New Age Islam
Thu Apr 22 2021, 09:31 AM

Urdu Section ( 3 March 2011, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Where is Pakistani Society Going? پاکستان معاشرہ کدھر جارہا ہے؟

By Suhail Anjum (Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk)

First Salman Taseer and now Shahbaz Bhatti. Who’s next? Nobody knows. Both the leaders were killed in the last two months. Both the assassinations were committed in the name of the Prophet (PBUH)’s honour. The blasphemy laws were formulated during the reign of the former dictator Gen Ziaul Haque. Its purpose was to punish those guilty of blasphemy and ridiculing Islam. Definitely, nobody should have the right to ridicule Islam or commit blasphemy against the holy Prophet (PBUH). If anyone commits blasphemy, he must be punished. No Muslim’s faith will be affected on this issue. During the Prophet’s life, those who had ridiculed or maligned him had been punished. That’s why the Pakistani government had implemented the law to deter people from it. If anyone dares it, he should be punished. But who will give the punishment? It has a legal system. No one should be punished until proven guilty because according to Islam, killing a single innocent person is synonymous with killing the entire humanity and so nobody can be left free to kill the humanity.

The Governor of Pakistan’s Punjab was killed because he was supporting a Christian woman Asia Bibi convicted of blasphemy and had demanded changes in the anti-blasphemy laws declaring it a black law. He was even going to meet the President Asif Ali Zardari in this regard. His bodyguard Malik Mumtaz Qadri killed him on his daring bahaviour and handed himself over to the law proudly. A big section of Pakistan made him a hero so much so that when he was being produced in the court, the lawyers had greeted him. It created a furore.  While a section in Pakistan has hailed the murder terming it as a right step, the other section has condemned it. This section is of the view that no one should be allowed to take the law into his own hands. If Salman Taseer had done anything wrong, he should have been tried under law and punished if proven guilty. Any individual does not have the right to pick a gun and kill someone. It creates the danger of chaos and anarchy and poses a threat to the legal system. And if this starts happening in a country, it leads to anarchy and the society comes to the brink of destruction.

As for Shahbaz Bhatti, he was the sole Christian minister in the Federal Cabinet of Pakistan. He was the minister for minority affairs and was considered the voice of the minorities. Although he was not a senior politician but since he was a minister of cabinet rank, he had a special place. He too was against the anti-blasphemy laws and wanted changes in it because people used it for personal vendetta. He had been provided security but he was not killed by his security staff. He was returning after meeting his mother. His car was stopped on the way and he was killed. Whenever he visited his mother, he would go without his official security. Perhaps he wanted to give her the impression that his son and not a minister had come to meet her. The reports even suggest that he had demanded additional security and expressed his apprehension that he might be killed one day. The government did not provide him additional security. It says that he himself had said that he did not need additional security. However, the issue of his security too is controversial.

The Pakistani society has been divided in two camps on the assassination of Shahbaz Bhatti too like on Salman Taseer’s. The radical section is not opposing it while the civil society is condemning it. It says that Pakistan is gradually coming under the grip of religious fanatics. And if people get killed in this manner and the society remains silent, Pakistan will turn into a dumb society. As said earlier, nobody should be allowed to commit blasphemy and those doing it should be punished. But the law should take its own course whiling dealing with it. The anti-blasphemy laws do not say that anybody can kill anyone with his gun. Laws are formed for the purpose that it should be passed through a set process and the prescribed steps are taken. First an FIR should be registered, then arrest should be made, the witnesses should be made to depose and then after cross examination someone should be convicted or acquitted. The task of punishing someone is with the court and not with any organisation or any individual. Indeed if someone is committing blasphemy continuously and there is not result of raising voice against it, the government is silent, and encouraged by this silence, others also start committing this crime, then the situation is different.

Today the Pakistani society has become divided in two camps. The one is of the religious organisations and their sympathisers while the other is of their opponents, or of the self proclaimed secularists. It is the camp of the intellectuals who are opposed to religious and sectarian fanatacism.

Apart from the assassination of Salman Taseer and Shahbaz Bhatti, today the spirit of secularism and the spirit of tolerance is lacking. There is left no room for constructive and serious dialogue. If someone opposes any religious group, the group instead of countering his allegations with the help of logic and arguments, replies with guns and klashnikovs. The religious elements have also made the guns their tools. Non-liberalism and intolerance is gaining ground. There is also no scope for co-existence. Humility and refraction has become a thing of the past. Extremism and aggression has gained currency. Sectarian extremism is also at its peak. There is no guarantee for the security of the procession of any sect. Now the situation has come to such a passé that the religious processions and rallies are protected with klashnikovs.

One of the allegations against Islam is that it has spread with sword. If this trend continues, the allegation will become true and no one will be able to defend it. The instability, disintegration and the lack of direction Pakistani society has been suffering from is in the interests of neither the religious circles, nor of the ruling class nor of those who claim to be intellectuals. The events will have its impacts on India too and the whole region will go into anarchy. If the rulers of Pakistan did not take this seriously and the elements that do not believe in the rule of law are left alone, it will cause havoc.

So far as the punishments under the ant blasphemy laws are concerned, nobody has yet been punished albeit; people have been killing the accused. In 1980, during the rule of Gen Ziaul Haq, this law was given more teeth and a person called Tahir Iqbal had been killed under it. In 1992, a student in Faisalabad killed a Christian Naim Maseeh. The same year a Christian Baba Banto Singh was killed with a knife. Another Christian Samuel Maseeh was killed in police custody in 2004. In 2008, Simon Emanuel, brother of a blasphemy accused Yunus Tasadduq was killed in Toba Tek Singh. In 2009, an accused Robert was killed in police custody. In 2010, Rasheed and Sajid Emanuel were killed in Faisalabad. Salman Taseer was killed in January and Shahbaz Bhatti was killed in March.

However, the Pakistani society is going through a critical phase and the intellectuals, journalists and writers are distressed in the circumstances. The religious people are not happy with this situation. It is not good either for Pakistan or for this region.

Source: Jadeed Mail, New Delhi

URL: https://newageislam.com/urdu-section/where-is-pakistani-society-going?--پاکستان-معاشرہ-کدھر-جارہا-ہے؟/d/4224

سہیل انجم

پہلے سلمان تاثیر او راب شہباز بھٹی ۔ اگلانمبر کس کا ہے کچھ نہیں کہا جاسکتا ۔ مذکورہ دونو ں رہنماؤں کا قتل دوماہ کے دوران ہوا ہے اور یہ دونوں قتل ناموس رسالت کے نام ہوئے ہیں ۔ یہ قانون پاکستان کے فوجی حکمراں جنرل ضیا الحق کے دور میں وضع کیا گیا تھا اور اس کا مقصد ان لوگوں کو سزادینا تھا جو توہین رسالت کے مرتکب ہوں اور جو اسلام کا مضحکہ اڑائیں ۔ یقیناً نہ تو کسی کو اسلام کا مضحکہ اڑانے کی اجازت ملنی چاہئے اور نہ ہی کسی کو اسکی اجازت ملنی چاہئے کہ وہ رسالت مآب صلی اللہ علیہ وسلم کو طنز وتضحیک کا نشانہ بنائے۔ اگر کوئی توہین رسالت کرتا ہے تو اس کو اس کی سزا بہر حال ملنی چاہئے۔ اس بارے میں کسی بھی مسلمان کا ایمان متزلزل نہیں ہوگا ۔اللہ کے رسول ؐ کے زمانے میں بھی جن لوگوں نے آپ کا مذاق اڑایا تھا ان کو اس کی سزا ملی تھی ۔ اسی لئے پاکستانی حکومت نے یہ قانون وضع کیا تھا کہ کوئی اس کی جرات نہ کرسکے ۔اگر کوئی کرے تو اسے اس کی سزابھی ملے۔ لیکن سزا کون دے گا؟ اس کا ایک قانونی نظام ہوتا ہے۔جب تک کسی کا جرم ثابت نہ ہو جائے اسے سزا نہیں ملنی چاہئے ۔ کیونکہ اسلام کے مطابق ایک بے قصور انسان کا قتل پوری انسانیت کا قتل ہے اور کسی کو بھی انسانیت کے قتل کی چھوٹ نہیں ہے۔

پاکستانی پنجاب کے گورنر سلمان تاثیر کو اس لئے ہلاک کیا گیا کہ وہ توہین رسالت کی ایک مجرم آسیہ بی بی کی حمایت کررہے تھے اور ا نہوں  نے قانون ناموس رسالت کو ایک سیاہ قانون قرار دیتے ہوئے اس میں تبدیلی کا مطالبہ کیا تھا اور اس سلسلے میں وہ صدر آصف علی زرداری سے ملنے والے تھے۔ ان کی اس ‘‘جرات بیجا’’ پر ان کے ہی محافظ ملک ممتاز قادری نے انہیں اپنی گولیوں کا نشانہ بنایا اور اس کے بعد فخر یہ انداز میں اپنے قانون کے حوالے کردیا۔ پاکستان کے ایک بہت بڑے طبقے نے ملک ممتاز قادری کواپناہیرو بنالیا اور جب اسے عدالت میں لے جایا جارہا تھاتو وکلا نے اس کے گلے میں ہار ڈال کر اس کی عزت افزائی کی تھی۔ اس واقعہ پر کافی ہنگامہ ہوا اور  پاکستان کا ایک طبقہ جہاں اس قتل کو جائز اور حق بجانب قرار دے رہا ہے وہیں دوسرا طبقہ اس کی مخالفت اور مذمت کررہا ہے ۔ اس کا کہنا ہے کہ اس طرح کسی کوبھی قانون کو اپنے ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں ہے۔ اگر سلمان تاثیر نے کوئی غلط کام کیا تھا تو ان کے خلاف قانونی کارروائی کرنا چاہئے تھی اگروہ مجرم ثابت ہوتے تو قانون ان کو سزا دیتا ۔ کسی انفرادی شخص کو یہ حق حاصل نہیں ہے کہ وہ بندوق اٹھائے اور کسی کا بھی قتل کردے۔ اس سے قانونی اور عدالتی نظام کے منتشر ہونے کا خطرہ پیدا ہوجاتا ہے اور اگر کسی ملک میں یہی سب کچھ ہونے لگے تو پھرانار کی اور نراج کی کیفیت پیدا ہوجاتی ہے اور معاشرہ تباہی کے دہانے پر پہنچ جاتا ہے۔

جہاں تک شہباز بھٹی کا سوال ہے تو وہ پاکستان کی وفاقی کا بینہ میں واحد عیسائی وزیر تھے ۔ حالانکہ وہ کوئی بہت سینئر سیاست داں نہیں تھے لیکن چونکہ مرکزی حکومت میں وزیرتھے اس لئے ان کوایک مقام حاصل تھا۔ وہ بھی توہین رسالت کے قانون کے مخالف تھے اور ان کا کہنا تھا کہ اس میں ترمیم ہونی چاہئے ۔کیونکہ اس کی آڑ میں لوگ دوسروں سے اپنا انتقام لیتے ہیں ۔ انہیں بھی سیکورٹی حاصل تھی لیکن ان کا قتل ان کے محافظ نے نہیں کیا بلکہ وہ اپنی والدہ سےمل کر واپس جارہے تھے تو راستے میں ان کی گاڑی روکی گئی اور ان کی شناخت کر کے ان پر گولیوں کی بوچھار کردی گئی۔وہ جب بھی اپنی ماں سے ملنے جاتے تھے تو سیکورٹی گارڈ اپنے ساتھ نہیں لے جاتے تھے ۔ شاید وہ اس طرح ماں پر یہ تاثر چھوڑ نا چاہتے تھے کہ ان  سے ان کا بیٹا ملنے آیا ہے ایک وزیر نہیں ۔ ایسی بھی خبر یں ہیں کہ انہوں نے اپنی سیکورٹی میں اضافے کا مطالبہ کیا تھا اور یہ اندیشہ ظاہر تھا کہ ایک روز انہیں بھی ماردیا جائے گا۔ اس پر حکومت نے ان کی سیکورٹی میں اضافہ نہیں کیا ۔ اس کا کہنا ہے کہ انہوں نے خودہی کہا تھا کہ انہیں مزید  سیکورٹی کی ضرورت نہیں ہے ۔ بہر حال ان کی سیکورٹی کا معاملہ بھی متنازعہ ہے۔

سلمان تاثیر کے قتل کی مانند شہباز بھٹی کے قتل پر بھی پاکستانی معاشرہ دوخیموں میں تقسیم ہوگیا ہے۔مذہب پرست طبقہ قتل کی مخالفت نہیں کررہا ہے جبکہ سول سوسائٹی اس کی مذمت کررہی ہے۔ اس کا کہنا ہےکہ پاکستان پر مذہبی جنونیوں کا قبضہ ہوتا جارہا ہے اور اگر اسی طرح لوگ قتل کئے جاتے رہے اور اسی طرح لوگ خاموش رہے تو پاکستان ایک خاموش معاشرے میں تبدیل ہوجائے گا ۔جیسا کہ پہلے کہا گیا ہے کہ کسی کو بھی توہین رسالت کی چھوٹ نہیں دی جاسکتی اور اگر کوئی ایسا کرتا ہے تو اسے اس کے کئے کی سزا ضرور ملنی چاہئے ۔ لیکن اس میں قانون کا استعمال ہوناچاہئے ۔توہین رسالت کے قانون میں یہ نہیں لکھا ہوا ہے کہ کوئی بھی کسی کو بھی بندوق کا نشانہ بنالے ۔بلکہ قانون بنایا ہی اسی لئے جاتا ہے کہ اس کو ایک عمل سے گزار ا جائے اور اس بارے میں جو پروسیجر ہو اس کا اختیار کیا جائے ۔پہلے ایف آئی آر درج ہو، پھر گرفتاری ہو، پھر مقدمہ چلے، گواہیاں ہو، جرح ہو اور اس کے بعد اگر کوئی مجرم ثابت ہوتو اس کو سزا ملے ۔سزا دینے کا کام عدالت کا ہے کسی تنظیم کا نہیں، کسی انفرادی شخص کا نہیں ۔ہاں اگر کوئی شخص مسلسل اور متواتر توہین رسالت کررہا ہو اور اس کے خلاف آواز بلند کرنے کا کوئی نتیجہ برآمد نہ ہورہا ہو ،حکومت خاموش اور مہر بہ لب ہو اور اس طرح ایسے لوگوں کی یوں مسلسل حوصلہ افزائی ہو کہ دوسرے بھی اسی جرم کا ارتکاب کرنے  لگیں تب حالات دوسرے ہوتے ہیں۔ آج پاکستانی معاشرہ واضح طور پر دوخیموں میں بٹ گیا ہے۔ ایک مذہبی تنظیموں اور ان سے ہمدردی رکھنے والوں کا خیمہ ہےتو دوسرا ان کے مخالفین کا خیمہ ہے اور ا یسے لوگوں کا خیمہ ہے جو مذہبی انتہا پسندی اور مسلکی جنون کے دشمن ہیں۔ سلمان تاثیر اور شہباز بھٹی کے قتل سے قطع نظر آج پاکستان میں مذہبی رواداری اور ایک دوسرے کو برداشت کرنے کے جذبے کا شدید فقدان ہوگیاہے۔ سنجیدہ اور تعمیری اختلاف رائے کی بھی گنجائش نہیں رہ گئی ہے۔ اگر کوئی شخص کسی مذہبی گروپ علم ودانش سے اس کا جواب دینے کے بجائے بندوق اور کاشنکوف سے جواب دیتا ہے ۔مذہبی عناصر نے بھی بندوق کو اپنا ہتھیار بنالیا ہے۔ عدم رواداری اور عدم برداشت کا چلن بڑھتا جارہا ہے ۔بقا ئے باہم کی گنجائش بھی ختم ہوگئی ہے۔ خاکساری اور عجزوانکساری کا جنازہ نکل گیا ہے۔شدت پسند ی اور جارحیت کابول بالا ہے۔مسلکی انتہا پسندی بھی عروج پر ہے۔ کسی بھی مسلک کے جلوس کی کوئی گارنٹی نہیں ہے۔ اب تو وہاں مذہبی جلسوں اور جلوسوں کی حفاظت کلاشنکوف سےکی جاتی ہے ۔ اسلام پر ایک الزام یہ لگایا جاتا ہے کہ اسلام تلوار کے زور پر پھیلا ہے ۔ اگر پاکستان میں یہی سلسلہ چلتا رہا تو یہ الزام سچ ہوجائے گا اور پھر اس کی مخالفت کوئی نہیں کرسکے گا۔ پاکستانی معاشرہ جس طرح عدم استحکام ، بے سمستی اور اضطراب کا شکار ہے وہ نہ تو پاکستان کے مذہبی حلقوں کے مفاد میں ہے نہ حکمراں طبقے کے مفاد میں ہے اور نہ ہی ان لوگوں کے مفاد میں ہے جو خود کو سیکولر اور دانشور ہونے کا دعویٰ کرتے ہیں ۔اس کے ساتھ ہی ان واقعات کے اثرات اس برصغیر پر بھی پڑیں گے اور یہ پورا خطہ ایک قسم کی انار کی میں مبتلا ہوجائے گا۔ اگر پاکستان کے حکمراں طبقے نے اس جانب سنجیدگی سے نہیں دیکھا اور ان عناصر کو چھوٹ ملتی رہی جو قانون کی بالا دستی میں یقین نہیں رکھتے تو اس کے نتائج تباہ کن ہوں گے۔

جہاں تک رتوہین رسالت کے قانون کے تحت سزاؤں کا معاملہ ہے تو شاید اس کے تحت ابھی تک کسی کو عدالت سے سزا نہیں ملی ہے۔ البتہ انفرادی طو ر پر لوگ اٹھتے رہے ہیں اور توہین رسالت کے ملزموں کا قتل کرتے رہے ہیں۔ جنرل ضیا الحق کے زمانے میں 1980میں اس قانون کو مزید سخت کیا گیا تھا اور راعد اد وشمار کے مطابق 1990میں لاہور میں طاہر اقبال نامی ایک شخص کو اس کے تحت قتل کیا گیا ۔1992میں فیصل آباد میں ایک طالب علم نے توہین رسالت کے الزام میں ایک عیسائی نعیم مسیح کا قتل کیا۔ اسی سال لاہور میں ایک اور عیسائی بابا بنتو مسیح کو چاقوؤں سے گود دیا گیا اور اس کی موت ہوگئی ۔2004میں لاہور میں ایک عیسائی سیمئول مسیح کا پولس تحویل میں قتل ہوا۔ 2008میں ٹوبہ ٹیک سنگھ میں توہین رسالت کے ایک ملزم یونس تصدیق کے بھائی سیمون ایمینوئل کو مارا گیا۔2009میں سیال کوٹ میں پولیس تحویل میں ایک ملزم فانش رابرٹ کا قتل ہوا۔ 2010میں فیصل آباد میں رشید اور ساجد ایمینول کو ختم کیا گیا اور جنوری میں سلمان تاثیر اور مارچ میں شہباز بھٹی کو ہلاک کیا گیا ۔بہر حال اس وقت پاکستانی معاشرہ ایک عجیب وغریب صورت حال سے دوچار ہے اور پاکستان کے قلمکار ،صحافی اور دانشور بھی اس صورت حال سے پریشان ہیں۔ وہ مذہبی لوگ جو اس کیفیت سے خود نہیں ہیں وہ خاموش ہیں۔ یہ بات نہ پاکستان کےمفاد میں ہے اور نہ ہی اس خطے کے مفاد میں ہے۔

موبائل :9818195929

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/where-is-pakistani-society-going?--پاکستان-معاشرہ-کدھر-جارہا-ہے؟/d/4224

 

Loading..

Loading..