New Age Islam
Tue Nov 30 2021, 01:41 AM

Urdu Section ( 5 Nov 2021, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

The Holy Quran Started The Process Of Rehabilitation Of Slaves قرآن پاک نے غلاموں کی آزادی کا عمل شروع کیا

سہیل ارشد، نیو ایج اسلام

25 مارچ 2021

غلامی اور غلاموں کی تجارت کا رواج قدیم زمانے سے ہے جو تقریباً پوری دنیا میں رائج تھا۔ ہمیں قرون وسطی میں افریقی، عرب اور ایشیائی ممالک میں غلاموں کی تجارت کے تفصیلی واقعات ملتے ہیں۔ غلام بارودی سرنگوں، باغات اور فوج میں کام کرتے تھے۔ خواتین غلاموں کو جنسی غلام اور لونڈیوں کے طور پر استعمال کیا جاتا تھا۔ ان غلاموں نے انتہائی دکھ بھری زندگی گزاری اور ان کے ساتھ جانوروں جیسا سلوک کیا گیا۔ ان کے پاس کوئی انسانی حقوق نہیں تھے اور وہ مکمل طور پر اپنے آقاؤں کے رحم و کرم پر زندہ رہتے تھے۔ جنگوں میں ان کے ساتھ مال غنیمت کی طرح سلوک کیا جاتا تھا۔ غلام رکھنا معاشرے میں عزت و وقار کی علامت تھا۔ غلاموں کو بیچنا اور خریدنا قرون وسطیٰ میں ایک منافع بخش تجارت تھی۔

تاہم، اسلام کی آمد کے ساتھ، غلاموں کے بارے میں معاشرے کا نقطہ نظر رفتہ رفتہ بدلتا گیا۔ قرآن کریم نے غلامی کی حوصلہ شکنی کی اور غلاموں کو آزاد کرنے، ان کے ساتھ حسن سلوک اور ان کو آزاد کرنے کی ترغیب دی۔ عرب معاشرے کے سماجی، معاشی اور سیاسی نظام میں غلامی اتنی گہرائی سے پیوست ہو چکی تھی کہ اسے راتوں رات ختم کر دینا دانشمندی نہیں تھی۔ صرف غلامی ہی نہیں، قرآن دیگر تمام شعبہائے حیات میں معاشرے کی بتدریج اصلاح کا طریق کار اختیار کرتا ہے۔ اس لیے غلامی کے خاتمے کا حکم دینے کے بجائے، قرآن نے غلاموں کی آزادی کو گناہوں کے کفارے سے جوڑ دیا۔ قرآن نے مسلمانوں سے یہ بھی کہا کہ وہ غلاموں کے ساتھ اپنے خاندان کے افراد جیسا سلوک کریں، جب وہ بڑے ہو جائیں تو ان کی شادی کا بندوبست کریں، ان میں اچھی اقدار کو پروان چڑھائیں اور مسلمانوں کو حکم دیا کہ وہ انہیں جسم فروشی پر مجبور نہ کریں۔ قرآن مسلمانوں سے کہتا ہے کہ اگر انہیں ان کی لونڈی پسند آ جائے تو ان سے شادی کر لیں۔ قرآن مسلمانوں سے یہ بھی کہتا ہے کہ اگر غلام آزاد ہونا چاہیں تو اپنے غلاموں کو آزاد کریں۔ قرآن مسلمانوں کو غلاموں کو آزاد کرنے کی ترغیب بھی دیتا ہے اور اسے ایک ایسی نیکی قرار دیتا ہے جس کا انعام اللہ دینے والا ہے۔

 ’’اور تمہارے ہاتھ کی مِلک باندی غلاموں میں سے جو یہ چاہیں کہ کچھ مال کمانے کی شرط پر انہیں آزادی لکھ دو تو لکھ دو اگر ان میں کچھ بھلائی جانو‘‘ (نور:33)

’’اور جو کسی مسلمان کو نادانستہ قتل کرے تو اس پر ایک مملوک مسلمان کا آزاد کرنا ہے اور خون بہا کر مقتول کے لوگوں کو سپرد کی جائے۔‘‘ (النساء:92)

"اور وہ جو اپنی بیبیوں کو اپنی ماں کی جگہ کہیں پھر وہی کرنا چاہیں جس پر اتنی بری بات کہہ چکے تو ان پر لازم ہے ایک بردہ آزاد کرنا قبل اس کے کہ ایک دوسرے کو ہاتھ لگائیں۔" (المجادلہ:3)

قرآن غلاموں کو آزاد کرنے کی بھی ترغیب دیتا ہے اور اسے ایک ایسی نیکی قرار دیتا ہے جس پر اجر دیا جائے گا "بندے کو آزاد کرنا" (البلاد: 13)

جان بوجھ کر کی گئی قسموں کے کفارہ میں بھی قرآن مسلمانوں سے سورہ المائدہ: 80 میں ایک غلام آزاد کرنے کا حکم دیتا ہے۔

مندرجہ بالا آیات سے پتہ چلتا ہے کہ قرآن نے عرب معاشرے میں غلاموں اور باندیوں کے متعلق نظریہ میں تبدیلی پیدا کی ہے۔

کچھ احادیث بھی ہیں جو غلاموں اور باندیوں کے ساتھ حسن سلوک کی تعلیم دی گئی ہے: ایک حدیث ہے:

حضرت ابو موسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں:

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس کے پاس لونڈی ہو اور وہ اسے اچھے اخلاق سکھائے اور اسے اچھی تعلیم دے پھر اسے آزاد کر کے اس سے شادی کر لے تو اسے دوہرا اجر ملے گا اور جو غلام اللہ کے حق اور اپنے آقا کے حق کی پاسداری کرے گا اسے دوہرا اجر ملے گا۔ (صحیح بخاری:3:46:724)

ان تعلیمات نے دوسرے براعظموں کے دوسرے مذہبی معاشروں کے طرز فکر پر زبردست اثر ڈالا ہے۔ اگرچہ یہ بھی درست ہے کہ اسلام کے آنے کے بعد بھی غلاموں کی تجارت اور غلام رکھنے کی روایت اسلامی معاشروں میں جاری رہی کیونکہ بعض قدامت پسند اسلامی علماء اور مفسرین انہی قرآنی آیات کی مدد سے غلامی کو جائز قرار دیتے رہے جن میں غلامی کی حوصلہ شکنی کی گئی تھی۔ ان کا ماننا ہے کہ غلاموں کے ساتھ حسن سلوک کی تلقین کرنے والی آیات ہی غلام رکھنے کے رواج کو جائز قرار دیتی ہیں۔ بعد کے زمانے میں مسلمان بادشاہوں نے مفتوحہ سرزمین کے لوگوں کو غلام بنا کر اس روایت کو برقرار رکھا۔

 خلافت عثمانیہ نے 1924 تک غلامی کو جاری رکھا۔ ترکی نے اسے 1924 میں ختم کر دیا جب خلافت عثمانیہ کا خاتمہ ہوا۔

19ویں صدی میں غلامی کو ختم کرنے والے امریکہ اور دیگر مغربی ممالک کے بعد 20ویں صدی میں آخرکار غلامی کو ختم کرنے میں مسلم ممالک کو تقریباً ایک ہزار سال لگ گئے۔ ایران نے اسے 1929 میں ختم کیا جبکہ عمان نے 1970 میں اسے ختم کیا۔ سعودی عرب اور یمن نے 1962 میں غلامی کا خاتمہ کیا۔ متحدہ عرب امارات نے اسے 1963 میں ختم کیا۔

تاہم، یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ اگرچہ اکثر اسلامی ممالک نے غلامی کو ختم کر دیا ہے، لیکن کچھ معروف اسلامی علما اب بھی غلامی کے رواج کی حمایت کرتے ہیں اور انہیں تنقید کا نشانہ بناتے ہیں جو اسے ایک غیر انسانی عمل سمجھتے ہیں۔ ممتاز سعودی عالم صالح الفوزان نے 1990 میں منعقد انسانی حقوق کے قاہرہ اعلامیے کی مخالفت کی تھی جس میں یہ کہا گیا تھا کہ کسی کو بھی دوسرے انسان کو غلام بنانے کا حق نہیں ہے، اور 2003 میں یہ کہا تھا کہ غلامی اسلام کا حصہ ہے اور جہاد کا حصہ ہے اور جو لوگ اس کی مخالفت کرتے ہیں وہ جاہل ہیں عالم نہیں۔ یہاں تک کہ انہوں نے ایسے لوگوں کو کافر بھی کہا۔

پاکستان کے نامور اور قابل احترام اسلامی اسکالر مرحوم ڈاکٹر اسرار احمد کا بھی خیال تھا کہ اسلام نے غلامی کی تائید کی ہے اور یہ کہ عورتیں وراثت کی طرح ہیں جو باپ سے بیٹے کو منتقل ہوتی ہیں۔ غلامی کے حامی علماء کے افکار و نظریات کی وجہ سے بعض قدامت پسند اسلامی معاشرے میں غلامی کا رواج اب بھی موجود ہے۔ ان علماء کے خیالات نے داعش جیسی دہشت گرد تنظیموں کو متاثر کیا ہے جو جنسی غلاموں کو رکھنے، بیچنے اور خریدنے میں یقین رکھتی ہیں۔

اس کے باوجود اکثر اسلامی ممالک نے غلامی کو ختم کر دیا ہے اور مرد یا عورت کو غلام رکھنا جدید مسلمانوں کے لیے اتنا ہی غیر انسانی سمجھا جاتا ہے جتنا کہ باقی انسانیت کے لیے۔

English Article: Remembering Victims Of Slavery: The Holy Quran Started The Process Of Rehabilitation Of Slaves

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/remembering-victims-slavery-holy-quran/d/125718

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..