New Age Islam
Sun Sep 20 2020, 10:45 PM

Urdu Section ( 8 Nov 2010, NewAgeIslam.Com)

Confessions of a Pakistani Wahhabi Terrorist: Why I killed Bareillvi doctors علما کے قتل کا بدلہ لینے کیلئے مخا لف فرقہ کے ڈاکٹروں کو قتل کیا

In the first incident he shot Peer Bakhsh Syeedi. Got arrested in 20002. After getting released, he assassinated the person who allegedly dishonoured the Quran in Pakistan Bazaar area.

Next target was the shrine of the Quadyanis but he was caught before the strike.

 

Translated from Urdu report (posted below) in Ummat, Karachi by Arman Neyazi for NewAgeIslam.com

 

"When the banned Sipah-e-Mohammad terrorists started killing our Ulema, we retaliated by killing their doctors. Our next target were Quadyanis. Had I not been caught I would have attacked their shrine but the police arrested me". These are the words of Naseem alias Firaun, a terrorist of bannaed Lashkar Jhangvi who is in the Police lock-up at Mominabad. He told this in an exclusive talk to "Ummat". The Site B Police Station Investigation In charge Tanweer Murad arrested him alongwith his friend Asif Dumba after an encounter on the instructions of S S P, Investigation Zone One Mr Khurram Waris and seized the arms used in the sectarian Target Kilings. Naseem alias Firaun was brought to the police station handcuffed. During the investigation he said, “My name is Naseem Haider s/o Ghulam Haider and my alias is Firaun. I belong to Aurangi Town Sector 11- 1/2 and was born in 1978 to Ghulam Haider, a resident school teacher. I am the fourth among six brothers. I did my Matriculation from Norwegian School. I started helping my brother at his shop because I had no interest in studies. I had a religious bent of mind as I belonged to a religious family. I liked attending religious discourses and prayed five times. More often I would offer namaz in the mosque and spend most of my time attending religious sessions there. Among the boys in the mosque, some were associated with the banned outfit Sipah-e-Sahaba. As I would go to the mosque regularly, the activists of Sipah-e-Sahaba became my friends. I practically joined the group in 1995 and started working for it. At that time, Lal Mohammad alias Lalu was very active but I did not know that he was working for the banned Lashkar-e- Jhangvi network. People respected and obeyed Lal Mohammad. After the firing on the rally of Sipah Sahaba in the Jamshed Quarters area on the 14th August 1996 in which 15 people were killed, the organisation became more active in the Aurangi Town because the rally was organised by Lal Mohammad alias Lalu. To avenge the deaths in the firing on the rally, the defunct Lashkar Jhangvi was reactivated in Aurangi Town. A full-fledged network of the outfit was established under the command of Lal Mohammad. I have no idea of how the boys were recruited for the network but I knew the fact that it was Lalu who was looking after it. “

 

Naseem alias Firaun further said, “for the initial four years I could not realise that I was being indoctrinated by Lashkar Jhangvi for being recruited into the network. Suddenly one day I received a message from Taiyyab that somebody wanted to meet me. It was in the year 2000 and for the first time I got to meet a terrorist of Lashkar –e-Jhangvi who identified himself as Murad and inducted me into the network. I was not given any work. However, they started brainwashing me and gave me some literature to study. Later I fired at the procession on 12th of Rabi ul Awwal in 2000. I had no instructions from Lashkar-e-Jhangvi to open fire but when the procession reached Masjid Siddique Akbar in Aurangi Town and the processionists started shouting provocative slogans, I lost temper and opened fire at them. The local leaders of Lashkar Jhangvi expressed resentment over my action as I had no orders from them. However, after the firing the Intelligence agencies started looking for the banned Lashkar Jhangvi. At the moment the leadership of the organisation did not want any action against them in Aurangi Town. During the same period I got an instruction to kill the Sunni Tehrik leader in Aurangi Town. The instruction was issued in order to avenge the killing of two activists of Sipah-e-Sahaba by the activists of the Sunni Tehrik in a dispute over a mosque in 2000. Acting on the instruction I together with Waseem Baroodi and Dr Tarique kidnapped Peer Bakhsh Sayeedi and Akhlaque Ahmad from Thorani Goth of Aurangi Extension area. Later we shot Peer Bakhsh Sayeedi dead while Akhlaque Ahmad was injured. Actually we thought he had died but later we came to know that he was only injured. This FIR no.150/2000 under section 302/324/54 is lodged in Aurangi Extension Police Station.

 

Naseem alias Firaun said, “It was my first crime. After that we formed a Group of Lashkar Jhangvi in Aurangi Town and Baroodi was given its command as he was more experienced than me in the network and had his own circle. After this incident, we carried forward the policies of Lalu. Lal Mohammad Lalu had told us that Sipah-e-Mohammad terrorists were killing our Ulema whereas it took 14 to 15 years for anybody to be an Aalim. That’s why Lal Mohammad Lalu had told us that to avenge the killings of our ulema we would carry out target killing of the doctors of the rival group as it also takes 4 to 5 years to be a doctor. Following the policy we started the target-killing of their doctors.

 

Naseem Firaun said that they injured three activists of the Sunni Tahreek, Farid, Sabir and Jawed. The FIR no.109/2000 is lodged in the case in the Aurangi Extension Police Station. “I killed Dr. Syed Mahtab Husain s/o Syed Azeem Husain in the year 2000. The doctor had been running his clinic in the area for a long time. We had done a recce before the strike whose FIR no. 255/2000 under section 302/34 is lodged in the Aurangi Extension Police Station”, he said.

“After the incident, we shot dead Md. Yousuf s/o Md Karim within the Aurangi Police Station area (FIR No. 218/2001 u/s 302/324/34). In this operation Wasim Baoodi was with me.“, he said.

 

He further said, “In 2001, we shot dead Syed Gul Imam Shah in the Mominabad aread. The FIR No. 291/2001 u/s 302/34 is lodged in Mominabad Police Station.

Talking to Ummat, Firaun went on, “In 2002, the SP CID Mazhar Mishwani arrested me and I was put in jail custody. In jail, I met Akram Lahori and spent time in his company. There is a separate barrack for the terrorists of Lashkar-e-Jhangvi who were treated very cruelly. My family got me out on bail with a lot of effort. When I came home I found my mother very ill. I decided that from now on I would only look after my mother. And therefore I confined myself to the care of my mother. I would only go to my brother shop and come back home look after her. During that period, my mother’s condition deteriorated and she passed away.

 

After mother’s death, I happened to meet an old friend Anwar alias Murad TT and I came into contact of Lashkar-e-Jhangvi’s terrorists once again. During the same time, the terrorists of Sipah-e-Mohammad killed the leader of Sipah-e-Sahaba, Maulana Abdul Ghafoor Nadeem and Guard Anwar alias Murad TT. After these killings, I vowed to be active again. During the time, Taiyab came in my contact. He was a very active terrorist of Lashkar-e-Jhangvi and also had certain responsibilities in Aurangi Town.

Taiyyab told me that a Christian named Shiraz Masih had dishonoured the holy Quran and was openly saying that he had done it and that no one could do any harm to him. Taiyab also told me that he was a regular at a paan shop in Pakistan Bazar area in the evenings. We did a recce of the attack during which we found that the electricity goes out after 10 pm in the Pakistan Bazar area. The Christian remains there even during the loadshedding. Finally I and Taiyab went to kill Shiraz Maseeh. When we reached there at 9.45 pm Shiraz had already come at the shop. We waited for the lights to go off. As the lights went off, we went to the shop and I asked for Gutka. As the shopkeeper turned for the gutkha (tobacco), we killed Shiraz s/o Lazar. The FIR No. 153/2010 of the murder is lodged in Pakistan Bazar P.S.”

 

Naseem Firaun said that Taiyyab was also killed soon after the killing of Shiraz. They tried their best to search the killer but to no avail. They doubted the Christians but were informed that the terrorists of Sipah e Mohammad were involved in the killing of Taiyyab . In the meantime Dr. Babar who was associated with the Tablighee Jamat was killed by the terrorists of Sipah e Mohammad. In retaliation we shot dead Dr. Najmul Hasan s/o Fakhrul Hasan. Asif Rashid alias Asif Dumba had accompanied me. The FIR number of this murder is was 527/10 u/s 302/34.

 

Firaun said, “Dr. Najmul Hasan was a Quadyani and I knew the fact since my childhood. When I came to know about the Qadianis, I started hating him and so I killed him. After this, my target was Dr Naqvi of Life Care Hospital but he had stopped coming to the hospital after the killing. “

 

Firaun further said that before his arrest he had planned to target the terrorists of Sipah-e-Mohamad and added that the network of Sipah-e-Mohammad in Aurangi Town was being run by one Ghulam Abbas who was a resident of Irani Camp. I carried out his recce a number of time but could not kill him. Apart from there was another  terrorist of Sipah-e-Mohammed called Haider who was an active worker of MQM but he was also involved in sectarian terrorism. He said that they were on his hitlist. He regrets that Waseem Baroodi had not included him in the team that killed the MQM Member Assembly. He also said that his next important target was the Qadiani mosque in Aurangi Twon 11-1/2 where I had to do the firing with my companions. He did not have suicide squads but they executed every operation in the spirit of suicide attacks. He further said that currently there were many small groups and each group was doing operations independently. That was the reason he had no information about others.

 

The accused Naseem said that he never took shelter in other areas after any incident. He was present in his own area and was arrested after an encounter. One of his close aides Asif Dumba was also arrested with him. Dumba said that he came in contact with Naseem Firaun and he took him to kill the Qadiani doctor and committed the crime together.

 

SSP, Investigation Zone One told "Ummat" that arms and ammunitions used in the sectarian killings had also been recovered and seized after the arrest of Asif Rashid alias Dumba and Firaun in an encounter and added that the terrorists had planned to strike in big way in Aurangi Town but the police arrested them in the nick of time. 

 

Source: Ummat, Karachi

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/confessions-of-a-pakistani-wahhabi-terrorist--why-i-killed-bareillvi-doctors--علما-کے-قتل-کا-بدلہ-لینے-کیلئے-مخا-لف-فرقہ-کے-ڈاکٹروں-کو-قتل-کیا/d/3651


 

علما کے قتل کا بدلہ لینے کیلئے مخا لف فرقہ کے ڈاکٹروں کو قتل کیا

رپورٹ

پہلی واردات میں پیر بخش سعیدی کو گولیاں ماریں ۔2002میں گرفتار ہوگیا۔ رہائی کے بعد پاکستان بازار تھانے کی حدود میں قرآن پاک شہید کرنے والے کو قتل کیا۔ اگلا نشانہ قادیانیوں کی عبادت گاہ تھی مگر کارروائی سے پہلے ہی پکڑ ا گیا۔ کالعدم لشکر جھنگوی کے دہشت گرد نسیم عرف فرعون کے اعترافات ۔

‘‘کالعدم سپاہ محمد کے دہشت گردوں نے  ہمارے علما شہید کرنے شروع کئے تو ہم نے بھی ان کے ڈاکٹروں کو مارنا شروع کردیا۔ اب ہمارا ہدف قادیانی تھے ،اگر پکڑا نہیں جاتا تو قادیانی عبادت گاہ پر حملہ کرتا لیکن پولس نے پہلے ہی گرفتار کرلی’’۔یہ الفاظ مومن آباد تھانے کے لاک اپ میں موجود کالعدم لشکر جھنگوی کے مبینہ دہشت گرد نسیم عرف فرعون کے ہیں۔ جو اس نے ‘‘امت’’ سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے ادا کئے۔ نسیم عرف فرعون کو اس کے ساتھی آصف ونیہ سمیت ، انو یسٹی گیشن زون ون کے ایس ایس پی خرم وارث کی ہدایت پر سائٹ بی تھانے کے انویسٹی گیشن انچارج تنویر مراد نے پولیس مقابلے کے بعد گرفتار کیا اور اس سے فرقہ وارانہ ٹارگٹ کلنگ میں استعمال ہونے والا ہتھیار بھی برآمد کرلیا۔ نسیم عرف فرعون کو ہاتھوں میں ہتھکڑیاں ڈال کر تھانے کے انویسٹی گیشن روم میں لایا گیا جہاں اس سے بات چیت ہوئی تو نسیم عرف فرعون نے بتایا کہ میرا پورا نام نسیم حید ر ولد غلام حید ر ہے ۔ جبکہ میری عرفیت فرعون ہے، میں 1978میں اور نگی ٹاؤن سیکٹر ساڑھے گیارہ میں رہائش پذیر اسکول ٹیچر غلام حیدر کے گھر پیدا ہوا ۔ چھ بھائیوں میں میرا چوتھا نمبر ہے، میں نے اورنگی ٹاؤن میں نارویجن اسکول سے میٹرک تعلیم حاصل کی میرا پڑھائی میں دل نہیں لگتا تھا یہی وجہ تھی کہ میں نے میٹرک کے بعد مزید پڑھائی جاری نہیں رکھی اور اپنے بھائی کی دکان پر بیٹھنے لگا۔ میرا گھرانا مذہبی ہے اور میں مذہب سے بہت لگاؤ رکھتا تھا ۔ پانچ وقت کی نماز ادا کرنا ، درس میں بیٹھنا مجھے اچھا لگتا تھا، میں اکثر مسجد میں نماز ادا کرتا تھا اور مسجد میں ہی درس کی محفل میں میرا وقت گزرتا تھا۔ اس مسجد میں کالعدم سپاہ صحابہ کے کچھ لڑکے بھی تھے۔ میں جب باقاعدگی سے مسجد جاتا رہا تو میری کالعدم سپاہ صحابہ کے کارکنوں سے دوستیاں ہوگئیں اور 1995میں ، میں نے باقاعدہ طور پر کالعدم سپاہ صحابہ میں شمولیت اختیار کرلی، اور پھر میں باقاعدہ طور پر کالعدم سپاہ صحابہ کے نیٹ ورک میں کام کرنے لگا۔اس وقت لال محمد عرف لالو کافی فعال تھا لیکن اس کے بارے میں مجھے یہ علم نہیں تھا کہ وہ کالعدم لشکر جھنگوی کے سیٹ اپ میں کام کرتا ہے۔

لالو کی علاقے میں سب لوگ ہی عزت کرتے تھے اور لعل محمد عرف لالو کی ہر بات مانی جاتی تھی، جب 14اگست 1996کو جمشید کواٹر کے علاقے میں کالعدم سپاہ صحابہ کی ریلی پر فائرنگ ہوئی اور 15افراد اس میں ہلاک ہوئے تو اس کے بعد اورنگی ٹاؤن میں کالعدم سپاہ صحابہ پہلے سے زیادہ فعال ہوگئی کیونکہ جس ریلی پر فائرنگ ہوئی تھی وہ ریلی لال محمد عرف لالو کی زیر قیادت نکالی گئی تھی اور اس ریلی پر فائرنگ کے بعد ہونے والی ہلاکتوں کا بدلہ لینے کیلئے اورنگی ٹاؤن میں کالعدم لشکر جھنگوی کو فعال کیا گیا۔ اس کا باقاعدہ سیٹ اپ ڈالا گیا اور اس سیٹ اپ کو لعل محمد عرف لالو کمان کرنے لگا۔کالعدم لشکر جھنگوی میں بھرتی کے لئے لڑکوں کا انتخاب کیسے ہوتا تھا اس بات کا علم تو مجھے بھی نہیں ہوتا ہے، البتہ یہ ضرور معلوم تھا کہ لعل محمد عرف لالو ہی اس نیٹ ورک کو دیکھ رہا ہے۔ نسیم عرف فرعون کا کہنا تھا کہ مجھے چار سال تک اس بات کا علم ہی نہیں ہونے دیا گیا کہ کالعدم لشکر جھنگوی کی جانب سے مجھ پر کام کیا جارہا ہے یعنی کہ وہ مجھے اپنے ہم خیال گروپ میں شامل کرنا چاہتے تھے اور پھر ایک دن اچانک ہی مجھے طیب کے ذریعہ پیغام بھیجا گیا کہ کوئی تم سے ملنا چاہتا ہے۔ یہ 2000کی بات تھی اور پھر میری پہلی بار علیحدگی میں ملاقات کا لعدم لشکر جھنگوی کے ایک دہشت گرد سے کرائی گئی ، جس نے اپنا نام مراد بتایا اور مجھے باقاعدہ طور پر کالعدم لشکر جھنگوی کے نیٹ ورک میں شامل کیا۔اس کے بعد مجھ سے کوئی کام نہیں لیاگیا بلکہ میری ذہنی تربیت ہوتی رہی، مجھے کچھ کتابیں اور لٹریچر دیا گیا۔ پھر 2000میں 12ربیع الاوّل کے موقع پر نکالی جانی والی ریلی پر میں نے فائرنگ کی۔

اس ریلی پر فائرنگ کرنے کی ہدایت کالعدم لشکر جھنگوی کی طرف سے نہیں تھی لیکن جب ریلی اورنگی ٹاؤن میں مسجد صدیق اکبر پر پہنچی تو ریلی کے شرکا نے استعال انگیز نعرے بازی کی جس پر مجھے طیش آگیا اور میں نے اس ریلی پر فائرنگ کردی، میری اس حرکت پر کالعدم لشکر جھنگوی کے علاقائی ذمہ دار بہت ناراض ہوئے تھے کیونکہ ریلی پر فائرنگ کی اجازت نہیں تھی لیکن اس فائرنگ کے بعد اورنگی ٹاؤن میں  کالعدم لشکر جھنگوی کے نیٹ ورک کا سراغ لگانے کیلئے انٹیلی جنس ادارے سرگرم ہوگئے تھے او رکالعدم لشکر جھنگوی کی قیادت یہ نہیں چاہتی تھی کہ ابھی اورنگی میں کالعدم لشکر جھنگوی کے خلاف کوئی کارروائی ہو۔ اسی دوران اسے اورنگی ٹاؤن میں سنی تحریک کے رہنما کو قتل کرنے کی باقاعدہ ہدایت ملی، یہ ہدایت اس لئے ملی تھی کہ سلطان آباد کے علاقے میں 2000میں کالعدم سپاہ صحابہ کے دوکارکنان مسجد کے تنازع پر سنی تحریک کے کارکنوں نے ہلاک کردئے تھے اور اس کا جواب دینا تھا جس پر میں وسیم بارودی اور ڈاکٹر طارق نے اورنگی توسیع کے علاقے تھورانی گوٹھ سے پیر بخش سعیدی اور اخلاق احمد کو اغوا کیا اور بعد ازاں پیر بخش سعیدی کو گولیاں مار کر ہلاک کردیا  جبکہ اخلاق احمد زخمی ہوا تھا، ہم نے تو اپنے طور پر اخلاق احمد کو بھی مارا تھا لیکن بعد میں معلوم ہوا کہ وہ زخمی ہوا ہے۔

مذکورہ واقعہ کی ایف آئی آر نمبر 150/2000زیر دفعہ 302/324/54اورنگی توسیع تھانے میں درج ہے۔ نسیم عرف فرعون نے بتایا کہ یہ اس کی پہلی واردات تھی۔ پھر ہم نے اورنگی ٹاؤن میں اپناگروپ بنالیا اور اس گروپ کی کمان وسیم بارودی کو دی گئی کیو نکہ وسیم باردوی کا لعدم لشکر جھنگوی کے نیٹ ورک میں مجھ سے پرانا تھا اور اس کاا پنا حلقہ تھا۔ اس واردات کے بعد ہم نے لعل محمد عرف لالو کی پالیسی کو آگے بڑھایا ،لعل محمد لالو نے کہا کہ ہم اپنے علم دین کے قتل کے جواب میں مخالف فرقے کے ڈاکٹروں کی ٹارگٹ کلنگ کریں گے کیو نکہ ڈاکٹر بھی 5سال میں بنتا ہے ، ہم نے اسی پالیسی کو اپناتے ہوئے ڈاکٹروں کی ٹارگٹ کلنگ شروع کی۔ نسیم فرعون نے بتایا کہ 2000میں ہم نے فائرنگ کر کے سنی تحریک کے 3کارکنوں فرید، صابر اور جاوید کو زخمی کیا، جس کی ایف آئی آر نمبر 109/2000اورنگی توسیع تھانے میں درج ہے، ملزم نے بتایا کہ 2000میں ، میں نے اورنگی توسیع کےعلاقے میں ڈاکٹر سید مہتاب حسین ولد سید عظیم حسین کو قتل کیا ۔ یہ ڈاکٹر کافی عرصے سے علاقے میں اپنا کلینک چلارہا تھا ۔ ہم نے اس کی مکمل ریکی کی تھی اور اس کے بعد ہی اس کو ٹارگٹ کیا تھا، جس کی ایف آئی آر نمبر 255/2000زیر دفعہ 302/34اورنگی توسیع تھانے میں درج ہے۔مذکورہ واردات کے بعد ہم نے اورنگی توسیع تھانے کی حدود میں محمد یوسف ولد محمدکریم کو فائرنگ کر کے ہلاک کیا، جس کی ایف آئی آرنمبر 218/2001زیر دفعہ 302/324/34درج ہے،اس واردات میں میرے ساتھ وسیم بارودی شامل تھا، ملزم نے بتایا کہ 2001میں ہم نے مومن آباد کے علاقے میں سید گل امام شاہ کو گولیاں مار کر قتل کیا، جس کی ایف آئی آر نمبر 291/2001زیر دفعہ 302/34مومن آباد تھانے میں درج ہے ، امت سے بات چیت کرتے ہوئے نسیم فرعون نے بتایا کہ 2002میں اسےسی آئی ڈی میں ایس پی مظہر مشوانی نے گرفتار کرلیا تھا اور پھر وہ جیل کسٹڈی ہوگیا ،جیل میں اس کی ملاقات اکرم لاہوری سے ہوئی جہاں ان کی صحبت میں وقت گزارا ۔

 جیل میں کالعدم لشکر جھنگوی کے دہشت گردوں کی الگ بیرک ہے اور جیل میں لشکر جھنگوی والوں پر بہت سختی ہوتی تھی۔ حب جیل گیا تو گھر والوں نے بھاگ دوڑ کر کے میرے ضمانت کرالی اور جیل سے ضمانت پر رہا ہو کر آیا تو میری ماں بہت بیمار تھی اور میں نے طے کرلیا تھا کہ اب میں صرف اپنی ماں کی خدمت کروں گا۔ جیل سے آنے کے بعد میں نے خود کو اپنی والدہ کی خدمت تک محدود کرلیا تھا، میں بھائی کی دکان پر جاتا تھا اور پھر گھر واپس آجاتا تھا ۔ گھر آکر والدہ کی خدمت کرتا اس دوران والدہ کی حالت مزید خراب ہونے لگی اور وہ خالق حقیقی سے جاملیں۔ والدہ کے انتقال کے بعد میری ملاقات ایک پرانے ساتھی انور عرف مراد ٹی ٹی سے ہوگئی اس کے بعد میرے دوبارہ رابطے کا لعدم لشکر جھنگوی کے دہشت گردوں سے ہونے لگے، اسی دوران کالعدم سپاہ محمد کے دہشت گردوں نے کالعدم سپاہ صحابہ کے رہنما مولانا عبدا لغفور ندیم او ر گارڈ انور عرف مراد ٹی ٹی کو گولیاں مار کر ہلاک کردیا۔ اس ہلاکت کے بعد میں نے دوبارہ فعال ہونے کی قسم کھائی۔ اس دوران طیب میرے رابطے میں آگیا۔ طیب کالعدم لشکر جھنگوی کا انتہائی فعال دہشت گرد تھا اور اس کے پاس اورنگی ٹاؤن میں بعض اہم ذمہ داریاں بھی تھیں، طیب نے مجھے بتایا کہ پاکستان بازار تھا نے کی حدود میں ایک عیسائی نے قرآن پاک کو شہید کیا تھا اور وہ کھلے عام یہ کہتا پھررہا تھا کہ اس نے یہ گستاخانہ حرکت کی ہے ،کوئی اس کا کچھ نہیں بگاڑ سکتا۔ جس پر میں نے اس سے پوچھا کہ وہ کہاں ملےگا۔ تو طیب نے بتایا کہ پاکستان بازار کے علاقے میں رات کو وہ ایک پان کی دکان پر بیٹھا ہے، جس پر میں نے اور طیب نے اس کی ریکی کی اس دوران ہمیں معلوم ہوا کہ پاکستان بازار کی حدود میں رات کو 10بجے لائٹ جاتی ہے اور جب لائٹ جاتی ہے تب بھی وہاں پر موجود رہتا ہے، جس کے بعد میں اور طیب شیراز مسیح کو مارنے کے لیے گئے ۔ہم 9بجکر 45منٹ پروہاں پہنچے تو شیراز وہاں پر آچکا تھا، ہم نے وہاں لائٹ جانےکا انتظار کیا، جیسے ہی لائٹ گئی تو میں اور طیب دکان پر گئے ۔ دکان دار سے میں گٹکا مانگا تو وہ گٹکا نکالنے لگا، اسی دوران ہم نے شیراز ولد لازر کو گولیاں مار کر ہلاک کردیا۔ مذکورہ قتل کا مقدمہ نمبر 153/2010پاکستان بازار تھانے میں درج ہے ، نسیم فرعون نے بتایا کہ اس وارادات کے بعد ہی اچانک طیب کو کسی نے گولیاں مار کر ہلاک کردیا۔ جس کے بعد ہم نے اس کے قاتلوں کا سراغ لگانے کی ہر ممکن کوشش کی لیکن اس کا سراغ نہیں مل سکا کہ یہ قتل کس نے کیا ہے، ہمارا شبہ عیسایئوں پر تھا لیکن ایسی اطلاعات مل رہی تھیں کہ اس واردات میں کالعدم سپاہ محمد کے دہشت گرد ملوث ہیں، اسی دوران اور نگی ٹاؤن میں تبلیغی جماعت سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر بابر کو قتل کردیا گیا ۔ اس واردات میں کالعدم سپاہ محمد کے دہشت گرد ملوث تھے، جس کے جواب میں ہم نے پاکستان بازار میں ڈاکٹر نجم الحسن ولد فخر الحسن کو فائرنگ کر کے ہلاک کیا۔

اس واردات میں میرے ساتھ آصف رشید عرف آصف ونبہ تھا۔ مذکورہ قتل کی ایف آئی آر نمبر 527/10زیر دفعہ 302/34درج ہے،نسیم فرعون نے بتایا کہ ڈاکٹر نجم الحسن قادیانی ڈاکٹر تھا اور اس کے بارے میں مجھے بچپن سے ہی پتہ تھا کہ وہ قادیانی ہے، میں نے جب ہوش سنبھالا تھا تو اس دوران مجھے قادیانیوں کے بارے میں علم ہوا تھا، تب سے اس ڈاکٹر سے نفرت ہوگئی تھی اور پھر میں نے اس کو قتل کردیا ۔ اس واردات کے بعد میرا ٹارگٹ لائف کیئر اسپتال کا ایک ڈاکٹر  نقوی تھا لیکن وہ قادیانی ڈاکٹر کے قتل کے بعد سے اسپتال نہیں آرہا تھا۔ نسیم فرعون نے بتا یا کہ اس نے گرفتار ہونے سے قبل یہ پلاننگ کی تھی کہ وہ اب کالعدم سپاہ محمد کے دہشت گردوں کو ٹارگٹ کرے گا۔ اس کاکہنا تھا کہ اورنگی ٹاؤن میں کالعدم سپاہ محمد کا نیٹ ورک غلام عباس چلارہا تھا جو ایرانی کیمپ کا رہنے والا ہے۔میں نے اس کی بہت ریکی کی تھی لیکن اسے قتل کرنے کا موقع نہیں ملا۔ اس کے علاوہ کالعدم سپاہ محمد کا ایک دہشت گرد حیدر بھی ہے جو متحدہ قومی موومنٹ میں فعال ہے لیکن وہ فرقہ وارانہ دہشت گردی کی وارداتوں میں بھی ملوث ہے،نسیم فرعون کا کہنا تھا کہ یہ افراد ہماری ہٹ لسٹ پر  تھے، اسے اس بات کا افسوس ہے کہ وسیم بارودی نے متحدہ کے رکن اسمبلی کو قتل کرنے والی ٹیم میں شامل نہیں کیا۔ نسیم فرعون نے بتایا کہ اس کا اگلا سب سے اہم ہدف اورنگی ٹاؤن ساڑھے گیارہ میں واقع قادیانی عبادت گاہ تھی جہاں مجھے اپنے ساتھیوں کے ساتھ فائرنگ کرنی تھی ، اس کے پاس خود کش حملہ آور نہیں تھے لیکن وہ ہر کارروائی خود کش سمجھ کر ہی کرتے تھے، اس کا کہنا تھا کہ اس وقت اورنگی ٹاؤن میں چھوٹے چھوٹے گروپ بنے ہوئے ہیں اور ہر گروپ اپنے طور پر وارداتیں کررہا ہے، اس لئے وہ کسی دوسرے گروپ کے بارے میں معلومات نہیں رکھتا ہے۔ ملزم نسیم فرعون کا کہنا ہے کہ فرقہ وارانہ دہشت گردی کی وارداتوں کے بعد کبھی کسی دوسرے علاقے میں روپوش نہیں رہا، وہ علاقے میں ہی موجود رہا تھا اور اس کو علاقے سے ہی پولیس مقابلے کے بعد گرفتار کیا گیا۔ نسیم فرعون کے ساتھ اس کا ایک قریبی ساتھی آصف رشید عرف دنبہ گرفتار ہوا۔ اس کا کہنا ہے کہ اس کی نسیم فرعون سے دوستی ہوئی اور وہ اسے اپنے ساتھ قادیانی ڈاکٹر کو قتل کرنے کے لیے لیا گیا اور ہم نے مل کر واردات کی۔‘‘امت’’ کو اس حوالے سے ایس ایس پی انویسٹی گیشن زون ون خرم وارث نے بتایا کہ کالعدم لشکر جھنگوی کے دہشت گرد نسیم فرعون اور آصف رشید عرف دنبہ کو مقابلے کے بعد گرفتار کر کے ان کے قبضے سے فرقہ وارانہ ٹارگیٹ کلنگ میں استعمال ہونے والے ہتھیار بھی برآمد کر لیے گئے ہیں۔ ایس ایس پی خرم وارث کا کہنا تھا کہ دہشت گردوں نے اورنگی ٹاؤن میں دہشت گردی کے بڑی وارداتوں کی پلاننگ کررکھی تھی تا ہم انہیں پولیس نے بروقت گرفتار کرلیا۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/confessions-of-a-pakistani-wahhabi-terrorist--why-i-killed-bareillvi-doctors--علما-کے-قتل-کا-بدلہ-لینے-کیلئے-مخا-لف-فرقہ-کے-ڈاکٹروں-کو-قتل-کیا/d/3651


 

Loading..

Loading..