New Age Islam
Sat Oct 31 2020, 06:15 PM

Urdu Section ( 29 Dec 2009, NewAgeIslam.Com)

Ruling Imposed For 284 Years دو سو چوراسی برس سے نافذ فرمان


The tragic plight of Shirin Ebadi, the Nobel Prize winner for Peace, reminds us of Khilafat-e-Usmania

By Zahida Hina

(Translated from Urdu by Raihan Nezami)

October is the month for the declaration of Nobel Prize winners; the whole world has been waiting for its declaration every October for 108 years with bated breath. Nobel Prize is given to the people for excellent achievements in the categories of Peace, Literature, Physics, Chemistry and Physiology or Medicine, who dedicate their lives to the service of mankind in these fields without any discrimination of caste, colour, region or religion.

 

This prize was established in 1900 in the name Alfred Nobel at his will. Nobel was the inventor of the most destructive “Dynamite”. His family was involved in the production of deadly weapons. Before his death, he established a trust and made a will to equally distribute the profit of the heavy amount kept in the account of trust among the five finest and extra-ordinary persons of the world who would have achieved the best in the five categories. He formed a committee of nominees.

 

ct nd astonishing fnd conditionsngedachieved the best in the five categoties.the profit of The members of the committee are changed but not the terms and conditions. It is an astonishing fact, the person who earned money by producing destructive arms and ammunitions, first of all, thought of establishing the Nobel Prize for peace. He wrote in 1983, “Peace prize should be given to the man or woman who would do the noble act of enhancement of peace in Europe and the world. Being a European, he was quite aware of the destruction caused by different wars being fought in Europe, and many wars may be fought in future. So he thought that peace was an inevitable necessity for Europe and the world. He wished it to given to Baroness Bertha Sophie Felicita von Suttner who had worked a lot for garnering peace in the world, but she was finally awarded Nobel Prize in 1905.

 

At the function, the chairman of Nobel Prize Committee and the then external minister told in his speech, “Women hold great significance in history, so they can only divert the opinion of their counterparts in respect of war, and direct them towards the goal of achieving peace.

 

The Nobel Prizes in different categories have been announced in the second week of October with the pleasing news of four women qualifying for the supreme international prize this year. The Nobel Prize for literature was given to Herta Müller. An Israeli woman got the Nobel Prize jointly for Chemistry, and two women scientists Elizabeth H. Blackburn and Carol W. Greider along with a male scientist were selected for Physiology or Medicine (Tibbiyat). This has happened for the first time in history that four women have been conferred this award in a single year i.e. 2009. The total number of Nobel Prize winning women has remained 36 till the date. The reason being – the women have faced several barriers of discrimination in the fields of research and education, so their path has been made very difficult. Yet they have succeeded in achieving excellence by winning laurels in respective fields.

 

I feel extremely exuberant watching the women’s name in Nobel Prize or any other international award winning list, but it gives birth to a question.

 

Why has no representative of 1500 million Muslim women won Nobel Prize in science, literature or in any respect?  

 

There may be a simple answer to this demanding question. How can it be possible in such an anti-women environment, when a Sudanese woman is whipped for wearing the so-called anti-Islamic dress “Jeans” in the first decade of 21st century?

 

The Islamic heads of Saudi Arabia become sleepless at the opening of the first co-education school. The women in U.S, Europe, Britain, and Israel or in any other part of the world are no more intelligent than the Muslim women, but they qualify for the prizes. The reason being – they get equal opportunities in education, research and training.

 

They have acquired equal status after a long struggle of about five centuries for their educational, social and political rights without demanding any favour or reservation but they only asked for equal opportunities. The Muslim women are criticized for their failures ignoring the facts that they are handcuffed and fettered, made unable to aspire and achieve anything.

    

I remember the ruckus raised in the religious and political circles, when Shirin Ebadi, the first woman in the history of Iranian justice to have served as a judge and the expert of law, got Nobel Prize for peace in 2003 for her efforts for democracy and human rights. She has focused especially on the struggle for the rights of women and children, later on many women succeeded to the post of judges.

 

Following the victory of the Islamic Revolution in February 1979, since the belief was that Islam forbids women to serve as judges, she and other female judges were dismissed from their posts and given clerical duties. They made her a clerk in the very court she once presided over. They all protested. As a result, they promoted all former female judges, including her, to the position of "experts" in the Justice Department after a troublesome struggle.

 

In 1992, after receiving her lawyer's license she accepted to defend many cases. Some were national cases. Among them, she represented the families of the serial murders victims (the family of Dariush and Parvaneh Foruhar) and Ezzat Ebrahiminejad, who were killed during the attack on the university dormitory. She also participated in some press-related cases. She took on a large number of social cases, too, including child abuse. Recently she agreed to represent the mother of Mrs Zahra Kazemi, a photojournalist killed in Iran.

 

Shirin Ebadi fought with her all might for the welfare of human rights. The Iranian government criticized her in place of appreciating her efforts when she was awarded Nobel Prize in 2003. They condemned her for not being veiled with “Radha” in Nobel Prize distribution ceremony. 

 

The objection on Shirin Ebadi reminded me of the royal decree of Usnmania Empire in 1725. By this order, the women had been deprived of the rights to selection of their dress.

 

According to the royal decree, “May Allah Kareem save Istanbul, the soul of Usnmania Empire from all evils and torments. This is the land of noble clerics and scholars. The dress code is fixed for every particular section of population, but some women have altered their dress and head coverings in imitation of shameless women to misguide the citizens of city. They dare to walk shamelessly in this manner without proper veil violating the royal decree. The changes made in their dress in unacceptable and is against the set customs. Therefore, if any woman is seen in the market or at the recreation place wearing the open-collar dress, the collar will be immediately cut off. If any woman insists on wearing this dress and is seen in this manner twice or thrice, she would be banished from the city. This order should be sent to all women of Istanbul through the Imam of all regions.

 

There is a gap of 284 years between the royal decree of Khilafat-e-Usmania and Shirin Ebadi, but the majority of Islamic clerics are yet involved in such problems. The exposure of women’s hair is a reason of evil, somewhere there is prohibition at the education of women, their witness is considered of half value. Recently, Hammas, the ruler in Gaza Patti has prohibited women from traveling by cycle or bike along with their son, brother, husband and father as they consider it is against our culture. It seems 284 years old royal decree of Khilafat-e-Usmania is yet, not a matter of past, but it is an order of present time.  

 

I wonder how long we will be kept involved in such controversies. Maybe we have to suffer for the next 284 years or more.

URL of this page: http://www.newageislam.com/NewAgeIslamUrduSection_1.aspx?ArticleID=2304

زاہدہ حنا

دنیا میں 108برس سے ہر سال اکتوبر کا انتظار بہت بے چینی سے کیا جاتا ہے۔ یہی وہ مہینہ ہے جب امن ،ادب، طبیعات ، کیمیا اور طب کے شعبوں میں اپنی زندگی لگادینے اور نوع انسانی کی بہتری کےلئے کام کرنے والوں میں سے منتخب ترین ناموں کو ‘‘نوبل انعام’’ سے نوازا جاتا ہے ۔ انعام پانے والوں میں نسل ، رنگ، مذہب اور علاقے کی کوئی قید نہیں ۔1900میں یہ انعام اس شخص کی وصیت کے مطابق قائم ہوا جس  کانام الفریڈ نوبل تھا اور جس کی سب سے مشہور اور تباہ کن ایجاد ‘‘ڈائنا مائٹ’’ تھی۔ یہ ایک عجیب بات ہے کہ وہ نوبل جس کا خاندان اسلحہ سازی کی بساط پر لیپیٹنے لگا تو اس نے ایک ٹرسٹ میں رکھی جانے والی خطیر رقم پر ہر سال جو منافع ملے اسے مساوی طور پر پوری دنیا کے ان پانچ افراد میں تقسیم کردیا جائے جنہوں نے امن، ادب، کیمیا، طبیعات اورطب میں کوئی کارنامہ انجام دیا ہو۔ان ناموں کے انتحاب کےلئے وہ ایک کمیٹی بنایا گیا جس کے افراد بدل جاتے ہیں لیکن انعام کی شرائط وہی رہتی ہیں۔ کیسی عجیب بات ہے کہ اسلحہ سازی کی صنعت سے دولت کمانے اور ڈائنا مائٹ اور دوسرے دھماکہ خیز چیزیں ایجاد کرنے والے کو جب یہ انعام قائم کرنے کا خیال آیا تو اس نے سب سے پہلے ‘‘امن’’ کا شعبہ منتخب کیا۔

اس نے 1983میں لکھا کہ ‘‘امن انعام اس مرد یا عورت کو ملناچاہئے جو یورپ میں امن کو پھیلانے اور وسعت دینے کا عظیم کام کرے           ’’ نوبل یورپ کا باشندہ تھا اور جانتاتھا کہ یورپ ان گنت جنگوں کا زخم خوردہ ہے اور اس کے سینے میں آنے والی کئی جنگوں کا آتش فشاں دہک رہا ہے اسی لیے امن کو یہ وہ یورپ اور دنیا کی ضرورت سمجھتا تھا ۔ یہ و صیت کرتے ہوئے اس نے بیرونس برتھا دون سٹنر و امن کا انعام دینے کی خواہش ظاہر کی جس نے اس سلسلے میں بہت کام کیا تھا لیکن اس کی یہ خواہش فوری طور پر پوری نہ ہوسکی اور امن کا نوبل انعام بیرونس کو ‘‘نوبل انعام کمیٹی ’’ نے 1905میں عطا کیا۔ بیرونس جب انعام لینے اور اس موقع پر لیکچر دینے کی تقریب میں آئی تو نوبل کمیٹی کے چیئرمین اور اس وقت کے وزیر خارجہ نے تقریر کرتے ہوئے کہا کہ ‘‘تاریخ میں عورتوں کی اہمیت بے پناہ رہی ہے وہی جنگ کے بارے میں مردوں کے تصورات کو تبدیل کرسکتی ہیں اور انہیں اعلیٰ وارفع اہداف کی طرف مائل کر سکتی ہیں ۔’’

اکتوبر 2009کا دوسرا ہفتہ ختم ہونے کو آیا اور نوبل انعامات کا اعلان ہوچکا ۔مجھے خوشی اس بات کی ہےکہ دنیا کا یہ سب سے بڑا اعزاز اس مرتبہ چار عورتوں کے  حصے میں سے ادب کا انعام ہرٹاملر کو ملا جبکہ کیمیا کے انعام میں ایک اسرائیلی خاتون حصہ دار بنی۔ اور طبیعات کے انعام میں ایک مرد اور دوسائنسداں عورتیں شریک رہیں۔اس طرح 2009میں یہ پہلی مرتبہ ہوا کہ ایک برس کے اندر یہ اعزاز 4عورتوں کو ملا ۔نوبل انعام پانے والوں کی فہرست پر نظر ڈالیے تو اب بھی عورتوں کی تعداد بہت کم یعنی 36ہے۔ اس کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ علم وتحقیق کے شعبوں میں عورتوں کی راہ میں امتیازی سلوک کی رکاوٹیں رہی ہیں جس نے انہیں مسابقت کا ہموار میدان فراہم نہیں کیا ۔ ا سکے باوجود وہ آگے بڑھی ہیں اور ان کی پرواز کا افق وسیع سے وسیع تر ہورہا ہے۔ دنیا کے دوسرے انعامات یا نوبل انعام کی فہرست میں عورتوں کا نام پڑھتے ہوئے مجھے دلی مسرت ہوتی ہے لیکن اس کے ساتھ ہی یہ سوال ذہن میں سراٹھاتا ہے کہ ڈیڑھ ارب کی آبادی والی مسلم امہ میں سے کسی عورت کی حصے میں ادب یا سائنس کا کوئی انعام کیوں نہیں آیا؟یہ ممکن بھی کیسے تھا کہ آج اکیسویں صدی کی پہلی دہائی میں سوڈان کی ایک خاتون کوصرف اس خطا میں ذرے مارے جاتے ہوں کہ اس نے ‘‘جینز’’ جیسا غیر اسلامی لباس پہنا تھا اور سعودی عرب میں پہلے مخلوط تعلیمی ادارے کے قیام سے دین کے محافظوں کی نیندیں اڑجاتی ہوں۔ آج ہم امریکہ ، برطانیہ ، اسرائیل ،یورپ اور دنیا کے دوسرے غیر مسلم ممالک کی عورتوں کو تیز ی سے آگے بڑھتا دیکھتے ہیں تو اس کا سبب یہ نہیں کہ مسلمان عورتوں سے کہیں زیادہ ذہین ہیں۔ اصل مسئلہ مساوی مواقع کے فراہم ہونے کا ہے۔ یورپ اور امریکہ میں عورتوں نے آج سے نہیں پانچ صدیوں سے تعلیم اور اپنے دوسرے سماجی اور سیاسی حقو ق کے لیے ایک لمبی لڑائی لڑی ہے۔انہوں نے کبھی بھی کسی طرح کی مراعات کا مطالبہ نہیں کیا۔ ان کا کہناہمیشہ یہی رہا ہے کہ ہم مساوی مواقع کے طلب گار ہیں کیونکہ اگر زندگی کی دوڑ میں اترتے ہوئے ہمارے پیر بندھے ہوئے ہوں اور پھر ہمیں دوڑ نہ جیتنے کے طعنے دیے جائیں ،یہ کہا جائے کہ ہم نالائق اور نااہل ہیں ، ناقص العقل اور کم تردرجے کی مخلوق ہیں تو ہمارے ساتھ اس سے بڑا ظلم اور کوئی نہیں ہوسکتا۔میرے سامنے شیریں عبادی کا نام ابھر تا ہے ایک ایرانی قانون داں خاتون جنہیں 2003میں امن کا انعام دیا گیا تو ایران کے حکمران اور کٹر مذہبی حلقوں میں کہرام برپا ہوگیا۔ شیریں ایران کی پہلی جج   خاتون کہ عہدے پر فائز ہوئیں لیکن 1979میں انقلاب ایران کے فوراً بعد شیریں سمیت تمام جج خواتین اپنے عہدوں سے فارغ کردی گئیں اور جس عدالت میں انہوں نے جج کے طور پر کام کیا تھا وہیں ان سے کلرک کے طور پر کام لیا گیا۔ تمام جج خواتین نے جب اس ناانصافی پر احتجاج کیا تو انہیں ‘‘ماہرین قانون’’ کالقت دیا گیا۔ کئی برس کی جدوجہد کے بعد 1992میں شیریں کو اس بات کی اجازت ملی کہ وہ وکیل کے طور پر ایرانی عدالتوں میں پیش ہوسکیں اور ان لوگوں کا مقدمہ لڑسکیں جو اپنے سیاسی خیالات، ترقی پسند ادیب، سرکار مخالف صحافی یا مذہبی اقلیت ہونے کی وجہ سے ریاستی جبر کا شکار ہیں۔

شیریں عبادی نے انسانی حقوق کی جدوجہد کے حوالے سے بہت کام کیا، جب انہیں 2003میں نوبل انعام ملنے کا اعلان ہوا تو ایرانی حکومت نے انہیں مبارک باد دینے کے بجائے ان پر کڑی تنقید کی اور جب وہ تقریب میں شرکت کے لئے گئیں تو اس بات پر شور وغوغا ہوا کہ ان کا سرکھلا ہوا تھا اور ردا اوڑھے ہوئے نہیں تھیں۔شیریں پر یہ اعتراض پڑھ کر مجھے 1725کا سلطنت عثمانیہ کا وہ فرمان یاد آیا جس میں عورتوں کو لباس کے انتخاب سے محروم کردیا گیا تھا۔ شاہی فرمان کے مطابق ‘‘اللہ سلطنت عثمانیہ کی روح، اشنبول کو ہر مشکل اور آفت سے بچائے’’یہ علمائے صالحین اور صاحب علم لوگوں کی سرزمین ہے اور یہاں آبادی کے ہر حصے کے اپنے اپنے لباس رائج ہیں ۔مگر بعض عورتوں نے اس شہر کی آبادی کو گمراہ کرنے کے لئے بے حیاعورتوں کی نقالی میں لباس میں تراش خراش شروع کردی ہے اور انہوں نے اپنے سر کے لباس میں بڑی عامیانہ تبدیلی کرلی ہے اور اس ناپسندیدہ لباس کے ساتھ باہر نکل آتی ہیں ۔ان کی جرأت اور بے غیرتی کا یہ عالم ہے کہ انہوں نے شاہی احکامات کے برعکس اعلیٰ صفات کے حامل پردے کو بھی ترک کرنا شروع کردیا ہے۔انہوں نے لباس میں جو تبدیلیاں کی ہیں وہ انتہائی ناگوار اور رائج رواج کی خلاف ورزی ہے چنانچہ اگر کوئی عورت کھلے کالر والے (کھلے گلے والے) لباس پہن کر سڑک پر یاسیر وتفریح کرتے ہوئے پائی گئی تو اس کے کالر اسی وقت کاٹ دیے جائیں گےاور اگر کوئی یہ لباس پہننے پر اصرار کرے اور دوسری اور تیسری بار بھی باز نہ آئے تو اسے علاقہ بدر کردیا جائے گا۔ ہر علاقے کے امام کے ذریعہ استنبول کی تمام عورتوں کو یہ احکامات پہنچادیے جائیں’’۔

خلافت عثمانیہ کے اس فرمان اور شیریں عبادی کےایران کے درمیان 284برس کا زمانہ حائل ہے لیکن مسلم امہ کی اکثریت ابھی تک انہی مسائل میں الجھی ہوئی ہے کہ عورتوں کے بالوں کا نظر آنا فتنے کا سبب ہے۔ کہیں اس کی تعلیمی پر پابندیاں ہیں اور کہیں اس کی گواہی آدھی اور اس کی جان کی قیمت نصف ہے۔چند دنوں پہلے غزہ کی پٹی پر حکمران حماس نے اپنے شوہروں ،بھائی اور بیٹوں کے ساتھ سائکل یا موٹر سائیکلوں پر سفر کرنے والی عورتوں سے یہ آزادی بھی سلب کرلی ہے او رکہا ہے کہ یہ ہماری روایات کے خلاف ہے۔ گویا خلافت عثمانیہ کا یہ فرمان 284برس پرانی بات نہیں ‘‘فرمان امروز’’ ہے۔ آخر ہم کب تک انہی مسائل اور پابندیوں میں آئند ہ 284برس تک الجھا کر رکھے جائیں گے؟

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/ruling-imposed-for-284-years--دو-سو-چوراسی-برس-سے-نافذ-فرمان/d/2304


 

Loading..

Loading..