New Age Islam
Sun Sep 27 2020, 09:21 AM

Urdu Section ( 10 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

Of hypocrites and religious fanatics in Pakistan

Javed Chaudhary

(Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk)

Abdullah bin Abbi was a hypocrite and was a popular personality among the tribes of Yadhrib (Madina) before the arrival of Hadhrat Muhammad( pbuh). His (PBUH) arrival eclipsed the popularity of Abdullah bin Abbi and he became jealous of the Prophet (PBUH) and started hatching conspiracies against him(PBUH).

To camouflage himself, he even converted to Islam but his heart remained a kafir (infidel). He even built a mosque for munafiqs (hypocrites) called Masjid

Zarar. When Abdullah Bin Abbi died, the Prophet (PBUH) offered his kurta as his burial cloth. He (PBUH) also joined his namaz janaza (last prayers) and even prayed for his redemption after the namaz. On this occasion two verses of Surah Tawba (Verse No.80 and 84) were revealed and Allah prevented him (PBUH) from praying for their redemption of hypocrites. When I read about this incident, I had wondered why the Prophet (PBUH) had shown so much kindness towards Abdullah bin Abbi whom the history remembers as the greatest munafiq (hypocrite). At that time I could not realize the wisdom in it. But over time I came to realize that there were two reasons behind this kindness. First, faith is such a relationship between man and God which is not shared by anyone else. If he (PBUH) had not shown kindness to Abdullah Bin Abbi, we today would declare anyone a munafiq and refuse to join his last prayer praying for his redemption and would also refuse to allow him to be buried in a Muslim graveyard. We would even kill him and his kin. Therefore, Hadhrat Muhammad (PBUH) saved the ummah from a dilemma by showing kindness to Abdullah Bin Abbi. Secondly, Abdullah bin Abbi had lent his kurta to his (PBUH) uncle Hadhrat Abbas (R.A.). By giving his (PBUH) kurta for his burial, he (PBUH) returned his favour.

In my column of January 6 titled ‘ Ummati koi nahin’ (No one is a believer), I had given reference of Abdullah bin Abbi and called him Munafiq-e-Azam (the chief of the  hyopocrites) but one of my well wishers linked this reference to Hadhrat Abu Talib and circulated it through SMS all through the country. I was called a rascal and abuses were circulated against my family members. Now what can I say on this idiocy ? I did not mention the name of Hadhrat Abu Talib nor did I give any reference to him but a section thought that I wanted to malign the character of Hadhrat Abu Talib. So in this way I turned out to be a blasphemer against him by

the evening. From this incident you can gauge the extent of the misuse of laws in Pakistan and the faith of people. You can guess how people start abusing one another without giving one the opportunity for clarification. You can understand what will happen to a person if an individual or an organisation makes him a target through SMS and spreads the rumours that he is a blasphemer. I am a supporter of the blasphemy laws. When Allah has declared sanctity of prophets a part of the faith, there remains no option. Nonetheless, I request the ulema to form some principles on the law as they cannot leave this law to the mob, the people and the lay man because if they leave the law to the common people, they will kill innocent people on the streets on the basis of false SMSes, annoucements and wrong information . And even if a single innocent man is killed in this manner, his blood will be on the neck of the educated, the scholars and the religious leaders of this country and Allah will hold all of us accountable for it. I have been writing columns for the last 15 years. I have written without any fear of repercussions about what I felt was right. If I found anything good in the liberal section, I recognized it; I appreciated if I observed something positive in America and Europe and also

wrote openly about the virtues and merits of the Islamic world and the Islamic history. I wrote about the positive aspects of Bush and Taliban too. But today I am scared of writing. I think ten times before writing and sometimes am forced to suppress my feelings because now our society has been divided in different sections and each section has become a thekedar (owner) of some ideology and these thekedars consider every kind of violence from gali ( abuses) to goli (bullets)

to protect their power. The civil society of this country claims its monopoly on moderateness; the lawyers claim monopoly over the judges, courts and the law; the members of assembly claim monopoly over the Constitution; politicians have monopoly on democracy, the Pakistan People’s Party has monopoly over Zulfiqar Ali Bhutto and Benazir Bhutto; Pakistan Muslim League-N and Mian brothers have monopoly over the system, Hadhrat Ali and his family have become the property of the Shia community (perish the thought), Hadhrat Abu Bakr Siddique, Hadhrat Umar, Hadhrat Usman and Hadhrat Aiysha have become the property of the organisations like Namoos-e-Sahaba; the rights to mysticism or sufism have gone to the gaddi nasheens and the rights to speech have become the property of multinational companies. Therefore, in these circumstances, independent writers like me have become a victim of confusion and fear. Now I cannot take the names of Hadhrat Ameer Muawiya or Yazid as the Shias might get angry with me or the Sunnis may call me my mother’s or sister’s names. I am also apprehensive of taking Imam Hussain’s name as some thekedar might declare me kafir. I am scared of going to any mosque as all the mosques are in the custody of one or the other thekedar and might declare me Wahabi, Bareillvi, Deobandi or Shia. I offer my namaz in hiding as some thekedar might put my way of namaz in some or the other category. I cannot even protest against the atrocities committed against the Taliban in this country as the civil society does not like it. I cannot mourn the death of school students and ordinary citizens in suicide bombings as the Taliban will get

angry. I cannot call Salman Taseer innocent as the supporters of the prophet’s sanctity get angry. I cannot support Mumtaz Qadri because the people lighting lamps around Salman Taseer’s photograph will get angry. I cannot even write an article on the life of Hadhrat Aysha (R.A.) as the Shias will start sending me abusive SMSes. I cannot condemn the attacks on the places of worship of the Qadianis as after that my hajj and Umras will be declared hypocrisy (munafiqat). I am also scared of writing against the corruption, misappropriation of funds and dishonesty of our politicians as after that I might be declared an enemy of the system and democracy. I cannot even write against the political compulsions of the Muslim League-N as I will be declared to be on the payroll of the PPP. I cannot criticise the government as I might be declared on the pay roll of Pakistan Muslim League-N.

Believe me sometimes I get so confused that I am scared to take the name of Allah as I fear that someone will stand up and grab me by the collar and say, “ Allah belongs to me alone, how can you take his name?’ Now I take Hadhrat Muhammad’s (PBUH)’s name in my heart only as I fear that some thekedar will say, ‘Huzoor ( PBUH) belongs to me alone, who are you to take his name?’… In this atmosphere, I think how long I will write out of fear. Please tell me what use is it writing in a country where a man has to think ten times before writing something and the readers didctate the writer and where people start abusing you before you can make any clarifications. Therefore, I am seriously considering stopping writing and taking to some other profession instead of journalism as at least I will not have to listen to abuses and my faith will remain protected against the thekedars.

Source: Daily Express, Pakistan


سنجید گی سے

جاوید چودھری

عبداللہ بن ابی منافق تھا یہ نبی اکرمﷺ کی مدینہ منورہ تشریف آوری سے قبل وہاں کے قبائل میں ممتاز حیثیت رکھتا تھا، آپؐ مدینہ منورہ تشریف لائے تو اس کی مقبولیت گہنا گئی جس پر عبد اللہ بن ابی حسد کا شکار ہوگیا اور اس نے سازشیں شروع کردیں ، اس نے ‘‘کیموفلاج ’’ کرنے کیلئے اسلام بھی قبول کرلیا لیکن اس کا دل کافر رہا، اس نے مسجد ضرار کے نام سے منافقین کی ایک مسجد بھی بنائی یہ عبداللہ بن ابی فوت ہوا تو آپؐ نے اس کے بیٹے کی درخواست پر اس کی تدفین کیلئے اپنا کرتا مبارک بھی عنایت کیا، آپؐ اس کی نماز جنازہ میں بھی شریک ہوئے اور جنازے کے بعد آپؐ نے اس کی مغفرت کی دعا بھی فرمائی تھی جس پر سورہ توبہ کی دو آیات (آیت نمبر 80اور 84) نازل ہوئیں اور اللہ تعالیٰ نے آپؐ کو منافقین کیلئے دعائے مغفرت سے روک دیا ۔ میں نے جب یہ واقعہ پڑھا تو اس وقت میرے ذہن میں یہ سوال اٹھاتھا کہ عبداللہ بن ابی جسے تاریخ نے رئیس المنافقین یا منافق اعظم کا خطاب دیا اس پر نبی اکرمؐ نے اتنی نوازش کیوں فرمائی؟ مجھے اس وقت آپؐ کی حکمت سمجھ نہیں ٓائی تھی لیکن وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ معلوم ہوا آپؐ کی اس مہربانی کے پیچھے دو حکمتیں تھیں۔ ایک ایمان اللہ تعالیٰ اور بندے کے درمیان خصوصی تعلق ہوتا ہے اور دنیا کا کوئی تیسرا شخص ا س تعلق میں شامل نہیں ہوتا ،آپؐ اگر عبداللہ بن ابی پر مہربانی نہ فرماتے تو ہم آج کسی بھی شخص کو منافق ڈکلئیر کر کے اس کی نماز جنازہ پڑھنے اور اسے مسلمانوں کے قبر ستان میں دفن کرنے سے انکار کردیتے، ہم اس شخص اور اس کی آل اولاد کی جان تک لے لیتے لہٰذا نبی اکرم ﷺ نے عبداللہ بن ابی پر مہربانی فرما کر عالم اسلام کو اس کشمکش سے بچالیا۔ دوسرا ، عبداللہ بن ابی نے نبی اکرمؐ کے چچا حصرت عباسؓ کو اپنا کرتا دیا تھا آپؐ نے اپنا کرتا مبارک اس کی تدفین کیلئے عنایت کر کے اس کا یہ احسان اتاردیا۔

میں نے 6جنوری کے کالم ‘‘امتی کوئی نہیں’’ میں اس عبداللہ بن ابی کا حوالہ دیا تھا اور اسے منافق اعظم لکھا تھا لیکن میرے کسی مہربان نے اس حوالے کو ایس ایم ایس کے ذریعے حضرت ابو طالب کے نام منسوب کردیا اور یہ ایس ایم ایس تیزی سے پورے ملک میں ‘’سرکولیٹ’’ کرنے لگا ، اس ایس ایم ایس میں مجھے ملعون بھی قرار دیا گیا اور میرے اہل خانہ کو گالیاں بھی دی گئیں ،میں اب اس جہالیت کا کیا جواب دوں؟ ۔ میں نے پورے کالم میں سرے سے حضرت ابوطالب کا نام لکھا اور نہ ہی ان کا حوالہ دیا لیکن ایک خاص طبقے نے اپنے تئیں یہ سمجھ لیا کہ میرا مقصد خدانخواستہ حضرت ابو طالب کی شان کو مسترد کرنا تھا اور یوں میں شام تک حضرت ابو طالب کی ناموس کا گستاخ ڈکلئیر ہوگیا۔ آپ اس واقعے سے پاکستان میں قوانین کے غلط استعمال کا اندازہ بھی لگا سکتے ہیں اور لوگوں کا ایمان بھی دیکھ سکتے ہیں کہ لوگ کس طرح غلط اطلاع پر دوسرے شخص کو ماں بہن کی گالیاں دینا شروع کردیتے ہیں اور اس شخص کو وضاحت تک کا موقع نہیں دیتے۔ آپ اس سے اندازہ لگا لیجئے اس ملک میں اگر کوئی شخص یا کوئی گروہ ایس ایم ایس کے ذریعہ کسی شخص کو ٹارگیٹ کرلے اور خدانخواستہ اس کے بارے میں یہ مشہور کردیا جائے کہ وہ گستاخ رسول ہے تو اس شخص کا کیا بنے گا؟۔ میں ناموس رسالت کے قانون کا حامی ہوں ،اللہ تعالیٰ نے جب انبیا کرامؐ کی ناموس کو ایمان کا حصہ ڈکلئیر کردیا تو اس کے بعد کوئی گنجائش نہیں بچتی لیکن اس کے باوجود میری علمائے کرام سے درخواست ہے آپ اس قانون کے سلسلے میں کوئی نہ کوئی قاعدہ ضرور بنائیں ،آپ اس قانون کو ہجوم ،عوام اور عام لوگوں پر نہ چھوڑیں کیو نکہ ہم نے اگر اسے عام لوگوں پر چھوڑ دیا تو لوگ جھوٹی ایس ایم ایس ،جھوٹے اعلانات اور غلط اطلاعات پر بے گناہوں کو سڑکوں پر قتل کردیں گے اور اگر اس ملک میں کوئی ایک بے گناہ اس طرح قتل ہوگیا تو اس کا گناہ اس ملک کے ہر پڑھے لکھے عالم اور مذہبی راہنما کی گردن پر ہوگا اور اللہ تعالیٰ ہم سب سے اس کا حساب لے گا۔

مجھے کالم لکھتے ہوئے پندرہ سال ہوگئے ہیں، میں نے ان پندرہ برسوں میں جس چیز کو درست سمجھا بلا خوف و تردید اسے تحریر کیا، مجھے لبرل طبقے میں کوئی خوبی دکھائی دی تو میں نے اس کا اعتراف کیا، مجھے یورپ اور امریکا میں کوئی اچھائی نظر آئی تو میں نے اسے بھی مانا اور میں نے عالم اسلام تاریخ اسلام اور دینی طبقوں کی اچھائیوں اور خوبیوں پر بھی کھل کر لکھا میں نے بش کی خوبیوں کا بھی اعتراف کیا اور طالبان کی اچھائیوں کو اور خوبیوں پر بھی کھل کر لکھامیں نے بش کی خوبیوں کا بھی اعتراف کیا اور طالبان کی اچھائیوں کا ذکر بھی کیا لیکن مجھے آج لکھتے ہوئے خوف محسوس ہوتا ہے، میں لکھنے سے پہلے دس دس بار سوچتا ہوں اور بعض اوقات اپنے خیالات کو دبانے پر بھی مجبور ہوجاتا ہوں کیو نکہ ہمارا معاشرہ اب مختلف طبقوں میں تقسیم ہوچکا ہے اور ہر طبقہ کسی نہ کسی سوچ ،کسی نہ کسی نظریے کا ٹھیکیدار بن چکا ہے اور یہ ٹھیکیدار اپنی نظریاتی گدی کی حفاظت کیلئے گالی سے لے کر گولی تک ہر قسم کے تشدد کو جائز سمجھتے ہیں اس ملک میں نام نہاد سول سوسائٹی اعتدال پسندی کی ٹھیکیدار بن چکی ہے، وکلا ججوں عدالتوں اور قانون کے ٹھیکیدار بن چکے ہیں، ارکان اسمبلی آئین کے ٹھیکیدار ہوچکے ہیں،سیاستداں جمہوریت کےٹھیکیدار ہیں پاکستان پیپلز پارٹی ذوالفقار علی بھٹو اور محترمہ بے نظیر بھٹو کی ٹھیکیدار ہے پاکستان مسلم لیگ ن اور میاں برادر ان سسٹم کے ٹھیکیدار  ہیں ، حضرت علی ؓ اور ان کا خاندان (نعوذ باللہ) شیعہ کمیونٹی کی ملکیت ہوچکا ہے ، حضرت ابوبکرؓ صدیق ،حضرت عمرؓ ، حضرت عثمان ؓ اور حضرت عائشہؓ ناموس صحابہ جیسی تنظیموں کی ملکیت ہوچکے ہیں ،تصوف کےرائٹس گدی نشینوں کے قبضے میں چلے گئے ہیں اور خیالات اور افکار کی آزادی اب ملٹی نیشنل کمپنیوں کی ملکیت ہوچکی ہے چنانچہ اس صورتحال میں میرے جیسے آزاد لکھنے والے کنفیوژن اور خوف کا شکار ہوگئے ہیں،میں اب سطروں میں حضرات امیر معاویہ ؓ اور یزید کا نام نہیں لکھ سکتا کیو نکہ اس سے اہل تشیع ناراض ہوجاتے ہیں یا پھر سنی حضرات مجھے ماں بہن کی گالیاں دینا شروع کردیتے ہیں، میں حضرت امام حسینؓ کاذکر کرتے ہوئے ڈرتا ہوں کیو نکہ مجھے محسو س ہوتا ہے کہ کوئی نہ کوئی ٹھیکیدار مجھے کافر قرار دے دے گا میں مسجد جاتے ہوئے گھبراتا ہوں کہ ہر مسجد پر کسی نہ کسی ٹھیکیدار کا قبضہ ہے اور مجھے مسجد کی دہلیز پر دیکھ کر کوئی نہ کوئی شخص مجھے وہابی ،بریلوی، دیوبندی یا شیعہ ڈکلئیر کردے گا، میں نماز بھی چھپ کر پڑھتا ہوں کہ کہیں میری نماز کے طریقے کو کوئی ٹھیکیدار کسی نہ کسی فرقے کے خانے میں درج نہ کردے، میں اس ملک میں طالبان پر ہونے وائے ظلم پر احتجاج نہیں کرسکتا کیو نکہ اس سے سول سوسائٹی ناراض ہوجاتی ہے ، میں خود کش حملوں میں مرنے والے اسکول کے بچوں اورعام شہریوں کی موت پر افسوس نہیں کرسکتا کہ اس سے طالبان ناراض ہوجاتے ہیں، میں سلمان تاثیر کو بے گناہ نہیں لکھ سکتا کہ اس سے ناموس رسالت کا نعرہ لگانے والے ناراض ہوجاتے ہیں میں ممتاز قادری کی حمایت بھی نہیں کرسکتا کہ اس سے سلمان تاثیر کی تصویر کے گرد موم بتیاں لگانے والے ناراض ہوجائیں گے، میں حضرت عائشہؓ کی حیات طیبہ پر بھی کالم نہیں لکھ سکتا کہ اس کے بعد پورے ملک کے اہل تشیع مجھے گالیوں کے ایس ایم ایس بھجوانا شروع کردیتے ہیں ، میں قادیانیوں کی عبادت گاہو ں پر حملوں کی مذمت بھی نہیں کرسکتا کیونکہ اس کے بعد میرے حج اور عمروں تک مو منافقت قرار دے دیا جاتا ہے، میں سیاستدانوں کی بے ایمانیوں ،بد اعتدالیوں اور کرپشن کے خلاف لکھتے ہوئے بھی گھبرا تا ہوں کیونکہ اس کے بعد مجھے جمہوریت اور نظام کا مخالف قرار دےدیا جاتا ہے ،میں مسلم لیگ ن کی سیاسی مصلحتوں کے خلاف بھی نہیں لکھ سکتا کیو نکہ مجھے ایک لمحے میں پاکستان پیپلز پارٹی کا وظیفہ خوار قرار دے دیا جاتا ہے اور میں حکومت پر تنقید بھی نہیں کرسکتا کہ مجھے پاکستان مسلم لیگ ن کے ‘‘پے رول’’ پر ڈکلئیر کردیا جاتا ہے۔

آپ یقین کیجئے میں بعض اوقات اس قدر کنفیوژن ہوجاتا ہوں کہ میں اللہ کا نام لیتے ہوئے بھی ڈرتا ہوں کہ ابھی محفل میں سے کوئی شخص اٹھے گا اور میرا گریباں پکڑ کر کہے گا ‘‘اللہ تعالیٰ تو میرا ہے تم کون ہوتے ہو اس کا نام لینے والے’’ میں رسول ﷺ کا نام بھی دل ہی دل میں لیتا ہوں کیو نکہ مجھے خطرہ ہوتا ہے کوئی نہ کوئی ٹھیکیدار مجھے ٹوک کر کہہ دے گا ‘’حضور ﷺ تو میرے ہیں، تو ان کا ذکر کرنے والے کون ہوتے ہو’’ اور میں اب تسبیح بھی چھپ کر کرتا ہوں کیو نکہ جب بھی کوئی لبرل شخص تسبیح کرتے دیکھتا ہے تو اس کے چہرے پر عجب قسم کی طنزیہ مسکراہٹ آجاتی ہے اور جب کوئی عالم دین مجھے تسبیح کرتے دیکھتا ہے تو وہ بے تاب ہوکر پوچھ لیتا ہے ‘‘تم کیا پڑھ رہے ہو’’اس سوال پر بھی میرے ماتھے پرپسینہ آجاتا ہے کیو نکہ مجھے محسوس ہوتا ہے میں نے اگر سچ بتادیا تو یہ اس کے جملہ حقوق کلیم کرلے گا، یہ دعویٰ کردے گا درود شریف تو ہمارا ہے، تم کیوں پڑھ رہے ہو۔ میں اس فضا میں رو ز سوچتا ہوں ، میں کب تک ڈر ڈر کر لکھوں گا، آپ خود فیصلہ کیجئے انسان کو جس ملک میں اپنی رائے کے اظہار سے قبل دس دس بار سوچنا پڑے اور جس میں پڑھنے والے ،لکھنے والے کو ‘‘ڈکٹیٹ’’ کرنا شروع کردیں اور جس ملک میں آپ کی وضاحت سے پہلے آپ کی ماں بہن کو گالیاں دے دی جائیں اس میں لکھنے کا کیا فائدہ چنانچہ میں سنجیدگی سے سوچ رہا ہوں مجھے لکھنا بند کردینا چاہئے اور صحافت کی جگہ کوئی دوسرا پیشہ اختیار کرلینا چاہئے کیو نکہ اس سے کم از کم میری ماں بہن گالی سے تو بچ جائے گی، میں اور میرا ایمان ٹھیکیداروں سے تو محفوظ رہے گا۔

(بشکریہ ڈیلی ایکسپریس ، پاکستان)

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/of-hypocrites-and-religious-fanatics-in-pakistan/d/3915


Loading..

Loading..