے مکاتب فکر کے لئے رہنمائی اور روشمی ہے۔ انہوں نے کہا اس پر توجہ دی جانی چاہئے اور اس پر عمل ہوناچاہئے ۔ توقع ہے کہ یہ بات بہت موثر ثابت ہوگی ۔ معروف صحافی محمد احمد کاظمی نے کہا ہے کہ یہ فتویٰ کسی مخصوص خطہ کے لئے نہیں ہے اور توقع ظاہر کی کہ برصغیر ہندوپاک میں بھی اس کا خاطر خواہ خیر مقدم ہوگا۔ یہ بات بڑی ہی گھاٹے کی بات ہے کہ بعض افراد نے پہلی صدی ہجری کے سیاسی اختلاف کو اپنے مفادات کی خاطر اس طرح مشتہر کیا گو یا یہ بھی کوئی عقیدے کا جزو ہے اور بعد کے لوگ ان کی پیروی کرتے رہیں اور اس بات کو نظر انداز کردیا گیا کہ قرآن نے ازواج نبی کو امت کی مائیں قرار دیا ہے اور ان کا اس قدر احترام قائم کیا ہے نبی کی وفات کے بعد ان سے نکاح سے بھی روک دیا گیا۔

افک کے ایک اتفاق کو موضوع بنا کر مدینہ کے بعض کمزور ایمان والے مسلمان حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کے خلاف بہتان تراشی کی مہم میں شریک ہوگئے تھے ان پر قرآن نے سخت تنبیہ کی ہے اور اللہ رب العزت نے حضرت عائشہ ؓ کی برأت میں دس آیات (سورۂ فور) نازل کی ہیں۔ حضرت عائشہؓ کو ان  کے اخلاق ،تقویٰ وتورع او رفہم دین کی وجہ سے سرورکائنات اپنی تمام ازواج میں سب سے زیادہ عزیز رکھتے تھے۔ چنانچہ جب آپ ؐ کا اس دنیا سے پردہ کرنے کا وقت قریب آیا تو سرورکائنات نے اپنی ازواج کی اجازت سے اپنے آخری ایام ان کےہی حجرے میں گزارے اور جب آخری سانس لی تو سردار دوجہاں کا سرمبارک انہی حضرت عائشہؓ کی گود مبارک میں تکیہ کئے ہوئے تھا اور ان کے ہی حجرے کو آپ کی آخری آرام گاہ ہونے کا شرف ملا۔ اسی عظمتوں سے سرفراز تمام مومنوں کی ماں کے خلاف اگر کسی کی زبان سے نازیباں الفاظ نکلتے ہیں اور کوئی کان ان کا سن کر سرور محسوس کرتا ہے تو اس یقیناً امام معظم کے اس فتوے کی روشنی میں اپنی روش میں اصلاح اور اپنے رب سے استغفار میں عجلت کرنی چاہئے۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/khamenei-promotes-shia-sunni-unity--defamation-of-hadhrat-aisha-declared-‘haram’-حضرت-عائشہ-رضی-اللہ-عنہ-کی-شان-میں-گستاخی-‘حرام/d/3544

 

Loading..

Loading..