New Age Islam
Fri Apr 16 2021, 09:57 PM

Urdu Section ( 7 Feb 2011, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

The land of the Sinking Sun ڈوبتے سورج کی زمین

By Samiullah Malik

(Translated from Urdu by Arman Neyazi, NewAgeIslam.com)

He was born in 1925, became a crown prince at the age of six and was crowned the king of Iran at the age of twenty two. He was Mohammad Reza Shah Pahlawi. He was known all over the world as Shah-e-Iran. He was the principal friend of America in Asia. Western Press used to call him “American Governor”. He topped the list of American faithful. America ordered him to run a modern state in style and thoughts and the Shah ordered a ban on veil and beard. Police used to tear the veil of the women if they dared come in public with it. King of Iran ordered skirts to be a uniform for the universities, colleges and school. Alcohol, dance and adultery became the rule of the day. Iran was the only country in the world where there were wine shops in the universities and ladies were sold and purchased in public.

This disgraced trade had legal authentication. 

During the Shah’s regime, gay sons of two Generals married each other and the reception was attended by no less than the Shah himself and his cabinet members as special guests. Shah granted diplomatic status to forty two thousand Americans residing there out of his love for America. America had stalled a Green Phone in the Shah’s office and all the dictates received from America were followed. After this, people revolted against the American high handedness. The revolt continued for three years.  Marshall Law was clamped in 12 towns but the people disobeyed. Shah handed over the reign of the government to Shahpur Bakhtiar and fled the country.  Shah had thought that America will reward him for his patriotism and faithfulness.  But as soon as Shah’s airplane left Iran, America showed its true color. Shah had to take refuge in Egypt, Mauritius, Bahamas and ultimately Mexico.  During this period White House kept ignoring even his phone calls not to talk of extending any kind of help. Shah of Iran kept wandering hither and thither for 16 years, even his accounts were frozen by America. Ultimately Anwar Saadat came to his rescue and offered him refuge. He died in Cairo in July 1980. At his death bed there was no one except his third wife. No one came for his last rites, (Namaz-e-Janaza). Hence he was buried in his bedroom.

It is not only the story of Reza Shah Pahlavi only. Every friend of America got the same treatment. Take the example of Anastasio Somoza Debayle, an American agent in Nicaragua. He was made to fight communism there equipped with American dollars and arms and ammunitions. He kept fighting communism taking it as his own fight. In 1979 it became difficult for him to be there. He flew from there but as he left Nicaragua, America refused to recognize him. He tried his best to stay in Miami in America but the government did not allow.  He had to live his life in jungles and dens in exile in Paraguay. He was killed by a Sandanista commando tem and died with all his difficulties in 1980. Some of his close friends buried him in Istaftan a town of Paraguay. Today nobody even knows him. 

General Augusto José Ramón Pinochet Ugarte of Chile led a coup against Salvador Allende’s elected govt. in 1973 with the help of CIA. He reigned there till 1990. He started operations against the people of Chile just after coming to power. He ordered the killing of thousands of citizens on America’s order during those 17 years that his reign of terror continued. On America’s orders, all the Organisations which America did not like were banned and basic rights of the people of Chile were usurped. He fled to London in March 1990 after a popular revolution against him that very year. He had thought that Britain and America will respect his sincerity but he was arrested there as soon as he landed. He was kept under house arrest. He protested to the American government against it but he did not even receive a reply. He was extradited to Chile in 2000. Cases were lodged against him. He died of heart attack on 3rd of December that year. His death was rejoiced all over the country and American government did not even issue a one line obituary message for him.

General Noriega was a key man of America. He was also used against the Communists in Panama till 1990. But he could not satisfy America, so the Americans attacked Panama and arrested Noriega.  He was given the sentence of for 40 years rigorous imprisonment. He is in Jail for the last 14 years, paying for his friendship with America.

President Ferdinand Emmanuel Edralin Marcos of Philippines kept fighting for the American interests for 22 years in Philippines. He killed every single Communist there and America itself ended his reign. Marcos went to America. America granted him refuge but did not give him the respect and position he had expected. For the rest of his life he lived in a small house at Honolulu on the stipend of a common refugee. He died in 1999 in the same pathetic condition.

Bishop Abel Tendekayi Muzorewa was supported by America against Mugabe in Rhodesia. He kept fighting for the Americans and when he himself got weakened, the US stopped supporting him.

Who does not know what happened with Saddam Husain. After the revolution in Iran, America decided to use Saddam Husain.  Saddam Husain attacked Iran on 22nd of Sept. 1980 on American’s behest and fought till 20th of August 1988, for eight years. A million people died and two million were injured in this war. Saddam Husain remained in American camp till 1990. America attacked Iraq in the meanwhile due to its lust for oil. Eight thousand urban Iraqis were killed in this war. In 2003, America attacked Iraq once again. Saddam Husain was arrested and on the behest of America was hanged on 30th December 2000 in Baghdad.

American history of disrespecting, mauling and killing of friends is long. From Shah of Iran to Saddam Husain it has been a long journey and American friends have met the same fate.  Americans call their Foreign policy “Disposal Diplomacy” because their motto is to buy, use and throw. Americans change their wives as we change our dress. Therefore they do not value their friends more than a tissue paper, paper glass, paper plate or dirty socks. They always run their policies, case to case and project to project hence whether their friends are General Agusto Pinochet, King Reza Shah Pehlawi, President Saddam Husain or anybody else, they take them as their friends only till the latter are able to serve them and obey their orders. The moment they feel that particular person is becoming a liability they treat them like Zulfequar Ali Bhutto or General Zia ul Haque and seal even their “tombs”.

This is American friendship and its humiliating consequence. America is marching on the same path of friendship policy for the last 234 years and to its credit, it has not changed its policy for anybody.

Source: http://alqamar.info/2011/?p=5237

URL: https://newageislam.com/urdu-section/the-land-of-the-sinking-sun--ڈوبتے-سورج-کی-زمین/d/4085

 

سمیع اللہ ملک

وہ 1925میں پیدا ہوا، چھ سال کی عمر میں ولی عہد بنا اور 22سال کی عمر میں ایران کا بادشاہ بن گیا، وہ محمد رضا شاہ پہلوی تھا لیکن پوری دنیا اسے شاہ ایران کے نام سے جانتی تھی۔ وہ ایشیا میں امریکہ کا سب سے بڑا دوست تھا، یورپی پریس اسے ‘‘ امریکن گورنر’’ کہتا تھا اور وہ امریکی وفاداری میں بہت آگے چلا گیا، امریکہ نے اسے روشن خیالی او ر اعتدال پسندی کا حکم دیا  اور اس نے ایران میں داڑھی اور پردہ پر پابندی  لگادی ۔ اس کے دور میں کوئی عورت باپردہ نکلتی تھی تو پولیس سرے سے عام اس کا برقع پھاڑ دیتی، شاہ ایران نے تمام زمانہ اسکولوں، کالجوں، اور یونیورسٹیوں میں سکرٹ کو یونیفارم بنادیا ، شراب نوشی، رقص اور زنا فیش بن گیا۔ شاہ کے دور میں ایران دنیا کا واحد ملک تھا جس میں کالجوں میں شراب کی دکانیں تھیں، یونیورسٹیوں میں خواتین کی سود ے بازی ہوتی تھی۔

اس مکروہ کاروبار کو قانونی حیثیت حاصل تھی ، شاہ کے زمانے میں دوجرنیلوں کے ہم جنس پر ست بیٹوں نے آپس میں شادی کی ، سرکاری سطح پر نہ صرف ان کی دعوت ولیمہ ہوئی بلکہ شاہ اور اس کا بینہ نے خصوصی طور پراس تقریب میں شرکت کی۔ شاہ نے امریکہ کی محبت میں ایران میں موجود 44ہزار امریکیوں کی سفارتی حیثیت دے دی، امریکہ نے شاہ ایران کے دفتر میں ‘‘ گرین فون’’ لگا رکھا تھا اور اسے امریکہ سے جو ہدایت ملتی تھی وہ ان پرفوری عمل درآمد کراتا تھا لیکن پھر شاہ کی امریکہ نواز پالیسیوں پر بغاوت ہوئی، یہ بغاوت تین سال تک چلتی رہی، شاہ نے 12شہروں نے مارشل لا لگا دیا ،عوام نے اسے تسلیم کرنے سےانکار کردیا، شاہ نے حکومت شاہ پور بختیار کے حوالے کی اور ملک سے فرار ہوگیا، اس کا خیال تھا امریکہ اب اس کی وفاداریوں کا بدلہ دیگا لیکن جوں ہی شاہ ایران کا طیارہ ایران کے حدود سے نکلا ،امریکہ نے آنکھیں پھیر لیں ، شاہ پہلے مصر گیا ،پھر مراکش ،بہاماس اور پھر میکسیکو ،وہ اس دوران امریکہ سے مسلسل مدد مانگتا رہا لیکن وائٹ ہاؤس اس کا ٹیلی فون تک نہیں سنتا تھا۔شاہ ایران سولہ سال تک مارا مارا پھرتا رہالیکن کسی نے اس کی مدد نہیں کی، امریکہ نے اس کے ایکاؤنٹس تک ‘‘منجمد’’ کردیے، آخر میں انورالسادات کام آیا اور اس نے اسے پناہ دے دی۔ جولائی 1980میں قاہرہ میں اس کا انتقال ہوا، انتقال کے وقت اس کے پاس اس کی تیسری بیوی کے سوا کوئی نہ تھا لوگ اس کا جنازہ تک پڑھنے نہ آئے چنانچہ اسے اس کے بیڈروم ہی میں دفن کردیا گیا۔

یہ صرف رضا شاہ پہلو ی کی کہانی نہیں ، امریکہ کا ہر  حکمران دوست اسی انجام کا شکا ہوا، آپ ‘‘اناس تاسیو’’ کی مثال لیجئے ،وہ نکارہ گوا میں امریکی ایجنٹ تھا، نکارا گوا میں کمیونزم کی تحریک شروع ہوئی تو امریکہ نے اناس تا سیو کو ڈالر اور اسلحہ دے کر کمیونزم کے خلاف کھڑا کردیا۔ انس تا سیو امریکہ کی جنگ کو اپنی جنگ سمجھ کر لڑتا رہا،1979میں نکارا گوار میں اس کے لیے حالات مشکل ہوگئے ،وہ ملک سے فرار ہوا لیکن جوں ہی اس نے نکارا گوار سے باہر قدم رکھا، امریکہ نے اسے پہچاننے سے انکار کرگیا، اس نے امریکہ آنے کی کوشش کی لیکن امریکی حکومت نے اجازت نہ دی، یوں اناس تاسیو جنگلوں اور غاروں میں چھپ کر زندگی گزار نے لگا، وہ 1980میں اسی پریشانی کے عالم میں انتقال کرگیا اور اس کے چند قریبی دوستوں نے پیرا گوائے کے شہراس نشن میں  دفن کردیا،آج لوگ اس کے نام تک سے واقف نہیں ہیں۔

چلی کے آمر ‘‘جنرل اگارتے اگستو پنوشے’’ نے 1973میں سی آئی اے کی مدد سے جنرل ایلنڈ و کی منتخب حکومت پر شب خون مارا تھا ،پنوشے نے اقتدار میں آتے ہی چلی کے عوام کے خلاف آپریشن شروع کردیا۔ پنوشے 1990تک چلی پرحکمران رہا ، ان 17برسوں میں پنوشے نے امریکہ کے کہنے پر ہزاروں شہری کا قتل کرائے ۔ امریکہ کی ناپسندیدہ تنظیموں پر پابندیاں لگیں اور امریکہ کی خواہش پر اپنے شہریوں کے انسانی حقوق غصب کیے عوام 1990میں پنوشے کے خلاف اٹھ کھڑے ہوئے اور مارچ 1990میں لندن فرار ہوگیا، اس کا خیال تھا کہ برطانیہ اور امریکہ اس کی  وفاداریوں کی قدر کریں گے لیکن لندن آتے ہی برطانیوی پولس نے اسے گرفتار کیااور اسے  اسکے گھر میں نظر بند کردیا، اس نے اس ناروا سلوک امریکہ سےاحتجاج کیا لیکن امریکی حکومت نے اسے جواب تک نہ دینے کی زحمت  نہ کی ۔ برطانوی حکومت نے اسے 2000میں چلی کے حوالے کردیا۔ اس کے خلاف مقدمہ چلا، 3دسمبر 2006کو اسے ہاٹ اٹیک ہوا اور وہ دم توڑ گیا، اس کی موت پر پورے ملک میں خوشیاں منائی گئیں جبکہ امریکی حکومت نے ایک سطر کا تعزیتی پیغام تک جاری نہ کیا۔

نگولا کا باغی سردار ‘‘جوناس سیومنی’’ میں امریکہ نواز لیڈر تھا، وہ برسہا برس انگولا میں امریکی مفادات کی جنگ لڑتا رہا،نومبر1992میں امریکہ نےاسے کمیو نسٹوں کے ساتھ امن معاہدے کا حکم دیا، اس نے معاہدے پر ستخط کردیے جس کے نتیجے میں جو ناس سیومنی بے دست وپا ہوگیا ، معاہدے پر ستخطوں کے دوماہ بعد کمیو نسٹوں نے ‘‘ہامبو’’ میں اس کے ہیڈ کواٹر پر حملہ کردیا وہ فرار ہوگیا، آج اس واقعہ کو اٹھارہ سال گزر چکے ہیں، جو ناس سیومنی جان بچا نے کے لیے چھپتا پھررہا ہے لیکن امریکی حکومت اس کا ٹیلی فون تک نہیں سنتی ’’

جنرل نویگا ’’ پامامہ میں امریکی کا آلہ کار تھا، اسے بھی امریکہ نے کمیونسٹوں کے خلاف استعمال کیا وہ 1990تک امریکی مفادات کی جنگ لڑتا رہا لیکن امریکہ کی تسلی نہ ہوئی لہٰذا امریکہ نے پانامہ پر حملہ کردیا، صدر نوریگا گرفتا ر ہوا امریکی ایما پر عدالت نے اسے 40سال قید بامشقت کی سزا سنا دی اور نوریگا گذشتہ چودہ برس سے جیل میں امریکی دوستی کاخمیازہ بھگت رہا ہے۔

‘‘فرنینڈ مارکوس’’ 22برس تک فلپائن میں امریکی مفادات کی جنگ لڑتا رہا ۔ اس نے فلپائن سے کمیو نسٹوں کو چن چن کر ختم کردیا لیکن 1986میں امریکہ ہی نے اس کی حکومت ختم کرادی ، مار کوس امریکہ آگیا، امریکہ نے اسے پناہ تودے دی لیکن اسے وہ عزت اور وہ توقیر نہ دی جس کا وہ حقدار تھا، مارکوس نے باقی زندگی ہونو لولو کے ایک چھوٹے سے مکان میں گزاری اور اسے ایک عام پناہ گزین کے برابر وظیفہ ملتا تھا ۔مارکوس 1999میں اسی بے بسی کے عام میں آنجہانی ہوگیا۔

1979ہی میں امریکہ نے رہو ڈیشیا میں بشپ اہبل منرور یواکو موغا بے اور نکو مو کے مقابلے میں کھڑا کیا۔ بشپ امریکیوں کے لیے لڑتا رہا لیکن جب وہ لڑتے لڑتے کمزور ہوگیا تو امریکہ نے اس کی امداد سے ہاتھ کھینچ لیا اور صدرصدام کی کہانی تو پوری دنیا جانتی ہے ۔ انقلاب ایران کے بعد امریکہ نے صدام حسین کو استعمال کرنے کا فیصلہ کیا، صدام حسین نے امریکہ کی ایما پر 22ستمبر 1980کو ایران پرحملہ کردیا، یہ جنگ 20اگست 1988تک 8سال جاری رہی اور اس میں دس لاکھ افراد ہلاک اور 20لاکھ زخمی ہوئے ۔ صدام حسین 1990تک امریکہ کا دوست رہا لیکن پھر امریکہ نے تیل کے لالچ میں عراق پرحملہ کردیا، اس جنگ میں 86ہزار عراقی شہری شہید ہوئے 2003کو بغداد میں پھانسی دے دی گئی ۔

شاہ ایران سے لے کر صدام حسین تک امریکی تاریخ دوست کشی کی ہزاروں مثالوں سے بھری پڑی ہے۔ امریکی اپنی خارجہ پالیسی کو ‘‘ڈسپوزل پالیسی ’’کہتے ہیں ۔ ان کا فلسفہ ہے خرید و ،استعمال کر و اور پھینک دو، امریکی قوم بلیڈ کند ہونے سے پہلے بیوی بدل لیتے ہیں چنانچہ یہ لوگ اپنے دوستوں کو کاغذ کے گلاس ،پلیٹ ، ٹشو اور گندی جراب سے زیادہ اہمیت نہیں دیتے ۔ یہ لوگ ہمیشہ کیس ٹو کیس اور پراجیکٹ ٹوپر اجیکٹ چلتے ہیں چنانچہ ان کے دوست جنرل اگستو پنوشے ہوں جنرل رضا شاہ پہلو ی ہوں یا جنرل صدام حسین یہ لوگ اس وقت انہیں دوست سمجھتے ہیں جب تک وہ ان کے لیے خدمات سر انجام دے سکتے ہیں اور جس وقت انہیں محسوس ہوتا ہے یہ شخص اس پر بوجھ بنتا جارہا ہے، یہ اس کے ساتھ ذوالفقار علی بھٹو اور جنرل ضیا الحق جیسا سلوک کرتے ہیں اور یہ اس کے بعد ان کی قبروں تک پر ‘‘سابق’’ کی مہر لگادیتے ہیں۔

یہ ہے امریکی دوستی اور اسکا انجام اور امریکہ پچھلے 234برس سے ‘‘دوستی’’ کے اسی فلسفے پر کار بند ہے اور اس نے آج تک کسی شخص کے لیے اپنی یہ پالیسی نہیں بدلی لیکن دلّی سرکار کے مہربان یہ سمجھ رہے ہیں 2007تک پہنچ کر امریکہ نے اپنا سارا فلسفہ بدل لیا ہے اور وہ اب بحیرہ عرب کے آخری سال اور بحرا وقیانوں کی آخری لہر تک دلی سرکار کا ساتھ دے گا۔ ہمارے یہ دوست بھول گئے ہیں وہ امریکی جو اپنی ماں، اپنے باپ کو بھول جاتے ہیں ، ان کی دوستی محض اپنے مفادات کی خاطر ہوتی ہے۔ امریکہ کو اس خطے کی ابھرتی ہوئی سپر طاقت چین کا محاصرہ درکار ہے جس کے لئے پاکستان قطعی موزوں نہیں کہ پاک چینی دوستی اس راستے کا سب سے بڑاپتھر ہے۔ یہیں وجہ ہے کہ دلّی میں کھڑے ہوکر اوبامہ نے بھارت کی مستقل نشست کی حمایت تو کردی لیکن چند دنوں کے بعد امریکہ ہی کے ایک اعلیٰ عہدیدار نے اس کو انتہائی مشکل قرار دیا۔

امریکہ ڈوبتے سورجوں کی زمین ہے اور ڈوبتے سورجوں کے بیٹے ہمیشہ چڑھتے سورجوں کے دوست ہوتے ہیں۔ امریکہ کی وفاداری ہمیشہ اپنے مفادات سے وابستہ رہی ہے اور آئندہ بھی اس میں کوئی تبدیلی کا ا مکان نہیں ۔ بس ایک دوبرس کی بات ہے، اگر دلّی سرکار امریکی ایما پر چین کے خلاف انکی امیدوں پرپورے نہ اترے تو اس کے بعد نیا کپ ،نئی پلیٹ اور نیا گلاس ہوگا اور کوئی نیا اوبامہ ہوگا۔

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/the-land-of-the-sinking-sun--ڈوبتے-سورج-کی-زمین/d/4085

 

Loading..

Loading..