New Age Islam
Thu Oct 01 2020, 08:34 AM

Urdu Section ( 16 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

Religious Teachers of Madarsas and Their Responsibility دینی مدارس کے اساتذہ کا سماجی رول

By Waris Mazahari

(Translated from Urdu by Raihan Nezami, NewAgeIslam.com)

A deep introspection into numerous social aspects is required to bring about religious and cultural awareness among the Muslim community. An important point for consideration in this regard is the role of the Madrasa teachers in social reform. Madrasas are a quintessential part of the Muslim culture and play an important role in the education and dissemination of Islamic teachings among the common masses. The places where madrasas do not exist are obviously in the darkness of illiteracy and ignorance. Some irresistible powers are afraid of the awareness in Muslim society, so they keep on trying to destroy this most important educational system. Therefore, hundreds of Muslim educational institutions have been closed in Egypt, Yemen and other Arab countries or their syllabi have been altered destroying the very basic purpose of their existence. Madrasas have been successful in their mission of imparting religious education to the common masses in the face of opposition.

The madrasas should strive to reform the Muslim community and spread the light of true knowledge among them. The defects in the society are numerous which need immediate attention. For this purpose, the role of madrasas should be clearly defined. Now the question arises: what role should madrasa teachers play for the improvement of the society?

A majority of madrasa educated students who become madrasa teachers carry out the same monotonous jobs. That should not be considered their limit of functioning. Their role in the duties of social rehabilitation must be designed and assigned. Teaching is one of the many aspects of their social role, which they perform as a robot, as is the case in various modern educational institutions. If they only repeat the same lessons taught to them by their predecessors, the nursery of Islamic education will remain cut off from the outer world.

A journalist Celia W. Dugger wrote in New York Times that a certain madrasa gives a lot of importance to piety while teaching various Fiqhi book - full of lessons on cleanliness. But, there is no impact of this teaching in practical life. A sincere analysis will, obviously unfold the tragic situation in the environment of madrasas regarding hygiene, piety and cleanliness. The teachers who are imparting knowledge are solely responsible for the nourishment of the young generations being trained there.

To a great extent, their responsibility is more than that of their parents as the students pass ten to twelve precious years in their company learning the practicality of life. They should be trained in such a way, when they grow mature, they should be able to shoulder the responsibility of reformation of the Muslim society. Apart from this primary duty, they should be trained to realize and identify the good and bad qualities of the community members. It will enable them to take appropriate action for their betterment.

Different teachers perform different activities for the society. Some of them deliver lectures on demand, and others give pen-service. It is also good, but it should not be restricted to this much only as they are made for performing more important duties. They should take initiative for the removal of vices in the Muslim culture with the help of local people in their own locality.

In the light of the proverb, “Charity begins at home”, all Islamic scholars too, began their mission from their home. Such Islamic scholars have greater reach among masses as they become closer by dint of lectures and religious sermons. The rest of the teachers, who are more resourceful and effective, are confined to the world of class rooms, mosques and their abodes. If they come out with a little openness of mind to help the society in their struggle for survival, the society can benefit extraordinarily. The corrective measures of Tablighi Jam’at are more effective as they reach far and wide and visit the people at their homes ignoring the disconcerting remarks and behaviours to accomplish their mission. In my opinion, there should be a Community Reformation Committee in all the Muslim areas comprising madrasa teachers and local inhabitants – old or young, especially qualified and cultured people. Tablighi Jam’at has greatly benefitted from the scholars of modern science and subjects. The Tablighi errand is a significant factor in the exemplary success of their mission; it is considered an individual duty of every member irrespective of age, class or status.  

This pattern of functioning is required for the reform and education of the Muslim masses. The work field can be extended to other castes also, as some issues are quite common in the society which requires diligent attention. The madrasa teachers will be more effective as they are non-political people. It is commonly known that political leaders hijacked Islamic heads of different religious organizations captive irrespective of whether they are Islamic scholars or general intellectuals. In case, their teaching assignments are being hampered, the number of teachers can be increased to make them available for social duties.

In certain madrasas, there are some scholars appointed for this purpose, but they are simply good orators. In fact, this criterion is wrong; a person of ordinary merit can also be a good orator. The real criterion should have been the zest for social awareness and Islamic reform. The selection of the people should be done from this point of view as missionary zeal is the most important requirement.

Islamic education and cultural reform should go hand in hand. Social welfare initiatives are considered to be an integral part of teaching. At first, the topics for reformation should be finalized as there is a lot of contradiction among the people. The Islamic preachers concentrate upon various topics such as: suppression of women’s rights, misuse of divorce (Talaq), deprivation of women’s rights to property, stigma of dowry, domestic violence or non-Islamic practices etc. These topics are not so important as to be given the sole attention.

First of all, Muslim community should learn self-criticism or self-introspection. Only then the moral character can be improved.  The Muslims lack in self-realisation making themselves unable to realize the vices of their culture and society. The present Muslim society is worse than others in its practice of moral values, truthfulness, cleanliness, decent behaviour, politeness, good behaviour with neighbours and religious pluralism.

The statement of a Pakistani writer needs deep consideration: “The Muslims could not even adopt good behaviour practiced by the non-Islamic communities for centuries, so the practice of universal justice of Islam as practiced by Khilafat-e-Rashideh is out of question”. -- Manzoorul Hasan, Ashraque monthly, Lahore, Oct. 2002)

It seems there is an absence of individual or collective structure of behaviour in our society. People have been practicing some hypocritical norms in the name of religion. They give no importance to the practice of moral values and cultural uplift of an individual which are basic things. In the absence of these factors, no plan or strategy for the improvement of the social character can be successful. It needs deep introspection and should be rectified before any other action taken.

The madrasa teacher can be very effective in this mission of purification of the community, only if they realise the fact that their social and Islamic utilities are not limited to imparting the scholarly knowledge within the boundary of madrasas. They can help their fraternity in numerous ways.

Source: Hamara Samaj, New Delhi

URL: https://newageislam.com/urdu-section/religious-teachers-of-madarsas-and-their-responsibility--دینی-مدارس-کے-اساتذہ-کا-سماجی-رول/d/3948

وارث مظہری

مسلم معاشرے کی اصلاح اور اس میں دینی و تہذیبی بیداری لانے کے لیے مختلف پہلووں پر غور کرنے کی ضرورت ہے۔ ایک پہلو دینی مداراس کے اساتذہ کے سماجی رول کا ہے۔ ظاہر ہے مدارس کا قیام مسلم معاشرے کی ایک ناگزیر ضرورت ہے۔ وہ معاشرے میں دینی معاشرے میں دینی تعلیم کے پھیلاؤ کا اہم ذریعہ ہیں۔ جو ممالک یا علاقے مدارس کے وجود سے خالی ہیں ، ان کی دینی حالت قابل اطمینان نہیں ہے۔ یہی وجہ ہے کہ وہ طاقتیں جو مسلم سماج کی دینی بیداری کو اپنے لئے خطرہ سمجھتی ہیں، مدارس کے درپے ہیں۔ چنانچہ مصر ویمن اور دوسرے عرب ملکوں میں سینکڑوں مدارس ومکاتب بند کردیئے گئے یا ان کا دینی نصاب تبدیلی کردیا گیا ۔ یہ تحریک جاری ہے۔ مدارس کی اس بنیادی اہمیت کے باوجود یہ دعویٰ کرنا غیر ضروری اور بے دلیل ہوگا کہ مدارس اپنے مشن اور مطلوبہ کردار میں توقع کے مطابق کامیاب ہیں۔ مدارس کے مطلوبہ کردار میں دینی تعلیم کے پھیلاؤ کے ساتھ مسلم سماج کی اصلاح بھی شامل ہے۔اور اس اصلاح کے متعدد پہلو ہیں۔ اس اعتبار سے مدارس کا رول بھی گوناں گو ہے یا ہونا چاہئے۔ سوال یہ ہے کہ مسلم سماج کی اصلاح میں مدارس کے اساتذہ کا کیا کردار ہے؟ حقیقت یہ ہے کہ مدارس کے فارغین کی بہت بڑی اکثریت مدارس و مکاتب میں ہی تعلیم و تدریس پر مامور ہے۔ اس لیے ان کا سماجی رول متعین ہونا چاہئے۔تعلیم و تدریس اس سماجی رول کا ایک پہلو ہے۔ دیکھا یہ جارہا ہے کہ اس میں بھی تدریس کا عمل بعض عصری دانش گاہوں کی طرح محض ایک معمول کا کام بن کر رہ گیا ہے۔اور بالکل ایک سرے پن کے ساتھ ، تکنیکی اور مشینی انداز میں انجام دیا جارہا ہے۔اگر مدارس سے فارغ ہونے والی اکثریت دوبارہ مدارس کی چہاردیواری میں ہی محصور ہوکر رہ جاتی ہے اور اسی عمل کو دہراتی ہے جو اس پر دہرایا گیا تھا تو اس صورت میں اس عمل اور متعلقہ ادارے کا خارج سے کتنا تعلق باقی رہ جاتا ہے؟مثلاً ایک برے دینی مدارس سے متعلق ایک غیر ملکی نامہ نگار (سیلیا وی ڈگر) نے نیویارک ٹائمس میں لکھا کہ اسلام میں طہارت و پاکیزگی پر انتہائی زور ہے (فقہ کی اکثر کتابیں طہارت کے باب سے شروع ہوتی ہیں) لیکن متعلقہ ادارے سے باہر اس کا کوئی باضابطہ اثر دیکھنے میں نہیں آتا۔ یہ اہم سوال ہے۔

 آپ جائزہ لیں تو اندازہ ہوگا کہ صفائی وسلیقہ مندی اور حفظان صحت کے اصولوں پر عمل کے لحاظ سے مدارس کا ماحول افسوس ناک تصویر پیش کرتا ہے۔ مدارس سے پیدا ہونے والی نسل نو کی تعلیم وتربیت کی پوری ذمہ داری مدارس کے اساتذہ پر عائد ہوتی ہے۔ اسکولوں کے مقابلے میں چونکہ مدارس کے طلبہ 10-8سال کی شب وروز کا بڑی حصہ مدارس کی چہاردیواری میں اساتذہ کی نگرانی میں گزرتا ہے، اس لیے یہ توقع والدین کے مقابلے میں اساتذہ ہی سے کی جاسکتی ہے کہ وہ مدارس سے فارغ ہونے والی نسل کی ایسی ذہنی تشکیل کریں کہ وہ سماج کی اصلاح وتعمیر کی ذمہ داری بحسن خوبی انجام دے سکیں۔ اگر یہ متوقع رول وہ ادا نہیں کرپاتے تو اس کی ذمہ داری کا بڑا حصہ انہی کے سرجاتا ہے۔ مدارس کے اساتذہ کا ایک رول تو یہی ہے جو مدارس کے اندرون سے تعلق رکھتا ہے۔ دوسرا رول وہ ہے جس کاتعلق مدارس سے باہر کی دنیا سے ہے۔ اساتذہ جس سماج میں رہتے ہیں اس کی اس طرح سے واقفیت ان کے لئے ضروری ہے کہ وہ مختلف پہلووں سے سماج کے مختلف طبقات کے اندر پائی جانے والی خوبیوں اور خامیوں کا پیمانہ متعین کرسکیں۔ان کے تجزیے کی ان کے اندر صلاحیت ہو اور صحیح اور قابل عمل شکل میں ان کی اصلاح کے بارے میں سوچ سکیں ۔ مدارس کے بعض اساتذہ اصلاح معاشرہ کی کوششوں میں اس طرح شامل ہیں وہ لوگوں کی طلب پر اصلاحی موضوعات پر تقریریں کرتے ہیں۔ بعض اساتذہ سے اس بارے میں تحریری خدمات بھی لی جاتی ہیں۔ اس کی اپنی اہمیت سے انکار نہیں ، لیکن راقم الحروف کی نظر میں اس کا فائدہ محدود ہے۔ مدارس کے اساتذہ کو خود اقدامی طور پر علاقے کے لوگوں کے اشتراک عمل سے علاقائی پیمانے پر سماجی اصلاح کی تحریکوں کی بنیاد ڈالنی چاہئے اور وبنیادی طور پر پہلے اپنے متعلقہ علاقوں کی سماجی خرابیوں کو اپنی اصلاحی کوششوں کا ہدف بنانا چاہئے۔

 انگلش کا مشہور محاورہ ہے کہ چیریٹی اپنے گھر سے شروع ہوتی ہے۔ اسلام کا اصلاحی فارمولہ بھی اس حقیقت کی ترجمانی کرتا ہے کہ پہلے اپنے گھر محلے اور علاقے کو اصلاح کا موضوع بنایا جائے۔تمام اصلاح پسندوں کا طریقہ کار یہی رہا ہے ۔ مدارس کے اساتذہ میں و ہی لوگ سماج میں گھل مل پاتے ہیں جو تقریر یا تعویز اور جھاڑ پھونک کے ہنر سے واقف ہوں۔ باقی لوگوں کی دنیا اپنے کمرے ، کلاس روم اور مسجد تک محدود ہوتی ہے۔حقیقت یہ ہے کہ یہ محدود یا محدودیت پسند لوگ ہی زیادہ صلاحیتوں کے مالک ہوتے ہیں۔ان کی صلاحیتوں کا یک حصہ اگر سماجی اصلاح میں صرف ہوتو اس کے غرق معمولی فوائد سامنے آئیں گے۔ اصل ضرورت ذہن میں تبدیلی اور مدارس کے بند ماحول میں قدرے کھلا پن اور پھیلاؤ لانے کی ہے۔ سماجی اصلاح کے لیے تبلیغی جماعت کا طریقہ کار سب سے زیادہ کار آمد اور مفید ہے۔ تبلیغی جماعت کی کامیابیوں کا مدارس اس بات پر ہے کہ وہ تقریر وں اور تحریروں سے زیادہ انفرادی تعامل کو بنیاد بناتے ہیں اور اس غرض سے گھر گھر اور محلے محلے چکر کاٹتے ہیں۔ دھتکارے جاتے ہیں اور لعن طعن سنتے ہیں لیکن بہر صورت لوگوں کے ساتھ افہام و تفہیم کی راہ ڈھونڈنکالتے ہیں ۔ ہونا چاہئے کہ علاقے کے تمام قابل ذکر مدارس میں اصلاح و معاشرہ کمیٹی قائم ہو اور ان کمیٹیوں کی ایک وفاقی انجمن ہو۔ ان کمیٹیوں کے ارکام علاقے کے انہی لوگوں کو بنانے کی کوشش کی جائے جو معاشرے کو غلط راہ پر ڈالنے کے عمل میں زیادہ شریک ہیں۔ اس میں نوجوان بھی ہوں اور عمر دراز افراد بھی۔ خاص طور پر امرا اور بااثر تعلیم یافتہ لوگ غور کرنے کی بات ہے کہ تبلیغی جماعت نے عوام الناس اور تعلیم یافتہ (عصری علوم کے حاملین) سے اپنے کام میں بھرپور مدد لی ہے۔ اس کے لئے اس کا بنیادی طریقہ کار یہ رہا کہ اس نے تبلیغی گشت کے کام کو ہر فرد کا ذاتی کام بنادیا یا دوسرے لفظوں میں اسے اس حکمت اور بہتر طریقہ کار سے پیش کیا کہ وہ کام ہر چھوٹے بڑے کو اپنا کام نظرآنے لگا۔ اس میں ہر طبقے کا ہر طرح کی صلاحیت رکھنے والا ہر عمر کا آدمی اپنا حصہ نبھا سکتا ہے۔ سماجی اصلاح کے لئے اسی پیٹرن کی ضرورت ہے۔ اس میں عملی وسعت کا ایک اہم پہلویہ ہے کہ اس میں غیر مسلم بھی بہ آسانی شریک ہوسکتے ہیں۔ کیوں کہ سماج کے بہت سے مسائل مشترکہ نوعیت کے ہیں اور دونوں فرقوں کے لوگوں کے لئے فکر وتشویش کا باعث ہیں۔ سماج اصلاح کے کام میں دینی مدارس کے اساتذہ کا رول اس لئے زیادہ اہم اور نتیجہ خیز نظر آتا ہے کہ یہ لوگ اس سیاست سے کوسوں دور ہیں ، جس نے مدارس سے باہر ملی میدانوں میں کام کرنے والی بہت سی مذہبی اور نیم مذہبی تنظیموں کو سیاست کا آلہ کار بنادیا ہے۔ خودان میں کام کرنے والے علماء ہوں یا غیر علما ۔ یہ سمجھنا صحیح نہیں ہوگا کہ مدارس کے اساتذہ کے سماجی اصلاح کے کام میں مشغول ہونے سے ان کی اصل تدریسی زندگی متاثر ہوگی۔ تدریسی بوجھ کو کم کرنے کے لئے اساتذہ کی تعداد بڑھائی جاسکتی ہے۔ اس طرح روزانہ یا ہفتے میں ان کے لئے اس کا م کے لئے اوقات فارغ کئے جاسکتے ہیں۔ بعض مدرسوں میں کام کے لئے مبلغین کا شعبہ کھلا ہوا ہے ۔ لیکن ان کے جائزے سے یہ بات معلوم ہوتی ہے کہ وہ محض چند پیشہ ور قسم کے تقریر کرنے والوں پر مشتمل ہوتا ہے۔ اس میں بالعموم پر زور تقریر کی صلاحیت رکھنے والوں کو لیا جاتا ہے۔ حقیقت میں یہ معیاری غلط ہے۔ تقریر کی صلاحیت تو اکثر اوقات نہایت معمولی صلاحیت کے لوگوں کے اندر پیدا ہوجاتی ہے ۔اورآج کل مقررین کی صفوں میں ایسے ہی لوگوں کی کثرت ہے۔ اصلاح سماج کے تعلق سے جس نکتہ نظر اور طریق عمل کو سامنے لانے کی ضرورت ہے وہ تدریس اصلاح کا نکتہ نظر ہے۔ اس طریقہ کار میں اصلاح کا عمل تدریس کا جزولازم قرار پاتا ہے۔

سماجی اصلاح کی کوششوں کے حوالے سے آخری بات یہ ہے کہ ان کے موضوعات کیا ہوں؟ کیوں کہ اس میں بہت زیادہ ابہام پایا جاتا ہے۔ اس وقت عام طور صرف چند معاشرتی خرابیوں پر ارتکاز کا رجحان ہے جیسے: عورت کے حقوق کی پامالی ، طلاق کا غلط استعمال ، وراثت سے اس کی محرومی ، جہیز کالین دین یا ہندووانہ (دوسرے لفظوں میں مشرکانہ) رسوم ورواج سے معاشرے کو پاک کرنے کی کوشش۔ یہ سارے کام اہم ہوتے ہوئے بھی اہمیت سے دوسرے امور کے مقابلے میں غیر اہم ہیں۔ مسلم معاشرے کی خرابیوں کی اصلاح اور اس کو ترقی کی راہوں پر گامزن کرنے کے لئے سب سے پہلی چیز یہ ہے کہ مسلم عوام و خواص کے اندر تنقید ذات اور خود احتسابی کا مزاج پیدا کرنے کی کو شش کی جائے۔اجتماعی طور پر جس کی شدید کمی مسلمانوں میں پائی جاتی ہے۔اس کمزوری نے حقیقت پسندی کی تقریباً تمام راہوں کو ان کے سامنے مسدود کردیا ہے۔ بہت سی اخلاقی خرابیوں کے مقاملے میں مسلم معاشرہ دیگر معاشروں کے مقابلے میں زیادہ سیاہ تصویر پیش کرتا ہے۔ امانت ، سچائی، صفائی معاملہ ، نرم مزاجی وخوش خلقی ، پڑوسیوں کے ساتھ حسن سلوک ، انسانی بنیادوں پر دوسروں کے کام آنا ، دوسروں کے مذہبی جذبات کی رعایت ، خدمت خلق جیسے بہت سے معاملات میں مسلمان دوسروں کے مقابلے میں بہت زیادہ پچھڑے ہوئے ہیں۔

 پاکستان کے ایک مصنف کی یہ عبارت قابل غور ہے ’’ اسلام کا عدل اجتماعی اور خلافت راشد ہ تو افلاک کی باتیں ہیں، ہم ان ارضی اخلاقیات تک بھی رسائی حاصل نہ کرسکے جو دنیا میں متفق علیہ ہیں اور جن پر اسلام سے نابلد اقوام بھی صدیوں سے عمل پیرا ہیں۔‘‘(منظور الحسن :ماہنامہ اشراق ، لاہور ، اکتوبر 2002) ۔ ایسا لگتا ہے کہ ہمارے سماج میں انفرادی و اخلاقی اجتماعیات کا ڈھانچہ سرے سے موجود ہی نہیں ہے۔ جہاں تک مذہب کا معاملہ ہے تو حقیقت یہ ہے کہ مذہبی تقاضوں کو صرف چند تعبدی اور ظاہری اعمال ورسوم میں محصور تصور لیا گیا ہے۔فرد کی اخلاقی اصلاح وتعمیر وہ بنیادی عمل ہے، جس کے بغیر معاشرے کی اصلاح کا کوئی بھی منصوبہ کامیاب نہیں ہوسکتا ۔ اس لیے اصلاح پر محنت کی ضرورت ہے۔ اور حقیقت یہ ہے کہ دینی مدارس کے اساتذہ اس میں اہم رول ادا کرسکتے ہیں بشر طے کہ وہ اس بات کے قائل ہوسکیں کہ ان کی دینی وسماجی ذمہ داریوں کا دائرہ صرف مدارس کی چہار دیواری تک محدود نہیں ہے۔

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/religious-teachers-of-madarsas-and-their-responsibility--دینی-مدارس-کے-اساتذہ-کا-سماجی-رول/d/3948

 

Loading..

Loading..