New Age Islam
Wed Sep 23 2020, 03:50 PM

Islam and Politics ( 1 Apr 2010, NewAgeIslam.Com)

Objectives Resolution And Secularism-Part Vi


By Wajahat Masood

(Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk)

On February 22, 1946, the governor of Punjab Sir Burtrand Glency wrote in his fortnightly confidential report to the Vice-roy Wavell:"The leaders of the Muslim League are gradually turning towards extremism in their speeches. The maulvis, peers (spiritual guides) and students are touring across the state telling people that if they did not vote the Muslim League candidates, they would be out of the purview of Islam and their nikahs would  automatically become null and void. Irrespective of what the results of the elections are going to be, the aggressive campaign run by the Muslim League is sure to increase the number of their seats in the forthcoming elections."

The question what  games were played by the Muslim League After 1940 and particularly before the elections of 1946,to gain the votes of the religious community and what the  Muslim League's image was in that section has been answered by Sardar Shaukat Hayat in his book titled " A nation that lost its soul" in detail. Sardar Shaukat Hayat who was a close associate of Qaid-e-Azam and a representative of the feudal section of the Punjab writes:

"Only the ulema who belonged to Firangi Mahal and were friends of Nawab Sahab of Mahmoodabad were on our side. Maulana Ghulam Murshid (Preacher, Shahi Masjid,Lahore) and Mualana Abdul Hamid Badauni  started supporting the Muslim League around 1945. Some lesser known ulema also supported us. Barring these ulema no prominent religious scholar  participated in Tehrik-e-Paksitan.

About the sajjada nashin group of the Punjab (whom Gen,Ziaul Haque preferred to call them 'mashaikh-e-Uzzaam'),Shaukat Hayat writes:

" A handful of the Peers(spiritual guides) of Pakistan supported the movement for Pakistan. Peer sahab of Tonsa Sharif who was a relative of Nawab Mamdoot, his disciple, Peer Qamruddin of Sial Sharif and Peer Sahab of Golra Sharif joined the movement. Peer Jalalpur who was a relative of Raja Ghazanfar Ali also joined the movement. The names which I can recall apart from these three peers are Peer Jamat Ali Shah, Peer Manki Sharif and Peer Sahab of Zakori Sharif. The latter two belonged to the Frontier Province.

The stoy of  Peer Manki Sharif joining the Muslim League has many twists and turns. Erland Jansson, in his doctorate thesis titled " Pakistan:India or Pakhtoonistan?" has written:

"Peer Manki Sharif had formed his own organisation called Anjuman Asafia which promised the Muslim League its support on the condition that Shariah will be imposed in Pakistan. Jinnah agreed. Peer Manki Sharif immediately declared jihad for the establishment of Pakistan and instructed the members of his organisation to support the Muslim League in the elections of 1946."

Qaid-e-Azam's letter to Peer Manki Sharif in which he had accepted the Peer's demand is not a myth. Qaid-e-Azam had indeed written the letter which is mentioned in the debates of the Legislative Assembly of Pakistan (Vol. V). Complications, if any , were caused by the legal language used by Mr Jinnah. He wrote:

"Shariah will be applied to the affairs of the Muslim community". Application of Shariah to the affairs of the Muslims and imposing Sharia in Pakistan are two different things. In the affairs of the Muslims, the application of Islamic rules and principles cannot be denied. But imposing Shariah in Pakistan would mean declaring it a theocratic state. After Jinnah, Bhutto would also save his skin by the use of legal jargon. In the amendment to the 1973 Constitution relating to the Ahmadis, he wrote:

"The Ahmadis will be considered non-Muslims in the eyes of law and the constitution." It meant that (the Ahamdis) would be considered non-Muslims on purely legal basis not on the basis of religious edicts( fatwas). Unfortunately, the general impression among the common people, not the legal complexities, holds significance. Mr Jinnah could not point out the difference between a Muslim majority state and an Islamic state, and Mr Bhutto has  been accused of violating his Parliamentary protocol by making a constitutional interference in a purely religious issue.

Now talking about the Ahmadis, here's a very meaningful excerpt from Sardar Shaukat Hayat:

"Qaid-e-Azam sent me a message saying 'Shaukat, I have come to know that you're going to Qadian which is only five miles from Qadian. Please go there and convey my request to the leader of the Ahmadi community , Mirza Bashirudding to extend his support and blessings for the establishment of Pakistan'." I reached Qadian at 12 noon and was told that Mirza sahab was taking rest. I informed him I had come with a message from Qaid-e-Azam. He came down at once and asked me what Qaid-e-Azam's instructions were. I replied that Qaid-e-Azam had sought his blessings and co-operation. He said that he himself was praying for the success of his mission and  so far as the support of his followers was concerned, no Ahmadi would contest elections against the Muslim League and if any one defied this decision, he would not get the support of his community. As a result of the meeting, Mumtaz Daulatana of the Muslim League defeated an Ahmadi Nawab Mohammad Deen from Sialkot constituency by huge margin."

Now let's have a look at what Syed Abul Ala Maudoodi had to say in support of Paksitan as told by Sardar Shaukat Hayat:

"Reaching Pathankot, I met Maulana Maudoodi at Qaid-e-Azam's behest. He was staying at the garden adjacent to the village of Chaudhry Niaz. When I conveyed Qaid-e-Azam's message to him asking for his blessings and support, he replied he could never pray for Napak-istan ( unholy state) adding that Pakistan could not come into existence until the entire population in India did not become Muslim. That was the vision and point of view of the leader of the Jamaat-e-Islami.(Translated by Sohail Arshad)


http://www.newageislam.com/islam-and-politics/objectives-resolution-and-secularism-part-vi/d/2646


 

قرار داد مقاصد اور سیکولرازم :قسط 6

وجاہت مسعود

پنجاب کے گورنر برٹر ینڈ گلینسی نے 22فروری 1946کو وائسر ائے ویول کے نام اپنی پندرہ روزہ خفیہ رپورٹ میں لکھا کہ ‘‘مسلم لیگ کے مقرر روز بروز اپنی تقریروں میں انتہا پسندی کی طرف مائل ہیں۔ مولوی ،پیر اور طالب علم صوبے بھر میں دورے کر کے لوگوں کو بتارہے ہیں کہ انہوں نے مسلم لیگ کے امید واروں کو ووٹ نہ دیا تو وہ دائرہ اسلام سے خارج ہوجائیں گے، ان کے نکاح ٹوٹ جائیں گے۔ انتخابات کا نتیجہ جو بھی ہو مسلم لیگ نے ‘اسلام خطرے میں’ کے نام سے جو جارحانہ مہم چلائی ہے، اس سے آئندہ انتخابات میں ان کی نشستیں بڑھ جائیں گی’’۔

مسلم لیگ نے 1940کے بعد اور خاص طور پر 1946کے انتخابات سے قبل مذہبی طبقے کی حمایت حاصل کرنے کے لیے کیا جتن کیے اور اس طبقے میں مسلم لیگ کی پذیرائی کی کیا حیثیت تھی، اس سوال کا جواب سردار شوکت حیات سے لیتے ہیں جنہوں نے اپنی کتاب A Nation that Lost its Soulمیں اس موضوع پر خاصی تفصیل سے ر وشنی ڈالی ہے۔ سردار شوکت حیات جو قائد  اعظم کے قریبی اور پنجاب کے جاگیر دار طبقے کے نمائندہ کردار تھے ،لکھتے ہیں۔

‘‘ ہمارے ساتھ صرف وہ علما تھے جو نواب صاحب آف محمود آباد کے دوست اور فرنگی محل سے تعلق رکھتے تھے۔ مولانا غلام مرشد( خطیب شاہی مسجد لاہور) اور مولانا عبدا لحامد بدایونی نے 1945کے لگ بھگ مسلم لیگ کی حمایت شروع کی۔ چند دیگر غیر معروف علمانے بھی ہمارا ساتھ دیا۔ ان  علما کو چھوڑ کر 1946تک کسی معروف عالم دین نے تحریک پاکستان میں حصہ نہیں لیا’’۔

پنجاب کے سجادہ نشین گروہ کے بارے میں (جنہیں جنرل ضیا الحق خصوصی اہتمام نے ‘مشائخ عظام’ کہنا پسند کرتے تھے) شوکت حیات لکھتے ہیں۔

‘‘ پنجاب کے پیروں میں سے معدودے چند نے تحریک پاکستان میں مدد کی ۔ پیر صاحب آف تونسہ شریف جو نواب ممدوٹ کے رشتہ دار تھے۔ ان کے خلیفہ پیر قمر الدین آف سیال شریف اور پیر صاحب آف گولڑہ شریف نے ان کی تقلید میں تحریک میں شمولیت کی ۔ پیر جلال پور والے تحریک میں شریک ہوئے جو راجہ غضفر علی کے قریبی رشتہ دار تھے ۔ ان تین پیر صاحبان کے علاوہ جو نام مجھے یاد ہیں وہ تھے پیر جماعت علی شاہ، پیر مانکی شریف او ر پیر صاحب آف زکوڑی شریف’’۔ آخر الذ کردونوں حضرات صوبہ سرحد سے تعلق رکھتے تھے۔

پیر مانکی شریف کے مسلم لیگ میں شامل ہونے کا قصہ بھی پہلو دار ہے۔ ار لینڈ جینسن (Erland Jansson) نے اپنے ڈاکٹریٹ کے مقالہ بعنوان ‘پاکستان’ بھارت یا پختو نستان ؟ ’ میں لکھا ہے کہ ‘‘ پیر مانکی شریف نے انجمن آصفیہ کے نام سے اپنی تنظیم بنا رکھی تھی۔ اس تنظیم نے اس شرط پر مسلم لیگ کی حمایت کا وعدہ کیا کہ پاکستان میں شریعت نافذ کی جائے گی۔ جناح نے اس مطالبے سے اتفاق کرلیا۔ اس پر پیر مانکی شریف نے ترنت پاکستان حاصل کرنے کے لیے جہاد کا اعلان کردیا اور اپنی تنظیم کے ارکان کو 1946کے انتخابات میں مسلم لیگ کی حمایت کرنے کا حکم دیا۔’’

قائد اعظم کا پیر مانکی  شریف کے نام وہ خط جس میں انہوں نے پیر صاحب کا مطالبہ تسلیم کیا تھا، کوئی اساطیر ی معاملہ نہیں۔ قائد اعظم نے واقعی وہ خط لکھا تھا اور پاکستان دستور ساز اسمبلی کے مباحث (جلد پنجم) میں اس خط کا ذکر موجود ہے۔ اڑچن جناح صاحب کی خالص قانون زبان سے پیدا ہوتی ہے۔ انہوں نے لکھا تھا ۔Shariah will be applied to the affairs of the Muslim community(مسلمانوں کے امور میں شریعت کا اطلاق کیا جائے گا۔)

‘‘مسلمانوں کے امور میں ’’ شریعت کا اطلاق کرنے اور ‘‘پاکستان میں شریعت نافذ’’ کرنے میں زمین آسمان کا فرق ہے۔ مسلمانوں کے امور میں اسلامی اصول و ضوابط کے اطلاق سے کسے انکار ہوسکتا ہے ۔ تاہم پاکستان میں شریعت نافذ کرنے کا  مطلب تو اسے مذہبی ریاست بنانا ہوگا۔ جناح صاحب کی طرح ان کے بہت بعد آنے والے بھٹو صاحب بھی قانونی موشگافیوں کی مدد سے تاریخ میں صاف بچ نکلتے تھے ۔ بھٹو صاحب نے 1973کے دستور میں احمدیوں والی ترمیم کرتے  ہوئے لکھا، ‘‘احمد ی قانون اور دستور کی نظر میں غیر مسلم سمجھتے جائیں گے’’۔اس جملے میں ‘قانون اور دستور کی نظر میں ’ والی ترکیب کا مطلب ہے، مذہبی فتوے کے بجائے خالص قانونی نقطہ نظر سے غیر مسلم سمجھا جائے گا۔ بدقسمتی سے سیاست میں قانونی موشگافیوں کی بجائے عامتہ الناس میں پایا جانے والا تاثر زیادہ اہمیت رکھتا ہے۔ جناح صاحب کبھی مسلم اکثریتی ریاست اور اسلامی ریاست کا فرق واضح نہ کرپائے اور بھٹو صاحب پر یہ الزام موجود ہے کہ انہوں نے ایک خالص مذہبی مسئلے میں دستور ی مداخلت کر کے پارلیمنٹ کے وظیفہ منصبی سے تجاوز کیا۔

احمدیوں کا ذکر ہوا تو سردار شوکت حیات ہی کا ایک نہایت بامعنی اقتباس ملاحظہ فرمائیے۔

‘‘ مجھے قائد اعظم کی طرف پیغام ملا‘ شوکت مجھے معلوم ہوا ہے کہ تم بٹالہ جارہے ہو جو قادیان سے پانچ میل کے فاصلے پر ہے۔ تو وہاں جاؤ اور احمدی فرقے کے سربراہ مرزا بشیر الدین احمد کو میری درخواست پہنچاؤ کہ وہ پاکستان کے حصول کے لیے اپنی نیک دعاؤں اور  حمایت سے نوازیں ۔ میں تقریباً رات بارہ بجے قادیان پہنچا تو حضرت صاحب آرام فرمارہے تھے ۔ میں نے اطلاع بھجوائی کہ میں قائد اعظم کا پیغام لے کر حاضر ہوا ہوں۔ وہ اسی وقت نیچے تشریف لائے اور استفسار کیا کہ قائد اعظم کے کیا احکامات ہیں۔ میں نے کہا کہ وہ آپ کی دعا او رمعاونت کے طلب گار ہیں۔ انہوں نے جو اباً کہا کہ شروع ہی سے ان کے مشن کے لیے دعا گو ہیں اور جہاں تک ان کے پیرو کاروں کا تعلق ہے کوئی احمدی مسلم لیگ کے خلاف انتخاب میں کھڑ ا نہیں ہوگا اور اگر کوئی اس  غداری کرے گا تو وہ ان کی جماعت کی حمایت سے محروم رہے گا۔ اس ملاقات کے نتیجے میں ممتاز دولتانہ نے سیالکورٹ کے حلقے میں ایک احمدی نواب محمد دین کو بھاری اکثریت سے شکست دی’’۔

لیجئے! مولانا سید ابو الاعلیٰ مودودی کی طرف سے تحریک پاکستان کی حمایت کے بارے میں بھی سردار شوکت حیات ہی سے گواہی لے لیں۔

‘‘جب میں پٹھان کوٹ پہنچا تو قائد اعظم نے مولانا مودودی سے بھی ملنے کے لیے حکم فرمایا تھا۔ وہ چوہدری نیاز کے گاؤں سے متصل باغ میں رہائش پذیر تھے۔ جب  میں نے انہیں قائد اعظم کا پیغام پہنچایا کہ وہ پاکستان کے لیے دعا کریں او رہماری حمایت کریں تو انہوں نے جو اباً کہا کہ وہ کیسے ناپاکستان (ناپاک جگہ) کے لیے دعا کرسکتے ہیں۔ مزید براں پاکستان کیسے وجود میں آسکتا تھا، جس وقت تک کہ تمام ہندوستان کا ہر فرد مسلمان نہیں  ہوجاتا ؟ جماعت اسلامی کے قائد کی یہ بصیرت اور نظر یہ تھا۔’’(جاری)

URL for this article:

http://www.newageislam.com/islam-and-politics/objectives-resolution-and-secularism-part-vi/d/2646


Loading..

Loading..