New Age Islam
Tue Sep 22 2020, 11:31 AM

Urdu Section ( 6 Feb 2011, NewAgeIslam.Com)

Maulana Vastanvi and Darul Uloom Deoband: What is the controversy? دارالعلوم کا آشوب کیا ہے؟

BY Syed Mansur Agha

[Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk]

The storm the Qasmi fraternity has raised over a statement attributed to Maulana Vastanvi which the reporter Yagnesh Mehta made news and was published by the Times of India (that regularly publishes mischievous news about Muslims), reminds me of an incident related to a very famous religious scholar Sheikh Ahmad Raheem Mulla Jeevan which was published in the mouthpiece of Jamiatur Rashad Azamgarh, Al Rashad during the editorship of Maulana Mujibullah Nadvi. Maulana was a very reliable alim.  Maulana Syed Abul Hasan Ali Nadvi was among his great admirers.  This incident was noted by Maulan Nayeem Siddeequee Nadvi and included in his book ‘Iman ke tabanda nuqoosh’ (Illuminating imprints of faith) under the title ‘Musalman Jhoot nahin bol sakta’( A Muslim can never tell a lie). Maulana Nayeem’s ancestral home is in Budhana. His mother belonged to Kerana. He was brought up in Azamgarh where his father was associated with the Maarif monthly. Maulana belongs to Deobandi sect and had especial spiritual relationship with the caliph of Hadhrat Ashraf Ali Thanvi, Abrarul Haq Alvi. He is a very cautious writer. I wrote these introductory lines to lend reliability to the incident.

Mullah Jeevan was the teacher of Aurangzeb Alamgir. The king kept him in high esteem. His book Nooral Anwar is a reliable book on jurisprudence. The incident is of the time he was staying in Jaunpur. One day one of his students came looking nervous and said to him,” Something very drastic is going to happen today. The bridge over the Gomti River is very angry. It says that people trample it under their feet but no one cares for it. So it says that he will shift to Jaunpur.” Mulla Jeevan asked him, “Then what happened”. The student said, “He is asking for Rs 100 to stay there, I have persuaded him to stay on with great difficulty. If he is not given the money, he will go.” Mulla Saheb said,’This is a very big amount. Try to lower the amount.” The cunning student went away and then came back after some time and said to Mullahji, “It has agreed on Rs 50”. Mullah Jeevan said,” This is also much.” After a little bargaining the student said, “It cannot be less that Rs 10”. Mullah Jeevan said, “OK, it can be given. He then arranged for Rs 10. The student went away and came back smiling and said,” The bridge has agreed.” Mullah Jeevan narrated this incident in his assembly in the presence of the student. People asked him how he believed that the bridge could move and talk. Mullah Jeevan said, “I understand that but how can I believe that a Muslim student can tell a lie? So I believed my student to be true and considered my understanding to be wrong.”

You may be surprised to think what relation it can have with Maulana Vastanvi. In spite of realising the conceit of the student Mullah Jeevan believed his student because he believed that a Muslim could not be a liar. But today the situation is that not a student but a religious scholar who is respected by millions of people by dint of his words, deeds and actions and is the patron of more than one lakh seventy thousand ‘guests of the Prophet (PBUH)’, is the supervisor and advisor of many madrasas and has been a member of the Majlis-e-Shoura for the last twelve years and has devoted himself to the promotion of the faith has been saying that his statement that was published in the newspaper was distorted. But some self styled saviours of Darul Uloom insist that they will not accept it. ‘In our view, the reporter of the newspaper Yagnesh Mehta is true and an aalim like Mualana Vastanvi is a liar. So if he does not go on his own then he should be ready to face the repercussions. We will not allow him to stay.’   God forgive us. We can see the difference in our character. It can be understood from the attitude of the Qasmi brothers in the context of the incidents how responsible we are for the schism and chaos among the community. It would be better that these gentlemen who have been publishing their ads along with their photographs (which do not have any Shariah based logic) should have done their own introspection instead of holding Maulana Vastanvi accountable. The reasons that are being cited for the resentment against Maulana Vastanvi: First, he reportedly said something praising Modi.

Secondly, he presented a memento containing the picture of some Hindu deities to a minister. The third rumour has been spread that he is an ‘outsider’. There is no doubt that during the rule of Modi and probably under his patronage, the worst Gujarat massacre was carried out. Instead of following his ‘raj dharm’ he preferred the Swayam Sevak dharm that is, the slaughter of Muslims. Muslims are still subjected to bias and prejudice in Modi’s Gujarat. That should be admitted. Maulana Vastanvi has also done that. But forgive me if I say that this is the horrible face of Modi.

The second aspect of his personality is his administrative prowess and his developmental work. If someone mentions his second aspect, we should not lose temper and call him a liar as it will be an injustice to him. Our community is unable to understand that we have turned away from the teachings of the Prophet (PBUH) and consider our egotistical approach as Islamic approach. Again I recall here a golden chapter of the life of the Prophet (PBUH). During the initial stage of Islam when the total number of Muslims was 26 or 27, Abu Jahl and Umar bin Khattab were the greatest enemies of Islam and persecuted the Muslims the most. Albeit one aspect of their personalities was such that Hadhrat Muhammad (PBUH) prayed to God,”O God, accept either Abu Jahl bin Hasham or Umar bin Khattab for Islam and give strength to Islam through him.” There is a lesson for us in the prayer and that is we should not ignore the positive aspect of our enemies. In spite of cursing them we should try to follow in the footsteps of the Prophet (PBUH) practising patience and tolerance. Hadhrat Umar (R.A.) is the first person who planned to kill the Prophet (PBUH) and announced his intention. What was his (PBUH) reaction when Hadhrat Umar reached his door to kill him with his sword in hand? He did not drive him out but greeted him and asked, “Umar, what has brought you here?” This incident has been narrated in books of seerat in detail. What was the effect of the Prophet (PBUH)’s treatment of him? His whole existence shuddered and he offered himself for the service of Islam. With God’s blessings, the worst enemy of Islam became a friend of Islam. We do not expect anything good from Modi but we have this belief that losing hope in God is kufr. We believe that God does not become indifferent to us. You observed how God awakened the conscience of Aseemanand. We should rather pray that God raises another Abdul Kalim from among us who can awakens the conscience of Modi too. I humbly request the Qasmi brothers who are hell bent on creating disturbance in the Darul Uloom to introspect their actions and decide if their actions reflect the character of the Prophet (PBUH) or of the unfortunate people whose swords are tinged with the blood of Hadhrat Ali, Hadhrat Usman and Hadhrat Umar. The issue of the picture on the memento is really serious. The very first hadith of Bukhari which is also Hadith Qudsi and defines Islam and faith on the whole says, ‘Innamal Amal Balinyat’. What does that mean? The Prophet (PBUH) himself has explained it. We stand before the Kaaba and offer namaz and supplicate before it. The detractors say that we worship the Kaaba which is a lie. They see the obvious and do not see our intentions. How can one think without Satan creating doubt in his mind that the person who is busy giving religious education to about two lakh students will become guilty of shirk by merely holding a paper that has a picture on it. The act of worshipping an idol has also a specific procedure which is not observed here. We exchange papers containing pictures every day. Every note has some or the other picture on it with which we offer namaz. The newspapers we buy have many pictures on it. Many a time there is very little time to take a decision and we act as a courtesy. We think that Maulana Vastanvi could have found a way out if had known in advance the memento had a picture on it. What happened unintentionally should be ignored. It does not have any bearing on his administrative abilities.

The third objection is that Mualana Vastanvi is not a Deobandi. I am afraid this kind of bias has already been disapproved of by the Prophet (PBUH) in his sermon of the Last Hajj. If an ajmi (non-Arab) did not have any superiority over and Arab, how can a Deobandi have superiority over a non-Deobandi. This way of thinking is a negation of the Islamic thought. Mualana Vastanvi has been associated with the Darul Uloom Deoband for the last 12 years. The only difference is that he has now become the Vice Chancellor. That has no basis for opposition. The concept that the administration and management of Darul Uloom should remain in the hands of the Qasmis is illegitimate. Is the organisation a legacy of the whole community or a property of the Qasmis? Therefore, this concept is against the spirit of Islam. It can be asked how can the maulanas who published their photos with their ads violating the fatwas of Darul Uloom the inheritors of Darul Uloom. This furore is also against the teachings of the Quran. The Quran has clear instructions on collective issues. It says, “They solve their issue through consultation.” The Shoura has pronounced its decision after much thought. It should be respected without creating trouble. If the decision was not satisfactory, the members of the shoura should have been consulted. God says,”Atiullaha wa atiur Rasool wa oolul amr minkum”. In Darul Uloom’s context, Shoura is the Oolul amr. Everybody associated with Darul Uloom should accept it. Creating trouble and schism among the community and giving an opportunity to others to laugh at us cannot be appreciated. People who do not obey Allah, his Prophet (PBUH) and oolul amr and instead obey their own self, commit shirk according to Sheikh Ali Hajweri in his book Kashful Mahjoob, Kemiyaye Saadat of Imam Ghazali, Taqwiatul Iman by Shah Md Ismail Shaheed and many other exponents of shariat. May Allah illuminate their graves with his light! God has kept open the door of repentance for his devotees and so they should revert back to him as soon as possible.

Source: Hindustan Express, New Delhi

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/maulana-vastanvi-and-darul-uloom-deoband--what-is-the-controversy?--دارالعلوم-کا-آشوب-کیا-ہے؟/d/4077

دارالعلوم کا آشوب کیا ہے؟

سیّد منصور آغا

مولانا غلام محمدو ستانوی سے منسوب ایک بیان پر  ، جسے یکنیش مہتہ نام کے ایک رپورٹر نے خبر بنایا اور ٹائمز آف انڈیا نے چھاپا۔ (جو مسلمانوں کے تعلق سے شرانگیز رپورٹیں چھاپتا رہتا ہے)بعض ‘قاسمی’ حضرات نے جو آشوب اٹھایا اس پر مجھے 16ویں صدی کے معروف عالم ، فقیہ، مفسر اور برگزیدہ ہستی شیخ احمد رحیم اللہ ملا جیون ؒ کا ایک واقعہ یاد آگیا جو مامعۃ الرشاد اعظم گڑھ کے ترجمان ‘الرشاد’ میں اس کے بانی مدیر مولانا مجیب اللہ ؒ ندوی کی زندگی میں شائع ہوا تھا۔ مولانا بلند پایہ ثقہ عالم تھے۔ مولانا سید ابوالحسن علی میاں ندویؒ ان کے بڑے قدردان تھے ۔ اس واقعہ کو مولانا نعیم صدیقی ندوی نے قلم بند کیا تھا اور اپنی کتاب ‘ایمان کے تابندہ نقوش’ میں  ‘لیکن مسلمان جھوٹ نہیں بول سکتا’ عنوان سے شامل کیا ہے۔ مولانا نعیم مدظلہ کا آبائی وطن قبضہ بوڑھا نہ ہے ۔ ان کی والدہ کیرانہ (ضلع مظفر نگر) سے تھیں۔ خود ا ن کی پرورش اعظم گڑھ میں ہوئی جہاں ان کے والد ماہ نامہ ‘معارف’ سے وابستہ تھے ۔ مولانا کا مسلکی تعلق علمائے دیوبند سے اور خاص تعلق حضرت تھانویؒ کے خلیفہ اجل شاہ ابرارلحق حقیؒ سے ہے۔ وہ بڑے محتاط اہل قلم میں ہیں۔ یہ تعارف اس لئے لکھ دیا کہ روایت کا مستند ہونا ظاہر ہوجائے۔ ملا جیونؒ اور نگزیب عالم گیرؒ کے اتالیق تھے اور بادشاہ ان کی بڑی قدر کرتا تھا۔ عجب نہیں اور نگزیب ؒ میں جو اوصاف حمیدہ تھے وہ ملا صاحب کی نظر کا ہی فیض ہوں۔ان کی تصنیف ‘نورالا نوار’ اصول فقہ کی مستند کتاب ہے۔ یہ واقعہ اس وقت کا ہے جب وہ جونپور میں مقیم تھے۔ایک دن ان کا ایک شوخ شاگر پریشان صورت حاضر ہوا او رکہنے لگا حضرت آج تو غضب ہونے والا تھا۔ ملا صاحب نے تشویش کے ساتھ پوچھا کیا ہونے والا تھا۔ طالب علم نے کہا یہ جو گومتی ندی پر پل ہے،وہ بہت ناراض ہے ۔ کہتا ہے کہ لوگ مجھے پامال تو کرتے ہیں مگر کوئی پوچھتا نہیں ۔ میں تو جونپور چھوڑ کر جارہا ہوں۔

ملا صاحب نے پوچھا کہ پھر کیا ہوا؟ طالب علم نے کہا : حضرت وہ ایک سو روپیہ نذرانہ مانگتا ہے ، میں اس کو بڑی مشکل سے روک کر آیا ہوں۔نذرانہ نہ ملا تو چلا جائیگا۔ ملا صاحب نے فرمایا: یہ تو بہت بڑی رقم ہے ، تو اس کو کم پر راضی کرو۔ مکار طالب علم چلا گیا اور آکر بولا وہ پچاس روپیہ پر راضی ہے۔ ملا جیون ؒ نے فرمایا یہ بھی بہت زیادہ ہے۔ الغرض کئی مرتبہ کے بعد طالب علم نے کہا دس روپیہ سے کم نہیں ہونگے ۔ ملا صاحب نے کہا  ہاں یہ ٹھیک ہے اور طالب علم کو دس روپیہ فراہم کردیئے ۔ طالب علم نے آکر خوشخبری سنادی ۔ پل راضی ہوگیا ۔ ملا حیون ؒ نے یہ واقعہ طالب علم کی موجودگی میں اپنی مجلس میں سنایا تو ایک شخص نے کہا: حضرت بھلا کہیں ایسا ہوتا ہے ، کیا آپ سمجھتے ہیں پل بھی اس طرح کی باتیں کرتا ہوگا؟ملا جیونؒ نے فرمایا ،ہاں بھائی یہ بات تو میں بھی سمجھتا ہوں مگر کہ یہ کیسے یقین کرلوں کہ ایک مسلمان طالب علم اور جھوٹ بولے؟اس لئے میں نے طالب علم کو سچا جانا اور اپنے گمان کو غلط سمجھ لیا۔’آپ حیران نہ ہوں گے کہ اس واقعہ کا مولانا وستانوی کے معاملہ سے کیا تعلق ہے؟ تو عرض ہے کہ ملا جیون ؒ کے علم دین اور ایمان کا تقاضا تو یہ تھا کہ ایک مسلمان کو ، اس کے فریب کو بھانپتے ہوئے بھی ، جھوٹا نہ کہیں اور اس کی بعید ازقیاس بات کو بھی اس لئے قبول کرلیں کہ مسلمان ہے، جھوٹا نہیں ہوسکتا  ، لیکن اب یہ عالم ہے کہ طالب علم نہیں ایک عالم دین ، جو اپنے کردار گفتار اور عمل کی بدولت لاکھوں میں محترم ہے، ایک لاکھ ستر ہزار سے زیادہ ‘مہمان رسول ’ کا مربی وسرپرست ، متعدد مدارس کا معاون اور نگراں ، دارالعلوم دیوبند کی مجلس شوریٰ کا 12سال سے رکن ہے، جس نے خود کو ہمہ وقت قال اللہ اور قال رسول کا غلغلہ بلند کرنے ، کرانے کیلئے وقف کردیا ہے، یہ کہہ رہا ہے کہ اخبار میں اس بیان جس طرح شائع ہوا ہے، ہر گز اس کی منشا وہ  نہیں تھی ،مگر دارالعلوم کے کچھ خود شاختہ پاسپانوں کا اصرار ہے ، ہم تو مانیں گے ۔ ہماری نظروں میں انگریزی اخبار اور ا س کا رپورٹر یگنیش مہتہ تو سچا ،پاکباز ،خداشناس ہے اور عالم فاضل مولانا وستانوی جھوٹا ہے۔

اب اگر خود چھوڑ کر نہیں جائے گا ، تو فتنہ فساد کا مقابلہ کرنے کے کیلئے تیار رہے کہ ہم اسے نکتے نہیں دیں گے ۔ استغفر اللہ۔ دیکھئے کردار میں کیسا فرق آگیا ہے؟ ان واقعات کے پس منظر میں مذکورہ ‘قاسمی’ حضرات کی روش پر جس قدر غور کیا جائےیہ بات سمجھ میں آتی چلی جاتی ہے کرامت کے خلفشار اور انتشار کیلئے ہم خود کتنے ذمہ دار ہیں۔ اچھا ہوتا یہ صاحبان جو اپنی تصویر وں کے ساتھ جس کا کوئی جواز شرعی نہیں) اشتہارات شائع کروارہے ہیں وہ مولانا وستانوی کا محاسبہ کرنے کے بجائے خود اپنا احتساب  کرتے ۔مولانا وستانوی سے ناراضگی کی تین وجوہ ظاہر کی جارہی ہیں۔ اول یہ کہ انہوں نے مبینہ طور سے مودی کی تعریف میں کچھ کلمات کہے دوسرے یہ کہ کسی تقریب ان سے کسی وزیر کو جو سپاس نامہ دلوایا گیا اور اس پر کسی دیوی دیوتا کی تصویر بھی تھی۔ تیسرا شوشہ یہ چھوڑا گیا ہے وہ باہر کے آدمی ہیں۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ مودی کے راج میں گمان غالب یہ ہے کہ ان کی شہ پر مسلمانوں کا بدترین قتل عام ہوا ۔ انہوں نے وزیر اعلیٰ کا ‘راج دھرم’ نبھانے کے بجائے ، سنگھ سے اپنی وفاداری اور سیوم سیوک کے دھرم کو ترجیح دی، جس کا مقصد وجود ہی مسلمانوں کا قتل وغارت ہے۔ مودی کے گجرات میں مسلمان آج بھی شدید مشکلات اور عصبیت سے دوچار ہیں۔اس کا اعتراف کیا جانا چاہئے ۔ وستانوی صاحب نے بھی کیا ہے لیکن گستاخی معاف یہ مودی کی شخصیت کا مہیب پہلو ہے۔ اس کی شخصیت کا ایک دوسرا پہلو اس کی انتظامی صلاحیت اور اس کی ترقیاتی کام ہیں۔ اگر کوئی شخص اس دوسرے پہلو کا ذکر کرتا ہے تو اس پر آپے سے باہر ہوجانا اور اس کو جھوٹا کہنا قرین انصاف نہیں۔ یہاں پھر سیرت رسولﷺ کا ایک زریں باب یاد آتا ہے۔ اوائل اسلام میں ، جب ابھی مسلمانوں کی تعداد 26یا 27تھی ابو جہل اور عمر بن الخطاب کا شمار اسلام کے بدترین دشمنوں او رمسلمانوں کو اشد ترین اذیتیں پہنچانے والوں میں ہوتا تھا۔ البتہ ان کے کردار کا ایک پہلو ایسا بھی تھا کہ رسول ﷺ نے دعا فرمائی:‘‘ اللھم اعز الا سلام باحبہ الرجیلن الیک بعمر بن الخطاب اوبابی جہل بن ھشام ’’۔ (یعنی اے اللہ عمر بن خطاب یا ابوجہل بن ہشام میں سے جو تجھے پسند ہو، اس کو اسلام کی توفیق دے اور اس کے ذریعے اسلام کو عزت وقوت عطا فرما)۔ہمارے لئے اس دعا میں بڑی نصیحت ہے۔ وہ نصیحت یہ ہے کہ دشمنوں کی دشمنی ہمیں ان کی شخصیت کے صالح پہلوؤں کا منکر نہ بنادے۔ ہم ان کو کوسنے کے بجائے اسی صبر وتحمل اور بربادی پر چلنے کی کوشش کریں جس کے نقش آقائے نامدار نے ہمارے لیے چھورے ہیں۔ جناب عمر شخص تھے جنہوں نے سب سے پہلے قتل رسول ؐ کا ارادہ کیا اور اعلان کے ساتھ کیا ۔ اور جب وہ اللہ کے رسولؐ کے قتل کے ارادے سے گھر سے نکلے اور شمشیر برہنہ دار  ارقم پہنچے تو آپؐ نے کس کردار کا نمونہ پیش فرمایا؟ ان کو دھتکار نہیں دیا۔ بلکہ خود بڑھ کر ان کی پذیرائی کی اور سوال کیا:عمر کس ارادے سے آئے ہو۔

کتب سیر میں یہ واقعہ تفصیل سے بیان ہوا ہے۔ رسول اللہ ؐ کے اس رویہ کا عمر پر کیا اثر ہوا؟ ان کے وجود میں لرز ہ طاری ہوگیا اور انہوں نے خود کو اسلام کی خدمت کیلئے پیش کردیا۔ اللہ رحمت یوں جوش میں آئی کہ جو بدترین دشمن تھا وہ اسلام کی اور مسلمانوں کی طاقت بن گیا ۔ ہم نریندر مودی سے ہر گز خوش گمان نہیں ہیں، البتہ اللہ کی مصلحت اور رحمت سے بدگمانی کو کفر سمجھتے ہیں۔ ہمارا ایمان ہے کہ ہر گز ہرگز رحمت الہٰی کے سوتے خشک نہیں ہوگئے۔ابھی آپ نے دیکھا اللہ نے سوامی اسیمانند کے ضمیر کو کس طرح بیدار کیا ہے؟ ہماری تو اللہ کے حضور یہ دعا ہونی چاہئے کہ کوئی دوسرا کلیم ہم میں پیدا کر جو مودی کے مردہ ضمیر کو بھی اسی طرح جگادے ۔ میں بہت ہی لجاجت کے ساتھ ان قاسمی حضرات سے ، جو دارالعلوم میں شورش برپا کرنے پر آمادہ ہیں گزارش کرتا ہوں کہ وہ اپنی روش کا محاسبہ کریں کہ آیا وہ سیرت رسولؐ کا عکس پیش کرتی ہے یا ان بدبختوں کا جن کی تلوار یں حضرت عمر فاروقؓ ،حضرت عثمان غنیؓ اور حضرت علیؓ کی خون سے آلودہ ہیں؟سپاس نامے پر تصویر کا معاملہ واقعی سخت ہے لیکن بخاری شریف کی پہلی ہی حدیث ، جو حدیث قدسی بھی ہے اور ایمان اور اسلام کی جامع ترین تعریف پیش کرتی ہے، اس کے جزو : ‘انما الا عمال بالنبات ’ کا کیا مطلب ہے؟ رسول ﷺ نے خود اس کی وضاحت فرمادی ہے۔ ہم خانہ کعبہ کے سامنے کھڑے ہو کر نماز پڑھتے ہیں، اس کے آگے سجدہ ریز ہوتے ہیں۔ معترض جھوٹ کہتے ہیں کہ کعبہ کو سجدہ کیا۔ وہ صرف ظاہر پر قیاس کرتے ہیں، نیت کو نہیں دیکھتے ۔ جو شخص پونے دولاکھ بچوں کو علم دین سے آراستہ کرنے میں لگا ہے، اس کے بارے بغیر شیطان کے ڈالے کیس کے دل میں یہ گمان کیسے سما سکتا ہے کہ ایک تصویر چھپا ہوا کاغذ ہاتھ میں لینے یا کسی کو دینے سے وہ شرک کا مرتکب ہوگیا؟ مورتی کی پوجا کا ابھی ایک ظاہر طریقہ ہے ، جس کا اس واقعہ میں شائبہ تک نہیں۔ تصویر چھپے کاغذوں کا لین دین تو ہم ہر وقت کرتے ہیں۔ نوٹ پر کوئی نہ کوئی تصویر چھپی ہوتی ہے جن کو الگ کئے بغیر ہم نماز پڑھتے ہیں۔ جو اخبار ہم خریدتے ہیں بسا اوقات اس میں بھی قابل اعتراض تصویر ہوتی ہے۔ کوئی نہیں سمجھتا کہ تصویر خرید نے یا گھر میں رکھنے کا مرتکب ہوگیا۔یقیناً ایسے مواقع سے گریز کیا جانا افضل ہے۔ لیکن بسا اوقات ایسی صورتحال پیدا ہوجاتی ہے جس میں زیادہ سوچنے سمجھنے کا موقع نہیں ہوتا او رمروّت غالب آجاتی ہے۔ ایسے مواقع پر مصلحتاً گریز (فتنہ جعفر یہ کے مطابق تقیہ) کی گنجائش ہوسکتی ہے۔

ہمارا گمان ہے کہ اگر مولانا وستانوی کو پہلے سے یہ معلوم ہوتا کہ سپاس نامہ پر کوئی قابل تصویر چھپی ہے تو وہ کسی طرح اس سے بچنے کی راہ نکال لیتے۔ اب غیر عمداً جو ہوگیا اس کا نظر انداز کیا جانا چاہئے۔ اس سے ان کی انتظامی صلاحیتیں توز ایل نہیں ہوگئیں ، جس پر اس قدر ہنگامہ ہے۔ تیسرا اعتراض یہ ہے کہ مولانا وستانوی دیوبندی نہیں ہیں ہمیں اندیشہ ہے کہ یہ اعتراض نسلی اور خاندانی عصبیت کے اس زمرے میں سے ہیں جس کی نفی اللہ کے رسولؐ نے اپنے خطبہ حج الوداع میں کردی ہے۔ اگر کسی عربی کو کسی عجمی پر فضیلت نہیں تو کسی دیوبند ی فاضل کو کسی غیر دیوبندی پر فضیلت کیسے ہوسکتی ہے؟ یہ انداز فکر صریحا اسلامی مزاج کے منافی ہے۔ مولانا وستانوی 12سال سے دارالعلوم کی شوریٰ کے رکن کی حیثیت سے اس کے اہتمام سے وابستہ ہیں۔ فرق صرف اتنا ہوگیا ہے اب اس کے صدر نشیں ہوگئے ہیں۔ اس پر اعتراض کا کوئی جوازنہیں۔ یہ تصور بھی باطل ہے کہ دارلعلوم دیوبند کا انتطام و انصرام صرف ان لوگوں سے وابستہ رہنا چاہئے جو اس کے طالب علم رہ چکے ہیں ، یہ ادارہ صرف دیوبند یوں یا قاسمیوں کی میراث ہے یا پوری ملت اسلامیہ کی امانت ہے۔ چنانچہ اخلاقاً ،قانوناً یہ دلیل گمراہ کن اور روح اسلام کے منافی ہے۔ سوال کیا جاسکتا ہے کہ جن قاسمی حضرات نے اخباروں میں اپنے پیسے خرچ کر کے اپنی تصویر یں چھپوائیں اور اس طرح خود دارالعلوم کے فتوے کی پامالی کے مرتکب ہوئے ، وہ اس کی روایتوں کے امین ہونے کا دعویٰ کیونکر کرسکتے ہیں؟ ۔ ہنگامہ قرآن کی تعلیمات کے بھی سراسر منافی ہے۔ اجتماعی معاملات کیلئے قرآن میں واضح ہدایات موجود ہیں۔ فرمایا گیا: وامر ہم شوری ٰ بینھم۔(وہ اپنے معاملے باہم مشورے سے طے کرتے ہیں)۔ شوریٰ نے غور وفکر کے بعد ایک فیصلہ صادر کردیا۔ ایمان کا تقاضا ہے کہ اس پرہنگامہ آرائی نہ کی جائے بلکہ اسےقبول کیا جائے۔ البتہ اگر اس پر دلجمعی نہیں ہورہی تو پھر احسن طریقے سے ارکان شوریٰ سے رجوع کیا جاتا ۔ اللہ کا حکم ہے: اطیعو اللہ و اطیعو الرسول و اولی الا مر منکم دارلعلوم کے تعلق سے اولی الا مراس کی شوریٰ ہے۔ اس سے وابستہ ہر شخص پر لازم ہے کہ اس کے فیصلہ کو قبول کرے۔ اس پر ہنگامہ آرائی اور اشتہار بازی کر کے ملت میں انتشار اور غیروں کو مضحکہ اڑانے کا موقع فراہم کرنا اور دعویٰ کرنا کہ ہم ہی اصلا دین مبین کے اور دارالعلوم کے سچے امین اور محافظ ہیں، بڑا مغالطہ ہے۔ جو نفوس اللہ کی، اس کے رسول کی اور اولی الامر کی پیروی نہیں کرتے وہ اپنے نفس کی پیروی کرتے ہیں اور اپنے نفس کی پیروی باجماع امت شرک کے زمرے میں آتی ہے، جیسا کہ شیخ سید ابو الحسن علی ہجویریؒ (داتا گنج شاہ)نے ‘کشف المحجوب’ میں امام غزالیؒ نے کیمیائے سعادت ، میں شاہ محمد اسمٰعیل شہید نے تقویۃ الایمان میں اور تسلسل کے ساتھ جملہ مفسرین اور شناوران شریعت اور طریقت نے واضح فرمادیا ہے۔ اللہ ان کی قبروں کو نور سے بھردے۔ اللہ تعالیٰ کا بڑا فضل اور کرم ہے کہ اس نے اپنے بندوں کیلئے توبہ واستغفار کا دروازہ کھلا رکھا ہے اور اس میں جلدی کرنا چاہئے۔

بشکریہ ہندوستان ایکسپریس ، نئی دہلی


URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/maulana-vastanvi-and-darul-uloom-deoband--what-is-the-controversy?--دارالعلوم-کا-آشوب-کیا-ہے؟/d/4077


 


Loading..

Loading..