New Age Islam
Wed Apr 21 2021, 10:52 AM

Islam and Spiritualism ( 1 Nov 2010, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Ganj-e-Maarfat: A Study - Part 1


By Prof. Md Asadullah Wani

(Translated from Urdu by New Age Islam Edit Section)

Kashmir has been a home to rishis, saints, sadhus, pirs, dervishes and God-loving people since ancient times which is why Kashmir is also known as Rishi-wad or Pir-wad. Countless rishis, walis, ulema and saints like Kashyap rishi and Hriday Rishi have been here who although would be absorbed in the love of God every moment of their being and despite their abhorance of the affairs of the world, had contact with the general people in one way or the other. BY virtue of this contact with the masses, a discipline of peeri-mureedi (spiritual guide and the disciple) came into existence and the work of preaching and propagation started.

With the changing times, the circumstances also changed but the discipline of peeri –mureedi in terms of spiritual guidance and discourse did not change. It would not be an exaggeration to say that the institution of peeri-mureedi has rather turned into a lucrative business in modern times as in the garb of peeri-mureedi, the fake peers and sadhus have expanded this institution on international level and have set up agents and centres of business in many countries.

One major and important reason behind this development is that the man in this developed world of science and technology is totally devoid of religion, spiritualism and divine knowledge. He is suffering from mental disintegration and a discontented heart due to his hankering after the objects of luxury. The belief and faith of the modern man is very weak. He wants to fulfil his wishes and expectations at any cost. He yearns for peace of mind and content of the heart for which he is ready to do anything.  Therefore, being of weak faith, he does the rounds of the dens of the rishis, munis, peers, fakirs, dervishes, astrologers and soothsayers and seeks talisman, threads and various other similar objects in order to fulfil his wishes.

In some cases, the tantric does not even hesitate to make them offer the sacrifice of innocent children for the fulfilment of their wishes. But it is only one side of the picture which is very horrific, despicable and unpleasant.

The other side of the picture is positive, optimistic, very pleasant and pregnant with spiriutual values that leads to divine knowledge, self-purification, spiritual training and is associated with the affairs of the world and hereafter. It is a matter only between the peer and the mureed (the spiritual guide and the disciple), between the seeker and the sought after, the teacher and the pupil, the guide and the traveller and the mystic and the guru. The people on this journey have to tread very carefully, rather have to take every step on the instructions of their spiritual guide or murshid and have to pass through very difficult tests during the spiritual journey. Sometimes, the traveller has to wait for the instruction of his guide on a particular stage for a very long period. During this period, the murshid keeps him constantly under his training and observation and appoints him to the next stage once he deems him fit for it.

However, sometimes many seekers of the truth lose the way and are lost in the wilderness. In such a difficult situation, only the guidance and the preachings of the peer or murshid can come to their rescue.

Therefore, in this regard there are no better charter of guidance than the Quran, Hadith and the holy life and practices of the Prophet (PBUH). But the spiritual leaders of the deen, the walis who devoted their lives to the purpose of giving spiritual guidance and training to people, gave birth to spiritual orders after their names to enable their disciples to achieve spiritual knowledge and divine guidance. Later the sufi orders were known as Karoya, Qadria, Naqshbandia, Suherwardia, Chishtiya, Mujaddidi, Sarhindi, Warsi etc.

These sufis and peers also laid down some rules and regulations for the training of their disciples as well as seekers of divine knowledge which were published in book form later and assumed the status of guiding principles for the disciples belonging to the particular order. Such books are based on the verses of the Quran, exegeses, hadiths, various incidents from the Islamic history, the lives and character of sahaba, the experiences, observations and discourses of walis and verses of sufi poets which quench the thirst of the seekers of the divine knowledge.

In this regard, I would like to name two books which are of great importance in terms of mysticism and marfat (divine knowledge). One of them is Fawaidul Fawad based on the discourses of Hadhrat Nizamuddin Auliya and the second one is Kashful Mahjoub based on the discourses of Hadhrat Sheikh Ali Hajweri Data Ganjbakhsh. The study of these books is enlightening to the seekers of the truth.

The tradition of the discipline of peeri-mureedi known as guru-shishya parampara was existent among the Hindus in the Kashmir valley before the arrival of Islam and still exists among them. After the arrival of Islam the system of beyat(allegiance) came into existence and the work of imparting spiritual guidance and training also began. With time, this system spread in the vicinity of the valley. This is the reason why the presence of peers, walis, dervishes and fakirs is known in every village in Kashmir whose abodes were the centres of attraction for the masses irrespective of religion, caste or creed and today their monasteries and mausoleums have become the cause of attraction to the common people. These places are promoters of brotherhood, unity and harmony that are great blessings rather unexpected gifts in this age of disbelief.

If we study the system of peeri-mureedi in Kashmir, we shall find that Syed Abdur Rehman Bulbul was the first man to whom thousands of people paid allegiance accepting Islam. Syed Amir Kabir Mir Syed Ali Hamdani appeared in Kashmir with his seven hundred disciples and changed the hearts and minds of millions of people with divine influence of Zakhiratul Mulook, Chahal Asrar and Aurad-e-Fatiha. His writing a letter of guidance to Sheikhul Alam Nuruddin Noorani and development of the order of Sufism under the patronage of Sheikhul Alam is an important link in the chain of guide-disciple system. The discourses of Sheikhul Alam is known as a form of the Quran. Hadhrat Sheikh Hamza Makhdoom Anwar, his chief disciple Baba Dawood Khaki, Hadhrat Sheikh Bahauddin Naqshband, Hadhrat Baba Naseebuddin Ghazi and Syed Mir Mirak Shah Kashani are bright minarets of spiritual guidance that dazzle Kashmir with their lights even today. These are only a few names that I have mentioned as examples. In fact, relics of thousands of aulias whor are resting here are evident in every corner across the length and breadth of Kashmir.

The institution of guide-disciple is still existent across Kashmir. Some people have inherited the order while the others have attained it through their constant practice and under the guidance and supervision of some Peer or spiritual guide who benfit the common people as well the disciples.

At present the names of people like Haji Mir Hasan Hussain Sibla Shah Sirhindi Warsi are worth mention. He is a resident of Bichwada, Dal Gate Srinagar. The name of his residence is Ashiana Eram which is situated at Bichwada Chowk, Boulevard Road. His real name is Mir Ghulam Hussain Sibla and nickname is Mir Hussain. He was born in Kawda, Srinagar. His father’s name is Mir Mohammad Subhan Sibla  and mother’s name is Alhaj Mukhtar Begum. He passed B.Sc from Government Amar Singh College, Srinagar and joined the circle of spiritual allegiance at the raw age of 16. His father Mir Mohammad Subhan Sibla paid allegiance to his father Mir Abdul Ghaffar Sibla who was the khalifa(deputy) to the Abdal of Mujaddidi (Sirhindi) order in Kashmir Hadhrat Ahmad Machami.

Alhaj Mir Hasan Hussain Sibla was handed over by his father to Sufi of Chishti order Ali Mohammad Gulkar Chishti Qadri. Later, he paid allegiance to Faqir Abdul Rehman Qadri Warsi, Sheikh Faridul Hasan Sirhindi, Ahsan Suherwardi, Abdul Hamid Shah Warsi and Ghulam Mohammad Miskini Chishti and attained the status of caliphate after getting training from them. All these sufis were sufi Siblas virtual spiritual guides. Practically, he was conferred allegiance also by his father Mir Mohammad Subhan Sibla.

In this way, Alhaj Mir Ghulam Hasan Hussain Sibla is associated with the Sirhindia Chishtia  Qadria Suharwardia  and Warsia order of mysticism. Presently he is the head of Anjuman-e-Ghulaman-e-Warsia, Srinagar and Markaz-e-Hindia-Warsia, Srinagar.

Alhaj Mir Hasan Hussain Sibla is not only a sufi, dervish and fakir but also a writer and mystic poet who has composed hundreds of Kashmiri ghazals, manqabatsand qasaid for the guidance and reform of the seekers of divine knowledge. His ghazals and mystic verses are regularly broadcast and telecast on the radio and the TV. Many singers have achieved popularity by singing his mystic songs in mehfils.

Mir Hasan Hussain Sibla has got a number of disciples including non-Muslims in his circle of allegiance and the number has reached in thousands. His disciples hail not only from Kashmir but also from the other parts of India and abroad. The annual urs of Ahmad sahib is held at his residence on the 13the of Shaaban and the annual urs of Waris Pak is held on the 1st of the month of Safar  apart from a concert of mystic music and langar (general servings  of food) on the 13th and 29th of every month.

Mir Ghulam Hasan Hussain has translated the book titled Merajul Ashiqeen by Hazrat Banda Gesu Daraz. The collection of his Kashmiri ghazals titled Aks-e-Sarmadi has been published. His other books are “The appearance of the Warisi order in Kashmir” and “Imamul Ashiquin”. Recently his new book titled “Ganj-e-Marfat” has been published. The book contains the nitty gritty of mysticism and spirituality for the training and guidance of his disciples and seekers of truth. The secrets contained in the book are those that have been presented by his predecessors in their discourses and magazines and have inspired and benefitted disciples and general seekers of truth. This book is very important with reference to Kashmiri sufi poets. In this regard Hazrat Sibla himself writes:

“It was not necessary for me to compile ‘Ganj-e-Marfat’ as the sufis and walis have been writing on various topics of mysticism and Sufism and making people aware of the secrets of mysticism for the last twelve hundred years. The objective behind the compilation was to present the poetic creations of the Kashmiri sufi poets as well the discourses of the Kashmiri sufis uncovering the secrets of the different stages of mysticism. How successful I have been in this endeavour is for the people to decide.”

Alhaj Mir Ghulam Hasan Hussain Sibla has given references of the verses of the sufis peots and writers like Khar, Rahim sahib, Shams Faqeer, Rahman Sahab, Wazah Mahmood, Nagma Sahab, Qadir Sahab and his father Mir Mohammad Subhan Sibla alias Lala Sahab with translation according to the context. All these poets have been associated with Qadria, Chishtia, Suharwardia, Naqshbandia (Sirhindia) and Warsi orders. The compiler has also given references from the poetry of Urdu and Persian poets as and when deemed fit which have enhanced its importance and value. (To be concluded)

Source: Sahafat, New Delhi

URL: http://www.newageislam.com/islam-and-spiritualism/ganj-e-maarfat--a-study---part-1/d/3614

پروفیسر محمد اسد اللہ وانی

(پہلی قسط)

کشمیر قدیم زمانے سے ہی رشیوں ،منیوں ، سنتوں ، سادھوؤں ،پیروں ،درویشوں اور اللہ والوں کامسکن رہا ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ کشمیر کو ‘‘ریشی واڑ’’یا ‘‘پیرواڑ’’ بھی کہا گیا ہے ۔ یہاں کشیب رشی سے لے کر ہردے رشتی تک ان گنگ رشی،منی، سادھو، سنت،یوگی، مہاتما، بزرگان دین اور اولیائے کرام ہوگزرہے ہیں جو اگر چہ دن رات یادالہٰی میں محور ہتے تھے۔ لیکن علائق دنیا سے احتراز کرنے کے باوجود ان کا رابطہ اور واسطہ عوام الناس سے کسی نہ کسی صورت میں قائم تھا۔ ان کے اسی عوامی رابطے کی بدولت پیری مریدی کا ایک ضابطہ سلسلہ وجود میں آیا اور رشد وہدایت کا کام انجام دیا جانے لگا۔

مروڑ زمانہ کے ساتھ ساتھ اگرچہ حالات میں تبدیلی آئی مگر رُشد وہدایت کے تعلق سے پیری اور مریدی سلسلے میں کوئی کمی یا تبدیلی نہیں آئی۔ اگر یہ کہا جائے تو بے جانہ ہوگا کہ موجود ہ عہد میں پیری مریدی کا سلسلہ ایک منافع بخش کاروبار کی صورت اختیار کرگیا ہے کیونکہ پیری مریدی کی آڑ میں کئی نقلی پیر اور بہر وپیوں نے اس سلسلے کو بین الاقوامی سطح پر وسعت دے کر ملکوں ملکوں اس کاروبار کے اڈے اور ایجنٹ قائم کئے ہیں۔ اس کی سب سے بڑی اور اہم وجہ یہ ہے کہ موجودہ سائنس اور ٹکنالوجی کے ترقی یافتہ دور کا انسان مذہب ،روحانیت اور عرفان سے یکسر بابلد ہے ۔ یہ سامان تعیش کے حصول کی خاطر بے حد مصرو ف ہونے کی وجہ سے ذہنی انتشار اور بے اطمینانی قلب کا شکار ہے۔ موجودہ عہد کے انسان کا عقیدہ اور ایمان انتہائی کمزور ہے۔ یہ اپنی امیدوں اور آرزوؤں کو ہر قیمت پر پورا کرنا چاہتا ہے ۔ اسے ذہنی سکون اور اطمینان قلب کی اشد تلاش ہے اور اسے حاصل کرنے کےلئے وہ کچھ بھی کر گزرنے کو تیار ہے ۔چنانچہ ضعیف الاعتقاد ہونے کی وجہ سے ان پیروں ، فقیروں ،عاملوں ، درویشوں ،کاہنوں ، جوتشیوں اور پیشین گوئی کرنے والوں کے اڈوں اور ٹھکانوں کا شب وروز طواف کرتا ہے اور اپنی مراد یں پانے کیلئے ان سے گنڈے ،تعویذ ،دھاگے اور مختلف عملیات حاصل کرتا ہے۔ بعض اوقات ان کی ان مرادوں کی حصولیابی کیلئے ان سے تانترک معصوم بچوں کی قربانی اور بلی تک پیش کرانے سے دریغ نہیں کرتے لیکن یہ تصویر کا صرف ایک رخ ہے جو اپنے نتائج کے اعتبار سے انتہائی بھیانک ،قابل نفریں اور ناپسند یدہ ہے۔

ان تصویرکا دوسرا رخ مثبت ،امید افزا انتہائی خوشگوار اور روحانی اقدار کا حامی ہے جس کے ڈانڈے علم وعرفان ،تزکیہ نفس، روحانی تربیت اور دنیا وآخرت کی زندگی سے معامات ومسائل سے جاملتے ہیں ۔ یہ خالص پیر اور مرید کا معاملہ ہے، طالب اور مطلوب کا ، استاد اور شاگرد کا، رہنما اور ہروگا، ہبر اور سالک کا اور مرشد کامل وتشتگان معرفت کا۔ اس راہ کے مسافروں کو نہ صرف پھونک پھونک کر قدم رکھنا پڑتا ہے بلکہ ہر قدم اپنے شیخ کامل یا روحانی رہبر اور مرشد کی ہدایت کے مطابق اٹھانا پڑتا ہے اور سلوک ومعرفت کی راہیں طے کرتے وقت کڑی آزمائشوں کا سامنا کرناپڑتا ہے۔بعض اوقات اس منزل کے جادہ پیما کو برس ہا برس تک مسلسل ایک ہی مقام یا منزل پر ڈیرہ ڈال کر اپنے مرشد کے اذن کا منتظر رہنا پڑتا ہے ۔ اس دوران مرشد، شیخ یا پیر اپنے شاگرد ، طالب  یا مرید کی شب وروز تربیت کرتا ہے اور جب اسے اگلے پڑاؤ یا درجہ کے اہل سمجھتا ہے تو اسے اس پر فائز کیا جاتا ہے ،لیکن بسا اوقات ایسا بھی ہوتا ہے کہ کاروان سلوک ومعرفت سے بہت سے طالبان حق پچھڑ کر راستے کی بھول بھلیوں میں الجھنے کی وجہ سے گرد وغبار کا حصہ بن جاتے ہیں ۔ ایسے نازک اور مشکل حالات میں پیرومرشد کی تعلیمات اور ہدایات ہی شاگرد یا مرید کے کام آسکتی ہیں ۔جن پر عمل پیرا ہوکر وہ منزل مقصود سے ہمکنار ہوسکتا ہے ، چنانچہ اس ضمن میں ایک طالب حق کیلئے قرآن ،حدیث، اور اسوۂ حسنہ سے بڑھ کر کوئی بھی ہدایت نامہ نہیں ہے مگر جن بزرگان دین ، مشائخ ،اولیائے عظام نے رشد وہدایت کے فریضے کو انجام دہی کیلئے اپنے آپ کو وقف کیا۔ انہوں نے اپنے طالبوں ،بہی خواہوں ،مریدوں  اور شاگردوں کو تصوف او رمعرفت کے اسرار ورموز سے بہرہ ورکرانے کی خاطر اپنے نام سے ایک سلسلے کو وجود بخشا جو بعد میں کرویہ ،قادریہ، نقشبندیہ ، سہر وردیہ، چشتیہ، مجدوی، سرہندی، وارثی وغیرہ مختلف صوفیا کے ناموں کی نسبت سے متعدد مکاتب فکر معرض وجود میں آئے ۔ ان صوفیا اولیا اور مسائخ نے اپنے مریدوں اور تشتگان معرفت کی تعلیم وتربیت کیلئے وقتاً فوقتاً کچھ اصول وضوابط بھی وضع کئے جو بعد میں کتابی صورت میں شائع ہوکر ان سلسلے کے مریدوں کے لئے رہنما اصول کی حیثیت اختیار کرگئی ۔ایسی کتب قرآنی آیات، تفاسیر ، احادیث ،تاریخ اسلام کے مختلف واقعات ،صحابہ کی سیر، اولیائے کرام کے تجربات ، مشاہدات اور ملفوظات اور صوفی شعرا کے اشعار پر مبنی ہیں جن کے مطالعے سے تشتگان معرفت اپنی پیاس بجھاتے ہیں ۔ اس تعلق سے یہاں پر صرف دوکتب کا نام لینا ضروری ہے خیال کرتا ہوں جو تصوف اور معرفت کے بارے میں بڑی اہمیت کی حامل ہیں ۔ ان میں سے ایک محبوب الہٰی حضرت نظام الدین اولیاؒ کے مفلوظات پر مشتمل ‘‘فوائد الفواد’’ ہے اور دوسری حضرت شیخ علی ہجویری داتا گنج بخشؒ کی کشف الحجوب ہے۔ ان کامطالعہ طالبان حق کےلئے بہت ہی معلومات افزا ہے۔

پرمپرا سے وادی کشمیر میں پیری مریدی کاسلسلہ اسلام کی آمد سے قبل اہل ہنود میں موجود تھا جسے گرو شیشہ کہا جاتا تھا اور یہ سلسلہ ان میں آج بھی موجود ہے۔ اسلام کی آمد کے بعد بیعت کاسلسلہ شروع ہوا اور رشد وہدات کا کام بھی انجام دیا جانے لگا۔ وقت گزر نے کے ساتھ ساتھ یہ سلسلہ وادی کے اطراف واکناف تک پہنچ گیا ، چنانچہ وادی کے ہر گاؤں اور ہر گوشے میں کسی نہ کسی بزرگ خدا ،ولی کامل ،درویش اور پیر فقیر کی موجودگی کاپتہ چلتا ہے ۔جس کا مسکن بلا امتیاز مذہب وملت ،مرجع خلائق رہتا تھا اور آج ان کی خانقاہیں اور زیارتیں خواص وعوام کی توجہ کا باعث بنی ہوئی ہیں۔ یہ مقامات آپسی میل جول ،بھائی چارے اور اتحاد واتفاق کے مراکز ہیں ۔ جو ا س الحاد کے دور میں نعمت عظمیٰ بلکہ نعت غیر مترقبہ سے کم نہیں ہیں۔

وادی کشمیر میں اگر پیری مریدی کے سلسلے پر غور کیا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ حضرت سید عبدالرحمٰن بلبل پہلے شخص ہیں جن کے ہاتھ پر ہزاروں لوگوں نے بیعت کر کے اسلام قبول کیا۔حضرت امیر کبیر میر سید علی ہمدانی تو اپنے سات سومریدوں کے ہمراہ اردِ کشمیر ہوئے اور انہوں نے ذخیرۃ الملوک چہل اسرار اور ادرار فتیحہ کی وساعت سے لاکھوں لوگوں کے قلوب واذہان کو بدل ڈالا ۔ ان کے فرزند سید میر محمد ہمدانی کا اس سلسلے کوبرقرار رکھ کر شیخ العالم نورالدین نورانی کو خط ارشاد عطا کر نا اور حضرت شیخ العالم کے زیر سایہ سلسلہ رُیشیت کا پروان چڑھنا پیر مریدی کے سلسلے کی اہم کڑیاں ہیں۔ شیخ العالم کے کلام کو کشمیری زبان میں قرآن کا روپ کہا گیا ہے ۔سلطان العارفین حضرت شیخ حمزہ مخدوم انوران کے مرید خاص بابا داؤد خاکی (منصب وردالمریدین ) حضرت شیخ بہا الدین نقشبندی ابوالفقرا بابا نصیب الدین غازی اور سید میر میرک شاہ کا شانی کشمیر میں پیر مریدی اور رشد وہدایت کے ایسے روشن مینار رہتے ہیں جن کی ضوفشانی سے سارا کشمیر آج تک جگمگا رہا ہے ۔ یہ محض چند نام میں نے مشتے نمونہ از خردارے کے مصداق لئے ہیں ،ورنہ کشمیر کے چپے چپے پر اولیائے کرام کے آثار موجود ہیں ۔ جہاں یہ ہزاروں کی تعداد میں آسودۂ خاک ہیں۔

موجودہ عہد میں بھی کشمیر کے طول وعرض میں پیر مریدی کا سلسلہ موجود ہے ۔ کچھ افراد کو یہ سلسلہ وراثت میں ملا ہے اور متعدد افراد نے اپنے تزکیہ نفس ،زہدوا تقا ، مسلسل مجاہدے اور کسی پیر ومرشد کی دیکھ ریکھ اور نگرانی میں یہ مقام حاصل کیا ہے جن سے مریدوں کے علاوہ خواص وعوام مسلسل مستفید ہورہے ہیں۔

موجودہ دور کے ایسے افراد میں الحاج میر حسن حسین سبلا شاہ سرہند ی وارثی کا اسم گرامی بطور خاص لیا جاسکتا ہے ۔ آپ بچھواڑہ ڈل گیٹ سری نگر کے رہنے والے ہیں اور آپ کی رہائش گاہ کانام آشیانہ ارم ہے جو بچھواڑہ چوک بلیو ار ڈ روڈ پر موجود ہے ۔ آپ کا اصلی نام میر غلام حسن سبلا اور تخلص میر حسین ہے۔ آپ 3دسمبر 1940کو بمقام کاوڈاسری نگر میں پید اہوئے ۔آپ کے والد ماجد کا نام الحاج میر محمد سبحان سبلا اور والدہ ماجدہ کا نام الحاج مختار بیگم تھا۔ آپ نے گورنمنٹ امر سنگھ کالج سری نگر سے بی ایس سی کا امتحان پاس کیا اور دوران تعلیم یعنی 16سال کی عمر میں ہی حلقہ بیعت سے وابستہ ہوگئے ۔آپ کے والد میر محمد سبحان سبلا اپنے والد عبد الغفار سبلا سے بیعت تھے جو کشمیر میں مجددی (سرہندی) سلسلے کے ابدال حضرت احمد مچامی کے خلیفہ تھے۔

الحاج میر حسن حسین سبلا کو ان کے والد نے چشتی سلسلے کے صوفی علی محمد گلکار چشتی قادری کے حوالے کیا۔اس کے بعد انہوں نے فقیر عبدالرحمن قادری وارثی شیخ فرید الحسن سرہندی ،احسن سہروردی ، عبد الحمید شاہ وارثی اور غلام محمد مسکینی چشتی سے بیعت ہوکر تربیت حاصل کی اور خلافت کا درجہ پایا ۔یہ سبھی بزرگ صوفی سبلا صاحب کے مشائخ مجازی تھے ۔ باطنی طور پر انہیں ان کے والد میرمحمد سبحان سبلا نے بھی بیعت سے نوازا ۔ یوں الحاج میر غلام حسن حسین سبلا سرہندیہ ، چشتیہ ،قادریہ ، سہر وردیہ اور وارثیہ سلسلہ معرفت سے منسلک ہیں۔آپ اس وقت انجمن غلامان وارثیہ سری نگر اور مرکز ہندیہ وارثیہ سری نگر کے سرپرست ہیں۔

الحاج میر حسن حسین سبلا نہ صرف ایک صوفی، درویش فقیر اور پیر ہیں بلکہ آپ ایک اور ادیب اورصوفی شاعر بھی ہیں۔ جنہوں نے سیکڑوں کشمیری غزلیں، منقبت اور قصائد تشتگان معرفت کی ہدایت ودرست کیلئے کہے ہیں ۔ ان کے کلام میں بہت سی غزلیں اور کشمیری صوفیانہ کلام ریڈیو اور ٹی وی پر نشر ہوتا رہتا ہے ۔ محفلوں میں گلو کار ان کا عارفانہ کلام پیش کر کے شہرت کی بلندیوں پر پہنچ جاچکے ہیں۔

میر حسن حسین سبلا نے رشد وہدایت کے سلسلے میں کئی طالب اور مرید اپنے حلقہ بیعت سے منسلک کئے ہیں۔ جن کی تعداد ہزاروں تک جاپہنچتی ہے ۔آپ کے طالب اور مرید نہ صرف جموں وکشمیر میں ہیں بلکہ ہندوستان اور ہندوستان سے باہر بھی کئی ملکوں میں موجود ہیں جن میں مسلمانوں کے علاوہ غیر مسلم بھی شامل ہیں۔ آپ کی رہائش گاہ پر 13شعبان اور یکم صفر کو احمد صاحب اور وارث پاک کے سالانہ عرس کے علاوہ ہر ماہ کے 13اور 29تاریخوں کو محفل صوفیانہ موسیقی اور عام لنگر کا اہتمام ہوتا ہے۔

میر غلام حسن حسین سبلا نہ صرف ایک درویش پیر اور فقیر ہیں بلکہ وہ ایک ادیب اور شاعر بھی ہیں ۔ انہوں نے حضرت بندہ نواز گیسو دراز کے رسالہ معراج العاشقین کا ترجمہ کیا ہے۔ ان کی کشمیر ی غزلیات کا مجموعہ ‘‘عکس سرمدی’’ کے عنوان سے شائع ہوا ہے ۔ ان کے علاوہ ‘‘کشمیر میں سلسلہ وارثیہ کا دردو’’ اور ‘‘امام العاشقین’’ بھی ان کی تصانیف میں شامل ہیں۔ حال ہی میں ان کی مرتب کردہ نئی کتاب‘‘ گنج معرفت’’ شائع ہوئی ہے ۔ جس میں انہوں نے اپنے مریدوں اور طالبوں کی تربیت اور تزکیہ نفس کیلئے تصوف ومعرفت کے اسر اسر ور موز قلم بند کئے ہیں ۔ یہ دواسرار ورموز ہیں جوان سے پہلے کے صوفیا اور اولیا نے وقتاً فوقتاً اپنی اپنی تشتگی بجھائی ہے۔ کشمیر ی صوفی شعرا کے حوالے سے یہ ایک کتاب کافی اہمیت کی حامل ہے ۔ اس ضمن میں سبلا صاحب خود رقم طراز ہیں:

‘‘مجھے ‘‘گنج معرفت’’ ترتیب دینے کی کوئی ضرورت نہ تھی کیونکہ بارہ سوسال (ہجری) سے مختلف اولیا وصوفیا کرام ،معرفت کے مختلف موضوعات پر قلم اٹھاتے رہے ہیں اور تصوف ومعرفت کے اسار ورموز سے آشنا کراتے رہے ہیں۔دراصل اس کتاب کی ترتیب کے سلسلہ میں میرا صحیح نظر او ر مقصود یہی رہا ہے کہ کشمیری صوفی اور اولیا کرام نے تصوف ،معرفت اور سلوک کی مختلف منازل ومقامات پر سے جو نقاب کشائی کی ہے۔ ان کے کشمیری صوفی اور اولیا کرام نے تصوف ،معرفت اور سلوک کی مختلف منازل ومقامات پر سے جو نقاب کشائی کی ہے ان کے کشمیری صوفی شعرا کی کاوشوں اوربیش بہاخدمات کو منظر عام پر لایا جاسکے ۔میں اپنی اس کوشش میں کہا ں تک کامیاب ہوا اس کا فیصلہ اہل نظر اور اہل دل ہی کرسکتے ہیں ۔‘‘الحاج میر غلام حسن حسین سبلا نے اپنے اس مقصد کی تکمیل کےلئے صوفی شعرا وادبا کھار ،رحیم صاحب ،شش فقیر ،رحمان صاحب ،واز ہ محمود نغمہ صاحب وقادر صاحب اور اپنے والد میر محمد سبحان سبلا المعروف لالہ صاحب کےکلام سے مضمون اور موضوع کی مناسبت حوالے دیئے ہیں اور ان اشعار کا ترجمہ بھی کیا ہے۔ان سبھی شعرا کا تعلق تصوف کے قادریہ ، چشتیہ ،سہروردیہ، نقشبندیہ (سرہندیہ) اور وارثیہ سلسلہ سے رہا ہے ۔ ان شعرا کے علاوہ بھی مرتب نے فارسی اور اردو شعر ا کے کلام سے موقع اورمحل کے مطابق اشعار پیش کئے ہیں ۔ جن کی وجہ سے کتاب کی اہمیت اور افادیت میں اضافہ ہوا ہے۔

(جاری)

URL for this article:

http://www.newageislam.com/islam-and-spiritualism/ganj-e-maarfat--a-study---part-1/d/3614

 

Loading..

Loading..