New Age Islam
Sat Nov 27 2021, 09:17 PM

Islam and Politics ( 9 March 2010, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

The Evils of Jadeed (modern) Kharijiat: A Comparative study

by Zeeshan Ahmed Misbahi

Translated from Urdu by Raihan Nezami, NewAgeIslam.com

Who are the Jadeed (modern) Khawarijs

How, when and where did they come into existence?

These are complex questions very difficult to answer. No doubt, the Khawarijs were a group during the caliphate vehemently opposed to the concept and practice of democracy.

Hazrat Ali (May Allah be pleased with him) suppressed the movement saving the Ummah from a brutal evil.

Jadeed (modern) Khawarijs are akin to their predecessors in many respects. They believe in violent protests, are intolerant towards people having different opinion and divided in various groups on conceptual basis, yet agreeing on certain issues such as Takfeer-e-Ali (May Allah be pleased with him) and Muawiah (May Allah be pleased with him). Jadeed (modern) Khawarijs are extremely religious-minded, and orthodox.

Abdul Kareem Shahrastani has described them as “the people about whom the prophet Hazrat Muhammad (Peace be upon him) had stated – you would feel yourselves inferior to them observing their prayers”. The followers of Jadeed (modern) Khawarijs are highly impressed by the ancient Khawarijs and follow the beliefs and policies of their predecessors.

I don’t say religion has nothing to do with politics and should not have any ties with politics. In democratic societies, the Muslims have differences with the  Jadeed (modern) Khawarijs on two grounds.

First, the democrats consider politics the part of religion, but Jadeed (modern) Khawarijs consider religion the part of politics, they may not accept it verbally.

Second, the democrats do not approve of “Deen” and “Ahl-e-Deen” acceptable along with politics and government; so they are performing the duty of sacrificing Muslims, defaming Islam for the sake of politics and government in the name of “Jihad” and “Ahqaq”.

The ancient Khawarij group was formed after the incident of “Tahkeem” in 37H. It has taken a new form in present time all over the world – that is called the “parliament”. In the Muslim or non-Muslim countries where democracy is being practiced, people elect the members of Parliament to represent their constituency and participate in the process of law-making. In Muslim countries, either there is kingship that is not preferred in Islam, or democracy. It is being practiced in many non-Muslims countries. It is better than imperialism in which an  individual’s opinion is not considered and is different from Islamic Shoorai system .

Now the question is: what should the Muslims do in absence of Islamic Shoorai system? Should they try to establish Islamic Shoorai system of rule in the Muslim countries or abstain from the democratic process. Practically, it is not possible to form a Shoorai cabinet in the present atmosphere of hostility and sectarianism where one sect pronounces all the others infidels (kafirs).

Even if supposedly, a Shoorai cabinet is anyhow formed, the members would be killed the next day by a differing faction. The sectarian conflict in Pakistan and Afghanistan is a perfect example. The ruling section starts bombing the mosques and graveyards just after coming to power. To avoid such a frustrating situation, the democratic system of electing the members of Parliament looks practical if not an ideal one.

The Muslim minority living in non-Muslim countries have some options to choose from.

(a)      They can accept the democratic system and try to elect the candidates favourable to them.

(b)      They can live in democracy without participating in the electoral process. But it will yield two unfavourable results:

First, the Parliament will be deprived of genuine members.                                                                                

Second, their patriotism will be called in question. Several facilities will be taken away and ultimately, they will be forced to either migrate or suffer in their own country.

(c)      They can revolt in non-Muslim countries like in India or Nepal, or in U.S or European countries and try to establish an Islamic government. But, it seems to be very impractical as such an attempt will be suicidal and counterproductive..

Shaikh Md Alauddin Nadvi, a teacher in Darul Uloom, Lucknow writes on this issue in the guest column of monthly “Allah ki Pukar” Delhi, in May 2009 edition:

“Should the fate of Islam be linked with secular democracy?  Will the Islamic spirit of Oneness not be affected?

Is this democratic system not a sign of slavery? The Prophets have been sent to rescue the Muslims from this humiliating slavery” (Page-7)

It is surprising that the expression of Islamic spirit in the light of “Kitab” and “Sunnah” or the decision of segregation from the mainstream politics in the prevalent system of democratic rule and boycott of elections are always considered suicidal attempts by Ummat-e-Muslimah. People think that Indian Muslims should support the democratic system of the governance that is in favour of Muslims and Islam, but the particular situations and the religious compulsions are never defined. The support for the philosophy of “Aahoonul Yalesheen” is taken but, “Aahoonul Mushrekeen” is practiced. For this reference, the Aayat-e-Kareemah is explained in such a way that denial of Quran-e-Kareem is apprehended. (Page 8)

The people who consider elections a religious and “Shoorai” duty will appear along with the losers and beside transgressors. The participation in elections and politics from Islamic point of view is purely a matter of faith on Oneness of Allah-e-Kareem; it is not a child’s play. (Page 9)

The detailed quotations have been given to prove that Jadeed (modern) Kharjiat is an undeniable reality. The reasons presented in the quotations are so weak that it can be denied and refuted by any ordinary Muslim. Its perfect similarity with ancient Kharjiat is being given below in short:

1. The ancient Khawarijs considered “Tahkeem” an act of transgression “Shirk” against Oneness of Allah-e-Kareem; similarly, modern Khawarijs consider “Parliament” against Oneness of Allah-e-Kareem.

2. According to ancient Khwarijs “Tahkeem” made human beings rulers in place of Allah-e-Kareem; modern Khawarijs too, possess the same opinion about the parliament. The reality in the matter of “Tahkeem” is different as it had happened to establish a compromise between Hazrat Ali (May Allah be pleased with him) and Hazrat Muawiah (May Allah be pleased with him) in the light of “Quran” and “Sunnah”. As there had to be someone to dictate the orders of Shariat, that is why two persons were nominated by the fighting factions. They were made responsible to deliver verdict according to the Islamic law. It was not the approval of the governance of someone against the rule of Allah-e-Kareem “Tahkeem-e-Tauheed”. The ancient Khawarijs considered it transgression “Shirk”. Likewise, all human beings including Muslims get religious freedom in modern day democracy. In regard of other matters of government, various representatives from all castes and regions of the country are elected in the parliament. The followers of a particular religion and their book cannot be authorized to solve all problems and matters. No religious group, majority or minority, will accept any common doctrine as the supreme authority. Democracy creates a middle path to solve this problem. If Muslims accept this system, their actions can be called “rebellion” and they are labelled “Mushriks” by the Khawarijs resulting in great destruction and disturbance.

3. The ancient Khawarijs used to dispose of the Caliph if he slightly deviated from the rules of Shariat. Likewise, modern Khawarijs too, seem eager to kill rulers throughout the world, at a time even Islamic scholars find it difficult to fully abide by the Shariat laws. They have to tolerate the vehement anger and the suicide attacks by the modern Khawarijs.

4. They used to consider all the people “Kafir” who did not follow Shariat laws; modern Khawarijs too, are following the same destructive path. Someone, Masood Ahmed of Jama’tul Muslemin has tried to prove in his book “Tark-e-Sunnah Gunah Hai” – that non-practice of Sunnat is a deviation and, therefore, a sin..

5. Hazrat Ali (May Allah be pleased with him) had argued on the logic of Khawarijs “ordains are from Allah-e-Kareem only” saying it is a poor explanation of a good reason. Similarly, modern Khawarijs too, talk about “Khilafat”, “Rule of Allah” and “Tauheed”. Ultimately they label the whole Ummat “Kafir” and intend to revolt against all the governments.

6. They considered “Sword” as the only solution against “transgressions” or “rebellions”. The prophet Hazrat Muhammad (Peace be upon him) has stated, “Demolish evil by hands; if unable, try to stop verbally, if unable to do even that – at least denounce it in your heart”. Practically, he (Peace be upon him) opposed it. Modern Khawarijs too, believe in the solution by killing and destruction, irrespective of favourable or unfavourable conditions and its results.

The Jadeed (modern) Khawarijs, spread throughout the world, have a large support among the educated, the uneducated, the college students and Mullahs. A common Muslim wants to achieve Islamic, educational and financial stability utilizing democratic facilities, and purify Muslims by Islamic reformation. The Kharjiat-minded people are creating problems for peace loving Muslims by conspiring to kill non-Muslims, attacking the rulers, opposing the administration and judiciary and boycotting elections. By their thoughts and actions, they are projecting Muslims and Islam as a destructive force.

It is mentioned about Khawarijs in “Kutub Tareekh” that  they used to kill anyone who did not approve of their opinion ,irrespective of whether he was a “Sahabi” or a general Muslim, a man or a woman. Their successors too, behave in the same manner. Various examples of their violent attitude can be cited from Karachi to Peshawar, Kabul to Mazare Shareef or Qandhar. They do not spare even mosques and tombs, scholars or Mullahs of opposite thought. Recent Islamic world needs a pious and powerful leader like “Sher-e-Khuda” Hazrat Ali (May Allah be pleased with him) to suppress the rising evil forces among Muslims. Modern Kharjiat has widespread presence and publicized due to the revolutionary rise of the electronic media making it difficult to stop its advance.. These people are very rigid, without any good sense to understand the sensible talk of Islamic scholars; they are creating an explosive atmosphere which can kill thousands of Muslims. Likewise, ancient Khawarijs had been the cause for killing of many Muslims at the time of Hazrat Ali (May Allah be pleased with him). Few Khawarijs, who had remained alive in Nahrawan War, kept causing disturbances till the Ummavi and Abbasi period. It has to be seen how long the Jadeed (modern) Khawarijs create differences among Ummat-e-Muslimah and spread.

Yet I am quite hopeful the way people are being attracted towards Islam and trying to resolve their issues through peaceful means. It will yield good results and strengthen the process of reforms opposing terrorism and extremism establishing good relations even with the non-Muslim countries and begin the end of modern Kharjiat.

An Arab writer Abdul Qadir Saleh has written, “The initiation of Khawarijs has taken place in the form of a group of “Qura” (Huffaz-e-Quran, Aebad wa Zohd). Before the advent of Islamic civilization,; the members of “Qura” were considered to be scholars of Ummat-e-Muslimah,having the knowledge of Fiqqah, Hadees, and culture. Due to low standards of their knowledge, they could not understand the political situation created by the differences between Hazrat Ali (May Allah be pleased with him) and Hazrat Muawiah (May Allah be pleased with him) and the nature of war between them”. (Al-Aqaed wa Al-Adyan, Page 124)

This comment on Khawarijs is quite convincing and exposes the very nature of modern Khawarijs also. These people too, are very religious and gentle like their predecessors. They are ever ready to kill or to be killed in the name of Quran-e-Kareem or Islam without understanding its content and the future consequences. In present time, they feel that Muslims have refuted Islamic governance and rule of Tauheed, so they are zealous to kill all the disobeying Muslims as well as non-Muslims.

As the Khilafat is a thing of the past, they think that Muslims have lost the status of “Tauheed” by living in the parliamentary system of democracy without anticipating the religious freedom and advantages Muslims and other minorities have been getting throughout the world. They fail to realize the benefits of democracy and remain always ready to fight to the extreme.

The sensible and intellectual academicians should realize their responsibility of educating the Muslims. Living in parliamentary system of democracy is not a refusal of Islam and Tauheed. In this system, we can fight against any mal-practice or ill-treatment against Islam by raising our voice in any part of the world.

No Muslim considers parliament equivalent to the rule of Shariat and binding.. It gives a chance to improve the standard of living and invent better chances of practicing all the tenets of Islam with full freedom.

It is surprising that  Shaikh Alauddin Nadvi, a teacher of Nadwatul Ulemah, is unable to realize that boycott of elections is similar to suicide and will be considered a revolt the state.

Is he ready for it? The Muslims’ patriotism is based on their predecessors’ sacrifice and achievements. So Muslims should not do anything which negates their achievements.

I am sorry to say Janab Khalid Hammadi, editor of Mujallah “Allah ki Pukar” is regularly publishing non-sensical and anti-Muslim articles having provoking opinion in his magazine. Perhaps, he too, considers participation in elections and voting for the representatives as “Shirk fil Hukm”. I want to ask the gentleman.

How is it justified and Islamic to accept the decisions of government and get a hefty amount as salary or grants if the acceptance of the Houses of Parliament is “Shirk fil Hukm”?

The Parliament is responsible and involved in all the matters related to education, holidays and traffic rules etc. if the honourable writer accepts it and follows; it is feasible in Islam. But if a common man votes for a leader to send a better representative in the parliament, he is guilty of “Shirk”.

The people with destructive mentality, should abstain from violence and destruction, otherwise they will have to face the music as the Ummat-e-Muslimah is now an enlightened lot.

Translated from Urdu by Raihan Nezami, NewAgeIslam.com

 

URL:http://www.newageislam.com/islam-and-politics/the-evils-of-jadeed-(modern)-kharijiat--a-comparative-study/d/2557

 

جدید خارجیت

ذیشان احمد مصباحی

جدید خوارج کون ہیں؟ کہاں، کب اور کیسے پیدا ہوئے؟ ان سوالات کاجواب تعین کے ساتھ دینا مشکل و دشوار بھی ہے او راس سے بہت سے آہنگینوں کے ٹوٹ جانے کا خوف بھی ہے۔ ویسے یہ طے ہے کہ قدیم خوارج جمہور کے موقف طریق کے مخالف ایک متشدد جماعت تھی ، حضرت علی نے جس کا خاتمہ کر کے امت کو ایک فتنہ عظیم سے محفوظ کیا۔ اس تناظر میں جدید خوارج کا جائزہ لیجئے تو ان کے بارے میں بھی یہ بات یقینی طور پر کہی جاسکتی ہے کہ جدید خوارج بھی جمہور کے موقف و طریق کے خلاف ایک متشدد جماعت ہیں۔ البتہ جدید خارجیت کو ہم قدیم ابتدائی خارجیت کی طرح کسی ایک لڑی میں نہیں پروسکتے ، بلکہ جس طرح قدیم خوارج بعد میں مختلف فرقوں او رجماعتوں میں بٹ گئے تھے ، جو جزوی اور فروعی مسائل میں مختلف ہوتے ہوئے بھی کچھ خاص مسائل مثلاً تکفیر علی و معاویہ وغیرہ میں مشترک تھے، اسی طرح جدید خوارج بھی مختلف شکل اور رنگ میں پائے جاتے ہیں ،مختلف ناموں سے جانے جاتے ہیں ، لیکن اس کے باوجود بعض امور مثلاً جارحیت و عسکریت پسندی وغیرہ قدر مشترک کے طو رپر ان میں پائے جاتے ہیں ۔ جدید خوارج میں ایک قدر مشترک دینداری ہے ۔ خاکم بدہن! دینداری یا اتباع شریعت کے خلاف لب کشائی کا تصور نہیں کرسکتے، یہاں صرف یہ بتانامقصود ہے کہ جدید خارجیت کی کوئی شکل شاید ایسی نہیں مل سکتی جو دین داری اور اتباع احکام شرع میں تساہل برتنے والی ہو۔ بلکہ وہ اس معاملے میںتصلب بلکہ تشدد وتطرف پرآمادہ نظر آتے ہیں ۔ قدیم خارجیت کے اندر بھی یہ وصف بطور قدر مشترک تھا، اسی لیے عبدالکریم شہرستانی نے ان کے بارے میں لکھا ہے کہ ’’ یہ وہی لوگ تھے جن کے بارے میں پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ فرمایا تھا کہ ان کی نمازوں اور روزوںکو دیکھ کر تم اپنی نماز وںکو حقیر سمجھوگے‘‘ ۔جدید خوارج میں دوسرا وصف مشترک یہ ہے کہ ان کی سو چ پر بھی سیاست وحکومت کا غلبہ ہے اور قدیم خوارج کی طرح یہ بھی ایک طرح سیمنظر فانہ سیاسی نظریے پر قائم ہیں۔ ہم یہ نہیں کہتے کہ دین کا سیاست سے کوئی رشتہ نہیں، یا سیاست مذہب سے باہر کوئی شئی ہے،مسئلہ سیاست میں جدید خوارج سے جمہورامت مسلمہ کا اختلاف صرف دو بنیادوں پر ہے۔پہلی شئی یہ ہے کہ جمہور سیاست کو مذہب کاحصہ سمجھتے ہیں جب کہ جدید خوارج قولاً نہ سہی، عملی طور پر مذہب کو سیاست کا حصہ سمجھتے ہیں۔

 دوسری بات یہ ہے کہ جمہور سیاست و حکومت کے لئے دین اور اہل دین کی قربانی کو درست نہیں سمجھتے ،بلکہ دین اور اہل دین کی مصلحت کے لئے وہ سیاست وحکومت سے دست برداری کو ضروری سمجھتے ہیں جب کہ جدید خوارج سیاست و حکومت کے لئے مذہب او راہل مذہب کی قربانی کو نہ صرف جائز سمجھتے ہیں بلکہ آج پوری دنیا میں سیاست و حکومت کے لئے اسلام کی بدنامی او رمسلمانوں کی قربانی کافریضہ بڑی خوشی سے جہاد اور احقاق سمجھ کر ،انجام دے رہے ہیں ۔خوارج کی پیدائش واقعہ تحکیم (37ھ) کے بطن سے ہوئی تھی۔ اتفاق سے آج پوری دنیا میں تحکیم کی ایک نئی شکل سامنے آئی ہے۔ تحکیم کی یہ شکل پارلیمنٹ ہے۔ مسلم اور غیر مسلم ،تمام ہی ملکوں میں ، جہاں جمہوریت نافذ ہے،عوام اپنے نمائندوں کو منتخب کرکے پارلیمنٹ بھیجتے ہیں، جہاں پہنچ کر وہ نظام حکومت کے لئے قانون سازی کا عمل کرتے ہیں۔ ایسا کرنا موجودہ دنیا کی مجبوری ہے۔ کیونکہ مسلم ممالک میں یا تو شخصی اور خاندانی حکومت ہے جو اسلام کی ترجیح نہیں ہے،یاپھر جمہوری ،ایسے ہی اکثر غیر مسلم ملکوں میں بھی جمہوری حکومت ہے۔ جمہوری حکومت شخصی اور خاندانی حکومت سے بہر کیف بہتر ہے کہ وہاں شخصی رائے کو دین، قانون اور شریعت نہیں سمجھا جاتا۔ البتہ یہ ضرور ہے کہ اسلامی شورائی نظام، جو اسلام کامطلوب ہے،جدید جمہوریت اس سے مختلف ہے۔ لیکن سوال ہے کہ اسلامی شورائی نظام کے فقدان کے وقت مسلمان کیا کریں؟ جدید جمہوریت کو قبول کرلیں یا شورائی نظام کی تشکیل کریں؟ ہونا تو یہ چاہئے کہ مسلمان ملکوں میں شورائی نظام کے لئے کوشاں ہوں اور شریعت کے ماہرین ہی قانون بنائیں۔ لیکن یہ بات کہنے اور سننے میں جتنی بھلی معلوم ہوتی ہے عملی طور پر اتنی ہی مشکل ہے۔کیونکہ اگر اسلامی ملکوں میں شورائی نظام کا قیام ہوتو سوال ہے کہ موجودہ فرقہ بندی کے دور میں ارباب شوریٰ کون ہوںگے؟ یہا ں تو حال یہ ہے کہ ہر گروپ دوسرے گروپ کے خارج از اسلام ہونے کا فتویٰ دے چکا ہے۔ پہلے تو موجود کثیر آبادی اور کثیر مسلکی دور میں ارباب شوریٰ کا انتخاب ہی قریباً محال ہے اور اگر کسی طرح کسی دن یہ انتخاب عمل میں آبھی جائے تو دوسرے دن ہی ارباب شوریٰ قتل کردیے جائیں گے۔ اور بصورت دیگر وہ تیسرے دن اپنے مسلک مخالف افراد کو پھانسی پر لٹکادیں گے۔ افغانستان و پاکستان کی مسلکی جنگیں اس کی واضح مثالیں ہیں کہ معمولی قوت ملتے ہی مسجدوں اور مزاروں پر بم باری شروع ہوجاتی ہے۔ ایسے میں نمائندوں کے انتخاب میں موجود جمہوری طریقہ ہی آئیڈیلنہ سہی، قابل عمل ہے۔ غیر مسلم ملکوں میں جہاں مسلمان اقلیت کی زندگی گزار رہے ہیں، امور حکومت میں ان کے چند آپشن ہے: (الف) جمہوری حکومت کو قبول کرلیں اور اپنے ووٹ کا استعمال کرکے کوشش کریں کہ ایسے نمائندے منتخب ہوں جو ان کے حق میں نسبتاً بہتر ہوں۔(ب) جمہوری حکومت میں رہیں مگر ووٹ کا استعمال نہ کریں۔ اس سے دو نتیجے سامنے آئیں گے۔ اول یہ کہ نسبتاً بہتر لیڈروں سے محروم ہوجائیں۔ ثانیا جب حکومت کو یہ معلوم ہوگا تو ان کی وطن دوستی مشکوک ہوگی، وہ بہت سی مراعات سے محروم ہوجائیں گے اور بالآخر قید و بند یا ہجرت وغیرہ پر مجبور ہوں گے۔(ج) غیر مسلم ممالک، مثلاً یورپی و امریکی ممالک، یا ہندوستان او رنیپال جیسے ممالک میں مسلمان بغاوت کردیں او راسلامی حکومت قائم کریں، ظاہر ہے، دارالعلوم ندوۃ العلما لکھنو کے ایک استاذ شیخ محمد علاء الدین ندوی، ماہنامہ اللہ کی پکار دہلی شمارہ مئی 2009 ء کے مہمان اداریہ میں لکھتے ہیں: ’’ کیا اسلام کی تقدیر کو سیکولر جمہوریت سے وابستہ کردیا جائے گا اور ایسا کرنے سے ایک مسلمان کا عقیدہ توحید ذرہ برابر داغ دار نہیں ہوگا؟ کیا یہ نظام جمہوریت انسانوں کے لئے طوق غلامی نہیں؟ جس کو اتارنے کے لئے ہر زمانے میں انبیاء تشریف لائے۔’’ (ص:7)‘‘ حیرت کی بات یہ ہے کہ سکہ رنج الوقت جمہوری سیاست کی آب و ہوا میں کتاب و سنت کے حوالوں سے اسلامی رجحان کا اظہار کیجئے یا باطل سیاست سے کنارہ کشی کا تذکرہ کیجئے ،لوگوں کی نوک زبان پریہ جملہ آجاتا ہے کہ ’’ الیکشن سے کنارہ کشی یا بائی کاٹ امت مسلمہ کے لئے خود کشی کے مترادف ہے۔’’ ہم سمجھتے ہیں کہ خود کشی تو دین سے انحراف میں ہے۔‘‘ ’’ ایک او ربات جو بڑی شد و مد کے ساتھ کہی جاتی ہے کہ ہندوستانی مسلمانوں کے حالات او رمصلحت دین کا تقاضا یہ ہے کہ جمہوری نظام کی پشت پناہی کی جائے، پھر ان خاص حالات او رمخصوص مصلحت دینی کی وضاحت نہیں کی جاتی۔‘‘ ’’ پھر اھون البلیتین کے فلسفے کا سہارا لیا جاتا ہے اور اھون الشرکین پر عمل کیا جاتاہے۔

اس حوالے سے آیات قرآنیہ کی ایسی تعبیر و تشریح کی جاتی ہے کہ تحریف قرآن کا شبہ ہونے لگتا ہے ۔’’ (ص:8)‘‘ الیکشن کی حیثیت کو جو لوگ ایک دینی اور شرعی فریضہ سمجھتے ہیں ، وہ اللہ کے روبروروز حشر میں کھڑے ہوں گے تو گھاٹے کا سودا کرنے والوں اور شرک کی ہم نوائی کرنے والوں کی قطار میں نظر آئیں گے۔ دینی نقطہ نظر سے سیاست و الیکشن میں حصہ لینے کا سوال خالص عقیدہ توحید کا مسئلہ ہے۔یہ کوئی بازیچہ اطفال اور شب وروز کا تماشا نہیں ہے۔ ’’ (ص:9)‘‘ اختصار کی کوشش کے باوجود یہ اقتباسات تفصیل سے اس لیے نقل کردیے گئے تاکہ یہ واضح ہوجائے کہ میرا دعویٰ ہوا میں نہیں ہے بلکہ جدید خارجیت ایک زمینی حقیقت ہے جسے جھٹلا یا نہیں جاسکتا ۔ ان اقتباسات میں جو استدلال پیش کیے گئے ہیں وہ اپنے آپ میں اتنے پھسپھسے ہیں کہ ان کے رد کی ضرورت نہیں ۔معمولی فہم کا مسلمان بھی اس دلائل پر صرف اہانت آمیز تبسم کے ساتھ گزرجائے گا ۔ البتہ قدیم جارحیت کی اس سے مماثلت کیا ہے، چند جملوں میں پیش کی جارہی ہے۔(1) قدیم خوارج نے تحکیم کو توحید کے خلاف ایک شرکیہ عمل قرار دیا تھا، جدید خوارج بھی پارلیمنٹ کے خلاف شرکیہ عمل سمجھتے ہیں۔(2)قدیم خوارج تحکیم کو یہ سمجھتے تھے کہ یہ خدا کی جگہ بندوں کو حاکم بنانا ہے جدید خوارج بھی پارلیمنٹ کو اسی نظرسے دیکھتے ہیں کہ یہاں خدا کی جگہ بندوں کو حاکم بنایا گیا ہے۔ جب کہ حقیقت یہ ہے کہ تحکیم کا معاملہ اس لیے ہوا تھا کہ حضرت علی اور حضرت معاویہ کے درمیان مصالحت ہو، یہ مصالحت قرآن و سنت کی روشنی میں کرنی تھی۔ لیکن کتاب و سنت حکم خود نہیں بتاتے ، ان سے حکم نکال کر بتانے والا کوئی انسان ہی ہوگا اور چونکہ وہاں اختلاف اور جنگ صورت تھی، ایسے میں یہ انسان وہی ہوسکتے تھے جن پر فریقین راضی ہوں۔ لہٰذا فریقین نے اپنا ایک ایک نمائندہ پیش کیا جن پر فرض تھا کہ کتاب و سنت کی روشنی میں فیصلہ کریں۔ اس طرح تحکیم توحید کے خلاف غیر خدا کی حاکمیت کا اقرار نہیں تھا۔ لیکن خارجیوں نے اپنی کج فہمی کی وجہ سے اسے شرک قرار دیا۔ اسی طرح موجودہ عہد میں جمہوریت سب سے پہلے مسلمانوں سمیت تمام انسانوں کو مذہبی آزادی عطا کرتی ہے۔

 البتہ حکومت کے جو دوسرے معاملات ہیں ، ان کو طے کرنے کیلئے ملک کے ہر گوشے او رہر طبقے سے نمائندے منتخب ہوکر آتے ہیں ۔ ایسا کرنا اس لیے ضروری ہے کہ تمام مسائل کو حل کرنے کے لئے ایک مذہب کی کتاب اور اس کے نمائندوں کو اس کا حق نہیں دیا جاسکتا، اگر ایسا کیا گیا تو کوئی مسلمان اقلیت میں رہتے ہوئے کسی اکثریت کی مذہبی کتاب اور مذہبی افراد کو اپنے لیے تسلیم نہیں کرسکتا او رجب مسلمان اقلیت میں رہتے ہوئے اکثریتی مذہب کے قانون کو تسلیم نہیں کرسکتا تو پھر یہ کیسے ممکن ہے کہ اکثریتی طبقہ اقلیتی طبقہ کے مذہبی قانون کو اپنی زندگی کا دستور بنائے۔اس نزاع کو ختم کرنے کاممکنہ راستہ وہی ہے جو جمہوریت کا راستہ ہے۔ اب اگر اس ممکنہ راستہ کو کوئی مسلمان قبول کرتا ہے تو اس کے اس عمل کو شرک او راس کو مشرک قرار دینا صرف جارحیت کا ہی نقطہ نظر ہوسکتاہے، جس کا انجام تباہی اور ہلاکت کے سوا کچھ نہیں ہوگا۔ (3)خوارج کا نظریہ تھا کہ خلیفہ اگر شریعت سے ذرہ برابر روگردانی کرے تو اسے معزول بلکہ قتل کردیناچاہئے۔ جدید خوارج بھی آج پوری دنیا میں حکمرانوں کو قتل کرنے پر آمادہ نظر آرہے ہیں۔ موجودہ حالات میں جب کہ عوام کیا خواص بلکہ علماء تک سے سو فیصد استقامت علی الشریعت کی امید نہیں رکھی جاسکتی۔ ایسے میں جو حاکم بھی شریعت سے یا جدید خوارج کی مفروضہ شریعت سے معمولی انحراف کرتاہے یہ اس کے قتل کے درپے ہوجاتے ہیں، اس پرخود کش حملے کرتے ہیں، اسے گولیوں اور بموں کا نشانہ بناتے ہیں۔(4)خوارج کے یہاں ہر گناہ گار کافر تھا۔ حتی کہ اگر کوئی اپنے اجتہاد سے ان کے خلاف کوئی رائے قائم کرلیتا او رایساعمل کرتا جو اس کی نظر میں گناہ نہیں ہوتا صرف خوارج کی نظر میں گناہ ہوتا ، خوارج کے نزدیک ایسا شخص بھی کافر تھا۔ موجودہ خوارج کا رویہ بھی تقریباً یہی ہے۔ وہ اپنی ہر بات کو نص قطعی سمجھتے ہیں او راس کے لیے کسی طرح کی علمی واجتہادی خطا کو گو ارا نہیں کرتے۔ اس وقت میرے سامنے ’’جماعت المسلمین‘‘ نامی تنظیم کے کسی مسعود احمد کی کتاب ہے جس کا عنوان ہی ہے ’’ترک سنت گناہ ہے‘‘ اس میں شد ومد کے ساتھ مطلقانہ ثابت کرنے کی کوشش کی گئی ہے کہ ترک سنت گناہ اور گمراہی ہے۔(5)حضرت علی نے خوارج کے استدلال ان الحکم الاللہ، حکم صرف اللہ کا ہے، پر تبصرہ کرتے ہوئے فرمایا تھا’’ کلمۃ حق ارید بھا الباطل‘‘ ایک اچھی بات بول کر غلط معنی مراد لیا گیا ہے۔ جدید خوارج کے بارے میں بھی ہم یہی کہہ سکتے ہیں کیوں کہ وہ خلافت کی بات کرتے ہیں ، خدا کی حاکمیت کی بات کرتے ہیں، توحید کی بات کرتے ہیں، اور نتیجہ کے طور پر تمام امت کی تکفیر کرتے ہیں او رتمام حکومتوں کے خلاف علم بغاوت بلند کرنے کی احمقانہ بات کرتے ہیں۔ ان پر بھی صرف یہی تبصرہ کیا جاسکتا ہے:’’ کلمۃ حق ارید بھا الباطل‘‘ (6)خوارج امربالمعروف او رنہی عن المنکر کے لیے کامیاب راستہ صرف تلوار کو سمجھتے تھے۔ او رپیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم نے جو یہ فرمایا تھا ’’برائی کو ہاتھ سے مٹاؤ، استطاعت نہ ہوتو زبان سے روکو اور اس سیبھی نہ تو دل سے برا مانو‘‘ عملاً وہ اس کی مخالفت کرتے تھے۔ جدیدخوارج بھی اصلاح کے صرف ایک راستے کو درست سمجھتے ہیں، جنگ اور قتل و خون ریزی کا راستہ وہ ا س پروا نہیں کرتے کہ حالات اس کے موافق ہیں یا نہیں اور ایسا کرنے سے نتیجہ کیا سامنے آئے گا۔

جدید خوارج آج پوری دنیا میں اپنا نٹ ورک قائم کرچکے ہیں، ان کی ہمنوائی کرنے والے تعلیم یافتہ بھی ہیں اور جاہل عوام بھی، مولوی بھی ہیں اور کالج کے تعلیم یافتہ نوجوان بھی ۔ آج جب کہ ایک عام مسلمان کی سوچ یہ ہے کہ کس طرح جمہوری ملکوں کی مراعات سے فائدہ اٹھاتے ہوئے مسلمانوں کو دینی، تعلیمی اور معاشی طور پر مستحکم کیا جائے، کس طرح دعوت و تبلیغ کے دائرے کو بڑھایا جائے، کس طرح حکومت کے سامنے اسلام اور مسلمانوں کی پر امن شبیہ پیش کی جائے،ان خارجیت پسندوں کا وتیرہ بن گیا ہے کہ وہ حکومتوں کے خلاف احمقانہ بغاوت کی سوچ میں جی رہے ہیں ، انتخابات کا بائیکاٹ اور عدلیہ و انتظامیہ کی مخالفت کررہے ہیں ، وہ حکمرانوں پر حملے کرنے کی باتیں کررہے ہیں ، وہ غیر مسلموں کو قتل کرنے کی سازشیں رچ رہے ہیں، عام مسلمانوں کی پرامن زندگی کے لئے خطرات پیدا کررہے ہیں ، اسلام اور مسلمانوں کی دہشت گردانہ شبیہ تشکیل دے رہے ہیں اور ان سارے احمقانہ خیالات و حرکات کو عین اسلام بلکہ فریضہ اولین سمجھ رہے ہیں۔ خوارج کے بارے میں کتب تاریخ میں مذکور ہے کہ جو شخص بھی ان کے خیالات سے اتفاق نہیں کرتا ، وہ بے دریغ اسے قتل کردیتے، اس ضمن میں نہ وہ صحابی او رغیر صحابی کا لحاظ رکھتے اور نہ مرد و عورت کا لحاظ ، جدید خوارج کا حال بھی یہی ہے ، کراچی سے پیشاور تک اور کابل سے مزار شریف اور قندھار تک ا س کی درجنوں نہیں سینکڑوں مثالیں ہمارے سامنے ہیں، جدید خوارج نے اپنے فکر مخالف مساجد و مزارات او رعلماء و مشائخ کے ساتھ جو کچھ کیا ، کیا عورتوں ، بچوں اوربچیوں کے ساتھ جو کچھ کیا وہ جگ ظاہر ہے۔ آج افسوس ہے کہ مسلم دنیا میں شیر خدا حضرت علی کرم اللہ وجہہ الکریم جیسا کوئی مضبوط قائد نہیں جو اس نو پیدا خارجیت کو جڑ سے اکھاڑ پھنکتا ۔ ویسے چونکہ آج مسلمان پوری دنیا میں پھیلے ہوئیہیں اور مواصلات کی فراوانی نے قریب و بعید ہر شخص سے رابطہ کو آسان بنادیا ہے۔

 ایسے میں جدید خارجیت بھی قدیم خارجیت کی بہ نسبت زیادہ وسعت اور تنوع اختیار کیے ہوئے ہے۔ اس کی جڑیں زیادہ گہرائی تک اتری ہوئی ہیں۔ ایسے میں اس جدید خارجیت کا خاتمہ او ربھی مشکل معلوم ہوتاہے۔ اس میں شک نہیں کہ پوری دنیا کے جمہور مسلمان امن پسند ہیں اور دنیا کے بڑے بڑے دانشور اپنی تقریرو تحریر کے ذریعے ان خوارج کی تفہیم کی کوشش کررہے ہیں مگر جس طرح قدیم خوارج ، گفتگو اورافہمام و تفہیم کو قابل اعتنا نہیں سمجھتے تھے، جدید خوارج بھی مکمل ڈھٹائی کے ساتھ ہٹ دھرمی پر آمادہ ہیں او رافہام و تفہیم کی ہر کوشش کو وہ ایک مذاق سے زیادہ اہمیت نہیں دیتے۔ افسوس بالائے افسوس کہ جس طرح مٹھی بھر خوارج کی شرپسندی کے سبب حضرت علی کے عہد میں بے شمار مسلمانوں کی جانیں تلف ہوئیں، آج مٹھی بھر شرپسند جنگجو عناصر پوری دنیا میں مسلمانوں کے قتل و بربادی ، قید و بند اور جوروستم کا باعث بن رہے ہیں او رکئی مقامات پر مسلمان آپس میں دست گریباں ہیں، حتی کہ فروعی اختلاف کو گفتگو اور تحریر و تقریر سے حل کرنے کی بجائے بم اور بارود سے حل کرنے کا مزاج پروان چڑھنے لگا ہے۔ اس زاویے سے غور کیجئے تو بڑی مایوسی ہوگی کہ جنگ نہرو ان میں صرف چند خوارج بچ گئے تو اموی اور عباسی دور تک ان کی فتنہ انگیزیاں جاری رہیں تو جدید خوارج جن کے خاتمے کے آثار کم نظر آرہے ہیں ، ان سے امت مسلمہ کتنے سالوں یا صدیوں تک زخم کھاتی رہے گی، کچھ نہیں کہا جاسکتا ۔ ویسے جدید خارجیت کے خاتمے کے تعلق سے ہمیں بہت زیادہ نا امید ی نہیں ہے، کیونکہ عصر جدید میں امن پسندی کا جو ظاہرہ سامنے آیا ہے، کہ لوگ تیزی سے اسلام کی طرف بھی بڑھ رہے ہیں اور اسی تیزی سے شدت پسندی او رجارحیت کے خلاف امن کا علم بھی بلند کررہے ہیں۔ مسلمانوں نے پوری شدت کے ساتھ یہ محسوس کرلیاہے کہ اگر پوری دنیا میں ہمیں اسلام کی دعوتی و تبلیغی بالادستی منظور ہے تو اس کے لئے صرف ایک ہی راستہ ہے، پر امن راستہ۔

 پر امن طریقے سے ہم ان ملکوں میں بھی اسلام کی تبلیغ کرسکتے ہیں جنہیں بالعموم اسلام دشمن سمجھا جاتا ہے،جب کہ شدت پسندی کی وجہ سے ہم خود بھی پریشان ہوں گے، امت مسلمہ بھی پریشان ہوگی اور اسلام کے پھلنے پھولنے کے راستوں میںبھی رکاوٹیں پیدا ہوں گی۔ دنیا بھر میں پیدا شدہ اس جدید ظاہرہ سے امید کی جاتی ہے کہ یہ براہ راست نہ سہی ، بالواسطہ پر جدید خارجیت کا خاتمہ کردے گا۔ لیکن اس میں کتنا وقت لگے گا، یہ کہنا قبل از وقت ہوگا۔ عرب قلم کار عبدالقادر صالح لکھتے ہیں : ’’ خوارج کی ابتدائی نشو و نما قرا (حفاظ قرآن ، عبادہ زہاد) کی ایک جماعت کی شکل میں ہوئی۔ اسلامی ثقافت میں علم وفقہ، علم حدیث اور علم اصول وغیرہ کے رواج پانے سے قبل قرا کی ہی علمائے امت سمجھا جاتاتھا۔ ان خارجی قرا کا علمی و فقہی معیار ناقص تھا، اسی لیے یہ لوگ حضرت علی و معاویہ اختلاف سے پیدا شدہ نئی سیاسی صورت حال کو نہیں سمجھ سکے اور نہ وہ اس جنگ کے انداز کو سمجھ سکے ۔ ‘‘(العقایدوالادیان ، ص :124 ) عبدالقادر صالح نے قدیم خوارج کے فساد نظر پر جو تبصرہ کیا ہے، وہی تبصرہ حرف بہ حرف جدید خوارج پر بھی صادق آتاہے۔ خوارج کے پیدا ہونے کے سلسلے میں یہ تبصرہ نہایت جامع ہے۔ اس کی روشنی میں جدید خارجیت کے خد وخال بخوبی سمجھے جاسکتے ہیں۔ جدید خارجیت بھی بڑی سادہ او رقابل رحم ہے۔ جو لوگ شروع میں اس کا علم لے کر اٹھے وہ خوارج کی طرح ہی بہت ہی عابدو زاہد اور سادہ لوح تھے۔ وہ اسلام کے لئے اور قرآن کے لئے صرف مرنا جانتے تھے، اسلام، و قرآن کامطلوب ان کی فہم و فراست سے کوسوں دور تھا۔ او رجس طرح قدیم خوارج جب نئے حالات سے دو چار ہوئے اور ان کے سامنے پہلی بار یہ صورت سامنے آئی کہ دو فریق نے اپنے معتمد کو فیصلہ کرنے کے لئے آگے بڑھا یا تو انہیں اچانک یہ لگا کہ یہاں قرآن کو فیصل ماننے کی بجائے انسان کو فیصل مانا جارہا ہے او رخدا کی حاکمیت کی جگہ انسانوں کی حاکمیت تسلیم کی جارہی ہے۔ انہیں اچانک ایسا لگا کہ اسلام کی بنیاد تو حید اس سے متزلزل ہوگئی جس کے بعد وہ حواس باختہ مرنے ومارنے پرتل گئے ۔ جدید خوارج کی جماعت بھی سادہ لوحوں کا ایک نولہ ہے جو اسلام کے تئیں شدید جذباتی ہے۔ وہ سخت ترین نفسیاتی رد عمل کا شکار ہے ۔

عصر حاضر میں اسے اچانک یہ لگنے لگا ہے کہ مسلمان خدا کی حاکمیت تسلیم کرنے سے مکر گئے ہیں، اس لیے وہ مسلمانوں اور غیر مسلمان اقلیت میں ہوتے ہوئے بھی پوری دنیا میں مذہبی آزادی اور تبلیغ اسلام کے امکانات سے بہرہ ور ہوگئے ہیں، وہ اس انداز سے سوچنے لگے کہ جمہوریت میں مسلمان پارلیمنٹ کو تسلیم کرکے خدا کا انکار کر بیٹھے ہیں۔ ان کی سادہ مزاجی اس پر انہیں للکار تی ہے اس لئے وہ ہمیشہ جنگ کے مسئلہ پر غور کرتے ہیں اور اس پر غور نہیں کرتے کہ جنگ کا انجام کیا ہوگا؟ اس نازک صورت حال میں اسلام کے دردمند، مخلص ، باشعور اور روشن دماغ دوستوں کی ذمہ داری بن گئی ہے کہ وہ اپنے سادہ لوح بھائیوں کی تفہیم کریں۔ انہیں یہ سمجھا نے کی کوشش کریں کہ جمہوریت کو قبول کرکے مسلمانوں نے ہرگز اللہ کی حاکمیت کا انکار نہیں کیا ہے بلکہ جمہوریت تو یہ موقع دیتی ہے کہ اقلیت میں ہوتے ہوئے ،غیر مسلم ممالک میں ، ہم آزادانہ حاکم مطلق کے احکام کی پیروی کریں اور دوسروں کو بھی اس حاکم مطلق کی طرف دعوت دیں۔ پارلیمنٹ کو تسلیم کرنا قرآن کا انکار نہیں ہے، بلکہ پارلیمنٹ کو قبو ل کرنا تو ہمیں یہ موقع دیتا ہے کہ اگر قرآن کے خلاف زبان کھولی گئی تو ہم اپنے نمائندوں کے ذریعے غیر مسلم ملکوں میں بھی اپنے موافق آواز بلند کرائیں گے۔ کوئی مسلمان پارلیمنٹ کو ایمانیات و عبادات کے معاملے میں فیصل نہیں مانتا ،بلکہ جو زندگی کے عام معاملات ہیں، ان میں حتی الامکان اپنی تمام تر مذہبی آزادی کو محفوظ رکھتے ہوئے ، اپنے لیے بہتر او رممکنہ مواقع کے حصول کے لیے پارلیمنٹ کو تسلیم کرتاہے۔ ہمیں حیرت ہے یہ ندوۃ العلما کے استاذ شیخ علاؤ الدین ندوی کو یہ بات کیوں کر سمجھ نہیں آتی کہ ’’ الیکشن کا بائیکاٹ خود کشی کے مترادف ہے‘‘ اگر آج دارالعلوم ندوۃ العلوم الیکشن کا بائیکاٹ کردے، پارلیمنٹ کے خلاف علم بغاوت بلند کردے اور سپریم کورٹ کے فیصلے کو ماننے سے انکار کردے تو کیا ہوگا؟ کیا شیخ علاؤ الدین ا س کے تصور کے لیے تیار ہیں؟ غیروں کی کرم فرمائیوں کے سبب آج تک مسلمان اپنی وطن دوستی کی قسمیں کھارہے ہیں ، بہتر ہوگا کہ ایسے وقت میں دیدہ و دانستہ مسلمانوں کو غدار وطن بنانے کا سبق پڑھانا چھوڑ دیا جائے۔ ہمیں اس بات کا بھی افسوس ہے کہ مجلہ ’’اللہ کا پکار‘‘ کے ایڈیٹر جناب خالد حامدی (پروفیسر جامعہ ملیہ اسلامیہ ، نئی دہلی) مسلسل اس قسم کے واہیات او رمسلم کش مضامین اپنے مجلّہ کش مضامین اپنے مجلہ میں شائع کرتے ہیں۔ شاید وہ بھی الیکشن میں حصہ لینے اور نمائندوں کو ووٹ دینے کو شرک فی الحکم سمجھتے ہیں۔ عالی جاہ سے سوال ہے کہ جس حکومت کے ایوان کو تسلیم کرنا شرک فی الحکم ہے، اسی حکومت کے فیصلے کو ماننا ، اسی حکومت کے ادارے میں پڑھانا اور تنخواہ اور بھتہ کے نام پر ہر ماہ لاکھوں رویے حاصل کرکے شکم پروری کرنا ایمان کا کون سا حصہ ہے؟ سال میں تعلیم کے ایام، اوقات تعلیم وتعلم ،بلکہ سارا نظام اسی ایوان سے منظور شدہ ہے، اسے قبول کرنا،زندگی کے عام ومسائل میں، حتی کہ راہ چلنے میں بائیں جانب ڈرائیونگ کرنا، یہ سب باتیں، اسی ایوان کی منظور کردہ ہیں، ان سب کو آپ تسلیم کریں تو یہ ایمان ہے ، اور ایک عام مسلمان اپنی بھائی کے لیے نسبتاً بہتر لیڈر کو منتخب کرنے کے لئے ، کسی لیڈر کو ووٹ دے تو وہ شرک کا مجرم؟ اس ذہنیت کے لوگ فکری و عملی دہشت گردی سے توبہ کرلیں تو بہتر ہوگا و رنہ امت مسلمہ اب بیدار ہوچکی ہے اور دین کے نام پر بربادی کے اسباق بہت زیادہ تک پڑھنے کے لیے تیار نہیں ہے۔

URL: https://www.newageislam.com/islam-and-politics/the-evils-of-jadeed-modern-kharijiat--a-comparative-study/d/2557


Loading..

Loading..